Share
 
Comments

 

 

نئی دہلی،  28   مئی 2021،   وزیراعظم  جناب نریند مودی نے  28 مئی 2021 کو بروز جمعہ کے دن سمندری طوفان ’یاس‘ سے پیدا شدہ صورتحال کا  جائزہ لینے کے لئے اڈیشہ اور مغربی بنگال کا دورہ کیا۔ انہوں نے  اڈیشہ کے بھدرک اور بالیشور اضلاع اور مغربی بنگال کے پوربا میدنی پور  میں  سمندری طوفان سے متاثرہ علاقوں کا  فضائی سروے کیا۔

وزیراعظم نے بھونیشور میں  راحت اور باز آباد کاری کے کئےجانے والے اقدامات کا جائزہ لینے کےلئےایک میٹنگ کی صدارت کی۔

وزیراعظم کو بریفنگ دی گئی کہ  سمندری طوفان یاس سے زیادہ نقصان اڈیشہ اور مغربی بنگال کے کچھ حصوں میں ہوا ہے اور جھارکھنڈ بھی متاثر ہوا ہے۔

وزیراعظم نے  فوری راحت کے کاموں کے لئے  1000 کروڑ روپے کی مالی امداد کا اعلان کیا۔  500 کروڑ روپے فوری طور پر اڈیشہ کو دیئے جائیں گے اور مغربی بنگال اورجھارکھنڈ کے لئے بھی  500 کروڑ روپے کا اعلان کیا گیا ہے جو کہ نقصان کی بنیاد پر جاری کئے جائیں گے۔ مرکزی حکومت  ایک بین وزارتی ٹیم  تعینات کرے گی جو  ہونے والے نقصانات کا جائزہ لینے کے لئے  ریاستوں کا دورہ کرے گی، جس کی بنیاد پر  مزید امداد دی جائےگی۔

وزیراعظم نے  اڈیشہ، مغربی بنگال اور جھارکھنڈ کے لوگوں کو یقین دلایا کہ  مرکزی حکومت  اس مشکل وقت میں  ریاستی حکومتوں کے ساتھ مل کر کام کرے گی اور  متاثرہ علاقوں میں بنیادی ڈھانچے کی بحالی اور تعمیر نو کے لئے ہر ممکن امداد فراہم کرائے گی۔

وزیراعظم مودی نے کہا کہ وہ  پوری طرح ان افراد کے ساتھ ہیں جو سمندری طوفان سے متاثر ہوئے ہیں اور انہوں نے ان خاندانوں کے  لئے گہرے غم کا اظہار کا جنہوں نے  اس آفت کے دوران اپنے  قریبی  لوگوں کو کھویا ہے۔

  انہوں نے سمندری طوفان کی وجہ سے مرنے والوں کے قریبی رشتے دار کو 2 لاکھ روپے کی امداد اور شدید زخمی ہونےوالوں کو  50 ہزار روپے کی امداد  کا اعلان کیا۔

وزیراعظم نے کہا کہ ہمیں  آفات کے مزید سائنسی بندوبست پر فوکس جاری رکھنا ہوگا۔ بحیرہ عرب اور خلیج بنگال  میں  سمندری طوفانوں کے   تواتراور اثر میں اضافہ ہونے  سے  مواصلاتی نظام ، طوفان کے اثرات کو کم کرنے اور  اس کے سلسلے میں تیاری میں بڑی تبدیلیاں کرنی ہوں گی۔ انہوں نے راحت کی کوششوں  میں  بہتر تعاون کے لئے  لوگوں کے درمیان  اعتماد سازی کی ضرورت کا بھی ذکر کیا۔

وزیراعظم مودی نے اڈیشہ حکومت کی تیاری اور  آفت کے  بندوبست  کی سرگرمیوں کی تعریف کی، جس کے نتیجے میں  کم سے کم جانی نقصان ہوا ہے۔  انہوں نے کہا کہ ریاست نے  ایسی قدرتی آفات سے مقاملہ کرنے کے لئے  طویل مدتی کوششیں شروع کی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ مالیاتی کمیشن  بھی  آفات  کے اثرات کو کم کرنے  پر زور دے رہا ہے اور اس کے لئے اس نے 30 ہزار کروڑ روپے  کے  ایک مخصوص فنڈ کا  انتظام کیا ہے۔

Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
From Gulabi Meenakari ship to sandalwood Buddha – Unique gifts from PM Modi to US-Australia-Japan

Media Coverage

From Gulabi Meenakari ship to sandalwood Buddha – Unique gifts from PM Modi to US-Australia-Japan
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM to bring home 157 artefacts & antiquities from the US
September 25, 2021
Share
 
Comments
Artefacts include cultural antiquities and figurines related to Hinduism, Buddhism and Jainism
Endeavour embodies continuous efforts by the Modi Government to bring back our antiquities & artefacts from across the world
Most of the items belong to the period of 11th CE to 14th CE as well as historic antiquities belonging to Before Common Era

157 artefacts & antiquities were handed over by the United States during Prime Minister Modi’s visit. PM conveyed his deep appreciation for the repatriation of antiquities to India by the United States. PM Modi & President Biden committed to strengthen their efforts to combat the theft, illicit trade and trafficking of cultural objects.

The list of 157 artefacts includes a diverse set to items ranging from the one and a half metre bas relief panel of Revanta in sandstone of the 10th CE to the 8.5cm tall, exquisite bronze Nataraja from the 12th CE. The items largely belong to the period of 11th CE to 14th CE as well as historic antiquities such as the copper anthropomorphic object of 2000 BC or the terracotta vase from the 2nd CE. Some 45 antiquities belong to the Before Common Era.

While half of the artifacts (71) are cultural, the other half consists of figurines which relate to Hinduism (60), Buddhism (16) and Jainism (9).

Their make spreads across metal, stone and terracotta. The bronze collection primarily contains ornate figurines of the well-known postures of Lakshmi Narayana, Buddha, Vishnu, Siva Parvathi and the 24 Jain Tirthankaras and the less common Kankalamurti, Brahmi and Nandikesa besides other unnamed deities and divine figures.

The motifs include religious sculptures from Hinduism (Three headed Brahma, Chariot Driving Surya, Vishnu and his Consorts, Siva as Dakshinamurti, Dancing Ganesha etc), Buddhism (Standing Buddha, Boddhisattva Majushri, Tara) and Jainism (Jain Tirthankara, Padmasana Tirthankara, Jaina Choubisi) as well as secular motifs (Amorphous couple in Samabhanga, Chowri Bearer, Female playing drum etc).

There are 56 terracotta pieces (Vase 2nd CE, Pair of Deer 12th CE, Bust of Female 14th CE) and an 18th CE sword with sheath with inscription mentioning Guru Hargovind Singh in Persian).

This continues the efforts by the Modi Government to bring back our antiquities & artefacts from across the world.