نئے بھرتی کئے گئے ملازمین کو 51 ہزار تقرری نامے تقسیم کئے
‘‘روز گار میلہ نوجوانوں کو ‘وکست بھارت’ کا معمار بننے کی راہ ہموار کرتا ہے’’
‘‘آپ کی اعلیٰ ترین ترجیح شہریوں کے رہن سہن کو آسان بنانا ہونی چاہئے’’
‘‘حکومت اُن لوگوں کی دہلیز تک پہن رہی ہے، جنہوں نے کبھی کوئی فائدہ حاصل نہیں کیا’’
‘‘بھارت بنیادی ڈھانچے کے انقلاب کا مشاہدہ کر رہا ہے’’
‘‘نامکمل پروجیکٹ ملک کے ایماندار ٹیکس دہندگان کے ساتھ زبردست نا انصافی ہے، ہم اس سے نمٹ رہے ہیں’’
‘‘عالمی ادارے بھارت کی ترقی کے بارے میں بہت امید افزا ہیں’’

نمسکار،

حکومت ہند کی طرف سے ملک میں لاکھوں نوجوانوں کو ملازمتیں فراہم کرنے کی مہم جاری ہے۔ آج 50 ہزار سے زائد نوجوانوں کو سرکاری ملازمتوں کے لیے تقرری لیٹر دیے گئے ہیں۔ یہ تقرری نامہ آپ کی محنت اور قابلیت کا نتیجہ ہے۔ میں آپ کو اور آپ کے خاندان کو بہت بہت مبارک باد دیتا ہوں۔

اب آپ قوم کی تعمیر کے اس دھارے میں شامل ہونے جا رہے ہیں، جس کا براہ راست تعلق عوام سے ہے۔ حکومت ہند کے ملازمین کی حیثیت سے آپ سب کو بڑی ذمہ داریاں نبھانی ہوں گی۔ آپ کسی بھی عہدے پر فائز ہوں، آپ جس شعبے میں بھی کام کرتے ہوں، آپ کی اولین ترجیح اہل وطن کی زندگی میں آسانی ہونی چاہیے۔

ساتھیوں،

ابھی کچھ دن پہلے 26 نومبر کو ملک میں یوم آئین منایا گیا۔ یہ وہ تاریخ ہے جب 1949 میں ملک نے تمام شہریوں کو مساوی حقوق دینے والے آئین کو اپنایا تھا۔ آئین کے معمار بابا صاحب نے ایک ایسے ہندوستان کا خواب دیکھا تھا جہاں سب کو یکساں مواقع دے کر سماجی انصاف قائم کیا جائے گا۔ بد قسمتی سے آزادی کے بعد طویل عرصے تک ملک میں مساوات کے اصول کو نظر انداز کیا گیا۔

2014 سے پہلے معاشرے کا ایک بڑا طبقہ بنیادی سہولیات سے محروم تھا۔ 2014 میں جب ملک نے ہمیں خدمت کا موقع دیا اور حکومت چلانے کی ذمہ داری سونپی تو سب سے پہلے ہم نے پسماندہ افراد کو ترجیح دینے کا منتر لے کر آگے بڑھنا شروع کیا۔ حکومت خود ان لوگوں تک پہنچی جنہیں کبھی اسکیموں کا فائدہ نہیں ملا، جنہیں دہائیوں سے حکومت سے کوئی سہولت نہیں ملی، ہم ان کی زندگی بدلنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

حکومت کی سوچ اور ورکنگ کلچر میں اس تبدیلی کے باعث آج ملک میں بے مثال نتائج دیکھنے کو مل رہے ہیں۔ بیوروکریسی وہی ہے، عوام بھی وہی ہے۔ فائلیں وہی ہیں، کام کرنے والے بھی وہی ہیں، طریقہ کار بھی وہی ہے۔ لیکن جب حکومت نے ملک کے غریب اور متوسط ​​طبقے کو ترجیح دی تو ساری صورتحال بدلنے لگی۔ بہت تیز رفتاری سے کام کرنے کا انداز یکے بعد دیگرے بدلنے لگا، کام کا طریقہ بدلنے لگا، ذمہ داریاں طے ہونے لگیں اور عام لوگوں کی فلاح و بہبود کے لیے مثبت نتائج سامنے آنے لگے۔

ایک تحقیق کے مطابق 5 سالوں میں ملک کے 13 کروڑ سے زیادہ لوگ غربت سے باہر آئے ہیں۔ اس سے پتہ چلتا ہے کہ حکومت کی اسکیموں کا غریبوں تک پہنچنا کتنا بڑا فرق لاتا ہے۔ آج صبح ہی آپ نے دیکھا ہوگا کہ کس طرح وکست بھارت سنکلپ یاترا گاؤں گاؤں جا رہی ہے۔ آپ کی طرح سرکاری ملازمین بھی سرکاری اسکیموں کو غریبوں کی دہلیز پر لے جا رہے ہیں۔ سرکاری ملازمت میں آنے کے بعد آپ کو بھی اسی نیت، نیک نیتی، اسی لگن اور جذبے کے ساتھ عوام کی خدمت کے لیے خود کو وقف کرنا ہوگا۔

