“30th and 31st October are a source of great inspiration for everyone as the former is the death anniversary of Govind Guru ji and the latter is the birth anniversary of Sardar Patel ji”
“India’s development story has become a matter of discussion around the world”
“Whatever resolution Modi takes, he fulfills it”
“Scope of irrigation in North Gujarat has increased manifold in 20-22 years owing to irrigation projects”
“Water conservation scheme started in Gujarat has now taken the form of Jal Jeevan Mission for the country”
“More than 800 new village dairy cooperative societies have also been formed in North Gujarat”
“Unprecedented work of linking our heritage with development is being done in the country today”

بھارت ماتا کی جئے،

بھارت ماتا کی جئے ،

کیا ہوا، اتنی اونچی آواز میں بولیئے کہ آپ کی آواز امباجی تک پہنچ جائے۔

بھارت ماتا کی جئے ،

بھارت ماتا کی جئے ،

اسٹیج پرموجود  گجرات کے ہر دلعزیز وزیر اعلیٰ بھوپیندر بھائی، دیگر تمام وزراء، پارلیمنٹ میں میرے رفیق کار اور گجرات بی جے پی کے صدر بھائی سی آر پاٹل، دیگر تمام ممبران پارلیمنٹ اور ایم ایل اے ۔ تحصیل پنچایت اور ضلع پنچایت کے تمام ممبران اور بڑی تعداد میں آئے میرے پیارے گجرات کےلوگوں۔

کیسا ہے اپنا کھاکھریا ٹپا ؟سب سے پہلے تو میں وزیراعلیٰ گجرات اور حکومت کا شکر گزار ہوں کہ مجھے آپ کے درمیان آکر درشن کرنے کا موقع ملا۔ یہ میرے لیے خوش قسمتی کا لمحہ تھا کیونکہ میں اپنے اسکول کے بہت سے دوستوں کے چہرے دیکھ سکتا تھا۔ آپ سب کے قریب آ کر آپ سب کے درشن کر کے آپ کے گھر کے صحن میں آ کر تمام پرانی یادیں بھی تازہ ہو جاتی ہیں، جب بھی موقع ملتا ہے تو اس دھرتی کا اور جن لوگوں نے مجھے پیدا کیا ہے ان کا قرض قبول کر لیتا ہوں۔ میرا  دل مطمئن ہوجاتا ہے۔ تو ایک طرح سے آج کی یہ ملاقات میرے لیے اپنا قرض قبول کرنے کا موقع ہے۔ آج 30 اکتوبر اور کل 31 اکتوبر، یہ دونوں دن ہم سب کے لیے بہت متاثر کن دن ہیں، آج گووند گروجی کی برسی ہے جنہوں نے آزادی کی جدوجہد میں قبائلیوں کو قیادت دی اور انگریزوں کوپسپا کر دیا۔ اور کل سردار ولبھ بھائی پٹیل کی یوم پیدائش ہے۔ ہماری نسل نے حقیقی معنوں میں دنیا کے سب سے بڑے مجسمہ اسٹیچو آف یونٹی سے سردار صاحب کے لیے انتہائی احترام کا اظہار کیا ہے اور آنے والی نسلیں جب سردار صاحب کا مجسمہ دیکھیں گی تو ان کے سر نہیں جھکیں گے، سر بلند رہے گا۔ سردار صاحب کے قدموں پر کھڑا ہر شخص سر اٹھاتا ہے اور سر نیچے نہیں کرتا ہے، وہاں ایسا ہی ہوا ہے۔ گرو گووند جی کی پوری زندگی مادر ہند کی آزادی کی جدوجہد میں گزری اور قبائلی سماج کی خدمت اور حب الوطنی کا جذبہ اس قدر شدید تھا کہ اس سے قربانیوں کی روایت پیدا ہوئی۔ اور وہ خود قربانیوں کی علامت بن گئے، مجھے خوشی ہے کہ گزشتہ برسوں میں میری حکومت نے گرو گووند جی کی یاد میں مانگڑھ دھام قائم کیا ہے جو کہ مدھیہ پردیش-گجرات کے قبائلی پٹے والے علاقے میں ہے، اسے قومی سطح پر قائم کر کے اسے ایک بڑا موقع سمجھتے ہیں ۔

 

