Share
 
Comments
PM dedicates AIIMS Bilaspur to the nation
PM inaugurates Government Hydro Engineering College at Bandla
PM lays foundation stone of Medical Device Park at Nalagarh
PM lays foundation stone of project for four laning of National Highway worth over Rs 1690 crores
“Fortunate to have been a part of Himachal Pradesh's development journey”
“Our government definitely dedicates the project for which we lay the foundation stone”
“Himachal plays a crucial role in 'Rashtra Raksha', and now with the newly inaugurated AIIMS at Bilaspur, it will also play pivotal role in 'Jeevan Raksha'”
“Ensuring dignity of life for all is our government's priority”
“Happiness, convenience, respect and safety of women are the foremost priorities of the double engine government”
“Made in India 5G services have started, and the benefits will be available in Himachal very soon”

ہماچل کے گورنر جناب راجیندر ارلیکر جی، ہماچل کے مقبول وزیر اعلیٰ جناب جے رام ٹھاکر جی، بھارتیہ جنتا پارٹی کے قومی صدر، ہم سب اور اس دھرتی کے بچوں کے لیے رہنما، جناب جے پی نڈا جی، مرکزی کابینہ میں میرے ساتھی اور ہمارے رکن پارلیمنٹ جناب انوراگ ٹھاکر جی، ہماچل بی جے پی کے صدر اور پارلیمنٹ میں میرے ساتھی سریش کشیپ جی، پارلیمنٹ میں میرے ساتھی کشن کپور جی، بہن اندو گوسوامی جی، ڈاکٹر سکندر کمار جی، دیگر وزرا، ایم پی اور ایم ایل اے، اور ہم سب کا حوصلہ بڑھانے کے لیے بڑی تعداد میں آئے ہوئے میرے پیارے بھائیو اور بہنوں! وجے دشمی کے موقع پر آپ سب کو اور تمام ہم وطنوں کو ڈھیر ساری نیک خواہشات۔

یہ مقدس تہوار ہر برائی پر قابو پاتے ہوئے جس راستے پر چلنے کا ملک نے عزم کیا ہے، ان پر چلنے کی نئی توانائی دے گا۔ میں خوش قسمت ہوں کہ وجے دشمی کے موقع پر ہماچل پردیش کے لوگوں کو صحت، تعلیم، روزگار اور بنیادی ڈھانچے کے ہزاروں کروڑ کے پروجیکٹ تحفے میں دینے کا موقع ملا ہے۔ اور یہ اتفاق بھی دیکھیں، وجے دشمی ہو اور فتح کی شمع جلانے کا موقع ملے، یہ مستقبل کی ہر جیت کا آغاز لے کر آیا ہے۔ بلاسپور کو تعلیم اور صحت کا دوہرا تحفہ ملا ہے۔

بھائیو اور بہنوں،

یہاں ترقیاتی منصوبوں کو آپ کو سونپنے کے بعد، جیسا کہ جے رام جی نے بتایا، میں ایک اور ثقافتی ورثے کا مشاہدہ کرنے جا رہا ہوں اور کئی سالوں کے بعد مجھے ایک بار پھر کلو دسہرہ کا حصہ بننے کا شرف حاصل ہوگا۔ میں بھی سینکڑوں دیوتاؤں کے ساتھ بھگوان رگھوناتھ جی کے سفر میں شامل ہو کر ملک کے لیے آشیرواد حاصل کروں گا۔ اور آج جب میں یہاں بلاس پور آیا ہوں تو پرانی یادوں کا تازہ ہونا فطری ہے۔ ایک وقت تھا جب یہاں پیدل ٹہلتے تھے۔ کبھی میں، دھومل جی، نڈا جی، پیدل یہاں سے بازار نکل جاتے تھے۔ ہم یہاں بلاس پور کی گلیوں سے بھی گزرے تھے جس میں ایک بہت بڑا رتھ یاترا پروگرام تھا۔ اور پھر سورنا جینتی رتھ یاترا یہاں سے گزری اور یہاں ایک جلسہ عام ہوا تھا۔ اور کئی بار یہاں آنا ہوا، آپ لوگوں کے درمیان رہنا ہوا ہے۔

