I thank the countrymen for having reiterated their unwavering faith in our Constitution and the democratic systems of the country: PM Modi
The campaign to plant trees in the name of mother will not only honour our mother, but will also protect Mother Earth: PM Modi
Every Indian feels proud when such a spread of Indian heritage and culture is seen all over the world: PM Modi
I express my heartfelt gratitude to all the friends who participated on Yoga Day: PM Modi
We do not have to make Yoga just a one-day practice. You should do Yoga regularly: PM Modi

میرے پیارے ہم وطنو، سلام۔ آج وہ دن آ گیا ہے جس کا ہم سب فروری سے انتظار کر رہے تھے۔ میں ’من کی بات‘ کے ذریعے ایک بار پھرآپ کے درمیان اوراپنے پریوار جنوں کےدرمیان آیا ہوں۔ ایک بہت ہی پیاری کہاوت ہے –’اِتی ویداپنرملانیہ‘، اس کا مطلب بھی اتنا ہی پیارا ہے، میں الوداع کہتا ہوں، دوبارہ ملنے کے لیے۔ اسی جذبے کے تحت میں نے فروری میں آپ سے کہا تھا کہ میں انتخابی نتائج کے بعد آپ سے دوبارہ ملوں گا اور آج 'من کی بات' کے ساتھ میں آپ کے درمیان ایک بار پھر حاضر ہوں۔ امید ہے آپ سب خیریت سے ہوں گے، گھر میں سب خیریت سے ہوں گے اور اب مانسون بھی آچکا ہے، اور جب مانسون آتا ہے تو من بھی خوش ہوجاتا ہے۔ آج سے ایک بار پھر 'من کی بات' میں ہم ایسے ہم وطنوں کے بارے میں بات کریں گے جو اپنے کام سے سماج اور ملک میں تبدیلی لا رہے ہیں۔ ہم اپنی بھرپور ثقافت، شاندار تاریخ اور ترقی یافتہ ہندوستان کے لیے کوششوں پر تبادلہ خیال کریں گے۔

 دوستو، فروری سے لے کر اب تک، جب بھی مہینے کا آخری اتوار قریب آتا تھا، توآپ سے یہ رابطہ بہت یاد آتا تھا۔ لیکن مجھے یہ دیکھ کر بھی بہت خوشی ہوئی کہ آپ لوگوں نے مجھے ان مہینوں میں لاکھوں پیغامات بھیجے۔ 'من کی بات' ریڈیو کا پروگرام بھلے ہی چند مہینوں سے بند ہوا ہو، لیکن 'من کی بات' کا جذبہ ہر روز ملک اور معاشرے میں اچھے کاموں کو پھیلا رہا ہے، بے لوث جذبے سے کیے گئے کام، جس کے مثبت اثرات معاشرے میں مرتب ہو رہے ہیں- اسےمسلسل جاری رکھیں۔ انتخابی خبروں کے درمیان، آپ نے یقیناً ایسی دل کو چھو لینے والی خبروں کو دیکھا ہوگا۔

دوستو، آج میں ہم وطنوں کا شکریہ بھی ادا کرتا ہوں کہ انہوں نے ہمارے آئین اور ملک کے جمہوری نظام پر اپنے غیر متزلزل یقین کا اعادہ کیا ہے۔ 24 کا الیکشن دنیا کا سب سے بڑا الیکشن تھا۔ اتنا بڑا الیکشن دنیا کے کسی ملک میں نہیں ہوا، جس میں 65 کروڑ لوگوں نے ووٹ ڈالے۔ میں اس کے لیے الیکشن کمیشن اور ووٹنگ کے عمل سے وابستہ سبھی متعلقہ افراد کو مبارکباد دیتا ہوں۔

