Share
 
Comments
وزیر اعظم نے ایس ایچ جیز کو 1000 کروڑ روپئے منتقل کئے ، جس سے تقریباً 16 لاکھ خواتین ارکان کو فائدہ پہنچے گا
وزیر اعظم نے کاروباری نمائندہ – سَکھی کے لئے پہلے مہینے کا معاوضہ منتقل کیا اور مکھیہ منتری کنیا سُمنگلا اسکیم کا 1 لاکھ سے زیادہ فائدہ حاصل کرنے والوں کو رقم منتقل کی
وزیر اعظم نے اضافی تغذیہ بخش غذا تیار کرنے والے 200 سے زیادہ یونٹوں کا سنگِ بنیاد رکھا
’’ مکھیہ منتری کنیا سُمنگلا یوجنا جیسی اسکیمیں دیہی غریبوں اور لڑکیوں کے لئے اعتماد کا ایک بڑا ذریعہ بن رہی ہیں ‘‘
’’ یو پی کی ڈبل انجن والی حکومت کے ذریعے خواتین کو سکیورٹی ، وقار اور احترام کو یقینی بنایا جانا غیر معمولی ہے ۔ اتر پردیش کی خواتین نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ پہلے جیسی حالت واپس آنے کی اجازت نہیں دیں گی ‘‘
’’ میں بہنوں کے خواتین خود امدادی گروپوں کو آتم نربھر بھارت مہم کا چیمپئن سمجھتا ہوں ۔ یہ خود امدادی گروپ حقیقت میں قومی امدادی گروپ ہیں ‘‘
’’ بیٹیاں بھی چاہتی ہیں کہ انہیں بھی اپنی تعلیم جاری رکھنے کا وقت ملے اور برابر کے مواقع حاصل کریں ۔ اس لئے کوشش کی جا رہی ہے کہ بیٹیوں کی شادی کی قانونی عمر 21 سال کی جائے ۔ ملک ، بیٹیوں کی خاطر یہ فیصلہ کر رہا ہے ‘‘
’’ مافیا راج اور لا قانونیت کے خاتمے کا سب سے زیادہ فائدہ یو پی کی بہنوں اور بیٹیوں کو مل رہا ہے ‘‘

بھارت ماتا کی جے،

بھارت ماتا کی جے،

یوپی کے توانائی سے بھرپور اور کرم یوگی وزیر اعلی، جناب یوگی آدتیہ ناتھ جی ؛ نائب وزیر اعلی کیشو پرساد موریہ جی؛ مرکزی کابینہ میں میری ساتھی سادھوی نرنجن جیوتی جی؛ محترمہ انوپریا پٹیل جی؛ حکومت اترپردیش کے وزرا، ڈاکٹر مہندر سنگھ جی، راجندر پرتاپ سنگھ موتی جی، جناب سدھارتھ ناتھ سنگھ جی، نند گوپال گپتا نندی جی، محترمہ سواتی سنگھ جی، محترمہ گلابو دیوی جی، محترمہ محترمہ نیلما کٹیار جی؛ پارلیمنٹ میں میری ساتھی بہن ریتا بہوگنا جی، محترمی ہیما مالنی جی، محترمہ کیشری دیوی پٹیل جی، ڈاکٹر سنگھ مترا موریہ جی، محترمہ گیتا شاکیہ جی، محترمی کانتا کردم جی، محترمہ سیما دویویدی جی، ڈاکٹر رمیش چند بند جی؛ پریاگ راج کی میئر محترمہ ابھیلاشا گپتا جی؛ ضلعی پنچایت کے صدر ڈاکٹر وی کے سنگھ جی؛ تمام ایم ایل اے صاحبان؛ دیگر عوامی نمائندگان، اور یہاں موجود یوپی کی صلاحیت کو بڑھانے والی، یہاں کی صلاحیت کی علامت ، میری ماؤں، بہنو! آپ سب کو میرا پرنام۔ ماں گنگا جمنا سرسوتی کے مقدس کنارے پر آباد ، پریاگ راج کی سرزمین کو ہم سر جھکاکر پرنام کرتے ہیں۔ یہی وہ دھارا ہے، جہاں دھر م، علم اور انصاف کی تریوینی بہتی ہے۔ پریاگ راج میں آکر ہمیشہ ایک الگ ہی پاکیزگی اور توانائی کا احساس ہوتا ہے۔ پچھلے سال فروری میں جب ہم کمبھ میں اس مقدس سرزمین پر آئے تھے تو ہم نے سنگم میں ڈبکی لگاکر ایک روحانی مسرت کا تجربہ کیا تھا۔ میں تیرتھ راج پریاگ کی ایسی مقدس سرزمین کو ہاتھ جوڑ کر پرنام کرتا ہوں۔ آج ہی ہندی ادب کی دنیا کے وسیع پیمانے پر معروف آچاریہ مہاویر پرساد دویدی جی کی برسی بھی ہے۔ پریاگ راج کے ادب کی جو سرسوتی بہی، دویدی جی طویل عرصے تک اس کے ایڈیٹر بھی رہے۔ میں انھیں خراج تحسین پیش کرتا ہوں۔

