Share
 
Comments
“ Vishwanath Dham is not just a grand building. This is a symbol of the Sanatan culture of India. It is a symbol of our spiritual soul. This is a symbol of India's antiquity, traditions, India's energy and dynamism.”
“Earlier the temple area was only 3000 square feet which has now been enlarged to about 5 lakh square feet. Now 50000 - 75000 devotees can visit the temple and temple premises”
“The dedication of Kashi Vishwanath Dham will give a decisive direction to India and will lead to a brighter future. This complex is a witness of our capability and our duty. With determination and concerted thought, nothing is impossible”
“For me God comes in the form of people, For me every person is a part of God. I ask three resolutions from the people for the country - cleanliness, creation and continuous efforts for self-reliant India”
“Long period of slavery broke our confidence in such a way that we lost faith in our own creation. Today, from this thousands-year-old Kashi, I call upon every countryman - create with full confidence, innovate, do it in an innovative way”
Felicitates and has lunch with the workers who worked on the construction Kashi Vishwanath Dham

ہر ہر مہادیو۔ ہر ہر مہادیو۔ نمہ پاروتی پتیے، ہر ہر مہادیو۔ ماں اناپورنا کو سلام۔ گنگا میا جی جے۔ اترپردیش کی گورنر محترمہ آنندی بین پٹیل جی، کرم یوگی جناب یوگی آدتیہ ناتھ جی، بی جے پی کے قومی صدر، ہم سب کے لیے رہ نما، جناب جے پی نڈا جی، نائب وزیر اعلی بھائی کیشو پرساد موریہ جی، دنیش شرما جی، مرکز میں وزرا کی کونسل کے میرے ساتھی مہندر ناتھ پانڈے جی، اترپردیش بی جے پی کے صدر سوتنتردیو سنگھ جی، یہاں کے وزیر جناب نیل کنٹھ تیواری جی، ملک کے گوشے گوشے سے آئے معزز سنتو اور میرے پیارے کاشی کے باشندو اور ملک بھر اور بیرون ملک سے اس موقع کا مشاہدہ کرنے والے تمام عقیدت مند! کاشی کے تمام بھائیوں کے ساتھ ہم نے بابا وشوناتھ کے قدموں میں سر جھکایا ہے۔ ماں اناپورنا کے پاؤں میں بار بار جھکے ہیں۔ اب میں بابا کے ساتھ آنے کے ساتھ ساتھ نگر کوتوال کال بھیروجی کا درشن کرکے آرہا ہوں اور اہل وطن کے لیے ان کی آشیرباد لا رہا ہوں۔ کاشی میں جو کچھ بھی خاص ہے، جو کچھ بھی نیا ہے، ان سے پہلے پوچھنا ضروری ہے۔ میں کاشی میں کوتوال کے قدموں میں بھی جھکتا ہوں۔ گنگا ترنگ رمنم جٹا کلاپم، گوری نترنتر وبھوشت وام-بھاگم نارائن پریا-مننگ-مداپ-ہارم، وارانسی پور-پتیم بھج وشوناتھم۔ ہم بابا وشوناتھ دربار سے، ملک اور دنیا کو سلام پیش کرتے ہیں، ان عقیدت مندوں کو جو اپنی جگہ سے اس مہایگیہ کا مشاہدہ کررہے ہیں۔ ہم سب کاشی کے لوگوں کے سامنے جھکتے ہیں جن کے تعاون سے شبھ گھڑی آئی ہے۔ دل باغ باغ ہے۔ ذہن ہم آہنگی کی حالت میں ہے۔ آپ سب لوگوں کو مبارکباد۔

ساتھیو،

ہمارے پرانوں میں کہا گیا ہے کہ جیسے ہی کوئی کاشی میں داخل ہوتا ہے، ہر پابندی سے آزاد ہوجاتا ہے۔ بھگوان وشویشور کا آشیرباد اندرونی روح میں شعور پیدا ہوتا ہے جیسے یہاں ایک مافوق الفطرت توانائی آتی ہے۔ اور آج کاشی کے لازوال شعور میں ایک مختلف ارتعاش ہے! آج آدی کاشی کی مافوق الفطرت شکل میں ایک مختلف رعنق ہے! آج ابدی بنارس کے عزائم ایک مختلف طاقت کا مظاہرہ کر رہے ہیں! ہم نے شاستروں میں سنا ہے کہ جب بھی کوئی نیک موقع آتا ہے، تمام دیوی شکتیاں تمام بھگوانئی طاقتیں بنارس میں بابا کے پاس موجود ہوتی ہیں۔ میں آج بابا کے دربار میں بھی کچھ ایسا ہی تجربہ کر رہا ہوں۔ ایسا لگتا ہے کہ ہماری پوری شعوری کائنات اس سے جڑی ہوئی ہے۔ بابا اپنی مایا کی توسیع کو جانتے ہیں، لیکن جہاں تک ہمارا انسانی وژن جاتا ہے، اس وقت پوری دنیا 'وشوناتھ دھام' کے اس مقدس انعقاد سے جڑی ہوئی ہے۔

