ہندوستان کے لوگوں نے گزشتہ 10 سالوں میں ہماری حکومت کے ٹریک ریکارڈ پر بھروسہ کیا ہے اور ہمیں تیسری بار اچھی حکمرانی جاری رکھنے کا موقع دیا ہے
لوگوں نے ’جن سیوا ہی پربھو سیوا‘ کے عقیدے کے ساتھ شہریوں کی خدمت کے ہمارے عزم کو دیکھا ہے، یعنی انسانیت کی خدمت خدا کی خدمت ہے
عوام نے ہمیں بدعنوانی کے لیے صفر برداشت کا صلہ دیا ہے
ہم نے تشٹیکرن کے بجائے سنتشٹیکرن – طمانیت کے بجائے سیرابی کے لیے کام کیا
ایک سو چالیس کروڑ شہریوں کا یقین، توقعات اور بھروسہ ترقی کے لیے ایک محرک بنتا ہے
نیشن فرسٹ ہمارا واحد مقصد ہے
جب کوئی ملک ترقی کرتا ہے تو آنے والی نسلوں کے خوابوں کی تکمیل کے لیے ایک مضبوط بنیاد رکھی جاتی ہے
تیسری مدت میں، ہم تین گنا رفتار سے کام کریں گے، تین گنا توانائی لگائیں گے اور تین گنا نتائج دیں گے

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج لوک سبھا میں صدر جمہوریہ کے خطاب پر شکریہ کی تحریک کا جواب دیا۔

ایوان سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے صدر جمہوریہ کے خطاب کے تئیں اظہار تشکر کیا اور وکست بھارت کے خیال پر روشنی ڈالی جو خطاب کا مرکزی موضوع تھا۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ صدر جمہوریہ ہند نے اپنے خطاب میں اہم مسائل کو اٹھایا اور ان کی رہنمائی کے لیے ان کا شکریہ بھی ادا کیا۔

کل اور آج صدر کے خطاب پر جتنے ارکان نے اپنے خیالات کا اظہار کیا، جناب مودی نے خاص طور پر پہلی بار منتخب ہونے والے ارکان پارلیمنٹ کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے ایوان کے قواعد کا احترام کرتے ہوئے صدر کے خطاب پر اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ انہوں نے تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ان کا برتاؤ کسی بھی تجربہ کار رکن پارلیمنٹ سے کم نہیں تھا اور ان کے خیالات نے اس بحث کی خوبی کو مزید تقویت بخشی ہے۔

دنیا کے سب سے بڑے انتخابات میں اپنا حق رائے دہی استعمال کرتے ہوئے حکومت کو منتخب کرنے پر رائے دہندگان کا شکریہ ادا کرتے ہوئے وزیر اعظم نے مسلسل تیسری بار موجودہ حکومت کو منتخب کرنے پر ہندوستان کے شہریوں کا شکریہ ادا کیا اور اسے جمہوری دنیا میں فخر کا لمحہ قرار دیا۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ حکومت کی گزشتہ 10 سالوں کی کوششیں رائے دہندگان کے لیے فیصلہ کن عنصر تھیں اور ’جن سیوا ہی پربھو سیوا‘ کے عقیدے کے ساتھ شہریوں کی خدمت کرنے کے لیے حکومت کے عزم کو اجاگر کیا، یعنی انسانیت کی خدمت ہی خدا کی خدمت ہے۔ انہوں نے کہا کہ آزادی کے بعد پہلی بار اتنے کم عرصے میں 25 کروڑ سے زیادہ غریبوں کو غربت سے نکالا گیا ہے۔