ماؤں اور بہنو،

پریاگ راج ہزاروں برسوں سے ہماری مادری قوت کی علامت ماں گنگا جمنا سرسوتی کے سنگم کی سرزمین رہا ہے۔ آج اس تیرتھ نگری میں ناری شکتی کا اتنا شاندار سنگم بھی دیکھنے میں آیا ہے۔ یہ ہم سب کی خوش قسمتی ہے کہ آپ سب ہمیں اپنا آشیرباد اور اپنی محبت دینے آئی ہیں۔ ماؤں اور بہنو، اسٹیج پر یہاں آنے سے پہلے میں نے بینک سکھیوں سے، سیلف ہیلپ گروپس سے تعلق رکھنے والی بہنوں اور کنیا سمنگلا اسکیم کی مستفید بیٹیوں سے بات کی تھی۔ ایسے ایسے جذبات، ایسی ایسی خود اعتمادی بھری باتیں! ماؤں اور بہنو، ہمارے یہاں ایک کہاوت ہے: "پرتکشیے کم پرمانم"۔

یعنی جو ظاہر ہے، جو آپ کے سامنے ہے اسے ثابت کرنے کے لیے کسی ثبوت کی ضرورت نہیں ہے۔ پورا ملک یوپی میں ترقی، خواتین کو بااختیار بنانے کے لیے کیے گئے کاموں پر نظر رکھے ہوئے ہے۔ اب یہاں مجھے وزیر اعلیٰ کی کنیا سمنگلا یوجنا کی ایک لاکھ سے زائد مستفید بیٹیوں کے کھاتوں میں کروڑوں روپے منتقل کرنے کا اعزاز حاصل ہوا۔ یہ اسکیم گاؤں اور غریبوں، بیٹیوں کے لیے اعتماد کا ایک بہت بڑا ذریعہ بنتی جارہی ہے۔ یوپی نے بینک سکھی کی بھی جو مہم شروع کی ہے وہ خواتین کے روزگار کے مواقع کے ساتھ ساتھ ان کی زندگی میں بھی بڑی تبدیلی لا رہی ہے۔ حکومت کی طرف سے مختلف اسکیموں کا پیسہ جو ڈائریکٹ بینیفٹ ٹرانسفر (ڈی بی ٹی) کے ذریعے براہ راست اکاؤنٹ میں آتا ہے اس کے لیے  اب بینک میں جانے ضرورت نہیں ہے۔ بینک سکھی کی مدد سے یہ رقم گاؤں میں، گھر میں ہی مل جایا کرتی ہے۔ یعنی بینک سکھی بینک کو گاؤں تک لے کر آگئی ہیں۔ اور میں ان لوگوں کو بھی بتانا چاہتا ہوں جو یہ سوچ رہے ہیں کہ یہ ایک چھوٹا سا کام ہے، بینک سکھیوں کا کام کتنا بڑا ہے۔ یوپی حکومت نے ان بینک سکھیوں کو تقریباً 75,000 کروڑ روپے کی رقم کے لین دین کی ذمہ داری سونپی ہے۔ اس گاؤں میں رہنے والی میری بیٹیاں 75,000 کروڑ روپے کا کاروبار کر رہی ہیں۔ گاؤں میں جتنا زیادہ لین دین ہوگا، وہ اتنا ہی زیادہ کمائیں گی۔ ان میں سے زیادہ تر بینک سکھیاں وہ بہنیں ہیں جن کے کچھ سال پہلے تک اپنے بینک کھاتے بھی نہیں تھے۔ لیکن آج ان خواتین کے پاس بینکنگ، ڈیجیٹل بینکنگ کی طاقت ہے۔ چناں چہ ملک دیکھ رہا ہے کہ یوپی میں کس طرح کام ہو رہا ہے۔ اور تبھی تو میں کہتا ہوں، "پرتیکشیے کم پرمانم"۔

