Share
 
Comments
Startups makes presentations before PM on six themes
“It has been decided to celebrate January 16 as National Start-up Day to take the Startup culture to the far flung areas of the country”
“Three aspects of government efforts: first, to liberate entrepreneurship, innovation from the web of government processes, and bureaucratic silos, second, creating an institutional mechanism to promote innovation; third, handholding of young innovators and young enterprises”
“Our Start-ups are changing the rules of the game. That's why I believe Start-ups are going to be the backbone of new India.”
“Last year, 42 unicorns came up in the country. These companies worth thousands of crores of rupees are the hallmark of self-reliant and self-confident India”
“Today India is rapidly moving towards hitting the century of the unicorns. I believe the golden era of India's start-ups is starting now”
“Don't just keep your dreams local, make them global. Remember this mantra

‏مرکزی کابینہ میں میرے ساتھی پیوش گوئل جی، منسکھ منڈاویا جی، اشونی ویشنو جی، سربانند سونووال جی، پرشوتم روپالا جی، جی کشن ریڈی جی، پشوپتی کمار پارس جی، جتیندر سنگھ جی، سوم پرکاش جی، ملک بھر سے اسٹارٹ اپس کی دنیا کے تمام قدآور افراد، ہمارے نوجوان ساتھیو، دیگر معززین اور بھائیو اور بہنو۔‏

‏ ‏‏ہم سب نے بھارتی اسٹارٹ اپس کی کامیابی کا مشاہدہ کیا اور کچھ اسٹیک ہولڈرز کی پریزینٹیشنز بھی دیکھیں۔ آپ سب بہت اچھا کام کر رہے ہیں۔ 2022 کا یہ سال‏‏ بھارتی ‏‏اسٹارٹ اپس ایکو سسٹم کے لیے مزید نئے امکانات لایا ہے۔ آزادی کے 75 ویں سال میں‏‏ ‏‏اسٹارٹ اپ انڈیا انوویشن ویک‏‏ کا یہ انعقاد اور بھی اہم ‏‏ہے۔ جب بھارت اپنی آزادی کے 100 سال مکمل کر رہا ہے تو اس عظیم الشان بھارت کی تعمیر میں آپ کا کردار بہت بڑا ہے۔ ‏

‏میں ملک کے تمام اسٹارٹ اپس، ان تمام جدت طراز نوجوانوں کو مبارکباد پیش کرتا ہوں جو اسٹارٹ اپس کی دنیا میں بھارت کا پرچم بلند کر رہے ہیں۔ 16 جنوری کو قومی اسٹارٹ اپس ڈے کے طور پر منانے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ اسٹارٹ اپس کا یہ کلچر ملک میں دور دور تک پہنچے۔ ‏

‏ساتھیو،‏

‏ ‏‏اسٹارٹ اپ انڈیا انوویشن ویک گزشتہ سال کی ‏‏کامیابیوں‏‏ ‏‏کا ‏‏جشن منانا بھی ہے‏‏ اور مستقبل کی حکمت عملی پر تبادلہ خیال کرنا ‏‏بھی ہے۔ کہا‏‏ جارہا ہے کہ یہ دہائی بھارت کا ‏‏ٹیک ایڈ‏‏ ‏‏ہے۔ ‏‏اس دہائی میں ‏‏جدت طرازی، کاروباری‏‏ ‏‏اور‏‏ ‏‏اسٹارٹ اپس‏‏ ایکو سسٹم کو مضبوط بنانے کے لیے حکومت جو بڑے پیمانے پر تبدیلیاں کر رہی ہے اس کے تین اہم ‏‏پہلو‏‏ ہیں:‏

‏پہلا،‏‏ ‏‏حکومتی کارروائیوں کے جال سے ‏‏انٹرپرینیورشپ‏‏ کو نوکر شاہی کے سائیلوز‏‏ سے آزاد کرانا۔ دوسرا، جدت طرازی کو فروغ دینے کے لیے ‏‏ادارہ جاتی میکنزم‏‏ کی تشکیل۔ اور تیسرا،‏‏ نوجوان اختراع کاروں، ‏‏نوجوانوں کے کاروباری اداروں کو مدد فراہم کرنا۔‏‏ اسٹارٹ اپ انڈیا، اسٹینڈ اپ انڈیا جیسے پروگرام بھی اسی طرح کی کوششوں کا حصہ ہیں۔ ‏

