سبھاش چندر بوس آپدا پربندھن پرسکار سے سرفراز کئے جانے والوں کو مبارکباد پیش کی
‘‘ترکی اور شام میں آنے والے زلزلوں کے بعد، دنیا کی طرف سے ہندوستان کی آفات سے نمٹنے کی کوششوں کے کردار کا اعتراف اور اس کی ستائش‘‘
‘‘ہندوستان نے جس طرح سے ڈیزاسٹر مینجمنٹ سے متعلق ٹکنالوجی اور انسانی وسائل کا دائرہ وسیع کیا ہے اُس سے ملک کی اچھی خدمت ہوئی ہے‘‘
’ہمیں مقامی سطح پر ہاؤسنگ یا ٹاؤن پلاننگ کے ماڈل تیار کرنے ہوں گے۔ ہمیں ان شعبوں میں جدید ٹیکنالوجی کے استعمال کی حوصلہ افزائی کرنے کی ضرورت ہے‘‘
‘‘شناخت اور اصلاحات ڈیزاسٹر مینجمنٹ کو مضبوط بنانے کے دو اہم اجزاء ہیں’’
‘‘مقامی شراکت سے مقامی صلاحیت کے منتر پر عمل کرکے ہی آپ کو کامیابی حاصل ہو گی’’
‘‘گھر کتنے پرانے ہیں اور پانی کی نکاسی کیسی ہے یہ معلوم کرنے کے علاوہ بجلی اور پانی کے بنیادی ڈھانچے کی صلاحیت جیسے پہلوؤں کے بارے میں علم سے فعال اقدامات کرنے میں مدد ملے گی’’
‘‘ایمبولینس نیٹ ورک کو مستقبل کے لئے تیار کرنے کی خاطر اے آئی، 5 جی اور انٹرنیٹ آف تھنگز (آئی او ٹی) کا استعمال کے امکانات کا جائزہ لیا جائے‘
وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج نئی دہلی میں نیشنل پلیٹ فارم فار ڈیزاسٹر رسک ریڈکشن (این پی ڈی آر آر) کے تیسرے اجلاس کا افتتاح کیا۔ ‘‘بدلتی ہوئی آب و ہوا میں مقامی صلاحیت پیدا کرنا’’ اس پلیٹ فارم کے تیسرے اجلاس کا مرکزی موضوع ہے۔

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج نئی دہلی میں نیشنل پلیٹ فارم فار ڈیزاسٹر رسک ریڈکشن (این پی ڈی آر آر) کے تیسرے اجلاس کا افتتاح کیا۔ ‘‘بدلتی ہوئی آب و ہوا میں مقامی صلاحیت پیدا کرنا’’ اس پلیٹ فارم کے تیسرے اجلاس کا مرکزی موضوع  ہے۔

تقریب کے دوران وزیر اعظم نے سبھاش چندر بوس آپدا پربندھن پرسکار سے نوازے جانے والوں کو مبارکباد پیش کی۔ 2023 پرسکار کے فاتح اڈیشہ اسٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (او ایس ڈی ایم اے) اور لونگلی فائر اسٹیشن، میزورم ہیں۔ وزیر اعظم نے ڈیزاسٹر رسک ریڈکشن کے شعبے میں اختراعی آئیڈیاز، اقدامات، آلات اور ٹیکنالوجیوں کو سامنے لانے والی نمائش کا بھی افتتاح کیا۔ اس موقع پر وزیر داخلہ جناب امت شاہ، وزیر مملکت جناب نتیا نند رائے بھی موجود تھے۔

اس موقع پر اپنے خطاب میں وزیر اعظم نے حال ہی میں ترکی اور شام میں ہندوستانی بچاؤ ٹیم کے کام کے لئے عالمی سطح پر تعریف کا ادراک کیا جس پر ہندوستان کو فخرہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ہندوستان نے جس طرح ڈیزاسٹر مینجمنٹ سے متعلق ٹیکنالوجی اور انسانی وسائل کو وسعت دی ہے اس سے ملک کی اچھی خدمت ہوئی ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ ایوارڈ قدرتی آفات سے نمٹنے کے نظام کو مضبوط اور فروغ دینے اور صحت مند مسابقت کو فروغ دینے کے لیے قائم کیے گئے ہیں۔ وزیر اعظم نے دونوں ایوارڈیافتگان کی تعریف کی۔

