ہندوستان میں، ہم ایک AI اختراعی جذبے کا مشاہدہ کر رہے ہیں
حکومت کی پالیسیاں اور پروگرام ’ AIسب کے لیے‘ کے ذریعہ رہنمائی پاتے ہیں
ہندوستان AI کے ذمہ دارانہ اور اخلاقی استعمال کے لیے پرعزم ہے
اس میں کوئی شک نہیں کہ AI تبدیلی کا باعث ہے لیکن اسے زیادہ سے زیادہ شفاف بنانا ہم پر منحصر ہے
مصنوعی ذہانت پر اعتماد تبھی بڑھے گا جب متعلقہ اخلاقی، معاشی اور سماجی پہلوؤں پر توجہ دی جائے گی
ہمیں مصنوعی ذہانت کے اخلاقی استعمال کے لیے ایک عالمی فریم ورک تیار کرنے کے لیے مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے
کیا کسی بھی معلومات یا پروڈکٹ کو AI سے تیار کردہ کے طور پر نشان زد کرنے کے لیے کوئی سافٹ ویئر واٹر مارک متعارف کرایا جا سکتا ہے
ایک آڈٹ میکانزم دریافت کریں جو AI ٹولز کو ان کی صلاحیتوں کے مطابق سرخ، زرد یا سبز میں درجہ بند کر سکے
وزیر اعظم مودی نے اس بات پر زور دیا کہ جی پی اے آئی چوٹی کانفرنس میں ہونے والی بات چیت سے انسانیت کی بنیادی جڑوں کو سمت ملے گی اور اسے محفوظ بنایا جائے گا۔

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج نئی دہلی کے بھارت منڈپم میں مصنوعی ذہانت پر عالمی شراکت داری (جی پی اے آئی) سربراہی کانفرنس کا افتتاح کیا۔ وزیراعظم نے گلوبل اے آئی ایکسپو کا جائزہ بھی لیا۔ جی پی اے آئی  29 رکن ممالک کے ساتھ ملٹی اسٹیک ہولڈر اقدام ہے جس کا مقصد AI سے متعلقہ ترجیحات پر جدید تحقیق اور لاگو سرگرمیوں کی حمایت کرتے ہوئے AI پر نظریہ اور عمل کے درمیان فرق کو ختم کرنا ہے۔ ہندوستان 2024 میں جی پی اے آئی کی قیادت کرنے والا سربراہ ہے۔

مرکزی کابینہ میں میرے ساتھی، اشونی وشنو جی، راجیو چندر شیکھر جی، مصنوعی ذہانت سے متعلق عالمی شراکت داری(جی پی اے آئی)  کے سبکدوش ہونے والے چیئرپرسن، جاپان کے وزیر ہیروشی یوشیدا جی، رکن ممالک کے دیگر وزراء، دیگر معززین، خواتین و حضرات۔

میں آپ سب کا مصنوعی ذہانت  سے متعلق عالمی شراکت داری سربراہ کانفرنس میں خوش آمدید کہتا ہوں۔ مجھے خوشی ہے کہ ہندوستان اگلے سال اس چوٹی کانفرنس کی صدارت کرنے جا رہا ہے۔ یہ سربراہی اجلاس ایک ایسے وقت میں ہو رہا ہے جب پوری دنیا میں مصنوعی ذہانت کے حوالے سے زبردست بحث چل رہی ہے۔ اس بحث سے مثبت اور منفی ہر قسم کے پہلو سامنے آرہے ہیں۔ اس لیے اس سربراہی اجلاس سے وابستہ ہر ملک پر بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے۔ ماضی میں مجھے کئی سیاسی اور صنعت کاروں سے ملنے کا موقع ملا۔ میں نے ان سے اپنی ملاقات میں اس سربراہی اجلاس پر بھی تبادلہ خیال کیا ہے۔ موجودہ اور آنے والی نسلیں، کوئی بھی مصنوعی ذہانت کے اثرات سے باہر نہیں ہے۔ ہمیں بڑی احتیاط کے ساتھ، بڑے محتاط طریقےسے آگے بڑھنا ہے۔ اور یہی وجہ ہے کہ میں سمجھتا ہوں کہ اس سربراہی اجلاس سے ابھرنے والے خیالات، اس سربراہی اجلاس سے ابھرنے والی تجاویز پوری انسانیت کی بنیادی اقدار کے تحفظ اور انہیں سمت دینے کا کام کریں گی۔