میرے پریوار کے عزیز وں ،

یہاں آنے سے پہلے ماں امبے کے قدموں میں  جا کر آشیرواد لینے کا موقع ملا، ماں امبے کی خوبصورتی دیکھ کر خوشی محسوس ہوئی، ماں امبے کے مقام کی خوبصورتی، سنا ہے آپ پچھلے ہفتے سے صفائی میں مصروف تھے۔  اسے کھیرالو کہیں یا امباجی، میں آپ کو اور آپ کے سرکاری ساتھیوں کو آپ نے صفائی مہم میں جو کام کیا ہے اس کے لیے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ ماں امبے کا آشیرواد ہم پر ہمیشہ قائم رہے ، وہاں جس طرح گبرپربت کو ترقی دی جا رہی ہے، وہاں جو شان و شوکت نظر آتی ہے، اور کل میں نے من کی بات میں بھی اس کا ذکر کیا تھا۔ واقعی بے مثال کام کیا جا رہا ہے۔ آج ماں امبے کے آشیرواد سے مجھے تقریباً 6 ہزار کروڑ روپے کے ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کرنے کا موقع ملا ہے۔ یہ منصوبہ، یہ تمام منصوبے کسانوں کی قسمت کومستحکم کرنے والے ہیں۔ شمالی گجرات کی مجموعی ترقی کے لیے اسے ملک سے جوڑنے کے لیے رابطے کا بہت اچھا استعمال ہے۔ ہمارے مہسانہ کے آس پاس کے تمام اضلاع، چاہے وہ پٹن، بناسکانٹھا، سابرکانٹھا، مہی ساگر، کھیڑا، احمد آباد، گاندھی نگر، ترقیاتی کاموں کا اتنا بڑا خزانہ ہیں۔ بہت سارے لوگوں کی خوشی کے لیے کام کی تیز رفتاری کی وجہ سے اس شعبے کی ترقی کا براہ راست فائدہ ہونے والا ہے۔ میں گجرات کے لوگوں کو ان کے ترقیاتی کاموں کے لیے مبارکباد دینا چاہتا ہوں۔

 

