Share
 
Comments

My dear sisters and brothers,

The law of nature is that Truth alone triumphs -
Satyameva Jayate
. Our judiciary having spoken, I felt it important to share my inner thoughts and feelings with the nation at large.

The end brings back memories of the beginning. The devastating earthquake of 2001 had plunged Gujarat into the gloom of death, destruction and sheer helplessness. Hundreds of lives were lost. Lakhs were rendered homeless. Entire livelihoods were destroyed. In such traumatic times of unimaginable suffering, I was given the responsibility to soothe and rebuild. And we had whole heartedly plunged ourselves into the challenge at hand.

Within a mere five months however, the mindless violence of 2002 had dealt us another unexpected blow. Innocents were killed. Families rendered helpless. Property built through years of toil destroyed. Still struggling to get back on its feet from the natural devastation, this was a crippling blow to an already shattered and hurting Gujarat.

I was shaken to the core. ‘Grief’, ‘Sadness’, ‘Misery’, ‘Pain’, ‘Anguish’, ‘Agony’ – mere words could not capture the absolute emptiness one felt on witnessing such inhumanity.

On one side was the pain of the victims of the earthquake, and on the other the pain of the victims of the riots. In decisively confronting this great turmoil, I had to single-mindedly focus all the strength given to me by the almighty, on the task of peace, justice and rehabilitation; burying the pain and agony I was personally wracked with.

During those challenging times, I often recollected the wisdom in our scriptures; explaining how those sitting in positions of power did not have the right to share their own pain and anguish. They had to suffer it in solitude. I lived through the same, experiencing this anguish in searingly sharp intensity. In fact, whenever I remember those agonizing days, I have only one earnest prayer to God. That never again should such cruelly unfortunate days come in the lives of any other person, society, state or nation.

This is the first time I am sharing the harrowing ordeal I had gone through in those days at a personal level.

However, it was from these very built up emotions that I had appealed to the people of Gujarat on the day of the Godhra train burning itself; fervently urging for peace and restraint to ensure lives of innocents were not put at risk. I had repeatedly reiterated the same principles in my daily interactions with the media in those fateful days of February-March 2002 as well; publically underlining the political will as well as moral responsibility of the government to ensure peace, deliver justice and punish all guilty of violence. You will also find these deep emotions in my recent words at my Sadbhavana fasts, where I had emphasized how such deplorable incidents did not behove a civilized society and had pained me deeply.

In fact, my emphasis has always been on developing and emphasizing a spirit of unity; with the now widely used concept of ‘my 5 crore Gujarati brothers and sisters’ having crystallised right at the beginning of my tenure as CM itself from this very space.

However, as if all the suffering was not enough, I was also accused of the death and misery of my own loved ones, my Gujarati brothers and sisters. Can you imagine the inner turmoil and shock of being blamed for the very events that have shattered you!

For so many years, they incessantly kept up their attack, leaving no stone unturned. What pained even more was that in their overzealousness to hit at me for their narrow personal and political ends, they ended up maligning my entire state and country. This heartlessly kept reopening the wounds that we were sincerely trying to heal. It ironically also delayed the very justice that these people claimed to be fighting for. Maybe they did not realize how much suffering they were adding to an already pained people.

Gujarat however had decided its own path. We chose peace over violence. We chose unity over divisiveness. We chose goodwill over hatred. This was not easy, but we were determined to commit for the long haul. From a life of daily uncertainty and fear; my Gujarat transformed into one of
Shanti,
Ekta and
Sadbhavana
. I stand a satisfied and reassured man today. And for this, I credit each and every Gujarati.

The Gujarat Government had responded to the violence more swiftly and decisively than ever done before in any previous riots in the country. Yesterday’s judgement culminated a process of unprecedented scrutiny closely monitored by the highest court of the land, the Honourable Supreme Court of India. Gujarat’s 12 years of trial by the fire have finally drawn to an end. I feel liberated and at peace.

I am truly grateful to all those who stood by me in these trying times; seeing through the facade of lies and deceit. With this cloud of misinformation firmly dispelled, I will now also hope that the many others out there trying to understand and connect with the real Narendra Modi would feel more empowered to do so.

