Share
 
Comments
“Big and bold decisions have been taken in this Vidhan Sabha building”
“This Assembly is an example of how equal participation and equal rights are pursued in democracy to social life”
“The concept of democracy in India is as ancient as this nation and as our culture”
“Bihar always remained steadfast in its commitment for protecting democracy and democratic values”
“The more prosperous Bihar gets, the more powerful India's democracy will be. The stronger Bihar becomes, the more capable India will be”
“Rising above the distinction of party-politics, our voice should be united for the country”
“The democratic maturity of our country is displayed by our conduct”
“The country is constantly working on new resolutions while taking forward the democratic discourse”
“Next 25 years are the years of walking on the path of duty for the country”
“The more we work for our duties, the stronger our rights will get. Our loyalty to duty is the guarantee of our rights”

نمسکار!

اس تاریخی پروگرام میں ہمارے درمیان موجود بہار کے گورنرجناب پھاگو چوہان جی، یہاں کے مقبول وزیر اعلیٰ جناب نتیش کمار جی، ودھان سبھا کے اسپیکر جناب وجے سنہا جی، بہار قانون ساز کونسل کے کارگزار صدر جناب ادوھیش نارائن سنگھ، نائب وزیر اعلیٰ محترمہ رینو دیوی جی، تاراکیشور پرساد جی ،اپوزیشن لیڈر جناب تیجسوی یادو جی سبھی وزراء اور دیگر مہمانوں اور دیویوں اور معزز حضرات۔

آپ سبھی کو بہار کے لوگوں کو ، بہار ودھان سبھا بھون کی صد سالہ تقریب کی بہت بہت مبارکباد اور نیک تمنائیں ۔ بہار کی یہ خوش قسمتی ہے کہ جو بہار سے لگاؤ رکھتا ہے بہار اس پیار کو کئی گنا کرکے لوٹاتا ہے ۔آج مجھے بہار ودھان سبھا حدود میں آنے والے پہلے وزیر اعظم ہونے کا اعزاز بھی ملا ہے ،میں اس محبت اور پیار کے لئے بہار کے ہر ایک شخص کو دل سے سلام کرتا ہوں ،وزیر اعلیٰ جی کا ، اسپیکر صاحب کا بھی دل سے بہت بہت تشکر کا اظہار کرتا ہوں۔

ساتھیوں،

مجھے کچھ عرصہ قبل صد سالہ یادگار استمبھ کا افتتاح کرنے کا موقع بھی ملا ہے۔ یہ ستون نہ صرف بہار کے شاندار ماضی کی علامت بنے گا بلکہ یہ بہار کی بہت سی امنگوں کو تحریک بھی دے گا۔ اب سے کچھ دیر پہلے بہار ودھان سبھا میوزیم اور ودھان سبھا گیسٹ ہاؤس کا سنگ بنیاد بھی رکھا گیا ہے۔ میں ان ترقیاتی کاموں کے لیے نتیش کمار جی اور وجے سنہا جی کو تہہ دل سے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ مجھے اسمبلی کمپلیکس کے شتابدی پارک میں کلپترو لگانے کا بھی خوشگوار تجربہ ہوا ہے۔ کلپترو کے بارے میں یہ مانا جاتا ہے کہ یہی درخت ہماری امیدوں اور خواہشات کو پورا کرتا ہے۔ جمہوریت میں پارلیمانی اداروں کا کردار یہی ہوتا ہے۔ مجھے امید ہے کہ بہار ودھان سبھا اسی تسلسل کے ساتھ اپنا یہ کردار ادا کرتی رہے گی اور بہار اور ملک کی ترقی میں اپنا انمول حصہ ڈالتی رہے گی۔

