’’یہ عزم کا اعادہ کرنے کا دن ہے‘‘
’ ہندوستان میں ہتھیاروں کا استعمال الحاق کے لیے نہیں بلکہ دفاع کے لیے کیا جاتا ہے‘‘
’’ہم رام کی ’مریادہ‘ (حدود) کو جانتے ہیں اور یہ بھی جانتے ہیں کہ اپنی سرحدوں کی حفاظت کیسے کی جاتی ہے‘‘
’’بھگوان رام کی جائے پیدائش پر تعمیر ہونے والا مندر صدیوں کے انتظار کے بعد ہم ہندوستانیوں کے صبر کی فتح کی علامت ہے‘‘
’’ہمیں بھگوان رام کے نظریہ کا ہندوستان بنانا ہے‘‘
"ہندوستان آج دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کے ساتھ ساتھ سب سے قابل اعتماد جمہوریت کے طور پر ابھر رہا ہے"
’’ہمیں معاشرے میں برائیوں اور تفریق کو ختم کرنے کا عہد کرنا چاہیے‘‘

سیا ور رام چندر کی جے،

سیا ور رام چندر کی جے،

میں بھارت کے تمام باشندوں کو شکتی پوجا کے تہوار نوراتر اور وجے دشمی پر اپنی نیک خواہشات پیش کرتا ہوں۔ وجے دشمی کا یہ تہوار ناانصافی پر انصاف کی جیت، انا پر عاجزی کی جیت اور غصے پر صبر کی جیت کا تہوار ہے۔ یہ ظالم راون پر بھگوان شری رام کی فتح کا تہوار ہے۔ ہم اس احساس کے ساتھ ہر سال راون دہن کرتے ہیں۔ لیکن یہ اکیلا کافی نہیں ہے۔ یہ تہوار ہمارے لیے عزائم کا تہوار بھی ہے، اپنے عزائم کو دہرانے کا بھی تہوار ہے۔

 

میرے پیارے ہم وطنو،

اس بار ہم وجے دشمی منا رہے ہیں جب چاند پر ہماری فتح کو 2 ماہ ہو چکے ہیں۔ وجے دشمی پر ہتھیاروں کی پوجا کرنے کی بھی روایت ہے۔ ہندوستانی سرزمین پر ہتھیاروں کی پوجا کسی سرزمین پر غلبہ پانے کے لیے نہیں بلکہ اس کی حفاظت کے لیے کی جاتی ہے۔ نوراتری کی شکتی پوجا کے عزم کو شروع کرتے ہوئے، ہم کہتے ہیں - یا دیوی سروابھوتیشو، شکتی روپین سنستھیتا، نمستسیے، نمستسیے ، نمستسیے نمو نمہ۔ جب پوجا مکمل ہو جاتی ہے، ہم کہتے ہیں – دیہی سوبھاگیہ آروگیام،دیہی میں پرم سکھم، روپم دیہی، جیم دیہی، یشو دیہی، دویشوجہی! ہماری شکتی پوجا صرف ہمارے لیے نہیں، بلکہ پوری مخلوق کی خوش قسمتی، صحت، خوشی، فتح اور شہرت کے لیے کی جاتی ہے۔ یہ ہندوستان کا فلسفہ اور فکر ہے۔ ہم گیتا کے علم اور آئی این ایس وکرانت اور تیجس کی تعمیر کو بھی جانتے ہیں۔ ہم شری رام کے وقار کو بھی جانتے ہیں اور اپنی سرحدوں کی حفاظت کرنا بھی جانتے ہیں۔ ہم شکتی پوجا کے حل کو بھی جانتے ہیں اور کورونا میں ’سروے سنتو نیرمایا‘ کے منتر پر بھی عمل کرتے ہیں۔ یہ ہندوستان کی سرزمین ہے۔ ہندوستان کی وجے دشمی بھی اسی خیال کی علامت ہے۔

 

