ہم نے امرت کال کو ، کرتویہ کا ل کا نام دیا ہے ۔عزائم میں ہماری روحانیت اور مستقبل کے لئے ہمارے عزائم کی رہنمائی شامل ہے
جہاں روحانی اہمیت کی جگہوں کی تجدید کی جاری ہے ، وہیں بھارت ٹکنالوجی اور معیشت میں بھی سبقت حاصل کررہا ہے
ملک میں جو یکسر تبدیلی دیکھی جارہی ہے وہ ہرسماجی طبقے کے تعاون کا نتیجہ ہے
سبھی سنتوں نے بھارت میں ہزاروں سال سے ، ‘ایک بھارت شریشٹھ بھارت’ کے جذبے کو پروان چڑھایا ہے
بھارت جیسے کسی ملک میں مذہبی اور روحانی ادارے ہمیشہ ہی سماجی بہبود کا مرکز رہے ہیں
ہمیں ستیہ سائیں ضلع کو پوری طرح ڈجیٹل بنانے کا عز م کرنا چاہئے
ستیہ سائیں ٹرسٹ جیسے ثقافتی اورروحانی اداروں کا ماحولیات اور دیر پا طرز زندگی جیسے میدانوں میں بھارت کی ابھرتی ہوئی قیادت کے لئے اس طرح کی سبھی کوششوں میں عظیم رول رہا ہے

سائی رام، آندھرا پردیش کے گورنر جناب عبدالنذیر، جناب  آر جے رتناکر، جناب ستھیا سائی سنٹرل ٹرسٹ کے منیجنگ ٹرسٹی، جناب کے چکرورتی، میرے بہت پرانے دوست جناب  یو سی او ہیرا، ڈاکٹر وی موہن،  جناب  ایم ایس۔ ناگنند،  جناب  نمیش پانڈیا جی، دیگر تمام معززین، خواتین و حضرات، ایک بار پھر آپ سب کو سائی رام۔

مجھے کئی بار پٹاپارتھی جانے کا شرف حاصل ہوا ہے۔ میری بڑی خواہش تھی کہ اس بار بھی میں آپ سب کے درمیان آؤں، آپ سے ملوں، وہاں موجود رہوں اور اس پروگرام کا حصہ بنوں۔ لیکن مصروفیت کی وجہ سے میں شرکت نہیں کر سکا۔ اب مجھے دعوت دیتے ہوئے بھائی رتناکر جی نے کہا کہ آپ ایک بار آکر آشیرواد دیں۔ میرا خیال ہے کہ رتناکر جی کی بات کو درست کر لینا چاہیے۔ میں وہاں ضرور آؤں گا لیکن آشیرواد دینے نہیں آؤں گا آشیرواد لینے۔ ٹیکنالوجی کے ذریعے، میں آپ سب کے درمیان ہوں۔ میں شری ستیہ  سائی سنٹرل ٹرسٹ سے وابستہ تمام ممبران اور تمام ستھیا سائی بابا کے عقیدت مندوں کو آج کے لیے اس تقریب کے انعقاد کے لیے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ شری ستیہ  سائی کی تحریک، ان کے آشیرواد اس پورے پروگرام میں ہمارے ساتھ ہیں۔ مجھے خوشی ہے کہ اس مبارک موقع پرشری ستیہ  سائی بابا کا مشن پھیل رہا ہے۔ ملک کو شری ہیرا گلوبل کنونشن سینٹر کی شکل میں ایک بڑا تھنک ٹینک مل رہا ہے۔ میں نے اس کنونشن سینٹر کی تصویریں دیکھی ہیں اور آپ کی اس مختصر فلم میں اس کی جھلک دیکھی ہے۔ اس مرکز میں روحانیت کا احساس ہونا چاہیے، اور جدیدیت کی چمک بھی ہے۔ اس میں ثقافتی الوہیت کے ساتھ ساتھ نظریاتی عظمت بھی ہے۔ یہ مرکز روحانی کانفرنس اور علمی پروگراموں کا مرکز بن جائے گا۔ دنیا بھر سے مختلف شعبوں کے اسکالرز اور ماہرین یہاں جمع ہوں گے۔ مجھے امید ہے کہ یہ مرکز نوجوانوں کے لیے بہت مددگار ثابت ہوگا۔ 

