Share
 
Comments

وزیراعظم جناب نریندر مودی نے آج بجلی اور قابل تجدید توانائی کے سیکٹر میں مرکزی بجٹ کے التزامات کے مؤثر نفاذ کے سلسلے میں مشاورت کیلئے ایک ویبنیار سے خطاب کیا۔ اس پروگرام کے دوران بجلی، نئی اور قابل تجدید توانائی کے مرکزی وزیر مملکت (آزادانہ چارج)، بجلی کے سیکٹر کے اسٹیک ہولڈرز اور شعبہ جاتی ماہرین، صنعتوں اور تنظیموں کے نمائندے، ڈسکام کے منیجنگ ڈائریکٹر، قابل تجدید توانائی کیلئے ریاستی نوڈل ایجنسیوں کے سی ای اوز، صارفین گروپس اور وزارت بجلی اورنئی و قابل تجدید توانائی کی وزارت کے سینئر افسران بھی موجود تھے۔

وزیراعظم نے کہا کہ توانائی کا سیکٹر ملک کی ترقی میں ایک بڑا رول ادا کرتا ہے اور ایز آف لیونگ اور ایز آف ڈوئنگ بزنس، دونوں میں اہم تعاون کرتا ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ یہ ویبینار حکومت اور نجی سیکٹروں کے درمیان اعتماد کا اشاریہ اور بجلی کے سیکٹر کیلئے بجٹ اعلانات کے جلد نفاذ کیلئے طور طریقے تلاش کرنے کی ایک کوشش ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ اس شعبے کیلئے حکومت کا نقطہ نظر جامع رہا ہے اور چار منتروں، رسائی، قوت، اصلاحات اور قابل تجدید توانائی نے حکومت کے اس نقطہ نظر کی رہنمائی کی ہے۔ رسائی کیلئے آخری میل رابطے کی ضرورت ہے۔ اس رسائی کو تنصیب کی صلاحیت کے ذریعے قوت بہم پہنچانے کی ضرورت ہے، اس کے لئے اصلاحات کی ضرورت ہے۔ اس سب کے ساتھ قابل تجدید توانائی وقت کی مانگ ہے۔

اس پر مزید روشنی ڈالتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ رسائی کے لئے حکومت کی توجہ ہر گاؤں اور ہرگھر تک پہنچنے پر مرکوز ہے۔ صلاحیت کو مدد بہم پہنچانے کے سلسلے میں ہندوستان بجلی کے خسارے والے ملک سے فاضل بجلی کا حامل ملک بن گیا ہے۔ حالیہ برسوں میں ہندوستان نے 139 گیگاواٹ صلاحیت کا اضافہ کیا ہے اور ایک ملک- ایک گرڈ- ایک فری کوئنسی کے ہدف کو حاصل کیا ہے۔ مالیاتی اور آپریشنل صلاحیتوں کو بہتر کرنے کیلئے 3 لاکھ 32 ہزار کروڑ روپئے کی مالیت کے بانڈ جاری کرکے اودے اسکیم جیسے اصلاحات کیے گئے۔پاور گرڈ کے اثاثوں کو مالی فائدہ دینے کیلئے انفراسٹرکچر انویسٹمنٹ ٹرسٹ-اِن وِٹ قائم کیا گیا جو جلد ہی سرمایہ کاروں کیلئے کھولاجائیگا۔

وزیراعظم نے اس بات کو اجاگر کیا کہ گزشتہ چھ برسوں کے دوران قابل تجدید توانائی کی صلاحیت میں ڈھائی گنا کا اضافہ ہوا ہے۔ شمسی توانائی کی صلاحیت میں 15 گنا کا اضافہ ہوا ہے۔ اس سال کے بجٹ میں بنیادی ڈھانچے میں سرمایہ کاری کیلئے بےمثال وابستگی کا اظہار کیا گیا ہے۔ یہ بات مشن ہائیڈروجن، سولرسیل کی گھریلو مینوفیکچرنگ اور قابل تجدید توانائی کے سیکٹر میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری کرنے سے واضح ہے۔

پی ایل آئی اسکیم کا حوالہ دیتے ہوئے وزیراعظم نے مطلع کیا کہ اعلیٰ صلاحیت کے سولر پی وی ماڈیول پی ایل آئی اسکیم کا اب حصہ ہے اور حکومت اس میں 4500 کروڑ روپئے کی سرمایہ کاری کیلئے عہد بند ہے۔ انہوں نے اس اسکیم کے سلسلے میں زبردست ردعمل حاصل ہونے کی امید ظاہر کی۔ پی ایل آئی اسکیم کے تحت 14 ہزار کروڑ روپئے کی مجوزہ سرمایہ کاری کے ساتھ 10 ہزار میگاواٹ کی صلاحیت کےحامل مربوط سولر پی وی مینوفیکچرنگ پلانٹس کو شروع کیا جائیگا۔ اس سے گھریلو سطح پر تیار کردہ مٹیریل مثلاً ای وی اے، سولر گلاس، بیک شیٹ، جنکشن باکس کی مانگ میں اضافہ ہونے کا امکان ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ ہماری کمپنیاں صرف گھریلو مانگوں کو پورا کرنے والی نہیں بلکہ عالمی مینوفیکچرنگ چمپئن بنیں۔

