’’یہ کیندر ہمارے نوجوانوں کے لیے ہنر مندی کے مواقع پیدا کرنے کے لیے ایک محرک کےطور پر کام کریں گے‘‘
’’ہنرمند بھارتی نوجوانوں کی مانگ عالمی سطح پر بڑھ رہی ہے‘‘
’’بھارت صرف اپنے لیے نہیں بلکہ دنیا بھر کے لیے ہنر مند پیشہ ور افراد تیار کر رہا ہے‘‘
’’حکومت نے ہنر مندی کو فروغ دینے کی ضرورت کو سمجھا اور اپنے مختص بجٹ اور متعدد اسکیموں کے ساتھ ایک علیحدہ وزارت کی تشکیل کی‘‘
’’حکومت کے ہنر مندی کے فروغ کے اقدامات کا سب سے زیادہ فائدہ غریب، دلت، پسماندہ اور آدیواسی کنبوں کو مل رہا ہے‘‘
’’خواتین کی تعلیم و تربیت پر حکومت کے زور دینےکے پیچھے ساوتری بائی پھولے کی تحریک رہی ہے‘‘
’’ پی ایم وشوکرما اسکیم روایتی کاریگروں اور دستکاروں کو بااختیار بنائے گی ‘‘
’’انڈسٹری 4.0 کو نئی مہارتوں کی ضرورت ہوگی‘‘
’’ملک کی مختلف حکومتوں کو ہنر مندی کے فروغ کے اپنے دائرہ کار کو مزید وسیع کرنا ہو گا‘‘

نمسکار،

مہاراشٹر کے وزیر اعلیٰ جناب ایکناتھ شندے جی، نائب وزیر اعلیٰ بھائی دیویندر فڑنویس جی، اجیت پوار جی، جناب منگل پربھات لودھا جی، ریاستی حکومت کے دیگر تمام وزرا، خواتین و حضرات۔

نوراتری کا مقدس تہوار چل رہا ہے۔ آج سکنداماتا کی پوجا کا دن ہے جو کہ دیوی کی پانچویں شکل ہے۔ ہر ماں کی خواہش ہوتی ہے کہ اس کے بچے کو خوشی اور شہرت ملے۔ سعادت اور شہرت کا یہ حصول تعلیم اور ہنر سے ہی ممکن ہے۔ ایسے اچھے وقت میں مہاراشٹر کے ہمارے بیٹوں اور بیٹیوں کی ہنر مندی کے لیے اتنا بڑا پروگرام شروع کیا جا رہا ہے۔ اور میرے سامنے بیٹھے لاکھوں نوجوانوں کے لیے جنہوں نے اسکل ڈیولپمنٹ کی راہ پر آگے بڑھنے کا عزم کیا ہے، میں یہ ضرور کہوں گا کہ آج کی صبح ان کی زندگی کی مبارک صبح بن گئی ہے۔ مہاراشٹر میں 511 دیہی ہنر مندی کے مراکز قائم کیے جانے جا رہے ہیں۔

ساتھیوں،

آج پوری دنیا میں ہندوستان کے ہنر مند نوجوانوں کی مانگ بڑھ رہی ہے۔ کئی ممالک ایسے ہیں جہاں بزرگ شہریوں کی تعداد بہت زیادہ ہے، بزرگوں کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے اور تربیت یافتہ نوجوان تلاش کرنا مشکل ہے۔ اس حوالے سے کیے گئے سروے بتاتے ہیں کہ دنیا کے 16 ممالک تقریباً 40 لاکھ ہنر مند نوجوانوں کو ملازمتیں فراہم کرنا چاہتے ہیں۔ ان ممالک میں ہنر مند پیشہ ور افراد کی کمی کی وجہ سے یہ ممالک دوسرے ممالک پر انحصار کرتے ہیں۔ تعمیراتی شعبے، صحت کی دیکھ بھال کے شعبے، سیاحت کی صنعت، مہمان نوازی، تعلیم اور ٹرانسپورٹ جیسے بہت سے شعبے ہیں جہاں آج بیرونی ممالک میں بہت زیادہ مانگ ہے۔ اس لیے آج ہندوستان نہ صرف اپنے لیے بلکہ دنیا کے لیے ہنر مند پیشہ ور تیار کر رہا ہے۔

مہاراشٹر کے دیہاتوں میں کھولے جانے والے یہ نئے ہنر مندی کے مراکز نوجوانوں کو دنیا بھر کے مواقع کے لیے بھی تیار کریں گے۔ ان مراکز میں تعمیراتی شعبے سے متعلق ہنر سکھائے جائیں گے۔ جدید طریقوں سے کھیتی باڑی سے متعلق ہنر سکھائے جائیں گے۔ مہاراشٹر میں میڈیا اور تفریحی کام اتنا بڑا کام ہے۔ اس کے لیے خصوصی تربیت فراہم کرنے والے کئی مراکز بھی قائم کیے جائیں گے۔ آج ہندوستان الیکٹرانکس اور ہارڈ ویئر کا ایک بڑا مرکز بن رہا ہے۔ ایسے میں درجنوں مراکز پر اس شعبے سے متعلق ہنر بھی سکھائے جائیں گے۔ میں مہاراشٹر کے نوجوانوں کو ان اسکل ڈیولپمنٹ مراکز کے لیے مبارکباد دیتا ہوں اور ان کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