2014 کے بعد بدعنوانی کے لیے صفر برداشت کے موقف کو دہراتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ ملک کے ووٹر نے انہیں دوبارہ اقتدار میں آنے کا موقع دیا۔ ”آج ہندوستان کی ساکھ پوری دنیا میں بہتر ہوئی ہے۔ ہر ہندوستانی اب فخر محسوس کرتا ہے۔“ جناب مودی نے کہا کہ ان کی حکومت کی ہر پالیسی، فیصلے اور کام ہندوستان کو ترجیح دیتے ہیں۔ عالمی سطح پر ہندوستان کی بڑھتی ہوئی موجودگی پر روشنی ڈالتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ ملک کے تئیں دنیا کا نظریہ بدل گیا ہے اور اس سے ہر شہری میں فخر کا احساس پیدا ہوتا ہے۔ وزیر اعظم مودی نے ’نیشن فرسٹ‘ کے واحد مقصد پر زور دیا جو حکومت کی پالیسیوں اور فیصلوں سے ظاہر ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پچھلے 10 سالوں میں حکومت نے سب کا ساتھ سب کا وکاس کے منتر اور ’سرو پنتھ سمبھو‘ کے اصولوں کے ساتھ عوام کی خدمت کرنے کی کوشش کی ہے، جس کا مطلب ہے کہ تمام مذاہب برابر ہیں۔

جناب مودی نے تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان نے ایک طویل عرصے سے خوشامد کی سیاست اور حکمرانی کا ماڈل دیکھا ہے۔ وزیر اعظم نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ ہندوستان میں پہلی بار ان کی حکومت نے لوگوں کے اطمینان اور تصدیق کے ساتھ سیکولرازم کی سمت کام کیا ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ان کے لیے اطمینان کا مطلب حکومت کی مختلف پالیسیوں میں اطمینان حاصل کرنا اور ہندوستان کے آخری فرد تک خدمات کی فراہمی کو یقینی بنانے کے اپنے عزم کو پورا کرنا ہے۔ جناب مودی نے مزید کہا کہ ان کے لیے سیرابی کے اس فلسفے کا صحیح معنوں میں مطلب سماجی انصاف اور سیکولرازم ہے اور اسے ہندوستان کے لوگوں نے مسلسل تیسری مدت کار کی شکل میں منظور کیا ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ اس انتخاب نے ایک بار پھر ہندوستان کے لوگوں کی پختگی اور آئیڈیلزم کو ثابت کر دیا ہے۔ ”لوگوں نے ہماری پالیسیوں، ارادوں اور عزم پر اعتماد ظاہر کیا ہے“، وزیراعظم نے زور دے کر کہا۔ انہوں نے کہا کہ عوام نے اس الیکشن میں وکست بھارت کی قرارداد کی تائید کی ہے۔

ایک ترقی یافتہ ملک کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ ملک کے ہر شہری کے خواب اس وقت پورے ہوتے ہیں جب وہ ترقی کرتا ہے اور اس کے ساتھ ساتھ آنے والی نسلوں کی امنگوں کو پورا کرنے کی بنیاد بھی رکھتا ہے۔ وزیر اعظم نے زور دے کر کہا کہ ہندوستان کے لوگ ایک ترقی یافتہ ہندوستان کے ثمرات حاصل کرنے کے مستحق ہیں جس کی پچھلی نسلیں ہمیشہ سے خواہش رکھتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وکست بھارت کی تشکیل سے ہندوستان کے دیہاتوں اور شہروں میں حالات زندگی اور معیار زندگی میں زبردست بہتری آئے گی جبکہ لوگوں میں فخر کا احساس بھی پیدا ہوگا اور ان کے لیے بے شمار مواقع پیدا ہوں گے۔ ”ہندوستان کے شہر دنیا کے دیگر ترقی یافتہ شہروں کے ساتھ برابر حصہ لیں گے“، انہوں نے یقین دلایا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ وکست بھارت سے مراد ملک کے ہر شہری کے لیے متعدد اور مساوی مواقع کی دستیابی ہے۔ یہ مہارت، وسائل اور صلاحیت کی بنیاد پر ہر ایک کے لیے ترقی کو یقینی بناتا ہے۔

وزیر اعظم مودی نے ہندوستان کے شہریوں کو یقین دلایا کہ حکومت دیانتداری اور ایمانداری کے ساتھ وکست بھارت کے تصور کو عملی جامہ پہنانے کی ہر ممکن کوشش کرے گی۔ ”وقت کا ہر لمحہ اور ہمارے جسم کا ہر خلیہ وکست بھارت بنانے کے خیال کے لیے وقف ہے“، جناب مودی نے زور دے کر کہا۔

