"یہ ہندوستان کا وقت ہے‘‘
"دنیا کا ہر ترقیاتی ماہر گروپ اس بات پر بحث کر رہا ہے کہ پچھلے 10 سالوں میں ہندوستان کیسے بدلا ہے"
"دنیا آج ہندوستان پر اعتماد کرتی ہے‘‘
"استحکام، مستقل مزاجی اور تسلسل ہماری مجموعی پالیسی سازی کے 'پہلے اصولوں' کو تشکیل دیتے ہیں"
"ہندوستان ایک فلاحی ریاست ہے۔ ہم نے اس بات کو یقینی بنایا کہ حکومت خود ہر مستحق مستفید تک پہنچ جائے
"سرمایہ دارانہ اخراجات کی شکل میں پیداواری اخراجات، فلاحی اسکیموں میں بے مثال سرمایہ کاری، فضول خرچی پر کنٹرول اور مالی نظم و ضبط - ہمارے ہر بجٹ میں چار اہم عوامل"
"منصوبوں کو مقررہ مدت میں مکمل کرنا ہماری حکومت کی پہچان بن گیا ہے"
"ہم 20ویں صدی کے چیلنجوں سے نمٹ رہے ہیں اور 21ویں صدی کی امنگوں کو بھی پورا کر رہے ہیں"
پارلیمنٹ کے اس اجلاس میں 2014 سے پہلے 10 سالوں میں ملک کی پالیسیوں کے حوالے سے قرطاس ابیض پیش کیا گیا

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج نئی دہلی کے ہوٹل تاج پیلس میں ای ٹی ناؤ گلوبل بزنس سمٹ 2024 سے خطاب کیا۔

وزیر اعظم نے اپنے خطاب کا آغاز 'گلوبل بزنس سمٹ 2024 کے ذریعہ منتخب کردہ ’رکاوٹ، ترقی اور تنوع ‘کے موضوع کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے کیا۔’’جب بات رکاوٹ، ترقی اور تنوع کی ہو تو ہر کوئی اس بات سے اتفاق کر سکتا ہے کہ یہ ہندوستان کا وقت ہے‘‘، وزیر اعظم نے دنیا میں ہندوستان کے تئیں بڑھتے ہوئے اعتماد کو نوٹ کرتے ہوئے کہا۔ ڈیووس میں ہندوستان کے تئیں بے مثال جوش و جذبے کے بارے میں بات کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے ہندوستان کو ایک بے مثال اقتصادی کامیابی کی کہانی قرار دینے، اس کے ڈیجیٹل اور فزیکل انفراسٹرکچر کو نئی بلندیوں تک پہنچانے، اور دنیا کے ہر شعبے میں ہندوستان کی بالادستی کے بارے میں بات چیت کو یاد کیا۔ پی ایم مودی نے ایک سینئر عہدیدار کو بھی یاد کیا جس نے ہندوستان کی صلاحیت کا موازنہ ریجنگ بل' سے کیا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ دنیا میں ترقی کے ماہر گروپ گزشتہ 10 سالوں میں ہندوستان کی تبدیلی کے بارے میں بات کر رہے ہیں، آج ہندوستان کے تئیں دنیا کے بڑھتے ہوئے اعتماد کو ظاہر کرتے ہیں۔ "ہم نے دنیا میں ہندوستان کی صلاحیت اور کامیابی کے بارے میں اس طرح کے مثبت جذبات پہلے کبھی نہیں دیکھے تھے"، جناب مودی نے لال قلعہ سے اپنی تقریر کو یاد کرتے ہوئے کہا - 'یہی وقت ہے،  صحیح وقت ہے'۔

 

