Share
 
Comments
ماضی میں جب بھی کوئی بڑا انسانی بحران آیا ہے، سائنس نے ایک بہتر مستقبل کے لئے راستہ تیار کیا ہے: وزیر اعظم
آج کا بھارت ہر شعبے میں آتم نربھر اور خودکفیل بننا چاہتا ہے: وزیر اعظم مودی
بھارت کا ہدف اس دہائی کی ضرورتوں کے علاوہ آئندہ دہائی کی ضرورتوں کے ساتھ بھی ہم آہنگ ہونا چاہئے: وزیر اعظم مودی

نئی دہلی، 4 جون 2021،       پروگرام میں میرے  ساتھ جڑ رہے  کابینہ میں میرے رفقاء نرملا سیتا رمن جی، پیوش گوئل جی، ڈاکٹر وردھن جی، پرنسپل سائنٹفک ایڈوائزر وجے راگھون جی، سی ایس آئی آر  کے ڈائرکٹر جنرل  شیکھرمنڈے جی، تمام سائنس داں حضرات، صنعت اور تعلیمی دنیا کے معزز نمائندے  اور ساتھیوں!

سی ایس آئی آر کی  آج کی یہ اہم میٹنگ  ایک بیحد اہم دور میں ہورہی ہے۔ کورونا عالمی وبا  پوری دنیا کے سامنے اس صدی کا سب سے بڑا چیلنج بن کر آئی ہے۔ لیکن تاریخ  اس بات کی شاہد ہے کہ  جب جب  نوع انسانی پر کوئی بڑی مصیبت آئی ہے، سائنس نے  مزید بہتر مستقبل راستے تیار کردیئے ہیں۔ بحران میں حل اور امکانات کو تلاش کرنا ایک نئی صلاحیت کی تخلیق کرنا یہی تو سائنس  کا بنیادی نیچر ہے، یہی کام صدیوں سے دنیا کے  اور بھارت کے سائنس دانوں نے کیا ہے، یہی کام وہ آج ایک بار پھر  کررہے ہیں۔ اسی آئیڈیا کو تھیوری کی شکل میں لانا، لیبز میں اس کا پریکٹیکل کرنا اور پھر  نہ امپلی مینٹ  معاشرے کو دے دینا، یہ کام گزشتہ ڈیڑھ برسوں میں ہمارے سائنس دانوں نے جس پیمانے اور رفتار  کے ساتھ انجام دیا ، اس کا تصور نہیں کیا جاسکتا۔ نو انسانی کو اتنی بڑی آف سےابھارنے کے لئے ایک سال کےاندر ویکسین بناکر لوگوں کو دے دینا کا یہ اتنا بڑا کام تاریخ میں پہلی بار ہوا ہے شاید۔ پچھلی  صدی کا تجربہ ہےکہ پہلے کوئی تحقیق دنیا کے دوسرے ملکوں میں ہوتی تھی توبھارت کو اس کے لئے کئی کئی سال تک انتظام کرنا پڑتا تھا۔لیکن آج ہمارے ملکے سائنس داں  دوسرے ملکوں کے ساتھ کندھے سے کندھا ملاکر نوع انسانی کی خدمت کرنے میں  لگے ہوئے ہیں، چل رہے،  اتنی ہی تیز رفتار سے کام کرتے ہیں۔ ہمارے سائنس دانوں نے ایک سال میں ہی میڈ ان انڈیا کورونا ویکسین بنائی  اور اہل وطن کے لئے  دستیاب بھی کروادی۔ ایک سال میں ہی ہمارے سائنس دانوں نے  کووڈ ٹیسٹنگ کٹ اور ضروری آلات سے ملک کو  خود کفیل بنادیا۔ اتنی کم مدت میں ہی ہمارے سائنس دانوں نے کورونا سے  لڑائی میں نئی نئی موثر ادویات  تلاش کیں۔ آکسیجن پروڈکشن کو  اسپیڈ  اپ کرنے کے راستے  تلاش کئے۔

