صدر نے دونوں ایوانوں سے بصیرت افروز خطاب میں قوم کو ہدایت دی
‘‘عالمی سطح پر ہندوستان کے تئیں مثبت سوچ اور امید پائی جاتی ہے’’
‘‘آج اصلاحات مجبوری کے تحت نہیں بلکہ یقین کامل کے ساتھ کی جاتی ہیں’’
ہندوستان میں یو پی اے کے دور ہ حکومت کو ‘ضائع شدہ دہائی’ کہا جاتا تھا جب کہ آج لوگ موجودہ دہائی کو ‘انڈیا کی دہائی’ کہہ رہے ہیں
‘‘ہندوستان جمہوریت کی ماں ہے، مضبوط جمہوریت کے لیے تعمیری تنقید ضروری ہے اور تنقید ‘شدھی یگیہ’ کی طرح ہے’’
‘‘تعمیری تنقید کے بجائے، کچھ لوگ جبری تنقید میں ملوث نظرآتے ہیں’’
‘‘140 کروڑ ہندوستانیوں کا آشیرواد میرا ‘سرکشا کَوچ’ ہے’’
‘‘ہماری حکومت نے متوسط طبقے کی امنگوں کو پورا کیا ہے۔ ہم نے انہیں ان کی ایمانداری کی وجہ سے عزت دی ہے’’
‘‘ہندوستانی معاشرہ منفی طرزفکرسے نمٹنے کی صلاحیت رکھتا ہے لیکن وہ اس منفی طرز فکرکو کبھی قبول نہیں کرتا’’

محترم صدر،

 

سب سے پہلے میں صدر مملکت کا ان کے خطاب پر شکریہ ادا کرنا چاہوں گا اور یہ میری خوش قسمتی رہی ہے کہ مجھے اس سے پہلے بھی کئی بار صدر کا شکریہ ادا کرنے کا موقع ملا ہے۔ لیکن اس بار شکریہ کے ساتھ ساتھ میں میڈم صدر کو بھی مبارکباد دینا چاہتا ہوں۔ اپنی بصیرت انگیز تقریر میں صدر نے ہم سب اور کروڑوں ہم وطنوں کی رہنمائی کی ہے۔ جمہوریہ کی سربراہ کے طور پر ان کی موجودگی تاریخی ہے اور ملک کی کروڑوں بہنوں اور بیٹیوں کے لیے ایک عظیم ترغیب کا موقع بھی ہے۔

صدر محترمہ نے قبائلی معاشرے کا سر فخر سے بڑھایا ہے لیکن آج آزادی کے اتنے سالوں بعد قبائلی معاشرے میں فخر کا احساس بڑھ گیا ہے، ان کے اعتماد میں اضافہ ہوا ہے اور اس کے لیے یہ ایوان اور ملک بھی ان کے مشکور ہوں گے۔ اس کا صدر جمہوریہ کی تقریر میں 'سنکلپ سے سدھی' کے سفر کا ایک خاکہ بہت اچھی طرح سے تیار کیا گیا تھا، جس میں ایک طرح سے ملک کو ایک حساب بھی دیا گیا تھا اور ساتھ ہی تحریک بھی۔

محترم اسپیکر صاحب، یہاں تمام معزز ممبران نے اس بحث میں حصہ لیا، سب نے اپنے اپنے اعداد و شمار دیے، اپنے اپنے دلائل دیے اور اپنی دلچسپی اور رجحان کے مطابق سب نے اپنے نکات رکھے اور ان باتوں کو غور سے سنتے ہوئے جب سمجھنے کی کوشش کی۔ ہمارے ذہن میں یہ بات بھی آتی ہے کہ کس میں کتنی صلاحیت ہے، کتنی صلاحیت ہے، کس کو سمجھ ہے اور اس کی نیت کیا ہے۔ یہ سب باتیں سامنے آتی ہیں۔ اور ملک اس کا اندازہ بھی اچھے طریقے سے کرتا ہے۔ میں ان تمام معزز ممبران کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتا ہوں جنہوں نے بحث میں حصہ لیا۔ لیکن میں کچھ لوگوں کی تقریر کے بعد پورا ایکو سسٹم دیکھ رہا تھا، حمایتی اچھل رہے تھے اور کچھ لوگ خوشی سے کہہ رہے تھے، یہ ہوئی نہ بات! شاید نیند اچھی آئی ہوگی، آج شاید اٹھ بھی نہ پائے ہوں گے اور ایسے لوگوں کے لیے کہا گیا ہے، بہت اچھے ڈھنگ سے کہا گیا ہے-

 

یہ کہہ کہہ کر ہم دل کو بہلا رہے ہیں،

یہ کہہ کہہ کر ہم دل کو بہلا رہے ہیں، وہ اب چل چکے ہیں،

وہ اب چل چکے ہیں، وہ اب آ رہے ہیں۔

 

معزز چیئرمین،

جب صدر کی تقریر ہو رہی تھی تو کچھ لوگ کنارے ہوگے اور ایک بڑے لیڈر نے تو محترم صدر کی توہین بھی کی۔ قبائلی برادری کے تئیں نفرت بھی دیکھی گئی ہے اور ہمارے قبائلی معاشرے کے تئیں ان کی سوچ کیا ہے؟ لیکن جب ایسی باتیں ٹی وی کے سامنے کہی گئیں تو نفرت کا جو احساس اندر ہی اندر تھا، سچ سامنے آگیا۔ خوشی کی بات ہے، ٹھیک ہے، بعد میں خط لکھ کر فرار ہونے کی کوشش کی گئی ہے۔

محترم چیئرمین صاحب،

جب میں صدر کی تقریر پر بحث سن رہا تھا تو مجھے لگا کہ بہت سی باتوں کو خاموشی سے قبول کر لیا گیا ہے۔ یعنی ایک طرح سے میں سب کی تقریر سنتا تھا، پھر مجھے لگا کہ صدر کی تقریر پر کسی کو کوئی اعتراض نہیں، کسی نے تنقید نہیں کی۔ تقریر میں سب کچھ، اب دیکھیں صدر صاحبہ نے کیا کہا، میں ان کے الفاظ کا حوالہ دیتا ہوں۔ صدر جمہوریہ نے اپنی تقریر میں کہا تھا کہ ہندوستان جو کبھی اپنے زیادہ تر مسائل کے حل کے لیے دوسروں پر انحصار کرتا تھا، آج دنیا کے مسائل کو حل کرنے کا ذریعہ بن رہا ہے۔ صدر مملکت نے یہ بھی کہا کہ وہ بنیادی سہولتیں جن کا ملک کی ایک بڑی آبادی دہائیوں سے انتظار کر رہی تھی، ان برسوں میں حاصل ہو گئی ہیں۔ ملک اب بڑے گھوٹالوں اور سرکاری اسکیموں میں بدعنوانی کے مسائل سے آزادی حاصل کر رہا ہے، جن سے ملک چھٹکارا چاہتا تھا۔ پالیسی فالج کی بحث سے نکل کر آج ملک اور ملک تیز رفتار ترقی اور دور رس وژن کے ساتھ لیے گئے فیصلوں کی پہچان بن رہے ہیں۔ میں اس پیراگراف کا حوالہ دے رہا ہوں جو میں صدر کی تقریر سے پڑھ رہا ہوں۔ اور مجھے خدشہ تھا کہ یہاں ضرور کچھ لوگ ہوں گے جو ایسی باتوں پر اعتراض کریں گے، وہ احتجاج کریں گے کہ صدر صاحبہ ایسی بات کیسے کر سکتی ہیں۔ لیکن مجھے خوشی ہے کہ کسی نے احتجاج نہیں کیا، سب نے مان لیا، سب نے مان لیا۔ اور معزز اسپیکر، میں 140 کروڑ ہم وطنوں کا شکر گزار ہوں کہ سب کی کوششوں کے نتیجے میں آج ان تمام چیزوں کو پورے ایوان میں منظوری مل گئی ہے۔ اس سے بڑا فخر کی بات کیا ہو سکتی ہے۔