‏ اینجل ٹیکس کے مسائل کو ختم کرنا ہو، ٹیکس فائلنگ‏‏ ‏‏کو آسان بنانا ہو، کریڈٹ تک رسائی کو آسان بنانا ہو، ہزاروں کروڑ روپے کی سرکاری فنڈنگ فراہم ‏‏کرنا ہو، یہ سہولیات ہمارے عزم کی عکاسی کرتی ‏‏ہیں۔ اسٹارٹ اپ انڈیا‏‏کے تحت اسٹارٹ اپس کو 9 لیبر ‏‏اور‏‏ ‏‏3 ماحولیاتی قوانین‏‏ کی تعمیل کی خود تصدیق کی سہولت فراہم کی گئی ‏‏ہے۔‏‏ ‏

‏ ‏‏دستاویزات‏‏ ‏‏کی‏‏ ‏‏خود تصدیق‏‏ ‏‏سے حکومتی طریقہ کار کو آسان بنانے‏‏ کا عمل آج ‏‏25,000 سے زائد‏‏ ‏‏تعمیلات‏‏ کو ختم کرنے کے مقام پر پہنچ گیا ‏‏ہے۔ ‏ حکومت کو اپنی مصنوعات یا خدمات فراہم کرنا آسان بنانے کے لیے سرکاری ای مارکیٹ ‏‏پلیس (جی ای ایم)‏‏ پلیٹ ‏‏فارم‏‏ پر ‏‏اسٹارٹ اپس رن وے بھی بہت کام آرہا‏‏ ‏‏ہے۔ ‏

‏ ساتھیو،‏

‏ ‏‏اپنے نوجوانوں کی صلاحیت پر بھروسہ کرنا، ان کی تخلیقی صلاحیتوں پر انحصار کرنا کسی بھی ملک کی ترقی کی ایک اہم بنیاد ہے۔ آج بھارت اپنے نوجوانوں کی طاقت کو تسلیم کرتے ہوئے پالیسیاں بنا رہا ہے اور فیصلوں پر عمل درآمد کر رہا ہے۔ بھارت میں 1000 سے زیادہ یونیورسٹیاں ہیں، 11,000 سے زیادہ‏‏ ادارے ‏‏ہیں،‏‏ ‏‏42,000 سے زیادہ‏‏ ‏‏کالج‏‏ اور لاکھوں اسکول ‏‏ہیں۔ یہ بھارت کی ایک بڑی طاقت ہے۔ ‏

‏ہماری کوشش ہے کہ ملک میں بچپن ‏‏سے ‏‏ہی طلبا‏‏ میں ‏‏جدت طرازی‏‏ کی طرف کشش پیدا کی ‏‏جائے،‏‏ ‏‏جدت طرازی کو ادارہ جاتی شکل دی ‏‏جائے۔‏‏ آج 9000 سے زائد اٹل ٹنکرنگ لیبز‏‏ ‏‏بچوں کو اسکولوں میں جدت لانے اور نئے ‏‏آئیڈیاز‏‏ پر کام کرنے کا موقع فراہم کر رہی ہیں۔ اٹل انوویشن مشن‏‏ ‏‏ہمارے نوجوانوں کو ان کے اختراعی خیالات‏‏ ‏‏پر‏‏ ‏‏کام کرنے کے لیے نیا پلیٹ ‏‏فارم‏‏ فراہم کر رہا ہے۔ ‏‏اس کے علاوہ ملک بھر کے اسکولوں اور کالجوں میں ہزاروں ‏‏لیبوں‏‏ کا نیٹ ورک ہر شعبے میں ‏‏جدت طرازی‏‏ کو فروغ دیتا ‏‏ہے۔‏‏ ہم‏‏ ‏‏ملک کو درپیش چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے ‏‏جدت طرازی‏‏ ‏‏اور‏‏ ‏‏ٹیکنالوجی‏‏ پر ‏‏مبنی‏‏ ‏‏حل‏‏ پر زور دے رہے‏‏ ‏‏ہیں۔ ہم نے‏‏ ‏‏بہت سے ‏‏ہیکاتھون منعقد کرکے نوجوانوں کو اپنے ساتھ جوڑا ہے، انہوں نے ہمیں ریکارڈ وقت میں بہت ‏‏سے اختراعی حل‏‏ دیئے‏‏ ‏‏ہیں۔‏‏ ‏

