Launches Pradhan Mantri Samajik Utthan evam Rozgar Adharit Jankalyan (PM-SURAJ) portal
Sanctions credit support to 1 lakh entrepreneurs of disadvantaged sections
Distributes Ayushman Health Cards and PPE kits to Safai Mitras under NAMASTE scheme
“Today’s occasion provides a glimpse of the government’s commitment to prioritize the underprivileged”
“Seeing the benefits reaching the deprived makes me emotional as I am not separate from them and you are my family”
“Goal of Viksit Bharat by 2047 can not be achieved without the development of the deprived segments”
“Modi gives you guarantee that this campaign of development and respect of the deprived class will intensify in the coming 5 years. With your development, we will fulfill the dream of Viksit Bharat”

نمسکار،

سماجی انصاف کے وزیر جناب وریندر کمار جی،ملک کے کونے کونے سے مختلف سرکاری اسکیموں کے استفادہ کنندگان، ہمارے صفائی کارکن بھائی بہن، دیگر تمام معززین، خواتین و حضرات،آج اس پروگرام میں ملک کے تقریباً 470 اضلاع سے تقریباً 3 لاکھ لوگ براہ راست جڑے ہوئے ہیں۔ میں ان سب کا اسقبال کرتا ہوں۔

ساتھیوں،

آج ملک دلت،پسماندہ اورمحروم سماج کی بہبود کی سمت می ایک اور بڑے موقع کا گواہ بن رہا ہے۔ جب محروم افراد کو ترجیح کا جذبہ ہو  تو کس طرح کام ہوتا وہ اس انعقاد میں دکھائی دے رہا ہے۔ آج 720کروڑ روپے کی امداد براہ راست محروم طبقے سے تعلق رکھنے والے ایک لاکھ مستحقین کے بینک کھاتوں میں بھیجی گئی ہے۔ یہ مستحقین 500 سے زائد اضلاع میں موجود ہیں۔

پہلے کی حکومتوں میں ایسا کوئی سوچ بھی نہیں سکتا تھا کہ یہاں ایک بٹن دبانے سے غریبوں کے بینک کھاتوں میں پیسے پہنچ جائیں گے،لیکن یہ مودی کی حکومت ہے! غریب کی رقم براہ راست اس کے بینک اکاؤنٹ میں پہنچ جاتی ہے! اب میں نے سورج پورٹل بھی شروع کیا ہے۔ اس کے ذریعے اب محروم طبقے کے لوگوں کو براہ راست مالی امداد فراہم کی جا سکے گی۔ یعنی حکومت ہند کی دیگراسکیموں کی طرح مختلف دیگراسکیموں کے پیسےبھی براہ راست آپ کے کھاتے میں پہنچیں گے۔  نہ تو کوئی بچولیہ، نہ کٹ، نہ کمیشن اور نہ ہی کسی سفارش کے لیے چکر کاٹنے کی ضرورت!

مشکل حالات میں کام کرنے والے ہمارے سیوراورسیپٹک ٹینک کے کارکنوں کوبھی آج پی پی ای کٹس اورآیوشمان ہیلتھ کارڈ دیے جا رہے ہیں۔ انہیں اور ان کے اہل خانہ کواب 5 لاکھ روپے تک کا مفت علاج یقینی ہوگیا ہے۔ یہ سود منداسکیمیں اُس خدمات مہم کی توسیع ہیں، جو ہماری حکومت دس برسوں سے ایس سی-ایس ٹی،او بی سی اوردیگر محروم طبقات کے لیے چلا رہی ہے۔ میں ان اسکیموں کے لیے آپ سب کو اور ملک بھر کے تمام استفادہ کنندگان کو مبارکباد دیتا ہوں۔

 

ساتھیوں،

کچھ عرصہ قبل مجھے بھی کچھ مستحقین سے بات کرنے کا موقع ملا ہے۔ سرکاری اسکیمیں کس طرح دلت،محروم اور پسماندہ طبقوں تک پہنچ رہی ہیں، یہ اسکیمیں کس طرح ان کی زندگی بدل رہی ہیں، یہ مثبت تبدیلی ذہن و دل  کو بھی سکون دیتی ہے اور مجھے ذاتی طور پر جذباتی بھی بنا دیتی ہے۔ میں آپ سب سے مختلف نہیں ہوں،مجھے آپ میں اپنا خاندان نظر آتا ہے۔ اسی لیے جب اپوزیشن کے لوگ مجھے گالی دیتے ہیں، جب وہ کہتے ہیں کہ مودی کا کوئی خاندان نہیں ہے،تو میں سب سے پہلے آپ کا خیال کرتا ہوں۔ آپ جیسے بہن بھائیوں کو کوئی کیسے بتا سکتا ہے کہ اس کا کوئی خاندان نہیں ہے؟ میرے پاس آپ سب کی شکل میں کروڑوں دلتوں،محروم لوگوں اور ملک والوں کا خاندان ہے۔ میں خود کو خوش قسمت سمجھتا ہوں جب آپ کہتے ہیں کہ‘میں ہوں مودی کا خاندان۔’