ساتھیو،

کوئی بھی سوچ اس وقت زیادہ موثر ہوتی ہے جب وہ سوچ آگے بڑھے، عمل کی شکل میں آگے بڑھے۔  کھوکھلے  الفاظ اثر نہیں کرتے۔ جتنا کہ ایک سچا عمل  پیدا کرتا ہے۔ آج کنونشن سینٹر کے افتتاح کے ساتھ ہی یہاں شری ستیہ سائی گلوبل کونسل کے لیڈروں کی کانفرنس بھی شروع ہو رہی ہے۔ اس کانفرنس میں ملک اور دنیا کے کئی ممالک کے مندوبین یہاں موجود ہیں۔ خاص طور پر، آپ نے اس تقریب کے لیے جس تھیم کا انتخاب کیا ہے – ‘‘پریکٹس اینڈ انسپائر’’، یہ تھیم موثر اور  اہم  دونوں ہے۔ ہمارے یہاں  کہا بھی  جاتا ہے۔ یت یات اچارتی شریستھا، تت تت ایوا  ایتر: جنگ ۔ یعنی جس طرح بہترین لوگ برتاؤ کرتے ہیں معاشرہ بھی اسی کی پیروی کرتا ہے۔

اس لیے ہمارا طرز عمل دوسروں کے لیے سب سے بڑی  ترغیب ہے۔ ستیہ  سائی بابا کی زندگی اپنے آپ میں اس کی زندہ مثال ہے۔ آج ہندوستان بھی فرائض کو پہلی ترجیح بنا کر آگے بڑھ رہا ہے۔ آزادی کے 100 سال کے ہدف کی طرف آگے بڑھتے ہوئے، ہم نے اپنے امرت کال کو ڈیوٹی ٹائم کا نام دیا ہے۔ ہمارے ان فرائض میں روحانی اقدار کی رہنمائی بھی ہے اور مستقبل کے لیے بھی عزم اس میں ارتقاء بھی ہے اور میراث بھی۔ آج ایک طرف ملک میں روحانی مراکز کا احیاء ہو رہا ہے، وہیں ہندوستان معیشت اور ٹیکنالوجی کے میدان میں بھی آگے ہے۔ آج ہندوستان دنیا کی  سرفہرست  5 معیشتوں میں شامل ہو گیا ہے۔ آج ہندوستان کے پاس دنیا کا تیسرا سب سے بڑا اسٹارٹ اپ ماحولیاتی نظام ہے۔ ہم ڈیجیٹل ٹیکنالوجی اور جی 5  جیسے شعبوں میں بڑے ممالک سے مقابلہ کر رہے ہیں۔ آج دنیا میں ہونے والے تمام  عین موقع پر کئے جانے والے  آن لائن لین دین میں سے 40 فیصد صرف ہندوستان میں ہو رہے ہیں۔ اور آج میں رتناکر جی سے درخواست کروں گا اور اپنے تمام سائی عقیدت مندوں سے بھی درخواست کروں گا، کیا ہمارا یہ نو تشکیل شدہ ضلع جو سائی بابا کے نام سے جڑا ہوا ہے، یہ پورا پٹا پارتھی ضلع، کیا آپ اسے 100فیصد ڈیجیٹل بنا سکتے ہیں؟ ہر لین دین ڈیجیٹل ہونا چاہیے، آپ دیکھیں، یہ ضلع دنیا میں ایک الگ پہچان بنے گا اور بابا کے آشیرواد سے، اگر رتناکر جی جیسا میرا دوست اس فرض کو اپنی ذمہ داری بنا لے، تو عین ممکن ہے کہ بابا کی اگلی سالگرہ تک پوری ضلع کو ڈیجیٹل بنایا جائے گا۔ جہاں ایک بھی نقد رقم کی ضرورت نہیں ہوگی اور یہ کیا جاسکتا ہے۔

ساتھیو،

معاشرے کے ہر طبقے کی شراکت سے تبدیلی آ رہی ہے۔ اس لیے، گلوبل کونسل جیسےاجتماعات  ہندوستان کے بارے میں جاننے، اور باقی دنیا سے جڑنے کا ایک مؤثر طریقہ ہیں۔

