Share
 
Comments

Friends,

I am really happy to be here in the Hannover fair. It is an added pleasure to talk to you that too in the presence of Chancellor Merkel. Myself and Chancellor Merkel had a very good interaction over dinner last night. You also must have met a number of Indian companies and CEOs. I believe that the participation in Hannover fair would be very useful for both sides. I request you to visit the India pavillion and the stalls of our State Government and private companies.

Indo-German Business Summit in Hannover (3)

You will be able to see for yourself the winds of change in India. We are very keen to develop the sectors where you are strong. We need your involvement. The scope and potential, the breadth and length of infrastructure and related developments is very huge in India. Just to give you some examples:

• We have planned to build 50 million houses by 2022. In addition, we are going to develop smart cities and mega industrial corridors.

• For this purpose, we have refined our FDI Policy in construction. We have also come up with a regulatory framework for this sector.

• We have targeted 175 Giga Watt of renewable energy in next few years. In addition to generation, the issues of transmission and distribution of electricity are equally important for us;

• We are modernizing our Railway systems including signals, and railway stations. We are planning metro rail in fifty cities and high speed trains in various corridors.

• Similar is the case with Highways.

• We are putting up new ports and modernizing the old ones through an ambitious plan called Sagarmala;

• Similar focus is on upgrading the existing Airports and putting up regional airports to enhance connectivity to places of economic and tourist importance.

• In financial services too, we are moving towards a more inclusive and faster delivery of financial products including bank loans and insurance.

• For this purpose, we opened 140 million bank accounts; increased FDI in insurance upto 49% and have set up MUDRA Bank.

• We also announced innovative schemes for insurance and pension to enhance social security for our citizens.

We also want to promote manufacturing in a big way particularly to create jobs for our youth. For this purpose, we have launched a campaign called “Make in India”.

All this is a historic opportunity for the German companies. You would already be knowing the direction of my Government and the steps we are taking. We have committed ourselves for creating and improving the business environment. I can assure you that once you decide to be in India, we are confident to make you comfortable.

Germany ranks 8th among foreign investor countries in India. About 600 Indo-German Joint ventures are presently operating in India. The purpose of my being here and participating in the Hannover Fair is to highlight that there is more potential in Indo-German economic collaboration. Though we have a vibrant relationship, our economic partnership is not as much as both countries would like to have. The flow of investments from Germany is well below the potential and less than Indian investments in Germany.

Many more German companies have the possibility of investing in India to take advantage of India’s potentials. The potential lies in Manufacturing as well as infrastructure and in skill development for that purpose. I know that the reason for this situation may not be from German side. It is from the Indian side also.

I am here to assure the German companies that India is now a changed country. Our regulatory regime is much more transparent, responsive and stable. We are taking a long-term and futuristic view on the issues.

Lot of efforts have been made and are still underway to improve the ‘Ease of Doing Business’ in the country.

• Reducing the complicated procedures, making them available at one platform, preferably online, simplifying the forms and formats has been taken up on war footing.

• Definite mechanisms for hand holding have been set up in the form of hub and spoke. Invest India is the nodal agency for this purpose.

We do believe that FDI is important and it will not come in the country without a globally competitive business environment. Therefore, in this year's budget we have rationalized a number of issues which were bothering you. In particular,

• We have removed lot of regressive taxation regimes. In our very first Budget, we said we will not resort to retrospective taxation. And if such issues do arise, they will have to be reviewed at the highest level. We have taken bold steps of not dragging the litigation in a few cases where we felt that the steps of the previous government were not on right lines.

• In this budget, we allowed Tax pass through for AIFs, rationalization of capital gains of REITs, modification in PE norms and deferring the implementation of GAAR for two years. We are constantly working to improve the business environment further.

• We are trying to introduce an element of transparency and predictability in taxation system.

• We have fast tracked approvals in industry and infrastructure. This includes environmental clearances, extending the industrial licences, delicencing of defence items, and simplification of cross-border trade.

• Within a very short time, we introduced GST Bill in Parliament.