ساتھیوں،

ہم نے2047 تک ہندوستان کوایک ترقی یافتہ ملک بنانے کا جو عہدکیا ہے، ہدف رکھا ہے اور ہندوستان اس طبقے کی ترقی کے بغیر ترقی نہیں کرسکتا جو دہائیوں سے محروم رہا ہے۔ کانگریس کی حکومتوں نے ملک کی ترقی میں محروم طبقے کی اہمیت کوکبھی نہیں سمجھا، اس کی پروا تک نہیں کی۔ ان لوگوں کو کانگریس نے ہمیشہ سہولیات سے محروم رکھا۔ ملک کے کروڑوں لوگوں کو ان کے نصیب پرچھوڑ دیا گیا اور بدقسمتی سے ایسا ماحول بنا دیا گیا کہ یہ اسکیمیں، یہ فائدے، یہ زندگی تو  صرف ان کے لیے ہے۔ ہمارے لیے بھی ایسا ہی ہے،ہمیں تو ایسے ہی  مصیبتوں میں جینا ہے، یہ ذہنیت بن گئی اوراس کی وجہ سے حکومتوں کے خلاف شکایت بھی نہیں رہی۔ میں نے وہ ذہنی دیوار توڑ دی ہے۔ آج اگر اچھے گھروں میں گیس کا چولہا ہوگا تو محروموں کے گھر میں بھی  گیس کا چولہا ہوگا۔ اگر اچھے خاندانوں کے بینک اکاؤنٹس ہوں گے تو غریب کا، دلت کا، پسماندہ طبقات کا، قبائل کا بھی بینک اکاؤنٹ ہوگا۔

ساتھیوں،

اس طبقے کی کئی نسلوں نے اپنی زندگی  بنیادی سہولیات جمع کرنے میں ہی گنوا دیں۔ 2014 میں ہماری حکومت نے سب کا ساتھ، سب کا وِکاس کے وژن کے ساتھ کام کرنا شروع کیا۔ حکومت ان لوگوں تک پہنچی،جنہوں نے حکومت سے امیدیں چھوڑ دی تھیں اور انہیں ملک کی ترقی میں شراکت دار بنایا۔

ساتھیوں،

آپ کو یاد ہوگا کہ پہلے راشن کی دکان سے راشن لینا کتنا مشکل تھا اور اس مصیبت کا سامنا کون کر رہا تھا، وہ کون لوگ تھے جنہیں سب سے زیادہ مشکل کا سامنا کرنا پڑا؟ مشکلات کا سامنا کرنے والے یہ لوگ یا تو ہمارے دلت بھائی بہن تھے یا ہمارے پسماندہ بھائی بہن یا ہمارے او بی سی بھائی بہن یا ہمارے قبائلی بھائی بہن ہوتے تھے۔ آج جب ہم 80 کروڑ ضرورت مندوں کو مفت راشن دیتے ہیں تو اس کا سب سے زیادہ فائدہ ان لوگوں کو ملتا ہے،جو پہلے حاشیے پر رہتے تھے یعنی محروم طبقات ہیں انہی کو ملتا ہے۔

 

آج جب ہم 5 لاکھ روپے تک کے مفت علاج کی ضمانت دیتے ہیں تو ان بہن بھائیوں کی سب سے بڑی تعداد کی جانیں بچ جاتی ہیں اورمشکل کے وقت ان کی مدد کی جاتی ہے۔ ہمارے دلت،قبائلی اور پسماندہ خاندان،جو چھپروں،جھونپڑیوں اور کھلے میں رہنے پر مجبور ہیں، ملک میں سب سے زیادہ ہیں، کیونکہ ماضی میں کسی نے ان لوگوں کی پروا نہیں کی۔