ساتھیو،

سنتوں کو یہاں اکثر بہتے ہوئے پانی کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔ کیونکہ اولیاء کبھی خیالات سے نہیں رکتے اور نہ ہی رویے سے کبھی رکتے ہیں۔ مسلسل بہاؤ، اور مسلسل کوشش اولیاء کی زندگی ہے۔ ایک عام ہندوستانی کے لیے اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ ان سنتوں کی جائے پیدائش کیا ہے۔ اس کے لیے کوئی بھی سچا ولی اس کا اپنا ہوتا ہے، اس کے عقیدے اور ثقافت کا نمائندہ ہوتا ہے۔ اسی لیے ہمارے سنتوں نے ہزاروں سالوں سے ‘ایک بھارت شریشٹھ بھارت’ کے جذبے کو پروان چڑھایا ہے۔ ستیہ  سائی بابا کی پیدائش بھی آندھرا پردیش کے پٹاپارتھی میں ہوئی تھی! لیکن ان کے چاہنے والے، ان کے چاہنے والے دنیا کے کونے کونے میں ہیں۔ آج ملک کے ہر علاقے میں ستیہ  سائی سے جڑے مقامات اور آشرم ہیں۔ ہر زبان، ہر رسم و رواج کے لوگ ایک مشن کے تحت پرشانتی نیلائم سے جڑے ہوئے ہیں۔ یہ ہندوستان کا شعور ہے جو ہندوستان کو ایک دھاگے میں باندھ کر لافانی بنا دیتا ہے۔ 

ساتھیو،

شری ستیہ  سائی کہتے تھے – سیوا آنی، ریندو اکشرال لون، اننت مین شکتی امدی اندی۔ یعنی سیوا کے دو حرفوں میں لامحدود طاقت پنہاں ہے۔ ستیہ سائی کی زندگی اسی جذبے کی زندہ مثال تھی۔ یہ میری خوش قسمتی رہی ہے کہ مجھے ستیہ  سائی بابا کی زندگی کو قریب سے دیکھنے، ان سے سیکھنے اور ان کے آشیرواد کے سائے میں رہنے کا موقع ملا۔ وہ ہمیشہ مجھ سے خاص لگاؤ ​​رکھتے تھے، مجھے ہمیشہ ان کا آشیرواد ملتا تھا۔ جب بھی ہم ان سے بات کرتے تھے تو وہ بڑی آسانی سے گہری باتیں سنا دیتے تھے۔ مجھے اور ان کے عقیدت مندوں کو شری ستیہ  سائی کے ایسے بہت سے منتر آج بھی یاد ہیں۔ ‘‘سب سے پیار کرو،سب کی خدمت کرو’’، ​​‘‘ ہمیشہ  مدد کرو، کبھی تکلیف نہ دو’’، ‘‘کم بات-زیادہ کام’’، ‘‘ہر تجربہ ایک سبق ہوتا ہے۔ ہر نقصان ایک فائدہ ہے۔‘‘ شری ستیہ  سائی نے ہمیں زندگی کے بہت سے سبق دیے ہیں۔ ان میں حساسیت ہے، زندگی کا سنجیدہ فلسفہ بھی ہے۔ مجھے یاد ہے جب گجرات میں زلزلہ آیا تو  انہوں نے مجھے خصوصی طور پر فون کیا تھا۔ ہر طرح سے وہ خود راحت اور بچاؤ کے لیے مصروف عمل رہے۔ ان کی ہدایت پر بھج کے متاثرہ علاقے میں تنظیم کے ہزاروں لوگ دن رات کام کر رہے تھے۔ کوئی بھی شخص ہو، وہ اس کے بارے میں ایسے فکر مند رہتا تھے جیسے کوئی ان کا  بہت قریبی ہو۔ ستیہ  سائی کے لیے ‘مانو سیوا مادھو سیوا تھی’۔ ‘ہر آدمی میں نارائن’، ‘ہر جاندار میں شیو’ دیکھنے کا یہ احساس عوام کو جناردن بناتا ہے۔

