سترہویں لوک سبھا کئی اہم فیصلوں کی گواہ رہی ہے۔ یہ پانچ سال ’ریفارم، پرفارم اور ٹرانسفارم‘ کے بارے میں ہیں
’’سینگول ہندوستان کے ورثے کی بحالی اور آزادی کے پہلے لمحے کی یاد کی علامت ہے‘‘
اس دوران ہندوستان کو G-20 کی صدارت ملی اور ہر ریاست نے ملک کی طاقت اور اس کی شناخت کو دنیا کے سامنے پیش کیا
’’ہم اطمینان کے ساتھ کہہ سکتے ہیں کہ جن کاموں کے لیے کئی نسلیں صدیوں سے انتظار کر رہی تھیں وہ 17ویں لوک سبھا میں پورے ہو گئے‘‘
’’آج سماجی انصاف کے لیے ہماری عہد بستگی جموں و کشمیر کے لوگوں تک پہنچ رہی ہے‘‘
’’ہم فخر سے کہہ سکتے ہیں کہ یہ ملک 75 سال تک تعزیرات سے متعلق قانون کے تحت رہتا تھا لیکن اب ہم نیا سنہیتا کے تحت رہتے ہیں‘‘
’’مجھے یقین ہے کہ انتخابات ہماری جمہوریت کی شان کے عین مطابق ہوں گے‘‘
شری رام مندر کے بارے میں آج کی تقریروں میں ’سب کا ساتھ سب کا وکاس‘کے منتر کے ساتھ ’سنویدنا‘، ’سنکلپ‘ اور ’سہانوبھوتی‘شامل ہیں

محترم اسپیکر،

آج کا یہ دن جمہوریت کی ایک عظیم روایت کا اہم دن ہے۔ 17ویں لوک سبھا نے پانچ برس ملک کی خدمت میں جس طرح سے متعدد اہم فیصلے لیے۔ متعدد چنوتیوں کا سب نے اپنی اہلیت کے مطابق ملک کو صحیح سمت دینے کی کوشش، ایک طرح سے یہ آج کا دن ہم سب کے ان پانچ سالہ نظریاتی سفر کا، ملک کے لیے وقف اس وقت کا، ملک کو پھر سے ایک مرتبہ اپنے عزائم کو قوم کے قدموں میں پیش کرنے کا یہ موقع ہے۔ ملک میں اصلاحات، کارکردگی اور تبدیلی کے ان پانچ برسوں میں ایسا بہت کم ہوتا ہے کہ کوئی اصلاح ہو اور کارکردگی دکھائی دے اور ہم اس تبدیلی کو اپنی آنکھوں کے سامنے دیکھ سکیں، اس سے ایک نیا اعتماد بھرتا ہے۔ سترہویں لوک سبھا کے بعد سے آج ملک اس کا تجربہ کر رہا ہے۔ اور مجھے پختہ یقین ہے کہ ملک یقینی طور پر سترہویں لوک سبھا کو آشیرواد دیتا رہے گا۔ اس سارے عمل میں ایوان کے تمام معزز اراکین نے بہت اہم کردار ادا کیا ہے۔ اور یہ وہ وقت ہے جب میں تمام معزز اراکین پارلیمنٹ کو اس گروپ کے لیڈر اور آپ سب کے دوست کی حیثیت سے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔

خصوصی طور پر محترم اسپیکر،

میں آپ کا بھی تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں۔ پانچ سال کے دوران کبھی کبھی سمترا جی مفت کامیڈی کیا کرتی تھیں۔ لیکن آپ کا چہرہ ہر لمحہ مسکراہٹ سے لبریز تھا۔ یہاں کچھ بھی ہو جائے، وہ مسکراہٹ کبھی کم نہیں ہوئی۔ بہت سے متنوع حالات میں، آپ نے اس ایوان کی بہت متوازن اور واقعی غیر جانبداری سے رہنمائی کی ہے۔ میں اس کے لیے بھی آپ کی بہت تعریف کرتا ہوں۔ غصے کے لمحات تھے، الزامات کے لمحات تھے، لیکن آپ نے ان تمام حالات کو پورے صبر اور دانشمندی کے ساتھ سنبھالا، آپ نے ایوان کو چلایا اور ہم سب کی رہنمائی کی، اس کے لیے میں آپ کا بھی مشکور ہوں۔

محترم چیئرمین،

ان پانچ برسوں میں پوری انسانیت کو اس صدی کے سب سے بڑے بحران کا سامنا کرنا پڑا۔ کون بچے گا؟ کون بچ پائے گا؟ کوئی کسی کو بچا سکتا ہے یا نہیں؟ ایسی ہی صورت حال تھی۔ ایسے میں ایوان میں آنا یہ ی، اپنا گھر چھوڑ کر نکلنا یہ بھی مشکل بھرا دور تھا۔ اس کے بعد بھی جو بھی نئے انتظامات کرنے پڑے، آپ نے کیے اور ملک کے کام کو رکنے نہیں دیا۔ ایوان کا وقار بھی برقرار رہنا چاہیے اور ملک کے اہم کاموں میں جس رفتار سے کام ہونا چاہیے وہ بھی برقرار رہنا چاہیے اور اس کام میں ایوان کا کردار ذرہ برابر بھی پیچھے نہیں رہنا چاہیے، آپ نے اسے بڑے احسن طریقے سے نبھایا۔ اور اسے دنیا کے لیے ایک بڑی مثال کے طور پر پیش کیا۔