میرے پیارے ہم وطنو، آج 30 جون بہت اہم دن ہے۔ ہمارے قبائلی بھائی بہن اس دن کو ’’ ہُل دِوَس‘‘ کے طور پر مناتے ہیں۔ یہ دن بہادر سدھو کانہو کی بے مثال جرات سے وابستہ ہے جنہوں نے غیر ملکی حکمرانوں کے مظالم کا بھرپور مقابلہ کیا۔ بہادر سدھو کانہو نے ہزاروں سنتھالی ساتھیوں کو اکٹھا کیا اور انگریزوں کے خلاف جی جان اور شجاعت کے ساتھ مقابلہ کیا ، اور کیا آپ جانتے ہیں کہ یہ کب ہوا؟ یہ 1855 میں ہوا، یعنی 1857 میں ہندوستان کی پہلی جنگ آزادی سے دو سال پہلے، جب جھارکھنڈ کے سنتھل پرگنہ میں ہمارے قبائلی بھائی بہنوں نے غیر ملکی حکمرانوں کے خلاف ہتھیار اٹھائے تھے۔ انگریزوں نے ہمارے سنتھالی بھائیوں اور بہنوں پر بہت مظالم ڈھائے تھے اور ان پر بہت سی پابندیاں بھی لگائی تھیں۔ بہادر سدھو اور کانہو اس جدوجہد میں کمال بہادری کا مظاہرہ کرتے ہوئے شہید ہوئے۔ جھارکھنڈ کی سرزمین کے ان لازوال فرزندوں کی قربانی آج بھی اہل وطن کو متاثر کرتی ہے۔ آئیے سنتالی زبان میں ان کے لیے ایک گیت کا اقتباس سنتے ہیں۔

#آڈیو کلپ#

میرے پیارے دوستو، اگر میں آپ سے پوچھوں کہ دنیا کا سب سے قیمتی رشتہ کون سا ہے تو آپ ضرور کہیں گے - "ماں"۔ ہم سب کی زندگی میں ماں کا مقام سب سے زیادہ ہے۔ ماں ہر دکھ سہنے کے بعد بھی اپنے بچے کا خیال رکھتی ہے۔ ہر ماں اپنے بچے کو ہر طرح سے پیار کرتی ہے۔ ہماری پیدائشی ماں کی یہ محبت ہم سب پر ایک قرض کی طرح ہے جسے کوئی نہیں چکا سکتا۔ میں سوچ رہا تھا کہ ہم ماں کو تو کچھ نہیں دے سکتے لیکن کیا کچھ اور کر سکتے ہیں؟ اسی بات کو ذہن میں رکھتے ہوئے اس سال عالمی یوم ماحولیات کے موقع پر ایک خصوصی مہم شروع کی گئی ہے۔ اس مہم کا نام ہے - 'ایک پیڑ ماں کے نام'۔ میں نے اپنی ماں کے نام پر ایک درخت بھی لگایا ہے۔ میں نے تمام اہل وطن، دنیا کے تمام ممالک کے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ اپنی ماں کے ساتھ یا ان کے نام پر ایک درخت لگائیں۔ اور مجھے یہ دیکھ کر بہت خوشی ہوئی کہ ماں کی یاد میں یا ان کے اعزاز میں درخت لگانے کی مہم تیزی سے آگے بڑھ رہی ہے۔ لوگ اپنی ماں کے ساتھ درخت لگانے کی تصاویر یا اس کی تصویر کے ساتھ سوشل میڈیا پر شیئر کر رہے ہیں۔ ہر کوئی اپنی ماں کے لیے درخت لگا رہا ہے خواہ وہ امیر ہو یا غریب، چاہے وہ ملازمت پیشہ عورت ہو یا گھریلو خاتون۔ اس مہم نے سب کو اپنی ماں کے تئیں اپنے پیار کا اظہار کرنے کا یکساں موقع فراہم کیا ہے۔ وہ #پلانٹ فار مدر اور #ایک پیڑ ماں کے نام پر اپنی تصاویر شیئر کرکے دوسروں کو متاثر کررہے ہیں۔

دوستو اس مہم کا ایک اور فائدہ بھی ہوگا۔ دھرتی بھی ماں کی طرح ہمارا خیال رکھتی ہے۔ ماں دھرتی ہم سب کے لیے زندگی کی بنیاد ہے، اس لیے ہمارا فرض ہے کہ ہم زمین کی ماں کا بھی خیال رکھیں۔ ماں کے نام پر درخت لگانے کی مہم سے نہ صرف ہماری ماں کی عزت دوبالا ہوگی بلکہ دھرتی ماں کی حفاظت بھی ہوگی۔ پچھلی دہائی میں، سب کی کوششوں سے، ہندوستان میں جنگلات کے رقبے میں بے مثال توسیع ہوئی ہے۔ امرت مہوتسو کے دوران ملک بھر میں 60 ہزار سے زیادہ امرت سروور بھی بنائے گئے ہیں۔ اب ہمیں ماں کے نام پر درخت لگانے کی مہم کو تیز کرنا ہوگا۔

