Share
 
Comments
Nine long years ago, it was decided in St. Petersburg that the target of doubling the tiger population would be 2022.We in India completed this target four years early: PM
Once the people of India decide to do something, there is no force that can prevent them for getting the desired results: PM Modi
It is possible to strike a healthy balance between development and environment: PM Modi

نئی دہلی،  23 جولائی 2019، وزیراعظم جناب نریندر مودی نے آج لوک  کلیان مارگ پر کل ہند ٹائیگر 2018 کے چوتھے سائیکل کے نتائج کا اجراء کیا۔

اپنے احاطہ کرنے، نمونے جمع کرنے اور کیمرا ٹریپنگ کی تعداد وغیرہ کے لحاظ سے شیروں کی گنتی کا یہ چوتھا سائیکل اور ان کی تعداد کااندازہ لگانے کا عمل دنیا کاجنگلی جانوروں کاسب سے بڑا سروے کہا جاسکتا ہے۔ اس سروے کے مطابق 2018 میں شیروں کی گنتی بڑھ کر 2967 ہوگئی ہے۔

 ہندوستان ہر چار سال کے بعد کل ہند پیمانے پر ٹائیگر اسٹیمیشن کاعمل انجام دیتا ہے۔ اس طرح کے تین تخمینے پہلے ہی 2010,2006 اور 2014 میں لگائے جاچکے ہیں۔

حکومت اور نیشنل ٹائیگر کنزرویشن اتھارٹی نے موسمیاتی تبدیلی کے برعکس اثرات کو کم کرنے کے لئے ایک اقتصادی مالی قدر وقیمت کے تعین کاعمل بھی انجام دیا ہے جس کاتعلق شیروں سے ہے۔ اس طرح کی دخل اندازیوں اورتخمینوں کو قانونی طور پر ٹائیگر کنزرویشن پلان کے تحت شروع کیا گیا ہے تاکہ اسے ادارہ جاتی شکل دی جاسکے۔

اس موقع پر اظہار خیال کرتے ہوئے  وزیراعظم جناب نریندر مودی نے ہندوستان کے لئے اسے ایک تاریخی کارنامہ قرار دیا۔ اور اس بات کا اعادہ کیا کہ وہ   ہندوستانی شیروں کی حفاظت کرنے کےتین عہد بستہ ہیں ۔ وزیراعظم نے اس حصول کے تئیں مختلف شیر ہولڈرس یعنی شراکت داروں کی تعریف کی جنہوں نے پوری جانفشانی اور رفتار کے ساتھ شیروں کی حفاظت کے لئے کام کیا۔ انہوں نے اسے سنکلپ  سدھی کی ایک بہترین مثال قرار دیا۔  انہو ں نے کہا کہ ایک بار جب ہندوستان کے لوگ کچھ کرنے کا فیصلہ کرلیں گے تو کوئی طاقت نہیں  کی ان نتائج حاصل کرنے سے انہیں روک سکے۔

وزیراعظم نے کہا کہ تقریباً 3ہزاروں شیروں کے ساتھ  ہندوستان آج ایک ایسا سب سے بڑاملک  بن گیا ہے جہاں شیروں کی محفوظ پناہ گاہ پوری طرح محفوظ ہیں۔ وزیراعظم جناب نریندر مودی نے زور دے کر کہا کہ آگے کاراستہ انتخابیت کی جگہ اجتماعیت کا ہے۔

جناب نریندرمودی نے زور دیتے ہوئے کہاکہ ماحولیات کے تحفظ کے لئے وسیع تر اور مجموعی کوشش ضروری ہے۔ انہوں نے  کہا کہ ماحولیات اور ترقی کے درمیان ایک صحت مند توازن قائم رکھنا ضروری ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہماری پالیسیوں میں، ہماری اقتصادیات میں ہم کو تحفظ کے بارے میں بات چیت میں تبدیلی کرنی ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہندوستان اپنے شہریوں کے لئے زیادہ گھر تعمیر کرے گا اور جانوروں کے لئے معیاری  پناہ گاہ  بنائے گا۔ ہندوستان ایک ایسا ملک ہے جہاں ایک مضبوط بحری معیشت ہوگی اور ساتھ ہی ساتھ ایک صحت مند بحری ماحول  ہوگا۔ وزیراعظم نے زور دیتےہوئے کہاکہ یہ توازن ہندوستان کو مضبوط  اور پائیدار اور جامع بنانے میں اہم کردار ادا کرے گا۔

