Share
 
Comments

Dear Friends,

Today marks the culmination of a long campaign for 2014 Lok Sabha Elections. I addressed my final rally in Ballia, the land of the hero of 1857 Mangal Pandey, in Eastern UP.

Since September 13th 2013 when the responsibility of being the BJP’s PM candidate was given to me, I have been travelling across the length and breadth of India. Friends in the Party told me that I have addressed rallies and programmes in almost 5800 locations, covering a distance of over 3 lakh kilometers. The number of rallies I addressed in this campaign season is 440, including the Bharat Vijay Rallies that I began with the blessings of Maa Vaishno Devi on 26th March 2014.

Extensive, Innovating and Satisfying: The Story of 2014 Campaign

The campaign was a wonderful opportunity to once again witness India’s celebrated diversity, the vibrancy of the people and the beauty of our culture. Working for the Organisation I have travelled across India in the past but this time it was very different. 

The unprecedented blessings I have received from the people have been very humbling. Conventional wisdom would suggest such a campaign would be tiring but I am experiencing a deep satisfaction and freshness that one would feel after a long and elaborate Sadhna. Through the campaign I got to worship the Janata Janardan.  

When I look back at the entire campaign, three words come to my mind - Extensive, Innovative and Satisfying. 

Throughout our campaign, we took agenda of development and good governance to every corner of India. People are tired of false promises, corruption and the same old tape-recorded messages ridden with dynastic references only to hide one’s own failure. They want a better tomorrow and NDA is the only alliance that can provide this change.

Nothing made me more glad than seeing the enthusiasm of our Karyakartas! They have worked tirelessly throughout the campaign. Seeing a rally on TV and social media is one experience but working on the ground is something out of the world! We do not view campaigns through the limited prism of electoral victory or defeat. A campaign becomes a life changing experience for the Karyakartas. It is a golden opportunity to strengthen and expand the Organisation and increases the bond between the people and the Karyakartas. Our Karyakartas went door-to-door and spread the Party’s message and we are very proud of them. Our campaign is the story of the hardwork of each and every BJP worker, who has selflessly set out to create a better India for future generations. 

In the entire campaign we received the continuous support and guidance of the leaders of the Party. We derive immense strength and inspiration from the solid experience and wisdom of our leaders and their active participation in the campaign gave us an impetus and boosted the confidence of Karyakartas. 

This campaign will be remembered for path breaking innovation. In a polity where political campaigns were more about one-way communication, our Chai Pe Charcha was an innovative break from the past.  Charchas were held in over 4,000 locations across India. During these Charchas, I sat for hours and heard the views of the people and then answered their questions on a wide range of issues. One of the Charchas was held in Wardha (Maharashtra) where I met families of farmers who had committed suicide. I was really saddened. After so many years of freedom, our farmers are still ending their lives even as the present Government watches on silently. For how long can we let this go on?

Innovation was seen in the Bharat Vijay 3D rallies. In one month I addressed 12 rounds of 3D rallies covering 1350 locations. The response to the 3D rallies was phenomenal. So many youngsters wrote to me on mail and social media ‘thanking’ me for coming to their village. People told our Karyakartas- we want to meet Modi ji on stage…such was the buzz these rallies generated.

For the first time in the history of Indian electioneering an exclusive volunteer portal was set up in the form of India272+ (http://www.india272.com). All one had to do was log in and begin work either online or by participating in the onground activities. Through India272+ we sought inputs from our volunteers. I was truly enriched by their ideas and contribution. Such forums have the potential to revolutionize campaigning and create a paradigm shift in interfacing and mobilizing well-wishers.

It was amazing how all forms of social media were innovatively used throughout the campaign. This includes the ever popular WhatsApp- a lot of friends showed me innovative WhatsApp messages, campaign slogans and infograhpics that were hugely popular. After casting my vote I shared my own Selfie and called for your Selfies. This generated tremendous buzz on social media. I also had a free and frank interaction with several friends from the print and electronic media. I was interviewed by the Hindi, Regional and English media.

I cannot forget the affection I have received in the last eight months. The events of Patna will remain etched in my memory- there were live bombs on one side but the resolve of the people prevailed. Nobody left the venue of the rally. I had a clear message that day that I repeated often during the campaign- we can decide whether we want to fight each other or we want to unite to fight poverty? The former will lead us nowhere while the latter will take our Nation to greater heights.