ساتھیو،

آج بھگوان شیو کا پیارا دن ہے، پیر۔ آج وکرم سموت 2,880، مارگ شیرشا شکلاپکشا، دشمی تاریخ کی ایک نئی تاریخ کی تخلیق ہورہی ہے۔ اور ہم خوش قسمت ہیں کہ ہم اس تاریخ کے گواہ ہیں۔ آج وشوناتھ دھام ناقابل تصور لامحدود توانائی سے بھرا ہوا ہے۔ اس کی شان پھیل رہی ہے۔ اس کی خصوصیت آسمان کو چھو رہی ہے۔ یہاں غائب ہونے والے بہت سے قدیم مندر بھی بحال کر دیے گئے ہیں۔ بابا اپنے عقیدت مندوں کی صدیوں کی خدمت سے خوش ہو رہے ہیں، لہذا انھوں نے ہمیں اس دن کے لیے نوازا ہے۔ وشوناتھ دھام کا یہ پورا نیا کمپلیکس کوئی عظیم الشان عمارت ہی نہیں ہے، یہ ہمارے بھارت کی ابدی ثقافت کی علامت ہے! یہ ہماری روحانیت کی علامت ہے! یہ بھارت کی قدیم ترین روایات کی علامت ہے! بھارت کی توانائی، حرکیت کی! جب آپ یہاں آئیں گے تو آستھا ہی کے درشن نہیں ہوں گے بلکہ آپ یہاں اپنے ماضی کا فخر بھی محسوس کریں گے۔ ہم وشوناتھ دھام کمپلیکس میں دیکھ رہے ہیں کہ کس طرح قدیم و جدید ایک ساتھ آرہے ہیں، قدیم کے الہام کس طرح مستقبل کی رہ نمائی کر رہے ہیں۔

ساتھیو،

ماں گنگا، جو اترواہنی سے بابا کے پاؤں دھونے کاشی آتی ہیں، آج بہت خوش ہوں گی۔ اب جب ہم بھگوان وشوناتھ کے قدموں میں جھک جائیں گے، مراقبہ کریں گے تو گنگا ماں کو چھونے والی ہوا ہمیں آشیرباد اور برکت دے گی۔ اور جب ماں گنگا آزاد اور خوش ہوگی تو بابا کی توجہ میں ہم 'گنگا ترنگ کی کل کل' کے بھگوانئی تجربے کا احساس بھی کر سکیں گے۔ بابا وشوناتھ سب سے تعلق رکھتے ہیں، ماں گنگا سب کی ہے۔ اس کی برکتیں ہر ایک کے لیے ہیں۔ لیکن وقت اور حالات کی وجہ سے بابا اور ماں گنگا کی خدمت تک یہ رسائی مشکل ہو چکی تھی، ہر کوئی یہاں آنا چاہتا تھا، لیکن سڑکوں اور جگہ کی کمی تھی۔ بزرگوں کا، دویانگوں کا یہاں آنا بہت مشکل تھا۔ لیکن اب وشوناتھ دھام پروجیکٹ کی تکمیل کے ساتھ ہر ایک کے لیے یہاں پہنچنا آسان ہوگیا ہے۔ ہمارے دویانگ بھائی بہن، بوڑھے والدین کشتی کے ذریعے براہ راست جیٹی پر آئیں گے۔ جیٹی سے گھاٹ آنے کے لیے ایسکیلیٹر بھی نصب کیے گئے ہیں۔ وہاں سے آپ براہ راست مندر آ سکیں گے۔ تنگ راستوں کی وجہ سے درشن کے انتظار کے لیے گھنٹوں، جو پریشانی پیدا ہوئی تھی وہ بھی اب کم ہوجائے گی۔ اس سے پہلے مندر کا علاقہ جو صرف 3000 مربع فٹ میں تھا اب تقریبا 5 لاکھ مربع فٹ بن چکا ہے۔ اب 50، 60، 70 ہزار عقیدت مند مندر اور مندر کے احاطوں میں آسکتے ہیں۔ یعنی پہلے ماں گنگا کے درشن اشنان اور وہاں سے براہ راست وشوناتھ دھام۔ یہی تو ہے، ہر ہر مہادیو!

