Share
 
Comments
“Today, from this land of Gujarat and from the banks of Maa Narmada I pay my respectful homage to respected Mulayam Singh Ji”
“Bharuch has a critical role to play in the development of Gujarat and India”
“It is a result of the double-engine government of Narendra-Bhupendra that strives to bring the tasks to completion at meteoric pace”
“Both policy and intention (Niti and Niyat) are needed for realizing the dreams of an enabling environment”
“Indian economy has reached the 5th position from 10th place in 2014”
“Gujarat helped the country a great deal in the war against Corona. Gujarat accounts for 25 per cent share of the country’s pharma export”
“Adivasi community has contributed immensely to the journey of the development”
“Development of Bharuch and Ankleshwar is being carried out along the lines of twin city model of development”

بھارت ماتا کی – جے

بھارت ماتا کی – جے

اسٹیج پر موجود ہمارے گجرات کے مقبول وزیر اعلیٰ بھوپیندر بھائی پٹیل، 2019 کے انتخابات میں ملک میں سب سے زیادہ ووٹ حاصل کرنے اور ایک نیا ریکارڈ قائم کرنے والے پارلیمنٹ میں میرے ساتھی سی آر پاٹل، مرکز میں وزرا کی کونسل میں میرے ساتھی اور گجرات کے فرزند جناب منسکھ بھائی منڈاویہ، اسٹیج پر بیٹھے ہوئے حکومت گجرات کے تمام وزرا، اراکین پارلیمنٹ، ایم ایل اے اور مجھے آشیرواد دینے کے لیے آئے میرے پیارے بھائی اور بہنوں،

ساتھیوں،

میں آج صبح جب یہاں آ رہا تھا کہ ایک افسوسناک خبر ملی۔ ملائم سنگھ یادو جی کا آج انتقال ہو گیا۔ ملائم سنگھ یادو جی، ان کا جانا ملک کے لیے بہت بڑا نقصان ہے۔ ملائم سنگھ جی کے ساتھ میرا رشتہ بہت خاص رہا ہے جب ہم دونوں وزیر اعلیٰ کے طور پر ملتے تھے۔ 2014 میں جب بھارتیہ جنتا پارٹی نے مجھے 2014 کے انتخابات کے لیے وزیر اعظم کے عہدے کے لیے نامزد کیا تو میں نے ان لوگوں کو بھی جو اپوزیشن میں تھے، جن سے میں پہلے سے واقف تھا، کچھ عظیم شخصیات جو ملک کے سینیئر سیاستداں تھے، سیاسی طور پر ہمارے مخالف تھے لیکن میں نے ان سب کو بلانے اور آشیرواد لینے کا عہد کیا تھا اور مجھے وہ دن یاد ہے ملائم سنگھ جی کا آشیرواد، ایک دو نصیحتیں، وہ آج بھی میری امانت ہیں۔ انتہائی سیاسی مخالفت کے درمیان بھی، جب 2019 میں پارلیمنٹ کا آخری اجلاس آخری لوک سبھا تھا اور ملائم سنگھ جی جیسے سینیئر لیڈر نے پارلیمنٹ کے اندر، انھوں نے پارلیمنٹ میں جو کچھ کہا تھا وہ اس ملک کے کسی بھی سیاسی کارکن کی زندگی میں بہت بڑی نعمت ہیں۔ انھوں نے پارلیمنٹ میں کھڑے ہوتے ہوئے کہا بغیر کسی لاگ کے کہا، سیاسی اتھل پتھل کے کھیل کے بغیر کہا؛ انہوں نے کہا تھا کہ مودی جی سب کو ساتھ لے کر چلتے ہیں اور اسی لیے مجھے یقین ہے کہ وہ 2019 میں دوبارہ منتخب ہو کر ملک کے وزیر اعظم بنیں گے۔ کتنا بڑا دل ہو گا، جب تک زندہ رہے، جب بھی موقع ملتا میں ان کا آشیرواد حاصل کرتا رہتا تھا۔ آج، میں ماں نرمدا کے کنارے گجرات کی اس سرزمین سے محترم ملائم سنگھ جی کو خراج عقیدت پیش کرتا ہوں۔ میں خدا سے دعا کرتا ہوں کہ وہ ان کے اہل خانہ اور ان کے حامیوں کو یہ صدمہ برداشت کرنے کی طاقت دے۔