ہماچل کی اس سرزمین پر کام کرتے ہوئے، مجھے ہماچل کی ترقی کے سفر میں مسلسل شریک مسافر بننے کا موقع ملا ہے۔ اور میں ابھی سن رہا تھا، انوراگ جی زور زور سے بول رہے تھے، یہ مودی جی نے کیا، یہ مودی جی نے کیا، یہ مودی جی نے کہا۔ ہمارے نڈا جی بھی کہہ رہے تھے، مودی جی نے یہ کیا، مودی جی نے یہ کیا اور ہمارے وزیر اعلیٰ جے رام جی بھی کہہ رہے تھے، مودی جی نے یہ کیا، مودی جی نے وہ کیا۔ لیکن مجھے سچ بتانے دو، سچائی بتاؤں یہ کس نے کیا، میں بتاؤں؟ جو کچھ بھی ہو رہا ہے، یہ آپ نے کیا ہے۔ یہ آپ کی وجہ سے ہوا۔ یہ جے رام جی اور ان کی ٹیم ہے کہ جو کام میں دہلی سے لاتا ہوں، یہ لوگ اسے تیز رفتاری سے چلاتے ہیں، اسی لیے ایسا ہو رہا ہے۔ اور اگر یہ ایمس بنتا ہے تو یہ آپ کے ایک ووٹ کی طاقت ہے، اگر سرنگ بنتی ہے تو آپ کے ایک ووٹ کی طاقت ہے، اگر ہائیڈرو انجینئرنگ کالج بنتا ہے تو یہ آپ کے ووٹ کی طاقت ہے، اگر میڈیکل ڈیوائس پارک بن رہا ہے تو یہ بھی آپ کی طاقت ہے ایک ووٹ کی طاقت ہے اور اس لیے آج میں ہماچل کی توقعات کو مد نظر رکھتے ہوئے ایک کے بعد ایک ترقیاتی کام کر رہا ہوں۔

ایک طویل عرصے سے ہم نے دیکھا ہے کہ ملک میں ترقی کے حوالے سے ایک مسخ شدہ ذہنیت رائج ہے۔ یہ سوچ کیا تھی؟ اگر اچھی سڑکیں ہوں گی تو کچھ ریاستوں میں ہوں گی اور کچھ بڑے شہروں میں، دہلی کے آس پاس ہوں گی۔ اچھے تعلیمی ادارے ہوں گے تو بڑے شہروں میں ہوں گے۔ اچھے اسپتال ہوں گے، دہلی میں ہی ہو سکتے ہیں، باہر نہیں ہو سکتے۔ اگر صنعتیں اور کاروبار بھی قائم ہوں گے تو وہ بڑی جگہوں پر لگیں گے اور خاص طور پر ملک کے پہاڑی علاقوں میں بنیادی سہولتیں برسوں کے انتظار کے بعد آخری حد تک پہنچتی تھیں۔ اسی پرانی سوچ کا نتیجہ تھا کہ اس نے ملک میں ترقی کا بہت بڑا عدم توازن پیدا کر دیا۔ اس کی وجہ سے ملک کا ایک بڑا حصہ، وہاں کے لوگ تکلیف، تنگدستی میں رہتے تھے۔

گزشتہ 8 سالوں میں ملک اب اس پرانی سوچ کو چھوڑ کر نئی سوچ، جدید سوچ کے ساتھ آگے بڑھ رہا ہے۔ اب دیکھو بہت دنوں سے اور جب میں یہاں آتا تھا تو لگاتار دیکھتا تھا، یہاں ایک یونیورسٹی سے ہی گزارا ہوتا تھا۔ اور چاہے علاج ہو یا طبی تعلیم، آئی جی ایم سی شملہ اور ٹاٹا میڈیکل کالج پر انحصار تھا۔ سنگین بیماریوں کا علاج ہو یا تعلیم یا روزگار، چنڈی گڑھ اور دہلی جانا اس وقت ہماچل کی مجبوری بن چکی تھی۔ لیکن پچھلے آٹھ سالوں میں ہماری ڈبل انجن والی حکومت نے ہماچل کی ترقی کی کہانی کو ایک نئی جہت تک پہنچایا ہے۔ آج ہماچل میں ایک سنٹرل یونیورسٹی، آئی آئی ٹی، ٹرپل آئی ٹی، انڈین انسٹی ٹیوٹ آف مینجمنٹ (IIM) بھی ہے۔ ملک میں طبی تعلیم اور صحت کا سب سے بڑا ادارہ ایمس بھی اب بلاس پور اور ہماچل کے لوگوں کا فخر بڑھا رہا ہے۔

