Share
 
Comments


3 extremely satisfying days with the future of Gujarat

 

Dear Friends,

For the next three days, the entire Team Gujarat goes to school! Yes, senior Ministers, officials and myself are going to spend the next three days in the rural areas of Gujarat, going to villages and asking parents to educate their children as a part of the Shala Praveshotsav and Kanya Kelavani Abhiyan 2013-2014. We will go to the rural areas of Gujarat on 13th-14th-15th June and in the urban areas of Gujarat on 20th-21st-22nd June.

I vividly recall when I had taken over as the Chief Minister, an official came to me to discuss dropout rate in our primary schools. The numbers that were in front of me left me startled! Why does such a vibrant state have such high drop out rates? Why is the girl child lagging behind in primary education? We decided to tackle this menace immediately and that is how the Kanya Kelavani Abhiyan was born.

Be it scorching heat or thunderous rain, my Cabinet colleagues, officials and I set out to the villages, we tell the parents, give us your child so that we can take them to school. I can say without doubt that taking a toddler to school is one of the most satisfying moments in my many years in public life. There is no better joy than laying the foundations of a strong future for these little children.

After a decade of doing this, I am glad to share that our efforts have received immense success. The drop out rate, which stood at 17.83% in 2003-2004 has drastically come down to 2.04% in 2012-2013 for Standard 1-5 and the drop out rates for Class 1-7 has dropped significantly from 33.73% in 2003-2004 to 7.08% this year. The results of the Kanya Kelavani Abhiyan are also for all to see. In the last decade, female literacy has increased from 57.80% to 70.73% today.

While there is tremendous improvement, we want to go higher. You must have noticed that whenever results of the Class X and XII Board Exams are announced, the most common headline is- girls outshine boys yet again. It just shows that if we give the right opportunity to our women, they can do wonders. This is what we seek to do through the Kanya Kelavani Abhiyan and Shala Praveshotsav.

We noticed that a common reason for the high drop out rate among girl students was lack of adequate sanitation facilities. Thus, we constructed over 71,000 sanitation blocks. Similarly, we saw that the state did not have enough classrooms to facilitate quality education for our youngsters so we built over 1,04,000 classrooms in the last decade. We did not stop there. In this age, where technology is constantly redefining the world, it is a crime to keep our youth away from these advances. That is why we have equipped over 20,000 schools with computer facilities. 

Friends, let us all become partners in this quest for ensuring education for all.  Look in your neighbourhood, in your offices, ask your support staff if they send their children to school and if they do not, inspire them to do so. Education brings employment as well as opportunity. And, by doing this, we are not only safeguarding the future of the child but also adding a new strength to the future of Gujarat. We are also doing a great service for our nation, who will greatly benefit from the intellectual power of these youngsters, the seeds of which we are fortunate to sow today.

 

Yours,

Narendra Modi

 

 

Shri Narendra Modi's audio message at the start of Kanya Kelavani and Shala Praveshotsav 2013-14

20 تصاویر سیوا اور سمرپن کے 20 برسوں کو بیاں کر رہی ہیں۔
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
How India is becoming self-reliant in health care

Media Coverage

How India is becoming self-reliant in health care
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
بھارت کے ذریعہ 100 کروڑ سے زائد کووِڈ ٹیکہ کاری سے ظاہر ہوتا ہے کہ عوام الناس کی شراکت داری حاصل کی جا سکتی ہے
October 22, 2021
Share
 