ساتھیوں،

بہار ودھان سبھا کی اپنی ایک  تاریخ رہی ہے اور یہاں کی ودھان سبھا کی عمارت میں یکے بعد دیگرے بڑے اور دلیرانہ اور تاریخی فیصلے لیے گئے ہیں۔ آزادی سے پہلے  اسی ودھان سبھا سے گورنر ستیندر پرسنا سنہا جی نے دیسی صنعتوں کی حوصلہ افزائی کرنے، دیسی چرخہ کو اپنانے کی اپیل کی تھی۔ آزادی کے بعد اسی ودھان سبھا میں زمینداری کو ختم کرنے کا قانو ن پاس کیا گیاتھا۔ اس روایت کو آگے بڑھاتے ہوئے  وزیر اعلیٰ نتیش کمار جی  کی حکومت نے بہار پنچایتی راج جیسا قانون بھی پاس کیاتھا۔ اس  قانون کے ذریعہ، بہار، پنچایتی راج میں خواتین کو 50 فیصد ریزرویشن دینے والی پہلی ریاست بن گئی ہے۔ یہ اسمبلی اس بات کی ایک مثال ہے کہ جمہوریت سے لے کر سماجی زندگی تک یکساں شراکت اور مساوی حقوق کے لیے کس طرح کام کیا جا سکتا ہے۔ آج جب میں آپ سے اس کمپلیکس میں ودھان سبھا کی عمارت کے بارے میں بات کر رہا ہوں تو میں یہ بھی سوچ رہا ہوں کہ پچھلے 100 سالوں میں یہ عمارت، یہ کمپلیکس اتنی بڑی ہستیوں کی آواز کی گواہ رہی ہے۔ نام لینے جاؤں تو شاید وقت کم ہو جائے لیکن اس عمارت نے تاریخ کے لکھنے والوں کو بھی دیکھا ہے اور تاریخ  نےخود بھی تخلیق کی ہے۔ کہا جاتا ہے کہ تقریر کی توانائی کبھی ختم نہیں ہوتی۔ اس تاریخی عمارت میں کہی گئی باتیں، بہار کی ترقی سے متعلق قراردادیں آج بھی ایک توانائی کے طور پر موجود ہیں۔ آج بھی وہ الفاظ گونج رہے ہیں۔

ساتھیوں،

بہار ودھان سبھا بھون کا یہ صد سالہ جشن ایک ایسے وقت میں  منعقد ہو رہا ہے جب ملک اپنی آزادی کا امرت مہوتسو منا رہا ہے۔ اسمبلی کی عمارت کے 100 سال اور ملک کی آزادی کے 75 سال، یہ محض وقت کا اتفاق نہیں ہے، اس اتفاق کا ایک مشترکہ ماضی بھی ہے اور معنی خیز پیغامات بھی پنہا ہیں۔ بہار میں ایک طرف چمپارن ستیہ گرہ جیسی تحریکیں چلیں تو دوسری طرف اس سر زمین نے ہندوستان کو جمہوریت کی اقدار اور اصولوں پر چلنے کا راستہ بھی دکھایا۔ کئی دہائیوں سے یہ بتانے کی کوشش کی جا رہی ہے کہ ہندوستان کو جمہوریت غیر ملکی راج اور غیر ملکی سوچ کی وجہ سے ملی ہے اور ہمارے لوگ بھی بعض اوقات یہ باتیں کرتے ہیں۔ لیکن، جب کوئی بھی شخص یہ کہتا ہے، تو وہ بہار کی تاریخ اور بہار کے ورثے کا احاطہ کرنے کی کوشش کرتا ہے۔ جب دنیا کے بڑے حصے تہذیب اور ثقافت کی طرف اپنے پہلا قدم  بڑھارہے تھے تب ویشالی میں ایک نفیس جمہوریت کام کر رہی تھی۔جب دنیا کے دوسرے خطوں میں جمہوری حقوق کی سمجھ،فروغ پانا شروع ہوئی  تھی تب لچھوی اور وجی سنگھ جیسی جمہوریہ اپنے عروج پر تھیں۔