مودی نے دس سالوں میں غریبوں کے لیے کروڑوں پکے گھر بنوائے۔ مودی نے کروڑوں گھروں میں بیت الخلاء بنوائے۔ وہ خاندان کون تھے،جن کی ماؤں بہنوں کو کھلے میں رفع حاجت کے لیے جانا پڑتا تھا؟ یہی سماج سب سے زیادہ مصیبت جھیل رہا تھا، جو ہمارے دلت، قبائلی،او بی سی،محروم خاندانوں اور ان کی خواتین کو برداشت کرنا پڑتا تھا۔ آج انہیں عزت گھر ملا ہے، انہیں ان کا وقار ملا ہے۔

ساتھیوں،

آپ یہ بھی جانتے ہیں کہ پہلے کن گھروں میں گیس  کا چولہا ہوتا تھا۔ سب جانتے ہیں کہ کس کے پاس گیس کا چولہا نہیں تھا۔ مودی نے اجولا اسکیم چلاکر مفت میں گیس کنکشن دیا۔ یہ مفت گیس کنکشن جو مودی لائے تھے کس کو ملے؟ آپ میرے تمام محروم بھائیوں اور بہنوں کو ملا ہے۔ آج میرے محروم طبقے کی ماؤں بہنوں کو بھی لکڑی کے دھوئیں سے آزادی ملی ہے۔ اب ہم ان اسکیموں میں تکمیلیت کے ہدف پر کام کر رہے ہیں، یعنی صد فیصد۔اگر 100 لوگوں کو فائدہ ملنا چاہیے تو 100 میں سے 100 کو ملنا ہی چاہیے۔

ملک میں خانہ بدوش اور نیم خانہ بدوش کمیونٹی کے لوگ بڑی تعداد میں ہیں، ان کی فلاح و بہبود کے لیے بہت سے پروگرام چلائے جا رہے ہیں۔ نمستے اسکیم کے ذریعے صفائی کارکنوں کی زندگی بہتر ہورہی ہے۔ ہم دستی صفائی کے غیرانسانی عمل کو ختم کرنے میں بھی کامیاب ہو رہے ہیں۔ ہم اس داغ کو جھیلنے والے لوگوں کے لیے باوقار زندگی گزارنے کے انتظامات بھی کر رہے ہیں۔ اس کوشش کے تحت تقریباً 60 ہزار لوگوں کو مالی امداد دی گئی ہے۔

ساتھیوں،

ہماری حکومت ایس سی-ایس ٹی، او بی سی محروم طبقات کو آگے لانے کی ہر ممکن کوشش کر رہی ہے۔ ان 10 سالوں میں ہم نے مختلف اداروں سے محروم طبقات کوملنے والی امداد کو دوگنا کر دیا ہے۔ صرف اس سال حکومت نے ایس سی کمیونٹی کی بہبود کے لیے تقریباً 1 لاکھ 60 ہزار کروڑ روپے دیے ہیں۔ پچھلی حکومت میں لاکھوں کروڑوں روپے کے گھوٹالوں کے نام ہی سننے کو ملتے تھے۔ ہماری حکومت یہ رقم دلتوں اور محروموں کی فلاح و بہبود اور ملک کی ترقی کے لیے خرچ کر رہی ہے۔

 

ایس سی-ایس ٹی اوراو بی سی کمیونٹی کے نوجوانوں کے لیے دستیاب اسکالرشپ میں بھی اضافہ کیا گیا ہے۔ ہماری حکومت نے میڈیکل سیٹوں میں آل انڈیا کوٹہ میں او بی سی کے لیے 27 فیصد ریزرویشن نافذ کیا ہے۔ ہم نے نیٹ(این ای ای ٹی) کے  امتحان میں بھی او بی سی کے لیے راستہ بنایا ہے۔ غیرمراعات یافتہ طبقے کے بچے جو ماسٹراور پی ایچ ڈی کی ڈگریاں حاصل کرنے کے لیے بیرون ملک جانا چاہتے ہیں، انہیں نیشنل اوورسیز اسکالرشپ سے مدد مل رہی ہے۔

سائنس سے متعلقہ مضامین میں پی ایچ ڈی کرنے والے طلباء کو آگے بڑھانے کے لیے نیشنل فیلو شپ کی رقم میں بھی اضافہ کیا گیا ہے۔ ہم مطمئن ہیں کہ ہماری کوششوں سے پسماندہ طبقات کے قومی کمیشن کو آئینی درجہ ملا ہے۔ ہم اسے بھی اپنی خوش قسمتی سمجھتے ہیں کہ ہمیں بابا صاحب امبیڈکر کی زندگی سے متعلق پنچ تیرتھوں کی ترقی کا موقع  ملا ہے۔

