Share
 
Comments

وزیر اعظم ، جناب نریندر مودی نے آج ویڈیو کانفرنس کے ذریعہ وشوا بھارتی یونیورسٹی کے کنووکیشن تقریب سے خطاب کیا۔ مغربی بنگال کے گورنر اور وِسوا ہندوستانی کے ریکٹر ،جناب جگدیپ دھنکھر ، مرکزی وزیر تعلیم ڈاکٹر رمیش پوکھریال نشانک اور مرکزی تعلیم برائے تعلیم شری سنجے دھتری بھی اس موقع پر موجود تھے۔

 

وزیر اعظم نے کنووکیشن سے خطاب کرتے ہوئے ویر شیواجی پر گرو دیو رویندر ناتھ ٹیگور کی نظم کا حوالہ دیا جس نے انھیں متاثر کیا اور اتحاد ہند پر زور دیا۔ وزیر اعظم نے زور دے کر کہا کہ طلباء اور اساتذہ صرف ایک یونیورسٹی کا حصہ نہیں، بلکہ ایک متحرک روایت کے حامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ گرودیو نے یونیورسٹی کا نام وشوا بھارتی کے نام سے منسوب کیا ہے جس کا مطلب گلوبل یونیورسٹی ہے کیونکہ انہیں توقع تھی کہ جو بھی وشوا بھارتی میں سیکھنے آئے گا وہ پوری دنیا کو ہندوستان اور ہندوستانیت کے نقطہ نظر سے دیکھے گا۔ چنانچہ انہوں نے وشوا بھارتی کو سیکھنے کے لئے ایسی جگہ بنایا ، جو ہندوستان کی بھرپور وراثت میں دیکھا جاسکتا ہے۔ انہوں نے ہندوستانی ورثے کے بارے میں تحقیق کرنے اور غریبوں کے مسائل حل کرنے کے لئے کام کرنے کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ گرودیو ٹیگور کے لئے وشوا بھارتی صرف ایک علم فراہم کرنے والا ادارہ نہیں تھا بلکہ ہندوستانی ثقافت کے اعلی ترین مقصد تک پہنچنے کی کوشش تھی ، جو اپنی ذات کی معرفت حاصل کرنا ہے۔

 

وزیر اعظم نے کہا کہ گرودیو کو یقین تھا کہ ہمیں مختلف نظریات اور اختلافات میں خود کو تلاش کرنا ہوگا۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ٹیگور بنگال پر فخر کرتے تھے لیکن ساتھ ہی انہیں ہندوستان کے تنوع پر بھی اتنا ہی فخرتھا اور یہ گرودیو کے ویژن کی وجہ سے ہی تھا کہ انسانیت شانتی نکیتن کے کھلے آسمان تلے پنپتی ہے۔ انہوں نے وشوا بھارتی کی تعریف کی کہ وہ اپنے آپ میں علم کا ایک بیکرا سمندر ہے ، جس کی بنیاد تجربہ پر مبنی تعلیم کے لئے رکھی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ تخلیقی صلاحیتوں اور علم کی کوئی حد نہیں ہے۔ اسی سوچ کے ساتھ ہی گرودیو نے اس عظیم یونیورسٹی کی بنیاد رکھی۔ وزیر اعظم نے  کہا کہ طلباء کو ہمیشہ یہ یاد رکھنا چاہئے کہ علم ، فکر اور مہارت  جامدنہیں بلکہ متحرک اور مستقل عمل ہے۔ انہوں نے کہا کہ ذمہ داری علم اور طاقت کے ساتھ آتی ہے۔ جس طرح اقتدار میں رہتے ہوئے کسی کو سنبھالنا اور حساس ہونا پڑتا ہے ، اسی طرح ہر عالم کو بھی ان لوگوں کے تئیں  اپنے فرائض ادا کرنے ہوتے ہیں۔ جن کے پاس علم نہیں ہے۔

 

وزیر اعظم نے طلباء سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آپ کا علم صرف آپ کا نہیں معاشرے کا ہے اور یہ ملک کا ورثاء ہے۔ آپ کا علم اور مہارت قوم کے لئے باعث فخر بھی ہو سکتی ہے اور معاشرے کو  رسوائی اور بربادی کے اندھیروں میں بھی دھکیل سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بہت سے لوگ جو پوری دنیا میں دہشت گردی اور تشدد پھیلارہے ہیں وہ اعلی تعلیم یافتہ ، انتہائی ہنر مند ہیں۔ دوسری طرف ، وہ لوگ ہیں جو اپنی جان کو خطرے میں ڈال رہے ہیں اور اسپتالوں اور لیبوں میں استقلال کے ساتھ کھڑے ہیں تاکہ لوگوں کو کووڈ جیسے وبائی امراض سے بچائیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ نظریہ نہیں بلکہ ذہنیت کے بارے میں ہے ، چاہے وہ مثبت ہو یا منفی۔ دونوں کے لئے  امکانات موجود ہیں اور دونوں کے لئے راستے کھلے ہیں۔ انہوں نے طلبہ پر زور دیا کہ وہ اس بارے میں فیصلہ کریں  کہ وہ  مسئلے کا حصہ بننا چاہتے ہیں یا  اس کے حل  کا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر انہوں نے قوم کو اولین ترجیح دی تو پھر ان کا ہر فیصلہ کسی نہ کسی حل کی طرف بڑھے گا۔ انہوں نے طلبہ کو مشورہ دیا کہ وہ فیصلہ لینے سے نہ گھبرائیں۔ انہوں نے کہا کہ جب تک ملک کے نوجوانوں میں جدت کا مزاج  ہے ، رسک لینے اور آگے بڑھنے کا جنون ہے ، تب تک ملک کے مستقبل کی کوئی فکر نہیں ہے۔ انہوں نے اس کوشش میں نوجوانوں کے لئے حکومت کے تعاون کی یقین دہانی کرائی۔

