وزیر اعظم نے بی 20 سمٹ انڈیا سے خطاب کیا

Published By : Admin | August 27, 2023 | 12:01 IST
’’بھارت کا چاند مشن سائنس اور صنعت دونوں کی کامیابی ہے‘‘
’’بی -20 کے موضوع - RAISEمیں ، ’I‘ جدت طرازی کی نمائندگی کرتا ہے۔ لیکن جدت طرازی کے ساتھ ساتھ مجھے اس میں ایک اور ’آئی‘ بھی نظر آتا ہے- وہ ہے شمولیت‘‘
جس چیز کو ہماری سرمایہ کاری کی سب سے زیادہ ضرورت ہے وہ ہے باہمی اعتماد
’’عالمی ترقی کا مستقبل کاروبار کے مستقبل پر منحصر ہے‘‘
’’ایک موثر اور قابل اعتماد عالمی سپلائی چین کی تعمیر میں بھارت کا ایک اہم مقام ہے‘‘
’’پائیداری ایک موقع کے ساتھ ساتھ ایک کاروباری ماڈل بھی ہے‘‘
’’بھارت نے کاروبار کے لیے گرین کریڈٹ کا ایک فریم ورک تیار کیا ہے ، جس میں ’سیارے کےلیے مثبت‘اقدامات پر توجہ مرکوز کی گئی ہے ‘‘
’’کاروباری اداروں کو زیادہ سے زیادہ لوگوں کی قوت خرید کو بہتر بنانے پر توجہ مرکوز کرنی چاہیے کیونکہ خود مرکوز نقطہ نظر ہر ایک کو نقصان پہنچائے گا‘‘
’’ہمیں یقینی طور پر ’انٹرنیشنل کنزیومر کیئر ڈے‘ کے لیے ایک نظام کے بارے میں سوچنا چاہیے۔ اس سے کاروباری اداروں اور صارفین کے درمیان اعتماد کو مضبوط بنانے میں مدد ملے گی ‘‘
’’کرپٹو کرنسیوں کے بارے میں زیادہ مربوط نقطہ نظر کی ضرورت ہے‘‘
’’عالمی کاروباری برادریوں اور حکومتوں کو اس بات کو یقینی بنانے کے لیے مل کر کام کرنا ہوگا کہ اخلاقی مصنوعی ذہانت کو فروغ دیا جائے‘‘
’’ایک مربوط دنیا مشترکہ مقصد، مشترکہ سیارے، مشترکہ خوشحالی اور مشترکہ مستقبل کا نام ہے‘‘

وزیراعظم جناب نریندر مودی نے آج نئی دہلی میں بی 20 سمٹ انڈیا 2023 سے خطاب کیا۔ بی 20 سمٹ بھارت دنیا بھر کے پالیسی سازوں، کاروباری رہنماؤں اور ماہرین کو بی 20 انڈیا اعلامیہ پر غور و خوض اور تبادلہ خیال کرنے کے لیے یکجا کرتی ہے۔ بی 20 انڈیا اعلامیہ میں جی 20کو پیش کرنے کے لیے 54سفارشات اور 172پالیسی اقدامات شامل ہیں۔

مجمع سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے 23 اگست کو چندریان مشن کی کامیاب لینڈنگ کے بعد جشن کے لمحات کو اجاگر کیا۔ انھوں نے کہا کہ بھارت میں تہواروں کا موسم آگیا ہے اور سماج کے ساتھ ساتھ کاروبار بھی جشن کے موڈ میں ہیں۔ کامیاب چاند مشن میں اسرو کے رول کا ذکر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے مشن میں صنعت کے رول کو بھی تسلیم کیا کیونکہ چندریان کے بہت سے اجزاء نجی شعبے اور ایم ایس ایم ای کے ذریعہ فراہم کیے گئے تھے۔ انھوں نے کہا، ’’یہ سائنس اور صنعت دونوں کی کامیابی ہے۔‘‘

انھوں نے مزید کہا کہ بھارت کے ساتھ ساتھ پوری دنیا جشن منا رہی ہے اور یہ جشن ایک ذمہ دارانہ خلائی پروگرام چلانے کے بارے میں ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ یہ تقریبات ذمہ داری، تیزی، جدت طرازی، پائیداری اور مساوات کے بارے میں ہیں، جو آج کے بی 20 کا موضوع ہے۔ انھوں نے مزید کہا کہ یہ انسانیت کے بارے میں ہے اور ’ایک زمین، ایک خاندان اور ایک مستقبل‘کے بارے میں ہے۔