ساتھیوں،

اس بار میں ایسے وقت میں بھروچ آیا ہوں جب ملک آزادی کا امرت مہوتسو منا رہا ہے۔ جب بھی ہم ہندوستان کی تاریخ پڑھتے ہیں اور مستقبل کی بات کرتے ہیں تو بھروچ کی بات ہمیشہ فخر سے ہوتی ہے۔ اس دھرتی نے ایسے کئی بچوں کو جنم دیا ہے، جنھوں نے اپنے کام سے ملک کا سر فخر سے بلند کیا ہے۔ ہمارے دھرتی کے بیٹے کنہیا لال مانک لال منشی جی کی طرح۔ آئین سازی میں ان کی خدمات کو ملک کبھی فراموش نہیں کر سکتا۔ منشی صاحب کے کردار کو کوئی نہیں بھول سکتا، جو سومناتھ کے مندر کی شاندار تعمیر میں سردار کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر چلتے تھے۔ یہی نہیں ہندوستانی موسیقی کے سربراہ پنڈت اومکارناتھ ٹھاکر نے انھیں جس بلندی سے نوازا، ان کا رشتہ بھی اسی مٹی سے رہا ہے۔ ایسی عظیم ہستیوں کے کام سے تحریک لے کر ہم گجرات کے سر فخر سے بلند کرنے اور گجرات کو ترقی یافتہ بنانے کے لیے کام کر رہے ہیں۔

بھائیو اور بہنوں،

گجرات کی، ملک کی ترقی میں چاہے وہ گجرات کی ترقی ہو، چاہے ملک کی ترقی ہو، بھروچ کا حصہ بہت اہم ہے۔ بھروچ کی شرکت، ایک وقت تھا جب بھروچ صرف اپنے سنگ دانے کی وجہ سے جانا جاتا تھا۔ آج میری بھروچ کی صنعت، کاروبار، تجارت، بندرگاہ بہت سی چیزوں میں ان کی ستائش کی جا رہی ہے۔ اور آج گجرات میں میرے قیام کے دوران سنگ بنیاد رکھنے اور افتتاح کے کام ہو رہے ہیں۔ میں نے ایک ہی دورے میں افتتاح اور سنگ بنیاد رکھنے کے پروگرام کیے ہیں۔

بھائیوں،

یہ گجرات کہاں سے کہاں پہنچ گیا اور اب ہمارا بھروچ ضلع بھی ایک کاسموپولیٹن ضلع بن چکا ہے۔ یہاں ہندوستان کی تقریباً تمام ریاستوں کے بھائی بیٹھے ہوں گے۔ اور اگر آپ پورے بھروچ ضلع میں جائیں تو آپ کو کوئی کیرالہ، کوئی بنگال، کوئی بہار سے ملے گا۔ ملک بھر کے لوگ، ایک وقت تھا کلکتہ، دہلی، ممبئی اسے کاسموپولیٹن کہا جاتا تھا۔ آج گجرات نے اتنی ترقی کی ہے کہ گجرات کے کئی اضلاع کاسموپولیٹن بن چکے ہیں۔ اور پورے ملک کو اپنے ساتھ سمیٹ کر پیار سے جینا شروع کر دیا۔ یہ گجرات کی ترقی کے سفر کی بلندی ہے۔