‏آپ یہ ‏‏بھی محسو کرتے ہوں گے کہ کس طرح حکومت کے مختلف محکمے، مختلف وزارتیں نوجوانوں اور اسٹارٹ اپس‏‏ ‏‏کے ساتھ بات چیت کرتی ہیں، ان کے نئے خیالات کی حوصلہ افزائی کرتی ہیں۔‏‏ ‏‏ڈرون کے نئے ‏‏قواعد‏‏ ہوں ‏‏یا نئی‏‏ خلائی ‏‏پالیسی،‏‏حکومت کی‏‏ترجیح‏‏ ‏‏زیادہ سے زیادہ نوجوانوں کو جدت ‏‏طرازی‏‏ کا موقع دینا ہے۔ ‏

‏ ‏‏ہماری حکومت نے‏‏ ‏‏آئی پی آر رجسٹریشن سے متعلق قواعد کو بھی آسان بنایا ‏‏ہے۔‏‏ مرکزی اور ریاستی حکومتیں‏‏ ‏‏آج ملک میں سینکڑوں ‏‏انکیوبیٹرز‏‏ کی مدد کے لیے مل کر کام کر رہی‏‏ ‏‏ہیں۔ آج‏‏ ملک میں ‏‏آئی آر ای اے ٹی‏‏ جیسے ‏‏ادارے‏‏ اختراعی ایکو سسٹم‏‏ کو بڑھانے میں بہت اہم کردار ادا کر رہے ہیں۔ ‏‏آئی کریئیٹ‏‏ ‏‏یعنی‏‏ ‏‏انٹرنیشنل سینٹر فار انٹرپرینیورشپ اینڈ ٹیکنالوجی، ‏‏یہ ادارہ بہت سے اسٹارٹ اپس کو مضبوط آغاز دے رہا ہے جس سے اختراع کاری کی حوصلہ افزائی ہو رہی ہے۔ ‏

ساتھیو،

‏ ‏‏ہم حکومت کی ان کوششوں کے اثرات بھی دیکھ رہے ہیں۔ جبکہ 2013-14 میں 4,000 پیٹنٹ منظور کیے گئے تھے،‏‏ گزشتہ سال ‏‏28,000 سے زائد‏‏ ‏‏پیٹنٹ‏‏منظور کیے گئے ‏‏ہیں۔ جبکہ 2013-14 میں تقریباً 70,000 ٹریڈ مارک رجسٹرڈ ہوئے تھے،‏‏ ‏‏2021 میں‏‏ 2.5 لاکھ سے زائد ‏‏ٹریڈ مارک‏‏ رجسٹرڈ ہوئے ہیں۔ 2013-14 میں جہاں صرف 4000‏‏ ‏‏کاپی رائٹ‏‏دیئے گئے‏‏تھے، گزشتہ سال یہ تعداد 16,000 سے تجاوز کر گئی ہے۔ ‏‏جدت طرازی پر بھارت میں مہم کا ‏‏اثر یہ ہے کہ‏‏ ‏‏عالمی ‏‏جدت طرازی‏‏ ‏‏اشاریہ‏‏ میں بھی بھارت کی درجہ بندی میں بہت بہتری آئی ‏‏ہے۔ بھارت 2015 میں درجہ بندی میں 81 ویں پائیدان پر تھا۔ انوویشن انڈیکس میں اب بھارت 46 ویں پائیدان پر ہے جو 50 سے نیچے آیا ہے۔ ‏

‏ ساتھیو،

‏ ‏‏بھارت کا اسٹارٹ اپس ایکو سسٹم آج دنیا میں اپنی شناخت بنا رہا ہے۔ ‏‏یہ بھارت کے اسٹارٹ اپس ایکو سسٹم کی طاقت ہے کہ‏‏ ‏‏یہ ‏‏جذبے،‏‏ ‏‏خلوص‏‏ ‏‏اور‏‏ دیانت داری سے بھرا ہوا ‏‏ہے۔‏‏ یہ بھارت کے اسٹارٹ اپس ایکو سسٹم کی طاقت ہے کہ وہ مسلسل‏‏ خود کو ‏‏دریافت‏‏ کر رہا ‏‏ہے، خود کو بہتر بنا رہا ہے، اس کی طاقت میں اضافہ کر رہا ہے۔ وہ‏‏ ‏‏مسلسل ‏‏سیکھنے‏‏ کے موڈ میں رہتا ‏‏ہے،‏‏ ‏‏موڈ تبدیل‏‏ کرنے میں، اپنے آپ کو نئے حالات اور حالات کے مطابق ‏‏ڈھالتا رہتا ہے۔ آج یہ دیکھ کر کسی کو فخر نہیں ہوگا کہ بھارت میں اسٹارٹ اپس 55 مختلف صنعتوں میں کام کر رہے ہیں، سب کو فخر ہوگا۔ پانچ سال پہلے، جہاں‏‏ ‏‏ملک میں 500 ‏‏اسٹارٹ اپس‏‏ بھی نہیں تھے، آج ان کی تعداد بڑھ کر‏‏ ‏‏60,000 ہوگئی ہے۔ آپ‏‏ ‏‏کے پاس ‏‏جدت طرازی‏‏ کی طاقت ہے، آپ کے ‏‏پاس نئے خیالات ہیں، آپ نوجوان توانائی سے بھرے ہوئے ہیں اور آپ کاروبار کرنے کے انداز کو ‏‏تبدیل کر رہے ہیں۔ ‏‏ہمارے اسٹارٹ اپس منظرنامہ تبدیل‏‏ کر رہے ہیں۔ اسی لیے میں مانتا ‏‏ہوں کہ ‏‏اسٹارٹ اپس‏‏ نئے بھارت کی ریڑھ کی ‏‏ہڈی بننے والے ہیں۔‏‏ ‏