انہوں نے اس اعتماد کااظہار کا کہ ہندوستان معاشی اور ماحولیات کے  اعتبار سے ایک خوشحال ملک بنے گا ۔ ہندوستان زیادہ سڑکیں بنائے گا اور ملک میں صاف ستھرے دریا ہوں گے ۔ اس کے علاوہ ہندوستان میں بہتر کنکٹی ویٹی ہوگی اور زیادہ سے زیادہ درخت بھی ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ 2014 میں 692محفوظ علاقے تھے مگر 2019 ان کی تعداد 860 سے زیادہ ہوگئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان ایندھن سے پاک اور قابل تجدید توانائی والی اپنی معیشت کو مضبوط  بنانے کے لئے ٹھوس کوشش کررہا ہے۔ انہوں نے بالترتیب ایل پی جی اور ایل ای ڈی بلب کے لئے اجولا اور اجالا جیسی  اسکیموں میں کی گئی پیش رفت کا ذِکر کیا۔

آخر میں وزیراعظم نے شیروں کے تحفظ کے لئے زیادہ کوششیں کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ اس موقع پر ماحولیات، جنگلات اطلاعات و نشریات کے مرکزی وزیر جناب پرکاش جاوڈیکر اور آب وہوا میں تبدیلی ماحولیات جنگلات کے وزیرمملکت بابل سپریو کے علاوہ جنگلات و ماحولیات کی وزارت کے سکریٹری جناب سی کے مشرا بھی موجود تھے۔

Click here to read full text speech

عطیات
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
'Howdy, Modi' event in Houston sold out, over 50,000 people register

Media Coverage

'Howdy, Modi' event in Houston sold out, over 50,000 people register
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM's departure statement ahead of his visit to France, UAE and Bahrain
August 21, 2019
Share
 
Comments

I will be visiting France, UAE and Bahrain during 22-26 August 2019.  

My visit to France reflects the strong strategic partnership, which our two countries deeply value, and share. On 22-23 August 2019, I would have bilateral meetings in France, including a summit interaction with President Macron and a meeting with Prime Minister Philippe. I would also interact with the Indian community and dedicate a memorial to the Indian victims of the two Air India crashes in France in the 1950s & 1960s.

Later, on 25-26 August, I will participate in the G7 Summit meetings as Biarritz Partner at the invitation of President Macron in the Sessions on Environment, Climate, Oceans and on Digital Transformation. 

India and France have excellent bilateral ties, which are reinforced by a shared vision to cooperate for further enhancing peace and prosperity for our two countries and the world at large. Our strong strategic and economic partnership is complemented by a shared perspective on major global concerns such as terrorism, climate change, etc.  I am confident that this visit will further promote our long-standing and valued friendship with France for mutual prosperity, peace and progress.

During the visit to the United Arab Emirates on 23-24 August, I look forward to discuss with His Highness the Crown Prince of Abu Dhabi, Sheikh Mohammed bin Zayed Al Nahyan, entire gamut of bilateral relations and regional and international issues of mutual interest.

I also look forward to jointly release the stamp to commemorate the 150th birth anniversary of Mahatma Gandhi along with His Highness the Crown Prince. It will be an honour to receive the ‘Order of Zayed’, the highest civilian decoration conferred by the UAE government, during this visit. I will also formally launch RuPay card to expand the network of cashless transactions abroad.

Frequent high-level interactions between India and UAE testify to our vibrant relations. UAE is our third-largest trade partner and fourth-largest exporter of crude oil for India. The qualitative enhancement of these ties is among one of our foremost foreign policy achievements. The visit would further strengthen our multifaceted bilateral ties with UAE.

I will also be visiting the Kingdom of Bahrain from 24-25, August 2019.  This would be the first ever Prime Ministerial visit from India to the Kingdom. I look forward to discussing with Prime Minister His Royal Highness Prince Shaikh Khalifa bin Salman Al Khalifa, the ways to further boost our bilateral  relations and share views on regional and international issues of mutual interest. I would also be meeting His Majesty the King of Bahrain Shaikh Hamad bin Isa Al Khalifa and other leaders.

I would also take the opportunity to interact with the Indian diaspora. I will be blessed to be present at the formal beginning of the re-development of  the temple of Shreenathji- the oldest in the Gulf region – in the wake of the auspicious festival of Janmashtami. I am confident that this visit would further deepen our relationship across the sectors.