ساتھیو،

جب میں بنارس آیا تھا تو میں ایک یقین کے ساتھ آیا تھا۔ یقین آپ سے زیادہ بنارس کے لوگوں پر تھا۔ آج حساب کتاب کا وقت نہیں ہے، لیکن مجھے یاد ہے، کچھ لوگ ایسے بھی تھے جو بنارس کے لوگوں پر شک کرتے تھے۔ یہ کیسا ہوگا۔، یہ بالکل نہیں ہوگا۔، یہ یہاں ایسے ہی چلتا ہے! ایسے مودی جی تو آکے چلے گئے۔ مجھے حیرت ہوتی ہے کہ بنارس کے لیے اس طرح کے مفروضے بنائے گئے تھے! اس طرح کے دلائل دیے جا رہے تھے! یہ تعطل بنارس کا نہیں تھا! کاشی میں ایک ہی سرکار ہے۔ کچھ سیاست تھی، کچھ لوگوں کے ذاتی مفادات تھے، لہذا بنارس پر الزام لگایا جا رہا تھا۔ لیکن کاشی کاشی ہے! کاشی لافانی ہے۔ کاشی میں صرف ایک حکومت ہے جس کے ہاتھ میں ڈمرو ہے، ان کی حکومت ہے۔ کاشی کو کون روک سکتا ہے جہاں گنگا اپنی دھارا تبدیل کرکے بہتی ہے؟ کاشی کھنڈ میں بھگوان شیو نے خود کہا ہے، "ونا مم پرسادم وے،کاشی پرتی پدیتے"۔ یعنی میری خوشی کے بغیر کاشی میں کون آ سکتا ہے، کون اسے کھا سکتا ہے؟ مہادیو کی مرضی کے بغیر کوئی کاشی نہیں آتا اور نہ ہی اس کی مرضی کے بغیر یہاں کچھ ہوتا ہے۔ یہاں جو کچھ ہوتا ہے وہ مہادیو کی مرضی سے ہوتا ہے۔ جو کچھ بھی ہوا ہے، یہ مہادیو ہی ہیں جںھوں نے یہ کیا ہے۔ یہ وشوناتھ دھام، میں بابا آپ کے آشیرواد سے ہوا ہے۔ ان کی مرضی کے بغیر، ایک پتہ حرکت کر سکتا ہے؟ کوئی کتنا ہی بڑا ہو، وہ بلائیں گے تبھی کوئی آسکتا ہے۔

ساتھیو،

اگر کسی اور نے بابا کے لیے تعاون کیا ہے تو وہ بابا کے لوگوں کا ہے۔ بابا کے لوگ، ہمارے تمام کاشی کے باشندے، جو خود مہادیو کی شکلیں ہیں۔ جب بھی بابا کو اپنی طاقت کا تجربہ کرنا ہوتا ہے تو وہ اس کے لیے کاشی کے لوگوں کو ایک وسیلہ بناتے ہیں۔ پھر کاشی یہ کرتی ہے اور دنیا دیکھتی ہے۔ "ادم شوائے ادم نمم۔

بھائیو اور بہنو،

میں اپنے ہر محنت کش بھائی اور بہن کا بھی شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں جنھوں نے اس شاندار کمپلیکس کی تعمیر میں پسینہ بہایا ہے۔ کورونا کے اس نامساعد دور میں بھی انھوں نے کام کو یہاں رکنے نہیں دیا۔ مجھے صرف ان کام کرنے والے ساتھیوں سے ملنے، ان سے آشیرواد لینے کا موقع ملا۔ میں اپنے کاریگروں، ہمارے سول انجینئروں، انتظامیہ کے لوگوں، ان خاندانوں کو مبارکباد پیش کرتا ہوں جن کے یہاں گھر ہوئے کرتے تھے، اور ان سب کے ساتھ میں یوپی حکومت، ہمارے کرم یوگی وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ جی اور ان کی پوری ٹیم کو بھی مبارکباد پیش کرتا ہوں جنھوں نے کاشی وشوناتھ دھام پروجیکٹ کو مکمل کرنے کے لیے دن رات ایک کردیا۔