ساتھیوں،

ہندوستان میں جمہوریت کا تصور اتنا ہی قدیم ہے جتنا یہ قوم ہے، ہماری ثقافت بھی اتنی ہی قدیم ہے۔ ہزاروں سال پہلے ہمارے ویدوں میں یہ کہا گیا ہے – توان ویشو ورناتم راجیہ توا-میمہ پردیشہ پنچ دیویہ۔ یعنی بادشاہ کو تمام رعایا مل کر منتخب کرےاوردانشوروں کی کمیٹیاں اسے منتخب کریں۔ ویدوں میں کہا گیا ہےکہ ہزاروں سال پورے گرنتھ میں کہا گیا ہے، آج بھی ہمارے آئین میں ایم پیز‘ ایم ایل اے‘ چیف منسٹر‘ وزیراعظم‘ صدر کا انتخاب اسی جمہوری قدر پر منحصر ہے۔ جمہوریت ایک خیال کے طور پر یہاں ہزاروں سالوں سے زندہ ہے کیونکہ ہندوستان جمہوریت کو مساوات اور مساوات کا  وسیلہ سمجھتی ہے۔ ہندوستان بقائے باہمی اور ہم آہنگی کے نظریہ پر یقین رکھتا ہے۔ ہم سچائی میں یقین رکھتے ہیں، ہم تعاون میں یقین رکھتے ہیں، ہم ،ہم آہنگی پر یقین رکھتے ہیں، اور ہم معاشرے کی مربوط طاقت پر یقین رکھتے ہیں۔ اسی لیے ہمارے ویدوں نے بھی ہمیں یہ منتر دیا ہے - سم گچھدھوم سم ودھوم، سم وو منانسی جتنم۔ یعنی ہم ایک دوسرے کے ساتھ چلیں، مل کر بولیں، ایک دوسرے کے ذہن، ایک دوسرے کے خیالات کو جانیں اور سمجھیں۔ اس وید منتر میں مزید کہا گیا ہے – سمانو منتر: سمیتی: سامانی۔ ایک ہی ذہن: ساہا چٹامیشن یعنی ہم مل کر سوچیں، اپنی کمیٹیاں، اپنی اسمبلیاں اور ایوان معاشرے کی فلاح و بہبود کے لیے ہم خیال ہوں اور ہمارے دل بھی ایک جیسے ہوں۔ صرف ہندوستان ہی بحیثیت قوم جمہوریت کو دل سے قبول کرنے کا اتنا عظیم جذبہ پیش کرنے میں کامیاب رہا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ میں جب بھی دنیا کے مختلف ممالک میں جاتا ہوں، بڑے بڑے عالمی فورمز پر حاضر ہوتا ہوں، بڑے فخر سے کہتا ہوں کیونکہ کسی نہ کسی وجہ سے ہمارے کانوں میں ایک لفظ بھر جاتا ہے۔ ہمارے ذہن کی تخلیق ایک جگہ معلق ہو گئی ہے۔ ہمیں بار بار بتایا گیا ہے کہ ہم دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ہیں۔ ہم دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ہیں اور ہم نے بار بار سننے کی وجہ سے وہی مان لیا ہے۔ آج بھی جب میں عالمی سطح پر جاتا ہوں تو فخر سے کہتا ہوں کہ ہندوستان دنیا میں جمہوریت کی ماں ہے، ہندوستان جمہوریت کی ماں ہے۔ اور ہمیں اور بہار کے لوگوں کو خصوصی دنیا میں یہ کھیل جاری رکھنا چاہئے کہ ہم جمہوریت کی ماں اور بہار کی شاندار ورثہ ہیں، پالی میں موجود تاریخی دستاویزات بھی اس کا زندہ ثبوت ہیں۔ بہار کی اس شان کو کوئی مٹا یا چھپا نہیں سکتا۔ اس تاریخی عمارت نے بہار کے اس جمہوری ورثے کو 100 سال سے مضبوط کیا ہے۔ اس لیے میں سمجھتا ہوں کہ آج یہ عمارت بھی ہم سب کے احترام کی مستحق ہے۔

