پی ایم سواندھی یوجنا کے تحت ایک لاکھ سے زائد مستفیدین کے منظورشدہ قرضوں کی منتقلی کا آغاز کیا
ممبئی میٹرو لائنوں 2 اے اور 7 کو قوم کے نام وقف کیا
چھترپتی شیواجی مہاراج ٹرمنس کی تعمیر نو اور گندے پانی کی صفائی سے متعلق 7 سیوریج ٹریٹمنٹ پلانٹس کا سنگ بنیاد رکھا
20 ہندو ہردے سمراٹ بالاصاحب ٹھاکرے آپلا دواخانے کا افتتاح کیا
ممبئی میں تقریباً 400 کلومیٹر طویل سڑکوں کو کنکریٹ کے ذریعہ مضبوط کرنے سے متعلق پروجیکٹ کا آغاز کیا
’’دنیا بھارت کے عزم پر اعتماد جتا رہی ہے‘‘
’’چھترپتی شیواجی مہاراج سے ترغیب حاصل کرتے ہوئے، دوہرے انجن والی حکومت میں ’سورج‘ اور ’سواراج‘ کا جذبہ مضبوطی سے عیاں ہے‘‘
’’بھارت ایک مستقبل پر مرتکز سوچ اور جدید نقطہ نظر کے ساتھ اپنے طبعی اور سماجی بنیادی ڈھانچہ کو اہمیت دے رہا ہے‘‘
’’آج کی ضرورتوں اور مستقبل کے امکانات دونوں پر کام جاری ہے‘‘
’’امرت کال کے دوران، مہاراشٹر کے متعدد شہر بھارت کی نمو میں اہم کردار ادا کریں گے‘‘
&l’’شہروں کی ترقی کے لیے اہلیت اور سیاسی قوت ارادی کی کوئی کمی نہیں ہے‘‘
’’ممبئی کی ترقی کے لیے مرکز، ریاست ا
وزیر اعظم نے کہا، ’’آج بھارت غیر معمولی خود اعتمادی سے لبریز ہے۔ چھترپتی شیواجی مہاراج سے ترغیب حاصل کرتے ہوئے، دوہرے انجن والی حکومت میں ’سورج‘ اور ’سواراج‘ کا جذبہ مضبوطی کے ساتھ عیاں ہے۔‘‘
انہوں نے مزید کہا کہ، ’’اس سے آج کے بھارت کی عہد بندگی کا اظہار ہوتا ہے ، اور ایک وِکست بھارت (ترقی یافتہ بھارت) کے تصور کی عکاسی ہوتی۔‘‘

 بھارت ماتا کی جے۔

بھارت ماتا کی جے۔

میرے ممبئی کے تمام بھائیو اور بہنو،

نمسکار!

مہاراشٹر کے گورنر  جناب  بھگت سنگھ کوشیاری، وزیر اعلیٰ جناب  ایکناتھ شندے، نائب وزیر اعلیٰ جناب دیویندر فڑنویس، مرکزی کابینہ میں میرے ساتھی، اسمبلی کے اسپیکر جناب  راہول نارویکر، حکومت مہاراشٹر کے دیگر تمام وزراء، اراکین پارلیمنٹ اور ایم ایل اے۔ اور بڑی تعداد میں یہاں تشریف لانے والے میرے پیارے بہنو اور بھائیو!

آج ممبئی کی ترقی سے متعلق 40,000 کروڑ روپے کے پروجیکٹوں کو یہاں  وقف کیا گیا اور  ان کاسنگ بنیاد رکھا گیا۔ ممبئی کے لیے انتہائی اہم میٹرو ہو، چھترپتی شیواجی ٹرمینس کو جدید بنانے کا کام ہو، سڑکوں کو بہتر بنانے کا ایک بہت بڑا منصوبہ ہو، اور بالا صاحب ٹھاکرے کے نام پر اسپتال کا افتتاح ہو، یہ ممبئی شہر کو بہتر بنانے میں بڑا کردار ادا کریں گے۔کچھ عرصہ پہلے، ممبئی کے گلی کوچوں میں پی ایم سواندھی یوجنا کے تحت ان کے بینک کھاتوں میں پیسے بھی مل چکے ہیں۔ میں ایسے تمام مستفید ہونے والوں اور ہر ممبئی والے کو مبارکباد دیتا ہوں۔