ساتھیو،

ہماری اس وارانسی نے قرنوں کو جیا ہے، تاریخ کو بگڑتے ہوئے دیکھا ہے، کتنے ادوار آئے اور چلے گئے! چاہے۔ کتنی ہی سلطنتیں اٹھ کر مٹی میں مل گئیں۔ بنارس باقی ہے، بنارس اپنا رس پھیلا رہا ہے۔ بابا کا دھام نہ صرف ابدی رہا ہے بلکہ اس کی خوب صورتی نے ہمیشہ دنیا کو حیران اور راغب کیا ہے۔ ہمارے پرانوں میں کاشی کی ایسی بھگوانئی شکل بیان کی گئی ہے جو قدرتی چمک سے گھری ہوئی ہے۔ اگر ہم گرنتھوں کو دیکھیں، شاستروں کو دیکھیں۔ مورخین نے بھی درختوں، جھیلوں، تالابوں سے گھری کاشی کی حیرت انگیز نوعیت کو بیان کیا ہے۔ لیکن وقت کبھی ایک جیسا نہیں رہتا۔ حملہ آوروں نے اس شہر پر حملے کیے، اسے تباہ کرنے کی کوشش کی! اورنگ زیب کے مظالم، اس کی دہشت گردی کی تاریخ گواہ ہے۔ جس نے تلوار سے تہذیب کو بدلنے کی کوشش کی، جس نے ثقافت کو عصبیت سے کچلنے کی کوشش کی! لیکن اس ملک کی مٹی باقی دنیا سے کچھ مختلف ہے۔ اگر اورنگ زیب یہاں آتا ہے تو شیواجی بھی کھڑا ہو جاتا ہے! اگر یہاں کوئی سالار مسعود ادھر آتا ہے تو راجا سہیلدیو جیسے بہادر جنگجو اسے ہمارے یکجہتی کی طاقت کا احساس دلاتے ہیں۔ اور برطانوی دور میں بھی وارین ہیسٹنگز کے ساتھ جو کچھ ہوا وہ کاشی کے لوگوں نے کیا، کاشی کے یہ لوگ وقتا فوقتا بولتے ہیں اور کاشی کی زبان پر نکلتا ہے۔ گھوڑے پر ہودا اور ہاتھی پر جین جان بھاگل وارین وارن ہیسٹنگ۔

ساتھیو،

آج وقت کے چکر کو دیکھیں، دہشت گردی کے وہ مترادفات تاریخ کے تاریک صفحات تک محدود ہو چکے ہیں! اور میری کاشی آگے بڑھ رہی ہے اور اپنے فخر کو دوبارہ نئی عظمت دے رہی ہے۔

ساتھیو،

کاشی کے بارے میں، میں جتنا زیادہ بولتا ہوں، اتنا ہی میں ڈوبتا جاتا ہوں، میں اتنا ہی جذباتی ہوتا جاتا ہوں۔ کاشی الفاظ میں بیان کیا جانے والا موضوع نہیں ہے، کاشی احساسات کی تخلیق ہے۔ کاشی وہ جگہ ہے جہاں جاگرتی زندگی ہے، کاشی وہ جگہ ہے جہاں موت بھی اچھی ہے! کاشی وہ جگہ ہے جہاں سچائی سنسکار ہے! کاشی وہ جگہ ہے جہاں محبت ہی روایت ہے۔

بھائیو اور بہنو،

ہمارے شاستروں میں کاشی کی تعریفیں بھی بیان کی گئی ہیں اور آخر میں کیا کہا گیا ہے، آخر میں 'نیتی نیتی' ہی کہا ہے۔ یعنی جتنا کہا اتنا ہی نہیں ہے! ہمارے شاستروں نے کہا ہے، "شیوم گیانم ایتی برو: شیوم شبدارتھ چنتکا۔ "۔ یعنی جو لوگ شیو کے لفظ پر غور کرتے ہیں وہ شیو کو علم کہتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ یہ کاشی شیومئی ہے، یہ کاشی روشن ہے۔ اور یہی وجہ ہے کہ علم، تحقیق، ریسرچ، یہ کاشی اور بھارت کے لیے فطری رہے ہیں۔ بھگوان شیو نے خود کہا ہے، "سروکشیترشو بھو پشٹھے، کاشی کشترم چمیں وپو"۔ یعنی کاشی زمین کے تمام حصوں میں میرا ہی جسم ہے۔ یہی وجہ ہے کہ یہاں کا پتھر، یہاں کا ہر پتھر شنکر ہے۔ اس لیے ہم اپنی کاشی کو زندہ سمجھتے ہیں اور اسی جذبے کے تحت ہمیں اپنے ملک کے ذرات میں ماں کا احساس ہوتا ہے۔ ہمارے شاستروں کا جملہ ہے کہ کاشی میں ہر جگہ ہر جاندار کے پاس بھگوان وشو کے تصورات ہوتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ کاشی زندگی کو براہ راست شیوتوا سے جوڑتی ہے۔ ہمارے رشیوں نے یہ بھی کہا ہے کہ کہ جب تم بھگوان وشویشر کی پناہ میں آتے ہو تو عقل بھی وسیع ہو جاتی ہے۔ بنارس وہ شہر ہے جہاں سے جگت گرو شنکرآچاریہ شریڈوم راجہ کے تقدس سے تحریک ملی تھی انھوں نے ملک کو متحد کرنے کا عزم کیا تھا۔ یہ وہ جگہ ہے جہاں گوسوامی تلسیداس جی نے بھگوان شیو سے متاثر ہو کر رام چرت مانس جیسی عظیم تخلیق کی۔