ساتھیوں،

بی جے پی حکومت محروم طبقات کے نوجوانوں کے روزگار اور خود روزگار کو بھی ترجیح دے رہی ہے۔ ہماری حکومت کی مُدرا یوجنا کے تحت غریبوں کوتقریباً 30 لاکھ کروڑ روپے کی امداد دی گئی ہے۔ یہ مدد حاصل کرنے والے زیادہ تر نوجوانوں کا تعلق ایس سی،ایس ٹی اوراو بی سی زمروں سے ہے۔ اسٹینڈ اَپ انڈیااسکیم نے ایس سی اور ایس ٹی زمروں میں انٹرپرینیورشپ کو بڑھاوا ملاہے۔ اس زمرے کو ہماری وینچر کیپیٹل فنڈاسکیم سے بھی مدد ملی ہے۔ دلتوں کے درمیان کاروبارکو ذہن میں رکھتے ہوئے، ہماری حکومت نے امبیڈکرسوشل انوویشن اورانکیوبیشن مشن بھی شروع کیا ہے۔

ساتھیوں،

دلت، قبائلی،او بی سی یا ہماری پسماندہ اورمحروم برادریوں کو ہماری حکومت کی غریب فلاحی اسکیموں کا سب سے زیادہ فائدہ ملا ہے،لیکن جب مودی دلت،محروم سماج کی خدمت کے لیے کچھ کرتے ہیں، تو اِنڈی اتحاد کے لوگ سب سے زیادہ ناراض ہوتے ہیں۔ کانگریس والے کبھی نہیں چاہتے کہ دلتوں،پسماندہ طبقات اورقبائلیوں کی زندگی آسان ہو۔ وہ تو آپ کو بس ترسا کر ہی رکھنا چاہتے ہیں۔

آپ جس بھی اسکیم کو دیکھیں، ا نہوں نے آپ کے لیے بیت الخلاء بنوانے کا مذاق اڑایا۔ انہوں نے جن دھن یوجنا اور اجولا یوجنا کی مخالفت کی۔ جن ریاستوں میں ان کی حکومتیں ہیں،وہاں انہوں نے آج تک کئی اسکیموں کو لاگونہیں ہونے دیا۔ وہ جانتے ہیں کہ اگر تمام دلت، پسماندہ طبقات اور ان کے نوجوان آگے آئیں گے تو ان کی خاندانی سیاست کی دکان بند ہو جائے گی۔

 

یہ لوگ سماجی انصاف کا نعرہ دے کرسماج کو ذاتوں میں تقسیم کرنے کا کام کرتے ہیں،لیکن حقیقی سماجی انصاف کی مخالفت کرتے ہیں۔ آپ ان کا ٹریک ریکارڈ دیکھیں،اسی کانگریس نے بابا صاحب امبیڈکر کی مخالفت کی تھی۔ انہوں نے لوہیا اور بی پی منڈل کی بھی مخالفت کی۔ ان لوگوں نے بھی ہمیشہ کرپوری ٹھاکر جی کی بے عزتی کی اور جب ہم نے انہیں بھارت رتن دیا تو اِنڈی اتحاد کے لوگوں نے اس کی بھی مخالفت کی۔ یہ لوگ خوداپنے گھر والوں کو بھارت رتن دیتے تھے، لیکن انہوں نے کئی دہائیوں تک بابا صاحب کو بھارت رتن نہیں ملنے دیا۔ انہیں یہ اعزاز بی جے پی کی حمایت والی حکومت نے دیا ہے۔

یہ لوگ کبھی نہیں چاہتے تھے کہ رام ناتھ کووند جی، جو دلت سماج سے آتے ہیں اور قبائلی سماج سے آنے والی خاتون بہن دروپدی مرمو جی صدر جمہوریہ بنیں۔ انہیں انتخاب ہروانے کے لیے اِنڈی اتحاد کے لوگوں نے ایڑی چوٹی  کا زور لگا دیا تھا۔ اعلیٰ عہدوں پر محروم طبقات کے لوگ پہنچیں، اس کے لیے بی جے پی کی کوشش جاری رہے گی۔ یہ محروم طبقات کو وقار اور انصاف دلانے کی ہماری عہد بندی کا ثبوت ہے۔