 

بھائیو اور بہنو،

آزادی کے بعد پہلی بار، آج ہندوستان بڑے خواب دیکھنے اور ان خوابوں کو پورا کرنے کی ہمت کر رہا ہے۔ ورنہ ہمارے ملک میں پچھلی صدی کا ایک طویل عرصہ صرف غربت پر بحث کرنے، دنیا سے مدد مانگنے اور اپنی من مانیاں کرنے میں گزر گیا۔ یہ بھی آزاد ہندوستان کی تاریخ میں پہلی بار ہو رہا ہے، جب دنیا کو بھی ہندوستان کی بڑی قراردادوں پر بھروسہ ہے۔ اس لیے آزادی کے سنہری دور میں ایک ترقی یافتہ ہندوستان کی تعمیر کے لیے جس قدر ہندوستانیوں میں بے تابی دیکھی جارہی ہے، اتنی ہی امید دنیا میں بھی دکھائی دے رہی ہے۔ اور اب شندے جی اپنا ڈیووس کا تجربہ بیان کر رہے تھے۔ اس تجربے کو ہر جگہ پذیرائی مل رہی ہے۔ ہندوستان کے بارے میں دنیا میں بہت زیادہ مثبت خیالات کااظہار کیاجارہا ہے کیونکہ آج ہر کوئی یہ محسوس کر رہا ہے کہ ہندوستان اپنی صلاحیت کو بہت اچھے طریقے سے استعمال کر رہا ہے۔ آج ہر کوئی محسوس کر رہا ہے کہ ہندوستان وہ کر رہا ہے جو تیز رفتار ترقی اور خوشحالی کے لیے بہت ضروری ہے۔ آج ہندوستان بے مثال اعتماد سے بھرا ہوا ہے۔ چھترپتی شیواجی مہاراج کی تحریک سے،  اپنی حکومت  اور بہتر حکومت کا سچا جذبہ  آج کے ہندوستان میں،یہاں تک کہ ڈبل انجن والی حکومت میں بھی مضبوطی سے ظاہر ہے۔

بھائیو اور بہنو،

ہم نے وہ وقت دیکھے ہیں جب غریبوں کی فلاح و بہبود کا پیسہ گھوٹالوں میں ضائع ہو گیا تھا۔ ٹیکس دہندگان سے وصول کیے گئے ٹیکس کے حوالے سے حساسیت کے آثار نظر نہیں آئے۔ اس کا نقصان کروڑوں ہم وطنوں کو اٹھانا پڑا۔ گزشتہ 8 سالوں میں، ہم نے اس نقطہ نظر کو تبدیل کیا ہے. آج ہندوستان  ترقی پسندانہ  طرز فکر سوچ اور جدید نقطہ نظر کے ساتھ اپنےمادی اور سماجی بنیادی ڈھانچے پر خرچ کر رہا ہے۔ آج ملک میں مکانات، بیت الخلاء، بجلی، پانی، کھانا پکانے کی گیس، مفت علاج، میڈیکل کالج، ایمس، آئی آئی ٹی، آئی آئی ایم جیسی سہولیات تیز رفتاری سے تعمیر ہو رہی ہیں، وہیں دوسری طرف جدید رابطوں پر بھی یکساں زور دیا جا رہا ہے۔جس طرح کے جدید انفراسٹرکچر کا تصور کبھی کیا جاتا تھا، آج ملک میں ایسا انفراسٹرکچر بنایا جا رہا ہے۔ یعنی آج ملک کی ضروریات اور مستقبل میں خوشحالی کے امکانات دونوں پر بیک وقت کام جاری ہے۔ دنیا کی بڑی معیشتیں آج مشکل میں ہیں، لیکن ایسے مشکل وقت میں بھی ہندوستان 80 کروڑ سے زیادہ ہم وطنوں کو مفت راشن دے کر کبھی کسی کے گھر کا چولہا نہیں بجھنے دیتا ہے۔ ایسے ماحول میں بھی ہندوستان انفراسٹرکچر کی تعمیر میں بے مثال سرمایہ کاری کر رہا ہے۔ یہ آج کے ہندوستان کے عزم کو ظاہر کرتا ہے، جو ایک ترقی یافتہ ہندوستان کے لیے ہمارے عزم کا عکاس ہے۔