ساتھیو،

ہندوستان جیسے ملک میں، مذہبی اور روحانی ادارے ہمیشہ سماجی ترقی کے مرکز رہے ہیں۔ آج ملک نے اپنی آزادی کے 75 سال مکمل کر لیے ہیں اور اگلے 25 سال کے لیے  عہد  لے کر ہم امرت کال  میں داخل ہو گئے ہیں۔ آج جب ہم وراثت اور ترقی کو رفتار دے رہے ہیں، اس میں ستیہ  سائی ٹرسٹ جیسی تنظیموں کا بڑا رول ہے۔ مجھے خوشی ہے کہ آپ کا روحانی ونگ بال وکاس جیسے پروگراموں کے ذریعے نئی نسل کے اندر ثقافتی ہندوستان کی تشکیل کر رہا ہے۔ ستیہ  سائی بابا نے انسانی خدمت کے لیے اسپتال بنائے، پرشانتی نیلائم میں ایک ہائی ٹیک اسپتال بنایا گیا۔ ستیہ  سائی ٹرسٹ بھی سالوں سے مفت تعلیم کے لیے اچھے اسکول اور کالج چلا رہا ہے۔ قوم کی تعمیر اور معاشرے کو بااختیار بنانے میں آپ کی تنظیم کی کاوشیں قابل ستائش ہیں۔ ستیہ  سائی سے وابستہ تنظیمیں بھی، ملک نے جو اقدامات اٹھائے ہیں ان میں لگن کے ساتھ کام کر رہی ہیں۔ آج ملک ‘جل جیون مشن’ کے تحت ہر گاؤں کو صاف پانی کی فراہمی سے جوڑ رہا ہے۔ ستیہ سائی سنٹرل ٹرسٹ بھی دور دراز کے دیہاتوں کو مفت پانی فراہم کرکے اس انسانی خدمت میں شراکت دار بن رہا ہے۔

ساتھیو،

اکیسویں صدی کے چیلنجز پر نظر ڈالی جائے تو موسمیاتی تبدیلی بھی ایک بڑا مسئلہ ہے جو پوری دنیا کو درپیش ہے۔ بھارت نے مشن لائف جیسے عالمی پلیٹ فارم پر بہت سے اقدامات کیے ہیں۔ دنیا ہندوستان کی قیادت پر بھروسہ کر رہی ہے۔ آپ سب جانتے ہیں کہ اس سال جی-20  جیسے اہم گروپ کی صدارت بھی بھارت کے پاس ہے۔ اس بار بھی یہ تقریب ہندوستان کی بنیادی سوچ ‘‘ایک زمین، ایک خاندان، ایک مستقبل’’ کے تھیم پر مبنی ہے۔ آج دنیا ہندوستان کے اس وژن سے متاثر ہو رہی ہے اور دنیا میں ہندوستان کی طرف کشش بھی بڑھ رہی ہے۔ آپ نے دیکھا ہوگا کہ پچھلے مہینے 21 جون کو بین الاقوامی یوگا ڈے کے موقع پر اقوام متحدہ کے ہیڈ کوارٹر میں کیسے عالمی ریکارڈ بنایا گیا۔ دنیا کے سب سے زیادہ ممالک کے نمائندے ایک ہی وقت میں یوگا کے لیے ایک جگہ جمع ہوئے۔ یوگا آج پوری دنیا میں لوگوں کی زندگی کا حصہ بنتا جا رہا ہے۔