 

میرے پیارے ہم وطنو، ملک کے مختلف حصوں میں مانسون تیزی سے اپنے رنگ بکھیر رہا ہے۔ اور برسات کے اس موسم میں جس چیز کو ہر کوئی اپنے گھر میں تلاش کرنے لگا ہے وہ ہے 'چھتری'۔ آج ’من کی بات‘ میں میں آپ کو ایک خاص قسم کی چھتریوں کے بارے میں بتانا چاہتا ہوں۔ یہ چھتریاں ہمارے کیرالہ میں تیار کی جاتی ہیں۔ دراصل، کیرالہ کی ثقافت میں چھتریوں کی خاص اہمیت ہے۔ چھتریاں وہاں کی بہت سی روایات اور رسومات کا ایک اہم حصہ ہیں۔ لیکن میں جن چھتریوں کے بارے میں بات کر رہا ہوں وہ 'کرتھمبی چھتریاں' ہیں اور وہ اٹاپاڈی، کیرالہ میں تیار کی جاتی ہیں۔ یہ رنگ برنگی چھتریاں بہت شاندار ہیں۔ اور خاص بات یہ ہے کہ یہ چھتریاں ہماری کیرالہ کی قبائلی بہنوں نے تیار کی ہیں۔ آج ملک بھر میں ان چھتریوں کی مانگ بڑھ رہی ہے۔ انہیں آن لائن بھی فروخت کیا جا رہا ہے۔ یہ چھتریاں 'وتالکی کوآپریٹو ایگریکلچرل سوسائٹی' کی نگرانی میں بنائی گئی ہیں۔ اس معاشرے کی قیادت ہماری خواتین کی طاقت سے ہے۔ اٹاپاڈی کی قبائلی برادری نے خواتین کی قیادت میں کاروبار کی ایک شاندار مثال قائم کی ہے۔ اس سوسائٹی نے بانس ہینڈی کرافٹ یونٹ بھی قائم کیا ہے۔ اب یہ لوگ ریٹیل آؤٹ لیٹ اور روایتی کیفے بھی کھولنے کی تیاری کر رہے ہیں۔ ان کا مقصد نہ صرف اپنی چھتریاں اور دیگر مصنوعات فروخت کرنا ہے، بلکہ وہ دنیا کو اپنی روایت اور ثقافت سے بھی متعارف کروا رہے ہیں۔ آج کرتھمبی چھتریاں کیرالہ کے ایک چھوٹے سے گاؤں سے ملٹی نیشنل کمپنیوں تک اپنا سفر مکمل کر رہی ہے۔ لوکل کے لیے آواز اٹھانے کی اس سے اچھی مثال کیا ہو سکتی ہے؟

میرے پیارے ہم وطنو، اس وقت تک اگلے مہینے پیرس اولمپکس شروع ہو چکے ہوں گے۔ مجھے یقین ہے کہ آپ سب بھی اولمپک گیمز میں ہندوستانی کھلاڑیوں کی حوصلہ افزائی کے لیے انتظار کر رہے ہوں گے۔ میں ہندوستانی ٹیم کو اولمپک کھیلوں کے لیے نیک تمناؤں کا اظہار کرتا ہوں۔ ٹوکیو اولمپکس کی یادیں آج بھی ہم سب کے ذہنوں میں تازہ ہیں۔ ٹوکیو میں ہمارے کھلاڑیوں کی کارکردگی نے ہر ہندوستانی کا دل جیت لیا تھا۔ ٹوکیو اولمپکس کے بعد سے ہمارے کھلاڑی پیرس اولمپکس کی تیاریوں میں مصروف تھے۔ اگر ہم تمام کھلاڑیوں کو شامل کریں تو ان سب نے نو سو کے قریب بین الاقوامی مقابلوں میں حصہ لیا ہے۔ یہ بہت بڑی تعداد ہے۔