حکومت نے قابل تجدید توانائی کے سیکٹر میں سرمایہ کاری کو فروغ دینے کیلئے سولر انرجی کارپوریشن آف انڈیا میں 1000 کروڑ روپئے کی مالیت کے اضافی سرمایہ داخل کرنے کے عزم کا اشارہ دیا ہے۔ اسی طرح ہندوستانی قابل تجدید توانائی کی ترقیاتی ایجنسی کو 1500 کروڑ روپئے کی مالیت کی اضافی سرمایہ کاری ملے گی۔

وزیراعظم نے اس سیکٹر میں تجارت کرنے کی آسانی کو بہتر بنانے کی کوششوں کا بھی ذکر کیا۔ انہوں نے زور دیکر کہا کہ انضباطی اور پروسیس فریم ورک میں اصلاحات کے ساتھ بجلی کے سیکٹر کے تئیں نقطہ نظر میں واضح طور پر بہتری آئی ہے۔ حکومت بجلی کے سیکٹر کو ایک علیحدہ سیکٹر کے طور پر تسلیم کرتی ہے اور اسے صنعتی سیکٹر کا حصہ نہیں سمجھتی ہے۔ بجلی کے سیکٹر کو کافی اہمیت دینے کا ہی نتیجہ ہے کہ ہر ایک فرد تک بجلی کی فراہمی پر حکومت کی شدید توجہ ہے۔ حکومت بجلی کی تقسیم کےشعبے میں بھی موجود مشکلات کو دور کرنے کیلئے کام کررہی ہے۔ اس مقصد کے لئے ڈسکوم کیلئے ایک پالیسی اورریگولیٹری فریم ورک پر عمل درآمد کیا جارہا ہے۔ صارفین کو دیگر خردہ سامان کی طرح کارکردگی کی بنیاد پربجلی کیلئے اپنا سپلائر منتخب کرنے کے قابل ہونا چاہئے۔ وزیراعظم نے مزید کہا کہ بجلی تقسیم کے سیکٹر کو داخلہ کی رُکاوٹوں سے آزاد کرنے اور تقسیم اور سپلائی کیلئے لائسنسنگ کیلئے کام جاری ہے۔ وزیراعظم نے مطلع کیا کہ پری پیڈ اسمارٹ میٹر، فیڈر علیحدگی اور نظام کو جدید تر بنانے کیلئے کوششیں جاری ہیں۔

جناب مودی نے کہا کہ پی ایم کُسُم اسکیم کے تحت، کسان توانائی صنعتکار بن رہے ہیں۔ کسانوں کے کھیتوں میں چھوٹے پلانٹس کے ذریعے 30 گیگاواٹ بجلی کی صلاحیت پیدا کرنے کا ہدف ہے۔ چھتوں کے اوپر سولر پروجیکٹوں کے ذریعے 4 گیگاواٹ شمسی توانائی کی صلاحیت پہلے ہی نصب کی جاچکی ہے۔ 2.5 گیگاواٹ کا جلد ہی اضافہ ہوگا۔ وزیراعظم نے یہ کہتے ہوئے اپنی بات ختم کی کہ چھتوں کے اوپر سولر پروجیکٹوں کے ذریعے اگلے ڈیڑھ سال میں 40 گیگاواٹ شمسی توانائی کی پیداوار کا ارادہ ہے۔

 

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

'من کی بات ' کے لئے اپنے مشوروں سے نوازیں.
Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
India's FDI inflow rises 62% YoY to $27.37 bn in Apr-July

Media Coverage

India's FDI inflow rises 62% YoY to $27.37 bn in Apr-July
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Press Release on Arrival of Prime Minister to Washington D.C.
September 23, 2021
Share
 
Comments

Prime Minister Shri Narendra Modi arrived in Washington D.C.(22 September 2021, local time) for his visit to the United States of America at the invitation of His Excellency President Joe Biden of the USA.

Prime Minister was received by Mr. T. H. Brian McKeon, Deputy Secretary of State for Management and Resources on behalf of the government of the USA.

Exuberant members of Indian diaspora were also present at the Andrews airbase and they cheerfully welcomed Prime Minister.