بھائیو اور بہنوں،

آج پہلا بلک ڈرگ پارک گجرات کو دیا گیا ہے اور وہ بھی میرے بھروچ کو مل گیا ہے۔ کیمیکل سیکٹر سے متعلق کئی پلانٹس کا افتتاح بھی کیا گیا ہے۔ اس کے ساتھ رابطے سے متعلق دو بڑے منصوبوں، انکلیشور، راج پیپلا اور اسٹیچو آف یونٹی ایکتا نگر کو جوڑنے والی سڑک اور سب سے بڑی بات کئی سالوں سے چل رہی تھی۔ یہ تب بھی ہوتا تھا جب میں وزیر اعلیٰ تھا اور اس وقت بھی ہوتا تھا جب یہاں سے بڑے لیڈر دہلی میں بیٹھے تھے۔ لیکن کسی نے ہماری بات نہیں سنی۔ جس طرح ضلع بھروچ ترقی کر رہا تھا۔ اب بھروچ بڑودہ یا سورت کے ہوائی اڈے پر انحصار نہیں کر سکتا، بھروچ کا اپنا ہوائی اڈہ ہونا چاہیے اور اسی لیے آج انکلیشور میں نئے ہوائی اڈے کا سنگ بنیاد رکھا جا رہا ہے۔

ساتھیوں،

صنعتوں کے معاملے میں، بھروچ ایک ایسا ضلع ہے، جہاں ملک کی کئی چھوٹی ریاستوں سے زیادہ صنعتیں ہیں۔ کسی ریاست میں جتنی صنعتیں ہوتی ہیں اس سے زیادہ صرف بھروچ ضلع میں صنعتیں ہیں۔ اور یہ ایک ضلع کی صنعتیں جتنا روزگار دے رہی ہیں، یہ بھی اپنے آپ میں بہت بڑا ریکارڈ ہے بھائی۔ ملک اور بیرون ملک سے اتنا کاروبار ہونے کے بعد اب جب ایئرپورٹ مل رہا ہے، تو ترقی کو ایک نئی اڑان ایک نئی رفتار ملنے جا رہی ہے اور جب نریندر بھوپیندر کی ڈبل انجن والی حکومت ہے تو ایئرپورٹ کا کام بھی بہت تیزی سے مکمل ہو جائے گا۔ ایئرپورٹ کی تعمیر سے صنعتکاروں کی آمد و رفت، بڑے افسروں کا آنا جانا تیز ہو جائے گا، ترقی بھی تیز ہو گی۔ برآمدات کو مزید فروغ ملے گا۔

