’’یہ اپنی حقیقی شکل میں واقعی ایک مہاکمبھ ہے جو بے مثال توانائی اور ترنگ پیدا کرتا ہے‘‘
’’اسٹارٹ اپ مہاکمبھ کا دورہ کرنے والا کوئی بھی شخص، ہندوستانی مستقبل کے یونیکورنز اور ڈیکا کورنز کا مشاہدہ کرے گا‘‘
’’اسٹارٹ اپ ایک سماجی کلچر بن چکا ہے اور سماجی کلچر کو کوئی نہیں روک سکتا‘‘
’’ملک میں 45 فیصد سے زیادہ اسٹارٹ اپ خواتین کے زیرِ قیادت ہیں‘‘
’’مجھے یقین ہے کہ عالمی ایپلی کیشنز کے لیے ہندوستانی حل دنیا کے بہت سے ملکوں کے لیے مددگار ثابت ہوں گے‘‘

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج نئی دہلی کے بھارت منڈپم میں اسٹارٹ اپ مہاکمبھ کا افتتاح کیا۔ وہ  اس موقع پر لگائی گئی ایک  نمائش  بھی دیکھنے گئے۔

اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے اسٹارٹ اپ مہاکمبھ کی اہمیت کو اجاگر کیا اور 2047 تک  ایک وکست بھارت بننے کی غرض سے کام کرنے کے ملک کے روڈ میپ پر زور دیا۔انہوں نے جدت طرازی اور اسٹارٹ اپ کلچر کے ابھرتے ہوئے رجحانات پر روشنی ڈالی اورگذشتہ چند دہائیوں میں  آئی ٹی اور سافٹ ویئر شعبے میں  بھارت کے ذریعہ اپنی چھاپ چھوڑنے کو اجاگر کیا۔اس لئے ، وزیر اعظم نے کہا کہ  اسٹارٹ اپس کی دنیا سے لوگوں کی موجودگی آج کے موقع کی اہمیت کو واضح کرتی ہے۔ملک میں اسٹارٹ اپس کی کامیابی پر توجہ دیتے ہوئے، وزیر اعظم نے اس باصلاحیت عنصر کی طرف توجہ مبذول کرائی جو انہیں کامیاب بناتا ہے۔انہوں نے سرمایہ کاروں، انکیوبیٹرز، تعلیمی اداروں ،محققین،صنعت کے اراکین، اورموجودہ اور مستقبل کے کاروباری افراداور صنعت کاروں کی موجودگی کا اعتراف کیا اور کہا، ’’یہ اپنی حقیقی شکل میں  واقعی ایک مہاکمبھ ہے جو ایک بے مثال توانائی اورترنگ پیدا کرتا ہے۔‘‘ وزیر اعظم نے اسی طرح کے ماحول کا تجربہ کرنے کا ذکر کیا جب وہ کھیلوں اور نمائشی اسٹالز کا دورہ کر رہے تھے جہاں لوگوں نے بڑے فخر کے ساتھ اپنی اختراعات کا مظاہرہ کیا۔وزیر اعظم مودی نے کہا’’اسٹارٹ اپ مہاکمبھ کا دورہ کرنے والا کوئی بھی ہندوستانی مستقبل کے یونیکورنز اور ڈیکا کورنز کا مشاہدہ کرے گا‘‘۔

 

وزیراعظم نے درست پالیسیوں کے باعث ملک میں اسٹارٹ اپ  ایکونظام کی ترقی پر اطمینان کا اظہار کیا۔ انہوں نے معاشرے میں اسٹارٹ اپ کے تصور کے بارے میں ابتدائی ہچکچاہٹ اور بے حسی کا ذکر کیا ۔ انہوں نے کہا کہ اسٹارٹ اپ انڈیا کے تحت کچھ عرصے کے دوران اختراعی خیالات کو ایک پلیٹ فارم ملا۔ انہوں نے مالیاتی ذرائع  کے ساتھ خیالات  ونظریات کو جوڑکر اور تعلیمی اداروں میں انکیوبیٹرز کے ذریعے ایک ماحولیاتی نظام کے قیام پر تبصرہ کیا جس نے درجہ دوئم اور درجہ سوئم کے شہروں کے نوجوانوں کو سہولیات فراہم کیں۔انہوں نے کہا’’اسٹارٹ اپ ایک سماجی ثقافت بن گیا ہے اور کوئی بھی سماجی ثقافت کو نہیں روک سکتا‘‘۔