‏ ساتھیو،

‏ ‏‏انٹرپرینیورشپ‏‏ سے ‏‏بااختیار بنانے‏‏ ‏‏کا یہ جذبہ‏‏ ترقی کے حوالے ‏‏سے‏‏ ‏‏علاقائی‏‏ ‏‏اور‏‏ ‏‏صنفی تفاوت‏‏ کے مسئلے کو بھی حل کر رہا ‏‏ہے۔ اس سے پہلے جہاں بڑے شہروں، میٹرو شہروں میں بڑے کاروبار فروغ پاتے تھے، آج ملک کی ہر ریاست میں 625 سے زائد اضلاع میں کم از کم ایک اسٹارٹ اپ ہوتا ہے۔ آج تقریباً نصف اسٹارٹ اپس ٹائر ٹو اور ٹائر تھری شہروں میں ہیں۔ وہ عام، غریب خاندانوں کے نوجوانوں کے آئیڈیاز کو کاروبار میں تبدیل کر رہے ہیں۔ آج ان اسٹارٹ اپس میں لاکھوں نوجوانوں کو روزگار مل رہا ہے۔ ‏

‏ ساتھیو،

‏آج بھارت کے نوجوان جس رفتار اور پیمانے پر اسٹارٹ اپس بنا رہے ہیں وہ عالمی وبا کے ‏‏اس دور میں بھارتیوں کی مضبوط مرضی اور قوت ارادی کا ثبوت ہے۔ اس سے پہلے بہترین وقت میں بھی صرف چند کمپنیاں بڑی ہو سکتی ہیں۔ لیکن گزشتہ سال ہمارے ملک میں 42 یونیکورن بنائے گئے ہیں۔ ہزاروں کروڑ روپے مالیت کی یہ کمپنیاں خود کفیل، ایک پراعتماد بھارت کی پہچان ہیں۔ آج بھارت تیزی سے یونیکورن کی سنچری بنانے کی طرف بڑھ رہا ہے۔ اور مجھے یقین ہے کہ بھارت کے اسٹارٹ اپس کا سنہری دور اب شروع ہو رہا ہے۔ بھارت کا تنوع ہماری بڑی طاقت ہے۔ ہمارا‏‏ ‏‏تنوع‏‏ ‏‏ہماری‏‏ ‏‏عالمی شناخت ہے۔‏‏ ‏

‏ ‏‏ہمارے‏‏ ‏‏یونیکورن‏‏ ‏‏اور‏‏ ‏‏اسٹارٹ اپس‏‏ ‏‏اس‏‏ تنوع ‏‏کے پیامبر ‏‏ ‏‏ہیں۔ سادہ ترسیل سروس سے لے کر ادائیگی کے حل اور کیب سروس تک، آپ کی توسیع بہت بڑی ہے۔ آپ کو‏‏ ‏‏متنوع منڈیوں، متنوع ثقافتوں‏‏ اور بھارت میں کام کرنے کا اتنا بڑا تجربہ‏‏ ‏‏ہے۔ اس لیے بھارت کے اسٹارٹ اپس آسانی سے خود کو دنیا کے دوسرے ممالک میں لے جا سکتے ہیں۔ لہذا‏‏ صرف ‏‏اپنے خوابوں کو ‏‏مقامی‏‏ ‏‏عالمی‏‏ ‏‏نہ بنائیں۔ یہ منتر یاد رکھیں:‏‏ ‏‏آئیے‏‏بھارت کے لیے جدت لائیں، بھارت سے جدت لائیں!‏‏ ‏

