کھیلوں میں کوئی ہار نہیں ہوتی، صرف جیتنا یا سیکھنا ہوتا ہے
آپ کی کامیابی پورے ملک کو متاثر کرتی ہے اور شہریوں میں فخر کا جذبہ بھی پیدا کرتی ہے
آج کل کھیلوں کو ایک پیشے کے طور پر بھی قبول کیا جا رہا ہے
کسی معذور کے ذریعہ کھیلوں میں جیت صرف کھیل میں حوصلہ افزائی کا معاملہ نہیں ہے بلکہ یہ خود زندگی میں تحریک حاصل کرنے کا معاملہ ہے
پہلے کا نقطہ نظر ’حکومت کے لیے کھلاڑی‘ تھا اب یہ ’کھلاڑیوں کے لیے حکومت‘ ہے
آج حکومت کا نقطہ نظر کھلاڑی مرکوز ہے
صلاحیت پلس پلیٹ فارم کارکردگی کے برابر ہے۔ جب صلاحیت کو مطلوبہ پلیٹ فارم مل جاتا ہے تو کارکردگی کو فروغ ملتا ہے
ہر ٹورنامنٹ میں آپ کی شرکت انسانی خوابوں کی فتح ہے

ساتھیو

میں آپ سب سے ملنے کا موقع ڈھونڈتا اور منتظر رہتا ہوں، کب ملوں گا، کب آپ کے تجربات سنوں گا، اور میں نے دیکھا ہے کہ آپ ہر بار نئے ولولے اور جوش کے ساتھ آتے ہیں۔ اور یہ بھی اپنے آپ میں ایک بڑی ترغیب بن جاتا ہے۔ اس لیے سب سے پہلے میں آپ سب کے درمیان صرف ایک مقصد کے لیے آیا ہوں اور وہ ہے آپ سب کو مبارکباد دینا۔  آپ  لوگ انڈیا سے باہر تھے، چین میں کھیل رہے تھے، لیکن شاید  آپ   کوخبر نہ ہو، میں بھی تمہارے ساتھ تھا۔ میں یہاں بیٹھ کر آپ کی ہر سرگرمی، آپ کی کوششوں، آپ کے اعتماد کا ہر لمحہ جی رہا تھا۔ آپ سب نے جس طرح ملک کا وقار بلند کیا ہے وہ واقعی بے مثال ہے۔ اور اس کے لیے ہم آپ کو، آپ کے کوچز اور آپ کے اہل خانہ کو جتنی  مبارکباد دی جائے کم  ہے۔ اور ہم وطنوں کی طرف سے میں آپ سب کو اس تاریخی کامیابی کے لیے بہت بہت مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

 

ساتھیو

آپ لوگ اچھی طرح جانتے ہیں کہ کھیل ہمیشہ انتہائی مسابقتی ہوتے ہیں۔ آپ ہر کھیل میں ایک دوسرے سے مقابلہ کرتے ہیں، ایک دوسرے کو سخت مقابلہ دیتے ہیں۔ لیکن میں جانتا ہوں کہ آپ  کے اندر بھی لڑائی چل رہی ہے۔ آپ ہر روز اپنے آپ سے مقابلہ کرتے ہیں۔ آپ کو اپنے آپ سے لڑنا پڑتا ہے، جدوجہد کرنی پڑتی ہے اور اپنے آپ کو بار بار سمجھانا پڑتا ہے۔ کبھی کبھی آپ نے دیکھا ہو گا کہ آپ کو لگتا ہے کہ کل صبح نہیں جاگیں گے، لیکن پھر آپ کو معلوم نہیں کہ اچانک آپ کو کس قسم کی توانائی جگا دیتی ہے اور آپ کو دوڑنے پر مجبور کر دیتی ہے۔ یہاں تک کہ اگر آپ کو تربیت پسند نہیں ہے، تب بھی آپ کو یہ کرنا پڑے گا، اور یہاں تک کہ اگر ہر کوئی تربیتی مرکز سے گھر چلا گیا ہے، تو بعض اوقات آپ کو کچھ اضافی گھنٹے پسینہ بہانا پڑتا ہے اور زیادہ محنت کرنی پڑتی ہے۔ اور جیسا کہ وہ کہتے ہیں، سونا جتنا زیادہ گرم ہوتا ہے، اتنا ہی چمکتا ہے، اتنا ہی  کھرا اترتا ہے۔ اور اسی طرح تم سب محنت کرکے کھرےہو گئے ہو۔ جتنے بھی لوگ اس گیم کے لیے منتخب ہوئے ہیں، کچھ جیت کر واپس آئے ہیں، کچھ نے وہاں سے سیکھا ہے، آپ میں سے ایک بھی ہار کر واپس نہیں آیا ہے۔ اور میری ایک بہت ہی سادہ تعریف ہے۔ کھیل میں صرف دو چیزیں ہیں۔ یا تو جیتو،یا سیکھو، کوئی ہار نہیں۔ جب میں آپ سب سے بات کر رہا تھا تو کچھ اپنے بارے میں کہہ رہے تھے کہ اس بار ایک جمپ کم ہے، اگلی بار  مزید جمپ  لگاؤں گا۔ اس کا مطلب ہے کہ وہ سیکھنے کے بعد واپس آتا ہے، وہ نئے اعتماد کے ساتھ واپس آتا ہے۔ بہت سے لوگ ہیں جو اس بار گئے ہوں گے، کچھ پہلی بار گئے ہوں گے۔ لیکن 140 کروڑ ہم وطنوں میں سے آپ کا انتخاب بھی اپنے آپ میں فتح ہے۔

