Share
 
Comments
PM Narendra Modi flags off e-bus for Parliament
"Mission Innovation" launched jointly by US, France & India to work towards development of green technologies #COP21
Creation of the International Solar Alliance of countries blessed with abundant sunlight a significant initiative, says PM Modi #COP21
PM Modi exhorts entrepreneurs to work towards producing cheap and efficient electric batteries in India

The Prime Minister, Shri Narendra Modi, today attended a function at Parliament House, for the unveiling and demonstration of a retrofit electric bus. The bus has been converted from a diesel bus to a battery-operated electric bus. This is an initiative of the Ministry of Road Transport and Highways, to provide clean, pollution-free transport for Members of Parliament.

The Prime Minister briefly visited the bus, and handed over the key of the bus to the Speaker of the Lok Sabha, Smt. Sumitra Mahajan.

Speaking on the occasion, the Prime Minister said that the environment had been a topic of discussion for long, but in recent times, the impact of damage to the environment is being felt by the common man.

The Prime Minister recalled the recent CoP-21 Summit at Paris, and talked about two significant initiatives taken there. One of these was "Mission Innovation," launched jointly by US, France and India, with the help of the Bill and Melinda Gates Foundation, to work towards development of green technologies. The other was the creation of the International Solar Alliance of countries blessed with abundant sunlight. The Headquarters of this alliance will be in Delhi, the Prime Minister said.

In this context, the Prime Minister appreciated the efforts of the Union Minister for Road Transport and Highways, Shri Nitin Gadkari, in the launch of this bus. The Prime Minister exhorted entrepreneurs to work towards producing cheap and efficient electric batteries in India, which could spur a drive towards clean public transportation.

Speaker of the Lok Sabha Smt. Sumitra Mahajan, Union Ministers Shri Nitin Gadkari, Shri Venkaiah Naidu, Shri Prakash Javadekar, and a large number of MPs were present on the occasion.

Click here to read full text speech

'من کی بات ' کے لئے اپنے مشوروں سے نوازیں.
Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
Agri, processed food exports buck Covid trend, rise 22% in April-August

Media Coverage

Agri, processed food exports buck Covid trend, rise 22% in April-August
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
وزیراعظم کاامریکہ کے دورہ پر روانہ ہونے سے قبل بیان
September 22, 2021
Share
 
Comments

میں ریاست ہائے متحدہ امریکہ   یو ایس اے کے صد ر عزت مآب جوبائیڈن کی دعوت پر 22 تا 25 ستمبر 2021 امریکہ کا دورہ کروں گا۔

اپنے دورہ کے دوران میں صدربائیڈن کے ساتھ بھارت- امریکہ جامع عالمی اسٹراٹیجک ساجھیداری کا جائزہ لوں گا اور باہمی مفاد کے علاقائی اور عالمی امور پر تبادلہ  خیال کروں گا۔ میں دونوں ملکوں کے درمیان خاص طور پر سائنس اور ٹکنولوجی کے شعبے میں اشتراک کے لئے امکانات تلاش کرنے کی غرض سے نائب صدر کملا ہیرس کے ساتھ ملاقات کرنے کا بھی منتظر ہوں۔

میں ، صدر جوبائیڈن، آسٹریلیا کے وزیراعظم  اسکاٹ موریسن اور جاپان کے وزیراعظم یوشی ہیدے سوگا کے ہمراہ کوویڈ لیڈران کی اوّلین بنفس نفیس سربراہ کانفرنس میں شرکت کروں گا۔ اس سربراہ کانفرنس سے اس سال مارچ میں منعقدہ ورچول سربراہ کانفرنس کے نتائج کا جائزہ لینے اور بھارت۔ بحرالکاہل خطے کے لئے ہمارے مشترکہ ویژن پر مبنی مستقبل کے رابطوں کے لئے ترجیحات کی نشاندہی کرنے کا موقع فراہم ہوگا۔

میں آسٹریلیا کے وزیراعظم اسکاٹ موریسن اور جاپان کے وزیراعظم سوگا کے ساتھ بھی ملاقات کروں گا جس کے دوران ان کے متعلقہ ممالک کے ساتھ مستحکم دوطرفہ تعلقات اور علاقائی اور عالمی  امور پر ہمارے مفید تبادلوں کو جاری رکھنے کا جائزہ لیا جائے گا۔

میں اقوام متحدہ جنرل اسمبلی  سے خطاب کے ساتھ اپنے دورے کا اختتام کروں گا۔ اس خطاب میں کووڈ-19 عالمی وباد سمیت فوری کارروائی کا تقاضہ کرنے وا لی چنوتیوں، انسداد دہشت گردی کی ضرورت، آب و ہوا کی تبدیلی اور دیگر اہم امور پر توجہ مرکوز کی جائے گی۔

 امریکہ کے میرے اس دورہ کی بدولت امریکہ کے ساتھ جامع عالمی اسٹراٹیجک ساجھیداری کو مستحکم کرنے، ہمارے اسٹراٹیجک ساجھیداروں- جاپان اور آسٹریلیا کے ساتھ تعلقات کو تقویت بہم پہنچانے اور اہم عا لمی امور پر ہمارے تال میل اور اشتراک کو آگے لے جانے کا ایک موقع فراہم ہوگا۔.