وزیراعظم نے 2014 سے پہلے کے دور کو یاد کیا جب پورا ملک مایوسی کی حالت میں تھا۔ اس عرصے کے دوران شہریوں میں اعتماد کی کمی کو ملک کا سب سے بڑا نقصان قرار دیتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ اس سے مایوسی کے بادل چھائے ہوئے ہیں۔ انہوں نے یاد دلایا کہ یہ وہ دور تھا جس میں گھوٹالوں اور پالیسی فالج نے ملک کو کمزور پانچ معیشتوں کی فہرست میں دھکیل دیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ عام شہریوں نے تمام امیدیں کھو دی تھیں، انہوں نے مزید کہا کہ رشوت خوری ایک عام رواج تھا، چاہے وہ گھر، گیس کنکشن یا عوامی تقسیم کے نظام کے ذریعے اناج حاصل کرنے کے لیے ہو۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ملک کے شہری 2014 سے پہلے ریاست کی خراب حالت کے لیے اپنی قسمت کو ذمہ دار ٹھہراتے ہوئے اپنی روزمرہ کی زندگی گزارنے پر مجبور تھے۔ ”انہوں نے تبدیلی کے ایک لمحے کا آغاز کرتے ہوئے ہمیں منتخب کیا“، انہوں نے مزید کہا۔

وزیر اعظم نے ان لوگوں کے ذہن کو تبدیل کرنے میں حکومت کی کوششوں پر روشنی ڈالی جو کبھی سوچتے تھے کہ کچھ بھی ممکن نہیں ہے۔ حکومت کی کامیابیوں کا ذکر کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے کامیاب 5G رول آؤٹ، سب سے زیادہ کوئلے کی پیداوار، ملک کے بینکنگ نظام کو مضبوط بنانے کے لیے تبدیلی کی پالیسیوں، دہشت گردی کے لیے صفر برداشت کی پالیسی اور آرٹیکل 370 کی منسوخی کا ذکر کیا۔

وزیر اعظم نے کہا، ”140 کروڑ شہریوں کا یقین، توقعات اور بھروسہ ترقی کے لیے ایک محرک بنتا ہے“۔ وزیر اعظم نے کہا کہ یہ یقین عزم کے ذریعے کامیابی کی علامت ہے۔

جناب مودی نے کہا کہ ہندوستان کو ایک ترقی یافتہ ملک بنانے کے لیے شہری آج بھی اتنے ہی پرجوش اور پر اعتماد ہیں، جتنے ہماری آزادی کی جدوجہد کے دوران تھے۔ گزشتہ 10 سالوں میں ملک کی ترقی کی ستائش کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا، ”آج بھارت کو خود سے مقابلہ کرنے کی ضرورت ہے۔ ہمیں اپنے پرانے ریکارڈ توڑ کر ملک کو اگلی سطح پر لے جانا ہے۔ پی ایم مودی نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ ترقی کا جو راستہ ہندوستان نے پچھلی دہائی میں اختیار کیا ہے وہ اب ایک معیار بن گیا ہے۔ انہوں نے اس یقین کا اظہار کیا کہ ملک تیز رفتاری سے ترقی کرے گا، انہوں نے کہا کہ ہم ہر شعبے کو اگلے درجے تک لے جائیں گے۔

جناب مودی نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ پچھلے 10 سالوں میں، ہندوستان دنیا کی 10 ویں سب سے بڑی معیشت سے ترقی کر کے دنیا کی 5 ویں سب سے بڑی معیشت بن گیا ہے، ساتھ ہی انھوں نے اس اعتماد کا اظہار کیا کہ ہندوستان جلد ہی دنیا کی تیسری سب سے بڑی معیشت بن جائے گا۔ اس بات کی نشاندہی کرتے ہوئے کہ ہندوستان اب دنیا کے سب سے بڑے موبائل مینوفیکچررز اور برآمد کنندگان میں سے ایک بن گیا ہے، وزیر اعظم مودی نے اس اعتماد کا اظہار کیا کہ حکومت کی تیسری میعاد میں ملک سیمی کنڈکٹرز کے میدان میں اسی طرح کی بلندیوں کو چھو لے گا۔