میرے عزیز پریوار کے لوگوں ،

آج پوری دنیا میں ہندوستان کی ترقی کا چرچا ہو رہا ہے۔بلند آواز میں کہو کہ یہ ہو رہا ہے یا نہیں۔ پوری دنیا میں ہندوستان کی ترقی کا چرچا ہو رہا ہے یا نہیں؟ اور آپ نے دیکھا ہوگا کہ ہمارے ہندوستان نے ابھی چندریان کو چاند پر پہنچایا ہے۔ گاؤں کا آدمی ہو جو اسکول بھی نہیں گیاہو، 90-80 سال ہو چکے ہوں ، اسے ایسا  لگتا ہے کہ بھارت نے بہت اچھا کام کیا ہے، اور بھارت کو چاند پر پہنچا دیا ہے۔ ہمارا ہندوستان جہاں تک پہنچا ہے وہاں دنیا میں کوئی نہیں پہنچا بھائی۔ جی 20 20 کا دنیا کے لوگوں میں شاید ہی اتنا چرچا ہوا ہو گا جتنا جی 20 کا ہندوستان کی وجہ سے ہوا ہے۔ کوئی ایسا شخص نہیں ہوگا جو جی 20 کے بارے میں نہیں جانتا ہو گا، کرکٹ میں 20-20 کے بارے میں نہیں جانتا ہوگا، لیکن ایسا ماحول بنایا گیا کہ لوگ جی 20 کے بارے میں جان سکیں۔ جی 20میں عالمی رہنما بھارت کے کونے کونے میں گئے اور آخر کار دہلی میں بھی بھارت کی شان اور بھارت کے لوگوں کی صلاحیتیں دیکھ کر دنیا حیران رہ گئی ۔دوستو، بھارت کے بارے میں دنیا کے لیڈروں کا تجسس بڑھ گیا۔ ہندوستان کی طاقت اور صلاحیت پوری دنیا کو نظر آ رہی ہے۔ آج بھارت میں زیادہ سے زیادہ جدید انفراسٹرکچر تعمیر کیا جا رہا ہے۔ سڑک ہو، ریل ہو یا ہوائی اڈہ، آج ساری سرمایہ کاری ہندوستان کے کونے کونے اور گجرات کے ہر کونے میں ہو رہی ہے۔ برسوں پہلے اس کا کوئی سراغ نہیں تھا دوستو۔ آج اتنا بڑا کام ہو رہا ہے، لیکن بھائیو اور بہنو، آپ ایک بات اچھی طرح جانتے ہیں کہ بڑے بڑے ترقیاتی کام ہو رہے ہیں، ہمت سے فیصلے ہو رہے ہیں اور گجرات تیزی سے آگے بڑھ رہا ہے۔ وہاں، حالیہ دنوں میں اس پر مضبوطی سے  کام کیا گیا ہے۔ اور آپ جانتے ہیں کہ آپ کے نریندر بھائی، آپ کو محسوس نہیں ہوا ہوگا کہ وزیر اعظم آ گئے ہیں۔ آپ کو یوں لگے گا جیسے آپ کا نریندر بھائی آیا ہے۔ اس سے بہتر اور کیا ہو سکتا ہے کہ بھائی، اور آپ نریندر بھائی کو جانتے ہیں کہ وہ ایک بار عہد کر لیتے ہیں، وہ اسے پورا کرکے ہی رہتے ہیں۔ اور آپ سب مجھے اچھی طرح جانتے ہیں کہ آج ملک میں جس تیزی سے ترقی ہو رہی ہے اور دنیا میں جس قدر ستائش  اور بحث ہو رہی ہے۔ کیا آپ جانتے ہیں کہ اس کی جڑ میں کون سی طاقت ہے ؟آج دنیا میں جے جے کار ہو رہی ہے ، اس کی اصل میں کون سی طاقت ہے بھائی ، یہ اس ملک کے کروڑوں لوگوں کی طاقت ہے۔ جنہوں نے ملک میں مستحکم حکومت بنائی۔ اور ہم تو  گجرات کے تجربہ کار ہیں، گجرات میں طویل عرصے تک مستحکم حکومت رہنے اور مکمل اکثریت کے ساتھ حکومت ہونے کی وجہ سے ہم یکے بعد دیگرے فیصلے لینے میں کامیاب رہے ہیں اور گجرات کو بھی اس کا فائدہ ہوا ہے۔ ایک ایسی جگہ جہاں قدرتی وسائل کی کمی ہے، وہاں اگر کوئی اپنی بیٹی کو دینا ہو تو سو بار سوچتا تھا ۔پانی کے بحران کا شکار یہ علاقہ آج ترقی کی راہ پر گامزن ہے۔ اس کے مرکز میں طاقت ہے۔ ایک وقت تھا جب ہمارے پاس صرف ڈیری تھی، اس کے علاوہ ہمارے پاس کچھ نہیں تھا۔ اور آج ہمارے چاروں طرف ترقی کے نئے نئے شعبے ہیں، اس وقت پینے کے پانی کا مسئلہ تھا۔ آبپاشی کا پانی نہیں تھا، شمالی گجرات کا تقریباً پورا علاقہ ڈارک زون میں پھنسا ہوا تھا۔ اور اس میں پانی بھی نیچے تھا، ہزار بارہ سو فٹ نیچے، ٹیوب ویل بھی بند ہو جائے ، ایسی حالت تھی، بار بار ٹیوب ویل ڈالنا پڑے اور موٹر بھی بار بار خراب ہوجائے ۔ بہت سی مصیبتوں سے گزر کر ہم سب ان مصیبتوں سے نکل آئے ہیں۔ پہلے کسان مشکل سے فصل حاصل کرتے تھے۔ آج دو دو، تین تین کی ضمانت ہو گئی ہے دوستو۔ اس صورتحال میں ہم نے شمالی گجرات کی زندگی کو بدلنے کا عزم کیا۔ شمالی گجرات میں کایا پلٹ کریں گے، دریا کو وسعت دیں گے اور قبائلی علاقے میں یکسر تبدیلی لائیں گے۔ اور اس میں ایک اہم بات کی گئی اور کنیکٹیویٹی پر زور دیا گیا۔ پانی کی فراہمی ہو، آبپاشی وغیرہ، اس پر زور دیا گیا۔ زراعت کی ترقی کے لیے پوری طاقت استعمال کی۔ اس کی وجہ سے اب گجرات آہستہ آہستہ صنعتی ترقی کی طرف بڑھ رہا ہے۔ اور ہمارا مقصد یہ تھا کہ شمالی گجرات کے لوگوں کو یہاں روزگار ملے۔ ورنہ جب میں پڑھتا تھا تو گاؤں میں کسی سے پوچھتا کہ تم کیا کرتے ہو تو وہ کہتے کہ میں استاد ہوں۔ جب بھی پوچھا تو کہتا تھا کہ وہ کچے میں کام کرتا ہے۔ بڑے حصوں کے دیہاتوں سے دو یا پانچ اساتذہ گجرات کے کنارے کہیں کام پر جایا کرتے تھے۔ کیونکہ یہاں روزگار نہیں تھا، آج صنعت کا جھنڈا لہرا رہا ہے۔ نرمدا اور ماہی کا پانی جو سمندر میں جاتا تھا اب ہمارے کھیتوں میں پہنچ چکا ہے۔ ماں نرمدا کا نام لینے سے پاکیزگی ملتی ہے، آج ماں نرمدا اپنے گھر پہنچی ہیں۔ آج 25-20 سال کا نوجوان شاید نہیں جانتا کہ اس کے والدین نے اپنی زندگی میں کتنی مشکلات کا سامنا کیا ہے۔ آج ہم نے ایسا گجرات بنایا ہے کہ اسے کسی پریشانی کا سامنا نہیں کرنا پڑتا۔ سجلام-سفلم اسکیم اور آج میں شمالی گجرات کے کسانوں کا بار بار شکرگزار ہوں کہ انہوں نے ایک ہی بار میں سجلام-سفلم کے لیے زمین دی تھی۔ تقریبا 500 کلو میٹر کنال ، ایک بھی کورٹ کچہری نہیں ۔ زمین لوگوں نے دی ، کچی کنال بن گئی ، پانی اترنے لگا۔ اس علاقہ کے لوگوں کو سابرمتی کا زیادہ سے زیادہ پانی فراہم کرنے کے انتظامات کئے گئے ہیں۔ ہم نے چھ بیراج بنائے، ان کے لیے کام کیا اور آج ایک بیراج کے افتتاح کا کام بھی ہو گیا ہے۔ ہمارے کسان بھائیوں اور سیکڑوں دیہاتوں کو اس سے بہت فائدہ ہونے والا ہے۔