بہت سارے چیلنجز کا سامنا کرنے کے بعد آپ مضبوط ہو گئے ہیں۔ اور یہ آپ کے گروپ کے نتائج میں صرف اعداد و شمار کی بات نہیں، ہر  اہل وطن فخر محسوس کر رہا ہے۔ ایک نیا ا عتماد  ملک کو بھر دیتا ہے۔ ایسا نہیں ہے کہ آپ سب نے صرف پچھلے ریکارڈ ہی توڑے ہیں، لیکن کچھ شعبوں میں آپ نے وہ ریکارڈ توڑ دیے ہیں، کچھ لوگ سوچیں گے کہ اب آپ دو تین گیمز تک یہاں تک نہیں پہنچ پائیں گے، آپ نے یہ صورتحال پیدا کر دی ہے۔ عوام کی طرف سے۔ اور  آپ لوگ 111 تمغے لے کر گھر لوٹے ہیں .111 یہ کوئی چھوٹا آنکڑا  نہیں ہے۔ مجھے یاد ہے، جب میں سیاست میں نیا تھا۔ پارٹی کی تنظیم میں کام کرتے تھے۔ اور لوک سبھا انتخابات میں، ہم نے 12 سیٹوں پر مقابلہ کیا اور گجرات میں 12 میں سے 12 جیتے۔ تو ہم اس طرح جیت گئے، ہم دہلی آئے، یہ میرے لیے سرپرائز تھا۔ اس وقت ہمارے لیڈر اٹل بہاری واجپائی جی، انہوں نے مجھے گلے لگایا اور کہا، کیا تم جانتے ہو کہ بارہ کیا ہے؟ کیا آپ جانتے ہیں کہ بارہ میں سے بارہ جیتنے کا کیا مطلب ہے؟ اس نے کہا، پورے ملک سے ہم میں سے کبھی بارہ نہیں تھے، آپ ایک ریاست سے بارہ لائے ہیں۔ اور بارہ جیتنے کے بعد بھی، جب تک اٹل جی نے مجھے نہیں بتایا، میرا دھیان اس طرف نہیں مبذول ہوا۔ میں آپ کے لیے بھی یہی کہتا ہوں۔ یہ 111 صرف 111 نہیں ہیں۔ یہ 140 کروڑ خواب ہیں۔ یہ 2014 میں ایشین پیرا گیمز میں ہندوستان کے جیتنے والے تمغوں کی تعداد سے 3 گنا زیادہ ہے۔ اس بار ہمیں 2014 کے مقابلے میں تقریباً 10 گنا زیادہ گولڈ میڈل ملے ہیں۔ 2014 میں، ہم مجموعی کارکردگی میں 15 ویں نمبر پر تھے، لیکن اس بار آپ سب ملک کو ٹاپ فائیو میں لے آئے ہیں۔ ملک گزشتہ نو سالوں میں معیشت کے لحاظ سے دنیا میں دس میں سے پانچویں نمبر پر پہنچ گیا۔ اور آج آپ نے ملک کو بھی دس میں سے پانچ پر پہنچا دیا ہے۔ یہ سب آپ کی محنت کا نتیجہ ہے اس لیے آپ سب مبارکباد کے مستحق ہیں۔