اس بات کی نشاندہی کرتے ہوئے کہ کسی بھی ملک کی ترقی کے سفر کے دوران ایک وقت ایسا آتا ہے جب تمام حالات اس کے موافق ہوتے ہیں، وزیر اعظم نے کہا کہ یہ وہ وقت ہے جب ملک آنے والی صدیوں کے لیے خود کو مضبوط بناتا ہے۔ ’’میں آج ہندوستان کے لیے وہی وقت دیکھ رہا ہوں۔ یہ مدت بے مثال ہے۔ ایک طرح سے، ملک کی نیکی کا دور شروع ہو گیا ہے‘‘، وزیر اعظم مودی نے مسلسل بڑھتی ہوئی شرح نمو اور گرتے ہوئے مالیاتی خسارے، برآمدات میں اضافہ اور کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ کم رہنے کا ذکر کرتے ہوئے کہا، پیداواری سرمایہ کاری ریکارڈ بلندی پر ہے اور مہنگائی کنٹرول میں ہے، بڑھتے ہوئے مواقع اور آمدنی، گھٹتی ہوئی غربت، بڑھتی ہوئی کھپت اور کارپوریٹ منافع اور بینک این پی اے میں ریکارڈ کمی۔ وزیراعظم نے مزید کہا کہ پیداوار اور پیداواریت  دونوں بڑھ رہی ہیں۔

اقتصادی ماہرین اور صحافیوں کی جانب سے اس سال کے عبوری بجٹ کے حوالے سے موصول ہونے والی پذیرائی پر مسرت کا اظہار کرتے ہوئے اسے 'ایک پاپولسٹ بجٹ نہیں' قرار دیتے ہوئے، وزیر اعظم نے ان کے جائزوں پر ان کا شکریہ ادا کیا، لیکن ساتھ ہی بجٹ کے 'پہلے اصولوں' یا مجموعی طور پالیسی سازی پر توجہ مبذول کروائی۔ "وہ پہلے اصول ہیں - استحکام، مستقل مزاجی اور تسلسل"، وزیر اعظم مودی نے مزید کہا کہ یہ بجٹ ان اصولوں کی توسیع ہے۔

 

کورونا وائرس وبائی مرض پر نظر ڈالتے ہوئے، وزیر اعظم نے یاد کیا کہ کس طرح اس کے بعد کا پورا دور پوری دنیا کی حکومتوں کے لیے ایک بہت بڑا امتحان ثابت ہوا جہاں کسی کو صحت اور معیشت کے دوہرے چیلنجوں سے نمٹنے کے بارے میں کوئی اندازہ نہیں تھا۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ اس عرصے کے دوران ہندوستان نے جان بچانے کو ترجیح دی۔ "اگر زندگی ہے تو سب کچھ ہے"، انہوں نے جان بچانے والے وسائل جمع کرنے اور لوگوں کو خطرات سے آگاہ کرنے کی حکومت کی کوششوں پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے غریبوں کے لیے مفت راشن فراہم کرنے کا فیصلہ کیا، میڈ ان انڈیا ویکسین پر توجہ مرکوز کی اور ویکسین کی فوری دستیابی کو بھی یقینی بنایا۔ "حکومت نے صحت اور معاش دونوں کے مطالبات کو حل کیا"، وزیر اعظم مودی نے کہا کہ انہوں نے خواتین کے کھاتوں میں براہ راست فائدہ کی منتقلی، کھانچہ فروشوں اور چھوٹے کاروباریوں کو مالی امداد، اور کاشتکاری سے متعلق مسائل سے نمٹنے کے اقدامات کا ذکر کیا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے تباہی کو موقع میں تبدیل کرنے کا عزم کیا۔ مانگ میں اضافے اور بڑے کاروباروں کی مدد کے لیے اس وقت  کےماہرین کی رائے کو یاد کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے نشاندہی کی کہ دنیا کی بہت سی حکومتوں کی طرف سے اپنائے جانے والے اس طرز عمل کے نتیجے میں مہنگائی کی سطح میں اضافہ ہوا۔ "ہم پر بھی دباؤ ڈالنے کی بہت کوششیں ہوئیں"، وزیر اعظم نے بات جاری رکھتے ہوئے کہا ، "لیکن ہم زمینی حقیقت کو جانتے تھے اور سمجھتے تھے۔ ہم اپنے تجربے اور اپنے ضمیر کی بنیاد پر آگے بڑھے۔ وزیر اعظم  مودی نے آج معیشت کی مضبوط پوزیشن کا سہرا ہندوستان کی پالیسیوں کو دیا، جن پر کبھی سوال کیا جاتا تھا لیکن وہ درست ثابت ہوئیں۔