وزیر اعظم نے اس بات کا اعادہ کیا کہ اگرچہ ملک نئے سنگ میل عبور کرے گا اور نئی بلندیوں کو چھوئے گا لیکن حکومت کی جڑیں عام شہریوں کی خدمت پر مرکوز رہیں گی۔ جناب مودی نے غریبوں کو دیے گئے 4 کروڑ پکے مکانوں کا ذکر کیا اور بتایا کہ آنے والے وقتوں میں 3 کروڑ نئے گھر بنائے جائیں گے۔ خواتین کے سیلف ہیلپ گروپ کے عروج کا ذکر کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے 3 کروڑ لکھپتی دیدیوں کو بنانے کے لیے حکومت کے لائحہ عمل کے بارے میں بتایا۔ وزیراعظم نے اپنی تیسری مدت میں تین گنا رفتار اور کوشش سے کام کرنے اور تین گنا نتیجہ دینے کے حکومت کے عزم کا اعادہ کیا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ 60 سال کے بعد مسلسل تیسری بار اقتدار میں آنا حکومت کی کوششوں اور اس کے ذریعے شہریوں میں پیدا ہونے والے اعتماد کی علامت ہے۔ ”اس طرح کے کارنامے معمولی سیاست سے نہیں بلکہ شہریوں کے آشیرواد سے حاصل ہوتے ہیں“، پی ایم مودی نے کہا، انہوں نے مزید کہا کہ عوام نے استحکام اور پائیداری کا انتخاب کیا ہے۔

وزیر اعظم نے چار ریاستوں اوڈیشہ، آندھرا پردیش، سکم اور اروناچل پردیش میں ہوئے قانون ساز اسمبلی کے انتخابات میں عوام کے مینڈیٹ کی بھی ستائش کی اور لوک سبھا انتخابات میں راجستھان، مدھیہ پردیش، چھتیس گڑھ میں زبردست جیت کا بھی ذکر کیا۔ انہوں نے ملک بھر میں متعدد ریاستوں میں بڑھتے ہوئے ووٹ شیئر پر بھی بات کی۔ ”جنتا جناردن ہمارے ساتھ ہے“، انہوں نے مزید کہا۔

حالیہ لوک سبھا انتخابات کے نتائج پر غور کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے اپوزیشن پر زور دیا کہ وہ عوام کے مینڈیٹ کو عاجزی کے ساتھ قبول کریں اور عوام کے پیغام کو سمجھیں۔ انہوں نے کہا کہ عوام نے ترقی کا راستہ چنا ہے اور وکست بھارت کے مقصد کو حاصل کرنے کے لیے پرعزم ہیں۔ یہ نوٹ کرتے ہوئے کہ ہندوستان کو اجتماعی طور پر ترقی کے نئے سفر کا آغاز کرنا ہوگا، وزیر اعظم نے ہندوستان کے شہریوں سے کہا کہ وہ افراتفری، لاقانونیت اور تقسیم کی سیاست کا راستہ چننے والوں کے خلاف چوکنا رہیں۔ انہوں نے غیر موزوں معاشی پالیسیوں کے خلاف بھی خبردار کیا جو ملک کو معاشی انتشار کی طرف دھکیلتی ہیں اور ملک میں غلط معلومات پھیلاتی ہیں۔ وزیراعظم نے اسپیکر کے ذریعے اپوزیشن پر زور دیا کہ وہ ایوان کی سجاوٹ اور وقار کو برقرار رکھیں اور اسپیکر کو اصلاحی اقدامات کرنے کی تجویز بھی دی تاکہ ایوان کا تقدس مجروح نہ ہو۔

ایمرجنسی کے دور کے بارے میں بات کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ ملک پر حکمرانی کرنے والوں نے ملک میں آمرانہ ماحول پیدا کیا جس سے شہریوں پر بڑے پیمانے پر ظلم اور ملک کے ساتھ نا انصافی ہوئی۔ انہوں نے اس وقت کو بھی یاد کیا جب بابا صاحب امبیڈکر نے نئے ہندوستانی آئین میں وعدے کے مطابق پسماندہ طبقات اور درج فہرست ذاتوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے اس وقت کی حکومت کی جانب سے کارروائی نہ کرنے پر ناراضگی کا حوالہ دیتے ہوئے کابینہ سے استعفیٰ دے دیا تھا۔ انہوں نے دیگر ممتاز لیڈروں جیسے جگ جیون رام جی، چودھری چرن سنگھ جی اور سیتارام کیسری جی پر ہونے والے مظالم کو بھی اجاگر کیا۔