محترم چیئرمین،

میں معزز اراکین پارلیمنٹ کا اس بات پر بھی شکریہ ادا کرنا چاہوں گا کہ اس دور میں ملک کی ضروریات کو دیکھتے ہوئے ایم پی فنڈ چھوڑنے کی تجویز معزز اراکین پارلیمنٹ کے سامنے رکھی گئی اور ایک لمحے کی تاخیر کے بغیر تمام معزز اراکین پارلیمنٹ نے ایم پی فنڈ ترک کر دیا۔ یہی نہیں بلکہ اپنے طرز عمل سے ہم وطنوں کو مثبت پیغام دینے اور معاشرے کو اعتماد دلانے کے لیے خود اراکین پارلیمنٹ نے اپنی تنخواہوں میں 30 فیصد کٹوتی کا فیصلہ کیا۔ تاکہ ملک کو بھی یقین ہو جائے کہ یہ سب سے پہلے چھوڑنے والے لوگ ہیں۔

اور محترم چیئرمین،

بغیر کسی وجہ کے ہم سب اراکین پارلیمنٹ کو سال میں دو مرتبہ بھارتی میڈیا کے کسی نہ کسی کونے میں گالیاں پڑتی تھیں کہ ان اراکین پارلیمنٹ کو اتنا ملتا ہے اور کینٹین میں اتنا کھاتے ہیں۔ باہر اتنے میں دستیاب ہے، کینٹین میں اتنے میں دستیاب ہے، یعنی مجھے نہیں معلوم، بال نوچ لیے جاتے تھے۔ آپ نے فیصلہ کیا کہ کینٹین میں سب کے لیے یکساں نرخ ہوں گے اور اراکین پارلیمنٹ نے کبھی احتجاج نہیں کیا اور نہ ہی شکایت کی اور بغیر کسی وجہ کے تمام اراکین پارلیمنٹ کو ہراساں کرنے والے لوگ لطف لیتے تھے۔ آپ نے ہم سب کو اس سے بچایا، اس کے لیے بھی میں آپ کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔

محترم اسپیکر،

یہ درست ہے کہ ہماری لوک سبھا خواہ سترھویں ہو، سولہویں یا پندرھویں ہو، پارلیمنٹ کی نئی عمارت ہونی چاہیے۔ سب نے اجتماعی طور پر، یک آواز ہو کر اس پر بحث کی، لیکن کوئی فیصلہ نہیں ہوا۔ یہ آپ کی قیادت ہے جس نے فیصلے کیے، معاملات کو آگے بڑھایا، حکومت کے ساتھ مختلف میٹنگیں کیں اور اسی کے نتیجے میں آج ملک کو پارلیمنٹ کی یہ نئی عمارت ملی ہے۔

محترم اسپیکر،

پارلیمنٹ کی نئی عمارت میں ایک وراثت کا حصہ اور جو آزادی کا پہلا لمحہ تھا اس کو زندہ رکھنے کا ہمیشہ ہمیشہ ہمارے رہنما کے طور پر یہ سینگول کو یہاں نصب کرے کا کام اور اب ہر سال اس کو ایک رسمی تقریب کے طور پر حصہ بنانے کا ایک بہت بڑا کام آپ کی رہنمائی میں ہوا ہے جو بھارت کی آئندہ نسلوں کو ہمیشہ ہمیشہ ہمیں آزادی کے اس اہم لمحے کے ساتھ جوڑ کر رکھے گا۔ اور آزادی کا وہ پل کیوں تھا، ہمیں وہ یاد رہے گا تو ملک کو آگے لے جانے کی وہ ترغیب بھی بنی رہے گی، اس مبارک کام کو آپ نے انجام دیا۔

محترم چیئرمین،

یہ بھی صحیح ہے، اس مدت میں جی20 کی صدارت کی ذمہ داری ملی، بھارت کو بہت عزت ملی، ملک کی ہر ریاست کے سامنے بھارت کی صلاحیت اور اپنی ریاست کی شناخت بخوبی پیش کی، جس کا اثر آج بھی عالمی افق پر ہے۔ اس کے ساتھ آپ کی قیادت میں جی 20 کی طرح پی 20 کا جو اجلاس ہوا اور دنیا کے متعدد ممالک کے اسپیکر حضرات یہاں آئے اور جمہوریت کی ماں، بھارت کی اس عظیم روایت کو لے کر، اس جمہوری اقدار کو لے کر صدیوں سے ہم آگے بڑھے ہیں۔ نظام بدلے ہوں گے لیکن بھارت کا جمہوری مزاج ہمیشہ بنا رہا ہے، اس بات کو آپ نے دنیا کے اسپیکرس کے سامنے بخوبی پیش کیا اور بھارت کو جمہوری نظام میں بھی ایک شہرت حاصل کرانے کا کام آپ کی قیادت میں ہوا۔

