Share
 
Comments
’’جیت تب یقینی ہوتی ہے جب اس میں سیکھناشامل ہو‘‘
’’جب ملک کی سلامتی کی بات آتی ہے تو راجستھان کے نوجوان ہمیشہ دوسروں سے آگے آتے ہیں‘‘
’’جے پور مہا کھیل کی کامیاب تنظیم ہندوستان کی کوششوں کی اگلی اہم کڑی ہے‘‘
’’ملک نئی تعریفیں وضع کر رہا ہےنیز امرت کال میں ایک نئی ترتیب پیدا کر رہا ہے‘‘
’’ملک کے کھیلوں کے بجٹ میں 2014 سے تقریباً تین گنا اضافہ ہوا ہے‘‘
’’ملک میں کھیلوں کی یونیورسٹیاں قائم کی جا رہی ہیں اور کھیل مہاکمبھ جیسے بڑی تقریبات کا انعقاد بھی پیشہ ورانہ انداز میں کیا جا رہا ہے‘‘
’’ہماری حکومت اس بات پر توجہ دے رہی ہے کہ پیسے کی کمی کے باعث کوئی نوجوان پیچھے نہ رہ جائے‘‘
’’تم فٹ رہو گے تب ہی سپر ہٹ ہو گے‘‘
’’راجستھان کا شری انا باجرہ اور شری انا جوار اس مقام کی پہچان ہیں‘‘
’’آج کا نوجوان اپنی کثیر جہتی اور کثیر رخی صلاحیتوں کی وجہ سے صرف ایک میدان تک محدود نہیں رہنا چاہتا‘‘
’’کھیل صرف ایک صنف نہیں بلکہ یہ ایک صنعت ہے‘‘
’’جب دل سے کوشش کی جائے تو نتائج یقینی ہوتے ہیں‘‘
’’ملک کے لیے آئندہ سونے اور چاندی کے تمغے جیتنے والےآپ میں سے ہوں گے‘‘

جے پور دیہی کے ممبر پارلیمنٹ اور ہمارے ساتھی بھائی راج وردھن سنگھ راٹھور، تمام کھلاڑی، کوچ اور میرے نوجوان ساتھیوں!

سب سے پہلے تو اس مقابلے میں شرکت کرنے والے ہر کھلاڑی، کوچ اور ان کے اہل خانہ کو بہت بہت مبارک ہو جنہوں نے جے پور مہا کھیل میں تمغے حاصل کیے ہیں۔ آپ سب جے پور کے کھیل کے میدان میں صرف کھیلنے کے لیے نہیں اترے تھے۔ آپ یہاں جیتنے کے لیے بھی اترے تھے، اور آپ یہاں سیکھنے کے لیے بھی اترے تھے۔ اور، جہاں سیکھنا ہوتا ہے، فتح خود بخود یقینی ہو جاتی ہے۔ کوئی بھی کھلاڑی میدان سے خالی ہاتھ نہیں لوٹتا۔

ساتھیوں،

ابھی ہم سب نے کبڈی کے کھلاڑیوں کا شاندار کھیل بھی دیکھا ہے۔ میں دیکھ رہا ہوں کہ آج کی اختتامی تقریب میں کئی ایسے چہرے موجود ہیں جنہوں نے کھیلوں میں بین الاقوامی سطح پر ہندوستان کا نام روشن کیا ہے۔ ایشین گیمز میڈلسٹ رام سنگھ نظر آ رہے ہیں، دھیان چند کھیل رتن ایوارڈ یافتہ پیرا ایتھلیٹ بھائی دیویندر جھانجھڑیا، ارجن ایوارڈ یافتہ ساکشی کماری اور دیگر سینئر کھلاڑی بھی نظر آ رہے ہیں۔ میں ان کھیل ستاروں کو دیکھ کر بہت خوش ہوں جو جے پور دیہی کے کھلاڑیوں کی حوصلہ افزائی کے لیے یہاں آئے ہیں۔