وزیر اعظم نے کہا "ہندوستان ایک فلاحی ریاست ہے۔ حکومت کی ترجیح عام شہریوں کی زندگیوں کو آسان بنانا اور معیار زندگی کو بہتر بنانا ہے" ۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ایک طرف نئی اسکیمیں بنائی گئیں تو دوسری طرف حکومت نے اس کا فائدہ ہر مستحق استفادہ کنندہ  تک پہنچایا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہم نے نہ صرف حال بلکہ ملک کے مستقبل میں بھی سرمایہ کاری کی ہے۔ وزیر اعظم نے ہر بجٹ میں چار اہم عوامل پر روشنی ڈالی اور ریکارڈ پیداواری اخراجات کا ذکر کیا جس میں سرمائے کے اخراجات، فلاحی اسکیموں میں بے مثال سرمایہ کاری، فضول خرچی پر کنٹرول اور مالیاتی نظم و ضبط شامل ہیں۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ چاروں مضامین میں توازن برقرار رکھا گیا اور مقررہ اہداف حاصل کئے گئے۔ مطلوبہ اہداف کو حاصل کرنے میں ’’پیسہ بچانا ہی کمائی ہے‘‘ کے منتر کو سہرا دیتے ہوئے وزیر اعظم نے مقررہ مدت میں پروجیکٹوں کو مکمل کرنے کا ذکر کیا۔ تاخیر کی وجہ سے پروجیکٹ کی بڑھتی ہوئی لاگت کا ذکر کرتے ہوئے، وزیر اعظم مودی نے 2008 میں شروع کیے گئے ایسٹرن ڈیڈیکیٹڈ فریٹ کوریڈور پروجیکٹ کی مثال دی اور بتایا کہ پچھلے سال مکمل ہونے پر پروجیکٹ کی لاگت 16,500 کروڑ روپے سے بڑھ کر 50,000 کروڑ روپے سے زیادہ ہوگئی ہے۔ انہوں نے 1998 میں شروع ہونے والے آسام کے بوگیبیل پل کا بھی ذکر کیا جس کے پروجیکٹ کی لاگت 2018 میں مکمل ہونے پر 1100 کروڑ روپے سے بڑھ کر 5000 کروڑ روپے تک پہنچ گئی۔

 

وزیر اعظم مودی نے نظام میں شفافیت لانے اور ٹیکنالوجی کا استعمال کرکے ملک کے پیسے بچانے پر بھی زور دیا۔ انہوں نے 10 کروڑ فرضی فائدہ اٹھانے والوں سے چھٹکارا حاصل کرنے کا ذکر کیا جو صرف کاغذ پر موجود تھے، براہ راست فائدے کی منتقلی کے ذریعہ فنڈز کے رساو کو ختم کرتے ہوئے روپے کی بچت میں مدد کی۔ غلط ہاتھوں میں جانے سے 3.25 لاکھ کروڑ روپے، سرکاری سامان کی خریداری کے لیے جی ای ایم پورٹل جس کے نتیجے میں 65،000 کروڑ روپے کی بچت ہوئی، اور تیل کی خریداری میں تنوع سے 25،000 کروڑ روپے کی بچت ہوئی۔ انہوں نے مزید کہا "پچھلے سال میں، ہم نے صرف پیٹرول میں ایتھنول ملا کر 24,000 کروڑ روپے بچائے" ۔ انہوں نے سوچھتا ابھیان کا بھی ذکر کیا جہاں حکومت نے سرکاری عمارتوں میں پڑے دفاتر کا ردی بیچ کر 1100 کروڑ روپے کمائے۔

وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ سرکاری اسکیمیں اس طرح بنائی گئی ہیں کہ شہریوں کے پیسے بچائے جائیں۔ انہوں نے جل جیون مشن پر بات کی جہاں غریبوں کے لیے پینے کے صاف پانی کو یقینی بنایا گیا، اس طرح پانی سے پیدا ہونے والی بیماریوں سے ہونے والی بیماریوں پر ان کے اخراجات کو کم کیا گیا۔ آیوشمان بھارت کا ذکر کرتے ہوئے وزیر اعظم  مودی نے کہا کہ اس نے ملک کے غریبوں کو ایک  لاکھ کروڑ روپے خرچ کرنے سے بچایا ہے جبکہ پی ایم جن اوشدھی کیندروں میں 80 فیصد سستی ادویات کے ذریعہ 30,000 کروڑ روپے بچائے گئے ہیں۔

جناب مودی نے اس بات کا اعادہ کیا کہ وہ نہ صرف موجودہ نسل بلکہ آنے والی کئی نسلوں کے سامنے بھی جوابدہ ہیں۔ اس طرح، پالیسیوں اور فیصلوں میں مالیاتی انتظام کو اولین ترجیح دینا ہے۔

 

بجلی کی مثال دیتے ہوئے وزیر اعظم نے ایک کروڑ گھروں کے لیے روف ٹاپ سولرا سکیم کا ذکر کیا جہاں لوگ بجلی پیدا کر کے اپنے بجلی کے بل کو صفر تک کم کر سکتے ہیں اور اضافی بجلی بیچ کر پیسے بھی کما سکتے ہیں۔ انہوں نے اجالا اسکیم کے تحت فراہم کردہ ایل ای ڈی بلب کا بھی ذکر کیا جس سے بجلی کے بلوں میں 20,000 کروڑ روپے کی بچت ہوئی۔

وزیراعظم نے نشاندہی کی کہ ملک میں گزشتہ 7 دہائیوں سے غربت کے خاتمے کے نعرے لگانے کے باوجود وہ اثر انداز ہونے میں ناکام رہے اور ایئرکنڈیشنڈ کمروں سے تجاویز دینے والے کروڑ پتی بن گئے جبکہ غریب غریب ہی رہا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ 2014 کے بعد ہمہ جہت کام شروع ہوا جس کے نتیجے میں پچھلے 10 سالوں میں 25 کروڑ لوگ غربت سے باہر نکل آئے۔ انہوں نے اس کا سہرا اپنی حکومت کی پالیسیوں کو دیا۔ جناب مودی نے کہا’’میں یہاں غربت سے آیا ہوں اس لیے میں جانتا ہوں کہ غربت سے کیسے لڑنا ہے۔ اس سمت میں آگے بڑھ کر، ہم ملک کی غربت کو کم کریں گے اور اپنے ملک کو ترقی یافتہ بنائیں گے۔"

وزیر اعظم نے کہا کہ ’’ہندوستان کا گورننس ماڈل بیک وقت دو دھاروں پر آگے بڑھ رہا ہے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ ایک طرف 20ویں صدی کے چیلنجوں سے نمٹا جا رہا ہے تو دوسری طرف حکومت 21ویں صدی کی امنگوں کو پورا کرنے کے لیے کوشاں ہے۔ ترقیاتی پیرامیٹر کا موازنہ کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے 11 کروڑ بیت الخلا بنانے اور خلائی شعبے میں نئے امکانات پیدا کرنے، غریبوں کو 4 کروڑ گھر فراہم کرنے، 10،000 سے زیادہ اٹل ٹنکرنگ لیبز تیار کرنے، 300 سے زیادہ میڈیکل کالجوں کے قیام کا ذکر کیا ۔ فریٹ کوریڈور اور ڈیفنس کوریڈور، وندے بھارت ٹرینوں کے ساتھ ساتھ دہلی سمیت کئی شہروں میں تقریباً 10,000 الیکٹرک بسیں چلائی جا رہی ہیں۔ انہوں نے کروڑوں ہندوستانیوں کو بینکنگ سیکٹر سے جوڑنے اور ڈیجیٹل انڈیا اور فنٹیک کے ذریعہ متعدد سہولیات پیدا کرنے کا بھی ذکر کیا۔

 