محترم چیئرمین،

میں آپ کو ایک بات کے لیے خصوصی طور پر مبارکباد دینا چاہتا ہوں، شاید ہمارے تمام معزز اراکین اسمبلی اور میڈیا کی توجہ اس طرف نہیں گئی۔ ہم آئین ساز اسمبلی جسے کہتے ہیں، پرانی پارلیمنٹ، جس میں ہم عظیم شخصیات کے یوم پیدائش پر ان کے مجسموں پر گلہائے عقیدت نذر کرنے کے لیے جمع ہوتے ہیں۔ لیکن یہ 10 منٹ کی تقریب ہوتی تھی اور ہم چلے جاتے تھے۔ آپ نے ملک بھر میں ان عظیم انسانوں کے لیے تقریری مقابلہ اور مضمون نویسی کی مہم شروع کی ہے۔ان میں جو لوگ بہترین خطیب ہوتے تھے اور وہ جو بہترین مقالے لکھتے تھے اور ریاست سے دو دو بچے اس دن دہلی آتے تھے اور اس عظیم شخصیت کے یوم پیدائش پر پھولوں کی پتیاں نچھاور کرتے تھے۔ اس موقع پر ملک کے قائدین بھی موجود ہوتے تھے اور بعد میں سارا دن اس پر لیکچر دیتے تھے۔ وہ دہلی میں دوسرے مقامات پر جایا کرتے تھے، وہ رکن پارلیمنٹ کی سرگرمیوں کو سمجھتے تھے، یعنی ایک مسلسل عمل کو چلا کر آپ نے ملک کے لاکھوں طلباء کو ہندوستان کی پارلیمانی روایت سے جوڑنے کا بہت بڑا کام کیا ہے۔ اور یہ روایت آپ کے کھاتے میں رہے گی اور آنے والے وقت میں سب اس روایت کو بڑے فخر سے آگے بڑھائیں گے۔ میں آپ کو اس کے لیے بھی مبارکباد دیتا ہوں۔

محترم اسپیکر،

پارلیمنٹ کی لائبریری، جس کو استعمال کرنا چاہئے وہ کتنا کر پاتے تھے، وہ تو میں نہیں کہہ سکتا،، لیکن آپ نے اس کے دروازے عام آدمی کے لئے کھول دیئے۔ آپ نے علم کے اس خزانے، روایات کے ورثے کو عام لوگوں کے لیے کھول کر بہت بڑی خدمت کی ہے، اس کے لیے میں آپ کو بھی تہہ دل سے مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ پیپر لیس پارلیمنٹ، ڈیجیٹلائزیشن، آپ نے ہمارے سسٹم میں جدید ٹیکنالوجی کو کیسے شامل کیا، شروع میں کچھ ساتھیوں کو مسائل کا سامنا کرنا پڑا لیکن اب سب اس کے عادی ہو چکے ہیں۔ جب میں دیکھتا ہوں کہ جب بھی آپ یہاں بیٹھے ہیں، آپ کچھ نہ کچھ کرتے رہتے ہیں، آپ نے اپنے آپ میں بڑا کام کیا ہے، آپ نے یہ مستقل انتظامات بنائے ہیں۔ میں اس کے لیے بہت مشکور ہوں۔

محترم اسپیکر،

میں کہہ سکتا ہوں کہ آپ کی کارکردگی اور ان معزز اراکین پارلیمنٹ کی بیداری کی وجہ سے، ان سب کی مشترکہ کوششوں کے نتیجے میں 17ویں لوک سبھا کی پیداواری صلاحیت تقریباً 97 فیصد رہی ہے۔ 97 فیصد پیداواریت اپنے آپ میں خوشی کی بات ہے، لیکن مجھے یقین ہے کہ آج جب ہم 17ویں لوک سبھا کے اختتام کی طرف بڑھ رہے ہیں، ہم 18ویں لوک سبھا کا آغاز اس قرارداد کے ساتھ کریں گے کہ ہم ہمیشہ 100 فیصد سے زیادہ پیداواری صلاحیت کو یقینی بنائیں گے۔ اور اس میں بھی سات سیشن سو فیصد سے زیادہ نتیجہ خیز رہیں، اس کو بھی یقینی بنانا ہے۔ اور میں نے دیکھا کہ رات بھر بیٹھ کر آپ نے ہر رکن اسمبلی کے خیالات کو حکومت کی توجہ دلانے کی پوری کوشش کی۔ میں ان کامیابیوں پر تمام معزز ممبران پارلیمنٹ اور تمام فلور لیڈرز کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں اور مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ پہلے اجلاس میں 17ویں لوک سبھا کے پہلے اجلاس میں دونوں ایوانوں نے 30 بل منظور کیے جو اپنے آپ میں ایک ریکارڈ ہے۔ اور 17ویں لوک سبھا میں نئے معیارات قائم کیے گئے ہیں۔

محترم اسپیکر،

آزادی کے 75 سال مکمل ہونے کا جشن، ہم سب کو کتنی بڑی سعادت حاصل ہوئی ہے کہ ایسے موقع پر ہمارے ایوان نے بہت اہم کاموں میں سبقت لے لی، ہر مقام پر ہوا۔ شاید ہی کوئی ایم پی ہو گا جس نے 75 سال کی آزادی کو ایک لوک تہوار بنانے میں اپنے اپنے علاقے میں کوئی کردار ادا نہ کیا ہو۔ یعنی حقیقت میں ملک نے آزادی کے 75 سال پورے جوش و خروش کے ساتھ منائے اور اس میں ہمارے معزز اراکین اسمبلی اور اس ایوان نے بڑا کردار ادا کیا ہے۔ ہمارے آئین کے نفاذ کے 75 سال ہو گئے ہیں، اسی ایوان کو یہ موقع ملا ہے، تمام معزز اراکین اسمبلی کو یہ موقع ملا ہے اور آئین کی تمام ذمہ داریاں یہیں سے شروع ہوتی ہیں اور ان کے ساتھ وابستگی اپنے آپ میں ایک بہت بڑا موقع ہے، یہ بہت بڑا محرک ہے۔