 

میرے خاندان کے افراد،

ان آبپاشی اسکیموں نے یقیناً کام کیا ہے، لیکن پچھلے 22-20 سالوں میں شمالی گجرات میں آبپاشی کا دائرہ تقریباً کئی گنا بڑھ گیا ہے۔ اور مجھے خوشی ہے کہ جب میں نے شروع میں شمالی گجرات کے لوگوں سے کہا کہ ہمیں اسپرینکل اریگیشن کرنا پڑے گی تو سب میرے بال کھینچتے تھے، غصہ میں آتے تھے اور کہتے تھے کہ جناب اس میں کیا ہوگا؟ اب میرے شمالی گجرات کے ہر ضلع نے اسپرینکل اریگیشن، مائیکرو اریگیشن اور نئی تکنیکوں کو اپنانا شروع کر دیا ہے اور اس کی وجہ سے شمالی گجرات کے کسانوں کو کئی اقسام کی فصلیں اگانے کا امکان ہے۔ آج بناس کانٹھا کا تقریباً 70 ٹکا رقبہ معمولی چھوٹی سینچائی والا بن  گیا ہے۔ گجرات کا پورا خشک خطہ بھی آبپاشی اور نئی ٹیکنالوجی کی مدد سے مستفید ہو رہا ہے۔ جہاں ایک زمانے میں کسان مشکلات میں زندگی گزارتا تھا اور مشکل حالات میں فصلیں اگاتا تھا، آج وہ تھوڑی بہت گندم، ارنڈ اور چنے اگا کر اس سے نکل کر بہت سی نئی فصلوں کی طرف بڑھ گیا ہے۔ اور راوی نے فصل اگانا شروع کر دی ہے، اور آپ نے تو سونف، زیرہ اور اسپغول کا جئے جئے کار چاروں طرف ہے بھائی۔ اسپغول آپ کو یاد ہوگا، کووڈ کے بعد دنیا میں دو چیزوں کا چرچا ہوا، ایک ہماری ہلدی اور دوسرا ہمارا اسپغول ، آج پوری دنیا میں اس کا چرچا ہے۔ آج 90 فیصد اسپغول، اس کی پروسیسنگ شمالی گجرات میں ہوتی ہے۔ اور بیرون ممالک میں بھی اسپغول کا خوب  چرچا ہورہا ہے ۔ لوگوں میں اسپغول کا استعمال بڑھ رہا ہے۔ آج شمالی گجرات پھلوں، سبزیوں اور آلو کی پیداوار میں ترقی کر رہا ہے۔ آلو ہو، گاجر، یہاں تک کہ آم، آملہ، انار، امرود، لیموں اور کیا نہیں۔ ایک کام جو جڑ سےکرے نا تو نسلیں تر جاتی ہیں ، ہم نے ایسے کام کیے ہیں۔ اور اس کی وجہ سے ہم شاندار زندگی گزار رہے ہیں۔ اور شمالی گجرات کے آلو پوری دنیا میں مشہور ہو رہے ہیں۔ جب میں یہاں تھا تو مرکزی کمپنیاں پوچھنے آتی تھیں، آج شمالی گجرات میں برآمدی معیار کے آلو پیدا ہونے لگے ہیں۔ فرنچ فرائز اور اس کی مصنوعات آج بیرون ملک جانا شروع ہو گئی ہیں۔ آج ڈیسا کی آلو اور آرگینک فارمنگ اس کے مرکز کے طور پر ترقی کر رہی ہے۔ اور اس کی خاص مانگ ہے۔ بناس کانٹھا میں آلو پراسیسنگ کے بڑے پلانٹ لگائے گئے ہیں، جس کا فائدہ ریتیلی زمین سے سونا نکالنے میں ہوا ہے جہاں ہمارے آلو اگتے ہیں۔ مہسانہ میں ایگرو فوڈ پارک بنایا گیا تھا، اب ہم بناسکنٹھا میں بھی میگا فوڈ پارک بنانے کے کام کو آگے بڑھا رہے ہیں۔

میرے خاندان کے افراد،

اس شمالی گجرات میں میری ماتاؤں اور بہنوں کو پانی کے گھڑے سر پر اٹھائے 10-5 کلومیٹر پیدل چلنا پڑتا تھا۔ آج گھر میں نل سے پانی آنے لگا، میری ماتا-بہنوں کا جتنا آشیرواد ملے، اور مجھے تو ماتا-بہنوں کا آشیرواد ہمیشہ ہی ملا ہے، اور صرف گجرات ہی نہیں، ہندوستان کے کونے کونے سے مجھے ماتا –بہنوں کا جتنا آشیرواد ملا ہے،  میں تو اس کا تصور بھی  نہیں کرسکتا ۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ  پانی جیسی بنیادی سہولیات، بیت الخلا جیسی سہولیات کی وجہ سے جل کرانتی کی مہم کو آگے بڑھایا گیا ہے۔ یہ نظام بہنوں کی قیادت میں تیار ہوا ہے۔ ہم نے ہر گھر میں پانی کے تحفظ کی مہم پر بھی زور دیا ہے۔ جس کی وجہ سے گجرات کے گھروں کو پانی پہنچایا گیا، بھارت کے گھروں میں پانی پہنچانے کا کام جاری ہے۔ ہر گھر جل مہم ہو، ہمارے قبائلی علاقے ہوں، ٹیکریا ہوں یا چھوٹے پہاڑی سلسلے، کروڑوں لوگوں کی زندگیوں کو بدلنے کا کام کیا گیا ہے۔