 

بھائیو اور بہنو،

ایک ترقی یافتہ ہندوستان کی تعمیر میں ہمارے شہروں کا کردار سب سے اہم ہے۔ اس میں بھی اگر ہم مہاراشٹر کی بات کریں تو آنے والے 25 سالوں میں ریاست کے کئی شہر ہندوستان کی ترقی کو تیز کرنے والے ہیں۔ اس لیے اس ڈبل انجن کے ساتھ ممبئی کو مستقبل کے لیے تیار کرنا حکومت کی ترجیح ہے۔ ہمارا یہ عزم ممبئی میں میٹرو نیٹ ورک کی توسیع سے بھی ظاہر ہوتا ہے۔ 2014 تک ممبئی میں میٹرو صرف 10-11 کلومیٹر چلتی تھی۔ جیسے ہی آپ نے ڈبل انجن والی حکومت بنائی، اس میں تیزی سے توسیع ہوئی ہے۔ کچھ وقت کے لیے کام کی رفتار کم ہوئی، لیکن شندے جی اور دیویندر جی کی جوڑی کے آنے سے، اب کام میں پھر تیزی آنے لگی ہے۔ ہم ممبئی میں 300 کلومیٹر میٹرو نیٹ ورک کی طرف تیز رفتاری سے آگے بڑھ رہے ہیں۔

ساتھیو،

آج پورے ملک میں ریلوے کو جدید بنانے کے لیے مشن موڈ پر کام جاری ہے۔ ممبئی لوکل اور مہاراشٹر کے ریل رابطے کو بھی اس سے فائدہ ہو رہا ہے۔ ڈبل انجن والی حکومت عام آدمی کو وہی جدید سہولتیں، وہی صفائی، وہی تیز رفتاری فراہم کرنا چاہتی ہے، جو کبھی صرف وسائل والے لوگوں کو میسر تھا۔ یہی وجہ ہے کہ آج ریلوے سٹیشن بھی ہوائی اڈوں کی طرح تیار ہو رہے ہیں۔ اب چھترپتی شیواجی مہاراج ٹرمینس، جو ملک کے سب سے پرانے ریلوے اسٹیشنوں میں سے ایک ہے، بھی نئے سرے سے تیار ہونے والا ہے۔ ہمارا یہ ورثہ اب 21ویں صدی کے ہندوستان کا  افتخار بننے جا رہا ہے۔ لوکل اور لمبی دوری کی ٹرینوں کے لیے الگ الگ سہولیات ہوں گی۔ اس کا مقصد عام مسافروں کو بہتر سہولیات فراہم کرنا ہے، تاکہ کام کے لیے آنے جانے میں آسانی ہو۔ یہ اسٹیشن صرف ریلوے سہولیات تک محدود نہیں رہے گا بلکہ یہ  کثیر ماڈلز والی  رابطہ کاری کا مرکز بھی ہوگا۔ یعنی بس ہو، میٹرو ہو، ٹیکسی ہو، آٹو ہو، ٹرانسپورٹ کے تمام ذرائع یہاں ایک ہی چھت کے نیچے ایک دوسرے سے جڑے ہوں گے۔ اس سے مسافروں کو بغیر کسی رکاوٹ کے رابطے کی سہولت ملے گی۔ یہ ملٹی موڈل کنیکٹیویٹی ہے، جسے ہم ملک کے ہر شہر میں تیار کرنے جا رہے ہیں۔

 