دوستو، آپ کو پیرس اولمپکس میں پہلی بار کچھ چیزیں دیکھنے کو ملیں گی۔ شوٹنگ میں ہمارے کھلاڑیوں کا ٹیلنٹ سامنے آرہا ہے۔ مرد اور خواتین دونوں ٹیمیں، ٹیبل ٹینس میں کوالیفائی کر چکی ہیں۔ ہماری شوٹر بیٹیاں بھی ہندوستانی شاٹ گن ٹیم میں شامل ہیں۔ اس بار ہماری ٹیم کے کھلاڑی ریسلنگ اور گھڑ سواری کے ان زمروں میں بھی حصہ لیں گے جن میں انہوں نے پہلے کبھی حصہ نہیں لیا۔ اس سے آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ اس بار ہم کھیلوں میں ایک الگ سطح کا جوش دیکھیں گے۔ آپ کو یاد ہوگا، ہم نے چند ماہ قبل ورلڈ پیرا ایتھلیٹکس چیمپئن شپ میں اپنی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کیا تھا۔ ہمارے کھلاڑیوں نے شطرنج اور بیڈمنٹن میں بھی پرچم لہرایا ہے۔ اب پورا ملک امید کر رہا ہے کہ ہمارے کھلاڑی اولمپکس میں بھی اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کریں گے۔ ہم ان کھیلوں میں تمغے جیتیں گے اور اہل وطن کے دل بھی جیتیں گے۔ آنے والے دنوں میں مجھے ہندوستانی ٹیم سے بھی ملنے کا موقع ملنے والا ہے۔ میں آپ کی طرف سے ان کی حوصلہ افزائی کروں گا۔ اور ہاں.. اس بار ہمارا ہیش ٹیگ #چیئرفار بھارت ہے۔ اس ہیش ٹیگ کے ذریعے ہمیں اپنے کھلاڑیوں کو خوش کرنا ہے... ان کی حوصلہ افزائی کرتے رہیں۔ اس لیے رفتار کو برقرار رکھیں... آپ کی یہ رفتار... دنیا کو ہندوستان کا جادو دکھانے میں مدد کرے گی۔

میرے پیارے ہم وطنو، میں آپ سب کے لیے ایک چھوٹا سا آڈیو کلپ چلا رہا ہوں۔

#آڈیو کلپ#

آپ بھی اس ریڈیو پروگرام کو سن کر حیران ہو گئے تھے نا؟ تو آئیے آپ کو اس کے پیچھے کی پوری کہانی بتاتے ہیں۔ دراصل یہ کویت ریڈیو کی نشریات کا کلپ ہے۔ اب آپ سوچیں گے کہ ہم کویت کی بات کر رہے ہیں تو وہاں ہندی کہاں سے آگئی؟ دراصل، کویت حکومت نے اپنے نیشنل ریڈیو پر ایک خصوصی پروگرام شروع کیا ہے۔ اور وہ بھی ہندی میں۔ یہ ہر اتوار کو آدھے گھنٹے کے لیے 'کویت ریڈیو' پر نشر ہوتا ہے۔ اس میں ہندوستانی ثقافت کے مختلف رنگ شامل ہیں۔ ہماری فلمیں اور فن کی دنیا سے متعلق مباحث وہاں کی ہندوستانی کمیونٹی میں بہت مقبول ہیں۔ مجھے یہاں تک بتایا گیا ہے کہ کویت کے مقامی لوگ بھی اس میں بہت دلچسپی لے رہے ہیں۔ میں کویت کی حکومت اور عوام کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں کہ انہوں نے یہ شاندار اقدام اٹھایا۔