‏ ساتھیو،

‏ ‏‏آزادی کے امرت عہد میں سب کے لیے جٹ جانے کا وقت آگیا ہے۔ یہ سب کی مساعی سے نشانوں کی طرف بڑھنے کا وقت ہے۔ مجھے خوشی ہوئی جب ایک گروپ نے وزیر اعظم گتی شکتی نیشنل ماسٹر پلان پر اہم تجاویز پیش کیں۔ متحرک منصوبوں میں اضافی جگہ‏‏ ‏‏کو ‏‏ای وی چارجنگ بنیادی ڈھانچے‏‏ کی تعمیر کے لیے استعمال کیا جاسکتا ہے۔ ماسٹر پلان آج پورے انفراسٹرکچر گرڈ بشمول ٹرانسپورٹ، بجلی، ٹیلی کام کو سنگل پلیٹ فارمز پر لے جا رہا ہے۔ ‏‏ملٹی ماڈل‏‏ ‏‏اور‏‏ ‏‏کثیر المقاصد اثاثوں‏‏ کی تعمیر کے لیے اس مہم میں آپ کی شرکت بہت ضروری ‏‏ہے۔ ‏

‏ ‏‏اس سے ہمارے مینوفیکچرنگ سیکٹر میں نئے چیمپئنز کی تخلیق کو بھی تقویت ملے گی۔ ‏‏آپ‏‏ کو دفاعی مینوفیکچرنگ، چپ مینوفیکچرنگ، صاف توانائی اور ڈرون ٹیکنالوجی سے متعلق بہت سے شعبوں میں ملک کے ‏‏امنگوں سے بھرپور منصوبےآپ کے سامنے ہیں۔ ‏

‏حال ہی میں ‏‏نئی ڈرون پالیسی‏‏ متعارف کرانے کے بعد ملک اور دنیا ‏‏میں‏‏ بہت سے سرمایہ کار ڈرون اسٹارٹ اور ‏‏اپ‏‏ سرمایہ ‏‏کاری‏‏ کر رہے ‏‏ہیں۔ ڈرون کمپنیوں کو فوج، بحریہ اور فضائیہ کی جانب سے تقریباً 500 کروڑ روپے کے آرڈر موصول ہوئے ہیں۔ حکومت آج ڈرون کا استعمال بڑے پیمانے پر گاؤں کی جائیدادوں کا نقشہ بنانے کے لیے کر رہی ہے، ملکیت کی اسکیم کے لیے۔ اب زراعت میں ادویات کی گھریلو ترسیل اور ڈرون کے استعمال کا دائرہ کار بڑھ رہا ہے۔ لہٰذا اس میں بہت زیادہ امکانات موجود ہیں۔ ‏

‏ ساتھیو،‏

‏ ‏‏تیز رفتار شہریت بھی ایک بہت بڑی توجہ کا میدان ہے۔ آج ہمارے موجودہ شہروں کی ترقی اور نئے شہروں کی تعمیر کے لیے بہت بڑے پیمانے پر کام جاری ہے۔ ‏‏شہری منصوبہ بندی،‏‏ہمیں اس شعبے میں بہت کام کرنا ہے۔ اس میں بھی ہمیں‏‏ ‏‏واک ٹو ورک تصورات ‏‏اور‏‏ مربوط صنعتی ‏‏ایسٹیٹ‏‏ تعمیر ‏‏کرنے‏‏ ہوں گے جہاں مزدوروں، کارکنوں کے لیے بہتر انتظامات‏‏ ‏‏ہوں۔ ‏‏شہری منصوبہ بندی میں نئے امکانات آپ کا انتظار کر رہے ‏‏ہیں۔‏‏ مثال کے طور پر، یہاں ایک گروپ نے بڑے شہروں کے لیے قومی سائیکلنگ منصوبوں اور کار فری زونز کے بارے میں بات کی۔ ‏‏شہروں میں ‏‏پائیدار طرز زندگی‏‏ کو فروغ دینا بہت ضروری ‏‏ہے۔ آپ جانتے ہوں گے کہ جب میں کوپ-26 چوٹی کانفرنس میں گیا‏‏ ‏‏تھا تو میں نے ایک مشن زندگی کی بات کہی تھی اور میرا زندگی کا یہ تصور ماحول کے لیے طرز زندگی ‏‏(لائف اسٹائل فار اینوائرنمنٹ - لائف)‏‏ہو اور مجھے یقین ہے کہ ہم ان چیزوں کو لوگوں تک پہنچانے کے لیے ٹیکنالوجی کا استعمال کیسے کرتے ‏‏ہیں، مثال کے طور پر آج پی تھری یعنی پرو پلینیٹ پیپل تحریک لازمی ہے۔ ‏‏ جب تک ہم عام لوگوں کو ماحولیات سے آگاہ نہیں کرتے، ہم گلوبل وارمنگ کے خلاف جنگ کے ‏‏سپاہی نہیں بنائیں گے، ہم یہ جنگ نہیں جیت سکیں گے اور اس لیے بھارت مشن زندگی لے کر بہت سے بیرونی ممالک کو ہمارے ساتھ جوڑنے کے لیے کام کر رہا ہے۔ ‏