 

میرے عزیز احباب،

ڈیری کے شعبے میں میری بہنوں کا بڑا عمل دخل ہے، میں یہ کہہ سکتا ہوں کہ میرے گجرات کی ڈیری میری ماؤں اور بہنوں کی محنت سے چل رہی ہے، اور ڈیری سیکٹر کی ترقی کی وجہ سے گھر کی آمدنی مستحکم ہو گئی ہے۔ آج جس میں میری ماؤں اور بہنوں کا بہت بڑا حصہ ہے۔ انہوں نے بھلے ہی کچھ نہ بنایا ہو، لیکن وہ 50 لاکھ کروڑ روپے کے دودھ کا کاروبار آسانی سے کر سکتے ہیں، یہ میری ماؤں اور بہنوں کی طاقت ہے۔ شمالی گجرات میں پچھلے سال سینکڑوں نئے ویٹرنری ہسپتال بنائے گئے ہیں، اس کی وجہ یہ ہے کہ ہم اس کی طاقت کو سمجھتے ہیں۔ ہم جانوروں کی اچھی صحت کو یقینی بنانے، بہترین خدمات فراہم کرنے اور اپنے جانوروں کی دودھ کی پیداواری صلاحیت کو بڑھانے پر توجہ مرکوز کر رہے ہیں۔ اس طرح ہم آگے بڑھ رہے ہیں کہ جو دودھ ہمیں دو جانوروں سے ملتا ہے اسے حاصل کرنے کے لیے چار جانور رکھنے کی ضرورت نہیں۔ پچھلی دو دہائیوں میں، ہم نے گجرات میں 800 سے زیادہ نئی ویلج ڈیری کوآپریٹو سوسائٹیاں بنائی ہیں۔ آج بناس ڈیری ہو، دودھ ساگر ڈیری ہو، سبر ڈیری ہو، یہ بے مثال انداز میں فروغ پا رہی ہے۔ اور اس ڈیری ماڈل کو دیکھنے کے لیے ملک اور بیرون ملک سے لوگ آتے ہیں۔ دودھ کے ساتھ ساتھ، ہم نے بڑے پروسیسنگ مراکز بھی قائم کیے ہیں تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جا سکے کہ کسانوں کو دوسری پیداوار مل سکے۔ 

میرے خاندان کے افراد،

ڈیری سیکٹر کے کسان جانتے ہیں کہ ان کے لیے جانور کتنی بڑی دولت ہے ، اور کسانوں کے مویشیوں کی حفاظت کے لیے نہ تو مودی صاحب نے کووڈ کے دوران آپ کو ویکسین مفت بھیجی اور نہ ہی ہر جان بچائی۔ آپ کے بیٹے نے یہ کام کیا ہے، ہم نہ صرف لوگوں کو بلکہ جانوروں کو بھی ٹیکے لگا رہے ہیں۔ اور جانوروں کے لیے مفت  ٹیکہ کاری مہم تقریباً 15 ہزار کروڑ روپے سے چل رہی ہے۔ یہاں کسانوں اور مویشی پالنے والوں کی بڑی تعداد ہے، میری ان سے درخواست ہے کہ وہ اپنے جانوروں کو یہ ویکسین لگوائیں، یہ ان کی زندگی کے لیے بہت مفید ہے۔ ٹیکہ کاری ہونی چاہیے، دوستو، دودھ بیچا جاتا ہے لیکن اب گائے کے گوبر کا کاروبار بھی ہونا چاہیے، کسانوں کو اس سے بھی آمدنی ہونی چاہیے، ہم گائے کے گوبر کی دولت کا بہت اچھا کام کر رہے ہیں، یہ کام پورے ملک میں ہو رہا ہے۔ اور اپنی بناس ڈیری میں گائے کے گوبر سے سی این جی پلانٹ بھی بنانا شروع کر دیا ہے۔ گوبردھن یوجنا کے پلانٹ آج ہر جگہ لگائے جا رہے ہیں۔ بایو گیس، بایو سی این جی شروع کی جا رہی ہے اور اب ملک میں ایک بڑی حیاتیاتی ایندھن مہم بھی چل رہی ہے، جس کی وجہ سے میرے کسان اپنے کھیتوں میں پیدا ہونے والے جانوروں کے فضلے سے آمدنی حاصل کر سکتے ہیں، اس بات کو یقینی بنانے کے لیے بھی کام جاری ہے۔ ہم گائے کے گوبر کو بجلی میں تبدیل کرنے کی سمت میں بھی آگے بڑھ رہے ہیں۔