بھائیو اور بہنوں،

آج ہم گجرات کی ایک الگ تصویر دیکھتے ہیں۔ گجرات نیا ہے، بدل گیا ہے، اور یہ آپ کے اپنے گجراتی بھائی ہیں۔ اور بہت سی چیزیں ہم اپنے سامنے دیکھتے ہیں لیکن دو دہائیوں پہلے کا وہ دن یاد کریں تو کیسا لگتا ہے۔ دو دہائیوں پہلے اپنے گجرات کی کیا پہچان تھی، تاجر ایک جگہ سے سامان لے کر دوسری جگہ بیچتے تھے اور بیچ میں ملنے والی دلالی سے اپنا گزارہ کرتے تھے۔ زراعت میں پیچھے، صنعت میں پیچھے اس کی پہچان تھی۔ کیونکہ اس کے پاس خام مال نہیں تھا۔ ایسے میں آج گجرات نے دو دہائیوں میں محنت کرکے صنعتی شعبے میں ترقی کی بلندیوں کو حاصل کیا ہے۔ ہم سب نے اپنی اپنی بندرگاہ، اپنی ساحلی پٹی اور ترقی کی رفتار کو اسی طرح بھر دیا جس طرح ہم نے اسپیئر پارٹس بنانے کے لیے چھوٹی صنعتوں کا جال بھر دیا ہے۔ اور ہمارے قبائلی بھائی اور بہن، ہمارے ماہی گیر بھائیوں اور بہنوں کا، ان کا کتنا برا حال تھا۔ کوئی پوچھنے والا نہ تھا۔ آج 20، 22، 25 سال کے نوجوانوں کو معلوم بھی نہیں ہوگا کہ انھیں یہاں رہنے کے لیے کتنی محنت کرنی پڑی۔ وہ یہ بھی نہیں جانتے کہ گجرات میں کسی زمانے میں ایسی صورتحال تھی۔ اور گجرات کے عوام کے تعاون سے بہت محنت کرکے آج اس مقام تک پہنچا ہے۔ اور ہر کوئی اونچی چھلانگ لگانے کو تیار بیٹھا ہے اور اسی لیے آنے والے دنوں میں ہمیں اونچی چھلانگ لگانی ہے۔ امرت کال کا آغاز امرت مہوتسو کے ساتھ ہوا ہے، آزادی کے 75 سال، اسی طرح گجرات کے نوجوانوں کے لیے یہ سنہری دور شروع ہوا ہے۔ اس سنہرے وقت کو جانے نہ دیں بھائیو۔ کسی بھی جگہ ترقی کب ہوتی ہے بھائیو؟ اگر آپ ترقی کرنا چاہتے ہیں تو آپ کو بھی ایسا ہی ماحول، دوستانہ ماحول، حوصلہ افزا ماحول اور ایسا ماحول چاہیے جو رکاوٹیں پیدا نہ کرے بھائی۔ اور سب سے بڑھ کر اصول و ضوابط کی ضرورت ہے۔ بہترین انفراسٹرکچر، اور اس سب کے ساتھ ساتھ پالیسی اور نیت کی بھی ضرورت ہے۔ اکیلے پالیسی سے کچھ نہیں ہوتا، پالیسی جتنی بھی اچھی ہو، لیکن اگر نیت گڑھے میں گئی ہو تو سب گڑھے میں جاتا ہے۔ یہ بھروچ کو کون نہیں پہچانتا بھائیوں؟ شام کو پانچ بتی ایکسٹینشن جانا پڑتا تو تو کیسی دقت ہوتی تھی۔ امن و امان کی کیا صورت حال تھی بھائی یہ ہوتا تھا یا نہیں؟ وہ دن تھے جب کسی کو اغوا کیا جاتا جب کسی کو گھر خالی کرنے کی دھمکیاں ملتی تھیں۔ آج امن و امان میں رہتے ہیں کہ نہیں رہتے؟ خوشی اور سکون سے رہتے ہیں کہ نہیں رہتے؟ اور سب کو اس کا فائدہ ہوا یا نہیں؟ امن و امان ہو تو ہمارے قبائلی بھائیوں اور غریب بھائیوں کو اس میں زیادہ سے زیادہ فائدہ ہوتا ہے۔ ورنہ یہاں بھروچ میں قبائلی لڑکیوں کو کام دے کر ان کے ساتھ کیسا سلوک کیا جاتا تھا اور قبائلی ان سے اپنا غصہ ظاہر کرتے تھے۔ لیکن جب مجھے اپنے قبائلی بھائیوں اور بہنوں کا تعاون ملا تو مجھے اپنے قبائلی بھائیوں اور بہنوں کا آشیرواد ملتا رہا۔ ایک وقت تھا، صحت کی کوئی سہولت نہیں تھی، ہسپتال جانا ہو تو سورت اور بڑودہ تک بھاگنا پڑتا تھا۔ زراعت، ماں نرمدا کے کنارے رہنے کے باوجود ہمیں پانی کے لیے ترسنا پڑتا تھا۔ بھائیو بہنوں، اگر بھروچ کو ترقی دینا ہے تو صنعتی ترقی ضروری تھی۔ اور اس وقت بڑودہ واپی ایک اہم شاہراہ تھی، قریب ہی چند کارخانے نظر آتے تھے اور لوگ خوش ہوتے تھے کہ ہمارے یہاں صنعتی ترقی ہے۔ ہم نے دیکھا کہ یہاں ایک غیر ترقی یافتہ علاقہ ہے، ہمیں وہاں بھی ترقی کرنی ہے، اور قبائلی توسیع میں جھگڑیا جیسی توسیع تک صنعتوں کو پہنچایا۔ صنعتوں کو خشک علاقوں میں بھی لے کر گئے جس کی وجہ سے زرعی زمین محفوظ رہی اور صنعتی ترقی بھی ہوئی۔ اور آج اپنا گجرات مینوفیکچرنگ کا مرکز بن چکا ہے۔ برآمدات کا مرکز بن گیا، دو دہائی پہلے اس کا نام و نشان تک نہیں تھا بھائی۔ بھائیو اور بہنو، آج دہیج-2، دہیج-3، سائکھا، ولایت ترقی کے لیے ان کی نئی خوشحالی کے دروازے بن چکے ہیں۔ جدید شاہراہوں، رو روفیری سروس کی بات کی جائے تو یہ رو رو فیری سروس ترقی کی ایک بڑی طاقت بن کر ابھری ہے۔ اور خاص طور پر پیٹرولیم کیمیکل اور پیٹرو کیمیکل کے شعبے میں جو کام ہو رہا تھا، ہم سب یہاں اس کا فائدہ اٹھا رہے ہیں۔ اور جلد ہی ضلع بھروچ میں دنیا بھر سے ہزاروں کروڑ روپے کی کرنسی انویسٹمنٹ آئے گی۔ اور یہاں جو پیداوار ہوتی ہے اس کا 80 فیصد دنیا کے ممالک میں جاتا ہے۔ ہم محنت کرتے ہیں اور روپیہ ڈالر کے ساتھ واپس آتا ہے بھائیو۔ یہ طاقت میرا دہیج اور ضلع بھروچ دے رہا ہے۔ آج پورے ملک کے لیے دہیج کا ماڈل کیمیکل اور پیٹرولیم سے جڑے پورے شعبے کے لیے ایک ماڈل بن گیا ہے۔