روایتی ہندوستانی تعلیمی نظام کی تاریخی طاقت کو یاد کرتے ہوئے ، وزیر اعظم نے گاندھیائی مفکر جناب دھرمپال کی کتاب ‘‘ خوبصورت درخت-  دیسی ہندوستانی تعلیم اٹھارویں صدی میں ’’ کا حوالہ دیا۔ انہوں نے کہا کہ 1820 کے سروے میں کہا گیا تھا کہ ہر گاؤں میں ایک سے زیادہ گروکل موجود تھے جو مقامی مندروں سے منسلک  تھے اور خواندگی کی شرح بہت زیادہ  تھی۔ اسے برطانوی اسکالرز نے بھی تسلیم کیا تھا۔ جناب مودی نے کہا ، گرودیو رویندر ناتھ نے وشوا بھارتی میں ایسے نظام تیار کیے جو ہندوستانی تعلیم کو جدید بنانے اور اسے غلامی کے طوق سے آزاد کرنے کا ذریعہ تھے۔

 

اسی طرح ، نئی قومی تعلیمی پالیسی بھی پرانی پابندیوں کو توڑتی اور طلبا کو اپنی پوری صلاحیت کا احساس کرنے کی اجازت دیتی ہے۔ اس سے مضامین اور تعلیم کے میڈیم کے انتخاب میں آسانی ہوتی ہے ۔ یہ پالیسی کاروبار اور خود روزگارتحقیق اور جدت کو فروغ دیتی ہے۔ وزیر اعظم نے کہا ، ‘‘یہ تعلیمی پالیسی آتم  نربھر بھارت بنانے میں ایک اہم سنگ میل ہے’’ وزیر اعظم نے بتایا کہ حال ہی میں حکومت کی طرف سے لاکھوں جرائد تک اسکالرز کو مفت رسائی دی گئی ہے۔ اس سال کے بجٹ میں نیشنل ریسرچ فاؤنڈیشن کے ذریعہ تحقیق کے لئے 5 سال میں 50 ہزار کروڑ کی تجویز پیش کی گئی ہے۔

بنگال کو ایک بھارت شریشٹھ بھارت کے لئے ایک ترغیب کاوسیلہ بتاتے ہوئے جناب وزیراعظم نے کہا کہ وشوا بھارتی کا 21 ویں صدی کی معلوماتی معیشت میں ایک بڑا کردار ہوگا۔ جس کے ذریعہ معلومات کو دنیا کے کونے کونے تک پہنچایا جائے گا۔ جناب مودی نے طلباء کو 2047 میں 25 سال پر مشتمل وشوا بھارتی کے 25 مقاصد پر محیط ویژن دستاویز تیار کرنے کے لئے دعوت دی۔ انہوں نے طلباء سے ہندوستان سے متعلق بیداری پھیلانے کا مطالبہ کیا اور کہا کہ وشوا بھارتی کو ہندوستان کا پیغام دنیا بھر میں پہنچانے اور دنیا بھر ہندوستانی کی شبیہ کو بہتر بنانے کے لئے دوسرے اداروں کی رہنمائی کرنی چاہئے۔ انہوں نے اپنی بات  کے اختتام میں طلباء پر زور دیا کہ وہ نزدیکی دیہات کو آتم نربھر بنائیں اور ان کی مصنوعات کو پوری دنیا میں پھیلائیں۔

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

بھارتی اولمپئنس کی حوصلہ افزائی کریں۔ #Cheers4India
Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
PM Modi responds to passenger from Bihar boarding flight for first time with his father from Darbhanga airport

Media Coverage

PM Modi responds to passenger from Bihar boarding flight for first time with his father from Darbhanga airport
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM greets people on Guru Purnima
July 24, 2021
Share
 
Comments

The Prime Minister, Shri Narendra Modi has greeted the people on the auspicious occasion of Guru Purnima.

In a tweet, the Prime Minister said;

"गुरु पूर्णिमा के पावन अवसर पर देशवासियों को हार्दिक बधाई।"