یہیں کی سرزمین سارناتھ میں بھگوان بدھ شعور کی دنیا لیے لیے ظاہر ہوئے۔ کبیر داس جیسی سماجی مصلح یہیں ہوئے۔ جب معاشرے کو جوڑنے کی ضرورت تھی تو یہ کاشی بھی بن گیا جو سنت روی داس جی کی آستھا کی طاقت کا مرکز تھا۔ یہ کاشی چار جین تیرتھنکروں کی سرزمین ہے جو عدم تشدد اور تپسیا کا مجسمہ ہے۔ راجہ ہریش چندر کی دیانت داری سے لے کر ولبھاچاریہ اور رامانند جی کے علم تک، چیتنیا مہاپربھو اور سمرتھ گرو رام داس سے لے کر سوامی وویکانند اور مدن موہن مالویہ تک، بہت سے رشیوں اور آچاریہ کو کاشی کی مقدس سرزمین سے منسوب کیا گیا ہے۔ چھترپتی شیواجی مہاراج کو یہیں سے تحریک ملی۔ رانی لکشمی بائی سے لے کر چندر شیکھر آزاد تک کاشی بہت سے جنگجوؤں کی کرم بھومی رہی ہے۔ بھرتیندو ہریش چندر، جے شنکر پرساد، منشی پریم چند، پنڈت روی شنکر اور بسم اللہ خان جیسی صلاحیتیں۔ اس یاد کو کس حد تک لے جائیں، کتنا کہنا ہے! پورا ذخیرہ ہے۔ جس طرح کاشی لامحدود ہے اسی طرح کاشی کا تعاون بھی لامحدود ہے۔ کاشی کی نشوونما میں ان لامحدود نیک ارواح کی توانائی شامل ہے۔ اس ترقی میں بھارت کی لامحدود روایات کی وراثت بھی شامل ہے۔ اس لیے ہر رائے رکھنے والے لوگ، زندگی کے ہر شعبے سے تعلق رکھنے والے لوگ یہاں آتے ہیں اور اس سے جڑا ہوا محسوس کرتے ہیں۔

ساتھیو،

کاشی نہ صرف ہمارے بھارت کی ثقافتی و روحانی راجدھانی ہے بلکہ بھارت کی روح کا زندہ اوتار بھی ہے۔ آپ دیکھیں، یوپی میں مشرق اور شمال کو ملانے والی یہ کاشی، یہاں وشوناتھ مندر کو مسمار کر دیا گیا تو مندر کی تزئین و آرائش ماتا اہلیا بائی ہولکر نے کی۔ جن کی جائے پیدائش مہاراشٹر تھی جن کی کرم بھومی اندور مہیشور اور بہت سے علاقوں میں تھی۔ آج میں اس موقع پر اس ماں اہیلیا بائی ہولکر کے سامنے سر جھکاتا ہوں۔ ڈھائی سو سال پہلے انھوں نے کاشی کے لیے بہت کچھ کیا تھا۔ اس کے بعد سے کاشی کے لیے اتنا کام اب کیا گیا ہے۔

ساتھیو،

پنجاب سے تعلق رکھنے والے مہاراجہ رنجیت سنگھ نے بابا وشوناتھ مندر کی رونق بڑھانے کے لیے سونے کے 23 منکے پیش کیے تھے، جس کے اوپر سونے کی تختی لگی ہوئی تھی۔ پنجاب سے گرو نانک دیو جی، بھی کاشی آئے تھے اور یہاں ستسنگ پیش کیا تھا۔ دیگر سکھ گروؤں کا بھی کاشی کے ساتھ خاص تعلق تھا۔ پنجاب کے لوگوں نے کاشی کی تعمیر نو کے لیے دل کھول کر عطیہ دیا تھا۔ مشرق میں بنگال کی رانی بھوانی نے بنارس کی ترقی کے لیے سب اپنا کچھ پیش کردیا۔ میسور اور دیگر جنوبی بھارتی راجاؤں نے بھی بنارس کے لیے بے حد تعاون کیا ہے۔ یہ ایک ایسا شہر ہے جہاں آپ کو شمالی، جنوبی، نیپالی تقریبا ہر قسم کے ہر طرز کے مندر نظر آئیں گے۔ وشوناتھ مندر اس روحانی شعور کا مرکز رہا ہے اور اب یہ وشوناتھ دھام کمپلیکس اس شعور کو اپنی عظیم شکل میں مزید توانائی دے گا۔

ساتھیو،

ہم سب جنوبی بھارت کے لوگوں کی کاشی سے عقیدت، جنوبی بھارت کے کاشی اور کاشی کے جنوب پر اثرات کو اچھی طرح جانتے ہیں۔ ایک کتاب میں لکھا ہے، کنڑا زبان میں کہا گیا ہے، کہ جب جگت گرو مادھواچاریہ جی اپنے شاگردوں کے ساتھ جا رہے تھے تو انھوں نے کہا کہ کاشی کے وشوناتھ پاپ نوارن کرتے ہیں۔ انھوں نے اپنے شاگردوں کو کاشی کی شان اور وقار کے بارے میں بھی بتایا۔