وزیر اعظم نے کہا کہ اسٹارٹ اپ انقلاب کی قیادت چھوٹے شہر کر رہے ہیں اوران میں بھی زراعت، ٹیکسٹائلز، ادویات، ٹرانسپورٹ، خلاء، یوگا اور آیوروید سمیت وسیع شعبے شامل ہیں۔ خلاءسے متعلق اسٹارٹ اپس کے بارے میں وضاحت کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ ہندوستانی اسٹارٹ اپس، خلاء کے شعبے میں 50 سے بھی زیادہ شعبوں میں کام کر رہے ہیں جن میں خلائی شٹل کا آغاز بھی شامل ہے۔

 

وزیر اعظم نے اسٹارٹ اپس کے بارے میں بدلتی ہوئی ذہنیت پررائے زنی کی ۔ انہوں نے کہا کہ اسٹارٹ اپس نے یہ نفسیات بدل دی ہے کہ کوئی کاروبار شروع کرنے کے لیے بہت زیادہ رقم درکار ہوتی ہے۔انہوں نے ملک کے نوجوانوں کی ستائش کی کہ وہ ملازمت کے متلاشی بننے  کے بجائے روزگار پیدا کرنے والے بننے کا راستہ منتخب کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا’’ہندوستان میں تیسرا سب سے بڑا اسٹارٹ اپ ایکو نظام موجود ہے جس میں بارہ لاکھ نوجوانوں کے ساتھ  1.25 لاکھ اسٹارٹ اپ ہیں جو ان سے براہ راست جڑے ہوئے ہیں۔‘‘ وزیر اعظم نے صنعت کاروں سے کہا کہ وہ اپنے پیٹنٹ کو تیزی سے فائل کرنے کے بارے میں چوکس رہیں۔ جی ای ایم پورٹل نے کاروبار ی اداروں اور اسٹارٹ اپس کو 20,000 کروڑ روپے سے زیادہ فراہم کیے ہیں۔انہوں نے نئے شعبوں میں آنے پر نوجوانوں کی تعریف کی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ پالیسی پلیٹ فارمز پر شروع کیے گئے اسٹارٹ اپس آج نئی بلندیوں کو چھو رہے ہیں۔

 

اسٹارٹ اپس کو ڈیجیٹل انڈیا کے ذریعہ فراہم کردہ محرک پر روشنی ڈالتے ہوئے، وزیر اعظم نے کہا کہ یہ ایک بہت بڑی  ترغیب ہے۔انہوں نے کالجوں کو تجویز پیش کی کہ وہ اسے ایک کیس اسٹڈی کے طور پر لیں ۔ انہوں نے یو پی آئی کے فن ٹیک اسٹارٹ اپس کے لیے معاونت کا ایک ستون بننے کا ذکر کیا جو ملک میں ڈیجیٹل خدمات کی توسیع کے لیے اختراعی مصنوعات اور خدمات کی ترقی کی قیادت کررہے ہیں۔انہوں نےجی20 سربراہی اجلاس کے دوران بھارت منڈپم میں قائم ایک بوتھ پر ممتاز صنعت کاروں اور عالمی رہنماؤں کی بڑی قطاروں کا ذکر کیا جس میں یو پی آئی کے کام کی وضاحت کی گئی تھی اور آزمائشی طور پر چلانے کی پیشکش کی گئی تھی۔ وزیر اعظم نے کہا کہ اس سے مالیاتی شمولیت کو تقویت ملی ہے اور دیہی اور شہری تقسیم  میں کمی آئی ہے ،جبکہ ٹیکنالوجی کو بھی جمہوری بنایا گیا ہے۔ وزیراعظم نے اس بات پر خوشی کا اظہار کیا کہ ملک میں 45 فیصد سے زائد اسٹارٹ اپ، خواہ وہ تعلیم ہو، زراعت ہو یا صحت ہو، خواتین کی زیر قیادت  چل رہےہیں۔

وزیر اعظم نے نہ صرف وکست بھارت کے لیے بلکہ انسانیت کے لیے اختراع  اور جدت طرازی کے رواج کی اہمیت پر زور دیا۔ انہوں نے اسٹارٹ اپ-20 کے تحت، عالمی اسٹارٹ اپ کے لیے ایک پلیٹ فارم فراہم کرنے کے لیے ہندوستان کی پہل کا ذکر کیا جو اسٹارٹ اپس کی ترقی کے انجن کے طور پر  معاونت کرتا ہے۔انہوں نے اے آئی میں ہندوستان کی  بالادستی قائم ہونے کی بھی بات کی۔