میرے عزیز احباب،

شمالی گجرات کو  آج ترقی کی بلندیوں کو چھونے کی وجہ یہ ہے کہ دن رات ترقیاتی کام جاری ہیں۔ چند دہائیاں پہلے ہم سوچ رہے تھے کہ شمالی گجرات میں کوئی صنعت نہیں آسکتی، آج دیکھیں یہ پورا علاقہ ویرمگام سے، منڈل سے بہوچراجی تک مہسانہ کی طرف آرہا ہے۔ اور شمالی گجرات کی طرف جاتے ہوئے یہ رخ رندھن پور کی طرف جا رہا ہے۔ ذرا تصور کریں، پوری آٹوموبائل انڈسٹری اس علاقے میں پھیل رہی ہے۔ منڈل، پوری آٹوموبائل انڈسٹری کو کثیر جہتی ہونا چاہیے، یہ صورت حال اس وقت پیدا ہوئی جب میرے شمالی گجرات کے لوگوں کو روزگار کے لیے باہر جانا پڑا، اور آج باہر سے لوگ روزگار کے لیے شمالی گجرات میں آنے لگے ہیں۔ دس سالوں میں ہم صنعت کاری کے ساتھ آگے بڑھے ہیں۔ آج آمدنی دوگنی ہو گئی ہے۔ فوڈ پروسیسنگ کے ساتھ ساتھ، دوا سازی اور انجینئرنگ کی صنعتوں نے بھی مہسانہ میں ترقی شروع کر دی ہے۔ بناس کانٹھا، سابر کانٹھا سیرامکس کی سمت میں آگے بڑھے ہیں۔ جب میں چھوٹا تھا تو سنتا تھا کہ سرامکس کے لیے سردار پور کے آس پاس کی مٹی لی جاتی ہے۔ آج اسے زمین پر لانے کا کام ہو گیا ہے۔

 

میرے پریوار کے لوگوں ،

آنے والے وقت میں ملک گرین ہائیڈروجن کی شکل میں ایک طاقتور میڈیم کے ساتھ آگے بڑھنے والا ہے۔ اور اس میں بھی شمالی گجرات کا تعاون بہت زیادہ ہونے والا ہے۔ یہاں روزگار کے نئے مواقع آ رہے ہیں، اور اب یہ علاقہ ایک اہم شمسی توانائی کے طور پر پہچانا جا رہا ہے۔ آپ نے موڈھیرا میں سوریہ گرام دیکھا، لیکن پورا شمالی گجرات سورج کی طاقت سے شاندار طریقے سے آگے بڑھنے والا ہے۔ پہلے پڈان اور پھر بناسکانٹھا میں سولر پلانٹ بنایا گیا اور اب موڈھیرا دن میں 24 گھنٹے سورج کی توانائی سے چلتا ہے۔ شمالی گجرات سورج کی طاقت کا فائدہ اٹھا رہا ہے۔ حکومت کی روف ٹاپ سولر پالیسی، گھر میں اپنی ہی چھت پر سولر، کوئی اپنے گھر میں مفت بجلی حاصل کر سکتا ہے لیکن حکومت کو زیادہ بجلی بھی بیچ سکتا ہے، اس سمت میں کام ہوا ہے۔ پہلے ادائیگی کرکے بھی بجلی نہیں ملتی تھی، اب گجرات کے لوگ وہ بجلی بیچ سکتے ہیں، ہم اس سمت میں آگے بڑھ رہے ہیں۔

دوستو

آج ریلوے کے لیے بہت کام ہوا ہے، گجرات کو 5 ہزار کروڑ روپے سے زیادہ کے پروجیکٹ ملے ہیں۔ مہسانہ-احمد آباد کے درمیان کاریڈور، یہ ایک بڑا کام ہونے جا رہا ہے، اس کا بہت بڑا فائدہ ہونے والا ہے، اس کا افتتاح ہو چکا ہے۔ اس سے پیپاوا، پوربندر، جام نگر کی بندرگاہوں سے رابطہ بڑھنے والا ہے۔ اور گجرات کی ترقی کی رفتار بڑھے گی۔ کسان، مویشی چرانے والے اور صنعتیں سبھی اس سے مستفید ہونے والے ہیں اور اس کی وجہ سے یہاں صنعت کے پھیلنے کا پورا امکان ہے۔ شمالی گجرات میں لاجسٹکس کے لیے مرکز بنائے جائیں گے، ذخیرہ کرنے کے لیے بڑے سیکٹر بنائے جائیں گے، اس کے لیے بھاری بجلی فراہم کی جائے گی۔