ساتھیوں،

ایک طویل عرصے سے، حکومتوں میں مہارت کی ترقی کے حوالے سے نہ تو یکساں سنجیدگی تھی اور نہ ہی دور اندیشی۔ اس کی وجہ سے ہمارے نوجوانوں کو بھاری نقصان اٹھانا پڑا۔ صنعت میں طلب کے باوجود نوجوانوں میں ٹیلنٹ کے باوجود ہنر مندی نہ ہونے کی وجہ سے نوجوانوں کے لیے نوکریاں حاصل کرنا انتہائی مشکل ہو گیا تھا۔ یہ ہماری حکومت ہے جس نے نوجوانوں میں اسکل ڈیولپمنٹ کی ضرورت کو سمجھا ہے۔ ہم نے اسکل ڈیولپمنٹ کے لیے ایک الگ وزارت بنائی، اور ہندوستان میں پہلی بار اس واحد موضوع، مہارت کے لیے ایک خصوصی وزارت ہے، جس کا مطلب ہے کہ ملک کے نوجوانوں کے لیے ایک نئی وزارت وقف ہے۔ الگ بجٹ طے کیا اور کئی اسکیمیں شروع کیں۔ اسکل ڈیولپمنٹ اسکیم کے تحت اب تک 1 کروڑ 30 لاکھ سے زائد نوجوانوں کو مختلف تجارتوں میں تربیت دی جا چکی ہے۔ حکومت نے ملک بھر میں سینکڑوں پردھان منتری کوشل کیندر بھی قائم کیے ہیں۔

ساتھیوں،

اس طرح کی ہنر مندی کی کوششوں سے سماجی انصاف کو بھی کافی تقویت ملی ہے۔ بابا صاحب امبیڈکر نے سماج کے کمزور طبقات کی ہنر مندی پر بھی بہت زور دیا۔ بابا صاحب کی سوچ زمینی حقیقت سے جڑی ہوئی تھی۔ وہ اچھی طرح جانتے تھے کہ ہمارے دلت اور محروم بہن بھائیوں کے پاس اتنی زمین نہیں ہے۔ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ دلتوں، پسماندہ طبقات اور قبائلیوں کو باوقار زندگی ملے، انہوں نے صنعت کاری پر بہت زور دیا۔ اور صنعتوں میں کام کرنے کے لیے سب سے ضروری شرط مہارت ہے۔ ماضی میں معاشرے کے ان طبقات کی ایک بڑی تعداد ہنر کی کمی کی وجہ سے اچھے کام اور اچھے روزگار سے محروم تھی۔ اور آج صرف غریب، دلت، پسماندہ اور قبائلی خاندان ہی حکومت ہند کی اسکل اسکیموں سے سب سے زیادہ فائدہ اٹھا رہے ہیں۔

ساتھیوں،

ماتا ساوتری بائی پھولے نے ہندوستان میں خواتین کی تعلیم کے لیے سماجی رکاوٹوں کو توڑنے کا راستہ دکھایا تھا۔ ان کا اٹل عقیدہ تھا کہ صرف علم اور ہنر رکھنے والے ہی معاشرے میں تبدیلی لا سکتے ہیں۔ ماں ساوتری بائی سے متاثر ہو کر حکومت بیٹیوں کی تعلیم و تربیت پر بھی یکساں زور دے رہی ہے۔ آج ہر گاؤں میں خواتین کو سیلف ہیلپ گروپس کے ذریعے تربیت دی جا رہی ہے۔ خواتین کو با اختیار بنانے کے پروگرام کے تحت 3 کروڑ سے زیادہ خواتین کو خصوصی تربیت دی گئی ہے۔ اب ملک ڈرون کے ذریعے کاشتکاری اور مختلف کاموں کی بھی حوصلہ افزائی کر رہا ہے۔ اس کے لیے گاؤں کی بہنوں کو بھی خصوصی تربیت دی جائے گی۔

ساتھیوں،

ہمارے ہر گاؤں میں ایسے خاندان ہیں، جو نسل در نسل اپنی صلاحیتوں کو آگے بڑھاتے ہیں۔ کون سا گاؤں ایسا ہو گا کہ جہاں ہنر مند خاندان نہ ہوں جیسے بال کاٹنے والے، جوتے بنانے والے، کپڑے دھونے والے، مستری، بڑھئی، کمہار، لوہار، سنار وغیرہ۔ ایسے خاندانوں کی کفالت کے لیے حکومت ہند نے پی ایم وشوکرما یوجنا بھی شروع کی ہے جس کا اجیت دادا نے ابھی ذکر کیا ہے۔ اس کے تحت حکومت تربیت سے لے کر جدید آلات تک اور کام کو آگے لے جانے کے لیے ہر سطح پر مالی مدد فراہم کر رہی ہے۔ مرکزی حکومت اس پر 13 ہزار کروڑ روپے خرچ کرنے جا رہی ہے۔ مجھے بتایا گیا ہے کہ مہاراشٹر میں بننے والے یہ 500 سے زیادہ دیہی ہنر مندی کے مراکز پی ایم وشوکرما اسکیم کو بھی آگے لے جائیں گے۔ میں اس کے لیے خاص طور پر مہاراشٹر حکومت کو مبارکباد دوں گا۔