دوستو، جس طرح سے آج پوری دنیا میں ہماری ثقافت کی تعریف کی جا رہی ہے اس سے کون سا ہندوستانی خوش نہیں ہوگا؟ اب ترکمانستان میں اس سال مئی میں وہاں کے قومی شاعر کا 300 واں یوم پیدائش منایا گیا۔ اس موقع پر ترکمانستان کے صدر نے دنیا کے 24 مشہور شاعروں کے مجسموں کی نقاب کشائی کی۔ ان مجسموں میں سے ایک گرودیو رابندر ناتھ ٹیگور کا ہے۔ یہ گرودیو کا احترام ہے، ہندوستان کا احترام ہے۔ اسی طرح جون کے مہینے میں دو کیریبین ممالک سورینام اور سینٹ ونسنٹ اور گریناڈائنز نے اپنے ہندوستانی ورثے کو پورے جوش و خروش سے منایا۔ سورینام میں ہندوستانی کمیونٹی ہر سال 5 جون کو ہندوستانی آمد کے دن اور ڈاسپورا ڈے کے طور پر مناتی ہے۔ یہاں ہندی کے ساتھ ساتھ بھوجپوری بھی بولی جاتی ہے۔ سینٹ ونسنٹ اور گریناڈائنز میں رہنے والے ہندوستانی نژاد ہمارے بہن بھائیوں کی تعداد بھی چھ ہزار کے لگ بھگ ہے۔ ان سب کو اپنے ورثے پر بہت فخر ہے۔ ان کے جذبات اس شان و شوکت سے واضح طور پر جھلکتے ہیں جس کے ساتھ ان سب نے یکم جون کو ہندوستانی آمد کا دن منایا۔ ہر ہندوستانی فخر محسوس کرتا ہے جب ہندوستانی وراثت اور ثقافت کی اس طرح کی توسیع پوری دنیا میں دیکھی جاتی ہے۔

دوستو، اس مہینے پوری دنیا نے یوگا کا 10 واں عالمی دن بڑے جوش و خروش کے ساتھ منایا ہے۔ میں نے سری نگر، جموں و کشمیر میں منعقد یوگا پروگرام میں بھی شرکت کی۔ کشمیر میں نوجوانوں کے ساتھ ساتھ بہنوں اور بیٹیوں نے بھی یوگا ڈے میں جوش و خروش سے حصہ لیا۔ جیسے جیسے یوگا ڈے منایا جا رہا ہے، نئے ریکارڈ بن رہے ہیں۔ یوگا ڈے نے دنیا بھر میں بہت سی شاندار کامیابیاں حاصل کی ہیں۔ سعودی عرب میں پہلی بار ایک خاتون الحنوف سعد نے مشترکہ یوگا پروٹوکول کی قیادت کی۔ یہ پہلا موقع ہے جب کسی سعودی خاتون نے مرکزی یوگا سیشن کی ہدایت کی ہے۔ اس بار مصر میں یوگا ڈے پر تصویری مقابلے کا انعقاد کیا گیا۔ بحیرہ احمر کے ساحلوں، دریائے نیل کے کنارے اور اہرام کے سامنے لاکھوں افراد کی یوگا کرتے ہوئے تصاویر بہت مشہور ہوئیں۔ میانمار کا مراویجایا پگوڈا کمپلیکس جو کہ ماربل بدھا کے مجسمے کی وجہ سے دنیا میں مشہور ہے، یہاں 21 جون کو ایک شاندار یوگا سیشن کا بھی اہتمام کیا گیا۔ بحرین میں معذور بچوں کے لیے خصوصی کیمپ کا انعقاد کیا گیا۔ سری لنکا میں یونیسکو کے ثقافتی ورثے کے لیے مشہور گالے فورٹ میں ایک یادگار یوگا سیشن بھی ہوا۔ نیویارک، امریکا میں آبزرویشن ڈیک پر بھی لوگوں نے یوگا کیا۔ صدر جمہوریہ نے مارشل آئی لینڈ میں پہلی بار بڑے پیمانے پر منعقدہ یوگا ڈے پروگرام میں بھی شرکت کی۔ بھوٹان کے تھمپو میں بھی یوگا ڈے کا ایک بڑا پروگرام ہوا جس میں میرے دوست وزیر اعظم ٹوبگے نے بھی شرکت کی۔ یعنی ہم سب نے دنیا کے کونے کونے میں یوگا کرنے والے لوگوں کے خوبصورت نظارے دیکھے۔ میں ان تمام دوستوں کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں جنہوں نے یوگا ڈے میں حصہ لیا۔ میری آپ سے پہلے سے ہی ایک درخواست بھی رہی ہےکہ ہمیں یوگا کو صرف ایک دن کی مشق نہیں بنانا ہے۔ آپ کو باقاعدگی سے یوگا کرنا چاہئے۔ اس سے آپ یقینی طور پر اپنی زندگی میں مثبت تبدیلیاں محسوس کریں گے۔