‏دوستو،‏

‏ ‏‏اسمارٹ موبلیٹی‏‏ ‏‏شہروں کی زندگی کو بھی آسان بنائے گی اور کاربن کے اخراج کے ‏‏ہمارے‏‏ ‏‏اہداف‏‏ کو حاصل کرنے میں مدد کرے ‏‏گی۔‏‏ ‏

‏ ساتھیو،‏

‏بھارت دنیا کی سب سے ‏‏بڑی‏‏ ملیںیئل مارکیٹ کے طور پر اپنی شناخت کو مسلسل مضبوط کر رہا ‏‏ہے۔‏‏ ملیںیئل‏‏ آج ‏‏ہمارے خاندانوں کی خوش حالی اور قوم کی خود انحصاری دونوں کی بنیاد ہیں۔ ‏‏دیہی معیشت‏‏ ‏‏سے‏‏ لے کر ‏‏صنعت 4.0‏‏ تک ‏‏ہماری ضروریات اور ہماری‏‏ ‏‏صلاحیتیں‏‏دونوں‏‏ لامحدود ہیں۔ ‏‏مستقبل کی ‏‏ٹیکنالوجی‏‏ سے متعلق تحقیق اور ترقی پر سرمایہ کاری ‏‏آج حکومت کی ترجیح ہے۔ لیکن بہتر ہے کہ صنعت بھی اس میں اپنا حصہ ڈالے، اس کا دائرہ کار بڑھایا جائے۔ ‏

‏ ساتھیو،‏

‏اکیسویں صدی کے اس عشرے میں ایک اور بات آپ کو ذہن میں رکھنی ‏‏ہوگی۔ اب‏‏ ‏‏ملک میں بھی ایک بہت بڑی مارکیٹ کھل رہی ہے، اب ہم نے ڈیجیٹل طرز زندگی میں قدم رکھا ‏‏ہے۔ اب ہماری آبادی کا صرف نصف آن لائن ہوا ہے۔ ‏‏بھارت ‏‏میں آج غریب سے غریب تک گاؤں سے گاؤں تک ‏‏ڈیجیٹل رسائی فراہم‏‏ کرنے کے لیے حکومت جس رفتار سے کام کر رہی ہے اس سے بہت کم وقت میں تقریباً 100 کروڑ انٹرنیٹ صارفین ہونے جا رہے‏‏ ‏‏ہیں۔ ‏

‏ ‏‏چونکہ دور دراز علاقوں میں آخری میل کی ترسیل مستحکم ہو رہی ہے، دیہی منڈیوں اور دیہی صلاحیتوں کا ایک بڑا پول بھی بنتا جا رہا ہے۔ اس لیے میں بھارت کے اسٹارٹ اپس سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ گاؤں کی طرف بھی بڑھیں۔ یہ ایک موقع اور ایک چیلنج ہے۔ موبائل ‏‏انٹرنیٹ ہو، براڈ بینڈ کنکٹیویٹی ہو یا فزیکل کنکٹیویٹی، آج گاؤں کی امنگیں بڑھ رہی ہیں۔ ‏‏دیہی‏‏ ‏‏اور‏‏ ‏‏نیم شہری علاقہ توسیع کی ‏‏ایک نئی‏‏ ‏‏لہر‏‏ کا منتظر ‏‏ہے۔‏‏ ‏