دوستو

آج ہندوستان مصنوعی ذہانت ٹیلنٹ اور مصنوعی ذہانت سے متعلق نئے تصورات میں سب سے نمایاں فریق ہے۔ ہندوستان کے نوجوان ٹیک ماہرین اور محققین مصنوعی ذہانت کی حدود کو تلاش کر رہے ہیں۔ ہندوستان میں، ہم ایک بہت پرجوش مصنوعی ذہانت کے اختراعی جذبے کو دیکھ رہے ہیں۔ یہاں آنے سے پہلے مجھے مصنوعی ذہانت ایکسپو میں جانے کا موقع ملا۔ ہم دیکھ سکتے ہیں کہ کس طرح مصنوعی ذہانت اس ایکسپو میں زندگی بدل سکتی ہے۔یووا مصنوعی ذہانت اقدام کے تحت منتخب نوجوانوں کے خیالات کو دیکھ کر میرے لیےخوش ہونا فطری تھا۔ یہ نوجوان ٹیکنالوجی کے ذریعے سماجی تبدیلی لانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ہندوستان میں مصنوعی ذہانت سے متعلق حل کے بارے میں بحث اب ہر گاؤں تک پہنچ رہی ہے۔ حال ہی میں ہم نے زراعت میں مصنوعی ذہانت چیٹ-بوٹ کا آغاز کیا۔ اس سے کسانوں کو ان کی درخواست کی حیثیت، ادائیگی کی تفصیلات اور سرکاری اسکیموں سے متعلق تازہ جانکاری  جاننے میں مدد ملے گی۔ ہم مصنوعی ذہانت کی مدد سے ہندوستان میں اپنے صحت کے شعبے کو مکمل طور پر تبدیل کرنے کی سمت میں بھی کام کر رہے ہیں۔ پائیدار ترقی کے اہداف کے حصول میں بھی مصنوعی ذہانت اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔

 

دوستو

ہندوستان میں ہمارا ترقی کا منتر ہے - سب کا ساتھ، سب کا وکاس۔ ہم نے ‘مصنوعی ذہانت سب کے لیے’ کے جذبے سے متاثر ہو کر حکومتی پالیسیاں اور پروگرام تیار کیے ہیں۔ ہماری کوشش ہے کہ سماجی اور جامع ترقی کے لیے مصنوعی ذہانت کی صلاحیتوں سے بھرپور فائدہ اٹھایا جائے۔ ہندوستان مصنوعی ذہانت کے ذمہ دارانہ اور اخلاقی استعمال کے لیے بھی پوری طرح پابند ہے۔ ہم نے ‘‘مصنوعی ذہانت پر قومی پروگرام’’ شروع کیا ہے۔ ہم ہندوستان میں مصنوعی ذہانت مشن بھی شروع کرنے جا رہے ہیں۔ اس مشن کا مقصد ہندوستان میں مصنوعی ذہانت کمپیوٹ پاور کی مناسب صلاحیت قائم کرنا ہے۔ یہ ہندوستان کے اسٹارٹ اپس اور اختراع کاروں کو بہتر سہولیات فراہم کرے گا۔ اس مشن کے تحت، زراعت، صحت کی دیکھ بھال، تعلیم جیسے شعبوں میں مصنوعی ذہانت ایپلی کیشنز کو فروغ دیا جائے گا۔ ہم اپنے صنعتی تربیتی اداروں کے ذریعے مصنوعی ذہانت کی مہارت کو ٹائر-2 اور ٹائر-3 شہروں میں لے جا رہے ہیں۔ ہمارے پاس ایک ‘‘قومی مصنوعی ذہانت پورٹل’’ ہے، جو ملک میں مصنوعی ذہانت کے اقدامات کو فروغ دیتا ہے۔ آپ نے ’ایروات‘ اقدام کے بارے میں بھی سنا ہوگا۔ بہت جلد تمام تحقیقی لیبس، صنعتیں اور اسٹارٹ اپ اس مشترکہ پلیٹ فارم کو استعمال کرنے کے قابل ہو جائیں گے۔