ماؤں بہنو،

یوپی نے ٹیک ہوم راشن، زچہ و بچہ کو دی جانے والی غذائیت کی تیاری کی ذمہ داری بھی خواتین کو سونپی ہے۔ یہ غذائیت سے بھرپور راشن اور غذا اب خود خواتین سیلف ہیلپ گروپ میں مل کر بنائیں گی۔ یہ بھی ایک بڑا کام ہے، سالانہ ہزاروں کروڑ روپے کا کام ہے۔ آج جو متوازن غذاؤں کے 202 پیداواری یونٹس کا سنگ بنیاد رکھا گیا ہے ان سے سیلف ہیلپ گروپوں کی خواتین کو بھی آمدنی ہوگی اور گاؤں کے کسانوں کو بھی بہت فائدہ ہوگا۔ گاؤں کی خواتین فیکٹری میں خوراک بنانے کے لیے گاؤں سے ہی فصلیں اور اناج خریدنے جارہی ہیں۔ یہ بااختیار بنانے کی کوششیں ہیں جنہوں نے یوپی میں خواتین کی زندگیوں کو بدلنا شروع کردیا ہے۔ آج مجھے یہ اعزاز حاصل ہوا ہے کہ حکومت مختلف شعبوں میں ایس ایچ جیز کو جو تعاون دے رہی ہے اس کی ایک قسط کے طور پر ایک ہزار کروڑ روپے منتقل کیے جائیں۔ یوپی کی ترقی کا دھارا اب کسی کے رکنے سے رکنے والا نہیں ہے۔ یہ اترپردیش کی خواتین، ماؤں اور بہنو اور بیٹیوں کا عزم ہے - اب وہ پچھلی حکومتوں کو واپس نہیں آنے دیں گی۔ ڈبل انجن حکومت نے یوپی کی خواتین کو جو سیکورٹی دی ہے، انھوں نے جو احترام دیا ہے، ان کا وقار بے مثال ہے۔

بھائیو اور بہنو،

ماؤں اور بہنوں اور بیٹیوں کی زندگی ایسی زندگی ہے جو نسلوں کو متاثر کرتی ہے، نسلیں پیدا کرتی ہے۔ بیٹی کی طاقت، اس کی تعلیم، اس کی مہارت، نہ صرف خاندان بلکہ معاشرے، قوم کی سمت کا بھی تعین کرتی ہے۔ چناں چہ 2014 میں جب ہم نے ماں بھارتی کے بڑے خوابوں اور بڑی امنگوں کو پورا کرنے کی پہل کی تو ہم نے سب سے پہلے ملک کی بیٹی کے اعتماد کو ایک نئی توانائی دینے کی کوشش شروع کی۔ چناں چہ ہم نے بیٹی کی پیدائش ہی سے زندگی میں ہر مرحلے پر خواتین کو بااختیار بنانے کے منصوبے، مہمات بنائیں۔

ساتھیو،

ہم نے بیٹی بچاؤ بیٹی پڑھاؤ مہم کے ذریعے معاشرے کے شعور کو بیدار کرنے کی کوشش کی تاکہ بیٹیوں کو کوکھ میں قتل نہ کیا جائے، وہ پیدا ہوں۔ آج نتیجہ یہ نکلا ہے کہ ملک کی بہت سی ریاستوں میں بیٹیوں کی تعداد میں بہت اضافہ ہوا ہے۔ خواتین کی چھٹی میں 6 ماہ کی توسیع کردی گئی ہے تاکہ ماں ، زچگی کے بعد بھی، بغیر کسی پریشانی کے اپنے بچے کی ابتدائی دیکھ بھال کرکے اپنا کام جاری رکھ سکے۔

