’’یہ عزم کا اعادہ کرنے کا دن ہے‘‘
’ ہندوستان میں ہتھیاروں کا استعمال الحاق کے لیے نہیں بلکہ دفاع کے لیے کیا جاتا ہے‘‘
’’ہم رام کی ’مریادہ‘ (حدود) کو جانتے ہیں اور یہ بھی جانتے ہیں کہ اپنی سرحدوں کی حفاظت کیسے کی جاتی ہے‘‘
’’بھگوان رام کی جائے پیدائش پر تعمیر ہونے والا مندر صدیوں کے انتظار کے بعد ہم ہندوستانیوں کے صبر کی فتح کی علامت ہے‘‘
’’ہمیں بھگوان رام کے نظریہ کا ہندوستان بنانا ہے‘‘
"ہندوستان آج دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کے ساتھ ساتھ سب سے قابل اعتماد جمہوریت کے طور پر ابھر رہا ہے"
’’ہمیں معاشرے میں برائیوں اور تفریق کو ختم کرنے کا عہد کرنا چاہیے‘‘

سیا ور رام چندر کی جے،

سیا ور رام چندر کی جے،

میں بھارت کے تمام باشندوں کو شکتی پوجا کے تہوار نوراتر اور وجے دشمی پر اپنی نیک خواہشات پیش کرتا ہوں۔ وجے دشمی کا یہ تہوار ناانصافی پر انصاف کی جیت، انا پر عاجزی کی جیت اور غصے پر صبر کی جیت کا تہوار ہے۔ یہ ظالم راون پر بھگوان شری رام کی فتح کا تہوار ہے۔ ہم اس احساس کے ساتھ ہر سال راون دہن کرتے ہیں۔ لیکن یہ اکیلا کافی نہیں ہے۔ یہ تہوار ہمارے لیے عزائم کا تہوار بھی ہے، اپنے عزائم کو دہرانے کا بھی تہوار ہے۔

 

میرے پیارے ہم وطنو،

اس بار ہم وجے دشمی منا رہے ہیں جب چاند پر ہماری فتح کو 2 ماہ ہو چکے ہیں۔ وجے دشمی پر ہتھیاروں کی پوجا کرنے کی بھی روایت ہے۔ ہندوستانی سرزمین پر ہتھیاروں کی پوجا کسی سرزمین پر غلبہ پانے کے لیے نہیں بلکہ اس کی حفاظت کے لیے کی جاتی ہے۔ نوراتری کی شکتی پوجا کے عزم کو شروع کرتے ہوئے، ہم کہتے ہیں - یا دیوی سروابھوتیشو، شکتی روپین سنستھیتا، نمستسیے، نمستسیے ، نمستسیے نمو نمہ۔ جب پوجا مکمل ہو جاتی ہے، ہم کہتے ہیں – دیہی سوبھاگیہ آروگیام،دیہی میں پرم سکھم، روپم دیہی، جیم دیہی، یشو دیہی، دویشوجہی! ہماری شکتی پوجا صرف ہمارے لیے نہیں، بلکہ پوری مخلوق کی خوش قسمتی، صحت، خوشی، فتح اور شہرت کے لیے کی جاتی ہے۔ یہ ہندوستان کا فلسفہ اور فکر ہے۔ ہم گیتا کے علم اور آئی این ایس وکرانت اور تیجس کی تعمیر کو بھی جانتے ہیں۔ ہم شری رام کے وقار کو بھی جانتے ہیں اور اپنی سرحدوں کی حفاظت کرنا بھی جانتے ہیں۔ ہم شکتی پوجا کے حل کو بھی جانتے ہیں اور کورونا میں ’سروے سنتو نیرمایا‘ کے منتر پر بھی عمل کرتے ہیں۔ یہ ہندوستان کی سرزمین ہے۔ ہندوستان کی وجے دشمی بھی اسی خیال کی علامت ہے۔

 

ساتھیو،

آج ہم خوش قسمت ہیں کہ ہم بھگوان رام کے عظیم ترین مندر کی تعمیر ہوتے ہوئے دیکھنے کے قابل ہیں۔ ایودھیا کی اگلی رام نومی پر رام للا کے مندر میں گونجنے والا ہر سور پوری دنیا کے لیے خوشی کا باعث بنے گا۔ وہ آواز جو یہاں صدیوں سے کہی جا رہی ہے – بھیا پرگت کرپالا، دین دیالا… کوسلیہ ہٹکاری۔ بھگوان رام کی جائے پیدائش پر بننے والا مندر صدیوں کے انتظار کے بعد ہم ہندوستانیوں کے صبر کی جیت کی علامت ہے۔ بھگوان رام کے رام مندر میں بیٹھنے میں صرف چند ماہ باقی ہیں۔ بھگوان شری رام آنے والے ہیں۔ اور دوستو، اس خوشی کا تصور کریں جب صدیوں بعد رام مندر میں بھگوان رام کی مورتی نصب ہوگی۔ رام کی آمد کا جشن وجے دشمی سے