آپ کی اس خدمت سے  ، اس غیر معمولی صلاحیت سے  ہی ملک اتنی بڑی لڑائی لڑ رہا ہے۔ سی ایس آئی آر کے سائنس دانوں نے ، انہوں نے بھی اس دوران  علیحدہ علیحدہ شعبوں میں  بے مثال  خدمت انجام دی ہیں۔ میں آپ تمام، تمام سائنس  دانوں کو، ہمارے  انسٹی ٹیوٹس کا ، انڈسٹری کا پورے ملک کی جانب سے  شکریہ ادا کرتا ہوں۔

ساتھیو،

کسی بھی ملک میں سائنس و ٹکنالوجی اتنی ہی اونچائیوں کو چھوتی ہے، جتنا بہتر اس کا انڈسٹری سے ، مارکیٹ سے تعلق ہوتا ہے، تال میل ہوتا ہے، انٹر لنک نظام ہوتا ہے۔ ہمارے ملک میں سی ایس آئی آر  سائنس، سوسائٹی اور انڈسٹری کے اسی نظام  کو برقرار کھنے کے لئے انسٹی ٹیوشنل ارینج منٹ  کا کام  کررہی ہے۔ ہمارے اسی ادارے نے ملک کو  کئی اہم شخصیات  کئی سائنس داں دیئے ہیں۔  شانتی سوروپ بھٹناگر جیسے  عظیم  سائنس داں نے  اس  ادارے کی قیادت کی ہے۔ میں جب بھی آپ کے درمیان آیا ہوں،  اور اسی لئے، ہر بار اس بات پر زور دیا ہے  کہ کسی ادارے  کی ایسی عظیم وراثت ہو تو مستقبل کے لئے اس کی ذمہ داری  میں  اتنا ہی اضافہ ہوجاتا ہے۔ آج بھی میری اور ملک کی ، یہاں تک کی نوع انسانی کی، آپ سبھی سے بہت زیادہ توقعات وابستہ ہیں،  سائنس دانوں سے  ٹیکنیشنوں سے  بہت زیادہ توقعات ہیں۔

ساتھیو،

سی ایس آئی آر کے پاس ریسرچ اور پیٹنٹس کا ایک طاقتور ایکو سسٹم ہے۔ آپ ملک کے کئی مسائل کے حل کے لئے کام کررہے ہیں۔ لیکن آج ملک کے  مقصد اور  اہل وطن کے خواب  21 ویں صدی کی بنیاد پر مبنی ہیں اور اس لئے سی ایس آئی آر جیسے اداروں کے  ہمارے مقاصد  بھی غیر معمولی ہیں۔ آج بھارت  زراعت سے فلکیات تک، آفت کے بندوبست سے دفائی ٹکنالوجی تک ، ویکسین سے  ورچوول ریالٹی  تک ، بایو ٹکنولوجی سے لیکر  بیٹری  ٹکنالوجی تک   ہر سمت میں  آتم نربھر اور طاقت ور بننا چاہتا ہے۔ آج بھارت پائیدار ترقی او صاف ستھری توانائی کے شعبے میں  دنیا کو راستہ دکھا رہا ہے۔آج ہم سافٹ ویئر سے لیکر  سیٹلائٹس تک دوسرے ملکوں  کی ترقی کو بھی رفتار دے رہے ہیں،  دنیا کی ترقی میں  اہم انجن کا رول ادا کررہے ہیں۔اس لئے ہمارے مقاصد بھی حال سے  دو قدم آگے ہی ہونے چاہئیں۔ ہمیں اس دہائی کی ضرورتوں کے ساتھ ہی  آنے والی دہائیوں کی  تیاری ابھی سے کرنی ہوگی۔آفات کے حل کی سمت میں بھی،  کورونا جیسی عالمی وبا ہمارے سامنے  ہے، لیکن ایسے ہی  کئی چیلنج  مستقبل کی کو کوکھ میں پوشیدہ ہوسکتے ہیں۔ مثال کے طور پر ، کلائمٹ چینج کو لیکر ایک بڑا خدشہ دنیا  ماہرین مسلسل ظاہر کررہے ہیں۔ ہمارے سائنس دانوں کو ، ہمارے تمام اداروں کو  مستقبل کے ان چیلنجوں کے لئے  ابھی سے ایک سائنسی نظریئے کے ساتھ تیاری کرنی ہوگی۔ کاربن کیپچر سے لیکر  انرجی اسٹوریج اور  گرین ہائیڈروجن ٹکنالوجیز تک ، ہمیں ہر سمت میں  لیڈ لینی ہوگی۔