ساتھیو،

صدیوں پہلے کا یہ احساس مسلسل جاری ہے۔ مہاکاوی سبرامنیا بھارتی، جن کے کاشی میں قیام نے زندگی کا رخ بدل دیا، نے ایک جگہ لکھا ہے، کہ کاشی کے سنت شاعر کی تقریر کو کانچی پور میں سننے کا ذریعہ بنائیں گے" کاشی سے نکلا ہر پیغام اتنا وسیع ہوتا ہے کہ اس سے ملک کی سمت بدل جاتی ہے۔ ویسے میں ایک اور بات کہوں گا۔ مجھے ایک پرانا تجربہ ہے۔ ہمارے گھاٹوں پر رہنے والے بہت سے بنارسی ساتھیوں نے کشتی چلاتے ہوئے تامل، کنڑا، تیلگو، ملیالم اس قدر روانی سے بولتے ہیں کہ مجھے لگا کہ کہیں میں کیرالہ، تامل ناڈو یا کرناٹک میں تو نہیں آیا ہوا ہوں! اتنی اچھی زبان بولتے ہیں!

ساتھیو،

ہزاروں برسوں سے بھارت کی توانائی محفوظ رہی ہے۔ جب ہم مختلف خطوں، علاقوں کے سوتر سے جڑتے ہیں تو بھارت 'ایک بھارت، شریشٹھ بھارت' کے طور پر بیدار ہوتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ہمیں 'سوراشٹر سومناتھم' سے لے کر 'ایودھیا متھرا مایا، کاشی کانچی اونتیکا' تک ہر روز یاد رکھنا سکھایا جاتا ہے۔ ہمارے پاس دوادش جیوترلنگوں کی یاد کا پھل ہے: اس میں کوئی شک نہیں کہ سومناتھ سے وشوناتھ تک دوادش جیوترلنگوں کو یاد کرنا ہر عزم کو کام یاب کرتا ہے۔ یہ شک اس لیے نہیں ہے کہ اس یاد کے بہانے پورے بھارت کی روح متحد ہے۔ اور جب بھارت کی روح کی بات آتی ہے تو شک کہاں رہ جاتا ہے، ناممکن کیا رہتا ہے؟

ساتھیو،

یہ بھی محض اتفاق نہیں ہے کہ جب بھی کاشی نے کوئی موڑ لیا ہے، کچھ نیا کیا ہے تو ملک کی قسمت بدل گئی۔ کاشی میں ترقی کا مہایگیہ جو گذشتہ سات برسوں سے جاری ہے، آج ایک نئی توانائی حاصل کر رہا ہے۔ کاشی وشوناتھ دھام کو قوم کے نام وقف کرنا، بھارت کو ایک فیصلہ کن سمت دے گا اور اس کے روشن مستقبل کا باعث بنے گا۔ یہ کمپلیکس ہماری طاقت، ہمارے فرض کا گواہ ہے۔ اگر آپ اس کے بارے میں سوچتے ہیں، اگر آپ پر عزم ہیں، تو کچھ بھی ناممکن نہیں ہے۔ ہر بھارتی کے بازوؤں میں وہ طاقت ہوتی ہے جو ناقابل تصور کو سچ بناتی ہے۔ ہم ریاضت کرنا جانتے ہیں، ہم تپسیا کرنا جانتے ہیں، ہم ملک کے لیے دن رات کھپنا جانتے ہیں۔ چیلنج کتنا ہی بڑا کیوں نہ ہو، ہم بھارتی مل کر اسے شکست دے سکتے ہیں۔ تخریب کاروں کی طاقت بھارت کی طاقت اور بھارت کی عقیدت سے زیادہ کبھی نہیں ہوسکتی۔ یاد رکھیں، دنیا ہمیں دیکھے گی جیسا کہ ہم خود کو دیکھتے ہیں۔ مجھے خوشی ہے کہ آج کا بھارت اب اس کمتری کے احساس سے نکل رہا ہے جس سے صدیوں کی غلامی نے ہمیں متاثر کیا تھا۔ آج کا بھارت نہ صرف سومناتھ مندر کی حسن کاری کر رہا ہے بلکہ سمندر میں ہزاروں کلومیٹر کا آپرِکل فائبر بھی بچھا رہا ہے۔ آج کا بھارت نہ صرف بابا کیدارناتھ مندر کی تزئین و آرائش کر رہا ہے بلکہ بھارتیوں کو اپنے طور پر خلا میں بھیجنے کی تیاری بھی کر رہا ہے۔ آج کا بھارت نہ صرف ایودھیا میں بھگوان شری رام کا مندر تعمیر کر رہا ہے بلکہ ملک کے ہر ضلع میں میڈیکل کالج بھی کھول رہا ہے۔ آج کا بھارت نہ صرف بابا وشوناتھ دھام کو شاندار انداز میں دیکھ رہا ہے بلکہ غریبوں کے لیے کروڑوں پکے گھر بھی بنا رہا ہے۔