دوستو، بہت ساری ہندوستانی مصنوعات ہیں جن کی پوری دنیا میں بہت مانگ ہے اور جب ہم کسی مقامی ہندوستانی پروڈکٹ کو عالمی سطح پر پہنچتے  ہوئے دیکھتےہیں تو فخر سے  ہمارا سربلندہو جانا فطری بات ہے۔ ایسی ہی ایک مصنوعات اراکو کافی ہے۔ اراکو کافی بڑی مقدار میں آندھرا پردیش کے الوری سیتا راما راجو ضلع میں اگائی جاتی ہے۔ یہ اپنے بھرپور ذائقے اور خوشبو کے لیے جانی جاتی ہے۔ تقریباً 1.5 لاکھ قبائلی خاندان اراکو کافی کی کاشت سے وابستہ ہیں۔ گریجن کوآپریٹیو نے اراکو کافی کو نئی بلندیاں دینے میں بڑا کردار ادا کیا ہے۔ اس نے یہاں کے کسان بھائیوں اور بہنوں کو اکٹھا کرنے کا کام کیا اور انہیں اراکو کافی کاشت کرنے کی ترغیب دی۔ جس کی وجہ سے ان کسانوں کی آمدنی میں بھی کافی اضافہ ہوا ہے۔ کونڈا ڈورا قبائلی برادری کو بھی اس سے کافی فائدہ ہوا ہے۔ کمانے کے ساتھ ساتھ عزت کی زندگی بھی حاصل کر رہے ہیں۔ مجھے یاد ہے کہ ایک بار مجھے وشاکھاپٹنم میں آندھرا پردیش کے وزیر اعلی چندرا بابو نائیڈو گارو کے ساتھ اس کافی کا مزہ چکھنے کا موقع ملا۔ اس کے ذائقے کے بارے میں بھی مت پوچھو! یہ کافی حیرت انگیز ہے! اراکو کافی کو کئی عالمی اعزازات ملے ہیں۔ دہلی میں منعقدہجی -  20سربراہی اجلاس میں بھی کافی کا رواج تھا۔ جب بھی آپ کو موقع ملے آپ کو اراکو کافی سے بھی لطف اندوز ہونا چاہیے۔

دوستو، ہمارے جموں و کشمیر کے لوگ بھی مقامی مصنوعات کو عالمی بنانے میں پیچھے نہیں ہیں۔ جموں و کشمیر نے پچھلے مہینے میں جو کچھ کیا ہے وہ پورے ملک کے لوگوں کے لیے ایک مثال ہے۔ برف کے مٹروں کی پہلی کھیپ پلوامہ سے لندن بھیجی گئی۔ کچھ لوگوں کو خیال آیا کہ کیوں نہ کشمیر میں اگنے والی غیر ملکی سبزیوں کو دنیا کے نقشے پر لایا جائے… پھر کیا… چکورا گاؤں کے عبدالرشید میر جی اس کے لیے سب سے پہلے آگے آئے۔انہوںنے گاؤں کے دوسرے کسانوں کی زمینیں ملا کر برف کے مٹر اگانے شروع کیے اور جلد ہی کشمیر سے برف کے مٹر لندن پہنچنے لگے۔ اس کامیابی سے جموں و کشمیر کے لوگوں کی خوشحالی کے نئے دروازے کھل گئے ہیں۔ ہمارے ملک میں ایسی منفرد مصنوعات کی کمی نہیں ہے۔ آپ کو ایسے پروڈکٹس کو #مائی پروڈکٹ مائی پرائڈکے ساتھ شیئر کرنا چاہیے۔ میں اس موضوع پر آئندہ 'من کی بات' میں بھی بات کروں گا۔