مودی آپ کو یہ گارنٹی دیتا ہے، آنے والے 5 سالوں میں محروم طبقات ترقی اور وقار کی یہ مہم اور تیز ہوگی۔ آپ کی ترقی سے ہم وِکست بھارت کا خواب پورا کریں گے۔ ایک بار پھر،آپ سب کا اتنی بڑی تعداد میں اتنی جگہوں پر جمع ہونااور مجھے ویڈیو کانفرنس کے توسط سے آپ کا درشن کرنے کا موقع ملا،یہ اپنے آپ میں میرے لیے خوش قسمتی ہے۔ میں آپ سب کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔

بہت بہت شکریہ۔

 

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
Lok Sabha polls: J&K's Baramulla sees highest voter turnout in over 4 decades

Media Coverage

Lok Sabha polls: J&K's Baramulla sees highest voter turnout in over 4 decades
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM Modi addresses a public meeting in Prayagraj, Uttar Pradesh
May 21, 2024
India is now identified by its expressways and high-tech infrastructure: PM Modi in Prayagraj, UP
The Shehzada of Congress goes abroad to insult India: PM Modi in Prayagraj, UP
During the SP-Congress times, Prayagraj faced a lot of discrimination: PM Modi in Prayagraj, UP

Prime Minister Narendra Modi addressed a huge public gathering in Prayagraj, emphasizing the cultural and spiritual significance of the region, highlighting the progress made under his government, and drawing sharp contrasts with previous administrations.

"Prayag is a land of penance. It is the land of the grandeur of Kumbh. The blessings of Tirthraj Prayag, mean the blessings of the entire world," said PM Modi, as he opened his speech, acknowledging the rich heritage and cultural vibrancy of Prayagraj.

"This election of 2024 will decide the direction in which the Triveni of India's future will flow," PM Modi said, emphasizing the critical nature of the upcoming elections in shaping the country's future trajectory.

Highlighting India's progress, the Prime Minister stated, "India is now identified by its expressways and high-tech infrastructure. Major countries tell me, they also want India's digital technology. India is now raising its voice strongly in the world. When India hosts the G-20, the world is amazed."

PM Modi drew parallels between the spirit of Prayagraj and the modern Indian ethos: "The people here do not live under pressure from anyone. Nor do they live in fear of anyone. The vitality I have seen in the people of Prayagraj is rarely found. And this is the temperament of today's India as well."

PM Modi criticized the opposition parties, particularly the SP, Congress, and the INDI alliance, for their inability to digest India's progress. "The Shehzada of Congress goes abroad to insult India. On what agenda are these INDI alliance people fighting the election? Their agenda is to reinstate Article 370 in Kashmir. Their agenda is to cancel the CAA. Their agenda is to repeal the stringent laws against corruption. Will you vote for them to do all this?" he questioned the audience.

Recalling the days of SP and Congress rule, PM Modi said, "During the SP-Congress times, Prayagraj faced a lot of discrimination. Do you remember how you were made to suffer for electricity? There was the noise and smoke of generators outside every shop. Today, under Yogi Ji's government, every district is getting equal and ample electricity. Before 2017, farmers had to stay awake all night to irrigate their fields. Today, even farmers are getting electricity easily."

"Modi's mantra is, ‘Vikas Bhi, Virasat Bhi’. A grand Ram Mandir has been built in Ayodhya. Now, the development of Nishadraj's Shringverpur will also be done. Shringverpur will become a major pilgrimage site on the Ram Van Gaman Path. Would the SP-Congress people ever do this work?" he asked, highlighting his government's commitment to preserving cultural heritage while pursuing development.

Addressing the first-time voters, PM Modi said, "There are many first-time voters in UP, who might not know much about the 14 years of Vanvas that UP endured. What used to happen during the days of the family-oriented party? How it was difficult for our sisters and daughters to step out of the house. Industries and businesses were ruined."

But Congress and SP are preparing to give reservations meant for Dalits and backward classes to their vote bank against the Constitution. "In Karnataka, the Congress government has given the OBC quota to Muslims. Now, they want to do the same across the country. But today, Modi is here on the land of Prayagraj to guarantee. I will not let them take away the reservations meant for Dalits and backward classes. And this is Modi's guarantee."

Concluding his speech, PM Modi urged the people of Prayagraj to support the BJP candidates in the upcoming elections. "The votes you give them will strengthen Modi. Tell me, will you send them to win on June 4th? Say loudly, will the lotus bloom in both seats?” he said.