محترم چیئرمین صاحب ایوان میں ہنسی مذاق، تنقید، تبصرے، شور شرابہ یہ سب کچھ ہوتا ہے۔ لیکن یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ آج بحیثیت قوم ایک قابل فخر موقع ہمارے سامنے کھڑا ہے، ہم ایک قابل فخر لمحہ جی رہے ہیں۔ صدر جمہوریہ کی پوری تقریر میں جن باتوں کا ذکر کیا گیا ہے وہ 140 کروڑ ہم وطنوں کے جشن کا موقع ہے، ملک نے جشن منایا ہے۔

محترم چیئرمین صاحب یہ خوفناک بیماری جو 100 سال میں آئی ہے، خطرناک وبا، دوسری طرف جنگ کی صورتحال، منقسم دنیا، اس صورتحال میں بھی، اس بحرانی ماحول میں ملک نے جس طرح خود کو سنبھالا ہے، جس طرح ملک نے خود کو سنبھالا ہے، پورا ملک پراعتماد ہے۔ فخر سے بھرا ہوا ہے۔

محترم چیئرمین صاحب چیلنجز کے بغیر زندگی نہیں، چیلنجز آتے ہیں۔ لیکن 140 کروڑ ہم وطنوں کا جذبہ چیلنجوں سے زیادہ طاقتور ہے۔ 140 کروڑ ہم وطنوں کی صلاحیت چیلنجوں سے زیادہ مضبوط، بڑی اور صلاحیتوں سے بھرپور ہے۔ اتنی بڑی وبا، منقسم عالمی جنگ کی وجہ سے ہونے والی تباہی کی وجہ سے کئی ممالک میں عدم استحکام کی فضا ہے۔ کئی ممالک میں شدید مہنگائی، بے روزگاری، کھانے پینے کا بحران ہے اور ہمارے پڑوس میں جس طرح کی صورتحال ہے، ایسے میں محترم اسپیکر، کون سا ہندوستانی فخر نہیں کرے گا کہ ایسے وقت میں بھی ملک اور دنیا 5ویں بڑی معیشت بن چکی ہے۔ آج پوری دنیا میں ہندوستان کے بارے میں مثبتیت ہے، امید ہے، بھروسہ ہے۔ اور جناب اسپیکر، یہ بھی خوشی کی بات ہے کہ آج ہندوستان کو دنیا کے ایسے خوشحال ملک جی-20 گروپ کی صدارت کا موقع ملا ہے۔

یہ ملک کے لیے فخر کی بات ہے۔ یہ 140 کروڑ ہم وطنوں کے لیے فخر کی بات ہے۔ لیکن مجھے لگتا ہے، پہلے میں نہیں سوچتا تھا، لیکن اب لگتا ہے کہ شاید کچھ لوگ اس کی وجہ سے اداس محسوس کر رہے ہیں۔ 140 کروڑ ہم وطنوں میں کوئی بھی غمگین نہیں ہو سکتا۔ انہیں خود کا جائزہ لینا چاہیے کہ وہ کون لوگ ہیں جو اس کے لیے بھی دکھی ہیں۔

معزز چیئرمین،

آج دنیا کی ہر قابل اعتماد تنظیم، تمام ماہرین جو عالمی اثرات کا بہت گہرائی سے مطالعہ کرتے ہیں۔ جو مستقبل کے بارے میں بھی اچھی طرح اندازہ لگا سکتا ہے۔ آج ان سب میں ہندوستان کے تئیں کافی امیدیں، یقین اور ایک خاص حد تک جوش ہے۔ اور یہ سب کیوں؟ یہ صرف ایسا نہیں ہے۔ آج پوری دنیا اتنی بڑی امید کے ساتھ ہندوستان کی طرف کیوں دیکھ رہی ہے؟ اس کے پیچھے ایک وجہ ہے۔ اس کا جواب ہندوستان میں جو استحکام آیا ہے، ہندوستان کی عالمی ساکھ میں، ہندوستان کی بڑھتی ہوئی صلاحیت میں اور ہندوستان میں پیدا ہونے والے نئے امکانات میں مضمر ہے۔

معزز چیئرمین،

وہ چیزیں جو ہماری روزمرہ کی زندگی میں ہو رہی ہیں۔ اگر میں اسی کو زبانی بیان کروں اور کچھ باتوں کو مثالوں سے سمجھانے کی کوشش کروں۔ اب آپ دیکھیں کہ ہندوستان میں ایک، دو یا تین دہائیوں سے عدم استحکام ہے۔ آج استحکام ہے، سیاسی استحکام ہے، ایک مستحکم حکومت بھی ہے اور فیصلہ کن حکومت بھی ہے، اور اس کا اعتماد فطری ہے۔ ایک فیصلہ کن حکومت، مطلق اکثریت سے چلنے والی حکومت، قوم کے مفاد میں فیصلے کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔ اور یہ وہ حکومت ہے جو مجبوری کی اصلاح نہیں بلکہ یقین سے اصلاح کرتی ہے۔ اور ہم اس راستے سے دستبردار ہونے والے نہیں اور چلتے رہیں گے۔ وقت کے تقاضے کے مطابق ملک کو جو کچھ درکار ہے وہ دیتے رہیں گے۔

معزز چیئرمین،

میں ایک اور مثال کی طرف جانا چاہوں گا۔ اس کورونا کے دور میں میڈ ان انڈیا ویکسین تیار کی گئی تھی۔ بھارت نے دنیا کی سب سے بڑی ویکسینیشن مہم شروع کی اور یہی نہیں بلکہ اس نے اپنے کروڑوں شہریوں کو مفت ویکسین فراہم کی۔ یہی نہیں، اس بحران کے وقت، ہم نے 150 سے زائد ممالک کو ادویات فراہم کی ہیں جہاں انہیں ضرورت تھی، جہاں انہیں ویکسین کی ضرورت تھی۔ اور آج دنیا کے بہت سے ممالک ہیں، جو عالمی سطح پر اس معاملے پر فخر کے ساتھ ہندوستان کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔ اسی طرح تیسرے پہلو پر بھی توجہ دیں۔ اس بحرانی دور میں، جس رفتار کے ساتھ ہندوستان کے ڈیجیٹل انفراسٹرکچر نے آج اپنی طاقت دکھائی ہے۔ جدیدیت کی طرف تبدیلی آئی ہے۔ پوری دنیا اس کا مطالعہ کر رہی ہے۔ میں حال ہی میں G-20 سربراہی اجلاس کے لیے بالی میں تھا۔ چاروں طرف ڈیجیٹل انڈیا کے لیے تالیاں بج رہی تھیں۔ اور بہت تجسس تھا کہ ملک کیسا چل رہا ہے۔ کورونا کے دور میں دنیا کے بڑے ممالک، امیر ممالک اپنے شہریوں کی مالی مدد کرنا چاہتے تھے۔ نوٹ چھاپتے تھے، تقسیم کرتے تھے، لیکن تقسیم نہیں کر سکتے تھے۔ یہ وہ ملک ہے جو ایک سیکنڈ میں لاکھوں کروڑوں روپے اہل وطن کے کھاتوں میں جمع کر دیتا ہے۔ ہزاروں کروڑ روپے ٹرانسفر ہو جاتے ہیں۔ ایک وقت تھا جب ملک چھوٹی ٹیکنالوجی کے لیے ترستا تھا۔ آج ملک میں بڑا فرق محسوس کیا جا رہا ہے۔ ملک ٹیکنالوجی کے میدان میں بڑی طاقت کے ساتھ آگے بڑھ رہا ہے۔ CoWin دنیا کے لوگ اپنا ویکسینیشن سرٹیفکیٹ بھی نہیں دے سکے۔ آج ہماری ویکسین کا سرٹیفکیٹ ہمارے موبائل فون پر دوسرے سیکنڈ میں دستیاب ہے۔ ہم نے یہ طاقت دکھائی ہے۔