 

بی 20 تھیم ’RAISE‘کے بارے میں بات کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ اگرچہ ’I‘جدت طرازی کی نمائندگی کرتا ہے لیکن وہ شمولیت کے ایک اور ‘I’کی بھی نمائندگی کرتا ہے۔ انھوں نے بتایا کہ افریقی یونین کو جی 20 کی مستقل نشستوں پر مدعو کرتے وقت بھی اسی وژن کا اطلاق کیا گیا ہے۔ یہاں تک کہ بی 20 میں بھی وزیر اعظم نے کہا کہ افریقہ کی اقتصادی ترقی کو توجہ مرکوز کرنے والے علاقے کے طور پر شناخت کیا گیا ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ بھارت کا ماننا ہے کہ اس فورم کے جامع نقطہ نظر کا اس گروپ پر براہ راست اثر پڑے گا۔ انھوں نے کہا کہ یہاں کیے گئے فیصلوں کی کامیابیوں کا عالمی اقتصادی چیلنجوں سے نمٹنے اور پائیدار ترقی پیدا کرنے میں براہ راست اثر پڑے گا۔

صدی میں ایک بار آنے والی آفت یعنی کووڈ-19 وبا سے حاصل ہونے والے سبق کے بارے میں بات کرتے ہوئے جناب مودی نے کہا کہ اس وبائی مرض نے ہمیں سکھایا ہے کہ جس چیز کی ہماری سرمایہ کاری کی سب سے زیادہ ضرورت ہے وہ ہے ’باہمی اعتماد‘۔ وزیر اعظم نے کہا کہ جب وبائی مرض نے باہمی اعتماد کی عمارت کو تباہ کردیا تو بھارت اعتماد اور عاجزی کے ساتھ باہمی اعتماد کا جھنڈا بلند کرنے کے لیے کھڑا ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ بھارت نے 150 سے زیادہ ممالک کو دوائیں فراہم کی ہیں جو دنیا کی فارمیسی کی حیثیت پر پورا اتر رہے ہیں۔ اسی طرح کروڑوں زندگیاں بچانے کے لیے ویکسین کی پیداوار میں اضافہ کیا گیا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ بھارت کی جمہوری اقدار اس کے عمل اور اس کے ردعمل میں ظاہر ہوتی ہیں۔ انھوں نے کہا کہ بھارت کے 20 سے زیادہ شہروں میں جی 50 اجلاسوں میں بھارت کی جمہوری اقدار کا اظہار ہوتا ہے۔

عالمی کاروباری برادری کے لیے بھارت کے ساتھ شراکت داری کی کشش پر زور دیتے ہوئے وزیر اعظم نے بھارت کے نوجوان ٹیلنٹ پول اور اس کے ڈیجیٹل انقلاب کا ذکر کیا۔ وزیر اعظم مودی نے کہا کہ بھارت کے ساتھ آپ کی دوستی جتنی گہری ہوگی ، دونوں میں اتنی ہی خوشحالی آئے گی۔

انھوں نے کہا کہ ’’کاروبار صلاحیت کو خوشحالی میں، رکاوٹوں کو مواقع میں، امنگوں کو کامیابیوں میں تبدیل کرسکتا ہے۔ چاہے وہ چھوٹے ہوں یا بڑے، عالمی ہوں یا مقامی، کاروبار ہر ایک کی ترقی کو یقینی بنا سکتا ہے۔ اس لیے وزیر اعظم نے کہا کہ عالمی ترقی کا مستقبل کاروبار کے مستقبل پر منحصر ہے۔‘‘

کووڈ 19 وبا کے آغاز کے ساتھ زندگی میں آنے والی تبدیلیوں پر روشنی ڈالتے ہوئے وزیر اعظم نے عالمی سپلائی چین میں رکاوٹوں کی ناقابل تلافی تبدیلی کا ذکر کیا۔ عالمی سپلائی چین کی کارکردگی پر سوال اٹھاتے ہوئے جب دنیا کو اس کی سب سے زیادہ ضرورت تھی تو اس کا وجود ختم ہوگیا تھا ، وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ بھارت ان رکاوٹوں کا حل ہے جن سے آج دنیا نمٹ رہی ہے۔ انھوں نے آج دنیا میں ایک قابل اعتماد سپلائی چین بنانے میں بھارت کے موقف پر روشنی ڈالی اور عالمی کاروباری اداروں کے تعاون پر زور دیا۔