Such measures have helped in building up an enhanced investor confidence. The sentiments for private investment and inflow of foreign investments are positive. FDI inflows have gone up by 36% during April-2014 and January-2015 against the same period in previous year;

Our growth rate is about 7%-plus. Most of the international financial institutions including the World Bank, IMF, UNCTAD, OECD and others are predicting even faster growth and even better in the coming years. MOODY’s have recently upgraded the rating of India as “positive” on account of our concrete steps in various economic segments.

Indo-German Business Summit in Hannover (5)

It is the effort of my Government to encourage innovation, R&D and entrepreneurship in the country. In this year’s budget, we have set up some innovative institutional mechanisms for that purpose.

Similarly, for infrastructure development, we have taken some far reaching steps.

• First of all we have made an all-time high allocation for Roads and railways sectors.

• In addition, we are setting up India Infrastructure Investment Fund.

• We have also allowed Tax free Bonds in the Infrastructure sector including roads and railways.

I wish all success to the Hannover Messe. I also wish all participants good luck and progress. I also take this opportunity for inviting more and more German companies to India. I assure them all support from my side.

Friends! Indo-German partnership should and will flourish. I expect very good outcome from this coming together. Let us work together in mutual interest and for welfare of the people of the two great countries.

At the end, it is my advice to you to come and feel the change in India’s regulatory environment. Please do not go by old perceptions.

The symbol of lion for make in India has been chosen very carefully. We know that our biggest need today is to create jobs for our 65% population which is young. Hence, Make in India is the need. Hence, the lion because a lion cannot be stopped. We are confident that our journey to make India a global manufacturing hub cannot be stopped that too by our own rules and regulations. We must and we will make corrections wherever it is required.

Once again I invite you to India. I assure you of my personal attention in your success while you are in India.

Thank You very much.

Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
India to share Its CoWIN success story with 20 countries showing interest

Media Coverage

India to share Its CoWIN success story with 20 countries showing interest
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
یوگ کے بین الاقوامی دن پروزیراعظم کاخطاب
June 21, 2021
Share
 
Comments
ہر ملک،سماج اور فرد کے لیے دعا کی
ایم –یوگا ایپ کا اعلان کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ اس ایپ سے 'ون ورلڈ ون ہیلتھ' کے مقصد کو حاصل کرنے میں مدد ملے گی
یو گا نے لوگوں کو دنیا بھر میں وبا کے خلاف جنگ میں اعتماد اور مضبوطی عطا کی: وزیراعظم
کورنا کے صف اول کے کارکنان نے یوگا کو اپنی ڈھال بنایا اور اس کے ذریعہ مریضوں کی مدد بھی کی: وزیراعظم
یوگا منقسم ہونے کی بجائے متحد ہونے کا نام ہے۔تجربے کا تسلیم شدہ راستہ،یکجہتی کا ادراک یوگا ہے: وزیراعظم
'واسودیو کٹمبکم'کے منتر کو دنیا بھر میں مقبولیت حاصل ہو رہی ہے: وزیراعظم
آن لائن کلاسوں کے دوران یوگا سے بچوں میں کورونا کے خلاف جنگ کرنے کی مضبوطی آئی: وزیراعظم

نئی دہلی،21؍جون :

نمسکار!

آپ سبھی کو یوگا کے ساتویں بین الاقوامی دن پربہت بہت مبارکباد !

آج جب پوری دنیا کوورناوباء کا مقابلہ کررہی ہے تویوگا بھی امید کی ایک کرن بناہواہے ۔ گذشتہ دوسالوں سے دنیا بھرکے ملکوں میں اورہندوستان میں بھلے ہی کوئی بڑا عوامی پروگرام منعقد نہیں ہواہے لیکن  یوگا کے دن  کے تئیں لوگوں کے جوش میں ذرابھی کمی نہیں آئی ہے ۔ کوروناکے باوجود اس بار کے یوگا کے دن کا موضوع ‘‘صحت کے لئے یوگا’’ نے کروڑوں لوگوں نے یوگا کے تئیں جوش کو اوربھی بڑھادیاہے ۔ میں آج یوم  یوگا پر یہ خواہش کرتاہو ں کہ ہرملک ، ہرسماج اورہرشخص صحت مند رہے ، سب  مل جل  کرایک دوسرے کی طاقت بنیں ۔