محترم اسپیکر،

اس دور میں بہت سی اصلاحات ہوئی ہیں اور یہ گیم چینجر ہے۔ 21ویں صدی کے ہندوستان کی مضبوط بنیاد ان تمام چیزوں میں نظر آتی ہے۔ ملک ایک بڑی تبدیلی کی طرف تیز رفتاری سے آگے بڑھ رہا ہے اور اس میں بھی ایوان کے تمام ساتھیوں نے بہترین رہنمائی کی ہے، اپنی داغ بیل ڈالی ہے اور ملک… ہم اطمینان سے کہہ سکتے ہیں کہ جس کا ہماری کئی نسلیں انتظار کر رہی تھیں،اس 17ویں لوک سبھا کے ذریعے بہت سے کام پورے ہوئے، نسلوں کا انتظار ختم ہوا۔ اس کے لیے کئی نسلوں نے آئین کا خواب دیکھا تھا۔ لیکن آئین میں ہر لمحہ ایک دراڑ، ایک خلا نظر آتا تھا۔ ایک رکاوٹ تکلیف دہ تھی۔ لیکن اس ایوان نے آرٹیکل 370 اور آرٹیکل 310 کو ہٹا دیا اور اس کی مکمل روشنی میں آئین کی مکمل شکل سامنے آ گئی۔ اور مجھے یقین ہے کہ جب آئین کو 75 سال ہو چکے ہیں… آئین بنانے والی عظیم شخصیات کی روح جہاں بھی ہوں گی، وہ ہمیں ضرور آشیرواد دے رہی ہوں گی، ہم نے یہ کام مکمل کر لیا ہے۔ جموں و کشمیر کے لوگ سماجی انصاف سے بھی محروم تھے۔ آج ہم مطمئن ہیں کہ سماجی انصاف کے لیے ہمارا عزم جموں و کشمیر کے ہمارے بھائیوں اور بہنوں تک بڑھا دیا گیا ہے۔

محترم اسپیکر،

دہشت گردی ناسور بن کر ملک کے سینے پر گولیاں برساتی رہی۔ ماں بھارتی کی سرزمین روز لہولہان ہو جاتی تھی۔ دہشت گردی کی وجہ سے ملک کے بہت سے بہادر اور ہونہار لوگ قربان ہوئے۔ ہم نے دہشت گردی کے خلاف سخت قوانین بنائے، اس ایوان نے بنائے۔ میں پختہ یقین رکھتا ہوں کہ اس کی وجہ سے ایسے مسائل سے نبرد آزما ہونے والوں کو تقویت ملی ہے۔ ذہنی طور پر اعتماد میں اضافہ ہوا ہے۔ اور ہندوستان کا دہشت گردی سے مکمل طور پر مبرا ہونے کا احساس ہے۔ اور وہ خواب بھی پورا ہو گا۔ ہم 75 سال سے انگریزوں کے دیے گئے تعزیرات کے تحت زندگی گزار رہے ہیں۔ یہ بات ہم ملک کو فخر سے بتائیں گے، ہم نئی نسل کو یہ بتائیں گے، آپ اپنے نواسوں کو فخر سے بتا سکیں گے کہ 75 سال سے ملک تعزیرات کے تحت رہنے کے باوجود اب آنے والی نسلیں اس کے تحت رہیں گی۔ عدالتی ضابطہ اور یہی حقیقی جمہوریت ہے۔

محترم اسپیکر،

میں آپ کو ایک اور چیز کے لیے مبارکباد دینا چاہوں گا کہ نئے گھر کی شان و شوکت وغیرہ تو ہے ہی، لیکن اس کی شروعات ایک ایسے کام سے ہوئی ہے جس سے ہندوستان کی بنیادی اقدار کو تقویت ملتی ہے اور وہ ہے ناری شکتی وندن ایکٹ۔ جب بھی اس نئے ایوان پر بحث کی جائے گی، ناری شکتی وندن ایکٹ کا ذکر کیا جائے گا، یعنی ایک اور سیشن، اگرچہ یہ مختصر تھا، لیکن یہ ایک ایسا اجلاس تھا جس نے دور رس فیصلے لیے۔ اس نئے ایوان کے تقدس کا احساس اسی لمحے سے شروع ہو گیا تھا جو ہمیں ایک نئی طاقت دینے والا ہے اور اس کا نتیجہ یہ ہے کہ مستقبل میں جب ہماری مائیں بہنیں بڑی تعداد میں یہاں بیٹھی ہوں گی۔ ملک فخر محسوس کرے گا.. ہماری مسلمان بہنیں طلاق ثلاثہ کے لیے بہت سارے اتار چڑھاؤ سے گزر رہی تھیں۔ عدالت نے ان کے حق میں فیصلہ دیا تھا لیکن انہیں وہ حق نہیں مل رہا تھا۔مجبوریوں کے ساتھ جینا پڑا۔ کوئی کھل کر کہتا ہے، کوئی چھپ کر کہتا ہے۔ لیکن 17ویں لوک سبھا نے تین طلاق سے آزادی اور خواتین کی طاقت کے احترام کا بہت اہم کام کیا ہے۔ تمام معزز ممبران اسمبلی چاہے ان کے خیالات کچھ بھی ہوں، ان کا فیصلہ جو بھی ہو، لیکن کسی نہ کسی وقت وہ کہیں گے کہ ہاں ہم ان بیٹیوں کو انصاف دلانے کے لیے یہاں موجود تھے۔ ہم نے نسلوں سے ہو رہی یہ ناانصافی پوری کر دی ہے اور وہ بہنیں ہمیں نواز رہی ہیں۔