وزیر اعظم نے کہا کہ تقریب کا موضوع ‘‘بدلتے ہوئے آب و ہوا میں مقامی صلاحیت پیدا کرنا’’  ہندوستانی روایت کے مطابق ہے کیونکہ یہ عنصر کنویں، فن تعمیر اور پرانے شہروں میں واضح طور پر نظر آتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان میں ڈیزاسٹر مینجمنٹ کا نظام، حل اور حکمت عملی ہمیشہ مقامی رہی ہے۔ انہوں نے کچھ کے بھونگا گھروں کی مثال دی جو زلزلے سے کافی حد تک بچ گئے۔ وزیراعظم نے ہاؤسنگ اور ٹاؤن پلاننگ کے مقامی ماڈلز کو نئی ٹیکنالوجی کے مطابق تیار کرنے کی ضرورت پر زور دیا اور کہا کہ نئی ٹیکنالوجی کے ساتھ مقامی ٹیکنالوجی اور مواد کی افزودگی وقت کی ضرورت ہے۔ جب ہم مقامی لچک کی مثالوں کو مستقبل کی ٹیکنالوجی سے جوڑیں گے، تب ہی ہم تباہی کی لچک کی سمت میں بہتر کام کر سکیں گے۔

وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ گزرے برسوں میں طرز زندگی بہت آرام دہ تھا اور یہ تجربے نے ہمیں سکھایا کہ خشک سالی، سیلاب اور مسلسل بارش جیسی قدرتی آفات سے کیسے نمٹا جائے۔ انہوں نےبتایا کہ پچھلی حکومتوں کے لیے قدرتی آفات سے نجات کا کام محکمہ زراعت کے ساتھ کرنا فطری تھا۔ انہوں نے یاد دلایا کہ جب زلزلے جیسی قدرتی آفت آتی ہے تو اس سے مقامی سطح پر مقامی وسائل کی مدد سے نمٹا جاتا ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ بہر حال یہ ایک چھوٹی سی دنیا ہے جس میں ہم آج رہتے ہیں جہاں ایک دوسرے کے تجربات اور تجربات سے سیکھنا ایک معمول بن گیا ہے۔ دوسری جانب انہوں نے یہ بھی نوٹ کیا کہ قدرتی آفات کے برپا ہونے کے واقعات میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ گاؤں کے ایک ایسے ڈاکٹر کی تشبیہ دیتے ہوئے جو ہر ایک کا علاج کرتا ہے وزیر اعظم نے اس حقیقت پر روشنی ڈالی کہ ہمارے پاس آج کے دور میں ہر بیماری کے لیے ماہر ڈاکٹر موجود ہیں۔ اسی طرح وزیراعظم نے قدرتی آفات سے نمٹنے کے لیے ایک متحرک نظام تیار کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ انہوں نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ پچھلی صدی کی قدرتی آفات کا مطالعہ کر کے درست اندازہ لگایا جا سکتا ہے اور ساتھ ہی ان طریقوں پر وقت پر نظر ثانی کرنے پر بھی زور دیا، چاہے ان کی نوعیت مادی ہو یا نظام کی۔