ساتھیو،

حمل کے دوران غریب خاندانوں میں زچہ کی صحت تشویش کا ایک بڑا سبب رہی ہے۔ لہذا ہم نے حاملہ خواتین کو ٹیکہ لگانے، اسپتالوں میں ڈلیوری اور حمل کے دوران غذائیت پر خصوصی توجہ دی۔ پردھان منتری ماتر  وندنا یوجنا کے تحت حمل کے دوران خواتین کے بینک کھاتوں میں پانچ ہزار روپے جمع کرائے جاتے ہیں تاکہ وہ اپنی مناسب خوراک کا خیال رکھ سکیں۔ اب تک 2 کروڑ سے زائد بہنوں کو تقریباً 10 ہزار کروڑ روپے دیے جا چکے ہیں۔

ساتھیو،

ہم نے اس بات پر بھی مسلسل کام کیا ہے کہ بیٹیاں کس طرح صحیح طریقے سے تعلیم حاصل کریں، انھیں اسکول چھوڑنا نہ پڑے۔ چاہے وہ اسکولوں میں بیٹیوں کے لیے علیحدہ بیت الخلاء تعمیر کرنا ہو، یا غریب ترین لوگوں کو سنیٹری پیڈ فراہم کرنا ہو، ہماری حکومت کسی بھی کام میں پیچھے نہیں رہی ہے۔ سوکنیا سمردھی یوجنا کے تحت تقریباً ڈھائی کروڑ لڑکیوں کے کھاتے کھولے گئے ہیں۔ اس رقم پر شرح سود بھی زیادہ رکھی گئی ہے تاکہ یہ پیسہ بڑے ہونے کے بعد ان کے خوابوں کو پورا کرسکے۔ اسکول اور کالج کے بعد کیریئر سے لے کر گھر تک ہر قدم پر خواتین کی سہولت اور صحت کا خیال رکھا جا رہا ہے۔ سوچھ بھارت مشن کے تحت کروڑوں بیت الخلاء کی تعمیر، اجوولا اسکیم کے تحت غریب ترین لوگوں کو گیس کنکشن فراہم کرنے، گھر میں نل کا پانی فراہم کرنے، بہنوں کی زندگیاں بھی آسان ہوئیں ہیں اور ان کے وقار میں بھی اضافہ ہوا ہے۔

ساتھیو،

آیوشمان بھارت اسکیم کے تحت بھی اگر کسی کو سب سے زیادہ فائدہ ہوا ہے تو وہ ہماری بہنیں ہیں۔ اسپتالوں میں ڈلیوری ہو یا دوسرا علاج، اس سے پہلے پیسوں کی کمی کی وجہ سے بہنوں کی زندگیوں میں بحران پیدا ہو جاتا تھا۔ اب پانچ لاکھ روپے تک کے مفت علاج کے ساتھ ان کی تشویش دور کردی گئی ہے۔ بھارتی معاشرے میں ماؤں اور بہنوں کو ہمیشہ سب سے بڑا درجہ دیا گیا ہے۔ لیکن آج میں آپ کی، پورے ملک کی توجہ ایک سچائی کی طرف مبذول کرانا چاہتا ہوں، صدیوں سے ہمارے پاس ایک ایسا نظام تھا کہ گھر اور گھر کی ہر جائیداد کو صرف مردوں کا حق سمجھا جاتا تھا۔ گھر کس کا نام ہے؟ مردوں کے نام۔ کھیت کس کے نام ہے؟ مردوں کے نام۔ ملازمت، دکان کا حق کس کا ہے؟ مردوں کا۔  آج ہماری حکومت کی اسکیمیں اس تفاوت کو دور کر رہی ہیں۔ پردھان منتری آواس یوجنا اس کی سب سے بڑی مثال ہے۔ پردھان منتری آواس یوجنا کے تحت فراہم کیے جانے والے مکانات ترجیحی بنیادوں پر خواتین کے نام سے تعمیر کیے جارہے ہیں۔ اگر میں یوپی کی بات کروں تو یوپی میں پی ایم آواس یوجنا کے تحت 30 لاکھ سے زیادہ مکانات تعمیر کیے گئے ہیں۔ ان میں سے تقریباً 25 لاکھ گھر خواتین کے نام ہیں۔ آپ اندازہ لگا سکتے ہیں یوپی میں پہلی بار 25 لاکھ خواتین کے نام سامنے آئے ہیں۔ وہ مکانات جن میں نسل در نسل عورت کے نام پر کوئی جائیداد نہیں رہی، آج وہ پورے گھر کسی عورت کے نام ہیں۔ یہی تو ہوتا خواتین کو بااختیار بنانا، حقیقی شکل می۹ں بااختیار بنانا ہے، یہی تو ہوتی ہے ترقی۔