بھائیو-بہنوں،

آج جو نیا پروجیکٹ شروع کیا گیا ہے وہ نہ صرف میرے گجرات کی طاقت میں اضافہ کر رہا ہے بلکہ میرا بھروچ ضلع بھی متحرک ہو رہا ہے۔ اور یہاں جو نئے پلانٹس بنے ہیں، یہ ڈبل انجن والی حکومت دوہرے فائدے کی بہترین مثال بن گئی ہے بھائی۔ گجرات کے کیمیکل پلانٹس اور مرکزی حکومت کی کمپنیاں بھی اس میں حصہ لیتی ہیں۔ یہاں بننے والی کیمیکل، مینوفیکچرنگ انڈسٹری کا بھی ٹیکسٹائل انڈسٹری کو فائدہ ہونے والا ہے۔ آپ جانتے ہیں کہ اگر ٹیکسٹائل انڈسٹری کو فائدہ ہوتا ہے تو کپاس پیدا کرنے والے کسان کو بھی فائدہ ہوتا ہے۔ یہ سب سے زیادہ اجرت والا، قابل روزگار شعبہ ہے۔ جو بھائی اور بہنیں ہمارے بنکر بھائیوں کی مدد کرتے ہیں وہ بھی ان سے بہت فائدہ اٹھاتے ہیں۔ اسی طرح کھاد، اور ضروری کیمیکلز؛ کھادیں ہمارے بھروچ میں بنتی ہیں اور یہ پورے ملک میں قابل رسائی ہے۔ جی اے سی ایل کے کیمیکل پلانٹ کی وجہ سے 2500 کروڑ سے زیادہ کا نیا کاروبار آئے گا۔ اور جب میں بھروچ آیا ہوں تو میں آپ کو یاد دلاتا ہوں کہ میں ہر روز کہتا ہوں کہ اگر ملک کو تیزی سے آگے لے جانا ہے تو ہر شہری بھی بڑا کام کر سکتا ہے۔ عام شہری بھی ملک کو آگے لے جا سکتا ہے۔ آپ کو ایسا لگتا ہوگا کہ اگر خود کے لیے محنت کرتا ہو تو ملک کو کیسے آگے لے جائے گا۔ ارے آپ لوکل فار ووکل کا منتر پکڑ لیجیے، میں کسی بھی قسم کی غیر ملکی پروڈکٹ سے دور رہوں گا، دیوالی آنے والی ہے، ایسے پٹاخے بازار میں آئیں گے، دو منٹ کے لیے آسمان روشن کر دیں گے، لیکن ہم نہیں جانتے کہ کتنے غریبوں کی محنت پر پانی پھیر دیتے ہیں۔ اگر بھارت میں بنے پٹاخے لیں تو شاید روشنی کم ہو، شاید چمک، آواز کم ہو، لیکن بھائی میرے غریب بھائیوں کا گھر چمکے گا۔ آسمان دو منٹ چمکے یا نہ چمکے لیکن 12 ماہ میں اس کی زندگی چمکے گی۔ تو ہم اپنے ملک کو کیوں نہ لیں، یہاں کی ایک فیکٹری سے 700 کروڑ روپے بچ سکتے ہیں، میرے بھروچ ضلع کے شہری فیصلہ لیں، وہ اتنے پیسے بچا کر میرے ملک کا سرمایہ بھی بچا سکتے ہیں۔