‏ ‏‏اسٹارٹ اپ کلچر‏‏ نے جس ‏‏طرح‏‏ آئیڈیا کو جمہوری ‏‏بنایا‏‏ ہے اس سے خواتین اور مقامی کاروبار ‏‏بااختیار ہوئے ہیں۔‏‏ اچار پاپڑ سے‏‏ ‏‏لے کر ‏‏دستکاری‏‏ تک ‏‏آج بہت سی مقامی مصنوعات کا دائرہ وسیع پیمانے پر بڑھ گیا ہے۔ بیداری بڑھنے سے لوگ مقامی لوگوں کے لیے آواز اٹھا رہے ہیں۔ اور ابھی جب ہمارے جے پور کے ساتھی کارتک نے مقامی سے عالمی بات کی اور انہوں نے ورچوئل دوروں کے بارے میں بات کی۔ میں آپ جیسے ساتھیوں سے درخواست کروں گا کہ وہ ملک میں اسکول کالج کے بچوں کا مقابلہ کرائیں اور اپنے ضلع، اپنے شہر میں آزادی سے متعلق واقعات کا ورچوئل تخلیقی کام کروائیں جو یادگاریں، تاریخ کے صفحات اور آپ جیسے اسٹارٹ اپس اسے کمپائل کریں اور آزادی کے 75 سال کا ورچوئل ٹور بنائیں۔ اس کے لیے ملک کو مدعو کیا جائے۔ آزادی کے امروت مہوتسو میں یہ اسٹارٹ اپ دنیا کا بڑا حصۃ ہوگا۔ لہذا، آپ کا آئیڈیا اچھا ہے، اسے کس طرح عملی جامہ پہنایا جائے۔ اگر آپ یہ آئیڈیا شروع کرتے ہیں، مجھے یقین ہے کہ  ہم اسے آگے بڑھا سکتے ہیں۔ ‏

‏دوستو، ‏

‏ ‏‏کوویڈ لاک ڈاؤن کے دوران ہم نے دیکھا ہے کہ کس طرح مقامی سطح پر چھوٹے اختراعی ماڈلوں نے لوگوں کی زندگی آسان بنا دی ہے۔ ‏‏اسٹارٹ اپس کے پاس چھوٹے مقامی کاروبار کے ساتھ ‏‏اشتراک کا‏‏ ایک بہت بڑا موقع ‏‏ہے۔ اسٹارٹ اپس‏‏ ‏‏ان مقامی ‏‏کاروباروں‏‏ ‏‏کو ‏‏بااختیار بنا‏‏ سکتے ہیں، موثر بنا سکتے ‏‏ہیں۔‏‏ چھوٹے کاروبار ملک کی ترقی میں ریڑھ کی ہڈی‏‏ کی حیثیت رکھتے ہیں اور ‏‏اسٹارٹ اپس ‏‏نئے‏‏ ‏‏گیم چینجر ہیں۔‏‏ یہ شراکت داری ہمارے معاشرے اور معیشت دونوں کو تبدیل کر سکتی ہے۔ خاص طور پر‏‏ خواتین کے روزگار کو اس سے بہت طاقت مل سکتی ‏‏ہے۔ ‏

‏ ساتھیو،‏

‏زراعت سے لے کر ‏‏صحت، تعلیم، سیاحت تک ہر شعبے میں حکومت اور اسٹارٹ اپس کی شراکت داری کے بارے میں متعدد تجاویز سامنے آئی ہیں۔ جیسا‏‏ ‏‏کہ ایک تجویز تھی کہ جو دکاندار یہاں موجود ہیں وہ ہمارے پاس موجود ‏‏صلاحیت‏‏ کا 50-60 فیصد بمشکل استعمال کر پارہے ہیں اور انہوں نے یہ جاننے کے لیے ڈیجیٹل حل دیا تھا کہ کون سا سامان خالی ہو گیا ہے، کون سا اسٹور ہے‏‏ ‏‏وغیرہ۔ میں آپ کو ایک تجویز دوں گا، آپ اس دکاندار کو اس کے گاہکوں کے ساتھ بھی جوڑ سکتے ہیں۔ تو دکاندار گاہک کو مطلع کرسکتا ہے کہ آپ کی یہ تینوں چیزیں تین دن بعد خالی ہونے والی ہیں، آپ کے گھر کی یہ سات چیزیں پانچ دن بعد خالی ہونے والی ہیں۔ اگر اسے کوئی پیغام ملتا ہے تو گھر میں موجود لوگوں کو بھی ڈبوں کی چھان بین نہیں کرنی پڑے گی چاہے باورچی خانے میں کوئی سامان ہے یا نہیں، فلاں چیز ہے یا نہیں۔ یہ بات آپ کا دکاندار ہی اسے پیغام کے ذریعے بتا سکتا ہے۔ اور آپ اسے ایک بہت بڑے پلیٹ فارم میں بھی تبدیل کرسکتے ہیں۔ نہ صرف دکان کے وژن کے ساتھ، بلکہ خاندان کی ضرورت کے لیے بھی، انہیں اپنا دماغ کھونا نہیں پڑے گا، آپ کا پیغام چلا جائے گا کہ آپ نے ایک ماہ کے لیے ہلدی لائے تھے، یہ تین دن میں ختم ہونے والی ہے۔ تو آپ ایک بہت بڑے ایگریگیٹر بن سکتے ہیں، آپ ایک بہت بڑے پل بن سکتے ہیں۔ ‏