ساتھیوں،

ہنرمندی کی ترقی کی ان کوششوں کے درمیان ہمیں یہ بھی سوچنا ہوگا کہ کن شعبوں میں مہارتوں میں اضافہ ملک کو مضبوط کرے گا۔ آج کی طرح مینوفیکچرنگ میں بھی اچھے معیار کی مصنوعات، صفر نقائص والی مصنوعات ملک کی ضرورت ہیں۔ انڈسٹری 4.0 کو نئی مہارتوں کی ضرورت ہے۔ سروس سیکٹر، نالج اکانومی اور جدید ٹیکنالوجی کو مدنظر رکھتے ہوئے حکومتوں کو بھی نئی مہارتوں پر زور دینا ہوگا۔ ہمیں یہ دیکھنا ہے کہ کس قسم کی مصنوعات کی تیاری ہمیں خود انحصاری کی طرف لے جائے گی۔ ہمیں ایسی مصنوعات کی تیاری کے لیے درکار مہارتوں کو فروغ دینا ہوگا۔

ساتھیوں،

ہندوستان کے زرعی شعبے کو بھی آج نئی مہارتوں کی بہت ضرورت ہے۔ کیمیکل فارمنگ سے ہماری دھرتی ماں کو بہت اذیت دی جا رہی ہے۔ زمین کو بچانے کے لیے قدرتی کاشت کاری ضروری ہے اور اس کے لیے ہنر بھی درکار ہے۔ کھیتی باڑی میں پانی کے متوازن استعمال کو یقینی بنانے کے لیے نئی مہارتیں شامل کرنے کی بھی ضرورت ہے۔ ہمیں زرعی مصنوعات کی پروسیسنگ، اس کی قیمت بڑھانے، اس کی پیکیجنگ، اس کی برانڈنگ اور اسے آن لائن دنیا تک پہنچانے کے لیے نئی مہارتوں کی ضرورت ہے۔ اس لیے ملک کی مختلف حکومتوں کو اپنی مہارت کی ترقی کے دائرہ کار کو مزید بڑھانا ہوگا۔ مجھے یقین ہے کہ ہنر مندی سے متعلق یہ شعور آزادی کے سنہری دور میں ایک ترقی یافتہ ہندوستان کی تعمیر میں بڑا رول ادا کرے گا۔

ایک بار پھر، میں شندے جی اور ان کی پوری ٹیم کو مبارکباد دیتا ہوں اور ان کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔ اور نوجوان بیٹے اور بیٹیاں جو ہنر کی راہ پر آئے ہیں، سوچ رہے ہیں اور جانا چاہتے ہیں، میرے خیال میں انہوں نے صحیح راستہ چنا ہے۔ اپنے اس ہنر سے، اپنی اس قابلیت سے وہ اپنے خاندان اور ملک کو بھی بہت کچھ دے سکتے ہیں۔ میں خاص طور پر ان تمام جوان بیٹوں اور بیٹیوں کے لیے اپنی نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

ایک بار پھر، میں شندے جی اور ان کی پوری ٹیم کو مبارکباد دیتا ہوں اور ان کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔ اور نوجوان بیٹے اور بیٹیاں جو ہنر کی راہ پر آئے ہیں، سوچ رہے ہیں اور جانا چاہتے ہیں، میرے خیال میں انہوں نے صحیح راستہ چنا ہے۔ اپنے اس ہنر سے، اپنی اس قابلیت سے وہ اپنے خاندان اور ملک کو بھی بہت کچھ دے سکتے ہیں۔ میں خاص طور پر ان تمام جوان بیٹوں اور بیٹیوں کے لیے اپنی نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

ایک بار پھر، میں ان تمام نوجوانوں کو دل کی گہرائیوں سے مبارکباد دیتا ہوں اور ان کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔ اور مجھے آپ کے اس پروگرام میں آنے کا موقع ملا، ان لاکھوں لوگوں میں مجھے ہر جگہ صرف نوجوان ہی نظر آتے ہیں۔ ان تمام نوجوانوں سے ملنے کا موقع دیا۔ میں منگل پربھات جی اور شندے جی کی پوری ٹیم کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں۔

نمسکار

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
EPFO Payroll data shows surge in youth employment; 15.48 lakh net members added in February 2024

Media Coverage

EPFO Payroll data shows surge in youth employment; 15.48 lakh net members added in February 2024
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 21 اپریل 2024
April 21, 2024

Citizens Celebrate India’s Multi-Sectoral Progress With the Modi Government