Most importantly I wish to thank the people of India who joined our rallies, 3D events and Charchas in large numbers. People cutting across all age groups and transcending barriers of caste, creed or religion joined us. I often said that Narendra Modi or any one else is not fighting these elections. The people of India have taken these elections on their shoulders. Each and every citizen of India has become a driving force of change.

In most places where I addressed rallies, it was very hot yet people came in record numbers. A few days ago when I was in Visakhapatnam, it suddenly started raining during the rally. Yet the people remained. No words will be able to convey my gratitude to the people. I assure the people of India that I will repay this overwhelming affection with unprecedented development that will lay the foundations of a strong India.

The campaign has ended today but one phase of the Elections remains. I urge all those voting in the final phase to vote in record numbers, especially the youth. Please go to vote, take your family and friends to vote. Every vote matters! 

As I travelled across India I could not help but think- there is something in this soil that makes India special. History is full of examples of how our land has shown the way to the world and today once again, our destined role of a Jagad Guru calls us. Let us rise to the occasion and create a strong, developed & inclusive India that will show the way to the world. 

Yours,

Narendra Modi 

 

Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
'Little boy who helped his father at tea stall is addressing UNGA for 4th time'; Democracy can deliver, democracy has delivered: PM Modi

Media Coverage

'Little boy who helped his father at tea stall is addressing UNGA for 4th time'; Democracy can deliver, democracy has delivered: PM Modi
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
پختہ عزم اور ترغیبات سے اصلاحات
June 22, 2021
Share
 
Comments

کووڈ-19 وبائی مرض پالیسی بنانے کے معاملے میں پوری دنیا کی حکومتوں کے لیے نئے چیلنجز لیکر آیا ہے۔ بھارت بھی اس سے مستثنیٰ نہیں ہے۔ پائیداری کو یقینی بناتے ہوئے، عوامی فلاح و بہبود کے لیے مناسب وسائل کا انتظام کرنا سب سے بڑا چیلنج ہے۔

پوری دنیا میں مالی بحران کے اس تناظر میں، کیا آپ کو معلوم ہے کہ ہندوستانی ریاستیں 21-2020 میں زیادہ قرض لینے میں کامیاب رہیں؟ شاید یہ جان کر آپ کو خوشگوار حیرت ہوگی کہ ریاستیں 21-2020 میں اضافی 1.06 لاکھ کروڑ روپے اکٹھا کرنے میں کامیاب رہیں۔ وسائل کی دستیابی میں یہ قابل قدر اضافہ مرکز اور ریاست کے درمیان ’بھاگیداری‘ کی وجہ سے ممکن ہو پایا۔

ہم نے جب کووڈ-19 وبائی مرض کے جواب میں اپنی اقتصادی پالیسی بنائی، تو ہم اس بات کو یقینی بنانا چاہتے تھے کہ ہمارا یہ حل ’ایک ہی سائز سب کے لیے فٹ آتا ہے‘ والے ماڈل کی پیروی نہ کرے۔ بر اعظم کے طول و عرض کے حامل ایک وفاقی ملک کے لیے، ریاستی حکومتوں کے ذریعے اصلاحات کے فروغ کے لیے قومی سطح پر ایسی کوئی پالیسی تیار کرنا واقعی میں چیلنج بھرا ہے۔ لیکن، ہمیں اپنی وفاقی جمہوریہ کی مضبوطی پر اعتماد تھا اور ہم مرکز اور ریاست کے درمیان بھاگیداری کے جذبہ سے اس راستے پر آگے بڑھے۔

مئی 2020 میں، آتم نربھر بھارت پیکیج کے حصہ کے طور پر، حکومت ہند نے اعلان کیا کہ ریاستی حکومتوں کو 21-2020 کے لیے اضافی قرض لینے کی اجازت دی جائے گی۔ جی ایس ڈی پی سے 2 فیصد زیادہ کی اجازت دی گئی، جس میں سے ایک فیصد کو مخصوص اقتصادی اصلاحات کے نفاذ سے مشروط کر دیا گیا تھا۔ ہندوستانی عوامی معیشت میں اصلاح کی یہ پہل نایاب ہے۔ اس کے تحت ریاستوں کو اس بات کے لیے آمادہ کیا گیا کہ وہ اضافی رقم حاصل کرنے کے لیے ترقی پسند پالیسیاں اختیار کریں۔ اس مشق کے نتائج نہ صرف حوصلہ افزا ہیں، بلکہ اس خیال آرائی کے برعکس بھی ہیں کہ ٹھوس اقتصادی پالیسیوں پر عمل کرنے والے محدود ہیں۔

