Share
 
Comments

نئی دہلی،30/اگست۔ اسٹیج پر موجود کابینہ کے میرے ساتھی جناب شری پد یشو نائک جی، انعام پانے والے سبھی ساتھی، آیوش سیکٹر سے جڑے پیشہ ور افسران، خواتین و حضرات!

ملک میں فٹ انڈیا موومنٹ کی شروعات کے اگلے ہی دن آیوش اور یوگ سے جڑے پروگرام میں آنا ایک مثالی اتفاق ہے۔ آیوش اور یوگ، فٹ انڈیا موومنٹ کے بہت اہم حصے دار ہیں۔

ساتھیو! آج یہاں تین پروگرام ہوئے ہیں، دو ہماری روایت، ہماری وراثت کے انعام اور عزت افزائی سے جڑے ہیں۔ اور ایک ہیلتھ کیئر بنیادی ڈھانچے سے جڑا ہے۔ آج ہریانہ میں 10 آیوش ہیلتھ اینڈ ویلنیس سینٹرس کو لانچ کیا گیا ہے۔ اس کے لئے میں ہریانہ کے لوگوں کو بہت بہت مبارکباد دیتا ہوں۔

مجھے یوگ کرنے والوں، یوگ کی خدمت کرنے والوں، دنیا بھر میں یوگ کی تشہیر کرنے والے ساتھیوں اور اداروں کو انعام سونپنے کا موقع بھی ملا ہے، ان میں اٹلی اور جاپان کے بھی ساتھی ہیں، جو دہائیوں سے یوگ کی تشہیر میں لگے ہوئے ہیں۔ انٹونیٹا روجز جی گزشتہ 4 دہائیوں سے پورے یورپ میں سرو یوگ انٹرنیشنل کے ذریعے یوگ کی تشہیر میں لگی ہوئی ہیں۔ اسی طرح جاپان یوگ نکیتن کے پورے جاپان میں ہزاروں یوگ مراکز ہیں۔ یہ ادارہ بھی گزشتہ 4 دہائیوں سے جاپان کو یوگ سے مرض کو دور رکھنے کا عظیم کام کررہا ہے۔ انعام پانے والے سبھی ساتھیوں کو میں مبارکباد دیتا ہوں اور ان کی کامیابی کے لئے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

تھوڑی دیر پہلے آیوش نظام کو پراثر کرنے والی 12 ہستیوں کے اعزاز میں ڈاک ٹکٹ بھی جاری کیا گیا ہے۔ یہ وہ ساتھی ہیں جنھوں نے اپنی پوری زندگی لوگوں کے علاج میں لگادی۔

کسی نے یوگ کو ذریعہ بنایا تو کسی نے آیوروید کو ذریعہ بنایا۔

کسی نے یونانی طریقہ علاج سے خدمت کی تو کسی نے ہومیوپیتھی سے لوگوں کی زندگی کو امراض سے پاک بنادیا۔

میں ڈاک محکمہ کو بھی مبارکباد دوں گا، کیونکہ ہندوستان میں ایک ہی سیٹ میں 12 ڈاک ٹکٹ بہت ہی کم جاری ہوئے ہیں۔ مجھے یقین ہے کہ یہ پوسٹر اسٹامپ آیوش کے تئیں ملک کے لوگوں میں نئی سوچ کو فروغ دینے میں مددگار ثابت ہوگا۔

بھائیو اور بہنو،

آج جو ڈاک ٹکٹ جاری کئے گئے ہیں ان میں ایک دنشا مہتا جی کے نام پر بھی ہے۔ دنشا مہتا گاندھی جی کے معالج بھی تھے اور نیچروپیتھی کے وقف کارکن تھے۔

گاندھی جی کہتے تھے کہ ’’قدرتی علاج زندگی جینے کا طریقہ ہے، کسی علاج کا طریقہ نہیں۔‘‘ انھوں نے تاعمر اس بات پر عمل کیا کہ قدرتی نظام علاج کو زندگی کی بنیاد بنایا۔

ساتھیو، گاندھی جی نے جو سیکھا تھا اس کے پیچھے ہندوستان کے Preventive (تدارک) اور Curative Healthcare سے جڑی ایک پراثر ریاست رہی ہے۔ ہمارے پاس ہزاروں سال پرانا لٹریچر ہے۔ ویدوں میں سنگین نوعیت کی بیماریوں سے جڑے علاج کا ذکر ہے، لیکن بدقسمتی سے ہم اپنی اس قدیم ریسرچ کو، علم کے اس خزانے کو جدید تکنیک سے جوڑنے میں اتنے کامیاب نہیں ہوپائے۔