سوامی وویکانند کی شکاگو تقریر کا حوالہ دیتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ وہ ایک ایسے مذہب سے تعلق رکھنے پر فخر محسوس کرتے ہیں جس نے دنیا کو تحمل اور عالمی قبولیت کا درس دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کی جمہوریت اور تنوع صرف رواداری اور ہندو برادری کے اتحاد کے جذبے کی وجہ سے پروان چڑھا ہے۔ انہوں نے اس بات پر بھی تشویش کا اظہار کیا کہ آج ہندو برادری پر جھوٹے الزامات لگائے جارہے ہیں اور ان کے خلاف سازش کی جارہی ہے۔

ہندوستان کی مسلح افواج کی بہادری اور طاقت کی ستائش کرتے ہوئے جناب مودی نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ گزشتہ 10 سالوں میں دفاعی شعبے میں بہت ساری اصلاحات کی گئی ہیں اور ہندوستان کی مسلح افواج کو ہر چیلنج سے نمٹنے کے لیے جدید بنانے اور لیس کرنے کا ذکر کیا۔ جناب مودی نے زور دے کر کہا کہ حکومت قومی سلامتی کے مقصد کو ذہن میں رکھتے ہوئے مسلح افواج کو جنگ کے لیے تیار رہنے کی تمام کوششیں کر رہی ہے۔ تھیٹر کمانڈ کے قیام کی اہمیت پر روشنی ڈالتے ہوئے جناب مودی نے اس بات پر اطمینان کا اظہار کیا کہ چیف آف ڈیفنس اسٹاف (سی ڈی ایس) کی تقرری کے بعد اس طویل عرصے سے زیر التوا فوجی تنظیمی ڈھانچے کو قائم کرنے کی سمت میں کام کیا جا رہا ہے۔

وزیر اعظم نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ ہماری مسلح افواج کو آتم نربھر بھارت میں خود انحصار بنانے کے لیے اہم اصلاحات کی جا رہی ہیں۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ مسلح افواج کو جوان ہونا چاہیے اور ہماری افواج میں نوجوانوں کی تعداد بڑھانے کی ضرورت ہے۔ جناب مودی نے اس بات پر زور دیا کہ قومی سلامتی ایک سنگین معاملہ ہے اور حکومت مسلح افواج کو 'جنگ کے قابل' بنانے کے لیے بروقت اصلاحات کر رہی ہے۔

وزیر اعظم نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ ماضی میں ان کی حکومت نے ”ون رینک، ون پنشن“ اسکیم کو لاگو کیا تھا جو کافی عرصے سے رکی ہوئی تھی۔ انہوں نے مزید کہا کہ کووڈ عالمی وبا کی مشکلات کے باوجود، ان کی حکومت نے او آر او پی اسکیم کے نفاذ کے لیے 1.2 لاکھ کروڑ روپے دیے تھے۔

حالیہ پیپر لیک پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے ملک کے نوجوانوں کو یقین دلایا کہ ان کی حکومت مستقبل میں ایسے واقعات کی روک تھام کے لیے انتہائی سنجیدہ ہے اور ان اور ملک کے تئیں اپنی ذمہ داریوں کو نبھانے کے لیے جنگی بنیادوں پر کام کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ NEET-UG پیپر لیک واقعہ سے متعلق ملک بھر میں کئی گرفتاریاں کی گئی ہیں۔ جناب مودی نے کہا، ”مرکزی حکومت نے پہلے ہی ایک سخت قانون متعارف کرایا ہے۔ اسکریننگ کے پورے نظام کو مضبوط بنانے کے لیے ضروری اقدامات کیے جا رہے ہیں۔“