 

ساتھیو

گزشتہ چند ماہ بھارت میں کھیلوں کے لیے حیرت انگیز رہے ہیں۔ اور اس میں آپ کی کامیابی سونے پر سہاگے کی  طرح ہے۔ اگست کے مہینے میں، ہمیں بوڈاپیسٹ میں عالمی ایتھلیٹکس چیمپئن شپ میں گولڈ میڈل ملا۔ ہندوستان کی بیڈمنٹن مینز ڈبلز ٹیم نے ایشیائی کھیلوں میں اپنا پہلا طلائی تمغہ جیتا۔ ہندوستان کی پہلی خواتین کی ڈبلز جوڑی نے ایشیائی کھیلوں میں ٹیبل ٹینس کا تمغہ جیتا۔ ہندوستانی مردوں کی بیڈمنٹن ٹیم نے 2022 کا تھامس کپ جیت کر تاریخ رقم کی۔ ہمارے کھلاڑیوں نے ایشین گیمز میں تاریخ کی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے 28 گولڈ میڈلز سمیت کل 107 تمغے جیتے۔ اب آپ نے ایشین پیرا گیمز میں اب تک کی اپنی بہترین کارکردگی پیش کی ہے۔

ساتھیو

پورا ملک آپ کی کارکردگی کو دیکھ کر پرجوش ہے۔ اور میں آپ کو بتاتا چلوں کہ دوسرے گیمز میں جب کوئی کھلاڑی میڈل لاتا ہے۔ تو کھیلوں کی دنیا، اور کھلاڑی، نئے کھلاڑی، یہ ان سب کے لیے ایک بڑا ترغیب، جوش و خروش کا باعث بنتا ہے۔ لیکن جب کوئی معذور شخص فتح یاب ہوتا ہے تو وہ نہ صرف کھیل بلکہ زندگی کے ہر شعبے میں ایک تحریک بن جاتا ہے۔ وہ زندگی کے ہر شعبے کے لیے ایک تحریک بن جاتا ہے۔ مایوسی میں ڈوبا کوئی بھی شخص اپنی کامیابی کو دیکھ کر کھڑا ہو جاتا ہے اور سوچتا ہے کہ اللہ نے مجھے سب کچھ دیا ہے، اس نے مجھے ہاتھ، ٹانگیں، دماغ، آنکھیں دی ہیں، ارے کچھ کوتاہیوں کے باوجود وہ کمال کر رہا ہے اور میں سو رہا ہوں۔  وہ کھڑا ہو  جاتا ہے۔ آپ کی کامیابی اس کے لیے ایک عظیم تحریک بن جاتی ہے۔ اور اس طرح جب آپ کامیاب ہوتے ہیں، جب کوئی آپ کو کھیلتے ہوئے دیکھتا ہے، تو یہ صرف کھیل کے میدان یا کھیلوں کی دنیا تک محدود نہیں رہتا، یہ زندگی کے ہر شعبے میں ہر ایک کے لیے تحریک کا ذریعہ بن جاتا ہے اور آپ وہ کام کرتے ہیں، دوستو۔

 

ساتھیو

ہم سب ہندوستان کی ترقی کو اسپورٹنگ کلچر اور اسپورٹنگ سوسائٹی کی شکل میں دن بہ دن دیکھ رہے ہیں۔ ایک اور وجہ ہے جس کی وجہ سے ہندوستان کو آگے بڑھنے کا اعتماد حاصل ہوا ہے۔ اب ہم 2030 کے یوتھ اولمپکس اور 2036 کے اولمپک گیمز کو منعقد کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