ماؤں اور بہنو،

میں آج آپ کو ایک اور منصوبے کے بارے میں بتانا چاہتا ہوں۔ یہ اسکیم مرکزی حکومت کی ملکیت اسکیم ہے۔ ملکیت اسکیم کے تحت ملک بھر کے دیہات میں ڈرون سے تصاویر لے کر مکانات، زمین کے مالکان کو جائیداد کے کاغذات دیے جارہے ہیں۔ گھر کی خواتین کو اس ملکیت کے دینے میں ترجیح دی جارہی ہے۔ اگلے چند برسوں میں یوگی جی کی حکومت اترپردیش کے دیہات میں ہر گھر کی نقشہ بندی اور اس طرح کی ملکیت دینے کا کام مکمل کرے گی۔ پھر جو مکانات تعمیر کیے گئے ہیں ان کے کاغذات میں گھر کی خواتین کا نام بھی ہوگا، گھر کی ماؤں کے نام بھی ہوں گے۔

ساتھیو،

روزگار کے لیے خاندانی آمدنی بڑھانے کے لیے ملک کے ذریعے چلائی جانے والی اسکیموں میں خواتین کو بھی مساوی طور پر شریک بنایا جارہا ہے۔ مدرا یوجنا آج دیہاتوں اور دیہاتوں میں غریب خاندانوں کی نئی خواتین کاروباری افراد کی حوصلہ افزائی کر رہی ہے۔ اس اسکیم کے تحت حاصل ہونے والے کل قرضوں میں سے تقریباً 70 فیصد قرضے خواتین کو دیے گئے ہیں۔ دین دیال انتودیا یوجنا کے ذریعے ملک بھر میں خواتین کو سیلف ہیلپ گروپوں اور دیہی تنظیموں سے بھی جوڑا جارہا ہے۔ میں مہیلا شویتا گروپ کی بہنوں کو خود کفیل بھارت مہم کا چیمپئن سمجھتا ہوں۔ یہ سیلف ہیلپ گروپ درحقیقت نیشنل ہیلپ گروپ ہیں۔ اس لیے 2014 سے پہلے کے 5 برسوں میں قومی روزی روٹی مشن کے تحت فراہم کی جانے والی مدد میں گذشتہ 7 برسوں میں تقریباً 13 گنا اضافہ ہوا ہے۔ اب یہ حد بھی دوگنی کر کے 20 لاکھ کر دی گئی ہے۔

ماؤں اور بہنو،

شہر ہو یا گاؤں، ہماری حکومت چھوٹی بڑی ہر مشکل کو نظر میں رکھتے ہوئے خواتین کے لیے فیصلے لے رہی ہے۔ ہماری ہی حکومت نے مفت راشن فراہم کرنے کا انتظام کیا تاکہ کورونا کے اس دور میں آپ کے گھر کا چولہا جلتا رہے۔ ہماری ہی حکومت نے قوانین کو آسان بنانے کا کام کیا ہے تاکہ خواتین رات کی شفٹوں میں بھی کام کر سکیں۔ ہماری ہی حکومت نے کانوں میں کام کرنے والی خواتین کے لیے بعض بندشیں ہٹا ئی ہیں۔ ہماری ہی حکومت نے لڑکیوں کے لیے ملک بھر میں فوجی اسکولوں کے دروازے کھولنے کا کام کیا ہے۔ ہماری ہی حکومت نے عصمت دری جیسے گھناؤنے جرائم کے معاملات کو تیز رفتاری سے ٹریک کرنے کے لیے ملک بھر میں تقریباً 700  فاسٹ ٹریک عدالتیں قائم کی ہیں۔ ہماری ہی حکومت نے مسلم بہنوں کو مظالم سے بچانے کے لیے طلاق ثلاثہ کے خلاف قانون بنایا ہے۔