دوستو

مصنوعی ذہانت کے ساتھ ہم ایک نئے دور میں داخل ہو رہے ہیں۔ مصنوعی ذہانت ٹیکنالوجی کے ایک ٹول سے کہیں زیادہ ہے۔ مصنوعی ذہانت  ہمارے نئے مستقبل کی تشکیل کے لیے سب سے بڑی بنیاد بن رہا ہے۔ مصنوعی ذہانت کی ایک بڑی طاقت اس کی لوگوں کو جوڑنے کی صلاحیت ہے۔ مصنوعی ذہانت کا صحیح استعمال نہ صرف ملک کی معاشی ترقی کو یقینی بناتا ہے بلکہ یہ مساوات اور سماجی انصاف کو بھی یقینی بناتا ہے۔ لہذا، مصنوعی ذہانت کو اپنے مستقبل کے لیے مختلف قسم کے مصنوعی ذہانت کی بھی ضرورت ہوگی۔ اس کا مطلب ہے، مصنوعی ذہانت کو سب کو شامل کرنا ہو گا، تمام نظریات کو اپنانا ہو گا۔ مصنوعی ذہانت کا ترقی کا سفر جتنا زیادہ جامع ہوگا، اس کے نتائج اتنے ہی زیادہ جامع ہوں گے۔

ہم نے دیکھا ہے کہ پچھلی صدی میں ٹیکنالوجی تک غیر مساوی رسائی کی وجہ سے معاشرے میں موجود عدم مساوات میں اضافہ ہوا تھا۔ اب ہمیں پوری انسانیت کو اس قسم کی غلطی سے بچانا ہے۔ ہم جانتے ہیں کہ جب جمہوری اقدار کو ٹیکنالوجی کے ساتھ جوڑ دیا جاتا ہے، تو یہ شمولیت کی طرف ایک ضرب کا کام کرتی ہے۔ اس لیے مصنوعی ذہانت کی مستقبل کی سمت بھی مکمل طور پر انسانی اقدار، جمہوری اقدار پر منحصر ہوگی۔ مصنوعی ذہانت ہماری کارکردگی کو بڑھانے میں مدد کر سکتی ہے۔ لیکن یہ ہم پر منحصر ہے کہ ہم جذبات کے لیے جگہ بھی برقرار رکھیں۔ مصنوعی ذہانت ہمارے اثر کو بڑھا سکتی ہے، لیکن یہ ہم پر منحصر ہے کہ ہم اپنی اخلاقیات کو بھی برقرار رکھیں۔ اس سمت میں، یہ پلیٹ فارم مختلف ممالک کے درمیان تعاون بڑھانے میں مدد کر سکتا ہے۔

 

دوستو

کسی بھی نظام کو پائیدار بنانے کے لیے اسے تبدیلی، شفاف اور قابل اعتماد بنانا ہوگا۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ مصنوعی ذہانت تبدیلی لانے والا ہے۔ لیکن یہ ہم پر منحصر ہے کہ ہم اسے زیادہ سے زیادہ شفاف بنائیں۔ اگر ہم استعمال شدہ ڈیٹا اور الگورتھم کو شفاف اور تعصب سے پاک بنا سکتے ہیں، تو یہ ایک اچھی شروعات ہوگی۔ ہمیں دنیا بھر کے لوگوں کو یہ باور کرانا ہے کہ مصنوعی ذہانت ان کے فائدے کے لیے ہے، ان کی بھلائی کے لیے ہے۔ ہمیں دنیا کے مختلف ممالک کو یہ بھی یقین دلانا ہوگا کہ اس ٹیکنالوجی کی ترقی کے سفر میں کوئی پیچھے نہیں رہے گا۔ جب مصنوعی ذہانت سے متعلق اخلاقی، معاشی اور سماجی خدشات کو مدنظر رکھا جائے گا تو مصنوعی ذہانت پر اعتماد بڑھے گا۔ مثال کے طور پر، اگر اپ اسکلنگ اور ری اسکلنگ مصنوعی ذہانت  کے فروغ کا حصہ بن جاتی ہے، تو نوجوان اس بات پر بھروسہ کر سکیں گے کہ مصنوعی ذہانت ان کے مستقبل کی بہتری کے لیے ہے۔ اگر ڈیٹا سیکیورٹی پر توجہ دی جائے تو لوگ اس بات پر بھروسہ کرسکیں گے کہ مصنوعی ذہانت ان کی رازداری میں مداخلت کیے بغیر ترقی کو آگے بڑھائے گا۔ اگر گلوبل ساؤتھ کو معلوم ہے کہ مصنوعی ذہانت کی ترقی میں ان کا بھی بڑا کردار ہوگا، تو وہ اسے مستقبل کے راستے کے طور پر قبول کر سکیں گے۔