ساتھیو،

ابھی ، یہاں آپ سب کی جانب سے انڈسٹری کے ساتھ  تعاون  مزید بہتر بانے پر زور دیا گیا تھا۔ لیکن جیسا کہ میں نے کہا ، سی ایس آئی آر  کا رول اس سے بھی  ایک قدم آگے کا ہے۔ آ پ کو صنعت کے ساتھ ساتھ معاشرے کو بھی ساتھ لے کر چلنا ہوگا۔ مجھے خوشی ہے کہ  میں گذشتہ سال جو تجویز پیش کی تھی ۔ سی ایس آئی آر نے اسے امپلی مینٹ کرتے ہوئے معاشرے سے بات چیت  کرنا اور تجاویز حاصل کرنا بھی شروع کردیا ہے۔ ملک کی ضرورتوں  کو مرکز میں رکھ  کر  آپ کی یہ کوششیں کروڑوں ۔ کروڑوں  اہل وطن کا  مستقبل  بھی تبدیل کررہی ہیں۔ مثال کے طور پر 2016 میں ، ملک نے ایروما مشن  لانچ کیا  تھا، اور سی ایس آئی آر نے اس میں ایک اہم  رول  ادا کیا ہے۔ آج ملک کے ہزاروں کسان فلوری کلچر  سے اپنی  قسمتی بدل رہے ہیں۔ہنگ جیسی چیز  جو  ہندوستان کے ہر رسوئی  کا صدیوں سے حصہ رہی ہے، بھارت  ہینگ  کے لئے ہمیشہ دنیا کے  دیگر ممالک پر درآمدات پر ہی انحصار کرتا  رہا ہے۔ سی ایس آئی آر نے اس سمت میں پہل کی، اور آج  ملک  کےاندر ہی  ہینگ کا پروڈکشن  شروع ہوگیا ہے۔ ایسے کتنے ہی امکانات آپ کی لیبز میں حقیقت میں تبدیل ہوتے ہیں، ڈیولپ ہوتے ہیں،  کئی بار تو  آپ اتنا بڑا کام کر دیتے ہیں کہ حکومت  کو وزارت کو بھی اس کی جانکاری ہوتی، اور جب  پتہ چلتا ہے  ہر کوئی حیران ہوجاتا ہے۔  اس لئے  میری  اور تجویز ہے آپ  کے لئے اور میری تجویز ہے کہ آپ   کو اپنی یہ تمام معلومات لوگوں  کے لئے قابل رسائی بنانی چاہیے۔ کوئی بھی شخص سی ایس آئی آر کی تحقیقات کے بارے میں، آپ کے کام کے بارے میں سرچ کرسکے ، اور اگر کوئی چاہتا ہے  تو ان سےجڑ بھی سکے، اس پر بھی آپ سب کو  مسلسل  زور دینا ہی  ہوگا۔ اس  سے  آپ کے کام اور آپ کے پروڈکٹس کو  بھی سپورٹ ملے گی ، اور سماج  میں ، انڈسٹری میں، سائنسی نقطہ نظر میں اضافہ ہوگا۔