چار اصلاحات جن سے اضافی قرض لینے کو جوڑا گیا (جس میں سے ہر ایک کے ساتھ جی ڈی پی کا 0.25 فیصد جوڑا گیا تھا) اس کی دو خصوصیات تھیں۔ پہلی، اصلاحات میں سے ہر ایک کو عوام، خاص طور سے غریبوں، کمزوروں، اور متوسط طبقہ کی زندگی کو بہتر بنانے سے جوڑا گیا تھا۔ دوسری، انہوں نے مالی استحکام کو بھی فروغ دیا۔

’ایک ملک ایک راشن کارڈ‘ کی پالیسی کے تحت پہلی اصلاح میں ریاستی حکومتوں کو یہ یقینی بنانا تھا کہ قومی غذائی تحفظ قانون (این ایف ایس اے) کے ےتحت ریاست کے تمام راشن کارڈوں کو فیملی کے تمام ممبران کے آدھار نمبر سے جوڑا جائے اور مناسب قیمت والی تمام دکانوں پر الیکٹرانک پوائنٹ آف سیل ڈیوائسز ہوں۔ اس کا بنیادی فائدہ یہ ہے کہ مہاجر کارکن اپنا غذائی راشن ملک میں کہیں سے بھی حاصل کر سکتے ہیں۔ شہریوں کو ملنے والے ان فوائد کے علاوہ، فرضی کارڈ اور ڈوپلیکیٹ ممبران کے ختم ہونے سے بھی مالی فائدہ ہوا۔ 17 ریاستوں نے اس اصلاح کو مکمل کر لیا اور انہیں 37600 کروڑ روپے کا اضافی قرض فراہم کیا گیا۔

دوسری اصلاح، جس کا مقصد کاروبار میں آسانی کو بہتر کرنا تھا، کے تحت ریاستوں کو یہ یقینی بنانا تھا کہ 7 قوانین کے تحت کاروبار سے متعلق لائسنس کی تجدید خود کار، آن لائن اور معمولی فیس کی ادائیگی  پر کی جائے۔ دوسری شرط تھی کمپیوٹر کے ذریعے اچانک جانچ کا نظام نافذ کیا جائے  اور جانچ سے قبل نوٹس  دیا جائے تاکہ مزید 12 قوانین کے تحت ہراسانی اور بدعنوانی کو کم کیا جا سکے۔ اس اصلاح سے (19 قوانین کا احاطہ کرتے ہوئے) انتہائی چھوٹی اور چھوٹی انٹرپرائزز کو خاص طور سے مدد ملی، جنہیں ’انسپکٹر راج‘ کا سب سے زیادہ بوجھ برداشت کرنا پڑتا ہے۔ یہ بہتر سرمایہ کاری کے ماحول، بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری اور تیزی سے ترقی کو فروغ دیتا ہے۔ 20 ریاستوں نے اس اصلاح کو مکمل کیا اور انہیں 39521 کروڑ روپے کے اضافی قرض کی اجازت دی گئی۔

پندرہویں مالیاتی کمیشن اور متعدد ماہرین تعلیم نے ٹھوس پراپرٹی ٹیکس کی اہمیت پر زور دیا ہے۔ تیسری اصلاح کے تحت ریاستوں کو شہری علاقوں میں بالترتیب جائیداد کے لین دین اور موجودہ اخراجات کے لیے اسٹامپ ڈیوٹی گائیڈ لائن کی قدروں کے مطابق، پراپرٹی ٹیکس اور پانی اور سیوریج چارجز کی بنیادی شرحوں کے بارے میں نوٹیفائی کرنا تھا۔ یہ شہری غریبوں اور متوسط طبقہ کو بہترین معیار کی خدمات مہیا کرائے گا اور بہتر بنیادی ڈھانچہ کی معاونت کے ساتھ ہی ترقی کو آگے بڑھائے گا۔ پراپرٹی ٹیکس بھی اس معاملے میں ترقی پسند ہے اور اس سے شہری علاقوں کے غریبوں کو سب سے زیادہ فائدہ ہوگا۔ یہ اصلاح میونسپل اسٹاف کے لیے بھی فائدہ مند ہے جنہیں اکثر ان کی اجرت دیر سے ملتی ہے۔ 11 ریاستوں نے ان اصلاحات کو مکمل کیا اور انہیں 15957 کروڑ روپے کے اضافی قرض کو منظوری دی گئی۔