بھائیو اور بہنوں،

آپ کو یہ جان کر خوشی ہوگی کہ 2014 میں آپ نے مجھے اپنے آشیرواد سے دہلی بھیجا تھا، پہلے جو کام گجرات میں کیا اس کا تجربہ تھا، آپ کا آشیرواد تھا۔ آپ جانتے ہیں کہ جب میں 2014 میں دہلی گیا تھا تو ہندوستان عالمی معیشت میں 10ویں نمبر پر تھا۔ آج ہندوستان پانچویں نمبر پر پہنچ گیا ہے۔ اور یہی نہیں، اگر ہم 6 سے 5 تک چلے گئے تو اس ملک کا غرور کئی گنا بڑھ گیا، کیونکہ پہلے پانچ وہ لوگ تھے جنہوں نے ہم پر ڈھائی سو سال حکومت کی، ہم غلام تھے۔ اب ان کو پیچھے چھوڑ کر یہ میرے ملک کے پر جوش نوجوان میرے ملک کو آگے لے کر گئے ہیں۔ اور اس کے لیے آج کی نوجوان نسل، کسان، مزدور، چھوٹے تاجر، چھوٹے مہم جو سب اس کے حقدار ہیں۔ اور جب ملک 10 سے 5 نمبر پر پہنچ گیا ہے تو پھر اس کا حق آپ کی محنت کو بھی جاتا ہے۔ اور آپ کی طرف سے میں وطن کے ایسے محنتی لوگوں کو سلام کرتا ہوں۔

