Share
 
Comments

نئی دلّی ، 31 اگست؍ وزیر اعظم جناب نریندر مودی یکم ستمبر ، 2018 کو نئی دلّی کے تال کٹورہ اسٹیڈیم میں انڈیا پوسٹ پیمنٹ بینک ( آئی پی پی بی ) کا افتتاح کریں گے ۔
آئی پی پی بی عام لوگوں کے لئے ایک قابل رسائی ، آسان اور معتبر بینک ہوگا جو مرکزی حکومت کی جانب سے مالیاتی شمولیت کے مقاصد کے حصول میں مدد گار ہوگا ۔ یہ محکمہ ڈاک کے ملک کے کونے کونے میں پھیلے ہوئے زائد از تین لاکھ پوسٹ مینوں اور گرامین ڈاک سیوکوں کے نیٹ ورک کے ذریعہ کام کرے گا ۔
آئی بی پی پی کاآغاز مرکزی حکومت کی جانب سے تیز رفتار سے ترقی کرتے ہوئے بھارعت کے فواید کو ملک کے دور دراز کے کونے تک پہنچانے کی کوششوں کے سلسلے میں ایک اہم سنگ میل ہو گا ۔
۔آئی پی پی بی کے آغاز کے دن سے ہی اس کی 650شاخیں اور 3250 رسائی مراکز ملک بھر میں پھیلے ہوں گے ۔ اس کے شانہ بشانہ ان شاخوں اور رسائی مراکز پر بھی افتتاحی تقاریب منعقد ہوں گی ۔
ملک کے تمام 1.55 لاکھ ڈاک گھروں کو 31 دسمبر ، 2018 تک آئی پی پی بی سے منسلک کر دیا جائے گا ۔
آئی پی پی بی مختلف اسکیموں مثلاً سیونگ اور کرنٹ اکاؤنٹ ، منی ٹرانسفر ، فوائد کی براہ راست منتقلی ، بل اور یوٹی لٹی پیمنٹ اور انٹرپرائز و مرچنٹ پیمنٹ وغیرہ کی خدمات فراہم کرے گا ۔ یہ اسکیمیں اور متعلقہ خدمات مختلف وسائل ( کاؤنٹر خدمت ، مائیکرو اے ٹی ایم ، موبائل بینکنگ ایپ ، ایس ایم ایس اور آئی وی آر ) کے ذریعے بینکوں کے اسٹیٹ آف دی آرٹ تکنالوجی پلیٹ فارم کا استعمال کرتے ہوئے فراہم کرائی جائیں گی ۔

'من کی بات ' کے لئے اپنے مشوروں سے نوازیں.
Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
Agri, processed food exports buck Covid trend, rise 22% in April-August

Media Coverage

Agri, processed food exports buck Covid trend, rise 22% in April-August
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
وزیراعظم کاامریکہ کے دورہ پر روانہ ہونے سے قبل بیان
September 22, 2021
Share
 
Comments

میں ریاست ہائے متحدہ امریکہ   یو ایس اے کے صد ر عزت مآب جوبائیڈن کی دعوت پر 22 تا 25 ستمبر 2021 امریکہ کا دورہ کروں گا۔

اپنے دورہ کے دوران میں صدربائیڈن کے ساتھ بھارت- امریکہ جامع عالمی اسٹراٹیجک ساجھیداری کا جائزہ لوں گا اور باہمی مفاد کے علاقائی اور عالمی امور پر تبادلہ  خیال کروں گا۔ میں دونوں ملکوں کے درمیان خاص طور پر سائنس اور ٹکنولوجی کے شعبے میں اشتراک کے لئے امکانات تلاش کرنے کی غرض سے نائب صدر کملا ہیرس کے ساتھ ملاقات کرنے کا بھی منتظر ہوں۔

میں ، صدر جوبائیڈن، آسٹریلیا کے وزیراعظم  اسکاٹ موریسن اور جاپان کے وزیراعظم یوشی ہیدے سوگا کے ہمراہ کوویڈ لیڈران کی اوّلین بنفس نفیس سربراہ کانفرنس میں شرکت کروں گا۔ اس سربراہ کانفرنس سے اس سال مارچ میں منعقدہ ورچول سربراہ کانفرنس کے نتائج کا جائزہ لینے اور بھارت۔ بحرالکاہل خطے کے لئے ہمارے مشترکہ ویژن پر مبنی مستقبل کے رابطوں کے لئے ترجیحات کی نشاندہی کرنے کا موقع فراہم ہوگا۔

میں آسٹریلیا کے وزیراعظم اسکاٹ موریسن اور جاپان کے وزیراعظم سوگا کے ساتھ بھی ملاقات کروں گا جس کے دوران ان کے متعلقہ ممالک کے ساتھ مستحکم دوطرفہ تعلقات اور علاقائی اور عالمی  امور پر ہمارے مفید تبادلوں کو جاری رکھنے کا جائزہ لیا جائے گا۔

میں اقوام متحدہ جنرل اسمبلی  سے خطاب کے ساتھ اپنے دورے کا اختتام کروں گا۔ اس خطاب میں کووڈ-19 عالمی وباد سمیت فوری کارروائی کا تقاضہ کرنے وا لی چنوتیوں، انسداد دہشت گردی کی ضرورت، آب و ہوا کی تبدیلی اور دیگر اہم امور پر توجہ مرکوز کی جائے گی۔

 امریکہ کے میرے اس دورہ کی بدولت امریکہ کے ساتھ جامع عالمی اسٹراٹیجک ساجھیداری کو مستحکم کرنے، ہمارے اسٹراٹیجک ساجھیداروں- جاپان اور آسٹریلیا کے ساتھ تعلقات کو تقویت بہم پہنچانے اور اہم عا لمی امور پر ہمارے تال میل اور اشتراک کو آگے لے جانے کا ایک موقع فراہم ہوگا۔.