معزز چیئرمین،

ہندوستان میں نئے امکانات ہیں۔ دنیا کے لیے مضبوط قدر اور سپلائی چین، آج پوری دنیا نے اس کورونا کے دور میں سپلائی چین کے معاملے پر دنیا کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔ آج ہندوستان اس خلا کو پر کرنے کی طاقت کے ساتھ آگے بڑھ رہا ہے۔ بہت سے لوگوں کو یہ سمجھنے میں کافی وقت لگے گا۔ جناب صدر آج ہندوستان اس سمت میں ایک مینوفیکچرنگ ہب کے طور پر ابھر رہا ہے اور دنیا ہندوستان کی اس خوشحالی میں اپنی خوشحالی دیکھ رہی ہے۔

معزز چیئرمین،

مایوسی میں ڈوبے ہوئے کچھ لوگ اس ملک کی ترقی کو قبول کرنے سے قاصر ہیں۔ انہیں ہندوستان کے لوگوں کے کارنامے نظر نہیں آتے۔ ارے، یہ 140 کروڑ ہم وطنوں کی کوششوں پر ایمان کا نتیجہ ہے، جس کی وجہ سے آج دنیا میں ڈنکا بج رہا ہے۔ وہ ہندوستان کے لوگوں کی محنت سے حاصل کردہ کامیابیوں کو دیکھنے سے قاصر ہیں۔

معزز چیئرمین،

پچھلے 9 سالوں میں ہندوستان میں 90 ہزار اسٹارٹ اپس تھے اور آج ہم اسٹارٹ اپس کی دنیا میں تیسرے نمبر پر پہنچ گئے ہیں۔ آج ایک بہت بڑا اسٹارٹ اپ ایکو سسٹم ملک کے درجہ 2، درجہ 3 شہروں تک پہنچ چکا ہے۔ ہندوستان کے کونے کونے تک پہنچ چکی ہے۔ ہندوستان کا نوجوان صلاحیت کی پہچان بن رہا ہے۔

معزز چیئرمین،

آج ہندوستان موبائل مینوفیکچرنگ میں دنیا کا دوسرا بڑا ملک بن گیا ہے۔ گھریلو ایئر لائن کے مسافر گھریلو ہوائی ٹریفک پر ہیں۔ آج ہم دنیا میں تیسرے نمبر پر آ گئے ہیں۔ توانائی کی کھپت کو ترقی کا پیرامیٹر سمجھا جاتا ہے۔ آج ہندوستان توانائی کی کھپت میں دنیا میں ایک صارف کے طور پر تیسرے نمبر پر پہنچ گیا ہے۔ ہم قابل تجدید توانائی کی صلاحیت کے لحاظ سے دنیا میں چوتھے نمبر پر پہنچ گئے ہیں۔ ہم سے کھیلوں کے بارے میں کبھی کوئی سوال نہیں ہوتا تھا، نہ کوئی پوچھتا تھا۔ آج کھیل کی دنیا میں ہندوستانی کھلاڑی ہر سطح پر اپنی حیثیت دکھا رہے ہیں۔ اپنی طاقت دکھا رہے ہیں۔

معزز چیئرمین،

میں کسی بھی ہندوستانی کے لیے ایسی بہت سی چیزیں گنا سکتا ہوں۔ صدر نے اپنی تقریر میں بہت سی باتیں کہی ہیں۔ ملک میں ہر سطح پر، ہر میدان میں، ہر سوچ میں امید نظر آتی ہے۔ ایمان سے بھرا ملک۔ یہ ایک ایسا ملک ہے جو خوابوں اور عزم کے ساتھ چلتا ہے۔ لیکن یہاں کچھ لوگ ایسے ہی مایوسی میں ڈوبے ہوئے ہیں، کاکا ہاتھرسی نے بڑی مضحکہ خیز بات کہی تھی۔ کاکا ہاتھرسی نے کہا تھا-

آگے پیچھے دیکھ کر کیوں ہوتے غمگین، جیسی جس کی بھاؤنا ویسا دیکھے سین۔

 

محترم صدر،

ایک دفعہ دو نوجوان جنگل میں شکار کے لیے گئے اور انہوں نے گاڑی میں اپنی بندوقیں رکھ دیں اور کچھ دیر پیدل چلنے لگے۔ اس نے سوچا کہ تھوڑا آگے چلنا ہے تو ہاتھ پاؤں تھوڑا ٹھیک کر لیں۔ لیکن وہ شیر کا شکار کرنے گئے تھے اور سوچا کہ اگر وہ آگے جائیں گے تو شیر کو تلاش کر لیں گے۔ لیکن ہوا یوں کہ شیر وہیں نظر آ گیا۔ بندوق وہیں گاڑی میں پڑی تھی۔ شیر دیکھا، اب کیا کریں؟ تو انہوں نے لائسنس دکھایا کہ میرے پاس بندوق کا لائسنس ہے۔ انہوں نے بھی بے روزگاری دور کرنے کے نام پر قانون دکھایا کہ قانون بنا دیا گیا ہے۔ ارے دیکھو قانون بن گیا ہے۔ یہ ان کے طریقے ہیں، وہ اس سے بچ گئے۔ 2004 سے 2014 آزادی کی تاریخ میں سب سے زیادہ گھوٹالوں کی دہائی رہی ہے۔ وہی 10 سال، یو پی اے کے وہ 10 سال، کشمیر سے کنیا کماری تک، ہندوستان کے کونے کونے میں دہشت گرد حملے ہوتے رہے، 10 سال۔ ہر شہری عدم تحفظ کا شکار تھا، چاروں طرف اطلاع تھی کہ کسی نامعلوم چیز کو ہاتھ نہ لگائیں۔ انجان باتوں سے دور رہ کر خبریں آتی تھیں۔ 10 سالوں میں جموں کشمیر سے لے کر شمال مشرق تک ملک تشدد کا شکار ہو چکا تھا۔ ان 10 سالوں میں عالمی پلیٹ فارم پر ہندوستان کی آواز اتنی کمزور تھی کہ دنیا سننے کو بھی تیار نہیں تھی۔

محترم صدر،

ان کی مایوسی کی وجہ یہ بھی ہے۔ آج جب ملک کی صلاحیت کو تسلیم کیا جا رہا ہے، 140 کروڑ ملک والوں کی صلاحیت کھل رہی ہے، وہ سامنے آ رہی ہے۔ لیکن ملک کی صلاحیت پہلے بھی موجود تھی۔ لیکن 2004 سے 2014 تک انہوں نے یہ موقع گنوا دیا۔ اور یہ یو پی اے کی پہچان بن گئی، ہر موقع کو مصیبت میں بدل دیا۔ جب انفارمیشن ٹیکنالوجی کا دور بہت تیزی سے بڑھ رہا تھا، عروج پر تھا، اسی وقت وہ 2G میں پھنس گئے، پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔ سول نیوکلیئر ڈیل ہوا، جب سول نیوکلیئر ڈیل کی بات ہوئی تو ووٹ کے لیے کیش میں پھنس گئے۔ اس کھیل کو چلنے دو۔