محترم اسپیکر،

آنے والے 25 سال ہمارے ملک کے لیے بہت اہم ہیں۔ سیاست کی ہلچل اپنی جگہ۔ سیاسی میدان میں عوام کی امیدیں اور امنگیں اپنی جگہ پر ہیں۔ لیکن ملک کی امید، ملک کا خدشہ، ملک کا خواب، ملک کا عزم، یہ تشکیل پایا ہے… 25 سال ہوگئے ہیں  تو ملک مطلوبہ نتائج حاصل کرکے رہے گا۔ جب مہاتما گاندھی جی 1930 میں ڈانڈی گئے تھے، جب نمک ستیہ گرہ ہو رہا تھا۔ اعلان سے پہلے لوگوں کو اس کی قوت نظر نہیں آئی۔ سودیشی تحریک ہو، ستیہ گرہ کی روایت ہو، نمک ستیہ گرہ ہو۔ اس وقت واقعات چھوٹے لگتے تھے لیکن 1947 یعنی 25 سال کے عرصے نے ملک کے اندر وہ جذبہ پیدا کر دیا تھا۔ ہر شخص کے دل میں یہ احساس پیدا ہو گیا تھا کہ اب آزاد رہنا ہے۔ آج میں دیکھ رہا ہوں کہ ملک میں وہ جذبہ پیدا ہو رہا ہے۔ ہر گلی اور محلے کے ہر بچے نے کہا ہے کہ 25 سالوں میں ہمارے پاس ایک ترقی یافتہ ہندوستان ہوگا۔ اس لیے یہ 25 سال میرے ملک کی نوجوان قوت کے لیے بہت اہم دور کی حیثیت رکھتے ہیں۔ اور ہم میں سے کوئی ایسا نہیں ہوگا جو یہ نہیں چاہے گا کہ ملک 25 سالوں میں ترقی یافتہ ہندوستان نہ بن جائے۔ ہر ایک کا خواب ہوتا ہے، کچھ لوگوں نے خواب کو قرار داد بنا دیا، کچھ لوگوں کو قرارداد بنانے میں دیر ہو سکتی ہے، لیکن سب کو شامل ہونا پڑے گا اور جو شامل نہیں ہو سکے اور وہ زندہ ہیں وہ ضرور پھل کاٹیں گے، یہ میرا یقین ہے۔

محترم اسپیکر ،

یہ 5 سال نوجوانوں کے لیے بہت تاریخی قانون سازی بھی لائے ہیں۔ نظام میں شفافیت لا کر نوجوانوں کو نئے مواقع فراہم کیے ہیں۔ پیپر لیک جیسے مسائل جو ہمارے نوجوانوں کو پریشان کرتے تھے۔ ہم نے بہت سخت بنایا ہے تاکہ تمام معزز اراکین پارلیمنٹ ملک کے نوجوانوں کے جذبات کو سمجھیں اور ان کے ذہنوں میں موجود سوالات یا نشانات اور نظام کے تئیں ان کے غصے کو دور کرنے کے لیے بہت اہم فیصلہ کیا ہے۔

محترم اسپیکر،

یہ سچ ہے کہ کوئی بھی نسل انسانی تحقیق کے بغیر ترقی نہیں کر سکتی۔ اس کی مسلسل تبدیلی کے لیے تحقیق ضروری ہے۔ اور بنی نوع انسان کی کروڑوں سالہ تاریخ اس بات کی گواہ ہے کہ ہر دور میں تحقیق ہوتی رہی ہے، زندگی میں اضافہ ہوتا رہا ہے، زندگی پھیلتی رہی ہے۔ اس ایوان نے ایک باقاعدہ قانونی نظام بنا کر تحقیق کی حوصلہ افزائی کا بہت اچھا کام کیا ہے۔ نیشنل ریسرچ فاؤنڈیشن کے مطابق یہ قانون عام طور پر روزمرہ کی سیاست میں بحث کا موضوع نہیں بنتا، لیکن اس کے نتائج دور رس نکلنے والے ہیں اور اس 17ویں لوک سبھا نے اتنا اہم کام کیا ہے۔ مجھے ملک کی نوجوان طاقت پر پورا بھروسہ ہے… اس نظام کی وجہ سے ہمارا ملک دنیا کا ریسرچ ہب بن سکتا ہے۔ یہ ہمارے ملک کے نوجوانوں کا ہنر ہے، آج بھی دنیا میں ایسی کئی کمپنیاں ہیں جن کا اختراعی کام ہندوستان میں ہو رہا ہے۔ لیکن یہ ایک بہت بڑا مرکز بنے گا، یہ میرا پورا یقین ہے۔