Those who derive satisfaction by perpetuating pain in others will probably not stop their tirade against me. I do not expect them to. But, I pray in all humility, that they at least now stop irresponsibly maligning the 6 crore people of Gujarat.

Emerging from this journey of pain and agony; I pray to God that no bitterness seeps into my heart. I sincerely do not see this judgement as a personal victory or defeat, and urge all - my friends and especially my opponents – to not do so as well. I was driven by this same principle at the time of the Honourable Supreme Court’s 2011 judgement on this matter. I fasted 37 days for Sadbhavana, choosing to translate the positive judgement into constructive action, reinforcing Unity and Sadbhavana in society at large.

I am deeply convinced that the future of any society, state or country lies in harmony. This is the only foundation on which progress and prosperity can be built. Therefore, I urge one and all to join hands in working towards the same, ensuring smiles on each and every face.

Once again,
Satyameva Jayate!


Vande Mataram
!

Narendra Modi

بھارتی اولمپئنس کی حوصلہ افزائی کریں۔ #Cheers4India
Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
PM Modi responds to passenger from Bihar boarding flight for first time with his father from Darbhanga airport

Media Coverage

PM Modi responds to passenger from Bihar boarding flight for first time with his father from Darbhanga airport
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
پختہ عزم اور ترغیبات سے اصلاحات
June 22, 2021
Share
 
Comments

کووڈ-19 وبائی مرض پالیسی بنانے کے معاملے میں پوری دنیا کی حکومتوں کے لیے نئے چیلنجز لیکر آیا ہے۔ بھارت بھی اس سے مستثنیٰ نہیں ہے۔ پائیداری کو یقینی بناتے ہوئے، عوامی فلاح و بہبود کے لیے مناسب وسائل کا انتظام کرنا سب سے بڑا چیلنج ہے۔

پوری دنیا میں مالی بحران کے اس تناظر میں، کیا آپ کو معلوم ہے کہ ہندوستانی ریاستیں 21-2020 میں زیادہ قرض لینے میں کامیاب رہیں؟ شاید یہ جان کر آپ کو خوشگوار حیرت ہوگی کہ ریاستیں 21-2020 میں اضافی 1.06 لاکھ کروڑ روپے اکٹھا کرنے میں کامیاب رہیں۔ وسائل کی دستیابی میں یہ قابل قدر اضافہ مرکز اور ریاست کے درمیان ’بھاگیداری‘ کی وجہ سے ممکن ہو پایا۔

ہم نے جب کووڈ-19 وبائی مرض کے جواب میں اپنی اقتصادی پالیسی بنائی، تو ہم اس بات کو یقینی بنانا چاہتے تھے کہ ہمارا یہ حل ’ایک ہی سائز سب کے لیے فٹ آتا ہے‘ والے ماڈل کی پیروی نہ کرے۔ بر اعظم کے طول و عرض کے حامل ایک وفاقی ملک کے لیے، ریاستی حکومتوں کے ذریعے اصلاحات کے فروغ کے لیے قومی سطح پر ایسی کوئی پالیسی تیار کرنا واقعی میں چیلنج بھرا ہے۔ لیکن، ہمیں اپنی وفاقی جمہوریہ کی مضبوطی پر اعتماد تھا اور ہم مرکز اور ریاست کے درمیان بھاگیداری کے جذبہ سے اس راستے پر آگے بڑھے۔

مئی 2020 میں، آتم نربھر بھارت پیکیج کے حصہ کے طور پر، حکومت ہند نے اعلان کیا کہ ریاستی حکومتوں کو 21-2020 کے لیے اضافی قرض لینے کی اجازت دی جائے گی۔ جی ایس ڈی پی سے 2 فیصد زیادہ کی اجازت دی گئی، جس میں سے ایک فیصد کو مخصوص اقتصادی اصلاحات کے نفاذ سے مشروط کر دیا گیا تھا۔ ہندوستانی عوامی معیشت میں اصلاح کی یہ پہل نایاب ہے۔ اس کے تحت ریاستوں کو اس بات کے لیے آمادہ کیا گیا کہ وہ اضافی رقم حاصل کرنے کے لیے ترقی پسند پالیسیاں اختیار کریں۔ اس مشق کے نتائج نہ صرف حوصلہ افزا ہیں، بلکہ اس خیال آرائی کے برعکس بھی ہیں کہ ٹھوس اقتصادی پالیسیوں پر عمل کرنے والے محدود ہیں۔