ساتھیوں،

آج ملک میں کھیلوں کے مقابلوں اور کھیلوں کے مہا کمبھوں کا جو سلسلہ شروع ہوا ہے وہ ایک بڑی تبدیلی کا عکاس ہے۔ راجستھان کی سرزمین اپنے نوجوانوں کے جوش و جذبے اور صلاحیتوں کے لیے ہی جانی جاتی ہے۔ تاریخ گواہ ہے اس بہادر سرزمین کے فرزندوں نے اپنی بہادری سے میدان جنگ کو بھی کھیل کا میدان بنا دیا۔ اس لیے ماضی سے لے کر آج تک راجستھان کے نوجوان ملک کے دفاع کے معاملے میں کسی سے پیچھے نہیں ہیں۔ راجستھانی کھیلوں کی روایات نے یہاں کے نوجوانوں کی اس جسمانی اور ذہنی طاقت کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔  سیکڑوں برسوں سے مکر سنکرانتی پر منعقد کیے جانے والے کھیل، ’دڑا دڑا‘ ہو یا بچپن کی یادوں سے جڑے ہوئے تولیہ رومال جھپٹا جیسے روایتی کھیل ہوں، یہ راجستھان کی رگ رگ میں رچے بسے ہوئے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ اس ریاست نے ملک کو کھیلوں کی بہت سی صلاحیتیں دی ہیں، اتنے تمغے دے کر ترنگے کی شان میں اضافہ کیا ہے، اور آپ جے پور کے لوگوں نے اولمپک میڈل جیتنے والوں کو ممبر پارلیمنٹ منتخب کیا ہے۔ مجھے خوشی ہے کہ راج وردھن سنگھ راٹھور جی ان کو ملک نے جو دیا ہے اسے وہ ’ایم پی کھیل مقابلہ‘ کے ذریعے ملک کی نئی نسل کو لوٹانے کے لیے کام کر رہے ہیں۔ ہمیں ان کوششوں کو مزید وسعت دینا ہے، تاکہ اس کا اثر اور بھی وسیع ہو۔ ’جے پور مہا کھیل‘ کی کامیاب تنظیم ہماری اسی کوششوں کا تسلسل ہے۔ اس سال 600 سے زائد ٹیموں اور 6500 نوجوانوں کی شرکت اس کی کامیابی کی عکاس ہے۔ مجھے بتایا گیا ہے کہ اس ایونٹ میں لڑکیوں کی 125 سے زائد ٹیموں نے بھی حصہ لیا ہے۔ بیٹیوں کی یہ بڑھتی ہوئی شرکت ایک خوشگوار پیغام دے رہی ہے۔

ساتھیوں،

آزادی کے اس امرت کال میں ملک نئی منزلیں طے کر رہا ہے اور نئے نظام کی تعمیر کر رہا ہے۔ آج ملک میں پہلی بار کھیلوں کو حکومت کی نظروں سے نہیں کھلاڑیوں کی نظروں سے دیکھا جا رہا ہے۔ میں جانتا ہوں، نوجوان ہندوستان کی نوجوان نسل کے لیے کچھ بھی ناممکن نہیں ہے۔ جب نوجوانوں کو طاقت، عزت نفس، خود انحصاری، سہولت اور وسائل کی طاقت مل جائے تو ہر مقصد آسان ہو جاتا ہے۔ ملک کے اس نقطہ نظر کی جھلک اس بجٹ میں بھی نظر آتی ہے۔ اس بار ملک کے بجٹ میں محکمہ کھیل کو تقریباً 2500 کروڑ روپے کا بجٹ ملا ہے۔ جبکہ 2014 سے پہلے محکمہ کھیل کا بجٹ صرف آٹھ سو، ساڑھے آٹھ سو کروڑ روپے کے لگ بھگ رہتا تھا۔ یعنی 2014 کے مقابلے میں ملک کے محکمہ کھیل کے بجٹ میں تقریباً تین گنا اضافہ ہوا ہے۔ اس بار صرف ’کھیلو انڈیا‘ مہم کے لیے 1000 کروڑ روپے سے زیادہ کا بجٹ دیا گیا ہے۔ یہ رقم کھیلوں سے متعلق ہر شعبے میں وسائل اور سہولیات پیدا کرنے کے لیے استعمال کی جائے گی۔

ساتھیوں،

پہلے ملک کے نوجوانوں میں کھیلوں کا جذبہ ہوا کرتا تھا اور ان میں ٹیلنٹ بھی تھا لیکن اکثر وسائل اور حکومتی تعاون کی کمی ہر بار آڑے آتی ہے۔ اب ہمارے کھلاڑیوں کا یہ چیلنج بھی حل ہو رہا ہے۔ میں آپ کو اس جے پور مہا کھیل کی مثال دوں گا۔ یہ تقریب جے پور میں پچھلے 5 سے 6 سالوں سے چل رہی ہے۔ اسی طرح ملک کے کونے کونے میں بھارتیہ جنتا پارٹی کے ممبران اسمبلی اپنے اپنے علاقوں میں کھیل مہا کمبھ کا انعقاد کر رہے ہیں۔ ان سینکڑوں کھیلوں کے مقابلوں میں ہزاروں نوجوان، ہزاروں با صلاحیت کھلاڑی مختلف کھیلوں میں حصہ لے رہے ہیں۔ ممبر پارلیمنٹ کھیل مہا کمبھ کی وجہ سے ملک کے ہزاروں نئے ٹیلنٹ ابھر رہے ہیں۔