ساتھیو،

جدید  شکل اختیار کرتی ہوئی ممبئی لوکل، میٹرو کا وسیع نیٹ ورک، دوسرے شہروں جیسے وندے بھارت اور بلٹ ٹرین کے ساتھ تیز جدید رابطہ، ممبئی آنے والے چند سالوں میں تبدیل ہونے والا ہے۔ غریب مزدوروں سے لے کر ملازمین، دکانداروں اور بڑے کاروبار کو سنبھالنے والوں تک، سب کے لیے یہاں رہنا آسان ہوگا۔ یہاں تک کہ قریبی اضلاع سے ممبئی جانا آسان ہو جائے گا۔ کوسٹل روڈ ہو، انڈو مل میموریل ہو، نوی ممبئی ہوائی اڈہ ہو، ٹرانس ہاربر لنک ہو، اس طرح کے کئی پروجیکٹ ممبئی کو نئی طاقت دے رہے ہیں۔ دھاراوی کی تعمیر نو، پرانی چاول کی ترقی سب کچھ اب ٹریک پر آ رہا ہے۔ اور میں اس کے لیے شندے جی اور دیویندر جی کو مبارکباد دیتا ہوں۔ ممبئی کی سڑکوں کو بہتر بنانے کے لیے جو کام آج بڑے پیمانے پر شروع ہوا ہے اس سے بھی ڈبل انجن والی حکومت کا عزم ظاہر ہوتا ہے۔

بھائیو اور بہنو،

آج ہم ملک کے شہروں کی مکمل کایا پلٹ پر کام کر رہے ہیں۔ آلودگی سے لے کر صفائی تک شہروں کے ہر مسئلے کا حل تلاش کیا جا رہا ہے۔ اسی لیے ہم برقی نقل و حرکت پر بہت زیادہ زور دے رہے ہیں، ہم اس کے لیے بنیادی ڈھانچہ بنا رہے ہیں۔ ہم بائیو فیول پر مبنی ٹرانسپورٹ سسٹم کو تیزی سے لانا چاہتے ہیں۔ ملک میں ہائیڈروجن ایندھن پر مشتمل ٹرانسپورٹ سسٹم کے لیے مشن موڈ پر انجام دیا جانے والا  کام بھی جاری ہے۔ یہی نہیں بلکہ ہم اپنے شہروں میں کچرے اور کچرے کے مسئلے کو نئی ٹیکنالوجی کی مدد سے دور کرنے کے لیے ایک کے بعد ایک  قدم اٹھا رہے ہیں۔ ملک میں  کچرے کو دولت میں تبدیل کرنے کی  ایک بڑی مہم جاری ہے۔ واٹر ٹریٹمنٹ پلانٹ لگائے جا رہے ہیں تاکہ گندا پانی دریاؤں میں داخل نہ ہو۔

 

 