ساتھیوں،

ہمارے سادھوسنتوں نے یوگاکے لئے ‘‘سمتوم یوگ اچیتے ’’ یہ تعریف دی تھی۔انھوں نے خوشی اورغم میں ایک جیسا رہنے  اور صبرکو ایک طرح سے یوگا کا پیمانہ بنایاتھا۔ آج اس عالمی وبامیں یوگانے  اسے ثابت کردکھایاہے ۔ کوروناکے اس  ڈیڑھ سال کے عرصے میں بھارت سمیت کتنے ہی ملکوں نے بڑی مشکلات کا سامناکیاہے ۔

ساتھیوں،

دنیا کے زیادہ ترملکوں کے لئے یوگا کا دن ان کاکوئی ثقافتی تیوہارنہیں ہے ۔ مشکل کے اس دورمیں لوگ باآسانی اسے بھول سکتے تھے ، اس سے گریز کرسکتے تھے ، لیکن اس کے برعکس لوگوں میں یوگا کا جوش اور بڑھاہے ۔ یوگ سے محبت بڑھی ہے ۔ پچھلے ڈیڑھ سالوں میں دنیا کے کونے کونے میں  لاکھوں یوگاکرنے والوں کی تعداد بڑھ گئی ہے ۔ یوگ کی  پہلی علامت صبراور نظم وضبط کوبتایاگیاہے ، اورسبھی اپنی زندگی میں اس پرعمل کرنے کی کوشش کررہے ہیں ۔

ساتھیوں ،

 کورونا کے نظرنہ آنے والے وائرس نے جب دنیا میں دستک دی تھی ، تب کوئی بھی ملک وسائل  ، صلاحیت اور ذہنی طورسے اس کے لئے تیارنہیں تھا۔ ہم سبھی نے دیکھا ہے کہ اتنے مشکل دورمیں یوگا خود اعتمادی کا ایک بڑا وسیلہ بنا۔یوگا نے لوگوں میں اس اعتماد کو بڑھایاکہ ہم اس بیماری سے نبردآزماہوسکتے ہیں ۔

میں جب پیش پیش رہنے والوں اور ڈاکٹروں سے بات کرتاہوں ، تووہ مجھے بتاتے ہیں کہ کوروناکے خلاف لڑائی میں انھوں نے یوگا کو بھی اپنی حفاظتی ڈھال بنایا۔ ڈاکٹروں نے یوگا سے خود کو بھی مضبوط کیا اوراپنے مریضوں کو جلد از جلد صحت یاب کرنے میں بھی اس کا استعمال کیا۔ آج اسپتالوں سے ایسی بہت سی تصویریں دیکھنے کو ملتی ہیں ، کہ کہیں ڈاکٹرس ، نرسیز ، مریضوں کو یوگا سکھارہے ہیں توکہیں مریض اپنا تجربہ بیان کررہے ہیں ۔ پرانایام ، انولوم –ویلوم ، جیسی سانس لینے کی ورزشوں سے ہمارے نظام تنفس کو کتنی قوت ملتی ہے ، یہ بھی دنیا کے ماہرین خود بتارہے ہیں ۔

ساتھوں!

عظیم تمل سنت جناب تھروولّاورنے کہا-

‘نوئی ناڑی ، نوئ مودل ناڑی ، ہدوتنیکم ، وائے ناڑی ، وائے پچییل ، یعنی اگرکوئی بیماری ہے تواس کی تشخیص کرو ، اس کی جڑتک جاو، بیماری کی وجہ کیاہے یہ پتہ لگاو ، اورپھراس کا علاج کا تعین کرو۔ یوگ صحیح راستہ دکھاتا ہے آج طبی سائنس بھی علاج کے ساتھ ساتھ ہیلنگ پربھی اتنا ہی زوردیتاہے اور یوگ ٹھیک ہونے کے عمل میں معاون ہے ۔ مجھے اس پراطمینان ہے کہ آج یوگا کے اس پہلو پردنیا بھرکے ماہرین کئی طریقے کی سائنسی تحقیق کررہے ہیں ، اوراس پرکام کررہے ہیں ۔