وزیر اعظم نے کہا کہ ترقی گزشتہ 10 سالوں میں حکومت کی سب سے بڑی قرارداد رہی ہے۔ انہوں نے ہندوستان کو دنیا کی تیسری سب سے بڑی معیشت بنانے، ہر گھر میں پینے کے صاف پانی کی فراہمی، ہر غریب کو پکے گھر فراہم کرنے، مسلح افواج کو خود کفیل بنا کر مضبوط بنانے، ملک میں قابل تجدید توانائی کے شعبے کو فروغ دینے، ہندوستان کو گرین ہائیڈروجن ہب بنانے، بنیادی ڈھانچے کی ترقی کو جدید بنانے، ترقی یافتہ ہندوستان میں روزگار اور خود روزگار کے نئے مواقع پیدا کرنے، ہنر مندی کی ترقی کو با اختیار بنانے اور نوجوانوں کے مستقبل کو تشکیل دینے کی قراردادوں پر روشنی ڈالی۔ ایک حالیہ مطالعہ کا حوالہ دیتے ہوئے، وزیر اعظم نے بتایا کہ گزشتہ 18 سالوں میں نجی صنعت میں ملازمتوں کی تخلیق میں ریکارڈ تعداد دیکھی گئی ہے۔

ڈجیٹل انڈیا تحریک کی تعریف کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ بھارت دنیا میں ڈجیٹل ادائیگی کے نظام کی ایک روشن مثال ہے۔ جی 20 سربراہی اجلاس کا حوالہ دیتے ہوئے، انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ دنیا کے ترقی یافتہ ممالک بھی ہماری ڈجیٹل تحریک سے حیران ہیں۔

جناب مودی نے اس بات کا اعادہ کیا کہ دنیا ہندوستان کی ترقی کو انتہائی سنجیدگی کے ساتھ دیکھ رہی ہے اور تمام پیچیدگیوں کو بھی دیکھ رہی ہے۔ انہوں نے قراردادوں کو پورا کرنے اور ایک ترقی یافتہ ہندوستان کی تشکیل کے لیے ایوان کے ہر رکن کے تعاون کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے اراکین سے زور دے کر کہا کہ وہ ملک کی فلاح کے یقین کے ساتھ آگے آئیں۔ ”ہمیں کندھے سے کندھا ملا کر چلنا چاہیے اور شہریوں کے خوابوں اور توقعات کو پورا کرنا چاہیے“، پی ایم مودی نے کہا۔ انہوں نے موجودہ دور میں مثبت سیاست کی اہمیت پر بھی زور دیا۔

تقریر کے دوران، وزیر اعظم نے اتر پردیش کے ہاتھرس میں بھگدڑ کے حادثے میں متاثرین کی بدقسمتی سے ہونے والی موت پر تعزیت بھی کی۔ انہوں نے حادثے میں زخمیوں کی جلد صحت یابی کی دعا کی۔ انہوں نے ایوان کو یہ بھی بتایا کہ ریاستی حکومت تلاش اور بچاؤ کے کاموں میں سرگرمی سے مصروف ہے جبکہ مرکزی حکومت کے اعلیٰ عہدیدار متاثرین کے لیے تمام ضروری مدد کو یقینی بنانے کے لیے ریاستی حکومت کے ساتھ مسلسل رابطے میں ہیں۔

وزیر اعظم مودی نے خاص طور پر پہلی بار منتخب ہونے والے ممبران پارلیمنٹ کو مبارکباد دی اور یقین ظاہر کیا کہ انہیں بہت کچھ سیکھنے کو ملے گا۔ انہوں نے صدر کے خطاب پر اظہار تشکر کرتے ہوئے اپنے خطاب کا اختتام کیا اور شکریہ کی تحریک پر اراکین کے خیالات اور تعاون کے لیے ان کا شکریہ ادا کیا۔

 

تقریر کا مکمل متن پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
India digital public infrastructure is charting the journey towards becoming $1-tn digital economy by 2027-28

Media Coverage

India digital public infrastructure is charting the journey towards becoming $1-tn digital economy by 2027-28
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر،20 جولائی 2024
July 20, 2024

India Appreciates the Nation’s Remarkable Rise as Global Economic Powerhouse