ساتھیو،

شہروں کی ترقی کے لیے ملک میں طاقت اور سیاسی عزم کی کوئی کمی نہیں۔ لیکن ہمیں ایک اور بات سمجھنی ہوگی۔ ممبئی جیسے شہر میں پراجیکٹس کو تیزی سے شروع نہیں کیا جا سکتا جب تک کہ مقامی ادارہ بھی تیز رفتار ترقی کو ترجیح نہ دے۔ جب ریاست میں ترقی کے لیے وقف حکومت ہو، جب شہروں میں گڈ گورننس کے لیے وقف حکومت ہو، تب ہی یہ کام تیزی سے عملی طور پر  انجام دیئے جاسکتے ہیں۔ اسی لیے ممبئی کی ترقی میں بلدیاتی اداروں کا کردار بہت بڑا ہے۔ ممبئی کی ترقی کے لیے بجٹ کی کوئی کمی نہیں ہے۔ صرف ممبئی کے حصے میں آنے والا  پیسہ صحیح جگہ پر خرچ ہونا چاہیے۔ اگر یہ پیسہ بدعنوانی میں استعمال کیاجائے گا، پیسہ بینکوں کی تجوریوں میں بند رہے گا، ترقی کے کاموں کو روکنے کا رجحان ہوگا، تو ممبئی کا مستقبل کیسے روشن ہوگا؟ ممبئی کے لوگ، یہاں کے عام لوگ بھگتتے رہتے ہیں،یہ شہر ترقی کے لیے ترستا ہے، یہ صورت حال 21ویں صدی کے ہندوستان میں کبھی قابل قبول نہیں ہو سکتی اور نہ ہی شیواجی مہاراج کے مہاراشٹر میں ہو سکتی ہے۔ ممبئی کے لوگوں کی ہر پریشانی کو سمجھتے ہوئے میں اس معاملے کو بڑی ذمہ داری کے ساتھ رکھ رہا ہوں۔ بی جے پی کی حکومت ہو یا این ڈی اے کی حکومت، وہ کبھی بھی ترقی کے آگے سیاست نہیں آنے دیتی۔ ترقی ہماری سب سے بڑی ترجیح ہے۔ بی جے پی اور این ڈی اے حکومتوں نے اپنے سیاسی مفادات کے حصول کے لیے ترقیاتی کاموں کو کبھی روکنے نہیں دیا۔ لیکن ہم نے ماضی میں ممبئی میں بارہا ایسا ہوتا دیکھا ہے۔ پی ایم سواندھی یوجنا بھی اس کی ایک مثال ہے۔ پہلی بار، ہم نے اپنے شہروں میں پھیری والوں ،  ریہڑی  پٹری والوں  ،  ٹھیلے والوں  کے لیے ایک اسکیم شروع کی، جو شہر کی معیشت کا ایک اہم حصہ ہیں۔ ہم نے ان چھوٹے تاجروں کے لیے بینکوں سے سستے اور بغیر ضمانت کے قرضوں کا بندوبست کیا۔ ملک بھر میں تقریباً 35 لاکھ اسٹریٹ وینڈرز کو اس کا فائدہ ملا ہے۔ اس کے تحت مہاراشٹر میں بھی 5 لاکھ ساتھیوں کو قرضوں کی منظوری دی گئی ہے۔ آج بھی ایک لاکھ سے زیادہ ساتھیوں کے بینک کھاتوں میں رقم براہ راست جمع ہو چکی ہے۔ یہ کام بہت پہلے ہو جانا چاہیے تھا۔ لیکن درمیانی عرصے میں ڈبل انجن والی حکومت نہ ہونے کی وجہ سے ہر کام میں رکاوٹیں کھڑی کی گئیں۔ جس کا نقصان ان تمام مستحقین کو اٹھانا پڑا۔ ایسا دوبارہ نہیں ہونا چاہیے، اس لیے ضروری ہے کہ دہلی سے لے کر مہاراشٹر اور ممبئی تک ہر ایک کی طرف سے کوششیں کی جائیں، ایک بہتر مربوط نظام بنایا جائے۔

 

ساتھیو،

ہمیں یاد رکھنا ہوگا کہ سواندھی یوجنا صرف قرض دینے کی اسکیم نہیں ہے، بلکہ یہ ہمارے ساتھی  خوانچہ  فروشوں اور دکانداروں کی معاشی طاقت بڑھانے کی مہم ہے۔ یہ سواندھی عزت نفس کی جڑی بوٹی ہے۔ مجھے بتایا گیا ہے کہ سواندھی کے استفادہ کنندگان کو ڈیجیٹل لین دین کی تربیت دینے کے لیے ممبئی میں 325 کیمپ منعقد کیے گئے ہیں۔ جس کی وجہ سے ہمارے ہزاروں  خوانچہ فروشوں  نے ڈیجیٹل لین دین شروع کر دیا ہے۔ بہت سے لوگ یہ سن کر حیران رہ جائیں گے کہ اتنے کم وقت میں سواندھی یوجنا سے فائدہ اٹھانے والوں نے تقریباً 50,000 کروڑ روپے کا ڈیجیٹل لین دین کیا ہے۔ جن کو ہم ناخواندہ سمجھتے ہیں، جنہیں ہم کسی بھی زبان میں ذلیل کرتے رہتے ہیں، میرے وہ چھوٹے دوست جو آج میرے سامنے بیٹھے ہیں، ان  ریہڑی پٹری  والوں  نے آن لائن موبائل کے ذریعے 50 ہزار کروڑ روپے کا کام کیا ہے۔ اور ان کا یہ کارنامہ، اس کی تبدیلی کا راستہ ان  مایوس  لوگوں  کے لیے ایک بڑا جواب ہے، جو کہتے تھے کہ ریہڑی پٹری دکانداروں پر ڈیجیٹل ادائیگی کیسے کی جائے گی۔ ڈیجیٹل انڈیا کی کامیابی اس حقیقت کی ایک مثال ہے کہ جب اس میں سب کی محنت لگتی ہے تو کچھ بھی ناممکن نہیں ہوتا۔ سب کی کوشش کے اس جذبے کے ساتھ، ہم ممبئی کو ترقی کی ایک نئی بلندی پر لے جائیں گے۔ اور میں اپنے ریلوے سے وابستہ  بھائیوں سے کہنا چاہتا ہوں، آپ میرے ساتھ چلیں، آپ 10 قدم چلیں گے، میں آپ کے لیے 11 قدم چلوں گا۔ میں یہ اس لیے کہہ رہا ہوں کہ ہمارے ریلوے بھائی اور بہنیں سود کے لیے ساہوکاروں کے پاس جاتے تھے۔ اسے پورے دن کا کاروبار کرنے کے لیے ایک ہزار روپے کی ضرورت ہے، وہ دینے سے پہلے 100 کاٹ لیتا تھا اور 900 دیتا تھا۔ اور اگر شام کو جانے کے بعد اس نے ہزار واپس نہ کیے تو اگلے دن اسے رقم نہیں ملے گی۔ اور کبھی کبھی اس کا مال نہ بکتا اور ہزار روپے ادا نہ کر پاتا تو سود بڑھ جاتا، بچے رات کو بھوکے سوتے۔ سواندھی یوجنا آپ کو ان تمام پریشانیوں سے بچانے کے لیے موجود ہے۔