ساتھیو،

آج جب ملک مستقبل قریب میں  آزادی کے 75 سال   پورے  کرنے والا ہے ، بہت ہی جلد ہم  پہنچ رہے ہیں۔ تو  ہمیں  آزادی کے 75 سال کو ذہن رکھتے ہوئے واضح عزائم کے ساتھ ،ٹائم باؤنڈ فریم ورک کے ساتھ مخصوص سمت میں روڈ میپ کےساتھ آگے بڑھنا ، ہمارے ورک کلچر کو بدلنے کے لئے بہت کام آئے گا کورونا کی اس مشکل گھڑی نے  رفتار بھلے ہی کچھ سست کی ہے، لیکن آج بھی ہمارا عزم ہے کہ – آتم نربھر بھارت، مضبوط بھارت۔ آج  ایم ایس ایم ای سے لے کر نئے  نئے اسٹارٹ اپس تک ، زراعت سے لے کر تعلیم کے شعبے تک، ہر شعبے میں، ملک کے سامنے لاتعداد امکانات کا  انبار  پڑا ہواہے۔  ان امکانات کو  عملی جامہ پہنانے کی ذمہ داری آپ سب کو اٹھانی ہے۔ ملک کے ساتھ مل کر ان خوابوں کو پورا کرنا ہے۔ ہمارے سائنس دانوں نے ، ہماری انڈسٹری نے   جو رول کورونا کے دوران نبھایا ہے، ہمیں اسی کامیابی کو  آگے ہر شعبے میں دہرانا ہے۔ مجھے یقین ہے کہ آپ کی صلاحیت  اور آپ انسٹی ٹیوشن کی روایت  اور محنت سے   ملک اس رفتار سے  روز نئے نشانے حاصل کرے گا اور 130 کروڑ سے بھی زیادہ  اہل وطن کے خوابوں کو  پورا کرے گا، مجھے آپ سب کے خیالات کو سننے کا موقع ملا، بہت  عملی باتیں آپ بتا رہے تھے، تجربے کی بنیاد پر بتا رہے تھے، میں ضرور چاہوں گا کہ جن جن کے پاس اس کام کی ذمہ داری ہے، آپ ساتھیوں نے جو تجاویز پیش کی ہیں،  جو توقعات وابستہ کی ہیں،  ان کو پورا کرنے میں تاخیر نہ ہو۔ ہر چیز کو ایک ساتھ  مشن موڈ میں  مومینٹم کے ساتھ پورا کرنے کی کوشش ہو کیونکہ آخر کار  جب اتنا وقت دیکر آپ سب بیٹھے ہیں،   تو بہت  خیالات آنا بہت فطری ہے اور اس منتھن میں سے  جو امرت  نکلنے، وہ  عوام الناس تک پہنچانے کا کام  انسٹی ٹیوشنل ارینج منٹ کے ذریعہ   مسلسل اپ گریڈ کرتے ہوئے ، بہتری لاتے ہوئے، ہمیں امپلی منٹ کرنا ہے ۔ میں آپ سب کو  بہت بہت نیک  خواہشات پیش کرتا ہوں اور انہیں نیک خواہشات کے ساتھ  آپ سب کی اچھی صحت کی بھی خواہش کرتا ہوں۔ آپ سبھی کا بہت بہت شکریہ! نمسکار!

بھارتی اولمپئنس کی حوصلہ افزائی کریں۔ #Cheers4India
Modi Govt's #7YearsOfSeva
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
How This New Airport In Bihar’s Darbhanga Is Making Lives Easier For People Of North-Central Bihar

Media Coverage

How This New Airport In Bihar’s Darbhanga Is Making Lives Easier For People Of North-Central Bihar
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 28 جولائی 2021
July 28, 2021
Share
 
Comments

Citizens along with PM Modi expressed happiness as the Harappan city Dholavira in Gujarat gets UNESCO World Heritage Site tag

Reformatory vision of Central Govt. reflects PM's vision for 'minimum government, maximum governance'