ساتھیو

آپ جانتے ہیں، کھیلوں میں کوئی شارٹ کٹ نہیں ہیں۔ اسپورٹس پرسن کی طرف سے سخت محنت، اگر کوئی اور نہیں کر سکتا جو کام آپ کو کرنا ہے تو آپ کو خود کرنا ہوگا۔ کھیلوں کی دنیا میں اسے تمام محنت خود کرنی پڑتی ہے۔ کوئی پراکسی نہیں ہے، آپ کو خود کرنا ہوگا۔ کھلاڑیوں کو کھیل کے تمام دباؤ کو خود ہی سنبھالنا پڑتا ہے۔ آپ کا صبر اور محنت سب سے زیادہ مفید ہے۔ ہر شخص اپنی طاقت سے بہت کچھ کرسکتا ہے۔ جب اسے کسی کا سہارا ملتا ہے تو اس کی طاقت کئی گنا بڑھ جاتی ہے۔ خاندان، معاشرہ، ادارے اور دیگر معاون ماحولیاتی نظام کھلاڑیوں کو نئی بلندیوں تک پہنچنے کی ترغیب دیتے ہیں۔ یہ سب ہمارے کھلاڑیوں کی حمایت کے لیے جتنا زیادہ اکٹھے ہوں گے، اتنا ہی ان کے لیے بہتر ہوگا۔ اگر آپ فیملی کے معاملے پر نظر ڈالیں  تو ہمارے گھر کے لوگ اپنے بچوں کو کھیل کود کے لیے زیادہ سپورٹ دے رہے ہیں۔ جب آپ میں سے دوسرے لوگوں کو تھوڑا سا موقع ملا ہو گا، گھر سے تھوڑا حوصلہ ملا ہو گا، لیکن اس سے پہلے آپ کو تکلیف ہو گی، آپ کے ساتھ یہ ہو گا، پھر آپ کی دیکھ بھال کون کرے گا، وہاں آپ کا خیال کون رکھے گا۔ مت جاؤ، گھر پر رہو، بہت سے اس سے گزر چکے ہیں۔ آج میں دیکھ رہا ہوں کہ ہر خاندان بچوں کو بھی اس میدان میں آگے بڑھنے کی ترغیب دے رہا ہے۔ ملک میں اس نئے کلچر کا اُبھرنا بڑی بات ہے۔ اگر معاشرے کی بات کریں تو لوگوں میں بڑی تبدیلی آئی ہے۔ اب آپ نے بھی دیکھا ہوگا، سب سے پہلے، اگر آپ کھیلوں میں ہیں، آپ اچھی طرح سے پڑھائی نہیں کرتے، آپ جا کر کہیں گے، میں میڈل لایا ہوں، تو یہ کیا آپ کرتے ہیں، پڑھتے نہیں، کہاں؟ کیا آپ کھائیں گے؟ کہاں سے کمائیں گے؟ وہ ایک ہی بات پوچھتے تھے، اب اچھا ہوا کہ تم لائے ہو، مجھے چھونے دو، مجھے بھی چھو کر دیکھنے دو۔ یہ تبدیلی آئی ہے۔

ساتھیو

اس زمانے میں اگر کوئی کھیلوں میں تھا تو اسے معاشی اعتبار  سے مطمئن نہیں سمجھا جاتا تھا۔ اس سے پوچھا گیا - لیکن آپ برسرروزگار ہونے کے لیے کیا کریں گے؟ یہ پوچھا جاتا تھا، لیکن اب معاشرہ کھیلوں کو بھی ایک پیشہ کے طور پر قبول کر رہا ہے۔

 