ساتھیو،

کسی امتیاز کے بغیر، کسی تعصب کے بغیر ، ڈبل انجن حکومت بیٹیوں کے مستقبل کو بااختیار بنانے کے لیے مسلسل کام کر رہی ہے۔ ابھی کچھ دن پہلے ہی مرکزی حکومت نے ایک اور فیصلہ لیا ہے۔ اس سے پہلے بیٹوں کی شادی کی عمر 21 سال تھی لیکن بیٹیوں کے لیے یہ عمر صرف 18 سال تھی۔ بیٹیاں یہ بھی چاہتی تھیں کہ انھیں اپنی تعلیم لکھنے، آگے بڑھنے، مساوی مواقع حاصل کرنے کا وقت ملے۔ اس لیے بیٹیوں کی شادی کی عمر 21 سال تک کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ ملک بیٹیوں کے لیے یہ فیصلہ لے رہا ہے، لیکن کس کو اس سے تکلیف  ہے، دیکھ رہے ہیں۔

 بھائیو بہنو!

5 سال پہلے یوپی کی سڑکوں پر مافیا راج تھا! یوپی حکومت میں غنڈوں کا بول بالا تھا! اس کا سب سے زیادہ فائدہ کس کو ہوا؟ میری یوپی کی بہنیں اور بیٹیاں تھیں۔ ان کے لیے سڑک پر نکلنا مشکل ہو جاتا تھا۔ اسکول کالج جانا مشکل تھا۔ آپ کچھ بول نہیں سکتی تھیں کیونکہ تھانے گئیں تو مجرم، ریپسٹ کی سفارش میں کسی کا فون آتا تھا۔ یوگی جی نے ان غنڈوں کو ان کے صحیح مقام پر پہنچا دیا ہے۔ آج یوپی میں سیکورٹی ہے، یوپی میں حقوق بھی ہیں۔ آج یوپی میں امکانات ہیں، آج یوپی میں کاروبار بھی ہے۔ مجھے پورا بھروسا ہے کہ جب ہمیں اپنی ماؤں بہنوں کا آشیرباد حاصل ہو گا تو کوئی بھی اس نئے یوپی کو دوبارہ اندھیرے میں نہیں دھکیل سکتا۔ بھائیو اور بہنو، آئیے،  پریاگ راج کی مقدس سرزمین سے یہ عہد لیں، ہمارا یوپی آگے بڑھے گا، ہمارا یوپی نئی بلندیوں کو چھوئے گا۔ آپ سب ماؤں اور بہنوں کو آپ کے آشیرباد کے لیے، آپ کے تعاون اور یوپی کی ترقی میں آپ کی شرکت کے لیے، میں ایک بار پھر احترام کے ساتھ آپ کو نمن کرتا ہوں، دل سے آپ کا بہت بہت شکریہ۔ میرے ساتھ بولیے بھارت ماتا کی جے، بھارت ماتا کی جے، بھارت ماتا کی جے، بہت بہت شکریہ!

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
Phone exports more than double YoY in April-October

Media Coverage

Phone exports more than double YoY in April-October
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM applauds those who are displaying their products on GeM platform
November 29, 2022
Share
 
Comments
GeM platform crosses Rs. 1 Lakh crore Gross Merchandise value

The Prime Minister, Shri Narendra Modi has applauded the vendors for displaying their products on GeM platform.

The GeM platform crosses Rs. 1 Lakh crore Gross Merchandise value till 29th November 2022 for the financial year 2022-2023.

In a reply to a tweet by Union Minister, Shri Piyush Goyal, the Prime Minister tweeted;

"Excellent news! @GeM_India is a game changer when it comes to showcasing India’s entrepreneurial zeal and furthering transparency. I laud all those who are displaying their products on this platform and urge others to do the same."