دوستو

مصنوعی ذہانت کے بہت سے مثبت پہلو ہیں لیکن اس سے متعلق منفی پہلو بھی مساوی تشویش کا باعث ہیں۔ مصنوعی ذہانت 21ویں صدی میں ترقی کا سب سے بڑا ذریعہ بن سکتا ہے اور 21ویں صدی کو تباہ کرنے میں بھی سب سے بڑا کردار ادا کر سکتا ہے۔ ڈیپ فیک کا چیلنج آج پوری دنیا کے سامنے ہے۔ اس کے علاوہ سائبر سیکیورٹی، ڈیٹا چوری اور مصنوعی ذہانت ٹولز کے دہشت گردوں کے ہاتھ میں آنے کا بھی بڑا خطرہ ہے۔ اگر مصنوعی ذہانت سے لیس ہتھیار دہشت گرد تنظیموں تک پہنچ گئے تو اس کا عالمی سلامتی پر بہت بڑا اثر پڑے گا۔ ہمیں اس موضوع پر بات کرنے اور مصنوعی ذہانت کے غلط استعمال کو روکنے کے بارے میں ایک ٹھوس منصوبے تک پہنچنے کی ضرورت ہے۔ اسی لیے، جی20 صدارت کے دوران، ہم نے ذمہ دار انسانی-مرکزی مصنوعی ذہانت گورننس کے لیے ایک فریم ورک بنانے کی تجویز پیش کی۔جی20 نئی دہلی اعلامیہ نے ‘مصنوعی ذہانت اصولوں’ کے تئیں تمام رکن ممالک کے عزم کا اعادہ کیا ہے۔ مصنوعی ذہانت کے استعمال سے وابستہ خطرات کے بارے میں تمام ممبران کے درمیان ایک ہی سمجھ تھی۔ جس طرح ہمارے پاس مختلف بین الاقوامی مسائل کے لیے معاہدے اور پروٹوکول ہیں، ہمیں مصنوعی ذہانت کے اخلاقی استعمال کے لیے ایک عالمی فریم ورک بنانے کے لیے مل کر کام کرنا ہوگا۔ اس میں ہائی رسک یا فرنٹیئر اے آئی ٹولز کی جانچ اور تعیناتی کے پروٹوکول بھی شامل ہوں گے۔ اس کے لیے یقین، عزم، ہم آہنگی اور تعاون کی سب سے زیادہ ضرورت ہے۔ مصنوعی ذہانت کے ذمہ دارانہ استعمال کو یقینی بنانے کے لیے ہمیں مل کر ایسے اقدامات کرنے ہوں گے۔ آج اس چوٹی کانفرنس کے ذریعے ہندوستان پوری عالمی دنیا سے مطالبہ کرتا ہے کہ ہمیں اس سمت میں ایک لمحہ بھی ضائع نہیں کرنا چاہیے۔ اس سال میں صرف چند دن باقی ہیں، نیا سال آنے والا ہے۔ ہمیں عالمی فریم ورک کو ایک مقررہ مدت میں مکمل کرنا ہے۔ انسانیت کی حفاظت کے لیے ایسا کرنا بہت ضروری ہے۔

 

دوستو

مصنوعی ذہانت صرف ایک نئی ٹیکنالوجی نہیں ہے، یہ دنیا بھر میں ایک تحریک بن چکی ہے۔ اس لیے ہم سب کو مل کر کام کرنا بہت ضروری ہے۔ اگلے دو دنوں میں آپ سب بہت سے موضوعات پر بات کریں گے۔ جب بھی میں کسی مصنوعی ذہانت ماہر سے ملتا ہوں، میں اپنے سوالات اور تجاویز کو روک نہیں سکتا۔ آج آپ ماہرین سے بات کرتے ہوئے میرے ذہن میں بہت سی باتیں آرہی ہیں۔ ہمیں سوچنا ہوگا کہ مصنوعی ذہانت سے تیار کردہ معلومات کی ساکھ کیسے بڑھائی جا سکتی ہے؟ ڈیٹا سیٹ کیا ہو سکتا ہے جس کا استعمال کرتے ہوئے ہم مصنوعی ذہانت ٹولز کی تربیت اور جانچ کر سکتے ہیں؟ کسی کو یہ بھی سوچنا چاہیے کہ مصنوعی ذہانت ٹول کو مارکیٹ میں جاری کرنے سے پہلے کتنی جانچ کرنی چاہیے۔ کیا ہم کوئی ایسا سافٹ ویئر واٹر مارک متعارف کروا سکتے ہیں، جس سے یہ ظاہر ہو کہ یہ معلومات یا پروڈکٹ مصنوعی ذہانت سے تیار کی گئی ہے؟ اس کے ساتھ، جو شخص مصنوعی ذہانت سے تیار کردہ معلومات کا استعمال کرتا ہے وہ اس کی حدود سے آگاہ ہو جائے گا۔