محترم اسپیکر،

21ویں صدی میں ہماری بنیادی ضروریات پوری طرح بدل رہی ہیں۔ جس چیز کی کل تک کوئی اہمیت نہیں تھی، کوئی توجہ نہیں تھی، وہ مستقبل میں ڈیٹا کی طرح بہت قیمتی ہو گئی ہے… پوری دنیا میں اس بات کا چرچا ہے کہ ڈیٹا کی طاقت کیا ہے۔ ہم نے ڈیٹا پروٹیکشن بل لا کر مستقبل کی پوری نسل کا تحفظ کیا ہے۔ ہم نے پوری آنے والی نسل کو ایک نیا ہتھیار دیا ہے جس کی بنیاد پر وہ اسے صحیح طریقے سے استعمال کرکے اپنا مستقبل سنواریں گے۔ اور ڈیجیٹل پرسنل ڈیٹا پروٹیکشن ایکٹ، ہماری 21ویں صدی کی نسل اور دنیا کے لوگ بھی ہندوستان کے اس ایکٹ میں دلچسپی رکھتے ہیں۔ دنیا کے ممالک اس کا مطالعہ کرتے ہیں۔ ہر کوئی نئے نظام کے مطابق ڈھالنے کی کوشش کر رہا ہے۔ اور اس بارے میں رہنما اصول موجود ہیں کہ ڈیٹا کو کس طرح استعمال کیا جانا چاہیے۔ یعنی جس ڈیٹا کو لوگ سونے کی کان، نیا تیل کہتے ہیں اس کے تحفظ کے مکمل انتظامات کرتے ہوئے ایک طرح سے اس کی طاقت کا احساس کیسے ہو سکتا ہے۔ میرے خیال میں ہندوستان میں وہ طاقت ہے اور ہندوستان اس طاقت میں خاص ہے کیونکہ یہ تنوع سے بھرا ملک ہے۔ ہمارے پاس جس قسم کی معلومات ہیں اور ہم سے متعلق جو ڈیٹا تیار کیا گیا ہے، ذرا ہمارے ریلوے مسافروں کے ڈیٹا کو دیکھیں، یہ دنیا کے لیے ایک بہت بڑا تحقیقی موضوع بن سکتا ہے۔ ہم نے اس کی طاقت کو پہچان کر اس قانونی نظام کو دے دیا ہے۔

محترم اسپیکر،

پانی، زمین، آسمان، صدیوں سے زیر بحث آئے ہیں۔ لیکن اب ضرورت اس وقت پیدا ہو گئی ہے کہ سمندری طاقت، خلائی طاقت اور سائبر پاور جیسی ٹرپل طاقتوں کا مقابلہ کیا جائے اور دنیا جس قسم کے بحرانوں سے گزر رہی ہے۔ اور دنیا جس قسم کا نظریاتی اثر و رسوخ پیدا کرنے کی کوشش کر رہی ہے، ہمیں ان شعبوں میں مثبت صلاحیتیں پیدا کرنی ہوں گی اور خود کو منفی قوتوں سے چیلنج لینے کے قابل بنانا ہوگا۔ اور اس کے لیے خلا سے متعلق اصلاحات بہت ضروری تھیں اور یہاں خلائی اصلاحات کا کام بہت دور رس وژن کے ساتھ کیا گیا ہے۔

محترم اسپیکر،

17ویں لوک سبھا کے تمام معزز ممبران پارلیمنٹ نے ملک میں جو معاشی اصلاحات کی ہیں ان میں بہت بڑا کردار ادا کیا ہے۔ سالوں کے دوران، ہزاروں تعمیل نے غیر ضروری طور پر ہمیں عوام کو ایسی چیزوں میں الجھا رکھا ہے۔ ہم نے حکمرانی کے ایسے بگڑے ہوئے نظام سے نجات دلانے میں بہت اچھا کام کیا ہے اور میں اس کے لیے اس ایوان کا بھی شکر گزار ہوں۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ ایک عام آدمی اس قسم کی تعمیل کا بوجھ بنتا ہے۔ اور یہ بات میں نے ایک بار لال قلعے سے بھی کہی تھی۔ جب ہم کہتے ہیں کم از کم حکومت، زیادہ سے زیادہ حکمرانی۔ میں دل سے مانتا ہوں کہ حکومت جتنی جلدی لوگوں کی زندگیوں سے نکل جائے گی جمہوریت کی مضبوطی اتنی ہی بڑھے گی۔ حکومت روزمرہ کی زندگی میں ہر قدم کیوں روک رہی ہے؟ ہاں ضرورت مندوں کے لیے حکومت ہر لمحہ حاضر رہے گی۔ لیکن ایسی جمہوریت نہیں ہو سکتی جب حکومت کا اثر و رسوخ کسی کی زندگی میں رکاوٹ بن جائے۔ اور اس لیے ہمارا مقصد یہ ہے کہ جس قدر حکومت کو عام آدمی کی زندگی سے نکالا جائے، کم از کم حکومت کو اس کی زندگی میں شامل کیا جائے اور ہم دنیا کے سامنے ایسی خوشحال جمہوریت کو آگے بڑھائیں۔ وہ خواب پورا کریں گے۔