اسی صورت حال کو گزشتہ 5 پانچ سال سے ہم نے بدلنے کی کوشش کی ہے۔ اسی کے تحت آیوش کو ہندوستان کے ہیلتھ کیئر نظام کا اہم حصہ بنانے پر زور دیا جارہا ہے۔

مجھے بتایا گیا ہے کہ آیوش خاندان میں سووا رگپا نظام کو شامل کیا گیا ہے۔ آیوروید، یوگ اور نیچروپیتھی، یونانی، سدھا اور ہومیوپیتھی کے بعد ’سووا رِگپا‘ آیوش خاندان کا چھٹا ممبر ہوگیا ہے۔ اس کے لئے آپ کو بہت بہت مبارکباد۔

بھائیو اور بہنو،

اگر ہندوستان کے ہیلتھ کیئر نظام کو تبدیل کرنا ہے، صحت مند سماج کی تعمیر کرنی ہے تو ہمیں مجموعی سوچ کے ساتھ کام کرنا ہوگا۔ روایتی اور جدید علاج کی مشترکہ طاقت کو مضبوط کرنا ہوگا۔ آیوش اور جدید ہیلتھ کیئر کا ایک ساتھ، یکساں ترقی ہوگی، تبھی بہتر صحت کا حل ہم تیار کرپائیں گے۔

ساتھیو، آیوشمان بھارت یوجنا اسی سوچ کا نتیجہ ہے۔ اسی میں Preventive ہیلتھ کیئر کو دھیان میں رکھتے ہوئے صحت اور ویلنیس سینٹر کھولے جارہے ہیں اور دوسری طرف سنگین نوعیت کی بیماری کےمفت علاج کے لئے پی ایم جن آروگیہ یوجنا چلائی جارہی ہے۔

ہیلتھ اینڈ ویلنیس سینٹر، Preventive اور سستی حفظان صحت کا یہ ایک انوکھا اور مثالی ماڈل ہے۔ ان سینٹروں میں روک تھام کے بھی طریقے ہیں اور علاج کا بھی انتظام ہے۔

ساتھیو،

جب ہم ملک میں ڈیڑھ لاکھ ہیلتھ اینڈ ویلنیس سینٹر کھول رہے ہیں تو آیوش کو بھولے نہیں ہیں۔ ملک بھر میں ساڑھے 12 ہزار آیوش سینٹر بنانے کا بھی ہدف ہے، جس میں سے آج 10 آیوش ہیلتھ اینڈ ویلنیس سینٹرس کا افتتاح ہوا ہے۔ ہماری کوشش ہے کہ ایسے 4 ہزار آیوش سینٹر اسی سال تیار ہوجائیں۔

جہاں تک قابل استطاعت کی بات ہے تو آیوشمان بھارت نے غریب سے غریب شخص کو بہتر صحت کا یقین دلایا ہے۔ آیوشمان بھارت یوجنا کے تحت جتنے مریضوں کو اب تک مفت علاج حاصل ہوا ہے وہ اگر اس کے دائرے میں نہ ہوتے تو انھیں 12 ہزار کروڑ روپے سے زیادہ خرچ کرنے پڑتے۔ ایک طرح سے ملک کے لاکھوں غریب کنبوں کے 12 ہزار کروڑ روپے کی بچت ہوئی ہے۔

آپ تصور کرسکتے ہیں کہ جب آیوشمان بھارت جیسی یوجنا نہیں تھی، تب غریبوں کو علاج کے لئے کتنی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا تھا۔ علاج کا خرچ انھیں اور غریب بنادیتا تھا۔

بھائیو اور بہنو،

بچاؤ اور قابل استطاعت کے ساتھ ساتھ ملک میں ضروری بنیادی ڈھانچے پر تیزی سے کام چل رہا ہے۔ دو دن پہلے ہی سرکار نے ملک بھر میں 75 نئے میڈیکل کالج بنانے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔ ملک کے ہر ضلع میں ایک میڈیکل کالج بنانے کے ہدف کی طرف یہ ایک اور بڑا قدم ہے۔