چوتھی اصلاح کاشتکاروں کو بجلی کی مفت سپلائی کے سلسلے میں ڈائریکٹ بینیفٹ ٹرانسفر (ڈی بی ٹی) کو متعارف کرانا تھی۔ اس کے لیے یہ شرط تھی کہ ریاست گیر اسکیم تیار کی جائے اور سال کے آخر تک پائلٹ بنیاد پر کسی ایک ضلع میں اسے حقیقی طور پر نافذ کیا جائے۔ اس کے ساتھ جی ایس ڈی پی کے 0.15 فیصد کے اضافی قرض کو جوڑا گیا تھا۔ تکنیکی اور کاروباری نقصانات میں کمی کے لیے ایک جزو بھی فراہم کیا گیا تھا اور دوسرا محصول اور اخراجات (ہر ایک کے لیے جی ایس ڈی پی کا 0.05 فیصد) کے درمیان کے فرق کو کم کرنے کے لیے تھا۔اس سے تقسیم کار کمپنیوں کے مالی معاملات میں بہتری آتی ہے، پانی اور بجلی کی بچت کو فروغ حاصل ہوتا ہے اور بہتر مالیاتی اور تکنیکی کارکردگی کے ذریعے سروس کے معیار میں بہتری آتی ہے۔ 13 ریاستوں نے کم از کم ایک جزو کو نافذ کیا، جب کہ 6 ریاستوں نے ڈی بی ٹی جزو کو نافذ کیا۔ اس کے نتیجہ میں، 13201 کروڑ روپے کے اضافی قرض کی اجازت دی گئی۔

مجموعی طور پر، 23 ریاستوں نے امکانی 2.14 لاکھ کروڑ روپے میں سے 1.06 لاکھ کروڑ روپے کے اضافی قرض لیے۔ اس کے نتیجہ میں ریاستوں کو 21-2021 کے لیے (مشروط اور غیر مشروط) ابتدائی تخمینی جی ایس ڈی پی کے 4.5 فیصد کے مجموعی قرض کی اجازت دی گئی۔

ہمارے جیسے پیچیدہ چیلنجز والے ایک بڑے ملک کے لیے، یہ ایک انوکھا تجربہ تھا۔ ہم نے اکثر دیکھا ہے کہ متعدد اسباب کی بناپر، اسکیمیں اور اصلاحات سالوں تک غیر فعال رہتی ہیں۔ یہ ماضی کی خوشگوار روانگی تھی، جہاں مرکز اور ریاستیں وبائی مرض کے دوران بہت ہی مختصر وقت میں عوام دوست ان اصلاحات کو نافذ کرنے کے لیے ایک ساتھ آئیں۔ یہ سب کا ساتھ، سب کا وکاس اور سب کا وشواس والے ہمارے نقطہ نظر کی وجہ سے ممکن ہو پایا۔ان اصلاحات پر کام کرنے والے افسران کی رائے ہے کہ اضافی رقم کی اس ترغیب کے بغیر، ان پالیسیوں کو نافذ کرنے میں برسوں لگ جاتے۔  بھارت نے ’چوری چھپے اور زبردستی اصلاحات‘ کا ماڈل دیکھا ہے۔ یہ ’پختہ عزم اور ترغیبات سے اصلاحات‘ کا نیا ماڈل ہے۔ میں ان تمام ریاستوں کا شکر گزار ہوں جنہوں نے اپنے شہریوں کی بہتری کے لیے اس مشکل وقت میں ان پالیسیوں کو سب سے آگے بڑھ کر شروع کیا۔ ہم 130 کروڑ ہندوستانیوں کی تیزی سے ترقی کے لیے ساتھ مل کر کام کرنا جاری رکھیں گے۔