ساتھیوں،

اس عمارت کی تاریخ بہار کے شعور سے وابستہ ہے جس نے غلامی کے دور میں بھی اپنی جمہوری اقدار کو ختم نہیں ہونے دیا۔ ہمیں اس کی تعمیر اور اس کے بعد کے واقعات کو بار بار یاد رکھنا چاہیے۔ کیسے جناب کرشن سنگھ جی،جناب بابو نے انگریزوں کے سامنے یہ شرط رکھی تھی کہ وہ حکومت اسی وقت بنائیں گے جب انگریز حکومت منتخب حکومت کے کام کاج میں مداخلت نہیں کرے گی۔ کس طرح جناب بابو جی نے ہندوستان کی رضامندی کے بغیر ملک کو دوسری جنگ عظیم میں جھونکنے کے خلاف حکومت سے استعفیٰ دے دیا تھا اور بہار کا ہر فرد اس پر فخر کر سکتا ہے۔ اس پیش رفت نے ہمیشہ یہ پیغام دیا کہ بہار کبھی بھی جمہوریت کے خلاف کوئی چیز قبول نہیں کر سکتا۔ اور بھائیو اور بہنو، ہم سب نے دیکھا ہے کہ کس طرح آزادی کے بعد بھی بہار اپنی جمہوری وفاداری کے لیے اتنا ہی ثابت قدم اور یکساں طور پر قائم رہا۔ بہار نے ڈاکٹر راجندر پرساد کی شکل میں آزاد ہندوستان کو اپنا پہلا صدر دیا۔ لوک نائک جے پرکاش، کرپوری ٹھاکر اور بابو جگجیون رام، متعدد بہادراور  نڈر لیڈر اس سر زمین پر پیدا ہوئے۔ یہاں تک کہ جب ملک میں آئین کو کچلنے کی کوشش ہوئی تو بہار نے اس کے خلاف احتجاج کا بگل پھونکا۔ ایمرجنسی کے اس تاریک دور میں بہار کی مٹی نے دکھایا کہ ہندوستان میں جمہوریت کو دبانے کی کوششیں کبھی کامیاب نہیں ہو سکتیں۔ اور اس لیے میرا ماننا ہے کہ بہار جتنا زیادہ خوشحال ہوگا، ہندوستان کی جمہوری طاقت اتنی ہی مضبوط ہوگی۔ بہار جتنا مضبوط ہوگا، ہندوستان اتنا ہی طاقتور ہوگا۔

ساتھیوں،

آزادی کا امرت مہوتسو اور بہار قانون ساز اسمبلی کے 100 سال مکمل ہونے کا یہ تاریخی موقع ہم سب کے لیے، ہر عوامی نمائندے کے لیے خود شناسی اور خودکفالت کا پیغام لے کر آیا ہے۔ ہم اپنی جمہوریت کو جتنا مضبوط کریں گے، اتنی ہی زیادہ طاقت ہمیں اپنی آزادی اور اپنے حقوق کے لیے ملے گی۔ آج اکیسویں صدی میں دنیا تیزی سے بدل رہی ہے۔ نئی ضروریات کے مطابق ہندوستان کے لوگوں کی توقعات، ہمارے نوجوانوں کی توقعات بھی بڑھ رہی ہیں۔ ہمارے جمہوری نظام کو اس کے مطابق تیز رفتاری سے کام کرنا ہو گا۔ آج جب ہم آزادی کے 75 ویں سال میں ایک نئے ہندوستان کی قرارداد کے ساتھ آگے بڑھ رہے ہیں تو ان قراردادوں کو آگے بڑھانے کی ذمہ داری ہماری پارلیمنٹ اور قانون ساز اسمبلیوں پر بھی عائد ہوتی ہے۔ اس کے لیے ہمیں ایمانداری اور خلوص کے ساتھ دن رات محنت کرنے کی ضرورت ہے۔ ملک کے رکن پارلیمنٹ، ریاست کے ایم ایل اے کے طور پر، یہ ہماری ذمہ داری بھی ہے کہ ہم مل کر جمہوریت کو درپیش ہر چیلنج کو شکست دیں۔ ہماری آواز پارٹی اور اپوزیشن کی تفریق سے اوپر اٹھ کر ملک کی خاطر، ملکی مفاد کے لیے متحد ہونی چاہیے۔ ایوان کو عوام سے متعلق موضوعات پر مثبت مکالمے کا مرکز بننے دیں، مثبت کاموں کے لیے ہماری آواز اتنی ہی بلند ہونی چاہیے کہ ہمیں اس سمت میں بھی آگے بڑھنا ہے۔ ہمارے ملک کی جمہوری پختگی ہمارے طرز عمل سے ظاہر ہوتی ہے۔ اور اس طرح، دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کے ساتھ، ہمیں بھی خود کو دنیا کی سب سے بالغ جمہوریت کے طور پر آگے بڑھانا ہے۔