آج لوگ آیوروید کو اپنا رہے ہیں، ہندوستان کے پائیدار طرز زندگی سے سیکھنے کی بات کر رہے ہیں۔ ہماری ثقافت، اپنے ورثے، اپنے ماضی، ہمارے ورثے کے بارے میں تجسس بھی مسلسل بڑھ رہا ہے، اور صرف تجسس ہی نہیں، ایمان بھی بڑھ رہا ہے۔ پچھلے کچھ سالوں میں دنیا کے مختلف ممالک سے ایسے بہت سے بت ہندوستان آئے ہیں جو 50 سال پہلے ہمارے ملک سے چوری کرکے 100-100 سال پہلے باہر بھیج دیئے گئے  تھے۔ ہندوستان کی ان کوششوں کے پیچھے، اس قیادت کے پیچھے ہماری ثقافتی سوچ ہماری سب سے بڑی طاقت ہے۔ اس لیے ایسی تمام کوششوں میں ستیہ  سائی ٹرسٹ جیسے ثقافتی اور روحانی اداروں کا بہت بڑا کردار ہے۔ آپ نے اگلے 2 سالوں میں ‘پریم تارو’ کے نام پر 1 کروڑ درخت لگانے کا عہد لیا ہے۔ میں چاہوں گا کہ درخت لگائے جائیں اور میں یہ چاہوں گا کہ جب میرے دوست بھائی ہیراجی یہاں بیٹھے ہوں گے، میاواکی کی جاپانی ٹیکنالوجی چھوٹے جنگلات بنانے کی، میں چاہوں گا کہ ٹرسٹ کے لوگ اسے یہاں استعمال کریں اور ہم صرف درخت نہیں ہیں، ہم مختلف ہیں ملک کے سامنے مختلف مقامات پر چھوٹے جنگلات بنانے کا نمونہ پیش کریں۔ تو بہت بڑی مقدار میں کیونکہ اس میں ایک دوسرے کو زندہ رکھنے کی طاقت ہے۔ ایک  پودے میں دوسرے پودے کو زندہ رکھنے کی طاقت ہوتی ہے۔ میں سمجھتا ہوں کہ ہیرا جی یہاں پڑھ رہی ہیں اور میں ہیرا جی کو کوئی بھی کام بڑے حق سے بتا سکتا ہوں۔ اور اسی لیے آج میں نے ہیرا جی سے بھی کہا۔ دیکھیں پلاسٹک سے پاک بھارت کا عزم  ہونا چاہیے، آپ زیادہ سے زیادہ لوگوں کو اس سے جوڑیں۔

لوگوں کو شمسی توانائی سے صاف توانائی کے حصول کے متبادل  کے لیے تحریک دینے کی بھی ضرورت ہے۔ مجھے بتایا گیا ہے اور ابھی آپ کی مختصر ویڈیو میں دیکھا گیا ہے، ستیہ  سائی سنٹرل ٹرسٹ آندھرا کے تقریباً 40 لاکھ طلباء کو شری انّ  راگی جاوا سے بنا کھانا فراہم کر رہا ہے۔ یہ بھی ایک قابل تحسین اقدام ہے۔ اگر دیگر ریاستوں کو بھی اس طرح کے اقدامات سے جوڑا جائے تو ملک کو اس سے بہت زیادہ فائدہ ملے گا۔ شری انّ میں صحت ہے، اور امکانات بھی ہیں۔ ہماری ایسی تمام کوششوں سے عالمی سطح پر ہندوستان کی صلاحیت میں اضافہ ہوگا، ہندوستان کی شناخت مضبوط ہوگی۔

ساتھیو،

ستیہ  سائی کا آشیرواد ہم سب کے ساتھ ہے۔ اس طاقت سے ہم ایک ترقی یافتہ ہندوستان کی تعمیر کریں گے اور پوری دنیا کی خدمت کے اپنے عزم کو پورا کریں گے۔ میں ایک بار پھر آپ لوگوں سے رو بروں نہیں ہوسکا  لیکن آئندہ ضرور آؤں گا، میں آپ سب کے درمیان پرانے دنوں کو یاد کرتے ہوئے بڑے فخریہ لمحات گزاروں گا۔ ہیرا جی سے وقتاً فوقتاً ملاقاتیں ہوتی رہتی ہیں، لیکن آج میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ آج اگرچہ میں نہیں آ سکا، میں ضرور آؤں گا اور اسی یقین کے ساتھ ایک بار پھر آپ سب کو دل کی گہرائیوں سے نیک خواہشات پیش کرتا ہوں۔ آپ سب کا بہت شکریہ۔ اوم سائی رام!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
A Leader for a New Era: Modi and the Resurgence of the Indian Dream

Media Coverage

A Leader for a New Era: Modi and the Resurgence of the Indian Dream
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Srinagar Viksit Bharat Ambassadors Unite for 'Viksit Bharat, Viksit Kashmir'
April 20, 2024

Srinagar hosted a momentous gathering under the banner of the Viksit Bharat Ambassador or VBA 2024. Held at the prestigious Radisson Collection, the event served as a unique platform, bringing together diverse voices and perspectives to foster the nation's collective advancement towards development.

Graced by the esteemed presence of Union Minister Shri Hardeep Singh Puri as the Chief Guest, the event saw the attendance of over 400 distinguished members of society, representing influencers, industry stalwarts, environmentalists, and young minds, including first-time voters. Presidents of Chambers of Commerce, Federation of Kashmir Industrial Corporation, House Boat Owners Association, and members of the writers' association were also present.