اس سے سنگین نوعیت کی بیماریوں کے علاج کے لئے سہولیات میں اضافہ تو ہوگا ہی، ساتھ ہی ایم بی بی ایس کی تقریباً 16000 سیٹوں میں بھی اضافہ ہوگا۔ حال میں بنا نیشنل میڈیکل کمیشن قانون بھی ملک میں میڈیکل ایجوکیشن اور اس سے جڑے بنیادی ڈھانچے کو مضبوط کرنے میں اہم رول نبھانے والا ہے۔

ساتھیو، صرف جدید ادویات ہی نہیں، آیوش کی تعلیم میں بھی زیادہ اور بہتر پروفیشنلز آئے، اس کے لئے ضروری اصلاح کی جارہی ہے۔ خاص طور پر جس طرح ٹیکنالوجی کا استعمال کیا جارہا ہے وہ آیوش کو مستقبل کے لئے تیار کرنے میں بہت مددگار ثابت ہوگا۔ آیوش ڈگری کا نظریہ بھی قابل تعریف ہے، اس سے آیوش سیکٹر سے جڑے متعدد Silos کو دور کرنے میں مدد ملے گی۔

بھائیو اور بہنو،

آیوش کا، میڈیکل کا جو یہ جدید ڈھانچہ تیار ہورہا ہے اس کے فائدے بھی کافی ہیں۔ ہیلتھ کیئر کے ساتھ ساتھ یہ ہندوستان میں روزگار پیدا کرنے کا بہت بڑا ذریعہ ثابت ہورہا ہے۔ خاص طور پر چھوٹے چھوٹے گاؤں، قصبوں، ٹیئر 2، ٹیئر 3 شہروں کے نوجوان ساتھیوں کو میڈیکل اور پیرا میڈیکل ایجوکیشن گھر کے پاس ہی ملنے کا امکان بنی ہے۔

نئے اسپتال بنانے سے، میڈیکل سے جڑے ایک پورے ایکو سسٹم وہاں تیار ہورہا ہے۔ ان میں کم پڑھے لکھے نوجوانوں سے لے کر ڈگری، ڈپلوما رکھنے والے نوجوان ساتھیوں کو بھی روزگار کے نئے مواقع مل رہے ہیں۔

بھائیو اور بہنو،

ساتھیو، آج جب ہم 50 کھرب ڈالر کی معیشت کے ہدف کو لے کر چل رہے ہیں تب آیوش کا بہت بڑا رول رہنے والا ہے۔ آنے والے کچھ سالوں میں ہندوستان میں پریونٹیو ہیلتھ کیئر مارکیٹ کا بہت پھیلاؤ ہونے والا ہے۔ یہ بہت بڑا موقع ہے۔

ہمیں اپنے پریونٹیو ہیلتھ کیئر سسٹم کو پوری دنیا کے لئے ایک پرکشش برانڈ کے طور پر فروغ دینا ہوگا۔ دنیا کے 17 ملکوں کے ساتھ ہم نے سمجھوتے کئے ہوئے ہیں۔ ابھی ہمیں اس میں اور رفتار لانے کی ضرورت ہے۔

ساتھیو، یوگ تو آج پوری دنیا میں زندگی کا اہم حصہ ہوچکا ہے۔ گزشتہ پانچ سالوں میں یوگ کے بین الاقوامی دن کے موقع پر دنیا بھر میں جو جوش یوگ کے لئے دیکھا گیا ہے وہ بہت پراثر ہے۔ آج یوگ ویلنیس کے ساتھ ساتھ دنیا بھر کو ہندوستان کے ساتھ جوڑنے کا بہت بڑا وسیلہ بن رہا ہے۔

اب ہمیں یوگ کے علاوہ آیوش کی دوسری اقسام کو بھی دنیا بھر میں پہنچانے کے لئے کوشش کرنا ہے۔

ساتھیو، اپنی پرانی روایات کو بھلا دینا اور پھر کوئی دوسرا بتائے تو اسے نئے سرے سے سیکھنا، اس عادت کو بھی ہمیں بدلنا ہوگا۔

میں آپ سامنے ایک مثال پیش کرتا ہوں۔

آج ہم دیکھتے ہیں کہ جس کھانے کو ہم نے چھوڑ دیا اس کو دنیا نے اپنانا شروع کردیا۔ جو جوار، راگی، کودو، ساما، باجرا، سانوا، ایسے متعدد اناج کبھی ہمارے کھانے پینے کا حصہ ہوا کرتے تھے، لیکن آہستہ آہستہ یہ ہماری تھالیوں سے غائب ہوگئے۔ اس مختلف قسم کے اناجوں پر غریبی کا ٹیگ لگادیا گیا۔