ساتھیوں،

مجھے خوشی ہے کہ آج ملک اس سمت میں مثبت تبدیلی دیکھ رہا ہے۔ میں اگر پارلیمنٹ کی بات کروں توگزشتہ کچھ سالوں میں  پارلیمنٹ میں ارکان پارلیمنٹ کی موجودگی اور پارلیمنٹ کی کارکردگی کی صلاحیت میں ریکارڈ اضافہ ہوا ہے۔ اور وجے جی نے اسمبلی کی تفصیلات بھی بتا دی ہیں۔ مثبت،تحریک دینے والے  بڑے پیمانے پر موضوعات،فیصلوں،اس کی پوری تفصیلات بتائیں۔

ساتھیوں،

اسی طرح پارلیمنٹ میں لوک سبھا کی کارکردگی کی صلاحیت گزشتہ بجٹ کےاجلاس میں بھی 129 فیصدتھی۔ راجیہ سبھا میں بھی 99 فیصد کارکردگی کی صلاحیت ریکارڈ کی گئی۔ یعنی ملک مسلسل نئی قراردادوں پر کام کر رہا ہے، جمہوری صلاح و مشورے سے آگے بڑھ رہا ہے۔ اور ہم سب جانتے ہیں کہ جب لوگ دیکھتے ہیں کہ جن کو انہوں نے منتخب کیا ہے وہ ایوان میں اپنے نقطہ نظر کو سنجیدگی سے رکھتے ہوئے محنت کر رہے ہیں تو ان کا جمہوریت پر اعتماد بھی بڑھ جاتا ہے۔ اس اعتماد کو بڑھانا بھی ہم سب کی ذمہ داری ہے۔

ساتھیوں،

وقت کے ساتھ ہمیں نئے خیالات کی ضرورت ہے، نئی سوچ کی ضرورت ہے۔ اس لیے جیسے جیسے لوگ بدلتے ہیں، جمہوریت کو بھی نئی جہتوں کا اضافہ کرتے رہنا ہے۔ ان تبدیلیوں کے لیے ہمیں نہ صرف نئی پالیسیوں کی ضرورت ہے بلکہ پرانی پالیسیوں اور پرانے قوانین کو بھی وقت کے مطابق بدلنا ہوگا۔ گزشتہ برسوں میں پارلیمنٹ نے تقریباً 1500 ایسے قوانین کو ختم کیا ہے۔ ان قوانین کی وجہ سے عام آدمی کو درپیش مسائل، ملک کی ترقی کی راہ میں حائل رکاوٹیں دور ہوئیں اور ایک نیا اعتماد بھی پیدا ہوا۔ ریاستی سطح پر بھی ایسے کئی پرانے قوانین ہیں جو برسوں سے چل رہے ہیں۔ ہمیں مل کر اس طرف بھی توجہ دینے کی ضرورت ہے۔