محترم اسپیکر،

ہم نے کمپنیز ایکٹ، لمیٹڈ لائیبلٹی پارٹنرشپ ایکٹ جیسے 60 سے زیادہ غیر ضروری قوانین کو ہٹا دیا ہے۔ کاروبار کرنے میں آسانی ایک بڑی ضرورت تھی کیونکہ اب اگر ملک کو آگے بڑھنا ہے تو اسے بہت سی رکاوٹوں کو عبور کرنا ہوگا۔ ہمارے بہت سے قوانین ایسے تھے کہ چھوٹی چھوٹی وجوہات پر آپ کو جیل بھیجا جا سکتا ہے۔ یہاں تک کہ ایک فیکٹری ہے اور اگر اس کا ٹوائلٹ چھ ماہ میں ایک بار وائٹ پوسٹ نہ کیا جائے تو اس کے لیے جیل ہے۔ چاہے وہ کتنی ہی بڑی کمپنی کا مالک کیوں نہ ہو۔ اب ہمیں ان لوگوں کے نظریے سے جان چھڑانے کا اعتماد ہونا چاہیے جو خود کو بڑے بائیں بازو کے لبرل کہتے ہیں اور ملک میں کمار شاہی کا یہ دور ہے۔ وہ لوگوں کے گھروں کو لیپ پوت کر ایسا کرے گا۔ سوسائٹی کے فلیٹس میں وہ لوگ اپنی لفٹیں اوپر نیچے کرتے رہتے ہیں۔ سب کچھ کر سکتے ہیں۔ چنانچہ سترہویں لوک سبھا نے سماج میں شہریوں کا اعتماد بڑھانے کا کام بہت تیزی سے کیا ہے۔ اور آگے چلتے ہیں - جن وشواس ایکٹ۔ میں سمجھتا ہوں کہ 180 سے زیادہ دفعات کو جرم سے مبرا قرار دینے کے لیے کام کیا گیا ہے۔ میں نے جو بھی کہا چھوٹی سے چھوٹی بات پر آپ کو جیل میں ڈال دیا۔ اس کو جرم سے مبرا بنا کر ہم نے شہریوں کو بااختیار بنا دیا ہے۔ اس ایوان نے یہی کیا ہے، معزز اراکین اسمبلی نے یہی کیا ہے۔ عدالتوں کی پریشانیوں سے جان بچانے کے لیے بہت اہم کام کیا جاتا ہے، عدالت کے باہر جھگڑوں سے آزادی، اس سمت میں اہم کام ثالثی کا قانون ہے، اس سمت میں بھی انہی معزز اراکین اسمبلی نے بڑا کردار ادا کیا ہے۔ وہ جو ہمیشہ حاشیے پر تھے، کنارے پر، جن کو کسی نے نہیں پوچھا۔ وہ سمجھ گئے ہیں کہ حکومت ہے۔ جی ہاں، حکومت اہم ہے، جب کووِڈ میں مفت انجیکشن لگوائے جاتے تھے تو یہ مانتی تھی کہ جان بچ گئی ہے۔ انہوں نے محسوس کیا کہ ایک حکومت ہے اور یہ ایک عام انسان کی زندگی میں بہت ضروری ہے۔ اب کیا ہوگا، وہ بے بسی کا احساس، یہ کیفیت پیدا نہیں ہونی چاہیے۔

مخنث برادری اپنی توہین محسوس کرتا تھا۔ اور جب اس کی بار بار توہین ہوتی تھی تو اس میں بھی کج روی کا امکان بڑھتا جاتا تھا… اور ہم ایسے مسائل سے دور بھاگتے تھے۔ 17ویں لوک سبھا کے تمام معزز اراکین پارلیمنٹ نے بھی مخنثوں کے تئیں حساسیت کا اظہار کیا اور ان کی بہتر زندگی کی خواہش کی۔ اور آج، بھارت کی طرف سے مخنثوں کے لیے کیے گئے کام اور کیے گئے فیصلوں کا دنیا میں چرچا ہو رہا ہے۔ دنیا کے لیے بڑا، جب ہم اپنی جگہ نہیں کہتے... حتیٰ کہ حمل کے دوران ہماری ماؤں بہنوں کے لیے 26 ہفتے کی ڈیلیوری رخصتی... دنیا کے امیر ممالک بھی حیران رہ جاتے ہیں، ٹھیک ہے! یعنی یہ ترقی پسند فیصلے یہاں اس 17ویں لوک سبھا میں لیے گئے ہیں۔ ہم نے مخنثوں کو شناخت دی ہے۔ اب تک تقریباً 16-17 ہزار مخنثوں کو ان کی زندگی بہتر بنانے کے لیے ان کے شناختی کارڈ دیے جا چکے ہیں، اور میں نے دیکھا ہے کہ اب انہوں نے مدرا یوجنا سے پیسے لے کر چھوٹا کاروبار کرنا شروع کر دیا ہے اور کمانا شروع کر دیا ہے۔ ہم نے باوقار زندگی گزارنے کے لیے خواجہ سراؤں کو پدم ایوارڈ دیا ہے۔ جب تک انہیں حکومت سے متعلق مختلف اسکیموں کے فائدے ملتا رہے گا ، ملنا شروع ہوا ہے، وہ عزت کی زندگی گزارنے لگے ہیں۔

محترم اسپیکر،

ہمارا وقت بہت مشکل دور میں گزرا کیونکہ ڈیڑھ سے دو سال تک کووِڈ نے ہم پر بہت بڑا دباؤ ڈالا تھا، لیکن اس کے باوجود 17ویں لوک سبھا ملک کے لیے بہت فائدہ مند رہی ہے اور اس نے بہت اچھا کام کیا ہے۔ . لیکن اس وقت ہم بہت سے دوست بھی کھو چکے ہیں۔ عین ممکن ہے کہ اگر وہ آج ہمارے درمیان ہوتے تو اس الوداعی تقریب میں موجود ہوتے۔ لیکن درمیان میں، کووِڈ کی وجہ سے، ہمیں بہت سے ذہین ساتھیوں سے محروم ہونا پڑا۔ اس کا درد ہمیشہ ہمارے ساتھ رہے گا۔