بھروچ کے اندر ایک فخر ہو ایسا کام ہو رہا ہے۔ ہم جانتے ہیں کہ ماضی میں اگر کوئی پینے کا پانی لگاتا تھا تو لوگ اسے نسل در نسل یاد کرتے تھے، یہاں تک کہ اگر کوئی ایک پیالہ پانی پی کر جاتا تو لوگ دعائیں دیتے تھے، کیونکہ یہ زندگی کے لیے اہم ہے۔ پھر آج حکومت ہند بھروچ کو دواؤں کی تیاری کا اتنا بڑا سربراہ بنائے، جان بچانے کا کام کرے، تو پھر یہ میرے بھروچ کے لوگ کتنا عظیم انسانیت کا کام کر رہے ہیں۔ اور آپ کو کتنا فخر ہے کہ بھائی آپ کی وجہ سے بے شمار جانیں بچ جانے والی ہیں۔ اور اس کی وجہ سے ہزاروں نئی ​​نوکریاں آنے والی ہیں۔ ہم نے دیکھا کہ کورونا نے پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے۔ کتنا بڑا بحران آیا، سب نے سوچا کہ کیسے بچنا ہے، اسی میں ہمیں معلوم ہوا کہ یہ فارما سیکٹر کتنا اہم ہے۔ دوا سازی کی صنعت کی کیا اہمیت ہے؟ اور گجرات نے پچھلی دو دہائیوں میں جو چھلانگ لگائی ہے، اس نظام نے کورونا کے سامنے گجرات کی جنگ لڑنے میں بڑی چھلانگ لگائی ہے بھائیو۔ گجرات میں بنی دوا، بنائی گئی ویکسین نے لاکھوں لوگوں کی جان بچائی۔ یہ خوشی کی بات ہے کہ آج ملک کی 25 فیصد فارما کمپنیوں کا تعلق گجرات سے ہے۔ آج آپ سے بات کرتے ہوئے مجھے وہ دن بھی یاد آ رہے ہیں جب کچھ لوگوں نے بھروچ کی ترقی کو روکنے کے لیے اپنی پوری طاقت لگا دی تھی۔ لیکن جب مرکز میں ہماری حکومت بنی، گجرات کو نریندر بھوپیندر کی ڈبل انجن کی طاقت ملی، تب ہم نے ان تمام رکاوٹوں کو دور کر دیا۔ میرے بھروچ کے لیے 24 گھنٹے پینے کا صاف پانی، ضلع بھروچ کے کھیتوں کو پانی پہنچانے کا کام کیا گیا۔ اس میں بھی ایک رکاوٹ تھی، اس نکسلی نفسیات نے پہلے تو سردار سروور ڈیم کو روکنے کی بھر پور کوشش کی اور یہ اربن نکسل اب ایک نئی شکل کے ساتھ داخل ہونے کی کوشش کر رہے ہیں۔ انھوں نے پرجوش نوجوانوں کو راغب کرتے ہوئے کپڑے بدلے ہیں۔ میں اپنے قبائلی بھائیوں سے خصوصی طور پر کہتا ہوں کہ نکسل ازم بنگال، جھارکھنڈ، بہار، چھتیس گڑھ، مدھیہ پردیش کے کچھ حصے، اڈیشہ، آندھرا، تلنگانہ اور مہاراشٹر کے گڑھ چرولی میں شروع ہوئے نکسل ازم نے ہمارے قبائلی نوجوانوں کی زندگیاں تباہ کر دیں۔ اس کے ہاتھ میں بندوق تھما دی، اسے موت کا کھیل کھیلنے پر اکسایا، چاروں طرف بحران بڑھ گیا۔ اس وقت میرے سامنے سوال یہ تھا کہ عمر گام سے امباجی تک میری پوری سابقہ ​​توسیع، میں نکسل ازم کو گجرات میں داخل نہیں ہونے دینا چاہتا، مجھے اپنے قبائلی بھائیوں اور بہنوں کو بچانا ہے، مجھے اس قسم کی بیماری نہیں ہونے دینی ہے۔ چنانچہ عمرگام سے امباجی تک ترقی کی۔ اور مجھے اطمینان کے ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ میری بات کو قبائلی بھائیوں اور بہنوں نے قبول کیا، وہ سمجھتے تھے کہ اچھے دن آئیں گے، اور نتیجہ یہ نکلا کہ اس راستے سے نکسل ازم گجرات میں داخل نہیں ہو سکا۔ اس کے لیے میں اپنے قبائلی بھائیوں اور بہنوں کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ لیکن اب شہری نکسل اوپر سے اڑ کر داخل ہو رہے ہیں، گجرات کی نوجوان نسل کو مجھے تباہ نہیں ہونے دینا ہے، ہمیں اپنے بچوں کو خبردار کرنا چاہیے کہ شہری نکسلیوں نے ملک کو تباہ کرنے کا بیڑا اٹھایا ہے، وہ بیرونی طاقتوں کے ایجنٹ بن کر آئے ہیں، گجرات ان کے آگے کبھی نہیں جھکے گا۔ یہاں قبائلی وزیر اعلیٰ تھے، لیکن عمرگام سے امباجی تک گنتی کے اسکول بھی نہیں تھے۔ میں آیا اور اس کے بعد اسکولوں کو 10 سے 12 تک مکمل توسیع دی گئی۔ اور آج میرے قبائلی بہن بھائی جہاز اڑانے کی تربیت لینے کینیڈا جاتے ہیں۔ ڈاکٹر بن رہے ہیں، وکیل بن رہے ہیں، اور میں فخر سے کہہ رہا ہوں کہ میرے قبائلی بچے گجرات کا نام روشن کر رہے ہیں۔ کوئی سوچ بھی نہیں سکتا کہ قبائلی کے نام پر یونیورسٹی ہونی چاہیے، برسا منڈا یونیورسٹی، گجرات میں گرو گوبند یونیورسٹی نے قبائلی نوجوانوں کو نیا اعتماد اور نئے مواقع فراہم کیے ہیں۔