 

وزیر اعظم نے اے آئی صنعت کے آغاز کےساتھ نوجوان اختراع کاروں اور عالمی سرمایہ کاروں کے لیے پیدا ہونے والے بے شمار مواقع کو نمایا ں کیا اور نیشنل کوانٹم مشن، انڈیا اے آئی مشن اور سیمی کنڈکٹر مشن کا ذکر کیا۔جناب مودی نے کچھ دیر پہلے امریکی سینیٹ میں اپنے خطاب کے دوران اے آئی پر گفتگو کا ذکر کیا اور یقین دلایا کہ ہندوستان اس شعبے میں ایک قائدانہ کردار ادا کرتا رہےگا ۔ وزیر اعظم نے کہا، ’’مجھے یقین ہے کہ عالمی ایپلی کیشنز کے لیے ہندوستانی حل دنیا کی بہت سے ملکوں کے لیے مددگار ثابت ہوں گے۔‘‘

وزیر اعظم نے ہیکاتھنز وغیرہ کے ذریعے ہندوستانی نوجوانوں سے سیکھنے کی عالمی خواہش کا اعتراف کیا۔ہندوستانی حالات میں آزمائے گئے حل کو عالمی قبولیت حاصل ہے۔ انہوں نے نیشنل ریسرچ فاؤنڈیشن اور سن رائز سیکٹر کے شعبوں میں مستقبل کی ضروریات اور تقاضوں کے مطابق  خود کو ہم آہنگ کرنے کے مقصد سے تحقیق اور منصوبہ بندی کے لیے  ایک لاکھ کروڑ کے فنڈ کا ذکر کیا۔

 

وزیر اعظم نے اسٹارٹ اپس سے کہا کہ وہ اسٹارٹ اپ  شعبے میں شامل ہونے والے افراد اور اداروں کی مدد کرکے معاشرے کے تئیں اپنی ذمہ داری کے تحت  اس کا حق واپس  کریں۔انہوں نے ان  اسٹارٹ اپس سے کہا کہ وہ انکیوبیشن سینٹرز، اسکولوں اور کالجوں کا دورہ کریں اور طلباء کے ساتھ اپنی بصیرت اور معلومات ساجھا کریں۔ انہوں نے ہیکاتھن کے ذریعے حل کے لیے، حکومت کے  مسائل سے  متعلق بیانات پیش کرکے نوجوانوں کو شامل کرنے کے اپنے تجربات بیان کیے۔ انہوں نے بتایا کہ حکمرانی میں بہت سے اچھے حل  اختیارکئےگئے اور حکومت میں حل تلاش کرنے کے لیے ہیکاتھن کلچر قائم ہوا۔ انہوں نے کاروباری اداروں  اور ایم ایس ایم ایز سے کہا کہ وہ اس کی پیروی کریں۔انہوں نے مہاکمبھ سے کہا کہ وہ قابل عمل نکات  پیش کریں ۔

وزیر اعظم نے بھارت کو11ویں مقام سے  ترقی دیکراسے دنیا کی پانچویں سب سے بڑی معیشت بنانے میں ملک کے نوجوانوں کے تعاون کو اجاگر کیا اور تیسری میعاد میں ہندوستان کو تیسری سب سے بڑی معیشت بنانے کی ضمانت کو پورا کرنے میں اسٹارٹ اپس کے ذریعہ ادا کئے جانے والے کردار پر بھی روشنی ڈالی۔  اپنا خطاب مکمل کرتے ہوئے ، وزیر اعظم نے کہا کہ نوجوانوں کے ساتھ بات چیت انہیں نئی توانائی سے بھردیتی ہے ۔ انہوں نے نوجوانوں کےمستقبل کے لیے اپنی نیک خواہشات کا اظہار کیا۔

 

اس موقع پربہت سی معزز شخصیات کے ساتھ ساتھ تجارت اور صنعت کے مرکزی وزیر جناب پیوش گوئل، مرکزی وزرائے مملکت محترمہ انوپریہ پٹیل اورجناب سوم پرکاش بھی موجود تھے۔

 

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Lok Sabha polls: J&K's Baramulla sees highest voter turnout in over 4 decades

Media Coverage

Lok Sabha polls: J&K's Baramulla sees highest voter turnout in over 4 decades
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM Modi's interview to Bharat 24
May 20, 2024

PM Modi spoke to Bharat 24 on wide range of subjects including the Lok sabha elections and the BJP-led NDA's development agenda.