ساتھیو،

آج ہم خوش قسمت ہیں کہ ہم بھگوان رام کے عظیم ترین مندر کی تعمیر ہوتے ہوئے دیکھنے کے قابل ہیں۔ ایودھیا کی اگلی رام نومی پر رام للا کے مندر میں گونجنے والا ہر سور پوری دنیا کے لیے خوشی کا باعث بنے گا۔ وہ آواز جو یہاں صدیوں سے کہی جا رہی ہے – بھیا پرگت کرپالا، دین دیالا… کوسلیہ ہٹکاری۔ بھگوان رام کی جائے پیدائش پر بننے والا مندر صدیوں کے انتظار کے بعد ہم ہندوستانیوں کے صبر کی جیت کی علامت ہے۔ بھگوان رام کے رام مندر میں بیٹھنے میں صرف چند ماہ باقی ہیں۔ بھگوان شری رام آنے والے ہیں۔ اور دوستو، اس خوشی کا تصور کریں جب صدیوں بعد رام مندر میں بھگوان رام کی مورتی نصب ہوگی۔ رام کی آمد کا جشن وجے دشمی سے

شروع ہوا۔ تلسی بابا رامچرت مانس میں لکھتے ہیں - سگن ہوہیں خوبصورت سکل آدمی پرسنا سب کیر۔ رب اگوان جانو نگر رمیا چاہو فیر۔ یعنی جب بھگوان رام پہنچنے والے تھے تو پورے ایودھیا میں شگون نظر آنے لگے۔ پھر سب خوش ہونے لگے، پورا شہر خوبصورت ہو گیا۔ اسی طرح کے شگون آج بھی ہو رہے ہیں۔ آج بھارت نے چاند پر فتح حاصل کر لی ہے۔ ہم دنیا کی تیسری بڑی معیشت بننے جا رہے ہیں۔ ہم چند ہفتے پہلے پارلیمنٹ کی نئی عمارت میں داخل ہوئے تھے۔ خواتین کی طاقت کو نمائندگی دینے کے لیے پارلیمنٹ نے ناری شکتی وندن ایکٹ پاس کیا ہے۔

ہندوستان آج دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت اور سب سے قابل اعتماد جمہوریت کے طور پر ابھر رہا ہے۔ اور دنیا اس مدر آف ڈیموکریسی کو دیکھ رہی ہے۔ ان خوشی کے لمحات کے درمیان، بھگوان شری رام ایودھیا کے رام مندر میں قیام کرنے والے ہیں۔ ایک طرح سے آزادی کے 75 سال بعد ہندوستان کی قسمت اب عروج پر ہے۔ لیکن یہ وہ وقت بھی ہے جب ہندوستان کو بہت محتاط رہنا ہوگا۔ ہمیں اس بات کو ذہن میں رکھنا ہے کہ آج راون کو جلانا صرف ایک پتلا جلانا نہیں ہونا چاہئے بلکہ ہر اس خرابی کو جلانا چاہئے جس کی وجہ سے سماج کی باہمی ہم آہنگی بگڑتی ہے۔ یہ ان طاقتوں کو جلانے دیں جو ذات پرستی اور علاقائیت کے نام پر بھارت ماتا کو تقسیم کرنے کی کوشش کر رہی ہیں۔ یہ اس خیال کو جلانا چاہیے، جس میں ہندوستان کی ترقی نہیں بلکہ خود غرضی کی کامیابی ہے۔ وجے دشمی کا تہوار نہ صرف راون پر رام کی جیت کا تہوار ہونا چاہیے بلکہ یہ ملک کی ہر برائی پر حب الوطنی کی جیت کا تہوار بھی ہونا چاہیے۔ ہمیں معاشرے میں برائیوں اور تفریق کو ختم کرنے کا عہد کرنا چاہیے۔

 

ساتھیو،

آنے والے 25 سال ہندوستان کے لیے بہت اہم ہیں۔ آج پوری دنیا ہندوستان کی طرف دیکھ رہی ہے اور ہماری صلاحیت کو دیکھ رہی ہے۔ ہمیں آرام کرنے کی ضرورت نہیں ہے، یہ رام چرت مانس میں بھی لکھا ہے – رام کج کہوں بنو، موہن کہاں آرام۔ہمیں بھگوان رام کے خیالات کا ہندوستان بنانا ہے۔ ایک ترقی یافتہ ہندوستان، جو خود کفیل ہو، ایک ترقی یافتہ ہندوستان، جو عالمی امن کا پیغام دیتا ہے، ایک ترقی یافتہ ہندوستان، جہاں ہر ایک کو اپنے خوابوں کو پورا کرنے کے مساوی حقوق حاصل ہوں، ایک ترقی یافتہ ہندوستان، جہاں لوگوں کو خوشحالی اور اطمینان کا احساس ہو۔ رام راج کا تصور یہ ہے، رام راج بیتھے تریلوکا، ہرشیت بھیے گئے سب سوکا، یعنی جب رام اپنے تخت پر بیٹھیں گے تو پوری دنیا میں خوشی ہوگی اور سب کے دکھ ختم ہوجائیں گے۔ لیکن، یہ کیسے ہوگا؟ اس لیے آج وجے دشمی کے موقع پر میں ہر ملک کے باشندے سے 10 عزائم کرنے کی درخواست کروں گا۔