ساتھیو

اگر میں حکومت کی بات کروں تو پہلے کہا جاتا تھا کہ کھلاڑی حکومت کے لیے ہیں۔ لیکن اب کہا جا رہا ہے کہ حکومت مکمل طور پر کھلاڑیوں کے لیے ہے۔ جب حکومت اور پالیسی ساز زمینی حقیقتوں سے جڑے ہوتے ہیں، جب حکومت کھلاڑیوں کے مفادات کے لیے حساس ہوتی ہے، جب حکومت کھلاڑیوں کی جدوجہد، ان کے خوابوں کو سمجھتی ہے تو اس کا براہ راست اثر حکومت کی پالیسیوں پر نظر آتا ہے۔ نقطہ نظر میں بھی نظر آتا ہے۔ سوچ میں بھی نظر آتا ہے۔ ملک میں پہلے بھی بہترین کھلاڑی موجود تھے لیکن ان کی حمایت کے لیے کوئی پالیسی نہیں تھی۔ نہ اچھا کوچنگ سسٹم، نہ جدید انفراسٹرکچر اور نہ ہی ضروری مالی معاونت، پھر ہمارے کھلاڑی اپنا جھنڈا کیسے لہرا سکتے تھے۔ گزشتہ 9 سالوں میں ملک اس پرانی سوچ اور پرانے نظام سے نکل آیا ہے۔ آج ملک میں ایسے کئی کھلاڑی ہیں جن پر چار سے پانچ کروڑ روپے خرچ ہو رہے ہیں۔ حکومت کا نقطہ نظر اب ایتھلیٹ سینٹرک ہے۔ حکومت اب کھلاڑیوں کی راہ میں حائل رکاوٹیں دور کر کے مواقع پیدا کر رہی ہے۔ یہ کہا جاتا ہے،  صلاحیت  + پلیٹ فارم = کارکردگی۔ جب صلاحیت کو صحیح پلیٹ فارم مل جاتا ہے تو کارکردگی اور بھی بہتر ہو جاتی ہے۔ ‘کھیلو انڈیا’  جیسی اسکیمیں کھلاڑیوں کے لیے ایک ایسا پلیٹ فارم بن گئی ہیں، جس نے نچلی سطح پر ہمارے کھلاڑیوں کو تلاش کرنے اور ان کی مدد کرنے کا راستہ کھول دیا ہے۔ آپ میں سے بہت سے لوگ اس بات سے واقف ہوں گے کہ کس طرح ٹاپس انیشیٹو ہمارے کھلاڑیوں کی کارکردگی کو بہتر بنانے میں مدد کر رہا ہے۔ پیرا ایتھلیٹس کی مدد کے لیے، ہم نے گوالیار میں ڈس ایبلٹی اسپورٹس ٹریننگ سینٹر بھی قائم کیا ہے۔ اور آپ میں سے جو لوگ گجرات سے واقف ہیں وہ جانتے ہوں گے کہ اس دنیا میں آنے کی پہلی کوشش گجرات سے شروع ہوئی تھی۔ اور رفتہ رفتہ ایک پورا کلچر تیار ہو گیا۔ آج بھی آپ میں سے بہت سے ایسے ہیں جو شاید وہاں ٹریننگ کے لیے جاتے ہیں، گاندھی نگر کے ان اداروں میں ٹریننگ کرتے رہتے ہیں۔ کہنے کا مطلب یہ ہے کہ جب سارے ادارے شکل اختیار کر لیتے ہیں تو ان کی طاقت کا پتہ نہیں چلتا۔ لیکن جب مسلسل  مشق اور ریاضت ہوتی ہے تو ملک اپنی طاقت کا تجربہ کرنے لگتا ہے۔ مجھے یقین ہے کہ ان تمام سہولیات کے ساتھ ملک کو آپ جیسے اور بھی بہت سے فاتح ملیں گے، مجھے پورا بھروسہ ہے۔

 

ساتھیو

آپ کے 300 سے زیادہ لوگوں کے گروپ میں، میں نے پہلے ہی کہا تھا کہ کوئی بھی ہارنے والا نہیں ہے۔ اور میرا منتر یہ ہے کہ میں دوبارہ دہراتا ہوں، ہم کچھ جیت کر آئے ہیں، کچھ سیکھنے کے بعد آئے ہیں۔ آپ کو اپنے آپ کو اور اپنی میراث کو تمغوں سے زیادہ دیکھنا چاہیے، کیونکہ یہی سب سے بڑی چیز ہے۔ آپ نے جن مشکلات کا سامنا کیا اور جس طرح آپ نے ان پر قابو پانے کے لیے اپنی طاقت دکھائی، وہ اس ملک کے لیے آپ کا سب سے بڑا تعاون ہے۔ آپ میں سے بہت سے لوگ چھوٹے شہروں،  معمولی   پس منظر اور مشکل حالات سے یہاں آئے ہیں۔ بہت سے لوگوں کو پیدائش سے ہی جسمانی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑا ہے، بہت سے لوگ دور دراز کے دیہات میں رہے ہیں، کچھ کو ایسا حادثہ پیش آیا ہے جس نے ان کی پوری زندگی بدل کر رکھ دی ہے، لیکن آپ اب بھی ثابت قدم ہیں۔ سوشل میڈیا پر اپنی کامیابی دیکھیں، شاید آج کل کسی کھیل کو اتنی شہرت نہیں ملتی جتنی آپ لوگوں کو ملتی ہے۔ ہر کوئی، جسے کھیل میں کوئی سمجھ بوجھ نہیں، وہ بھی دیکھ رہا ہے۔ ارے یہ بچہ ایسا کر رہا ہے، اس کے  ساتھ جسمانی  مسائل ہونے کے باوجود وہ اتنا کر رہا ہے، لوگ دیکھ رہے ہیں،یہ اپنے گھروں میں بچوں کو دکھاتا ہے، دیکھو بچے کیسے کر رہے ہیں۔ آپ کی زندگی کی کہانیاں، گائوں کے بیٹے بیٹیوں، چھوٹے شہروں کے لوگ، آج اسکول، کالج، گھر، کھیتوں، ہر جگہ چرچے ہیں۔ آپ کی جدوجہد اور یہ کامیابی ان کے ذہنوں میں بھی ایک نیا خواب بُن رہی ہے۔ آج حالات جیسے بھی ہوں، وہ بڑا سوچ رہا ہے اور بہت حوصلہ افزائی کر رہا ہے۔ ان میں عظیم بننے کی خواہشیں پروان چڑھ رہی ہیں۔ ہر ٹورنامنٹ میں آپ کی شرکت انسانی خوابوں کی فتح ہے۔ اور یہ آپ کی سب سے بڑی میراث ہے۔