اور ساتھیو،

آپ اگر زیادہ سے زیادہ   ڈیجیٹل استعمال کریں گے، تھوک میں لینے جاؤ تو اس کا بھی پیمنٹ ڈیجیٹل سسٹم کے تحت کرو  جہاں آپ  سامان فروخت کرتے ہو  وہاں بھی لوگوں سے کہو  کے وہ  اس کے لیے ڈیجیٹل ادائیگی کریں ، تو اس کے نتیجے میں  صورتحال یہ سامنے  آئے گی کہ آپ سے ایک پیسہ بھی سود نہیں لیا جائے گا۔ اس طرح  آپ تصور کر سکتے ہیں کہ آپ اپنے بچوں کی تعلیم کے لیے، اپنے بچوں کے مستقبل کے لیے کتنی رقم بچائیں گے۔ اس لیے کہتا ہوں دوستو میں تمہارے ساتھ کھڑا ہوں، تم 10  قدم چلو، میں 11 قدم چلنے کو تیار ہوں، وعدہ کرکے آیا ہوں۔ آپ کے روشن مستقبل کے لیے، دوستو، آج میں ممبئی کی سرزمین پر آپ سے آنکھ ملا کر یہ وعدہ کرنے آیا ہوں۔ اور مجھے یقین ہے کہ ان چھوٹے لوگوں کی محنت اور مشقت  سے ملک نئی بلندیوں کو چھو لے گا۔ اسی یقین کے ساتھ آج میں ایک بار پھر آپ کے پاس آیا ہوں۔ تمام مستفید ہونے والوں کے لیے، تمام ممبئی والوں کے لیے، پورے مہاراشٹر کے لیے۔ اور ممبئی تو ملک کی دھڑکن  ہے۔ میں اس ترقیاتی کام کے لیے تمام ہم وطنوں کو بھی مبارکباد دیتا ہوں۔ مجھے پورا یقین ہے کہ شندے جی اور دیویندر جی کی جوڑی آپ کے خوابوں کو پورا کرے گی۔

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India's industrial production beats estimates; growth seen at 5.9% YoY in May

Media Coverage

India's industrial production beats estimates; growth seen at 5.9% YoY in May
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Delegation from Catholic Bishops' Conference of India calls on PM
July 12, 2024

A delegation from the Catholic Bishops' Conference of India called on the Prime Minister, Shri Narendra Modi today.

The Prime Minister’s Office posted on X:

“A delegation from the Catholic Bishops' Conference of India called on PM Narendra Modi. The delegation included Most Rev. Andrews Thazhath, Rt. Rev. Joseph Mar Thomas, Most Rev. Dr. Anil Joseph Thomas Couto and Rev. Fr. Sajimon Joseph Koyickal.”