جی 20 ممالک کے کاروباری اداروں کے درمیان بی 20 کے ایک مضبوط پلیٹ فارم کے طور پر ابھرنے پر خوشی کا اظہار کرتے ہوئے وزیر اعظم مودی نے پائیداری پر توجہ مرکوز کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ انھوں نے عالمی کاروبار پر زور دیا کہ وہ آگے بڑھیں کیونکہ پائیداری بذات خود ایک موقع ہونے کے ساتھ ساتھ کاروباری ماڈل بھی ہے۔ انھوں نے باجرے  کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ یہ ایک سپر فوڈ، ماحول دوست ہونے کے ساتھ ساتھ چھوٹے کاشتکاروں کے لیے بھی اچھا ہے جو اسے معیشت اور طرز زندگی دونوں کے زاویے سے جیتنے والا ماڈل بناتا ہے۔ انھوں نے سرکلر اکانومی اور گرین انرجی کا بھی ذکر کیا۔ دنیا کو ساتھ لے کر چلنے کا بھارت کا نقطہ نظر بین الاقوامی شمسی اتحاد جیسے اقدامات میں نظر آتا ہے۔

 

کورونا کے بعد کی دنیا میں وزیر اعظم نے نوٹ کیا کہ ہر فرد اپنی صحت کے بارے میں زیادہ محتاط ہوگیا ہے اور اس کے اثرات روز مرہ کی سرگرمیوں میں واضح طور پر نظر آرہے ہیں۔ انھوں نے یہ بھی نوٹ کیا کہ لوگ اس طرح کی کسی بھی سرگرمی کے مستقبل کے اثرات کی طرف دیکھ رہے ہیں۔ اس یقین کو تقویت دیتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ کاروباری اداروں اور معاشرے کو سیارے کے بارے میں یکساں نقطہ نظر اپنانا چاہیے اور سیارے پر ان کے فیصلوں کے اثرات کا تجزیہ کرنا چاہیے۔ وزیر اعظم نے مزید کہا کہ کرہ ارض کی فلاح و بہبود بھی ہماری ذمہ داری ہے۔ مشن لائف کے بارے میں بات کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ اس مشن کا مقصد سیارے کے حامی لوگوں کا ایک گروپ یا اجتماعی تشکیل دینا ہے۔ انھوں نے اس بات پر زور دیا کہ جب طرز زندگی اور کاروبار دونوں سیارے کے حامی ہوں گے تو آدھے مسائل کم ہوجائیں گے۔ انھوں نے ماحول کے مطابق زندگی اور کاروبار کو اپنانے پر زور دیا اور بھارت کے کاروبار کے لیے گرین کریڈٹ کا فریم ورک تیار کرنے کے بارے میں آگاہ کیا ، جس میں سیارے کے مثبت اقدامات پر زور دیا گیا ہے۔ وزیر اعظم نے عالمی کاروبار کے تمام سرکردہ افراد پر زور دیا کہ وہ مل کر اسے ایک عالمی تحریک بنائیں۔