 

پہلا عزم - آنے والی نسلوں کو ذہن میں رکھتے ہوئے ہم زیادہ سے زیادہ پانی بچائیں گے۔

دوسرا عزم- ہم زیادہ سے زیادہ لوگوں کو ڈیجیٹل لین دین کے لیے ترغیب دیں گے۔

 

تیسرا عزم - ہم اپنے گاؤں اور شہروں کو صفائی میں سب سے آگے لے جائیں گے۔

چوتھا عزم - ہم مقامی کے لیے ووکل کے منتر پر زیادہ سے زیادہ عمل کریں گے اور میڈ ان انڈیا پروڈکٹس کا استعمال کریں گے۔

پانچواں عزم: ہم معیاری کام کریں گے اور معیاری مصنوعات بنائیں گے، ناقص معیار کی وجہ سے ملک کی عزت کو کم نہیں ہونے دیں گے۔

چھٹا عزم: ہم پہلے اپنا پورا ملک دیکھیں گے، سفر کریں گے، پورے ملک کو دیکھیں گے، وقت ملے گا تو بیرون ملک کا سوچیں گے۔

ساتواں عزم - ہم کسانوں کو قدرتی کھیتی کے بارے میں زیادہ سے زیادہ آگاہ کریں گے۔

آٹھواں عزم - ہم اپنی زندگی میں سپر فوڈ جوار شامل کریں گے۔ اس سے ہمارے چھوٹے کسانوں اور ہماری اپنی صحت کو بہت فائدہ ہوگا۔

نواں عزم - ہم سب اپنی زندگی میں ذاتی صحت کو ترجیح دیں گے، چاہے وہ یوگا ہو، کھیل ہو یا فٹنس۔

 

اور

دسواں عزم - ہم کم از کم ایک غریب خاندان کے گھر کا فرد بن کر ان کی سماجی حیثیت کو بلند کریں گے۔

جب تک ملک میں ایک بھی غریب ایسا ہے جسے بنیادی سہولتیں میسر نہیں، مکان، بجلی، گیس، پانی، علاج معالجے کی کوئی سہولت میسر نہیں، ہمیں سکون سے نہیں بیٹھنا ہوگا۔ ہمیں ہر مستحق تک پہنچ کر اس کی مدد کرنی ہے۔ تب ہی ملک سے غربت ختم ہوگی اور سب ترقی کریں گے۔ تب ہی ہندوستان ترقی یافتہ ہوگا۔ ہم بھگوان رام کا نام لے کر ان عزائم کو پورا کریں۔ وجے دشمی کے اس مقدس تہوار پر میں ہم وطنوں کو بہت سی نیک خواہشات پیش کرتا ہوں۔ رام چرت مانس میں کہا گیا ہے- بسی نگر کی جئے سب کجا، دل راکھی کوسلپور راجا یعنی بھگوان شری رام کے نام کو ذہن میں رکھ کر ہم جو بھی ریزولیوشن پورا کرنا چاہتے ہیں، ہمیں اس میں کامیابی ضرور ملے گی۔ آئیے ہم سب ہندوستان کے عزائم کے ساتھ ترقی کی راہ پر گامزن ہوں، آئیے ہم سب ہندوستان کو ایک بہتر ہندوستان کے ہدف تک لے جائیں۔ اس خواہش کے ساتھ، میں آپ سب کو وجے دشمی کے اس مقدس تہوار پر اپنی نیک خواہشات پیش کرتا ہوں۔

سیا ور رام چندر کی جے،

سیا ور رام چندر کی جے۔

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India is top performing G-20 nation in QS World University Rankings, research output surged by 54%

Media Coverage

India is top performing G-20 nation in QS World University Rankings, research output surged by 54%
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 23 اپریل 2024
April 23, 2024

Taking the message of Development and Culture under the leadership of PM Modi