میرے خاندان کے افراد،

پچھلے 9 سالوں میں، تقریباً 2500 کلومیٹر کے لیے ایسٹ اور ویسٹ ڈیڈیکیٹڈ فریٹ کوریڈور کا کام مکمل ہو چکا ہے۔ مسافر ٹرین ہو یا مال بردار ٹرین، یہاں ہر کسی کو بہت زیادہ فوائد مل رہے ہیں اور اس بات کو یقینی بنانے کے انتظامات کیے گئے ہیں کہ آخری اسٹیشن تک فوائد مل سکیں۔ فریٹ کوریڈور کا فائدہ یہ ہے کہ آج اگر ٹرک اور ٹینکر کوئی بھی سامان لے کر سڑک پر چلتے ہیں تو اس میں بہت وقت لگتا ہے اور مہنگا بھی۔ اب اس میں بھی فائدہ ہوگا اور رفتار بھی بڑھے گی۔ یہ مال بردار راہداری بڑی گاڑیوں اور سامان سے لدے ٹرکوں کو ٹرین کے اوپر سفر کرنے کی اجازت دیتی ہے۔ بناس میں آپ نے دیکھا ہوگا کہ دودھ سے بھرا ٹرک ریواڑی پہنچتا ہے۔ اس سے وقت کی بچت ہوتی ہے، دودھ خراب ہونے سے بچتا ہے اور کسانوں کی آمدنی بھی بہتر ہوتی ہے۔ اس علاقے کے کسانوں کے دودھ کے ٹینکر بھی پالن پور، ہریانہ اور ریواڑی پہنچ رہے ہیں۔

 

دوستو

کدوسن روڈ، بہوچراجی ریلوے لائن اور ویرمگام ریلوے سماکھیانی ریلوے لائن جسے یہاں دوگنا کیا گیا ہے کو بھی اس رابطے سے فائدہ ہوگا، ٹرینیں تیز رفتاری سے چلیں گی۔ دوستو، شمالی گجرات میں نقل مکانی کے مکمل امکانات ہیں، آپ دیکھیں،  آپ کے پڑوس میں وڈ نگر جیسی اہمیت کاشی کی ہے، ایک کاشی لافانی ہے، ایسا دور کبھی نہیں گزرا جب کاشی میں لوگ نہیں تھے، ہر دور میں وہاں لوگ رہےہیں ۔ کاشی کے بعد وڈ نگر ہے، جو کبھی تباہ نہیں ہوا۔ کھدائی میں یہ سب کچھ دریافت ہوا ہے، دنیا بھر سے لوگ سیاح کے طور پر آنے والے ہیں، ہمارا کام اس سیاحت کا فائدہ اٹھانا ہے، ترنگا ہل، امباجی-ابو روڈ ریل لائن جو راجستھان اور گجرات کو ملاتی ہے۔ دوستو، یہ ریلوے لائن بہت  سے لوگوں کی قسمت بدلنے والی ہے، یہاں سے پھیلنے والی ہے۔ براڈریج لائن یہاں سے سیدھی دہلی پہنچنے والی ہے۔ یہ ملک سے جڑنے جا رہا ہے، جس کی وجہ سے ترنگا، امباجی، دھروئی، یہ تمام سیاحتی علاقے بھی ترقی کرنے جا رہے ہیں۔ یہ ریلوے لائن اس خطے میں صنعتی ترقی اور سیاحت کے شعبے کی ترقی میں بڑا کردار ادا کرے گی۔ اس کے ساتھ امباجی تک بہترین ریل رابطہ قائم ہونے والا ہے۔ دہلی، ممبئی اور ملک بھر کے عقیدت مندوں کے لیے یہاں سفر کرنا آسان ہوگا۔

 

میرے پریوار کے لوگوں ،

آپ کو یاد ہوگا کہ میں کچھ کی بات کرتا تھا۔ ایک زمانہ تھا جب کوئی کچھ کا نام نہیں لینا چاہتا تھا اور آج کچھ میں رنوتسو دھردو کی دنیا میں  اس کی جئے جئے کار ہورہی ہے۔ دنیا کے بہترین دیہات سیاحوں کی سیاحت کے لیے اپنے ڈھورڈو کو ترجیح دیتے ہیں۔ اور اسی طرح ہماری ندا بیٹ کا  بھی چند دنوں میں جئے جئے کار ہونے والا ہے، اسے بھی  ہمیں آگے لے جانا ہے۔ میرے کہنے کا مطلب یہ ہے کہ آج جب میں آپ کے درمیان آیا ہوں، جب میں یہاں نئی نسل کے درمیان آیا ہوں، تو ہم گجرات کے روشن مستقبل، ملک کے روشن مستقبل اور گجرات کی فلاح و بہبود کے لیے پرعزم ہیں۔ مجموعی طور پر، کام کر رہے ہیں. گجرات کے روشن مستقبل، ملک کے روشن مستقبل کے لیے، میں اپنی ہی مٹی، جس مٹی نے مجھے پالا ہے،اس کا آشیرواد لے کر نکلوں گا، میں ایک نئی طاقت لے کر نکلوں گا اور اپنے سے کئی گنا زیادہ محنت کروں گا۔ پہلے کرتا تھا میں پہلے سے زیادہ تیز رفتاری سے ترقیاتی کام کروں گا کیونکہ آپ کی محبتیں اور آپ کا آشیرواد میری توانائی اور میری طاقت ہیں۔ گجرات اور ملک کا خواب ہے کہ جب 2047 میں آزادی کے 100 سال مکمل ہوں تو یہ ملک ایک ترقی یافتہ ملک ہو۔ اسے دنیا کے بڑے ممالک کے برابر ہونا چاہیے۔ اس کے لیے ہم نے کام شروع کیا ہے۔ اس دھرتی کے میرے تمام بزرگوں اور رشتہ داروں، میں آپ کے درمیان آیا ہوں، آپ مجھے آشیرواد دیں کہ میں پوری قوت سے کام کر سکوں، جتنا ہو سکے کام کر سکوں، پوری لگن سے کروں، اسی امید کے ساتھ میرے ساتھ بولیے ،