ساتھیوں،

آج کے بدلتے ہوئے ہندوستان میں، آپ سب بھی بنیادی ڈھانچے کے انقلاب کا مشاہدہ کر رہے ہیں۔ جدید ایکسپریس وے ہوں، جدید ریلوے اسٹیشن ہوں، ہوائی اڈے ہوں، پانی کے راستے ہوں، آج ملک ان پر لاکھوں کروڑوں روپے خرچ کر رہا ہے۔ اور جب حکومت اتنے بڑے پیمانے پر انفراسٹرکچر پر پیسہ خرچ کر رہی ہے اور سرمایہ کاری کر رہی ہے تو یہ بہت فطری ہے، اس سے کوئی انکار نہیں کر سکتا کیونکہ اس سے روزگار کے لاکھوں نئے مواقع بھی پیدا ہوتے ہیں۔

ایک اور بڑی تبدیلی جو 2014 کے بعد آئی ہے وہ یہ ہے کہ سالوں سے پھنسے ہوئے پروجیکٹس کو مشن موڈ پر تلاش کرکے مکمل کیا جا رہا ہے۔ آدھے ادھورے پروجیکٹس نہ صرف ملک کے ایماندار ٹیکس دہندگان کا پیسہ ضائع کرتے ہیں بلکہ لاگت میں بھی اضافہ کرتے ہیں اور انہیں وہ فوائد نہیں ملتے جو ملنے چاہئیں۔ یہ بھی ہمارے ٹیکس دہندگان کے ساتھ بہت بڑی نا انصافی ہے۔

کئی سالوں کے دوران، مرکزی حکومت نے لاکھوں کروڑوں روپے کے پروجیکٹوں کا جائزہ لیا اور ان کی مسلسل نگرانی کی تاکہ انہیں تیزی سے مکمل کیا جا سکے اور کامیابی حاصل کی گئی ہے۔ اس سے ملک کے کونے کونے میں روزگار کے بہت سے نئے مواقع بھی پیدا ہوئے ہیں۔ مثال کے طور پر، بیدر-کلبرگی ریلوے لائن ایک ایسا ہی منصوبہ تھا، جو 22 سے 23 سال پہلے شروع کیا گیا تھا۔ لیکن یہ منصوبہ بھی اٹکا ہوا تھا۔ ہم نے اسے 2014 میں مکمل کرنے کا عزم کیا اور صرف 3 سال میں اس منصوبے کو مکمل کیا۔ سکم میں پاکیونگ ہوائی اڈے کو بھی 2008 میں تصور کیا گیا تھا۔ لیکن 2014 تک یہ صرف کاغذوں پر ہی رہا۔ 2014 کے بعد اس منصوبے سے متعلق تمام رکاوٹوں کو دور کر کے اسے 2018 تک مکمل کر لیا گیا۔ اس سے روزگار بھی ملا۔ پارا دیپ ریفائنری کی بحث بھی 20 سے 22 سال پہلے شروع ہوئی تھی، لیکن 2013 تک کچھ زیادہ نہیں ہوا۔ جب ہماری حکومت آئی تو تمام زیر التوا منصوبوں کی طرح ہم نے پارا دیپ ریفائنری کو ہاتھ میں لیا اور اسے مکمل کیا۔ جب اس طرح کے بنیادی ڈھانچے کے منصوبے مکمل ہو جاتے ہیں تو نہ صرف یہ کہ براہ راست روزگار کے مواقع پیدا ہوتے ہیں بلکہ ان سے روزگار کے بہت سے بالواسطہ مواقع بھی پیدا ہوتے ہیں۔

 

ساتھیوں،

ریئل اسٹیٹ ملک میں روزگار پیدا کرنے والا ایک بہت بڑا شعبہ ہے۔ یہ شعبہ جس طرف جا رہا تھا، معماروں کے ساتھ ساتھ متوسط ​​طبقے کی بربادی یقینی تھی۔ ریرا قانون کی وجہ سے آج ریئل اسٹیٹ سیکٹر میں شفافیت آئی ہے، اس شعبے میں سرمایہ کاری مسلسل بڑھ رہی ہے۔ آج ملک میں ایک لاکھ سے زیادہ ریئل اسٹیٹ پروجیکٹ ریرا قانون کے تحت رجسٹرڈ ہیں۔ پہلے منصوبے رک جاتے تھے اور روزگار کے نئے مواقع رک جاتے تھے۔ ملک کا یہ بڑھتا ہوا ریئل اسٹیٹ بڑی تعداد میں روزگار کے مواقع پیدا کر رہا ہے۔