محترم صدر،

2010 میں، کامن ویلتھ گیمز ہوئے، ہندوستان کے لیے ہندوستان کے نوجوانوں کی صلاحیت کو دنیا کے سامنے پیش کرنے کا ایک بہترین موقع۔ لیکن پھر موقع کی پریشانی اور CWG گھوٹالے کی وجہ سے پورا ملک دنیا میں بدنام ہو گیا۔

محترم صدر،

کسی بھی ملک کی ترقی میں توانائی کی اپنی عظمت ہوتی ہے۔ اور جب ہندوستان کی توانائی کی طاقت کے عروج پر دنیا میں بحث کی ضرورت تھی تو اس صدی کی دوسری دہائی میں ہندوستان کو بلیک آؤٹ کے طور پر زیر بحث لایا گیا۔ بلیک آؤٹ کے وہ دن پوری دنیا میں بحث کا مرکز بنے ہوئے تھے۔ کوئلہ گھوٹالہ منظر عام پر آیا۔

محترم صدر،

ملک پر بہت سے دہشت گرد حملے ہوئے۔ 2008 کے حملوں کو کوئی نہیں بھول سکتا۔ لیکن اس میں دہشت گردی پر حملہ کرنے کی صلاحیت نہیں تھی، اس کے چیلنج کو چیلنج کرنے کی طاقت نہیں تھی، اور اس کی وجہ سے دہشت گردوں کے حوصلے بلند ہوئے، اور پورے ملک میں دس سال تک خون بہتا رہا۔

محترم صدر،

جب ایل او سی، ایل اے سی بھارت کی طاقت کا ایک موقع ہوا کرتا تھا، اس وقت دفاعی سودے کے حوالے سے ہیلی کاپٹر گھوٹالہ، اور اس میں اقتدار پر قابض لوگوں کے نام نشان زد ہوئے۔

محترم صدر،

ہندوستان کو یہ بات ہر لمحہ یاد رہے گی کہ 2014 سے پہلے کی دہائی کو کھوئی ہوئی دہائی کے نام سے جانا جائے گا اور اس سے انکار نہیں کیا جا سکتا کہ 2030 کی دہائی پوری دنیا کے لیے ہندوستان کی دہائی ہے۔

محترم صدر،

میں جمہوریت میں تنقید کی اہمیت پر یقین رکھتا ہوں۔ اور میں ہمیشہ مانتا ہوں کہ ہندوستان، جو جمہوریت کی ماں ہے، جمہوریت ہمارے رنگوں میں صدیوں سے پروان چڑھی ہے۔ اور اسی لیے میں ہمیشہ یہ مانتا ہوں کہ ایک طرح سے جمہوریت کی مضبوطی کے لیے، جمہوریت کے فروغ کے لیے، جمہوریت کی روح کے لیے تنقید ایک تزکیہ ہے۔ اس شکل میں ہم تنقید دیکھنے جا رہے ہیں۔ لیکن بد قسمتی سے میں کئی دنوں سے انتظار کر رہا ہوں، کوئی محنت کے بعد آئے گا، کوئی تجزیہ کرے گا اور کوئی تنقید کرے گا تاکہ ملک کو کچھ فائدہ ہو سکے۔ لیکن انہوں نے 9 سال تنقید اور الزامات میں ضائع کر دیے۔ الزام لگائے، گالیاں دیں، اس کے سوا کچھ نہیں کیا۔ غلط الزام جیسے الیکشن ہارو توای وی ایم خراب ہے۔ گالی ہے الیکشن ہارنا-الیکشن کمیشن کو گالی دینا، یہ کیسا طریقہ ہے۔ عدالت میں فیصلہ حق میں نہ آئے تو سپریم کورٹ کو گالیاں دینا، تنقید کرنا۔

معزز چیئرمین،

کرپشن کی تحقیقات ہو رہی ہیں تو تفتیشی اداروں کو گالیاں دو۔ اگر فوج طاقت دکھاتی ہے، اگر فوج اپنی بہادری دکھاتی ہے اور وہ بیانیہ ملک کے لوگوں میں نیا ایمان پیدا کرتا ہے تو فوج پر تنقید کرو، فوج کو گالی دو، فوج پر الزامات لگاؤ۔

جب بھی ملک کی معاشی ترقی کی خبر آتی ہے، اقتصادی ترقی کی بات ہوتی ہے، اگر دنیا کے تمام ادارے ہندوستان کی معیشت کی تعریف کرتے ہیں تو یہاں سے نکلو، آر بی آئی کو گالی دو، ہندوستان کے اقتصادی اداروں کو گالی دو۔

محترم صدر،

ایوان میں کرپشن کی تحقیقات کرنے والی ایجنسیوں کے بارے میں بہت کچھ کہا گیا اور میں نے دیکھا کہ اپوزیشن کے بہت سے لوگ اس حوالے سے آواز اٹھا رہے تھے۔

محترم صدر،

میں سمجھتا تھا کہ ملک کے عوام انتخابات کے نتائج کے بعد ایسے لوگوں کو ایک پلیٹ فارم پر ضرور لائیں گے۔ لیکن ایسا نہیں ہوا بلکہ ان لوگوں کو ای ڈی کا شکریہ ادا کرنا چاہیے کہ ای ڈی کی وجہ سے یہ لوگ ایک پلیٹ فارم پر آئے ہیں۔ ای ڈی نے ان لوگوں کو ایک پلیٹ فارم پر لایا ہے اس لیے وہ کام جو ملک کے ووٹر نہیں کر پائے۔

محترم صدر،

میں کئی بار سن رہا ہوں، یہاں کچھ لوگوں میں ہارورڈ اسٹڈی کا بڑا جنون ہے۔ یہی بات کورونا کے دور میں کہی گئی تھی اور کانگریس نے کہا تھا کہ ہندوستان کی تباہی پر ہارورڈ میں کیس اسٹڈی ہوگی، یہ کہا گیا اور کل پھر ایوان میں ہارورڈ یونیورسٹی میں اسٹڈی کی بات ہوئی، لیکن محترم اسپیکر گزشتہ سالوں میں ہارورڈ میں ایک بہت اچھا مطالعہ ہوا ہے، ایک بہت اہم مطالعہ ہوا ہے۔ اور وہ اسٹڈی، اس کا موضوع کیا تھا، میں ایوان کو ضرور بتانا چاہوں گا اور یہ اسٹڈی ہو چکی ہے۔ اسٹڈی ہے The Rise and Decline of India's Congress Party، یہ اسٹڈی مکمل ہو چکی ہے اور مجھے یقین ہے جناب اسپیکر، مجھے یقین ہے کہ مستقبل میں صرف ہارورڈ ہی نہیں بلکہ بڑی بڑی یونیورسٹیوں میں بھی کانگریس کی تباہی پر مطالعہ کرنا پڑے گا۔ اور ڈوبنے والے لوگوں پر بھی۔ ایسا ہونے جا رہا ہے۔