شروع ہوا۔ تلسی بابا رامچرت مانس میں لکھتے ہیں - سگن ہوہیں خوبصورت سکل آدمی پرسنا سب کیر۔ رب اگوان جانو نگر رمیا چاہو فیر۔ یعنی جب بھگوان رام پہنچنے والے تھے تو پورے ایودھیا میں شگون نظر آنے لگے۔ پھر سب خوش ہونے لگے، پورا شہر خوبصورت ہو گیا۔ اسی طرح کے شگون آج بھی ہو رہے ہیں۔ آج بھارت نے چاند پر فتح حاصل کر لی ہے۔ ہم دنیا کی تیسری بڑی معیشت بننے جا رہے ہیں۔ ہم چند ہفتے پہلے پارلیمنٹ کی نئی عمارت میں داخل ہوئے تھے۔ خواتین کی طاقت کو نمائندگی دینے کے لیے پارلیمنٹ نے ناری شکتی وندن ایکٹ پاس کیا ہے۔

ہندوستان آج دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت اور سب سے قابل اعتماد جمہوریت کے طور پر ابھر رہا ہے۔ اور دنیا اس مدر آف ڈیموکریسی کو دیکھ رہی ہے۔ ان خوشی کے لمحات کے درمیان، بھگوان شری رام ایودھیا کے رام مندر میں قیام کرنے والے ہیں۔ ایک طرح سے آزادی کے 75 سال بعد ہندوستان کی قسمت اب عروج پر ہے۔ لیکن یہ وہ وقت بھی ہے جب ہندوستان کو بہت محتاط رہنا ہوگا۔ ہمیں اس بات کو ذہن میں رکھنا ہے کہ آج راون کو جلانا صرف ایک پتلا جلانا نہیں ہونا چاہئے بلکہ ہر اس خرابی کو جلانا چاہئے جس کی وجہ سے سماج کی باہمی ہم آہنگی بگڑتی ہے۔ یہ ان طاقتوں کو جلانے دیں جو ذات پرستی اور علاقائیت کے نام پر بھارت ماتا کو تقسیم کرنے کی کوشش کر رہی ہیں۔ یہ اس خیال کو جلانا چاہیے، جس میں ہندوستان کی ترقی نہیں بلکہ خود غرضی کی کامیابی ہے۔ وجے دشمی کا تہوار نہ صرف راون پر رام کی جیت کا تہوار ہونا چاہیے بلکہ یہ ملک کی ہر برائی پر حب الوطنی کی جیت کا تہوار بھی ہونا چاہیے۔ ہمیں معاشرے میں برائیوں اور تفریق کو ختم کرنے کا عہد کرنا چاہیے۔

 

ساتھیو،

آنے والے 25 سال ہندوستان کے لیے بہت اہم ہیں۔ آج پوری دنیا ہندوستان کی طرف دیکھ رہی ہے اور ہماری صلاحیت کو دیکھ رہی ہے۔ ہمیں آرام کرنے کی ضرورت نہیں ہے، یہ رام چرت مانس میں بھی لکھا ہے – رام کج کہوں بنو، موہن کہاں آرام۔ہمیں بھگوان رام کے خیالات کا ہندوستان بنانا ہے۔ ایک ترقی یافتہ ہندوستان، جو خود کفیل ہو، ایک ترقی یافتہ ہندوستان، جو عالمی امن کا پیغام دیتا ہے، ایک ترقی یافتہ ہندوستان، جہاں ہر ایک کو اپنے خوابوں کو پورا کرنے کے مساوی حقوق حاصل ہوں، ایک ترقی یافتہ ہندوستان، جہاں لوگوں کو خوشحالی اور اطمینان کا احساس ہو۔ رام راج کا تصور یہ ہے، رام راج بیتھے تریلوکا، ہرشیت بھیے گئے سب سوکا، یعنی جب رام اپنے تخت پر بیٹھیں گے تو پوری دنیا میں خوشی ہوگی اور سب کے دکھ ختم ہوجائیں گے۔ لیکن، یہ کیسے ہوگا؟ اس لیے آج وجے دشمی کے موقع پر میں ہر ملک کے باشندے سے 10 عزائم کرنے کی درخواست کروں گا۔

 