محترم اسپیکر،

اسے 17ویں لوک سبھا کا آخری اجلاس اور آخری گھنٹہ سمجھیں۔ جمہوریت اور ہندوستان کا سفر لامتناہی ہے۔ اور بھی بہت کچھ، یہ ملک ایک مقصد کے لیے موجود ہے، اس کا ایک مقصد ہے، یہ پوری نسل انسانی کے لیے ہے۔ اروند نے اسے اس طرح دیکھا ہوگا، یا سوامی وویکانند جی نے اسے دیکھا ہوگا۔ لیکن آج ہم اپنی آنکھوں کے سامنے وہ طاقت دیکھ سکتے ہیں جو ان الفاظ اور اس وژن میں تھی۔ جس طرح سے دنیا ہندوستان کی عظمت کو قبول کر رہی ہے، اس نے ہندوستان کی طاقت کو قبول کرنا شروع کر دیا ہے، اور ہمیں اس سفر کو مزید طاقت کے ساتھ آگے بڑھانا ہے۔

محترم اسپیکر،

الیکشن زیادہ دور نہیں۔ کچھ لوگوں کو  تھوڑی گھبراہٹ رہتی ہوگی، لیکن یہ جمہوریت کا ایک فطری، ضروری پہلو ہے۔ ہم سب اسے فخر کے ساتھ قبول کرتے ہیں۔ اور مجھے یقین ہے کہ ہمارے انتخابات بھی ایسے ہوں گے جو ملک کے فخر اور ہماری جمہوریت کی روایت میں اضافہ کریں گے اور پوری دنیا کو حیران کر دیں گے، یہ میرا پختہ یقین ہے۔

محترم اسپیکر،

میں محسوس کرتا ہوں کہ ہمیں تمام معزز اراکین اسمبلی کی جانب سے جو پذیرائی ملی ہے، جو فیصلے ہم کرنے میں کامیاب رہے ہیں، اور بعض اوقات حملے بھی اس قدر لطف اندوز ہوتے ہیں کہ ہمارے اندر کی طاقت بھی پھول جاتی ہے۔ اور مجھے خدا نے نوازا ہے کہ جب کوئی چیلنج آتا ہے تو میں کچھ زیادہ ہی خوشی محسوس کرتا ہوں۔ ہم ہر چیلنج کا مقابلہ کرنے میں کامیاب رہے ہیں، ہم بڑے اعتماد اور یقین کے ساتھ آگے بڑھے ہیں۔ رام مندر کے حوالے سے آج اس ایوان نے جو قرارداد پاس کی ہے اس سے ملک کی آنے والی نسلوں کو اس ملک کی اقدار پر فخر کرنے کی آئینی طاقت ملے گی۔ یہ سچ ہے کہ ایسی باتوں میں ہمت دکھانے کی طاقت ہر کسی میں نہیں ہوتی، کچھ لوگ میدان چھوڑ کر بھاگ جاتے ہیں۔ لیکن پھر بھی اگر ہم مستقبل کے ریکارڈ کو دیکھیں تو آج کے لیکچرز، جو نکات سامنے آئے ہیں، ان میں حساسیت ہے، قرارداد ہے، ہمدردی ہے اور سب کا ساتھ، سب کا وکاس کے منتر کو آگے بڑھانے کا عنصر بھی ہے۔ یہ ملک چاہے کتنے ہی برے دنوں سے گزرے، ہم آنے والی نسلوں کے لیے کچھ نہ کچھ اچھا کرتے رہیں گے۔ یہ ایوان ہمیں وہ تحریک دیتا رہے گا اور اجتماعی عزم اور اجتماعی طاقت کے ساتھ ہم ہندوستان کی نوجوان نسل کی امیدوں اور امنگوں کے مطابق بہترین نتائج حاصل کرتے رہیں گے۔

اسی یقین کے ساتھ ایک مرتبہ پھر سبھی کا ، سبھی معزز اراکین کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔

بہت بہت شکریہ!

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Unstoppable bull run! Sensex, Nifty hit fresh lifetime highs on strong global market cues

Media Coverage

Unstoppable bull run! Sensex, Nifty hit fresh lifetime highs on strong global market cues
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Unimaginable, unparalleled, unprecedented, says PM Modi as he holds a dynamic roadshow in Kolkata, West Bengal
May 28, 2024

Prime Minister Narendra Modi held a dynamic roadshow amid a record turnout by the people of Bengal who were showering immense love and affection on him.

"The fervour in Kolkata is unimaginable. The enthusiasm of Kolkata is unparalleled. And, the support for @BJP4Bengal across Kolkata and West Bengal is unprecedented," the PM shared in a post on social media platform 'X'.

The massive roadshow in Kolkata exemplifies West Bengal's admiration for PM Modi and the support for BJP implying 'Fir ek Baar Modi Sarkar.'

Ahead of the roadshow, PM Modi prayed at the Sri Sri Sarada Mayer Bari in Baghbazar. It is the place where Holy Mother Sarada Devi stayed for a few years.

He then proceeded to pay his respects at the statue of Netaji Subhas Chandra Bose.

Concluding the roadshow, the PM paid floral tribute at the statue of Swami Vivekananda at the Vivekananda Museum, Ramakrishna Mission. It is the ancestral house of Swami Vivekananda.