کوروناکے اس دور میں یوگا سے ہمارے جسم پر ہونے والے فائدوں پر ، ہماری قوت مدافعت پر پڑنے والے مثبت اثرات پرکئی مطالعات ہورہے ہیں ۔ آج کل ہم دیکھتے ہیں کہ کئی اسکولوں میں آن لائن کلاسیز کی شروعات میں15-10منٹ بچوں کو یوگ ، پرانایام کرایاجارہاہے ۔اس طرح  کوروناسے مقابلہ کرنے کے لئے بچوں کوبھی جسمانی طریقے سے تیارکیاجارہاہے ۔

ساتھیوں !

بھارت کے سادھو سنتوں نے ہمیں درس دیاہے :

ویایامتے  لبھتے  سواستھیم ،

دیردھ آیشویم بلم سکھم ،

آروگیہ  پرمم بھاگییم ،

سواستھییم  سروارتھ  سادھنم !!

یعنی ، یوگا ورزش سے ہمیں اچھی صحت ملتی ہے ، قدرت حاصل ہوتی ہے ،اورطویل خوشحال زندگی ملتی ہے ۔ لہذا ہمارے لئے صحت مندرہنا ہی سب سے بڑی خوش نصیبی ہے اوراچھی صحت ہی سبھی کامیابیوں کی ضامن ہے ۔ بھارت کے رشیوں اورمنیوں نے ، بھارت میں جب بھی صحت سے متعلق بات کی ہے تواس کا مطلب محض جسمانی صحت نہیں رہاہے بلکہ یوگامیں جسمانی صحت کے  ساتھ ساتھ ذہنی صحت پربھی اتنا ہی زوردیاگیاہے ۔ جب ہم پرانایام کرتے ہیں ، غورکرتے ہیں ، اوریوگا کی دیگرورزشیں کرتے ہیں ، توہم اپناذاتی محاسبہ کرتے ہیں ۔ یوگ سے ہمیں یہ تجربہ حاصل ہوتاہے کہ ہمارے سوچنے سمجھنے کی طاقت ،ہمارے خود سے کرنے کی اہلیت اتنی زیادہ ہے کہ دنیا کی کوئی بھی  پریشانی ،کوئی بھی منفی سوچ ہماراحوصلہ کم نہیں کرسکتی ۔ یوگا ہمیں تناؤ سے مضبوطی کی طرف اورمنفی طریقہ کارسے  تخلیقی سمت کی جانب رہنمائی کرتاہے ۔یوگا ہمیں تناو سے امنگ کی طرف اورناامیدی سے امید کی طرف لے جاتاہے ۔

ساتھیوں !

یوگاہمیں بتاتاہے کہ بہت مشکلیں آسکتی ہیں لیکن ہمیں اپنے اندرہی اس کا حل تلاش کرناہے ۔ ہماری کائنات میں ہم طاقت کا ایک بڑا وسیلہ ہیں ۔  لیکن ہم  نے سماج میں قائم کئی بٹواروں کے سبب  اس طاقت کوکبھی بھی محسوس نہیں کیاہے ۔موجودہ دورمیں ، لوگ الگ تھلگ رہ رہے ہیں اوریہ بٹوارے ان کی  مجموعی شخصیت میں بھی دکھائی دیتے ہیں ۔  منقسم رہنے سے متحدہوکررہنے کی طرف بڑھناہی  یوگا ہے ۔یہ بات ثابت ہوچکی ہے کہ یوگا اتحاد اوریکجہتی کی پہچان ہے ۔ مجھے عظیم الامرتبت گورودیورویندرناتھ ٹیگور کے وہ الفاظ یاد آتے ہیں ، جنھوں نے کہاتھا اورمیں اسے کوڈ کرتاہوں ، ‘‘ازخود کا مطلب خدایا دیگرافراد  سے الگ  نہیں بلکہ یوگ پرہمہ گیرامن یعنی متحدہ ہونے مضمرہے ۔