چار اصلاحات جن سے اضافی قرض لینے کو جوڑا گیا (جس میں سے ہر ایک کے ساتھ جی ڈی پی کا 0.25 فیصد جوڑا گیا تھا) اس کی دو خصوصیات تھیں۔ پہلی، اصلاحات میں سے ہر ایک کو عوام، خاص طور سے غریبوں، کمزوروں، اور متوسط طبقہ کی زندگی کو بہتر بنانے سے جوڑا گیا تھا۔ دوسری، انہوں نے مالی استحکام کو بھی فروغ دیا۔

’ایک ملک ایک راشن کارڈ‘ کی پالیسی کے تحت پہلی اصلاح میں ریاستی حکومتوں کو یہ یقینی بنانا تھا کہ قومی غذائی تحفظ قانون (این ایف ایس اے) کے ےتحت ریاست کے تمام راشن کارڈوں کو فیملی کے تمام ممبران کے آدھار نمبر سے جوڑا جائے اور مناسب قیمت والی تمام دکانوں پر الیکٹرانک پوائنٹ آف سیل ڈیوائسز ہوں۔ اس کا بنیادی فائدہ یہ ہے کہ مہاجر کارکن اپنا غذائی راشن ملک میں کہیں سے بھی حاصل کر سکتے ہیں۔ شہریوں کو ملنے والے ان فوائد کے علاوہ، فرضی کارڈ اور ڈوپلیکیٹ ممبران کے ختم ہونے سے بھی مالی فائدہ ہوا۔ 17 ریاستوں نے اس اصلاح کو مکمل کر لیا اور انہیں 37600 کروڑ روپے کا اضافی قرض فراہم کیا گیا۔

دوسری اصلاح، جس کا مقصد کاروبار میں آسانی کو بہتر کرنا تھا، کے تحت ریاستوں کو یہ یقینی بنانا تھا کہ 7 قوانین کے تحت کاروبار سے متعلق لائسنس کی تجدید خود کار، آن لائن اور معمولی فیس کی ادائیگی  پر کی جائے۔ دوسری شرط تھی کمپیوٹر کے ذریعے اچانک جانچ کا نظام نافذ کیا جائے  اور جانچ سے قبل نوٹس  دیا جائے تاکہ مزید 12 قوانین کے تحت ہراسانی اور بدعنوانی کو کم کیا جا سکے۔ اس اصلاح سے (19 قوانین کا احاطہ کرتے ہوئے) انتہائی چھوٹی اور چھوٹی انٹرپرائزز کو خاص طور سے مدد ملی، جنہیں ’انسپکٹر راج‘ کا سب سے زیادہ بوجھ برداشت کرنا پڑتا ہے۔ یہ بہتر سرمایہ کاری کے ماحول، بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری اور تیزی سے ترقی کو فروغ دیتا ہے۔ 20 ریاستوں نے اس اصلاح کو مکمل کیا اور انہیں 39521 کروڑ روپے کے اضافی قرض کی اجازت دی گئی۔

پندرہویں مالیاتی کمیشن اور متعدد ماہرین تعلیم نے ٹھوس پراپرٹی ٹیکس کی اہمیت پر زور دیا ہے۔ تیسری اصلاح کے تحت ریاستوں کو شہری علاقوں میں بالترتیب جائیداد کے لین دین اور موجودہ اخراجات کے لیے اسٹامپ ڈیوٹی گائیڈ لائن کی قدروں کے مطابق، پراپرٹی ٹیکس اور پانی اور سیوریج چارجز کی بنیادی شرحوں کے بارے میں نوٹیفائی کرنا تھا۔ یہ شہری غریبوں اور متوسط طبقہ کو بہترین معیار کی خدمات مہیا کرائے گا اور بہتر بنیادی ڈھانچہ کی معاونت کے ساتھ ہی ترقی کو آگے بڑھائے گا۔ پراپرٹی ٹیکس بھی اس معاملے میں ترقی پسند ہے اور اس سے شہری علاقوں کے غریبوں کو سب سے زیادہ فائدہ ہوگا۔ یہ اصلاح میونسپل اسٹاف کے لیے بھی فائدہ مند ہے جنہیں اکثر ان کی اجرت دیر سے ملتی ہے۔ 11 ریاستوں نے ان اصلاحات کو مکمل کیا اور انہیں 15957 کروڑ روپے کے اضافی قرض کو منظوری دی گئی۔