اور اسی لیے مجھے یقین ہے کہ آپ اسی طرح محنت کریں گے اور ملک کا سر فخر سے بلند کرتے رہیں گے۔ ہماری حکومت آپ کے ساتھ ہے، ملک آپ کے ساتھ ہے۔ اور دوستو، عزم میں بڑی طاقت ہوتی ہے۔ مردہ سوچ کے ساتھ چلو گے تو نہ دنیا چلا سکتے ہو اور نہ کچھ حاصل کر سکتے ہو۔ آپ نے بہت سے لوگوں کو یہ کہتے ہوئے دیکھا ہوگا کہ اگر آپ یہاں سے روہتک جائیں گے تو آپ 50 بار سوچیں گے کہ آپ کو بس ملے گی یا نہیں، آپ کو ٹرین ملے گی یا نہیں، میں کیسے جاؤں گا، کیا کروں گا۔ اور کچھ لوگ، ٹھیک ہے مجھے روہتک جانا ہے، ٹھیک ہے میں جا کر شام کو آؤں گا۔ وہ نہیں سوچتا، ہمت کرتا ہے۔ سوچنے کی طاقت ہے۔ اور آپ نے دیکھا ہی ہوگا کہ سو سے آگے کی بات کرنا ایسے ہی نہیں ہوتا۔ ایک لمبی سوچ بھی ہے، پوری محنت کا ریکارڈ بھی ہوتا ہے اور پھر ہم اعتماد اور عزم کے ساتھ نکلتے پڑتے ہیں، اس بار 100 سے آگے نکلے، اور پھر 101 پر نہیں رکے، ہم 111 پر پہنچ گئے۔ آج جب میں کہتا ہوں کہ دوستو، یہ میرا ٹریک ریکارڈ ہے اور اسی لیے میں کہتا ہوں کہ ہم وہ ہیں جو دسویں نمبر سے پانچویں نمبر کی معیشت پر پہنچے ہیں اور میں زور  دے کر کہتا ہوں کہ اسی دہائی میں ہم تیسرے نمبر پر پہنچ جائیں گے۔ اسی بنیاد پر میں کہتا ہوں کہ 2047 میں یہ ملک ایک ترقی یافتہ ہندوستان بن کر ہی رہے گا۔ اگر میرے معذور اپنے خواب پورے کر سکتے ہیں تو 140 کروڑ  کی طاقت  ایک خواب بھی ادھورا نہیں چھوڑے گی، یہ میرا یقین ہے۔

 

ساتھیو

میں آپ کو بہت بہت مبارکباد پیش کرتا ہوں، آپ کو بہت بہت نیک خواہشات پیش کرتا ہوں، لیکن ہمیں یہیں رکنے کی ضرورت نہیں، اور نئے عزم، اور نیا اعتماد ہر صبح نئی صبح، تب ہی تو جا کر منزل اپنے پاس آتی ہے دوستو۔

 بہت بہت شکریہ،  بہت بہت نیک خواہشات۔

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India a 'green shoot' for the world, any mandate other than Modi will lead to 'surprise and bewilderment': Ian Bremmer

Media Coverage

India a 'green shoot' for the world, any mandate other than Modi will lead to 'surprise and bewilderment': Ian Bremmer
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM Modi attends 'Salaam India' programme organised by India TV
May 23, 2024

In an interview to India TV under the 'Salaam India' programme with Rajat Sharma, Prime Minister Narendra Modi became candid and spoke at length about India's Lok Sabha Elections, 2024 at the Bharat Mandapam in New Delhi.