ساتھیوں،

یہ سب اس لیے ممکن ہے کہ مرکزی حکومت اب ضلعی سطح اور مقامی سطح تک کھیلوں کی سہولیات فراہم کر رہی ہے۔ اب تک ملک کے سینکڑوں اضلاع میں لاکھوں نوجوانوں کے لیے کھیلوں کا بنیادی ڈھانچہ بنایا جا چکا ہے۔ راجستھان میں بھی مرکزی حکومت کی طرف سے کئی شہروں میں کھیلوں کا انفراسٹرکچر بنایا جا رہا ہے۔ آج ملک میں کھیلوں کی یونیورسٹیاں بھی قائم کی جا رہی ہیں اور کھیل مہا کمبھ جیسے بڑے ایونٹس کا انعقاد بھی پیشہ ورانہ انداز میں کیا جا رہا ہے۔

اس بار نیشنل اسپورٹس یونیورسٹی کو بھی زیادہ سے زیادہ بجٹ فراہم کیا گیا ہے۔ ہماری کوشش ہے کہ کھیلوں کے انتظام اور کھیلوں کی ٹیکنالوجی سے متعلق ہر شعبے کو سیکھنے کا ماحول بنایا جائے۔ جس کی وجہ سے نوجوانوں کو اس شعبے میں کیرئیر بنانے کا موقع ملے گا۔

ساتھیوں،

ہماری حکومت کی توجہ اس طرف بھی ہے کہ کوئی نوجوان پیسے کی کمی کی وجہ سے پیچھے نہ رہے۔ مرکزی حکومت اب بہترین کارکردگی دکھانے والے کھلاڑیوں کو سالانہ 5 لاکھ روپے تک کی مدد کرتی ہے۔ کھیلوں کے بڑے ایوارڈز میں دی جانے والی رقم کو بھی تین گنا تک بڑھا دیا گیا ہے۔ اولمپکس جیسے بڑے عالمی مقابلوں میں بھی اب حکومت پوری طاقت کے ساتھ اپنے کھلاڑیوں کے ساتھ کھڑی ہے۔ ٹاپس ٹاپس ٹاپس جیسی اسکیموں کے ذریعے کھلاڑی برسوں سے اولمپکس کی تیاری کر رہے ہیں۔

ساتھیوں،

کسی بھی کھلاڑی کے لیے کھیل میں آگے بڑھنے کے لیے سب سے اہم چیز اس کی فٹنس کو برقرار رکھنا ہے۔ آپ فٹ ہوں گے، تب ہی آپ سپر ہٹ ہوں گے۔ اور جتنی فٹنس کھیلوں کے میدان میں ضروری ہے، زندگی کے میدان میں بھی اتنی ہی ضروری ہے۔ اسی لیے آج کھیلو انڈیا کے ساتھ ساتھ فٹ انڈیا بھی ملک کے لیے ایک بڑا مشن ہے۔ ہماری غذا اور غذائیت بھی ہماری فٹنس میں بڑا کردار ادا کرتی ہے۔ اس لیے میں آپ سب کے ساتھ ایسی ہی ایک مہم پر بھی بات کرنا چاہوں گا، جو ہندوستان نے شروع کی تھی، لیکن اب یہ ایک عالمی مہم بن چکی ہے۔ آپ نے سنا ہوگا، ہندوستان کی تجویز پر اقوام متحدہ سال 2023 کو بین الاقوامی جوار سال کے طور پر منا رہا ہے۔ اور راجستھان جوار کی ایک بہت ہی زر خیز روایت کا گھر ہے۔ اور اب اسے ملک بھر میں پہچانا جانا چاہیے۔ اس لیے یہ بہت ضروری ہے کہ لوگ اس موٹے اناج کو شری انّ کے نام سے جانیں۔ اس بار بجٹ میں بھی اس چیز کا ذکر کیا گیا ہے۔ یہ سپر فوڈ ہے۔ اور یہی وجہ ہے کہ راجستھان کے باجرا، جوار، ایسے کئی موٹے دانے اب شری انّ کے نام سے جڑے ہوئے ہیں، یہ اس کی پہچان ہے۔ اور یہ کون نہیں جانتا جو راجستھان کو جانتا ہے۔ کیا کوئی ہمارے راجستھان کے اس باجرے کا دلیہ اور چورما بھول سکتا ہے؟ میری آپ تمام نوجوانوں سے خصوصی اپیل ہے کہ آپ کم از کم اپنی خوراک میں شری انّ یعنی موٹے اناج کو ضرور شامل کریں۔