بلاس پور ایمس بھی ایک اور تبدیلی کی علامت ہے اور اسے ایمس کے اندر گرین ایمس کے نام سے جانا جائے گا، مکمل طور پر ماحول سے محبت کرنے والا ایمس، فطرت سے محبت کرنے والا ایمس۔ ابھی ہمارے تمام ساتھیوں نے بتایا کہ پہلے حکومتیں سنگ بنیاد رکھتی تھیں اور الیکشن ختم ہونے کے بعد بھول جاتی تھیں۔ آج بھی آپ ہماچل جائیں گے، ہمارے دھومل جی نے ایک بار ایک پروگرام کیا تھا کہ پتھر کہاں کہاں پڑے ہیں، اور اس طرح کے کئی پروگرام جہاں پتھر پڑے تھے، کام نہیں ہوا تھا۔

مجھے یاد ہے کہ میں ایک بار ریلوے کا جائزہ لے رہا تھا، آپ کے اونا کے قریب ریلوے لائن بچھائی جانی تھی۔ یہ فیصلہ آج سے 35 سال پہلے لیا گیا تھا۔ پارلیمنٹ میں اعلان ہوا لیکن پھر فائل بند کر دی گئی۔ ہماچل کو کون پوچھے گا بھائی؟ لیکن یہ تو ہماچل کا بیٹا ہے اور ہماچل کو نہیں بھول سکتا۔ لیکن ہماری حکومت کی پہچان یہ ہے کہ وہ جس پروجیکٹ کو ہاتھ لگاتی ہے، اسے مکمل بھی کرتی ہے۔ اٹکنا، لٹکنا، بھٹکنا، وہ زمانہ چلا گیا، دوستو!

ساتھیوں،

ملک کے دفاع میں ہماچل کا ہمیشہ سے ہی بہت بڑا حصہ رہا ہے، ہماچل جسے ملک کے دفاع کے ہیرو کے طور پر ملک بھر میں جانا جاتا ہے، اس ہماچل کو اب اس ایمس کے بعد جان بچانے میں اہم کردار ادا کرنے کے لیے جانا جائے گا۔ سال 2014 تک ہماچل میں صرف 3 میڈیکل کالج تھے جن میں سے 2 سرکاری تھے۔ گزشتہ 8 سالوں میں ہماچل میں 5 نئے سرکاری میڈیکل کالج بنائے گئے ہیں۔ 2014 تک صرف 500 طلبا زیر تعلیم اور پوسٹ گریجویٹ تعلیم حاصل کر سکتے تھے، آج یہ تعداد بڑھ کر 1200 سے زیادہ ہو گئی ہے، یعنی دگنی سے بھی زیادہ۔ ہر سال ایمس میں کئی نئے ڈاکٹر بنیں گے، نرسنگ سے وابستہ نوجوان یہاں تربیت حاصل کریں گے۔ کورونا کی مشکل کے باوجود، حکومت ہند کی وزارت صحت اور جے رام جی کی ریاستی حکومت کی ٹیم نے جو کام کیا ہے، اس کے نتیجے میں آج ایمس یہاں موجود ہے، ایمس نے کام کرنا شروع کر دیا ہے۔