چوتھی اصلاح کاشتکاروں کو بجلی کی مفت سپلائی کے سلسلے میں ڈائریکٹ بینیفٹ ٹرانسفر (ڈی بی ٹی) کو متعارف کرانا تھی۔ اس کے لیے یہ شرط تھی کہ ریاست گیر اسکیم تیار کی جائے اور سال کے آخر تک پائلٹ بنیاد پر کسی ایک ضلع میں اسے حقیقی طور پر نافذ کیا جائے۔ اس کے ساتھ جی ایس ڈی پی کے 0.15 فیصد کے اضافی قرض کو جوڑا گیا تھا۔ تکنیکی اور کاروباری نقصانات میں کمی کے لیے ایک جزو بھی فراہم کیا گیا تھا اور دوسرا محصول اور اخراجات (ہر ایک کے لیے جی ایس ڈی پی کا 0.05 فیصد) کے درمیان کے فرق کو کم کرنے کے لیے تھا۔اس سے تقسیم کار کمپنیوں کے مالی معاملات میں بہتری آتی ہے، پانی اور بجلی کی بچت کو فروغ حاصل ہوتا ہے اور بہتر مالیاتی اور تکنیکی کارکردگی کے ذریعے سروس کے معیار میں بہتری آتی ہے۔ 13 ریاستوں نے کم از کم ایک جزو کو نافذ کیا، جب کہ 6 ریاستوں نے ڈی بی ٹی جزو کو نافذ کیا۔ اس کے نتیجہ میں، 13201 کروڑ روپے کے اضافی قرض کی اجازت دی گئی۔

مجموعی طور پر، 23 ریاستوں نے امکانی 2.14 لاکھ کروڑ روپے میں سے 1.06 لاکھ کروڑ روپے کے اضافی قرض لیے۔ اس کے نتیجہ میں ریاستوں کو 21-2021 کے لیے (مشروط اور غیر مشروط) ابتدائی تخمینی جی ایس ڈی پی کے 4.5 فیصد کے مجموعی قرض کی اجازت دی گئی۔

ہمارے جیسے پیچیدہ چیلنجز والے ایک بڑے ملک کے لیے، یہ ایک انوکھا تجربہ تھا۔ ہم نے اکثر دیکھا ہے کہ متعدد اسباب کی بناپر، اسکیمیں اور اصلاحات سالوں تک غیر فعال رہتی ہیں۔ یہ ماضی کی خوشگوار روانگی تھی، جہاں مرکز اور ریاستیں وبائی مرض کے دوران بہت ہی مختصر وقت میں عوام دوست ان اصلاحات کو نافذ کرنے کے لیے ایک ساتھ آئیں۔ یہ سب کا ساتھ، سب کا وکاس اور سب کا وشواس والے ہمارے نقطہ نظر کی وجہ سے ممکن ہو پایا۔ان اصلاحات پر کام کرنے والے افسران کی رائے ہے کہ اضافی رقم کی اس ترغیب کے بغیر، ان پالیسیوں کو نافذ کرنے میں برسوں لگ جاتے۔  بھارت نے ’چوری چھپے اور زبردستی اصلاحات‘ کا ماڈل دیکھا ہے۔ یہ ’پختہ عزم اور ترغیبات سے اصلاحات‘ کا نیا ماڈل ہے۔ میں ان تمام ریاستوں کا شکر گزار ہوں جنہوں نے اپنے شہریوں کی بہتری کے لیے اس مشکل وقت میں ان پالیسیوں کو سب سے آگے بڑھ کر شروع کیا۔ ہم 130 کروڑ ہندوستانیوں کی تیزی سے ترقی کے لیے ساتھ مل کر کام کرنا جاری رکھیں گے۔