بھائیو اور بہنوں،

ترقی کے اس سفر میں ہمارے قبائلی عوام کا بڑا تعاون رہا ہے۔ اسی لیے بھگوان برسا منڈا کا یوم پیدائش، جسے ہمارے قبائلی دیوتا کے طور پر پوجتے ہیں، ہم نے اسے قبائلی دن کے طور پر منانے کا اعلان کیا۔ گجرات سمیت پورے ملک میں جنگ آزادی میں لڑنے والے قبائلیوں کی یاد میں یادگاریں بنائیں۔ آج بھی قبائلی توسیع میں ہونے والی پیداوار کے بارے میں فکر ہے، خواہ وہ میرے قبائلی بھائیوں کے بارے میں ہو یا میرے ماہی گیر بھائیوں کے بارے میں، دونوں سمتوں میں تیزی آنی چاہیے۔ ان کی کوششوں اور آنے والے وقت میں بھروچ انکلیشور بھی احمد آباد-گاندھی نگر کی طرح ترقی کر رہا ہے۔ لوگ نیویارک-نیو جرسی کی طرح بھروچ انکلیشور کے بارے میں بھی بات کریں گے۔ یہ وہ نظام ہے جو ہماری صلاحیتوں کو متعارف کراتا ہے۔ اور نوجوانوں سے کہوں گا کہ آنے والے 25 سال آپ کے ہیں۔ ترقی کے سفر پر یہاں آئیں، کندھے سے کندھا ملا کر نکلیں۔ آج آپ لوگ اتنی بڑی تعداد میں آئے، ہم نے گجرات کی ترقی کے سفر میں ایک نیا عہد پورا کرنے کا عزم کیا ہے۔ لہٰذا، نرمدا کے کنارے رہنے والے میرے بھائیو اور بہنوں، میں آپ کے لیے بہت سی نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں، اور ہم سب بھروچ ضلع کو نئی بلندیوں پر لے جائیں، میرے ساتھ اسی یقین کے ساتھ بولیں، بھارت ماتا کی – جے، بھارت ماتا کی – جے، بھارت ماتا کی – جے۔

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
India ‘Shining’ Brightly, Shows ISRO Report: Did Modi Govt’s Power Schemes Add to the Glow?

Media Coverage

India ‘Shining’ Brightly, Shows ISRO Report: Did Modi Govt’s Power Schemes Add to the Glow?
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM condoles the passing away of former Union Minister and noted advocate, Shri Shanti Bhushan
January 31, 2023
Share
 
Comments

The Prime Minister, Shri Narendra Modi has expressed deep grief over the passing away of former Union Minister and noted advocate, Shri Shanti Bhushan.

In a tweet, the Prime Minister said;

"Shri Shanti Bhushan Ji will be remembered for his contribution to the legal field and passion towards speaking for the underprivileged. Pained by his passing away. Condolences to his family. Om Shanti."