صرف میڈیکل کالج ہی نہیں، ہم ایک اور سمت بڑھ چکے ہیں، ادویات اور زندگی بچانے والی ویکسین بنانے والے کے طور پر بھی ہماچل کے کردار کو بہت وسیع کیا جا رہا ہے۔ بلک ڈرگس پارک کے لیے ملک کی صرف تین ریاستوں کا انتخاب کیا گیا ہے اور ان میں سے ایک کون سی ریاست ہے بھائی، یہ کون سی ریاست ہے؟ یہ ہماچل ہے، آپ کو فخر ہے یا نہیں؟ کیا یہ آپ کے بچوں کے روشن مستقبل کا سنگ بنیاد ہے یا نہیں؟ کیا یہ آپ کے بچوں کے روشن مستقبل کی ضمانت ہے یا نہیں؟ ہم بڑی طاقت کے ساتھ کام کرتے ہیں اور آج کی نسل کے ساتھ ساتھ آنے والی نسل کے لیے بھی کرتے ہیں۔

اسی طرح میڈیکل ڈیوائس پارک کے لیے چار ریاستوں کا انتخاب کیا گیا ہے جہاں آج طب میں ٹیکنالوجی کا بڑے پیمانے پر استعمال کیا جا رہا ہے۔ خاص قسم کے اوزار بنانے کے لیے ملک میں چار ریاستوں کا انتخاب کیا گیا ہے۔ اتنا بڑا ہندوستان، اتنی بڑی آبادی، ہماچل تو چھوٹی ریاست ہے، لیکن یہ ہیروز کی سرزمین ہے اور میں نے یہاں کی روٹی کھائی ہے، قرض بھی چکانا ہے۔ اور اس طرح چوتھا میڈیکل ڈیوائس پارک کہاں بنایا جا رہا ہے، یہ چوتھا میڈیکل ڈیوائس پارک کہاں بنایا جا رہا ہے - آپ کے ہماچل میں بن رہا ہے دوستو۔ دنیا بھر سے بڑے لوگ یہاں آئیں گے۔ نالہ گڑھ میں اس میڈیکل ڈیوائس پارک کا سنگ بنیاد اسی کا حصہ ہے۔ اس ڈیوائس پارک کی تعمیر کے لیے یہاں ہزاروں کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کی جائے گی۔ اس سے متعلق بہت سی چھوٹی صنعتیں آس پاس ترقی کریں گی۔ اس سے یہاں کے ہزاروں نوجوانوں کو روزگار کے مواقع میسر آئیں گے۔

ساتھیوں،

ہماچل کا ایک اور رخ بھی ہے، جس میں یہاں ترقی کے لا محدود امکانات پوشیدہ ہیں۔ یہ میڈیکل ٹورزم کا پہلو ہے۔ یہاں کی آب و ہوا، یہاں کا موسم، یہاں کا ماحول، یہاں کی جڑی بوٹیاں، یہاں کا ماحول اچھی صحت کے لیے بہت موزوں ہے۔ آج ہندوستان میڈیکل ٹورزم کے حوالے سے دنیا کا ایک بڑا پرکشش مرکز بن رہا ہے۔ جب ملک اور دنیا کے لوگ علاج کے لیے ہندوستان آنا چاہتے ہیں تو یہاں کی قدرتی خوبصورتی اس قدر لا جواب ہے کہ وہ یہاں آئیں گے تو ایک طرح سے انھیں صحت کا بھی فائدہ ہوگا اور سیاحت کو بھی فائدہ ہوگا۔ ہماچل کے دونوں ہاتھوں میں لڈو ہیں۔

ساتھیوں،

مرکزی حکومت کی کوشش ہے کہ غریب اور متوسط ​​طبقے کا علاج، اس پر خرچ کم سے کم ہو، یہ علاج بھی بہتر ملے اور اس کے لیے انھیں دور تک نہ جانا پڑے۔ اس لیے آج ہم ایمس میڈیکل کالج، ضلع اسپتالوں میں اہم نگہداشت کی سہولیات اور دیہاتوں میں صحت اور فلاح و بہبود کے مراکز بنا کر ہموار رابطے پر کام کر رہے ہیں۔ اس پر زور دیا جا رہا ہے۔ آیوشمان بھارت اسکیم کے تحت ہماچل کے زیادہ تر خاندانوں کو 5 لاکھ روپے تک کا مفت علاج مل رہا ہے۔