اب ہم دیکھ رہے ہیں کہ اس تغذیہ بخش غذا کی پوری دنیا میں مانگ ہے۔ آج کل جب ہم آن لائن شاپنگ پورٹل پر جاتے ہیں تو اکثر حیران ہوجاتے ہیں۔ جس اناج کو کوئی مفت میں لینے کے لئے بھی تیار نہیں ہوتا تھا وہ سیکڑوں روپے کلو کے حساب سے فروخت ہورہا ہے۔

ساتھیو، اب وقت آگیا ہے کہ تغذیہ کے اس خزانے کو پھر سے بھرا جائے۔ ملک کو باجرا انقلاب پر کام کو بڑھانا ہوگا۔ کسان باجرا اگائیں اور ڈبہ بند خوراک سے جڑی ہماری صنعت ان سے ایسے پرکشش پروڈکٹ تیار کریں جو ہر پیڑھی کو پسند بھی آئے اور ان کے کھانے پینے کا حصہ بھی بنے۔

اہم بات یہ ہے کہ جوار ہر طرح کی مٹی میں اگتے ہیں اور پانی بھی کم لیتے ہیں۔ یعنی بھارت کے پاس ایک بہت بڑا فائدہ ہے۔ ہم پوری دنیا کے لئے جوار کی پیدار کرسکتے ہیں۔ اس سے پریونٹیو ہیلتھ کیئر کے برانڈ کی شکل میں ہندوستان کا نام بھی روشن ہوگا، انسانیت کی خدمت بھی ہوگی اور کسان کی آمدنی میں بھی اضافہ ہوگا۔

 

بھائیو اور بہنو،

آیوش کا ایک اور پہلو ہے جس پر ہمیں اور سنجیدگی سے کام کرنے کی ضرورت ہے۔ ہندوستان میں میڈیکل سیاحت لگاتار بڑھ رہی ہے، لیکن ابھی بھی اس میں بہت زیادہ اسکوپ ہے۔ میڈیکل اور میڈیٹیشن کے لئے جو بھی ضروری بنیادی ڈھانچہ ہے، اس کو ریاستی سرکاروں کی مدد سے تیار کیا جارہا ہے۔

میری آیوش وزارت سے خصوصی طور پر اپیل ہوگی کہ الگ الگ وزارتوں اور محکموں سے اس بارے میں رابطہ کرتے رہیں۔ میڈیکل ٹورازم کو ہمیں ملک کے ہر حصے میں لے جانا ہے، خاص طور پر شمال مشرقی ریاستوں میں اس کے لئے بہت امکانات ہیں۔

ساتھیو،

یہ تمام کوششیں جب ہم اجتماعی طور سے کریں گے تو ہمارے روایتی نظام علاج سے اکیسویں صدی کے ہندوستان کی، نئے ہندوستان کی صحت بھی بنے گی اور خوش حالی بھی آئے گی۔ آخر میں پھر ایک بار سبھی انعام پانے والوں کو مبارکباد۔

آپ ملک اور دنیا کو فٹ بنائے رکھنے کے لئے ایسے ہی کام کرتے رہیں، اسی امید کے ساتھ آپ کا بہت بہت شکریہ۔

شکریہ۔

20 تصاویر سیوا اور سمرپن کے 20 برسوں کو بیاں کر رہی ہیں۔
Mann KI Baat Quiz
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
India Inc raised $1.34 billion from foreign markets in October: RBI

Media Coverage

India Inc raised $1.34 billion from foreign markets in October: RBI
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
It is time to convert fintech initiatives into a fintech revolution: PM Modi
December 03, 2021
Share
 
Comments
“last year, in India, mobile payments exceeded ATM cash withdrawals for the first time”
“Transformational initiatives under Digital India have opened doors for innovative Fintech solutions to be applied in governance”
“Now it is time to convert these fintech initiatives into a fintech revolution. A revolution that helps to achieve financial empowerment of every single citizen of the country”
“Trust means that you need to ensure that the interests of people are secured. Fintech innovation will be incomplete without fintech security innovation”
“Our Digital Public Infrastructure solutions can improve the lives of citizens around the world”
“GIFT City is not merely a premise, it represents India. It represents India’s democratic values, demand, demography & diversity. It represents India’s openness to ideas, innovation & investment”
“Finance is the life blood of an economy and technology is its carrier . Both are equally important for achieving Antyodaya

Excellencies,

Distinguished colleagues,

My fellow citizens from the Tech and Finance world, Tens of thousands of Participants from over 70 countries,

Namaskar!