وسودیوکٹمبکم کا منترجو بھارت صدیوں سے اپناتاآیاہے کواب عالمی سطح پرتسلیم کرلیاگیاہے ، ہم سب ایک دوسرے کی تندرستی اورصحت کے لئے دعاکررہے ہیں بشرطیکہ کہ انسانیت کو خطرات درپیش ہوں۔

یوگ مجموعی صحت کا ہمیں ایک راستہ بتاتاہے یوگ ہمیں ایک خوش حال زندگی کا راستہ دیتاہے مجھے یقین ہے کہ یوگ اپنا احتیاط کے ساتھ ساتھ لوگوں کی حفظان صحت میں مثبت رول اداکرتارہے گا۔

ساتھیوں ،

جب ہندوستان میں ، اقوام متحدہ میں بین الاقوامی یوگ دن کی تجویز رکھی تھی تو اس کے پیچھے یہ جذبہ کارفرماتھاکہ یہ یوگ ویژن پوری دنیا کے لئے سودمند ہو۔ آج اس سمت میں بھارت  نے اقوام متحدہ ڈبلیو ایچ اوکے ساتھ مل کر ایک اوراہم قدم اٹھایاہے ۔

اب دنیا کو ، ایم یوگا ایپ کی طاقت ملنے جارہی ہے ، اس ایپ میں کامن یوگ پروٹوکول کی بنیاد پریوگ تربیت کے کئی ویڈیوز دنیا کی الگ الگ زبانوں میں دستیاب ہوں گے ۔ یہ جدیدٹکنالوجی اورقدیم ویژن کے فیوزن کی بھی ایک بہترین مثال ہے ۔ مجھے یقین ہے ایم یوگا ایپ ، یوگا کی وسعت دنیا بھرمیں کرنے اور ایک دنیا ، ایک صحت کی کوششوں کو کامیاب بنانے میں بڑا رول نبھائے گا ۔

ساتھیوں ،

گیتامیں کہاگیاہے ،

تن ودیادکھ سنیوگ ،

ویوگم یوگ سنگیتم ،

مطلب دکھوں سے نجات کو مکتی کوہی یوگ کہتے ہیں ، سب کو ساتھ لے کرچلنے والی انسانیت کا یہ یوگ سفرہمیں ایسے ہی آگے بڑھاناہے چاہے کوئی بھی جگہ ہو ، کیسے بھی حالات ، کوئی بھی عمرہو۔

ہرایک کے لئے یوگ کے پاس کوئی نہ کوئی حل ضروری ہے ، آج دنیا میں یوگ کے تئیں تجسس رکھنے والوں کی تعداد بہت بڑھتی جارہی ہے ۔ ملک وبیرون ملک میں یوگ کے اداروں کی تعداد میں بھی اضافہ ہورہاہے ، ایسے میں یوگ کا جو بنیادی علم ہے بنیادی اصول ہے اس کو قائم رکھتے ہوئے یوگ ہرشخص تک پہنچے ، فوراًپہنچے اورلگاتارپہنچے یہ کام ضروری ہے ، اوریہ کام یوگ سے جڑے لوگوں کو ، یوگ کے اچاریوں کو ، یوگ پرچارکوں کو ساتھ مل کرنا چاہیئے ۔ ہمیں خود بھی یوگ کا عہد کرنا چاہیے اوراپنے کو بھی اس عہد سے جوڑنا ہے ۔ یوگ سے تعاون تک کا یہ منترہمیں نئے مستقبل کا راستہ دکھائے گا، انسانیت کو بااختیاربنائے گا۔

ان ہی شبھ کامناؤں کے ساتھ یوگ کے بین الاقوامی دن پرپوری انسانیت کو آپ سبھی کو بہت بہت نیک خواہشات ، بہت بہت شکریہ ۔