وزیر اعظم نے کاروبار کے لیے روایتی نقطہ نظر پر نظر ثانی کرنے کو کہا۔ انھوں نے کہا کہ برانڈ اور سیلز سے آگے بڑھنے کی ضرورت ہے۔ انھوں نے کہا، ’’ایک کاروبار کے طور پر، ہمیں ایک ایسا ایکوسسٹم بنانے پر بھی توجہ مرکوز کرنی ہوگی جو ہمیں طویل مدت میں فائدہ پہنچائے۔ اب گزشتہ چند سالوں میں بھارت کی طرف سے نافذ کی گئی پالیسیوں کی وجہ سے صرف 13 سالوں میں 5.5 کروڑ لوگ غربت سے باہر آئے ہیں۔ یہ لوگ نئے صارفین ہیں۔ یہ نیو مڈل کلاس بھی بھارت کی ترقی کو رفتار دے رہا ہے۔ یعنی حکومت کی جانب سے غریبوں کے لیے کیے گئے کاموں کا خالص فائدہ ہمارے متوسط طبقے کے ساتھ ساتھ ہمارے ایم ایس ایم ایز کو بھی ہوتا ہے۔ وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ کاروباری اداروں کو زیادہ سے زیادہ لوگوں کی قوت خرید کو بہتر بنانے پر توجہ مرکوز کرنی چاہیے کیونکہ خود مرکوز نقطہ نظر ہر ایک کو نقصان پہنچائے گا۔ اہم مواد اور نایاب زمینی دھاتوں میں غیر مساوی دستیابی اور عالمگیر ضرورت کے اسی طرح کے چیلنج کا حوالہ دیتے ہوئے وزیر اعظم مودی نے کہا، "اگر جن کے پاس یہ دھاتیں ہیں وہ انھیں عالمی ذمہ داری کے طور پر نہیں دیکھتے ہیں تو یہ نوآبادیات کے ایک نئے ماڈل کو فروغ دے گا۔

وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ ایک منافع بخش مارکیٹ اس وقت برقرار رہ سکتی ہے جب پروڈیوسروں اور صارفین کے مفادات میں توازن ہو اور اس کا اطلاق اقوام پر بھی ہوتا ہے۔ انھوں نے اس بات پر زور دیا کہ دوسرے ممالک کو صرف ایک مارکیٹ کے طور پر سمجھنے سے کام نہیں چلے گا بلکہ جلد یا بدیر پیداواری ممالک کو بھی نقصان پہنچے گا۔ انھوں نے اس بات پر زور دیا کہ آگے بڑھنے کا راستہ یہ ہے کہ اس پروگرام میں سب کو مساوی شراکت دار بنایا جائے۔ انھوں نے اس موقع پر موجود کاروباری رہنماؤں پر زور دیا کہ وہ کاروبار کو صارفین پر زیادہ مرکوز بنانے پر غور کریں جہاں یہ صارفین انفرادی یا ممالک ہوسکتے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ان کے مفادات کا خیال رکھنے کی ضرورت ہے اور اس کے لیے سالانہ مہم چلانے کی تجویز دی۔ وزیر اعظم نے سوال کیا کہ کیا ہر سال عالمی کاروباری ادارے صارفین اور ان کی منڈیوں کی بھلائی کے لیے اپنے آپ کو عہد کرنے کے لیے اکٹھے ہوسکتے ہیں؟

جناب مودی نے عالمی کاروباری اداروں سے کہا کہ وہ صارفین کے مفاد کے بارے میں بات کرنے کے لیے ایک دن مقرر کریں۔ انھوں نے سوال کیا کہ جب ہم صارفین کے حقوق کے بارے میں بات کرتے ہیں تو کیا ہمیں صارفین کی دیکھ بھال کا بھی خیال نہیں رکھنا چاہیے کیونکہ یہ خود بخود صارفین کے حقوق کے بہت سے مسائل کا خیال رکھے گا؟ ہمیں یقینی طور پر ’انٹرنیشنل کنزیومر کیئر ڈے‘کے نظام کے بارے میں سوچنا چاہیے۔ اس سے کاروباری اداروں اور صارفین کے درمیان اعتماد کو مضبوط بنانے میں مدد ملے گی۔ انھوں نے وضاحت کی کہ صارفین کسی مخصوص جغرافیہ کے اندر خوردہ صارفین تک محدود نہیں ہیں بلکہ وہ ممالک بھی ہیں جو عالمی تجارت ، عالمی اشیاء اور خدمات کے صارفین ہیں۔

 