پہلا عزم - آنے والی نسلوں کو ذہن میں رکھتے ہوئے ہم زیادہ سے زیادہ پانی بچائیں گے۔

دوسرا عزم- ہم زیادہ سے زیادہ لوگوں کو ڈیجیٹل لین دین کے لیے ترغیب دیں گے۔

 

تیسرا عزم - ہم اپنے گاؤں اور شہروں کو صفائی میں سب سے آگے لے جائیں گے۔

چوتھا عزم - ہم مقامی کے لیے ووکل کے منتر پر زیادہ سے زیادہ عمل کریں گے اور میڈ ان انڈیا پروڈکٹس کا استعمال کریں گے۔

پانچواں عزم: ہم معیاری کام کریں گے اور معیاری مصنوعات بنائیں گے، ناقص معیار کی وجہ سے ملک کی عزت کو کم نہیں ہونے دیں گے۔

چھٹا عزم: ہم پہلے اپنا پورا ملک دیکھیں گے، سفر کریں گے، پورے ملک کو دیکھیں گے، وقت ملے گا تو بیرون ملک کا سوچیں گے۔

ساتواں عزم - ہم کسانوں کو قدرتی کھیتی کے بارے میں زیادہ سے زیادہ آگاہ کریں گے۔

آٹھواں عزم - ہم اپنی زندگی میں سپر فوڈ جوار شامل کریں گے۔ اس سے ہمارے چھوٹے کسانوں اور ہماری اپنی صحت کو بہت فائدہ ہوگا۔

نواں عزم - ہم سب اپنی زندگی میں ذاتی صحت کو ترجیح دیں گے، چاہے وہ یوگا ہو، کھیل ہو یا فٹنس۔

 

اور

دسواں عزم - ہم کم از کم ایک غریب خاندان کے گھر کا فرد بن کر ان کی سماجی حیثیت کو بلند کریں گے۔

جب تک ملک میں ایک بھی غریب ایسا ہے جسے بنیادی سہولتیں میسر نہیں، مکان، بجلی، گیس، پانی، علاج معالجے کی کوئی سہولت میسر نہیں، ہمیں سکون سے نہیں بیٹھنا ہوگا۔ ہمیں ہر مستحق تک پہنچ کر اس کی مدد کرنی ہے۔ تب ہی ملک سے غربت ختم ہوگی اور سب ترقی کریں گے۔ تب ہی ہندوستان ترقی یافتہ ہوگا۔ ہم بھگوان رام کا نام لے کر ان عزائم کو پورا کریں۔ وجے دشمی کے اس مقدس تہوار پر میں ہم وطنوں کو بہت سی نیک خواہشات پیش کرتا ہوں۔ رام چرت مانس میں کہا گیا ہے- بسی نگر کی جئے سب کجا، دل راکھی کوسلپور راجا یعنی بھگوان شری رام کے نام کو ذہن میں رکھ کر ہم جو بھی ریزولیوشن پورا کرنا چاہتے ہیں، ہمیں اس میں کامیابی ضرور ملے گی۔ آئیے ہم سب ہندوستان کے عزائم کے ساتھ ترقی کی راہ پر گامزن ہوں، آئیے ہم سب ہندوستان کو ایک بہتر ہندوستان کے ہدف تک لے جائیں۔ اس خواہش کے ساتھ، میں آپ سب کو وجے دشمی کے اس مقدس تہوار پر اپنی نیک خواہشات پیش کرتا ہوں۔

سیا ور رام چندر کی جے،

سیا ور رام چندر کی جے۔

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
As you turn 18, vote for 18th Lok Sabha: PM Modi's appeal to first-time voters

Media Coverage

As you turn 18, vote for 18th Lok Sabha: PM Modi's appeal to first-time voters
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM to visit Kerala, Tamil Nadu and Maharashtra on 27-28 February
February 26, 2024
PM to visit Vikram Sarabhai Space centre (VSSC), Thiruvananthapuram, and inaugurate three important space infrastructure projects worth about Rs 1800 crore
Projects include ‘PSLV Integration Facility’ at Satish Dhawan Space Centre, Sriharikota; ‘Semi-cryogenics Integrated Engine and stage Test facility’ at ISRO Propulsion Complex at Mahendragiri; and ‘Trisonic Wind Tunnel’ at VSSC
PM to also review progress of Ganganyaan
PM to inaugurate, dedicate to nation and lay the foundation stone of multiple infrastructure projects worth more than Rs 17,300 crore in Tamil Nadu
In a step to establish a transshipment hub for the east coast of the country, PM to lay the foundation stone of Outer Harbor Container Terminal at V.O.Chidambaranar Port
PM to launch India's first indigenous green hydrogen fuel cell inland waterway vessel
PM to address thousands of MSME entrepreneurs working in Automotive sector in Madurai
PM to inaugurate and dedicate to nation multiple infrastructure projects related to rail, road and irrigation worth more than Rs 4900 crore in Maharashtra
PM to release 16th instalment amount of about Rs 21,000 crore under PM-KISAN; and 2nd and 3rd instalments of about Rs 3800 crore under ‘Namo Shetkari MahaSanman Nidhi’
PM to disburse Rs 825 crore of Revolving Fund to 5.5 lakh women SHGs across Maharashtra
PM to initiate the distribution of one crore Ayushman cards across Maharashtra
PM to launch the Modi Awaas Gharkul Yojana