اس اسکیم کے تحت ملک بھر میں اب تک 3 کروڑ 60 لاکھ غریب مریضوں کا مفت علاج کیا جا چکا ہے اور اس میں سے 1.5 لاکھ مستفیدین ہماچل سے تعلق رکھنے والے میرے گھر کے افراد ہیں۔ اب تک حکومت ملک میں ان تمام ساتھیوں کے علاج پر 45 ہزار کروڑ روپے سے زیادہ خرچ کر چکی ہے۔ اگر آیوشمان بھارت اسکیم نہ ہوتی تو اس کا تقریباً دوگنا یعنی تقریباً 90 ہزار کروڑ روپے ان مریضوں کے اہل خانہ کو ان کی جیبوں سے دینے پڑتے۔ یعنی اتنی بڑی بچت بھی غریب اور متوسط ​​طبقے کے خاندان کو بہترین علاج کے ساتھ مل گئی ہے۔

ساتھیوں،

میرے لیے ایک اور بات اطمینان بخش ہے۔ حکومت کی اس طرح کی اسکیموں کا سب سے زیادہ فائدہ ہماری ماؤں، بہنوں، بیٹیوں کو ملا ہے۔ اور ہم جانتے ہیں، ہماری ماں بہنوں کی ایک فطرت ہے، خواہ کتنا ہی درد ہو، جسم میں کتنا ہی درد کیوں نہ ہو، لیکن وہ خاندان میں کسی کو نہیں بتاتیں۔ وہ برداشت کرتی ہیں، کام بھی کرتی ہیں، پورے خاندان کا خیال رکھتی ہیں، کیونکہ ان کے ذہن میں یہ بات رہتی ہے کہ اگر گھر والوں کو بیماری کا علم ہو جائے، بچوں کو پتہ چل جائے تو وہ قرض ادا کر کے بھی میرا علاج کرائیں گے، اور ماں سوچتی ہے، ارے میں بیماری میں ہی کچھ وقت نکال لوں گی، لیکن بچوں کو قرض میں نہیں رہنے دوں گی، ہسپتال جا کر پیسے خرچ نہیں کروں گی۔ ان ماؤں کی پرواہ کون کرے گا؟ میری مائیں ایسی اذیتیں خاموشی سے سہتی رہیں۔ اس بیٹے کا کیا فائدہ، اور اسی جذبے سے آیوشمان بھارت اسکیم نے جنم لیا۔ تاکہ میری ماؤں بہنوں کو بیماری کے ساتھ نہ گزارنا پڑے۔ زندگی میں اس مجبوری کے ساتھ نہ جینا پڑے۔ آیوشمان بھارت اسکیم کے تحت 50 فیصد سے زیادہ مستفید ہماری مائیں، بہنیں اور بیٹیاں ہیں۔

ساتھیوں،

چاہے ٹوائلٹ بنانے کا سوچھ بھارت ابھیان ہو، مفت گیس کنکشن دینے کی اجولا اسکیم ہو، مفت سینیٹری نیپکن فراہم کرنے کی مہم ہو، ماترو وندنا یوجنا کے تحت ہر حاملہ خاتون کو غذائیت سے بھر پور خوراک کے لیے ہزاروں روپے کی مدد ہو، یا اب ہر گھر پانی پہنچانے کی ہماری مہم ہو، ہم اپنی ماؤں اور بہنوں کو با اختیار بنانے کے لیے ایک کے بعد ایک یہ سارے کام کر رہے ہیں۔ ماؤں بہنوں بیٹیوں کی خوشی، سہولت، عزت، تحفظ اور صحت ڈبل انجن والی حکومت کی سب سے بڑی ترجیح ہے۔

مرکزی حکومت، جے رام جی اور ان کی پوری ٹیم نے جو بھی اسکیمیں بنائی ہیں، ان کی حکومت نے انہیں بہت تیز رفتاری اور بڑے جذبے کے ساتھ زمین پر لایا ہے اور ان کا دائرہ بھی بڑھایا ہے۔ یہ ہم سب کے سامنے ہے کہ یہاں ہر گھر میں نل سے پانی پہنچانے کا کام کتنی تیزی سے ہوا ہے۔ ہم نے پچھلی 7 دہائیوں میں ہماچل میں نل کے کنکشن دگنے سے زیادہ دیے ہیں، صرف پچھلے 3 سالوں میں ہم لوگوں سے ملے ہیں۔ ان تین سالوں میں ساڑھے 8 لاکھ سے زیادہ نئے خاندانوں کو پائپ کے پانی کی سہولت ملی ہے۔