دنیا کے کاروباری رہنماؤں کی موجودگی کا ذکر کرتے ہوئے وزیراعظم نے اہم سوالات اٹھائے اور کہا کہ کاروبار اور انسانیت کے مستقبل کا فیصلہ ان سوالات کے جوابات سے ہوگا۔ جوابات کے بارے میں جناب مودی نے کہا کہ ان کا جواب دینے کے لیے باہمی تعاون ضروری ہے۔ انھوں نے اس بات پر زور دیا کہ موسمیاتی تبدیلی، توانائی کے شعبے کا بحران، فوڈ سپلائی چین میں عدم توازن، واٹر سیکیورٹی، سائبر سیکیورٹی وغیرہ جیسے مسائل کا کاروبار پر بڑا اثر پڑتا ہے اور اس کا مقابلہ کرنے کے لیے کوششوں کو بڑھانے پر زور دیا۔ انھوں نے ان مسائل پر بھی روشنی ڈالی جن کے بارے میں 10-15 سال پہلے کوئی سوچ بھی نہیں سکتا تھا اور کرپٹو کرنسیوں سے متعلق چیلنجوں کی مثال دی۔ وزیر اعظم نے اس معاملے میں زیادہ مربوط نقطہ نظر کی ضرورت پر زور دیا اور ایک عالمی فریم ورک تشکیل دینے کی تجویز دی جہاں تمام اسٹیک ہولڈرز کے مسائل کو حل کیا جا سکے۔ انھوں نے مصنوعی ذہانت کے حوالے سے بھی اسی طرح کے نقطہ نظر کی ضرورت کے بارے میں بات کی۔ مصنوعی ذہانت کے بارے میں پائے جانے والے جوش و خروش پر روشنی ڈالتے ہوئے وزیر اعظم نے ہنرمندی اور دوبارہ ہنر مندی کے بارے میں کچھ اخلاقی پہلوؤں اور الگورتھم تعصب اور معاشرے پر اس کے اثرات کے بارے میں خدشات کی طرف توجہ مبذول کرائی۔ انھوں نے کہا کہ اس طرح کے مسائل کو مل جل کر حل کرنا ہوگا۔ عالمی کاروباری برادریوں اور حکومتوں کو اس بات کو یقینی بنانے کے لیے مل کر کام کرنا ہوگا کہ اخلاقی مصنوعی ذہانت میں توسیع ہو۔وزیر اعظم نے مختلف شعبوں میں ممکنہ رکاوٹوں کو محسوس کرنے پر زور دیا۔ 

اپنے خطاب کے اختتام پر وزیراعظم نے کہا کہ کاروبار کامیابی کے ساتھ سرحدوں اور حدود سے آگے بڑھ چکے ہیں لیکن اب وقت آگیا ہے کہ کاروبار کو نچلی سطح سے آگے لے جایا جائے۔ انھوں نے کہا کہ سپلائی چین لچک اور پائیداری پر توجہ مرکوز کرکے اسے انجام دیا جاسکتا ہے۔ جناب مودی نے اس اعتماد کا اظہار کیا کہ بی 20 سمٹ نے اجتماعی تبدیلی کی راہ ہموار کی ہے۔ ’’ہمیں یاد رکھنا چاہیے کہ ایک مربوط دنیا صرف ٹکنالوجی کے ذریعے رابطے کے بارے میں نہیں ہے۔ یہ نہ صرف مشترکہ سوشل پلیٹ فارمز کے بارے میں ہے بلکہ ایک مشترکہ مقصد، مشترکہ سیارے، مشترکہ خوشحالی اور مشترکہ مستقبل کے بارے میں بھی ہے۔‘‘

 

پس منظر

بزنس 20 (بی 20) عالمی کاروباری برادری کے ساتھ باضابطہ جی 20 ڈائیلاگ فورم ہے۔ 2010  میں قائم ہونے والا بی 20، جی 20 میں سب سے نمایاں انگیجمنٹ گروپس میں سے ایک ہے ، جس میں کمپنیاں اور کاروباری تنظیمیں شرکا کے طور پر شامل ہیں۔ بی 20 اقتصادی نمو اور ترقی کو فروغ دینے کے لیے ٹھوس قابل عمل پالیسی سفارشات فراہم کرنے کے لیے کام کرتا ہے۔

یہ سہ روزہ سربراہ اجلاس 25 سے 27 اگست تک جاری رہے گا۔ اس کا موضوع RIASE– ذمہ دار، تیز رفتار، اختراعی، پائیدار اور مساوی کاروبار ہے۔ اس میں تقریبا 55 ممالک کے 1500سے زیادہ مندوبین شرکت کر رہے ہیں۔

 

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Railways cuts ticket prices for passenger trains by 50%

Media Coverage

Railways cuts ticket prices for passenger trains by 50%
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 28 فروری 2024
February 28, 2024

Modi Government Ensuring Last-mile Delivery and Comprehensive Development for India