وزیر اعظم نے اس بات پر زور دے کر کہا  کہ ڈیزاسٹر مینجمنٹ کو مضبوط بنانے کے لئے ‘‘ شناخت اور اصلاحات دو اہم اجزاء ہیں۔’’ انہوں نے وضاحت کی کہ شناخت قدرتی آفات سے لاحق ممکنہ خطرات کی نشاندہی کرنے میں مدد کرے گی اور یہ بتائے گی کہ مستقبل میں کب خطرہ ہو سکتا ہے۔ دوسری طرف اصلاحات کا نظام  ایک ایسا نظام ہے جس کے ذریعہ ممکنہ قدرتی آفات کے خطرات کو کم کیا جاتا ہے۔ انہوں نے نظام کو مقررہ مدت میں مزید قابل اور بہتر بنانے کا مشورہ اور شارٹ کٹ کے بجائے طویل المدتی سوچ پر زور دیا۔ انہوں نے سابقہ برسوں میں مغربی بنگال اور اڈیشہ سے ٹکرانے والے طوفانوں کی وجہ سے ہونے والی سینکڑوں ہلاکتوں کو یاد کیا اور کہا کہ  وقت اور حکمت عملی میں تبدیلیوں کے ساتھ ہندوستان جان و مال کو کم سے کم نقصان کے ساتھ اب ایسے طوفانوں سے نمٹنے کے قابل ہے۔ ہم قدرتی آفات کو نہیں روک سکتے لیکن ہم بہتر حکمت عملی اور نظام کو اپنی جگہ پر رکھ کر اس کے اثرات کو ضرور کم کر سکتے ہیں وزیر اعظم نے اسی کے ساتھ رد عمل کے بجائے فعال انداز اپنانے پر زور دیا۔

وزیر اعظم نے آزادی کے بعد کے گزرنے والے برسوں میں ڈیزاسٹر مینجمنٹ کی خراب حالت کے بارے میں بات کی۔ اور بتایا کہ پانچ دہائیوں کے بعد بھی ڈیزاسٹر مینجمنٹ کے حوالے سے کوئی قانون نہیں ہے۔ گجرات پہلی ایسی ریاست تھی جو 2001 میں اسٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ ایکٹ کے ساتھ سامنے آئی تھی۔ اس ایکٹ کی بنیاد پر اس وقت کی مرکزی حکومت نے ڈیزاسٹر مینجمنٹ ایکٹ نافذ کیا۔ اس کے بعد نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی وجود میں آئی۔

وزیراعظم نے بلدیاتی اداروں میں ڈیزاسٹر مینجمنٹ گورننس کو مضبوط بنانے کی ضرورت پر زور دیا اور کہا کہ ہمیں منصوبہ بندی کو ادارہ جاتی بنانا ہو گا اور مقامی منصوبہ بندی کا جائزہ لینا ہو گا۔ مکمل نظام کی اوور ہالنگ کی ضرورت کو اجاگر کرتے ہوئے وزیراعظم نے دو سطحوں پر کام کرنے پر زور دیا اور کہا کہ سب سے پہلے ڈیزاسٹر مینجمنٹ کے ماہرین کو عوامی شرکت پر زیادہ توجہ دینی ہوگی۔ انہوں نے لوگوں کو زلزلوں، طوفانوں، آگ اور دیگر آفات کے خطرات سے آگاہ کرنے کے مسلسل عمل پر زور دیا۔ اس سلسلے میں مناسب عمل، ڈرل اور ضابطوں کے بارے میں آگاہی فراہم کرنا ضروری ہے۔ انہوں نے ذمہ داران سے گاؤں اور محلے کی سطح پر ٹرین 'یووک منڈلس' اور 'سکھی منڈلوں' کا استعمال کرنے کو کہتے ہوئے کہا کہ مقامی شرکت کے ذریعہ مقامی صلاحیت کے منتر پر عمل کرنے سے ہی کامیابی ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ  اپڈا متر، این ایس ایس-این سی سی، فوج کے سابق فوجیوں کے میکانزم کو مزید مضبوط کرنے اور پہلے ردعمل کے لیے کمیونٹی سینٹرز میں آلات کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے کیونکہ بچاؤ کا کام بروقت شروع کرنے سے بہت سی جانیں بچائی جا سکتی ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ دوسری سطح پر ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے حقیقی وقت میں رجسٹریشن اور مانیٹرنگ سسٹم کو بروئے کار لایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ گھر کتنے پرانے ہیں اور پانی کی نکاسی کیسی  ہے یہ معلوم کرنے کے علاوہ  بجلی اور پانی کے بنیادی ڈھانچے کی صلاحیتجیسے پہلوؤں کے بارے میں علم سے فعال اقدامات کرنے میں مدد ملے گی۔ وزیر اعظم نے گرم لہر کے بارے میں اپنی حالیہ جائزہ میٹنگ کے دوران اسپتال میں لگنے والی آگ پر ہونے والی بحث کے بارے میں بات کی اور بتایا کہ اسپتال کی آگ سے نمٹنے کی تیاری کا باقاعدہ جائزہ کس طرح جانوں کو بچا سکتا ہے۔