بھارت ماتا کی جئے،

بھارت ماتا کی جئے،

بھارت ماتا کی جئے،۔

بہت بہت شکریہ۔

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India is top performing G-20 nation in QS World University Rankings, research output surged by 54%

Media Coverage

India is top performing G-20 nation in QS World University Rankings, research output surged by 54%
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM Modi campaigns in Chhattisgarh’s Janjgir-Champa
April 23, 2024
Our country has come a long way in the last 10 years, but a lot of work still remains: PM Modi in Janjgir-Champa
For 60 years, the Congress chanted the slogan of ‘Garibi Hatao’ in the country and kept filling the coffers of its leaders: PM Modi
The Congress never wants to increase the participation of Dalits, backward classes, and tribal people: PM Modi in Janjgir-Champa

Prime Minister Narendra Modi addressed a mega rally today in Janjgir-Champa, Chhattisgarh. Beginning his speech, PM Modi said, "I have come to seek your abundant blessings. Our country has made significant progress in the last 10 years, but there is still much work to be done. The previous government in Chhattisgarh did not allow my work to progress here, but now that Vishnu Deo Sai is here, I must complete that work as well.”

Taking blessings from revered Acharya Mehttar Ram Ji Ramnami and Mata Set Bai Ramnami, PM Modi said, “It is said that the ancestors of the Ramnami community predicted over a century ago when the consecration of the Ram Temple would take place. The work that the BJP has done fulfils the hope of the temple in Ayodhya, which the country had left behind.”

Hitting out at the Congress for its appeasement politics, PM Modi stated, “Appeasement is in the DNA of the Congress. If for appeasement, Congress has to snatch the rights of Dalits, backward classes, and indigenous people, it won't hesitate for a second. Whereas, the BJP is a party that follows the mantra of ‘Sabka Saath, Sabka Vikas’. Our priority is the welfare of the poor, youth, women, and farmers. For 60 years, the Congress chanted the slogan of ‘Garibi Hatao’ in the country and kept filling the coffers of its leaders. But we have lifted 25 crore people out of poverty in the last 10 years.”

PM Modi also spoke about the farmers’ welfare in detail, he said, “The BJP government is committed to enhancing the participation of our mothers and sisters in agriculture manifold. Modern technologies like drones reduce the cost of farming. And when the drone revolution arrives, it will be led by our sisters. Under the "NaMo Drone Didi Yojana," sisters are first being trained as drone pilots, and then the government is providing drones. There is much discussion nationwide about Chhattisgarh's Mahtari Vandana Yojana. Here, millions of sisters are receiving direct assistance every month.”

PM Modi went on to say, “Before 2014, for nearly 60 years, only one family of the Congress directly or indirectly ran the government. The Congress never wants to increase the participation of Dalits, backward classes, and tribal people. In 2014, you entrusted Modi, who came from among you, with such a big responsibility. The BJP made a son of a Dalit family the President of the country. The Congress opposed it. The BJP decided to give the country its first tribal woman President. But the Congress vehemently opposed it.”

Slamming the Congress for their divisive politics, PM Modi said, "The Congress has now started another big game. First, a Congress MP from Karnataka said that they would declare South India a separate country. Now, the Congress candidate from Goa is saying that the Indian Constitution does not apply to Goa. They are clearly stating that the Indian Constitution was imposed on Goa, and they have conveyed these things to the Congress Shehzaada. Today, they are rejecting the Constitution in Goa, tomorrow they will do the same in the entire country."

Highlighting the work done for the backward community, PM Modi stated, “We are providing financial assistance to artisans and craftsmen under Vishwakarma Yojana. For the most marginalized tribes of Chhattisgarh, we have also created the PM Janman Yojana. Earlier, Congress people used to abuse the entire Modi community, the Sahu community; now they talk about breaking Modi's head. The BJP has given constitutional status to the OBC Commission... provided reservation in medical education. So that the children of the poor can also become doctors and engineers, I have started the study of medicine and engineering in the local language. But here, a Congress leader says Modi should die.”

Prime Minister Modi urged voters to exercise their franchise in record numbers in the upcoming Lok Sabha polls. He said, “Your vote for the BJP-NDA will build a developed India. Therefore, you must make the lotus bloom at every booth. Will you make the lotus bloom? You have to go door-to-door and say, "Modi ji has said Jai Johar, has greeted with Ram-Ram."