میں ہندوستان میں مرکزی حکومت اور ریاستی حکومت کے ذمہ داروں سے بھی ایک بات کہنا چاہوں گا۔ حکومتوں کے پاس اسکیموں سے متعلق مختلف قسم کے ڈیٹا ہوتے ہیں۔ ثبوت پر مبنی فیصلہ سازی میں اسے کیسے استعمال کیا جا سکتا ہے؟ کیا ہم ایسے ڈیٹا کو مصنوعی ذہانت ٹولز کی تربیت کے لیے استعمال کر سکتے ہیں؟ کیا ہم ایک آڈٹ میکانزم قائم کر سکتے ہیں جس میں مصنوعی ذہانت ٹولز کو ان کی صلاحیتوں کی بنیاد پر سرخ، پیلے یا سبز میں درجہ بندی کیا جا سکتا ہے؟ کیا ہم ایک ادارہ جاتی میکانزم قائم کر سکتے ہیں جو لچکدار روزگار کو یقینی بنائے؟ کیا ہم معیاری عالمی مصنوعی ذہانت تعلیمی نصاب لا سکتے ہیں؟ کیا ہم لوگوں کو مصنوعی ذہانت سے چلنے والے مستقبل کے لیے تیار کرنے کے لیے معیارات مرتب کر سکتے ہیں؟ حکومت سے وابستہ لوگ اور آپ تمام ماہرین ایسے بہت سے سوالات پر ضرور غور کریں۔

 

دوستو

آپ جانتے ہیں کہ ہندوستان میں سینکڑوں زبانیں بولی جاتی ہیں، ہزاروں بولیاں ہیں۔ یہ بھی سوچیں کہ ڈیجیٹل شمولیت کو بڑھانے کے لیے مصنوعی ذہانت کی مدد سے مقامی زبانوں میں ڈیجیٹل خدمات کیسے دستیاب کی جا سکتی ہیں۔ اس بات پر بھی کام کریں کہ جو زبانیں اب بولی نہیں جاتیں ان کو مصنوعی ذہانت کی مدد سے کیسے زندہ کیا جا سکتا ہے۔ سنسکرت زبان کی علمی بنیاد اور ادب بہت مالا مال ہے۔ یہ بھی سوچیں کہ AI کی مدد سے اسے کیسے آگے بڑھایا جا سکتا ہے۔ یہ دیکھنے کی بھی کوشش کی جانی چاہیے کہ آیا ویدک ریاضی کی گمشدہ جلدوں کو مصنوعی ذہانت کی مدد سے دوبارہ ملایا جا سکتا ہے۔

 

دوستو

مجھے یقین ہے کہ یہ سربراہی اجلاس خیالات کے تبادلے کا ایک بہترین موقع فراہم کرے گا۔ میں چاہتا ہوں کہ یہ سربراہی اجلاس اس میں شرکت کرنے والے ہر مندوب کے لیے سیکھنے کا بہترین تجربہ ثابت ہو۔ اگلے دو دنوں میں آپ مصنوعی ذہانت کے مختلف پہلوؤں کا جائزہ لیں گے۔ مجھے امید ہے کہ ہمارے مخصوص نتائج برآمد ہوں گے۔ ان پر عمل درآمد کرکے، ہم یقینی طور پر ایک ذمہ دار اور پائیدار مستقبل کی تعمیر کی راہ ہموار کریں گے۔ میں آپ سب کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

بہت بہت شکریہ.

نمسکار

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Make in India: Google to manufacture drones in Tamil Nadu, may export it to US, Australia, others

Media Coverage

Make in India: Google to manufacture drones in Tamil Nadu, may export it to US, Australia, others
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر،25مئی 2024
May 25, 2024

Citizens Express Appreciation for India’s Muti-sectoral Growth with PM Modi’s Visionary Leadership