ساتھیوں،

حکومت ہند کی پالیسیوں اور فیصلوں نے آج ملک کی معیشت کو نئی بلندیوں پر پہنچا دیا ہے۔ دنیا کے بڑے ادارے ہندوستان کی ترقی کی شرح کو لے کر بہت مثبت ہیں۔ حال ہی میں، سرمایہ کاری کی درجہ بندی میں ایک عالمی رہنما نے ہندوستان کی تیز رفتار ترقی پر اپنی منظوری کی مہر لگائی ہے۔ ان کا اندازہ ہے کہ روزگار کے بڑھتے ہوئے مواقع، کام کرنے کی عمر کی بڑی آبادی اور محنت کی پیداواری صلاحیت میں اضافے کی وجہ سے ہندوستان میں ترقی تیز رفتاری سے جاری رہے گی۔ ہندوستان کے مینوفیکچرنگ اور کنسٹرکشن سیکٹر کی مضبوطی بھی اس کی ایک بڑی وجہ ہے۔

یہ تمام حقائق اس بات کا ثبوت ہیں کہ آنے والے وقتوں میں بھی ہندوستان میں روزگار اور خود روزگار کے بے پناہ امکانات پیدا ہوتے رہیں گے۔ یہ ملک کے نوجوانوں کے لیے اپنے آپ میں بہت اہم ہے۔ سرکاری ملازم ہونے کے ناطے آپ کا بھی اس میں بڑا کردار ہے۔ آپ کو یہ یقینی بنانا ہوگا کہ ہندوستان میں ہونے والی ترقی کے ثمرات معاشرے کے آخری فرد تک پہنچیں۔ کوئی علاقہ کتنا ہی دور کیوں نہ ہو، وہ آپ کی ترجیح ہونی چاہیے۔ کوئی شخص کتنا ہی دور کیوں نہ ہو، آپ کو اس تک پہنچنا ہے۔ حکومت ہند کے ملازم کے طور پر، جب آپ اس نقطہ نظر کے ساتھ آگے بڑھیں گے، تب ہی ترقی یافتہ ہندوستان کا خواب پورا ہوگا۔

 

ساتھیوں،

اگلے 25 سال آپ کے اور ملک کے لیے بہت اہم ہیں۔ بہت کم نسلوں کو اس قسم کا موقع ملا ہے۔ اس موقع سے بھرپور استفادہ کریں۔ میں یہ بھی درخواست کرتا ہوں کہ آپ سبھی نئے سیکھنے کے ماڈیول ”کرم یوگی پرارمبھ“ میں ضرور شامل ہوں۔ ہمارا ایک بھی ساتھی ایسا نہیں ہونا چاہیے جو اس کے ساتھ مل کر اپنی استعداد میں اضافہ نہ کرے۔ سیکھنے کا رجحان جس نے آپ کو اس مقام تک پہنچایا ہے، سیکھنے کے اس رجحان کو کبھی رکنے نہ دیں، مسلسل سیکھتے رہیں، خود کو مسلسل بڑھاتے رہیں۔ یہ آپ کی زندگی کا آغاز ہے، ملک بھی بڑھ رہا ہے، آپ کو بھی بڑھنا ہے۔

کرم یوگی پرارمبھ ایک سال پہلے شروع کیا گیا تھا۔ تب سے اب تک لاکھوں نئے سرکاری ملازمین اس کے ذریعے تربیت لے چکے ہیں۔ جو لوگ میرے ساتھ وزیر اعظم کے دفتر میں، پی ایم او میں کام کرتے ہیں، وہ سبھی سینیئر لوگ ہیں، وہ ملک کے اہم کاموں کی دیکھ بھال کرتے ہیں، لیکن وہ بھی اس سے وابستہ ہیں اور مسلسل ٹیسٹ، امتحانات، کورس کر رہے ہیں۔ جس کی وجہ سے ان کی صلاحیت، ان کی طاقت میرے پی ایم او کو مضبوط کرتی ہے اور ملک کو بھی مضبوط کرتی ہے۔

آپ صرف اتنا یاد رکھیں اور فیصلہ کریں کہ مجھے اپنی زندگی میں حکومت کی طرف سے جو بھی مسائل درپیش ہیں، اور جو کسی سرکاری ملازم کی وجہ سے پیش آئے ہیں، میں کبھی نہیں چاہوں گا کہ زندگی میں کسی بھی وقت کسی شہری کو ایسے مسائل کا سامنا کرنا پڑے، میں ایسا سلوک نہیں کروں گا۔ اتنا بھی اگر آپ فیصلہ کر لیتے ہیں کہ جو میرے ساتھ ہوا وہ کسی کے ساتھ نہیں ہوگا تو آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ ہم عام لوگوں کی زندگیوں میں کتنی مدد کر سکتے ہیں۔ میں قوم کی تعمیر کی سمت میں آپ کے روشن مستقبل کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

بہت بہت شکریہ!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Demat accounts rise to 15,14 million in March 2024, up 32.25% year-on-year: March month new additions at 31.3 Lakh

Media Coverage

Demat accounts rise to 15,14 million in March 2024, up 32.25% year-on-year: March month new additions at 31.3 Lakh
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 17 اپریل 2024
April 17, 2024

Holistic Development under the Leadership of PM Modi