Prime Minister Shri Narendra Modi will visit Kerala, Tamil Nadu and Maharashtra on 27-28 February, 2024.

On 27th February, at around 10:45 AM, Prime Minister will visit Vikram Sarabhai Space centre (VSSC) at Thiruvananthapuram, Kerala. At around 5:15 PM, Prime Minister will participate in the programme ‘Creating the Future – Digital Mobility for Automotive MSME Entrepreneurs’ in Madurai, Tamil Nadu.

On 28th February, at around 9:45 AM, Prime Minister will inaugurate, and lay the foundation stone of multiple development projects worth about Rs 17,300 crore at Thoothukudi, Tamil Nadu. At around 4:30 PM, Prime Minister will participate in a public programme in Yavatmal, Maharashtra, and inaugurate and dedicate to nation multiple development projects worth more than Rs 4900 crore at Yavatmal, Maharashtra. He will also release benefits under PM KISAN and other schemes during the programme.

PM in Kerala

Prime Minister’s vision to reform the country’s space sector to realise its full potential, and his commitment to enhance technical and R&D capability in the sector will get a boost as three important space infrastructure projects will be inaugurated during his visit to Vikram Sarabhai Space Centre, Thiruvananthapuram. The projects include the PSLV Integration Facility (PIF) at the Satish Dhawan Space Centre, Sriharikota; new ‘Semi-cryogenics Integrated Engine and stage Test facility’ at ISRO Propulsion Complex at Mahendragiri; and ‘Trisonic Wind Tunnel’ at VSSC, Thiruvananthapuram. These three projects providing world-class technical facilities for the space sector have been developed at a cumulative cost of about Rs. 1800 crore.

The PSLV Integration Facility (PIF) at the Satish Dhawan Space Centre, Sriharikota will help in boosting the frequency of PSLV launches from 6 to 15 per year. This state-of-the-art facility can also cater to the launches of SSLV and other small launch vehicles designed by private space companies.

The new ‘Semi-cryogenics Integrated Engine and stage Test facility’ at IPRC Mahendragiri will enable development of semi cryogenic engines and stages which will increase the payload capability of the present launch vehicles. The facility is equipped with liquid Oxygen and kerosene supply systems to test engines up to 200 tons of thrust.

Wind tunnels are essential for aerodynamic testing for characterisation of rockets and aircraft during flight in the atmospheric regime. The “Trisonic Wind Tunnel” at VSSC being inaugurated is a complex technological system which will serve our future technology development needs.

During his visit, Prime Minister will also review the progress of Gaganyaan Mission and bestow ‘astronaut wings’ to the astronaut-designates. The Gaganyaan Mission is India’s first human space flight program for which extensive preparations are underway at various ISRO centres.

PM in Tamil Nadu

In Madurai, Prime Minister will participate in the programme ‘Creating the Future – Digital Mobility for Automotive MSME Entrepreneurs’, and address thousands of Micro, Small and Medium enterprises (MSMEs) entrepreneurs working in the automotive sector. Prime Minister will also launch two major initiatives designed to support and uplift MSMEs in the Indian automotive industry. The initiatives include the TVS Open Mobility Platform and the TVS Mobility-CII Centre of Excellence. These initiatives will be a step towards realising the Prime Minister’s vision of supporting the growth of MSMEs in the country and helping them to formalise operations, integrate with global value chains and become self-reliant.

In the public programme at Thoothukudi, Prime Minister will lay the foundation stone of Outer Harbor Container Terminal at V.O.Chidambaranar Port. This Container Terminal is a step towards transforming V.O.Chidambaranar Port into a transshipment hub for the east coast. The project aims to leverage India's long coastline and favourable geographic location, and strengthen India's competitiveness in the global trade arena. The major infrastructure project will also lead to creation of employment generation and economic growth in the region.

Prime Minister will inaugurate various other projects aimed at making the V.O.Chidambaranar Port as the first Green Hydrogen Hub Port of the country. These projects include desalination plant, hydrogen production and bunkering facility etc.