بھائیو اور بہنوں،

جے رام جی اور ان کی ٹیم کی ایک اور معاملے میں ملک بہت تعریف کر رہا ہے۔ سماجی تحفظ کے حوالے سے مرکزی حکومت کی کوششوں کو وسعت دینے کے لیے یہ تعریف کی جا رہی ہے۔ آج ہماچل میں شاید ہی کوئی ایسا خاندان ہو جہاں کسی ایک فرد کو پنشن کی سہولت نہ ملتی ہو۔ ایسے خاندانوں کو پنشن اور طبی اخراجات سے متعلق امداد فراہم کرنے کی کوششیں قابل تعریف ہیں، خاص طور پر بے سہارا افراد، جو سنگین بیماری کا شکار ہو چکے ہیں۔ ون رینک ون پنشن کے نفاذ سے بھی ہماچل پردیش کے ہزاروں خاندانوں کو کافی فائدہ ہوا ہے۔

ساتھیوں،

ہماچل مواقع کی سرزمین ہے۔ اور میں جے رام جی کو ایک بار پھر مبارکباد دینا چاہوں گا۔ پورے ملک میں ویکسینیشن کا کام جاری ہے، لیکن آپ کی جان کی حفاظت کے لیے، ہماچل ملک کی پہلی ریاست ہے جس نے 100 فیصد ٹیکہ کاری مکمل کی ہے۔

یہاں ہائیڈرو سے بجلی پیدا ہوتی ہے، یہاں پھلوں اور سبزیوں کے لیے زر خیز زمین ہے اور یہاں روزگار کے لامتناہی مواقع فراہم کرنے والی سیاحت ہے۔ بہتر رابطے کی کمی ان مواقع کے سامنے سب سے بڑی رکاوٹ تھی۔ 2014 سے ہماچل پردیش میں گاؤں گاؤں تک بہترین انفراسٹرکچر تک پہنچنے کی کوششیں کی جا رہی ہیں۔ آج ہماچل کی سڑکوں کو چوڑا کرنے کا کام بھی چاروں طرف جاری ہے۔ اس وقت ہماچل میں کنیکٹیویٹی کے کاموں پر تقریباً 50 ہزار کروڑ روپے خرچ ہو رہے ہیں۔ جب پنجور تا نالہ گڑھ ہائی وے کو فور لین کرنے کا کام مکمل ہو جائے گا تو نالہ گڑھ اور بڈھی کے صنعتی علاقوں کو نہ صرف فائدہ پہنچے گا بلکہ چندی گڑھ اور امبالہ سے بلاس پور، منڈی اور منالی کی طرف جانے والے مسافروں کو بھی زیادہ سہولت ملے گی۔ یہی نہیں، ہماچل کے لوگوں کو گھماؤ دار سڑکوں سے نجات دلانے کے لیے سرنگوں کا جال بھی بچھایا جا رہا ہے۔

ساتھیوں،

ہماچل میں ڈیجیٹل کنیکٹیویٹی کے حوالے سے بھی بے مثال کام کیا گیا ہے۔ پچھلے 8 سالوں میں میڈ ان انڈیا موبائل فون بھی سستے ہوئے ہیں اور نیٹ ورک بھی گاؤں گاؤں پہنچ گیا ہے۔ ڈیجیٹل انڈیا کا سب سے زیادہ فائدہ اگر کسی کو مل رہا ہے تو میرے ہماچل بھائیوں اور بہنوں کو مل رہا ہے، میرے ہماچل کے شہریوں کو مل رہا ہے۔ ورنہ بلوں کی ادائیگی سے لے کر بینک سے متعلقہ کام، داخلے، درخواستیں، ایسے ہر چھوٹے موٹے کام کے لیے پہاڑ سے اتر کر دفتروں کو جانے میں پورا دن لگ جاتا تھا، کبھی رات کو ٹھہرنا پڑتا تھا۔ اب ملک میں پہلی بار میڈ ان انڈیا 5 جی سروس بھی شروع ہو گئی ہے، جس کا فائدہ ہماچل کو بہت جلد ملنے والا ہے۔