 ماں پریا: ملک کی خاتون:

سنسکرت زبانوں پر آدیا آہم کنچیت کی بحث شروع ۔

آپ سوچ رہے ہوں گے کہ میں 'من کی بات' میں اچانک سنسکرت میں کیوں بول رہا ہوں؟ اس کی وجہ یہ ہے کہ آج سنسکرت سے متعلق ایک خاص موقع ہے! آج 30 جون کو آل انڈیا ریڈیو کا سنسکرت بلیٹن اپنی نشریات کے 50 سال مکمل کر رہا ہے۔ اس بلیٹن نے بہت سے لوگوں کو سنسکرت سے 50 سالوں سے لگاتار منسلک کر کے رکھا ہے۔ میں آل انڈیا ریڈیو فیملی کو مبارکباد دیتا ہوں۔

دوستو، قدیم ہندوستانی علم و سائنس کی ترقی میں سنسکرت نے بڑا کردار ادا کیا ہے۔ آج کا دور تقاضا کرتا ہے کہ ہم سنسکرت کو عزت دیں اور اسے اپنی روزمرہ کی زندگی سے بھی جوڑیں۔ آج کل، بہت سے لوگ بنگلورو میں اسی طرح کی کوشش کر رہے ہیں۔ بنگلورو میں ایک پارک ہے - کبن پارک۔ یہاں کے لوگوں نے اس پارک میں ایک نئی روایت شروع کی ہے۔ یہاں ہفتے میں ایک بار، ہر اتوار، بچے، نوجوان اور بزرگ آپس میں سنسکرت میں گفتگو کرتے ہیں۔ یہی نہیں، یہاں صرف سنسکرت میں کئی مباحثے بھی منعقد کیے جاتے ہیں۔ ان کی پہل کا نام ہے – سنسکرت ویک اینڈ! اس کی شروعات سماشتی گوبی جی نے ایک ویب سائٹ کے ذریعے کی ہے۔ یہ کوشش، جو ابھی کچھ دن پہلے شروع ہوئی تھی، بنگلورو کے لوگوں میں بہت تیزی سے مقبول ہو گئی ہے۔ اگر ہم سب اس کوشش میں شامل ہو جائیں تو ہمیں دنیا کی ایسی قدیم اور سائنسی زبان سے بہت کچھ سیکھنے کو ملے گا۔

میرے پیارے ہم وطنو، ’من کی بات‘ کے اس ایپی سوڈ میں آپ کے ساتھ شامل ہونا بہت اچھا لگا۔ اب یہ سلسلہ پہلے کی طرح چلتا رہے گا۔ مقدس رتھ یاترا اب سے ایک ہفتہ بعد سے شروع ہونے والی ہے۔ میری خواہش ہے کہ مہا پربھو جگن ناتھ کا آشیرواد تمام ہم وطنوں پر ہمیشہ قائم رہے۔ امرناتھ یاترا بھی شروع ہو چکی ہے اور اگلے چند دنوں میں پنڈھارپور واری بھی شروع ہونے والی ہے۔ میں ان یاترا میں شریک تمام عقیدت مندوں کو اپنی نیک تمناؤں کا اظہار کرتا ہوں۔ اگلا کچھی نیا سال ہے – آشدھی بیجوں کا تہوار۔ ان تمام تہواروں کے لیے آپ سب کو بہت سی نیک خواہشات۔ مجھے یقین ہے کہ آپ یقینی طور پر مثبتیت سے متعلق اس طرح کی عوامی شرکت کی کوششوں کا اشتراک کرتے رہیں گے۔ میں اگلے مہینے آپ کے ساتھ دوبارہ رابطہ قائم کرنے کا منتظر ہوں۔ تب تک اپنا اور اپنے خاندان کا خیال رکھیں۔ بہت بہت شکریہ۔ نمسکار۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India digital public infrastructure is charting the journey towards becoming $1-tn digital economy by 2027-28

Media Coverage

India digital public infrastructure is charting the journey towards becoming $1-tn digital economy by 2027-28
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر،20 جولائی 2024
July 20, 2024

India Appreciates the Nation’s Remarkable Rise as Global Economic Powerhouse