ساتھیو،

نئے بھارت کو اپنی ثقافت پر فخر ہے اور وہ اپنی صلاحیتوں پر اتنا ہی اعتماد رکھتا ہے۔ نئے بھارت میں ورثہ بھی ہے اور ترقی بھی ہے۔ آپ دیکھیں، رام جانکی روٹ کی تعمیر کی جارہی ہے تاکہ ایودھیا سے جنک پور تک سفر کرنا آسان ہو سکے۔ آج بھگوان رام سے وابستہ مقامات کو رامائن سرکٹ سے جوڑا جا رہا ہے اور رامائن ٹرین چلائی جا رہی ہے۔ بدھ سرکٹ پر کام کیا جارہا ہے اور کوشی نگر میں بین الاقوامی ہوائی اڈے کا قیام بھی عمل میں آیا ہے۔ جہاں کرتار پور صاحب راہداری تعمیر کی گئی ہے وہیں ہیم کنڈ صاحب جی کے درشن کو آسان بنانے کے لیے روپ وے بھی تعمیر کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ اتراکھنڈ میں چاردھام روڈ مہا پروجیکٹ پر بھی تیزی سے کام جاری ہے۔ بھگوان وٹھل کے کروڑوں عقیدت مندوں کے آشیرواد سے سری سنت گیانیشور مہاراج پالکھی مارگ اور سنت تکارام مہاراج پالکھی مارگ پر بھی چند ہفتے قبل کام شروع ہوا ہے۔

ساتھیو،

کیرالہ میں گرووایور مندر ہو یا تمل ناڈو میں کانچی پورم ویلنکنی، تلنگانہ میں جوگولمبا دیوی مندر ہو یا بنگال میں بیلور مٹھ، گجرات میں دوارکا جی ہو یا اروناچل پردیش میں پرشورام کنڈ، ملک کی مختلف ریاستوں میں ہمارے عقیدے اور ثقافت سے وابستہ ایسے بہت سے مقدس مقامات پر پوری عقیدت کے ساتھ کام کیا گیا ہے، کام چل رہا ہے۔

بھائیو اور بہنو،

آج کا بھارت اپنے کھوئے ہوئے ورثے کو دوبارہ سمیٹ رہا ہے۔ یہاں کاشی میں ماں اناپورنا خود رہتی ہیں۔ مجھے خوشی ہے کہ ایک صدی کے انتظار کے بعد کاشی سے چوری ہونے والی ماں اناپورنا کا مجسمہ سو سال بعد اب کاشی میں دوبارہ نصب کیا گیا ہے۔ ماں اناپورنا کے فضل سے کورونا کے مشکل وقت میں ملک نے اپنے کھانے پینے کے ذخیرے کھول دیے، اس بات کو یقینی بنایا کہ کوئی غریب بھوکا نہ سوئے، مفت راشن کا انتظام کیا۔

ساتھیو،

جب بھی ہم بھگوان کے درشن کرتے ہیں، مندروں میں آتے ہیں، کبھی بھگوان سے کچھ مانگتے ہیں، ہم کچھ عزم بھی کرتے ہیں۔ میرے لیے عوام بھگوان کی شکل ہے۔ میرے لیے ہر بھارتی بھگوان کا حصہ ہے۔ جس طرح یہ سب لوگ بھگوان کے پاس جاتے ہیں اور آپ سے کچھ مانگتے ہیں، جب میں آپ کو بھگوان سمجھتا ہوں تو عوام کو بھگوان کی شکل مانتا ہوں، میں آج آپ سے کچھ مانگنا چاہتا ہوں، میں آپ سے کچھ مانگتا ہوں۔ میں اپنے لیے نہیں بلکہ اپنے ملک کے لیے تین عہد چاہتا ہوں، مت بھولیں، میں تین عہد چاہتا ہوں اور بابا کی مقدس سرزمین سے مانگ رہا ہوں- پہلا عہد صفائی، دوسرا تخلیق اور تیسرا خود کفیل بھارت کے لیے مسلسل کوششیں۔ صفائی طرز زندگی ہے، صفائی نظم و ضبط ہے۔ یہ اپنے ساتھ بہت بڑی حد تک فرائض لاتی ہے۔ بھارت چاہے کتنا ہی ترقی کرے، اگر وہ صاف ستھرا نہیں ہوگا، ہمارے لیے آگے بڑھنا مشکل ہوگا۔ ہم نے اس سمت میں بہت کچھ کیا ہے لیکن ہمیں اپنی کوششوں میں مزید اضافہ کرنا ہوگا۔ فرض شناسی سے بھری آپ کی ایک چھوٹی سی کوشش ملک کی بہت مدد کرے گی۔ یہاں بنارس میں بھی، شہر میں، گھاٹوں پر، صفائی ستھرائی پر توجہ دینی ہوگی۔ ہمیں صفائی ستھرائی کو ایک نئی سطح پر لے جانا ہے۔ اتراکھنڈ سے بنگال تک گنگا جی کی صفائی ستھرائی کے لیے بہت سی کوششیں کی جارہی ہیں۔ ہمیں چوکس رہنا ہوگا اور اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کام کرنا ہوگا کہ نمامی گنگے مہم کام یاب رہے۔