وزیر اعظم نے گھنے شہری علاقوں جیسے کہ اسپتال، فیکٹری، ہوٹل یا کثیر منزلہ رہائشی عمارت میں آگ لگنے کے واقعات میں پچھلے کچھ برسوں میں خاص طور پر بڑھتی ہوئی گرمی کے ساتھ اضافہ نوٹ کیا۔ انہوں نے گنجان آباد علاقوں میں بہت منظم طریقے سے کام کرنے کے چیلنجز پر روشنی ڈالی جہاں گاڑی کے ذریعے پہنچنا ایک مشکل کام ہے۔ انہوں نے اس کا حل تلاش کرنے پر زور دیا۔ وزیر اعظم نے بلند عمارتوں میں لگنے والی آگ کو بجھانے کے لیے  فائر فائٹرز کی مہارت میں مسلسل اضافہ کرنے پر زور دیا اور کہا کہ صنعتی آگ کو بجھانے کے لیے کافی وسائل کیموجودگی کو بھییقینی بنایا جائے۔

وزیر اعظم نے مقامی مہارتوں اور آلات کو مسلسل جدید بنانے کی ضرورت پر توجہ دی۔انہوں نے سیلف ہیلپ گروپس کی خواتین کو اپنی آمدنی بڑھانے اور آگ کے واقعات کو کم کرنے کے لیے ایسے آلات فراہم کرنے کے امکانات تلاش کرنے کو کہا جو جنگل کے ایندھن کو بائیو فیول میں تبدیل کرتے ہیں۔ انہوں نے ان صنعتوں اور اسپتالوں کے لیے ماہرین کی ایک فورس بنانے کے بارے میں بھی بات کی جہاں گیس کے اخراج کے امکانات زیادہ ہیں۔ اسی طرح ایمبولینس نیٹ ورکس کو مستقبل کے لیے تیار کرنے کی ضرورت پر روشنی ڈالتے ہوئے وزیر اعظم نے یہ بھی کہا کہ اس سلسلے میں اے آئی، 5جی اور انٹرنیٹ آف تھنگز کے استعمال کو دریافت کیا جائے۔ انہوں نے ذمہ داران سے ڈرون، الرٹ کرنے کے لیے گیجٹس اور ذاتی گیجٹس کے استعمال پر بھی غور کرنے کو کہا جو ملبے کے نیچے دبے ہوئے لوگوں کو تلاش کرنے میں مدد کر سکتے ہیں۔ انہوں نے ماہرین سے درخواست کی کہ وہ عالمی سماجی اداروں کے کام کا مطالعہ کریں جو نئے نظام اور ٹیکنالوجیز تشکیل دینے کے ساتھ  بہترین طریقوں کو اپناتے ہیں۔

وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیتے ہوئے خطبے کا اختتام کیا کہ ہندوستان دنیا بھر میں آنے والی آفات پر فوری رد عمل کے ساتھ سامنے آتا ہے اور با صلاحیت بنیادی ڈھانچے کے رخ پر بھی پہل کرتا ہے اور ردعمل سےکام لیتا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ دنیا کے 100 سے زیادہ ممالک ہندوستان کی قیادت میں بننے والے آفات سے بچنے والے انفراسٹرکچر کے اتحاد میں شامل ہوئے ہیں۔ وزیر اعظم نے یہ اعتماد بھی ظاہر کیا کہ آج کی بات چیت سے بہت ساری تجاویز اور حل سامنے آئیں گے اور اس طرح مستقبل کے لیے قابل عمل نکات ابھریں گے۔ روایت اور ٹکنالوجی ہماری طاقت ہے اور اس طاقت سے ہم نہ صرف ہندوستان بلکہ پوری دنیا کے لیے آفات سے نمٹنے کے لیے بہترین ماڈل تیار کر سکتے ہیں۔