Comments

 ہندوستان نے۲۱؍ اکتوبر۲۰۲۱ء کو۱۰۰؍ کروڑ شہریوں کی ٹیکہ کاری کا ہدف مکمل کر لیا کہ اس ٹیکہ کاری مہم کو شروع ہوئے ابھی صرف ۹؍ مہینے ہی ہوئے ہیں۔ کووڈ سے نمٹنے کا یہ ایک شاندار سفر رہا ہے  خاص  طور پر ایسے وقت میں جب ہمارے ذہن میں ۲۰۲۰ء کے ابتدائی دنوں کی یادیں ابھی بھی تازہ ہیں۔ انسانوں کو۱۰۰؍ سال کے بعد اس قسم کے وبائی مرض کا سامنا کرنا پڑ رہا تھا اور کسی کو اس وائرس کے بارے میں زیادہ جانکاری نہیں تھی۔ ہمیں یاد ہے کہ کیسے غیر متوقع طور پر ہمیں اچانک ایسی حالت کا سامنا کرنا پڑا، کیوں کہ ایک نامعلوم اور نظر نہ آنے والا دشمن تیزی سے اپنا حلیہ بدلتا جا رہا تھا۔
 دنیا کی سب سے بڑی ٹیکہ کاری مہم کی بدولت یہ سفر پریشانی سے یقین دہانی میں تبدیل ہو چکا ہے اور ہمارا ملک مضبوط بن کر ابھرا ہے۔ یہ واقعی’ بھاگیرتھ‘ کوشش تھی جس میں سماج کے کئی حصے شامل رہے۔ اتنے بڑے پیمانے پر ہونے والی اس کوشش کا اندازہ لگانے کے لئے تصور کریں کہ ایک ٹیکہ لگانے میں حفظانِ صحت کے کارکن کو صرف۲؍ منٹ لگے۔ اس رفتار سے آج کے ہدف کو مکمل کرنے میں تقریباً۴۱؍ لاکھ ’افرادی دن‘ یا تقریباً۱۱؍ ہزار ’افرادی سال‘ لگے۔
 کسی بھی ہدف کو حاصل کرنے اور رفتار اور پیمانے کو برقرار رکھنے کیلئے اس میں شامل تمام متعلقین کا اعتماد انتہائی ضروری ہے۔ اس مہم کی کامیابی کی ایک بڑی وجہ یہ رہی کہ عدم اعتماد اور ڈر کا ماحول پیدا کرنے کی متعدد کوششوں کے باوجود لوگوں نے ٹیکہ اور اسے لگانے میں اپنائے گئے طریقے پر بھروسہ کیا۔ہم میں سے بہت سے لوگ ایسے ہیں جو صرف غیر ملکی برانڈ پر اعتماد کرتے ہیں، بھلے ہی وہ روزمرہ کی ضروریات ہی کیوں نہ ہوں لیکن  جب کووڈ ویکسین جیسی اہم چیز کی بات سامنے آئی تو بھارت کے لوگوں نے متفقہ طور پر ’میڈ ان انڈیا‘ ٹیکوں پر بھروسہ کیا۔ نظریات میں آنے والی یہ ایک بڑی تبدیلی ہے۔
 بھارت کی ٹیکہ کاری مہم اس بات کی مثال ہے کہ اگر ہمارے ملک کے شہری اور حکومت ’جن بھاگیداری‘ کے جذبہ کے ساتھ کسی مشترکہ ہدف کو پورا کرنے کے  لئے متحد ہو جائیں، تو اسے آسانی سے حاصل کیا جا سکتا ہے۔ بھارت نے جب اپنا ٹیکہ کاری کا پروگرام شروع کیا تھا، تو کئی لوگوں نے۱۳۰؍ کروڑ ہندوستانیوں کی صلاحیتوں پر شک ظاہر کیا تھا۔ کچھ لوگوں نے کہا تھا کہ اسے پورا کرنے میں بھارت کو۳؍ سے ۴؍سال لگیں گے۔ دوسرے لوگوں نے کہا تھا کہ لوگ ٹیکہ لگانے کے لئے آگے نہیں آئیں گے۔ کچھ ایسے لوگ بھی تھے جنہوں نے کہا تھا کہ ٹیکہ کاری کے عمل میں بڑے پیمانے پر بد انتظامی اور افراتفری ہوگی۔ کچھ نے تو یہاں تک کہا تھا کہ بھارت ’سپلائی چین‘ کا انتظام کرنے میں ناکام ہو جائے گا لیکن جنتا کرفیو اور اس کے بعد لاک ڈاؤن کی طرح ہی، بھارت کے لوگوں نے کرکے دکھا دیا کہ اگر انہیں با اعتماد پارٹنر بنایا جائے تو نتائج کتنے شاندار ہو سکتے ہیں۔اگر ہر کوئی اسے اپنا کام سمجھ کر کرنے لگےتو کچھ بھی ناممکن نہیں ہے۔ ہمارے ہیلتھ ورکرس نے  شہریوں کو ٹیکہ لگانے کیلئےمشکل ترین علاقوں میں پہاڑوں اور ندیوں کو پار کیا اور ان لوگوں تک یہ ٹیکہ پہنچایا۔