The VBA 2024 meetup began with an interesting panel discussion on Viksit Kashmir, which focused on the symbiotic relationship between industry growth and sustainable development. This was followed by an interactive session by Minister Puri, who engaged with the attendees through an engaging presentation. Another event highlight was the live doodle capture by a local artist of the discussions.

Union Minister Hardeep Singh Puri discussed how India has changed in the last decade. He said India is on track to become one of the world's top three economies, surpassing Germany and Japan soon.

 

"The country is set to surpass Germany and Japan and will become the world's third-largest economy by 2027-28," he said.

 

According to official estimates, India's economy is projected to reach a remarkable $40 trillion by 2040. Presently, the economy stands at approximately $3.5 trillion.

He also stressed that India's progress is incomplete without a developed Kashmir.

 

"Bharat cannot be Viksit without a Viksit Kashmir," he said.

Hardeep Puri reflected on India's economic journey, noting that in the 1700s, India contributed a significant 25% to the global GDP. However, as experts documented, this figure gradually dwindled to a mere 2% by 1947.

 

He highlighted how India, once renowned as the 'sone ki chidiya' (golden bird), lost its economic strength during British colonial rule and continued to struggle even after gaining independence, remaining categorized under the 'Fragile Five' until 2014.

 

Puri emphasized that the true shift in India's economic trajectory commenced under the Modi government. Over the past decade, the nation has ascended from among the top 11 economies to ranking among the top 5 globally.

The Union Minister also encouraged everyone to participate in the Viksit Bharat 2047 mission, emphasizing that achieving this dream requires the active engagement and coordination of all "ambassadors" of change.

He highlighted India's rapid progress in metro network development, stating that the operational metro network spans approximately 950 kilometres. He expressed confidence that within the next 2-3 years, India's metro network will expand to become the second-largest globally, surpassing that of the United States.

 

Regarding Jammu and Kashmir, he mentioned that through the Smart project, over 68 projects totalling Rs 6,800 crores were conceptualized, with Rs 3,200 crores worth of projects already completed.

 

He further stated that Jammu and Kashmir possesses more potential than Switzerland but has faced setbacks due to man-made crises. He emphasized the Modi government's dedication to the comprehensive development of the region.

The minister highlighted a significant government policy shift from women-centred to women-led development. Drawing from his extensive experience as a diplomat spanning 39 years, he shared that when a country transitions to women-led development, there is typically a substantial GDP increase of 20-30%. 

He mentioned that the government is actively pursuing this objective, citing examples such as the Awas Yojana, where houses are registered in the names of women household members, and the implementation of 33% reservation for women in elected bodies as part of this broader mission. 

He also provided insight into the transformative impact of the Modi government's welfare policies on people's lives. He highlighted the Ujjwala Yojana, noting that 32 crore individuals have received LPG cylinders, a significant increase from the 14 crore connections in 2014. Additionally, he mentioned the expansion of the gas pipeline network, which has grown from 14,000 km to over 20,000 km over the past ten years.

The Vision of Viksit Bharat: 140 crore dreams, 1 purpose 

The Viksit Bharat Ambassador movement aims to encourage citizens to take responsibility for contributing to India's development. VBA meet-ups and events are being organized in various parts of the country to achieve this goal. These events provide a platform for participants to engage in constructive discussions, exchange ideas, and explore practical strategies for contributing to the movement.

Join the movement on the NaMo App: https://www.narendramodi.in/ViksitBharatAmbassador

The NaMo App: Bridging the Gap

Prime Minister Narendra Modi's app, the NaMo App, is a digital bridge that empowers citizens to participate in the Viksit Bharat Ambassador movement. The NaMo App serves as a one-stop platform for individuals to:

Join the cause: Sign up and become a Viksit Bharat Ambassador and make 10 other people

Amplify Development Stories: Access updates, news, and resources related to the movement.

Create/Join Events: Create and discover local events, meet-ups, and volunteer opportunities.

Connect/Network: Find and interact with like-minded individuals who share the vision of a developed India.

The 'VBA Event' section in the 'Onground Tasks' tab of the 'Volunteer Module' of the NaMo App allows users to stay updated with the ongoing VBA events.