محترم صدر،

دشینت کمار نے اس قسم کے لوگوں کے لیے بہت اچھی بات کہی ہے اور جو دشینت کمار نے کہا ہے وہ بہت اچھی طرح سے فٹ بیٹھتا ہے، انھوں نے کہا ہے:-

 

تمہارے پاؤں کے نیچے کوئی زمین نہیں

کمال یہ ہے کہ پھر بھی تمھیں یقین نہیں

معزز صدر،

کیونکہ یہ لوگ بغیر سر اور پیر کے بات کرنے کے عادی ہوتے ہیں، انہیں یہ بھی یاد نہیں رہتا کہ وہ اپنے آپ سے کتنا تضاد رکھتے ہیں۔ کبھی ایک بات، کبھی دوسری بات، کبھی ایک طرف، کبھی دوسری طرف۔ ہو سکتا ہے وہ اپنے اندر موجود تضاد کو درست کر لیں۔ اب 2014 سے مسلسل کوس رہے ہیں، ہر موقع پر کوس رہے ہیں، بھارت کمزور ہوتا جا رہا ہے، کوئی بھارت کی بات سننے کو تیار نہیں، بھارت کا دنیا میں کوئی وجود نہیں، پتہ نہیں کیا کہا اور اب کیا کہہ رہے ہیں۔ اب وہ کہہ رہے ہیں کہ بھارت اتنا مضبوط ہو چکا ہے کہ دوسرے ممالک کو فیصلے کرنے کی دھمکیاں دے رہا ہے۔ آرے، سب سے پہلے یہ طے کرو بھائی کہ ہندوستان کمزور ہوا ہے یا مضبوط ہوا ہے۔

معزز صدر،

کوئی بھی زندہ ادارہ ہو، کوئی نظام زندگی ہو، جو زمین سے جڑا ہو، وہ عوام میں کیا ہو رہا ہے اس کے بارے میں سوچتے ہیں، وہ اس سے کچھ سیکھنے کی کوشش کرتے ہیں اور وقت کے ساتھ ساتھ اپنا راستہ بدلتے رہتے ہیں۔ لیکن جو لوگ انا میں ڈوبے ہوئے ہیں، جو صرف سب کچھ جانتے ہیں، جو اس سوچ میں رہتے ہیں کہ ہمارے لیے سب ٹھیک ہے، وہ سمجھتے ہیں کہ مودی کو گالی دینے سے ہی ان کا راستہ ملے گا۔ مودی پر کیچڑ اچھالنے سے ہی نکلنے کا راستہ ملے گا۔ اب 22 سال گزر چکے ہیں، وہ یہ غلط فہمی لے کر بیٹھے ہیں۔

معزز صدر،

مودی پر اعتماد اخبار کی سرخیوں سے پیدا نہیں ہوتا۔ مودی پر یہ بھروسہ ٹی وی پر چمکتے چہروں سے نہیں آیا۔ زندگی برباد ہوئی، ہر لمحہ گزر گیا۔ ہم نے ملک کے عوام کے لیے خرچ کیا ہے، ہم نے ملک کے روشن مستقبل کے لیے خرچ کیا ہے۔

معزز صدر،

ہم وطنوں کا مودی پر جو بھروسہ ہے وہ ان کی سمجھ سے بالاتر ہے اور ان کی سمجھ سے بہت زیادہ ہے۔ کیا ان جھوٹے الزام لگانے والوں پر مفت راشن حاصل کرنے والے میرے ملک کے 80 کروڑ اہل وطن کبھی ان پر بھروسہ کریں گے کیا۔

معزز صدر،

ون نیشن ون راشن کارڈ اب غریب سے غریب کو بھی ملک میں کہیں بھی راشن ملتا ہے تو وہ تمہارے جھوٹے الزامات پر کیسے اعتبار کرے گا۔

معزز صدر،

جس کسان کے اکاؤنٹ میں پی ایم کسان سمان ندھی کے 11 کروڑ کسانوں کے اکاؤنٹ میں سال میں تین بار رقم جمع ہوتی ہے، وہ آپ کی گالیوں، آپ کے جھوٹے الزامات پر کیسے یقین کرے گا۔

معزز صدر،

جو لوگ کل فٹ پاتھ پر زندگی گزارنے پر مجبور تھے، جو کچی آبادیوں میں رہتے تھے، ایسے 3 کروڑ سے زائد لوگوں کو پکے گھر ملے، وہ آپ کی گالیوں، آپ کے ان جھوٹوں پر کیوں یقین کریں گے۔

معزز صدر،

9 کروڑ لوگوں کو مفت گیس کنکشن ملے ہیں، وہ آپ کے جھوٹ کو کیسے مانیں گے۔ 11 کروڑ بہنوں کو عزت ملی، بیت الخلا ملے، وہ کیسے مانیں گی آپ کے جھوٹ کو۔

معزز صدر،

آزادی کے 75 سال گزر چکے ہیں، آج 8 کروڑ خاندانوں کو نل کا پانی ملا ہے، وہ مائیں آپ کے جھوٹ، آپ کی غلطیوں اور گالیوں کو کیسے مانیں گے۔ آیوشمان بھارت یوجنا نے 2 کروڑ خاندانوں کی مدد کی ہے، جانیں بچائی ہیں، مودی ان کے مشکل وقت میں کام آئے ہیں، وہ آپ کی گالیوں کو کیسے قبول کریں گے، کیسے قبول کریں گے۔

معزز صدر،

آپ کی گالیاں، آپ کے الزامات ان کروڑوں ہندوستانیوں کے پر سے گزریں گے، جنہیں آپ نے دہائیوں تک مشکلات میں زندگی گزارنے پر مجبور کیا۔

معزز صدر،

کچھ لوگ اپنا اور اپنے خاندان کے لیے بہت کچھ برباد کرنے میں لگے ہوئے ہیں۔ مودی جی اپنے لیے، اپنے خاندان کے لیے جی رہے ہیں، تو مودی 25 کروڑ ہم وطنوں کے خاندان کے فرد ہیں۔

محترم صدر،

ہماری حکومت کچھ چیزوں کے لیے پر عزم ہے۔ ہم معاشرے کے محروم طبقات کو ترجیح دینے کے عزم کے ساتھ جی رہے ہیں، ہم اسی عزم کے ساتھ آگے بڑھ رہے ہیں۔ دلت، پسماندہ، قبائلی جس حالت میں کئی دہائیوں سے چھوڑ دیے گئے تھے۔ آئین بنانے والوں نے جو اصلاحات سوچی تھیں وہ نہیں آئیں۔ جس کی وضاحت آئین بنانے والوں نے کی تھی۔ 2014 کے بعد، میرے ان خاندانوں کو غریبوں کی فلاحی اسکیموں کا سب سے زیادہ فائدہ ملا ہے۔ معزز اسپیکر، پہلی بار دلتوں، پسماندہ لوگوں اور قبائلیوں کی بستیوں تک بجلی پہنچی ہے۔ پانی کے لیے میلوں دور جانا پڑتا تھا۔ پہلی بار نل سے پانی پہنچ رہا ہے۔ محترم اسپیکر ان خاندانوں تک پہنچ رہے ہیں۔ کئی خاندان، کروڑوں خاندان، آج پہلی بار ایک پکے گھر میں رہنے کے قابل ہوئے ہیں۔ وہاں رہنے کے قابل ہو چکے ہیں۔