Friends,

I am delighted to inaugurate the first 'Infinity Forum' and welcome you all. 'Infinity Forum' represents the immense possibilities that Fintech has in India. It also shows the huge potential for India's Fintech to provide benefits to the entire world.

Friends,

The history of currency shows tremendous evolution. As humans evolved, so did the form of our transactions. From barter system to metals, from coins to notes, from cheques to cards, today we have reached here. Earlier developments used to take decades to spread across the world but not any more in this era of globalisation .Technology is bringing a big shift in the world of finance. Last year, in India, mobile payments exceeded ATM cash withdrawals for the first time. Fully digital banks, without any physical branch offices, are already a reality and may become common-place in less than a decade.

Friends,

India has proved to the world that it is second to none when it comes to adopting technology or innovating around it. Transformational initiatives under Digital India have opened doors for Fintech innovations to be applied in governance. Technology has also catalyzed financial inclusion. From less than 50% Indians having bank accounts in 2014, we have almost universalized it with 430 million Jan Dhan accounts in the last 7 years. So far, 690 million RuPay cards have been issued. RuPay cards clocked 1.3 billion transactions last year. UPI processed around 4.2 billion transactions in just last month.

Almost 300 million invoices are uploaded on the GST portal every month. More than 12 billion US dollars worth payment is done through the GST portal alone every month. Despite the pandemic, about 1.5 million railway tickets get booked online everyday. Last year, FASTag processed 1.3 billion seamless transactions. PM Svanidhi is enabling access to credit for small vendors across the country. e-RUPI has enabled targeted delivery of specified services without leakages; I can go on and on, but these are just a few examples of the scale & scope of Fintech in India.

Friends,

Financial inclusion is the driver of Fintech Revolution. Fintech is resting on 4 pillars; income, investments, insurance, and institutional credit. When income grows, investment becomes possible. Insurance coverage enables greater risk taking ability and investments. Institutional credit gives wings for expansion. And we have worked on each of these pillars. When all these factors come together, you suddenly find so many more people participating in the financial sector. The large base becomes the perfect springboard for Fintech innovations. Fintech industry in India is innovating to enhance access to finance and the formal credit system to every person in the country. Now it is time to convert these fintech initiatives into a fintech revolution. A revolution that helps to achieve financial empowerment of every single citizen of the country.

Friends,

As we see the widening reach of fintech, there are considerations that need attention. Fintech industry has achieved huge scale, and scale means people from all walks of life as customers. This fintech acceptability among the masses has a unique feature. That feature is trust. The common Indian has shown immense trust in our Fintech ecosystem by embracing digital payments and such technologies! This trust is a responsibility. Trust means that you need to ensure that the interests of people are secured. Fintech innovation will be incomplete without fintech security innovation.

Friends,

We believe in sharing our experiences and expertise with the world and learning from them as well. Our Digital Public Infrastructure solutions can improve the lives of people around the world. Tools like UPI and RuPay provide an unparalleled opportunity for every country. An opportunity to provide a low cost and reliable 'real time payment system' as well as a 'domestic card scheme' and 'fund remittance system'.

Friends,

GIFT City is not merely a premise, It represents the promise of India. It represents India's democratic values, demand, demography & diversity. It represents India's openness to ideas, innovation & investment. GIFT City is a gateway to the global fintech world. (IFSC) at GIFT City was born out of the vision that finance combined with technology would be an important part of India's future development. Our aim is to provide the best International Financial Services not just for India but for the World.

Friends,

Finance is the life blood of an economy and technology is its carrier. Both are equally important for achieving ''Antyodaya and Sarvodaya''. Our flagship Infinity Forum is part of our endeavor to bring together all key stakeholders of the global Fintech Industry to explore the limitless future of the industry. I remember the conversation I had with Mr Mike Bloomberg on this subject when we last met. And I thank the Bloomberg group for their support. Infinity forum is a forum of belief, belief in the spirit of innovation and the power of imagination. Belief in the energy of youth and their passion for change. Belief in making the world a better place. Let us together, explore and advance innovative ideas in Fintech to solve the most pressing issues emerging globally.

Thank You!