‏ ساتھیو،‏

‏میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ نوجوانوں کی ‏‏ہر تجویز، ہر خیال، ہر جدت طرازی کو حکومت کی مکمل حمایت حاصل ہوگی۔ ملک کو آزادی کے 100 ویں سال کی طرف لے جانے والے یہ 25 سال بہت اہم ہیں اور آپ کے لیے انتہائی اہمیت کے حامل ہیں۔ یہ‏‏ ‏‏جدت طرازی ہے،‏‏ ‏‏یعنی‏‏ ‏‏خیالات،‏‏ ‏‏صنعت اور سرمایہ کاری کا ایک نیا دور ہے۔ آپ کی محنت بھارت کے لیے ہے۔ آپ کا منصوبہ بھارت کے لیے ہے۔ آپ کی‏‏ ‏‏دولت کی تخلیق‏‏ بھارت کے لیے ‏‏ہے،‏‏ بھارت کے لیے روزگار ‏‏پیدا‏‏ ‏‏کرنا ہے۔ ‏

‏میں آپ نوجوانوں کی توانائی کو کندھے سے کندھا ملا کر ملک کی توانائی میں بدلنے کے لیے مکمل طور پر عہد بستہ ہوں۔ آپ کی تجاویز، آپ کے خیالات، کیونکہ اب ایک نئی نسل ہے جو ایک نئے انداز میں سوچتی ہے۔ سسٹم کو سمجھنا اور قبول کرنا بہت ضروری ہوگیا ہے۔ اور مجھے یقین ہے کہ سات روزہ غور و فکر سے جو چیزیں سامنے آئی ہیں، حکومت کے تمام محکمے اسے سنجیدگی سے لیتے ہوئے، حکومت میں ان کا استعمال کیسے ہو، اس سے حکومت کی پالیسیوں کے ذریعے سماجی زندگی پر کیسے اثر پڑے، ان تمام معاملات میں فائدہ ہونے والا ہے۔ اس لیے میں آپ سب کا اس پروگرام میں شرکت کرنے، اپنا انمول وقت دینے، کیونکہ آپ آئیڈیاز کی دنیا کے لوگ ہیں اس لیے آپ کا وقت آئیڈِاز ہی میں رہتا ہے، اور وہ آپ نے سب سے تبادلہ کیے، یہ بھی ایک بہت بڑا کام ہے۔‏

‏میں آپ سب کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہوں۔ مکر سنکرانتی کا مقدس تہوار ہے۔ اب تو ہوا میں وہی ماحول ہے۔ اس دوران، کورونا سے بچیں، اپنا خیال رکھیں۔ ‏

‏آپ کا بہت شکريہ!‏

Explore More
وزیر اعظم کی پریکشا پہ چرچا پی  ایم مودی کے ساتھ کا متن

Popular Speeches

وزیر اعظم کی پریکشا پہ چرچا پی ایم مودی کے ساتھ کا متن
PM Narendra Modi continues to be most popular global leader with approval rating of 74%: Survey

Media Coverage

PM Narendra Modi continues to be most popular global leader with approval rating of 74%: Survey
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
PM expresses happiness and pride over the amazing response to Har Ghar Tiranga Movement
August 13, 2022
Share
 
Comments
PM also urges citizens to share the photo with Tiranga

The Prime Minister, Shri Narendra Modi has expressed his happiness and pride over the amazing response to Har Ghar Tiranga Movement. Shri Modi said that we are seeing record participation from people across different walks of life. Shri Modi also urged the citizens to share the photo with Tiranga on harghartiranga.com

The Prime Minister took to twitter to share the glimpses of magnificent Har Ghar Tiranga Movement coming from across the country.