ہماچل ملک کی پہلی ریاست ہے، جس نے ریاست کی ڈرون پالیسی بنائی ہے۔ اب ڈرون سے نقل و حمل کے لیے ڈرون کا استعمال بہت بڑھنے والا ہے۔ اور اگر ہمارے پاس اس میں کنور تک کے آلو موجود ہیں تو ہم انہیں وہاں سے ڈرون کے ذریعے اٹھا کر فوراً بڑی مارکیٹ میں لا سکتے ہیں۔ ہمارے پھل خراب ہو جاتے تھے، اب ڈرون کے ذریعے اٹھائے جا سکتے ہیں۔ آنے والے دنوں میں کئی قسم کے فائدے ہونے والے ہیں۔ ہم اس قسم کی ترقی کے لیے کوشاں ہیں، جس سے ہر شہری کی سہولت میں اضافہ ہو، ہر شہری خوشحالی سے جڑا ہو۔ یہ ترقی یافتہ ہندوستان، ترقی یافتہ ہماچل پردیش کے عزم کو ثابت کرے گا۔

مجھے خوشی ہے کہ وجے دشمی کے پر مسرت تہوار پر مجھے رنسمہا پھونک کر فتح کی شروعات کرنے کا موقع ملا اور آپ سب کے بہت سارے آشیرواد کے درمیان یہ سب کرنے کا موقع ملا۔ میں ایک بار پھر آپ لوگوں کو ایمس سمیت تمام ترقیاتی منصوبوں کے لیے بہت بہت مبارکباد دیتا ہوں۔ دونوں مٹھی بند کر کے میرے ساتھ بولیے-

بھارت ماتا کی- جے۔ پوری طاقت سے آواز چاہیے۔

بھارت ماتا کی- جے

بھارت ماتا کی- جے

بھارت ماتا کی- جے

 

بہت بہت شکریہ۔

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
How Union Budget 2023-24 captures the true essence of Amrit Kaal

Media Coverage

How Union Budget 2023-24 captures the true essence of Amrit Kaal
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM to visit Karnataka on 6th February
February 04, 2023
Share
 
Comments
PM to inaugurate India Energy Week 2023 in Bengaluru
Moving ahead on the ethanol blending roadmap, PM to launch E20 fuel
PM to flag off Green Mobility Rally to create public awareness for green fuels
PM to launch the uniforms under ‘Unbottled’ initiative of Indian Oil - each uniform to support recycling of around 28 used PET bottles
PM to dedicate the twin-cooktop model of the IndianOil’s Indoor Solar Cooking System - a revolutionary indoor solar cooking solution that works on both solar and auxiliary energy sources simultaneously
In yet another step towards Aatmanirbharta in defence sector, PM to dedicate to the nation the HAL Helicopter Factory in Tumakuru
PM to lay foundation stones of Tumakuru Industrial Township and of two Jal Jeevan Mission projects in Tumakuru

Prime Minister Shri Narendra Modi will visit Karnataka on 6th February, 2023. At around 11:30 AM, Prime Minister will inaugurate India Energy Week 2023 at Bengaluru. Thereafter, at around 3:30 PM, he will dedicate to the nation the HAL helicopter factory at Tumakuru and also lay the foundation stone of various development initiatives.

India Energy Week 2023

Prime Minister will inaugurate the India Energy Week (IEW) 2023 in Bengaluru. Being held from 6th to 8th February, IEW is aimed to showcase India's rising prowess as an energy transition powerhouse. The event will bring together leaders from the traditional and non-traditional energy industry, governments, and academia to discuss the challenges and opportunities that a responsible energy transition presents. It will see the presence of more than 30 Ministers from across the world. Over 30,000 delegates, 1,000 exhibitors and 500 speakers will gather to discuss the challenges and opportunities of India's energy future. During the programme, Prime Minister will participate in a roundtable interaction with global oil & gas CEOs. He will also launch multiple initiatives in the field of green energy.