این پی ڈی آر آر ایک ملٹی اسٹیک ہولڈر پلیٹ فارم ہے جسے حکومت ہند کی طرف سے بات چیت کرنے، تجربات، خیالات، آئیڈیا میں ساجھے داری کرنے اورعمل پر مبنی تحقیق اور آفات کے خطرے میں کمی کے شعبے میں مواقع تلاش کرنے کی سہولت فراہم کرنے کے لیے تشکیل دیا گیا ہے۔

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Getting excellent feedback, clear people across India voting for NDA, says PM Modi

Media Coverage

Getting excellent feedback, clear people across India voting for NDA, says PM Modi
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Overwhelming support for the NDA at PM Modi's rally in Nanded, Maharashtra
April 20, 2024
For decades, Congress stalled the development of Vidarbha & Marathwada: PM Modi
The land of Nanded reflects the purity of India's Sikh Gurus: PM Modi
The I.N.D.I alliance only believe in vote-bank politics: PM Modi

Ahead of the Lok Sabha elections, PM Modi addressed a public meeting in Nanded, Maharashtra amid overwhelming support by the people of BJP-NDA. He bowed down to prominent personalities including Guru Gobind Singh Ji, Nanaji Deshmukh, and Babasaheb Ambedkar.

Speaking on the initial phase of voting for the Lok Sabha elections, PM Modi said, “We have the popular support of the First-time voters with us.” He added, “I.N.D.I alliance have come together to save and protect their corruption and the people have thoroughly rejected them in the 1st phase of polling.” He added that the Congress Shehzada now has no choice but to contest from Wayanad, but like he left Amethi he may also leave Wayanad. He said that the country is voting for BJP-NDA for a ‘Viksit Bharat’.

Lamenting the Congress for stalling the development of the people, PM Modi said, “Congress is the wall between the development of Dalits, Poor & deprived.” He added that Congress even today opposes any developmental work that our government intends to carry out. He said that one can never expect them to resolve any issues and people cannot expect robust developmental prospects from them.

Highlighting the dire state and fragile conditions of Marathwada and Vidarbha, PM Modi said, “For decades, Congress stalled the development of Vidarbha & Marathwada.” He “It is the policies of the Congress that both Marathwada and Vidarbha are water-deficient, its farmers are poor and there are no prospects for industrial growth.” He said that our government has enabled 'Nal se Jal' to 80% of households in Nanded. He said that our constant endeavor has been to facilitate the empowerment of our farmers through record rise in MSPs, income support through PM-KISAN, and the promotion of ‘Sree Anna’.

Highlighting the infra impetus in Nanded in the last decade, PM Modi said, “To treat every wound given by Congress is Modi's guarantee.” He added “The ‘Shaktipeeth highway’ and ‘Latur Rail Coach Factory’ is our commitment to a robust infra.” He said that we aim to foster the development of the Marathwada region in the next 5 years.

Elaborating on the relationship between the Sikh Gurus and Nanded, PM Modi said, “The land of Nanded reflects the purity of India's Sikh Gurus.” He added that we are guided by the principles of Guru Gobind Singh Ji. “Over the years we have celebrated the 550th birth anniversary of Guru Nanak Dev Ji, the 400th birth anniversary of Guru Teg Bahadur Ji, and the 350th birth anniversary of Guru Gobind Singh Ji,” said PM Modi. He said that the Congress has always opposed the Sikh community and is taking revenge for 1984. He said that it is due to this that they oppose the CAA that aims to bring the Sikh brothers and sisters to India, granting them citizenship. He said that it was our government that brought back the Guru Granth Sahib from Afghanistan and facilitated the Kartarpur corridor. He said that various other decisions like the abrogation of Article 370 and the abolition of Triple Talaq have greatly benefitted our Muslim sisters and brothers.

Taking a dig at the I.N.D.I alliance, PM Modi said “The I.N.D.I alliance only believe in vote-bank politics.” He added that for this they have left no stone unturned to criticize and disrespect ‘Sanatana’. He said that it is the same I.N.D.I alliance that boycotted the Pran-Pratishtha of Shri Ram.

In conclusion, PM Modi said that we all must strive to ensure that India becomes a ‘Viksit Bharat’, and for that, it is the need of the hour to vote for the BJP-NDA. He thanked the people of Nanded for their overwhelming support and expressed confidence in a Modi 3.0.