Prime Minister will also launch India's first indigenous green hydrogen fuel cell inland waterway vessel under Harit Nauka initiative. The vessel is manufactured by Cochin Shipyard and underscores a pioneering step for embracing clean energy solutions and aligning with the nation's net-zero commitments. Also, Prime Minister will also dedicate tourist facilities in 75 lighthouses across ten States/UTs during the programme.

During the programme, Prime Minister will dedicate to nation rail projects for doubling of Vanchi Maniyachchi - Nagercoil rail line including the Vanchi Maniyachchi - Tirunelveli section and Melappalayam - Aralvaymoli section. Developed at the cost of about Rs 1,477 crore, the doubling project will help in reducing travel time for the trains heading towards Chennai from Kanyakumari, Nagercoil & Tirunelveli.

Prime Minister will also dedicate four road projects in Tamil Nadu, developed at a total cost of about Rs 4,586 Crore. These projects include the four-laning of the Jittandahalli-Dharmapuri section of NH-844, two-laning with paved shoulders of the Meensurutti-Chidambaram section of NH-81, four-laning of the Oddanchatram-Madathukulam section of NH-83, and two-laning with paved shoulders of the Nagapattinam-Thanjavur section of NH-83. These projects aim to improve connectivity, reduce travel time, enhance socio-economic growth and facilitate pilgrimage visits in the region.

PM in Maharashtra

In a step that will showcase yet another example of commitment of the Prime Minister towards welfare of farmers, the 16th instalment amount of more than Rs 21,000 crores under the Pradhan Mantri Kisan Samman Nidhi (PM-KISAN), will be released at the public programme in Yavatmal, through direct benefits transfer to beneficiaries. With this release, an amount of more than 3 lakh crore, has been transferred to more than 11 crore farmers’ families.

Prime Minister will also disburse 2nd and 3rd instalments of ‘Namo Shetkari MahaSanman Nidhi’, worth about Rs 3800 crore and benefiting about 88 lakh beneficiary farmers across Maharashtra. The scheme provides an additional amount of Rs 6000 per year to the beneficiaries of Pradhan Mantri Kisan Samman Nidhi Yojana in Maharashtra.

Prime Minister will disburse Rs 825 crore of Revolving Fund to 5.5 lakh women Self Help Groups (SHGs) across Maharashtra. This amount is additional to the Revolving fund provided by the Government of India under National rural livelihood Mission (NRLM). Revolving Fund (RF) is given to SHGs to promote lending of money within SHGs by rotational basis and increase annual income of poor households by promoting women led micro enterprises at village level.

Prime Minister will initiate distribution of one crore Ayushman cards across Maharashtra. This is yet another step to reach out to beneficiaries of welfare schemes so as to realise the Prime Minister’s vision of 100 percent saturation of all government schemes.

Prime Minister will launch the Modi Awaas Gharkul Yojana for OBC category beneficiaries in Maharashtra. The scheme envisages the construction of a total 10 lakh houses from FY 2023-24 to FY 2025-26. Prime Minister will transfer the first instalment of Rs 375 Crore to 2.5 lakh beneficiaries of the Yojana.

Prime Minister will dedicate to nation multiple irrigation projects benefiting Marathwada and Vidarbha region of Maharashtra. These projects are developed at a cumulative cost of more than Rs 2750 crore under Pradhan Mantri Krishi Sinchai Yojna (PMKSY) and Baliraja Jal Sanjeevani Yojana (BJSY).

Prime Minister will also inaugurate multiple rail projects worth more than Rs. 1300 crore in Maharashtra. The projects include Wardha-Kalamb broad gauge line (part of Wardha-Yavatmal-Nanded new broad gauge line project) and New Ashti - Amalner broad gauge line (part of Ahmednagar-Beed-Parli new broad gauge line project). The new broad gauge lines will improve connectivity of the Vidarbha and Marathwada regions and boost socio-economic development. Prime Minister will also virtually flag off two train service during the programme. This includes train services connecting Kalamb and Wardha; and train service connecting Amalner and New Ashti. This new train service will help improve rail connectivity and benefit students, traders and daily commuters of the region.

Prime Minister will dedicate to nation several projects for strengthening the road sector in Maharashtra. The projects include four laning of the Warora-Wani section of NH-930; road upgradation projects for important roads connecting Sakoli-Bhandara and Salaikhurd-Tirora. These projects will improve connectivity, reduce travel time and boost socio-economic development in the region. Prime Minister will also inaugurate the statue of Pandit Deendayal Upadhyay in Yavatmal city.