ساتھیو،

غلامی کے طویل دور نے ہم بھارتیوں کے اعتماد کو توڑ دیا تاکہ ہم اپنی تخلیقیت پر اعتماد کھو بیٹھیں۔ آج اس ہزاروں سال پرانی کاشی سے میں ہر ملک کے باشندے سے مطالبہ کرتا ہوں کہ وہ پورے اعتماد کے ساتھ تخلیق کرے، جدت لائے، اسے اختراعی انداز میں کرے۔ جب بھارت کے نوجوان کورونا کے اس مشکل وقت میں سینکڑوں اسٹارٹ اپ بنا سکتے ہیں، اتنے چیلنجوں کے درمیان، وہ 40 سے زیادہ یونیکورن بنا سکتے ہیں، تو وہ یہ ظاہر کرتے ہیں کہ وہ کچھ بھی کر سکتے ہیں۔ آپ سوچیے ایک یونیکورن، اسٹارٹ اپ کی مالیت سات ہزار کروڑ روپے سے زیادہ ہے اور یہ پچھلے ڈیڑھ سال میں اتنے کم وقت میں۔ یہ بے مثال ہے۔ ہر بھارتی، جہاں بھی ہو، وہ کسی بھی شعبے میں، ملک کے لیے کچھ نیا کرنے کی کوشش کرے گا، تب ہی نئے راستے ملیں گے، نئے راستے بنیں گے اور ہر نئی منزل پاکر رہیں گے۔

بھائیو اور بہنو،

آج ہمارا تیسرا عہد یہ ہے کہ ہم خود کفیل بھارت کے حصول کے لیے اپنی کوششیں تیز کریں۔ یہ آزادی کا امرت کال ہے۔ ہم آزادی کے 75 ویں سال میں ہیں۔ جب بھارت آزادی کے 100 سال منارہا ہے تو ہمیں اب اس پر کام کرنا ہوگا کہ بھارت کیسا ہوگا۔ اور اس کے لیے ضروری ہے کہ ہم خود کفیل ہوں۔ جب ہم ملک میں بنائے گئے کاموں پر فخر کریں گے، جب ہم مقامی لوگوں کے لیے آواز اٹھائیں گے، جب ہم ایسی چیزیں خریدیں گے جو ایک بھارتی بنانے کے لیے پسینہ بہا رہا ہے تو ہم اس مہم میں مدد کریں گے۔ امرت کال میں بھارت 130 کروڑ ہم وطنوں کی کوششوں سے آگے بڑھ رہا ہے۔ مہادیو کے فضل سے ہر بھارتی کی کوششوں سے ہم خود کفیل بھارت کا خواب پورا ہوتے دیکھیں گے۔ اس یقین کے ساتھ میں ایک بار پھر بابا وشوناتھ، ماں اناپورنا، کاشی کوتوال اور تمام دیوتاؤں کے قدموں میں جھکتا ہوں۔ ملک کے مختلف گوشوں سے اتنی بڑی تعداد میں قابل احترام سنت اور مہاتما آئے ہیں، یہ ہمارے لیے، میرے جیسے عام شہری کے لیے خوش قسمتی کے لمحات ہیں۔ میں تمام سنتوں، تمام معزز مہاتماؤں کے سامنے سر جھکاتا ہوں اور دل کی گہرائیوں سے انھیں سلام پیش کرتا ہوں۔ آج میں کاشی کے تمام لوگوں، ہمارے ملک کے تمام عوام کو مبارکباد پیش کرتا ہوں اور نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔ ہر ہر مہادیو۔

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے، 76ویں یوم آزادی کے موقع پر، وزیراعظم کے خطاب کا متن
ASI sites lit up as India assumes G20 presidency

Media Coverage

ASI sites lit up as India assumes G20 presidency
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر،2 دسمبر 2022
December 02, 2022
Share
 
Comments

Citizens Show Gratitude For PM Modi’s Policies That Have Led to Exponential Growth Across Diverse Sectors