محترم صدر،

ہم پہلی بار دیکھ رہے ہیں۔ ایک بات سچ بھی ہے۔ ہم سب کا ایک جیسا تجربہ ہے، یہ صرف میرا نہیں ہے، یہ آپ کا بھی ہے۔ ہم سب جانتے ہیں کہ جب ایک ماں با اختیار ہوتی ہے تو پورا خاندان با اختیار ہوتا ہے۔ خاندان مضبوط ہو تو معاشرہ مضبوط ہوتا ہے تب ہی ملک مضبوط ہوتا ہے۔ اور میں مطمئن ہوں کہ ہماری حکومت کو سب سے زیادہ ماؤں، بہنوں اور بیٹیوں کی خدمت کرنے کی سعادت ملی ہے۔ ہر چھوٹی موٹی پریشانی کو دور کرنے کی مستند کوشش کی ہے۔ ہم نے بڑی حساسیت کے ساتھ اس پر توجہ مرکوز کی ہے۔

محترم صدر،

کبھی مذاق کیا جاتا ہے۔ یہ کیسا وزیراعظم ہے۔ لال قلعہ سے بیت الخلا کی بات۔ بڑا لطیفہ چلایا گیا۔ محترم اسپیکر، یہ بیت الخلا، یہ گھر عزت کا، یہ ان ماؤں بہنوں کی صلاحیتوں، ان کی سہولتوں اور ان کی حفاظت کا معاملہ ہے۔ یہی نہیں جناب اسپیکر جب میں سینیٹری پیڈز کی بات کرتا ہوں تو لوگ سوچتے ہیں کہ وزیر اعظم ایسے موضوعات میں کیوں جاتے ہیں۔

معزز چیئرمین،

سینیٹری پیڈز کی عدم دستیابی میں غریب بہن بیٹیوں کو کس ذلت کا سامنا کرنا پڑا، وہ بیماریوں کا شکار ہو جاتی تھیں۔ ماؤں بہنوں کو دن کے کئی گھنٹے دھوئیں میں گزارنے پڑے۔ ان کی زندگی دھوئیں میں پھنسی ہوئی تھی، ہمیں یہ خوش نصیبی ان غریب ماؤں بہنوں کو ملی ہے کہ اس سے نجات مل جائے۔ زندگی گزاری جاتی تھی۔ آدھا وقت پانی کے لیے، آدھا وقت وہ مٹی کے تیل کے اندر پھنس گیا۔ آج ہمیں ماؤں بہنوں کو اس سے نجات دلانے کا اطمینان حاصل ہوا ہے۔

محترم صدر،

جو پہلے چل رہا تھا اگر ہم اسے چلنے دیتے تو شاید کوئی ہم سے نہ پوچھتا کہ مودی جی نے ایسا یا ایسا کیوں نہیں کیا، کیونکہ آپ نے ملک کو ایسی حالت میں پہنچا دیا ہے کہ وہ اس سے باہر نہیں نکل سکتا۔ ملک اس طرح مایوسی میں ڈوبا ہوا تھا۔ ہم نے اجولا یوجنا کے ذریعے دھوئیں سے نجات دلائی، پانی اور پانی دیا، بہنوں کو با اختیار بنانے کے لیے کام کیا۔ 9 کروڑ بہنوں کو سیلف ہیلپ گروپس سے جوڑنا۔ کان کنی سے لے کر دفاع تک، آج ماؤں، بہنوں اور بیٹیوں کے لیے مواقع کھل گئے ہیں۔ ہماری حکومت نے اس موقع کو کھولنے کا کام کیا ہے۔

محترم صدر،

اس بات کو ہم یاد کریں، ووٹ بینک کی سیاست نے کبھی کبھی ملک کی صلاحیت کو بڑا دھچکا دیا ہے۔ اور اسی کا نتیجہ ہے کہ ملک میں جو ہونا چاہیے تھا، جو وقت پر ہونا چاہیے تھا، تاخیر سے ہوا۔ آپ متوسط ​​طبقے کو دیکھیں، متوسط ​​طبقے کو عرصہ دراز سے مکمل طور پر انکار کیا گیا۔ اس کی طرف دیکھا تک نہیں۔ ایک طرح سے وہ یہ مانتے چلے گئے کہ کوئی ہمارا نہیں، اپنے طور پر جو کچھ ہو سکے کر لیں۔ وہ اپنی تمام تر توانائیاں فقیروں پر صرف کرتا تھا۔ لیکن ہماری حکومت، این ڈی اے حکومت نے متوسط ​​طبقے کی ایمانداری کو تسلیم کیا ہے۔ ہم نے انہیں تحفظ فراہم کیا اور آج ہمارا محنتی متوسط ​​طبقہ ملک کو نئی بلندیوں پر لے جا رہا ہے۔ حکومت کی مختلف سکیموں سے متوسط ​​طبقے کو کتنا فائدہ ہوا، محترم سپیکر، میں 2014 سے پہلے کے جی بی ڈیٹا کی مثال دیتا ہوں کیونکہ آج دور بدل چکا ہے۔ آن لائن دنیا چل رہی ہے۔ ہر ایک کے ہاتھ میں موبائل ہے۔ کچھ لوگوں کے پاس موبائل ہوتا ہے چاہے ان کی جیبیں پھٹی ہوں۔

محترم اسپیکر، 2014 سے پہلے جی بی ڈیٹا کی قیمت 250 روپے تھی۔ آج یہ صرف 10 روپے ہے۔ محترم اسپیکر، ہمارے ملک میں اوسطاً ایک شہری 20 جی بی استعمال کرتا ہے۔ اگر میں اس حساب کو لاگو کروں تو اوسطاً ایک شخص کو 5000 روپے ملتے ہیں محترم اسپیکر۔

محترم صدر،

آج جن اوشدھی کی دکانیں پورے ملک میں کشش کا باعث بنی ہوئی ہیں، کیونکہ اگر کسی متوسط ​​طبقے کے خاندان میں کوئی بزرگ شہری ہے، اسے ذیابیطس جیسی بیماری ہے تو اسے 1000، 2000، 2500، 3000 کی دوائیاں لینا پڑتی ہیں۔ جن اوشدھی کیندر میں، جو دوا بازار میں 100 روپے میں دستیاب ہے، وہ جن اوشدھی میں 10، 20 روپے میں دستیاب ہے۔ آج دوائیوں کی وجہ سے متوسط ​​طبقے کے 20 ہزار کروڑ روپے بچ گئے ہیں۔

معزز چیئرمین،

ہر متوسط ​​طبقے کے خاندان کا ایک خواب ہوتا ہے کہ وہ ایک گھر کا مالک ہو اور ہم نے شہری علاقوں میں ہوم لون کے انتظامات کرنے کا ایک بہت اچھا کام کیا ہے اور RERA قانون کے نفاذ کی وجہ سے، اس قسم کا عنصر کبھی بھی ان کی محنت سے کمائی گئی رقم کو متاثر نہیں کرے گا۔ متوسط ​​طبقہ، ہم نے اسے ٹیکسوں سے آزاد کر کے ایک نیا ایمان دینے کا کام کیا جو اسے برسوں تک ڈوبتا رہا اور اس کی وجہ سے اسے اپنا گھر بنانے کی سہولت بڑھ گئی۔

محترم صدر،

ہر متوسط ​​طبقے کے خاندان کے ذہن میں اپنے بچوں کے مستقبل کی اعلیٰ تعلیم کے لیے ایک منصوبہ ہوتا ہے۔ وہ میڈیکل کالجوں، انجینئرنگ کالجوں اور پروفیشنل کالجوں کی تعداد میں آج کی طرح اضافہ کرنا چاہتا ہے۔ نشستیں بڑھا دی گئی ہیں۔ وہ متوسط ​​طبقے کی امنگوں کو بہت اچھے طریقے سے پیش کرتا ہے۔ اسے یقین ہونے لگا ہے کہ اس کے بچوں کا مستقبل روشن ہے۔