ساتھیوں،

آج کے نوجوان کو صرف ایک علاقے تک محدود نہیں رہنا چاہیے۔ وہ کثیر استعدادی بھی ہے اور کثیر جہتی بھی۔ یہی وجہ ہے کہ نوجوانوں کی ہمہ گیر ترقی کے لیے بھی ملک کام کر رہا ہے۔ ایک طرف نوجوانوں کے لیے کھیلوں کا جدید انفراسٹرکچر بنایا جا رہا ہے، وہیں بچوں اور نوجوانوں کے لیے نیشنل ڈیجیٹل لائبریری کی بھی اس بجٹ میں تجویز دی گئی ہے۔ نیشنل ڈیجیٹل لائبریری کے ذریعے سائنس، تاریخ، سماجیات، سنسکرت جیسی زبانیں، ہر موضوع پر کتابیں شہر سے لے کر گاؤں تک ہر سطح پر ڈیجیٹل طور پر دستیاب ہوں گی۔ اس سے آپ کے سیکھنے کے تجربے کو ایک نئی بلندی ملے گی، تمام وسائل آپ کے کمپیوٹر اور موبائل پر دستیاب ہوں گے۔

ساتھیوں،

کھیل صرف ایک علم ہی نہیں ہے، کھیل ایک بہت بڑی صنعت بھی ہے۔ لوگوں کی بڑی تعداد کھیلوں سے متعلق چیزیں اور وسائل بنا کر روزگار بھی حاصل کرتی ہے۔ یہ کام زیادہ تر ہمارے ملک میں چھوٹے پیمانے پر MSMEs کے ذریعے کیے جاتے ہیں۔ اس بار بجٹ میں کھیلوں کے شعبے سے متعلق MSMEs کو مضبوط کرنے کے لیے کئی اہم اعلانات بھی کیے گئے ہیں۔ میں آپ کو ایک اور اسکیم کے بارے میں بتانا چاہتا ہوں۔ یہ اسکیم ہے- پی ایم وشو کرما کوشل سمان یعنی پی ایم وکاس یوجنا۔ یہ سکیم ایسے لوگوں کے لیے بہت مددگار ثابت ہو گی جو خود روزگار کرتے ہیں، تخلیق کرتے ہیں، اپنی ہنر مندی سے، ہاتھ سے چلنے والے اوزار بناتے ہیں۔ پی ایم وشو کرما یوجنا کے ذریعہ مالی مدد سے لے کر ان کے لیے نئی منڈی بنانے تک ہر طرح کی مدد کی جائے گی۔ اس سے ہمارے نوجوانوں کے لیے روزگار اور خود روزگار کے وسیع مواقع بھی پیدا ہوں گے۔

ساتھیوں،

جہاں پورے دل سے کوشش کی جاتی ہے وہاں نتائج بھی یقینی ہوتے ہیں۔ ملک نے کوششیں کیں، ہم نے نتائج ٹوکیو اولمپکس، کامن ویلتھ گیمز میں دیکھے۔ جے پور مہا کھیل میں آپ سب کی کوششیں مستقبل میں ایسے ہی شاندار نتائج دیں گی۔ آپ سے ہی ملک کے لیے اگلے گولڈ اور سلور میڈلسٹ نکلنے والے ہیں۔ اگر آپ پر عزم ہیں تو اولمپکس میں بھی ترنگے کی شان میں اضافہ کریں گے۔ آپ جہاں بھی جائیں گے ملک کا نام روشن کریں گے۔ مجھے یقین ہے کہ ہمارے نوجوان ملک کی کامیابی کو بہت آگے لے جائیں گے۔ اس جذبے کے ساتھ، آپ سب کا بہت بہت شکریہ۔ بہت ساری نیک خواہشات۔

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
India's forex reserves rise $12.8 billion to 6-week high of $572.8 billion

Media Coverage

India's forex reserves rise $12.8 billion to 6-week high of $572.8 billion
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر،25 مارچ 2023
March 25, 2023
Share
 
Comments

A Flood of Support and Appreciation for PM Modi During His Historic Visit to Karnataka