ساتھیوں،

دنیا کے لیے اکیسویں صدی ہندوستان کی صدی ہے۔ یہ بات ہم مسلسل سنتے آرہے ہیں، ہم بہت سے لوگوں کے منہ سے سنتے ہیں، دنیا کے لوگ بتاتے رہتے ہیں، لیکن اگر میں ہندوستان کی بات کروں تو میں کہوں گا کہ یہ صدی ہندوستان کے لیے فرائض کی صدی ہے۔ ہمیں اس صدی میں، اگلے 25 سالوں میں نئے ہندوستان کے سنہری ہدف تک پہنچنا ہے۔ ہمارے فرائض ہمیں ان مقاصد تک لے جائیں گے۔ اس لیے یہ 25 سال ملک کے لیے فرض شناسی کے راستے پر چلنے کے سال ہیں۔ یہ 25 سال فرض کے احساس کے ساتھ اپنے آپ کو وقف کرنے کا عرصہ ہے۔ ہمیں اپنے لیے، اپنے معاشرے کے لیے، اپنے ملک کے لیے فرض کی کسوٹی پر خود کو پرکھنا ہے۔ ہمیں فرض کی انتہا کو عبور کرنا ہے۔ آج ہندوستان عالمی سطح پر جو ریکارڈ قائم کر رہا ہے، ہندوستان تیزی سے ایک عالمی طاقت کے طور پر ابھر رہا ہے، اس کے پیچھے ہندوستان کے شہریوں کا عزم اور فرض شناسی ہے۔ جمہوریت میں ہمارے گھر عوام کے جذبات کی ترجمانی کرتے ہیں۔ لہٰذا ہمارے ایوانوں اور عوامی نمائندوں کے طرز عمل سے بھی اہل وطن کا ضمیر جھلکنا چاہیے۔ جس طرح سے ہم ایوان میں اپنے آپ کو چلائیں گے، ایوان کے اندر فرض کے احساس پر جتنا زور دیا جائے گا، اہل وطن کو اتنی ہی توانائی اور تحریک ملے گی۔ ایک اور اہم نکتہ، ہمیں اپنے فرائض کو اپنے حقوق سے الگ نہیں سمجھنا چاہیے۔ ہم جتنا زیادہ اپنے فرائض کے لیے کام کریں گے ہمارے حقوق اتنے ہی مضبوط ہوں گے۔ فرض سے ہماری وفاداری ہی ہمارے حقوق کی ضمانت ہے۔ اس لیے ہم سب عوامی نمائندوں کو اپنا فرض ادا کرنے کے عزم کا اعادہ کرنا ہوگا۔ یہ قراردادیں ہماری اور ہمارے معاشرے کی کامیابی کی راہ ہموار کریں گی۔ آج جب ہم قومی قراردادوں کا امرت لے کر آگے بڑھ رہے ہیں تو ہمیں اپنے فرض میں،  اپنی محنت میں کوئی کسر نہیں چھوڑنی چاہیے۔ بحیثیت قوم ہمارا اتحاد ہماری اولین ترجیح ہونی چاہیے۔ غریب سے غریب، دلت، مظلوم، استحصال  کا شکار،محروم، قبائلی کی زندگی کو آسان بنانے کے لیے ہر ایک کو ہر ضروری سہولت ملنی چاہیے،یہ ہم سب کا عزم ہونا چاہیے۔آج ملک جن مقاصد کے لیے کام کر رہا ہے، جیسے گھر سب کے لیے، پانی سب کے لیے، بجلی سب کے لیے، ہم سب کی اجتماعی ذمہ داری ہے۔ بہار جیسی طاقتور اور توانا ریاست میں غریب، پسماندہ، قبائلی اور خواتین کی ترقی بھی بہار کو آگے بڑھا رہی ہے اور اس میں اضافہ کرے گی۔ اور جب بہار ترقی کرے گا تو ہندوستان بھی اپنے سنہری ماضی کو دہراتے ہوئے ترقی اور کامیابی کی نئی بلندیوں کو چھوئے گا۔ اس خواہش کے ساتھ، آپ سب نے مجھے اس اہم تاریخی موقع پر مدعو کیا، مجھے اس تاریخی لمحے کو دیکھنے کا موقع دیا، اس کے لیے میں ریاستی حکومت، اسپیکر اور یہاں کے تمام بزرگ شہریوں کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں۔ بہت سی نیک تمناؤں کے ساتھ، یہ سو سالہ سفر آنے والے سو سالوں کے لیے نئی توانائی کا مرکز بن جائے، اسی ایک امید کے ساتھ، بہت بہت شکریہ! بہت بہت مبارک !

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
Railways achieves 1,000 million tons milestone in freight transportation for FY 2022-23

Media Coverage

Railways achieves 1,000 million tons milestone in freight transportation for FY 2022-23
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر،8 دسمبر 2022
December 08, 2022
Share
 
Comments

Appreciation For PM Modi’s Relentless Efforts Towards Positive Transformation of the Nation

Citizens Congratulate Indian Railways as it Achieves a Milestone in Freight Transportation for FY 2022-23