محترم صدر،

اگر ملک کو آگے بڑھنا ہے تو ہندوستان کو جدیدیت کی طرف لے جانے کے بغیر کوئی چارہ نہیں ہے۔ اور یہ وقت کا تقاضہ ہے کہ اب ہم وقت ضائع نہیں کر سکتے اور یہی وجہ ہے کہ ہم نے انفراسٹرکچر پر بہت زیادہ توجہ دی ہے اور اس بات سے بھی اتفاق کرتے ہیں کہ ہندوستان کسی زمانے میں غلامی کے دور سے پہلے جانا جاتا تھا، یہ ملک انفراسٹرکچر میں عالمی رہنما ہے۔ فن تعمیر، اس کی ایک طاقت تھی، ایک شناخت تھی۔ غلامی کے دور میں سب کچھ تباہ ہو گیا۔ امید تھی کہ ملک کی آزادی کے بعد وہ دن پھر آئے گا لیکن وہ بھی گزر گیا۔ ہم وہ نہیں کر سکے جو ہونا چاہیے تھا، جس رفتار سے ہونا چاہیے تھا، جس پیمانے کے ساتھ ہونا چاہیے تھا۔ آج اس دہائی میں ایک بڑی تبدیلی دیکھی جا رہی ہے۔ سڑکیں ہوں، سمندری راستے ہوں، تجارت ہو، آبی گزر گاہیں ہوں، آج ہر شعبے میں انفراسٹرکچر کی تبدیلی نظر آتی ہے۔ ہائی ویز پر ریکارڈ سرمایہ کاری ہو رہی ہے، معزز اسپیکر۔ آج ہندوستان میں چوڑی سڑکیں ہیں، ہائی ویز، ایکسپریس وے، آج ملک کی نئی نسل دیکھ رہی ہے۔ ہم اس سمت میں کام کر رہے ہیں تاکہ ہندوستان میں بہترین عالمی معیار کی شاہراہیں اور ایکسپریس ویز دیکھیں۔ پہلے ہم ریلوے کے انفراسٹرکچر پر بیٹھے رہے، جو انگریزوں نے دیا تھا، ہم نے اسی کو اچھا مان لیا۔ گاڑی چلتی تھی۔

محترم صدر،

عوامی زندگی میں میری زندگی میں، مجھے 4 سے 5 دہائیاں گزر چکی ہیں اور میں ایک ایسا شخص ہوں جو ہندوستان کے دیہاتوں سے گزرا ہے۔ 4 سے 5 دہائیوں تک، اس میں سے ایک طویل عرصہ خدمت کے طور پر گزرا ہے۔ مجھے ہر سطح کے خاندانوں کے ساتھ بیٹھنے اور بات کرنے کا موقع ملا ہے اور اس لیے میں ہندوستان کے ہر حصے میں سماج کے ہر احساس سے واقف ہوں۔ اور میں اس کی بنیاد پر اور بڑے اعتماد کے ساتھ کہہ سکتا ہوں کہ ہندوستان کا عام آدمی مثبتیت سے بھرا ہوا ہے۔ مثبتیت اس کی فطرت، اس کی ثقافت کا حصہ ہے۔ ہندوستانی سماج منفی کو برداشت کرتا ہے، اسے قبول نہیں کرتا، یہ اس کی فطرت نہیں ہے۔ ہندوستانی کمیونٹی کی فطرت خوش گوار ہے، یہ ایک خوشگوار معاشرہ ہے، یہ ایک ایسا معاشرہ ہے جو اچھے کاموں کی راہ پر گامزن ہے۔ تخلیق سے جڑا معاشرہ ہے۔ آج میں یہ کہنا چاہوں گا کہ جو لوگ یہاں یہ خواب لے کر بیٹھے ہیں کہ ایک بار یہاں بیٹھتے تھے، انہیں دوبارہ موقع ملے گا، ایسے لوگوں کو 50 بار سوچنا چاہیے، اپنی روش پر نظر ثانی کرنی چاہیے۔ جمہوریت میں، آپ کو بھی خود کا جائزہ لینے کی ضرورت ہے۔ آدھار آج ڈیجیٹل لین دین کا سب سے اہم حصہ بن گیا ہے۔ آپ نے اسے بھی بے بنیاد رکھا تھا۔ اب وہ بھی اس کے پیچھے لگ گئے تھے۔ حتیٰ کہ عدالت کو بھی اسے روکنے سے باز نہیں رکھا گیا۔ پتہ نہیں تمام جی ایس ٹی کو کیا کہا گیا ہے۔ پتہ نہیں لیکن آج جی ایس ٹی نے ہندوستان کی معیشت اور عام آدمی کی زندگی کو آسان بنانے میں بہت بڑا رول ادا کیا ہے۔ اس دور میں ایچ اے ایل کو کتنی گالیاں دی گئیں، دوسرے بڑے فورمز کا کس طرح غلط استعمال ہوا۔ آج یہ ایشیا میں ہیلی کاپٹر بنانے کا سب سے بڑا مرکز بن گیا ہے۔ جہاں سے سینکڑوں کی تعداد میں تیجس ہوائی جہاز بن رہے ہیں وہیں ہندوستانی فوج کے ہزاروں، ہزاروں اور کروڑوں روپے کے آرڈر آج ایچ اے ایل کے پاس

ہیں۔ ہندوستان کے اندر متحرک دفاعی صنعت آگے آرہی ہے۔ آج بھارت نے دفاعی برآمدات شروع کر دی ہیں۔ معزز اسپیکر، ہندوستان کا ہر نوجوان قابل فخر ہے، مایوسی میں ڈوبے ہوئے لوگوں سے کوئی توقع نہیں ہے۔

محترم صدر،

آپ بخوبی جانتے ہیں کہ وقت ثابت کر رہا ہے کہ جو کبھی یہاں دھرنا دیا کرتے تھے وہ وہاں جا کر بھی ناکام ہو گئے ہیں اور ملک تمیز کی طرف جا رہا ہے اور یہی وجہ ہے کہ آج مایوسی میں ڈوبے ہوئے لوگ وقت کا تقاضا ہے۔ تھوڑا سا سمجھدار ذہن۔ اسے رکھ کر خود کا جائزہ لیں۔

محترم صدر،

یہاں جموں-کشمیر پر بھی بات ہوئی اور جو لوگ حال ہی میں جموں-کشمیر گئے ہیں، انہوں نے دیکھا ہو گا کہ آپ کس قدر خوبصورتی سے جموں-کشمیر جا سکتے ہیں، گھوم سکتے ہیں۔

محترم صدر،

پچھلی صدی کے دوسرے نصف میں میں نے جموں و کشمیر میں بھی یاترا نکالی تھی اور لال چوک پر ترنگا لہرانے کا عہد لیا تھا اور اس وقت دہشت گردوں نے پوسٹر لگا کر کہا تھا کہ دیکھتے ہیں کس نے اپنی ماں کا دودھ پلایا، لال چوک پر آکر ترنگا کس نے لہرایا ہے۔ پوسٹر لگائے گئے اور وہ دن 24 جنوری تھا، میں نے جموں کے اندر ایک جلسے میں کہا تھا جناب صدر۔ میں پچھلی صدی کی بات کر رہا ہوں۔ اور پھر میں نے دہشت گردوں سے کہا کہ وہ کانوں سے سن لیں، میں 26 جنوری کو ٹھیک 11 بجے لال چوک پہنچوں گا، بغیر سیکیورٹی کے آؤں گا، بلٹ پروف جیکٹ کے بغیر آؤں گا اور فیصلہ لال چوک میں ہوگا، جس نے اپنی ماں کا دودھ پیا ہے۔