The ethanol blending programme has been a key focus areas of the government to achieve Aatmanirbharta in the field of energy. Due to the sustained efforts of the government, ethanol production capacity has seen a six times increase since 2013-14. The achievements in the course of last eight years under under Ethanol Blending Programe & Biofuels Programe have not only augmented India’s energy security but have also resulted in a host of other benefits including reduction of 318 Lakh Metric Tonnes of CO2 emissions and foreign exchange savings of around Rs 54,000 crore. As a result, there has been payment of around Rs 81,800 crore towards ethanol supplies during 2014 to 2022 and transfer of more than Rs 49,000 crore to farmers.

In line with the ethanol blending roadmap, Prime Minister will launch E20 fuel at 84 retail outlets of Oil Marketing Companies in 11 States/UTs. E20 is a blend of 20% ethanol with petrol. The government aims to achieve a complete 20% blending of ethanol by 2025, and oil marketing companies are setting up 2G-3G ethanol plants that will facilitate the progress.

Prime Minister will also flag off the Green Mobility Rally. The rally will witness participation of vehicles running on green energy sources and will help create public awareness for the green fuels.

Prime Minister will launch the uniforms under ‘Unbottled’ initiative of Indian Oil. Guided by the vision of the Prime Minister to phase out single-use plastic, IndianOil has adopted uniforms for retail customer attendants and LPG delivery personnel made from recycled polyester (rPET) & cotton. Each set of uniform of IndianOil’s customer attendant shall support recycling of around 28 used PET bottles. IndianOil is taking this initiative further through ‘Unbottled’ - a brand for sustainable garments, launched for merchandise made from recycled polyester. Under this brand, IndianOil targets to meet the requirement of uniforms for the customer attendants of other Oil Marketing Companies, non-combat uniforms for Army, uniforms/ dresses for Institutions & sales to retail customers.

Prime Minister will also dedicate the twin-cooktop model of the IndianOil’s Indoor Solar Cooking System and flag-off its commercial roll-out. IndianOil had earlier developed an innovative and patented Indoor Solar Cooking System with single cooktop. On the basis of feedback received, twin-cooktop Indoor Solar Cooking system has been designed offering more flexibility and ease to the users. It is a revolutionary indoor solar cooking solution that works on both solar and auxiliary energy sources simultaneously, making it a reliable cooking solution for India.

PM in Tumakuru

In yet another step towards Aatmanirbharta in the defence sector, Prime Minister will dedicate to the nation the HAL Helicopter Factory in Tumakuru. Its foundation stone was also laid by the Prime Minister in 2016. It is a dedicated new greenfield helicopter factory which will enhance capacity and ecosystem to build helicopters.

This helicopter factory is Asia’s largest helicopter manufacturing facility and will initially produce the Light Utility Helicopters (LUH). LUH is an indigenously designed and developed 3-ton class, single engine multipurpose utility helicopter with unique feature of high manoeuvrability.

The factory will be expanded to manufacture other helicopters such as Light Combat Helicopter (LCH) and Indian Multirole Helicopter (IMRH) as well as for repair and overhaul of LCH, LUH, Civil ALH and IMRH in the future. The factory also has the potential for exporting the Civil LUHs in future.

This facility will enable India to meet its entire requirement of helicopters indigenously and will attain the distinction of enabling self-reliance in helicopter design, development and manufacture in India.

The factory will have a manufacturing set up of Industry 4.0 standards. Over the next 20 years, HAL is planning to produce more than 1000 helicopters in the class of 3-15 tonnes from Tumakuru. This will result in providing employment for around 6000 people in the region.

Prime Minister will lay the foundation stone of Tumakuru Industrial Township. Under the National Industrial Corridor Development Programme, development of the Industrial Township spread across 8484 acre in three phases in Tumakuru has been taken up as part of Chennai Bengaluru Industrial Corridor.

Prime Minister will lay the foundation stones of two Jal Jeevan Mission projects at Tiptur and Chikkanayakanahalli in Tumakuru. The Tiptur Multi-Village Drinking Water Supply Project will be built at a cost of over Rs 430 crores. The Multi-village water supply scheme to 147 habitations of Chikkanayakanahlli taluk will be built at a cost of around Rs 115 crores. The projects will facilitate provision of clean drinking water for the people of the region.