بڑھتی ہوئی سوچ کی لعنت کا ذکر کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے وضاحت کی کہ یہ ایک حد بناتی ہے اور کسی کو اپنی رفتار سے آگے نہیں بڑھنے دیتی۔ انہوں نے نشاندہی کی کہ موجودہ حکومت کے برسراقتدار آنے پر بیوروکریسی میں بھی ایسا ہی مسئلہ تھا۔ تبدیلی لانے کے لیے وزیراعظم نے کہا کہ انہوں نے پچھلی حکومتوں کے مقابلے بہت بڑے پیمانے پر تیز رفتاری سے کام کرنے کا فیصلہ کیا۔ پچھلے 10 سالوں کے ساتھ 2014 تک کیے گئے کام کے موازنہ پر روشنی ڈالتے ہوئے، وزیر اعظم  مودی نے ریلوے لائنوں کو تقریباً 20,000 کلومیٹر سے بڑھا کر 40,000 کلومیٹر سے زیادہ کرنے، چار لین والی قومی شاہراہوں کی تعمیر 18,000 کلومیٹر سے بڑھ کر تقریباً 30,000 کلومیٹر تک پہنچنے کا ذکر کیا۔ 250 کلومیٹر سے 650 کلومیٹر میٹرو ریل نیٹ ورک کی توسیع  کا بھی ذکر کیا ۔وزیر اعظم نے بتایا کہ  2019 سے جل جیون مشن کے تحت، دیہی علاقوں میں 10 کروڑ گھروں کو صرف پچھلے 5 سالوں میں نل کے پانی کے کنکشن ملے ہیں جبکہ 2014 تک سات دہائیوں میں ہندوستان میں 3.5 کروڑ نل کے پانی کے کنکشن ملے ہیں۔

وزیراعظم نے نشاندہی کی کہ 2014 سے پہلے 10 سالوں میں ملک نے جن پالیسیوں پر عمل کیا وہ درحقیقت ملک کو غربت کی راہ پر گامزن کر رہے تھے اور اس حوالے سے پارلیمنٹ کے بجٹ اجلاس میں پیش کیے گئے قرطاس ابیض کا ذکر بھی اس اجلاس میں کیا گیا ہے۔ انہوں نے گھوٹالوں اور پالیسی پیرا لائسس کی وجہ سے دنیا بھر کے سرمایہ کاروں میں بڑی مایوسی کی نشاندہی کی جس سے سرمایہ کاروں کا اعتماد کھونے کا بہت بڑا خطرہ ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ اب جب کہ ہندوستان کی معیشت مضبوط پوزیشن میں ہے، حکومت نے قرطاس ابیض  کی شکل میں پوری حقیقت کو ملک کے سامنے پیش کیا ہے۔

 

"ہندوستان ترقی کی نئی بلندیوں کو چھو رہا ہے"، وزیر اعظم نے سب کو یقین دلاتے ہوئے کہا کہ ملک دنیا کی تیسری سب سے بڑی معیشت بننے کی راہ پر گامزن ہے۔ انہوں نے اس اعتماد کا اظہار بھی کیا کہ موجودہ حکومت کی تیسری میعاد بہت بڑے فیصلوں کا مشاہدہ کرے گی اور ہندوستان کی ترقی کو ایک نئی تحریک دیتے ہوئے غربت کے خاتمے کے لیے نئی اسکیموں کے لیے پہلے سے ہی تیاریاں جاری ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ 15 لاکھ سے زیادہ لوگوں کی تجاویز پر غور کیا گیا ہے۔ خطاب کے اختتام پر، وزیر اعظم نے کہا، "نیا ہندوستان انتہائی رفتار کے ساتھ کام کرے گا۔ یہ مودی کی ضمانت ہے۔‘‘

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

Click here to read full text speech

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Lok Sabha polls: J&K's Baramulla sees highest voter turnout in over 4 decades

Media Coverage

Lok Sabha polls: J&K's Baramulla sees highest voter turnout in over 4 decades
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM Modi's interview to Bharat 24
May 20, 2024

PM Modi spoke to Bharat 24 on wide range of subjects including the Lok sabha elections and the BJP-led NDA's development agenda.