معزز چیئرمین،

اور جب سری نگر کے لال چوک میں ترنگا لہرایا گیا تو اس کے بعد میں نے میڈیا سے لوگوں سے پوچھنا شروع کیا تو میں نے کہا تھا کہ عموماً 15 اگست اور 26 جنوری کو جب ہندوستان کا ترنگا لہرایا جاتا ہے تو ہندوستان کا آرڈیننس، ہندوستان کے بارود کی سلامی، آواز آئیے کرتے ہیں۔ میں نے کہا، آج جب میں لال چوک کے اندر ترنگا لہرا رہا ہوں تو دشمن ملک کے بارود بھی سلامی دے رہے ہیں، گولیاں برسا رہے ہیں، بندوقیں اور بم پھوڑ رہے ہیں۔

محترم صدر،

جو امن آج آیا ہے، آج امن سے لوگ وہاں جا سکتا ہے۔ سینکڑوں بار جا سکتے ہیں۔ جموں و کشمیر نے کئی دہائیوں کے بعد اس ماحول اور سیاحت کی دنیا کے تمام ریکارڈ توڑ دیے ہیں۔ جموں و کشمیر میں آج جمہوریت کا تہوار منایا جا رہا ہے۔

محترم صدر،

آج جموں کشمیر میں ہر گھر میں ترنگا لہرانے کے کامیاب پروگرام ہیں۔ مجھے خوشی ہے کہ کچھ لوگ ایسے بھی ہیں، جو کبھی کہتے تھے کہ کچھ لوگ امن کو خراب کرنے کے لیے ترنگے سے ڈرتے تھے۔ کہا گیا کہ ترنگے سے جموں و کشمیر کا امن خراب ہونے کا خطرہ ہے۔ وقت دیکھیں، وقت کا مزہ دیکھیں- اب وہ ترنگا یاترا میں بھی شریک ہو رہے ہیں۔

اور محترم صدر صاحب،

اخبارات میں ایک خبر چھپی جس پر شاید کسی کا دھیان نہ گیا ہو۔ محترم اسپیکر، اسی وقت اخبارات میں ایک خبر اس کے ساتھ آئی جب یہ لوگ ٹی وی پر چمکنے کی کوشش کر رہے تھے۔ لیکن اسی وقت سری نگر کے اندر کئی دہائیوں کے بعد تھیٹر گھر بھرے ہوئے تھے اور علیحدگی پسند کہیں نظر نہیں آ رہے تھے۔ اب بیرونی ممالک نے یہ دیکھا ہے۔

معزز صدر

ابھی ہمارے دوست، ہمارے معزز ممبران شمال مشرق کے لیے پوچھ رہے تھے۔ میں کہوں گا کہ صرف ایک بار شمال مشرق میں آئیے۔ آئیے آپ کے دور کا شمال مشرق اور آج کے دور کا شمال مشرق دیکھیں۔ جدید چوڑی شاہراہیں ہیں، ریل کے ذریعے آرام دہ سفر ہے۔ آپ آرام سے ہوائی جہاز سے جا سکتے ہیں۔ آج شمال مشرق کے ہر کونے میں بڑے اور بڑے فخر سے کہتا ہوں کہ آزادی کے 75 سال منائے جا رہے ہیں تو میں فخر سے کہتا ہوں کہ 9 سالوں میں تقریباً 7500 لوگ جو ہتھیاروں کے راستے پر چل پڑے تھے، ایسے لوگوں نے ہتھیار ڈال دیے اور علیحدگی پسندی کے رجحان کو چھوڑ کر قومی دھارے میں آ گئے ہیں۔

محترم صدر صاحب،

آج تریپورہ میں لاکھوں خاندانوں کو پکے گھر ملے ہیں، مجھے ان کی خوشی میں شریک ہونے کا موقع ملا۔ جب میں نے تریپورہ میں ہیرے کی اسکیم کی بات کی تھی، تب میں نے کہا تھا ہائی وے-آئی وے-ریلوے اور ایئر وے ہیرا، آج یہ ہیرا تریپورہ کی سرزمین پر کامیابی سے قائم ہو رہا ہے۔ تریپورہ آج تیز رفتاری سے ہندوستان کی ترقی کے سفر میں شراکت دار بن گیا ہے۔

محترم صدر،

میں جانتا ہوں کہ سچ سننے کے لیے بھی بہت طاقت درکار ہوتی ہے۔ محترم اسپیکر، جھوٹے، گندے الزامات سننے کے لیے بھی بہت صبر کی ضرورت ہوتی ہے اور میں ان تمام لوگوں کو مبارکباد پیش کرتا ہوں جنہوں نے انتہائی گھٹیا باتوں کو تحمل سے سننے کی ہمت دکھائی، وہ مبارکباد کے مستحق ہیں۔ لیکن ملک اس بات کا گواہ ہے کہ اگر وہ سچ سننے کی صلاحیت نہیں رکھتے تو وہ کس قدر مایوسی میں ڈوب چکے ہوں گے۔

معزز چیئرمین،

سیاسی اختلافات ہو سکتے ہیں نظریات میں اختلاف ہو سکتا ہے لیکن یہ ملک لازوال ہے۔ چلیں – 2047 میں، ہم آزادی کے 100 سال منائیں گے، ہم ایک ترقی یافتہ ہندوستان بنائیں گے۔ خواب کے ساتھ چلو، قرارداد کے ساتھ چلو، پوری صلاحیت کے ساتھ چلو اور جو لوگ گاندھی کے نام پر بار بار روٹی سینکنا چاہتے ہیں، میں ان سے کہنا چاہتا ہوں کہ ایک بار گاندھی کو پڑھیں۔ مہاتما گاندھی کو ایک بار پڑھیں، مہاتما گاندھی نے کہا تھا کہ اگر آپ اپنا فرض ادا کرتے ہیں تو دوسروں کے حقوق کا تحفظ اسی میں ہے۔ آج ہم فرض اور حق کی لڑائی دیکھ رہے ہیں، شاید پہلی بار ملک نے ایسی بے حسی دیکھی ہوگی۔

اور اس لیے جناب اسپیکر،

میں ایک بار پھر معزز صدر کو مبارکباد پیش کرتا ہوں، صدر مملکت کا شکریہ ادا کرتا ہوں اور آج ملک یہاں سے نئے جوش، نئے ایمان اور نئے عزم کے ساتھ چل پڑا ہے۔

بہت بہت شکریہ!

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India's overall SDG score on national index up in 2023-24 at 71: NITI Aayog report

Media Coverage

India's overall SDG score on national index up in 2023-24 at 71: NITI Aayog report
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
Delegation from Catholic Bishops' Conference of India calls on PM
July 12, 2024

A delegation from the Catholic Bishops' Conference of India called on the Prime Minister, Shri Narendra Modi today.

The Prime Minister’s Office posted on X:

“A delegation from the Catholic Bishops' Conference of India called on PM Narendra Modi. The delegation included Most Rev. Andrews Thazhath, Rt. Rev. Joseph Mar Thomas, Most Rev. Dr. Anil Joseph Thomas Couto and Rev. Fr. Sajimon Joseph Koyickal.”