Dedicates to nation important sections of Vadodara Mumbai Expressway
Dedicates two new Pressurized Heavy Water Reactors at Kakrapar Atomic Power Station: KAPS-3 and KAPS-4
Initiates commencement of work for construction of PM MITRA Park in Navsari
Lays foundation stone for several development projects of Surat Municipal Corporation, Surat Urban Development Authority, and Dream City
Lays foundation stone for road, rail education and water supply projects
“It's always a great feeling to be in Navsari. The inauguration and launch of various projects will strengthen Gujarat's development journey”
“Modi’s guarantee begins where hope from others ceases to exist”
"Whether poor or middle-class, rural or urban, our government's effort is to improve the standard of living for every citizen"
“Today, excellent connectivity infrastructure is being built even in small cities of the country”
“Today, the world recognizes Digital India”

وزیر اعظم جناب نریندر مودی نے آج نوساری گجرات میں 47,000 کروڑ روپے سے زیادہ کے متعدد ترقیاتی پروجیکٹوں  کو قوم کے نام وقف کیا اور سنگ بنیاد رکھا۔ ان منصوبوں میں بجلی کی پیداوار، ریل، سڑک، ٹیکسٹائل، تعلیم، پانی کی فراہمی، رابطہ کاری اور شہری ترقی جیسے شعبوں کی ایک وسیع رینج شامل ہے۔

اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ آج گجرات میں یہ ان کا تیسرا پروگرام ہے اور اس سے پہلے گجرات سے تعلق رکھنے والے پشوپالکوں (مویشی پالنے والوں) اور ڈیری انڈسٹری کے شراکت داروں کی کمپنی میں شامل ہونے کا ذکر کیا۔ انہوں نے مہسانہ کے والی ناتھ مہادیو مندرکے پران پرتیشٹھا میں حصہ لینے کا بھی ذکر کیا۔ "اب، میں یہاں نوساری میں ہوں ترقی کے اس تہوار میں حصہ لے رہا ہوں"، وزیر اعظم نے اس موقع پر موجود لوگوں پر زور دیا کہ وہ اپنے موبائل فون میں فلیش لائٹ آن کریں اور ترقی کے اس یادگار تہوار کا حصہ بنیں۔ وزیر اعظم نے ٹیکسٹائل، بجلی اور شہری ترقی کے شعبوں کے علاوہ وڈودرا، نوساری، بھروچ اور سورت کے لیے 40,000 کروڑ روپے سے زیادہ کے ترقیاتی پروجیکٹوں کے لیے شہریوں کو مبارکباد دی۔

 

مودی کی گارنٹی کے ارد گرد گونج کا حوالہ دیتے ہوئے، وزیر اعظم نے ان کی طرف سے دی گئی ضمانتوں کے مکمل ہونے کی یقین دہانی پر زور دیا، یہ حقیقت گجرات کے لوگوں کو طویل عرصے سے معلوم ہے۔ انہوں نے 'فائیو ایف' کو یاد کیا جس کے بارے میں وہ اپنے وزیر اعلیٰ کے دنوں میں بات کرتے تھے - فارم، فارم سے فائبر، فائبر سے فیکٹری، فیکٹری سے فیشن، فیشن سے فارن۔ انہوں نے کہا کہ اس کا مقصد ٹیکسٹائل کی مکمل سپلائی اور ویلیو چین ہے۔ وزیر اعظم نے اس شعبے میں سب سے بڑے پروڈیوسروں اور برآمد کنندگان کے ساتھ مقابلہ کرنے کی ہندوستان کی صلاحیت کو اجاگر کرتے ہوئے کہا، ’’آج ریشم کے شہر سورت کو نوساری تک وسعت مل رہی ہے۔‘‘ گجرات کی ٹیکسٹائل انڈسٹری کےرول  پر روشنی ڈالتے ہوئے، وزیر اعظم نے سورت میں تیار ہونے والے ٹیکسٹائل کی منفرد شناخت پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ پی ایم مترا پارک کی تکمیل سے پورے خطے کا چہرہ بدل جائے گا جہاں صرف اس کی تعمیر میں 3000 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ پی ایم مترا پارک کٹنگ، ویونگ، جننگ، گارمنٹس، ٹیکنیکل ٹیکسٹائل اور ٹیکسٹائل مشینری جیسی سرگرمیوں کے لیے ایک ویلیو چین ایکو سسٹم بنائے گا جبکہ روزگار کو بھی فروغ دے گا۔ وزیراعظم نے بتایا کہ پارک میں مزدوروں کے لیے مکانات، لاجسٹک پارک، گودام، صحت کی سہولیات اور تربیت اور ہنرمندی کی ترقی کے لیے سہولیات فراہم کی جائیں گی۔

800 کروڑ روپے سے زیادہ مالیت کے تاپی ندی بیراج کے سنگ بنیاد رکھنے کا  ذکر کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ سورت میں پانی کی فراہمی سے متعلق مسائل کو پوری طرح حل کیا جائے گا، جبکہ سیلاب جیسے حالات کو روکنے میں بھی مدد ملے گی۔

روزمرہ کی زندگی کے ساتھ ساتھ صنعتی ترقی میں بجلی کی اہمیت پر روشنی ڈالتے ہوئے وزیر اعظم نے گجرات میں 20-25 سال پہلے کے اس وقت کی نشاندہی کی جب بجلی کی کٹوتی اکثر ہوتی تھی۔ جناب مودی نے گجرات کے وزیر اعلیٰ بننے پر درپیش چیلنجوں پر بھی روشنی ڈالی اور کوئلے اور گیس کی درآمد کو بڑی رکاوٹوں کے طور پر ذکر کیا۔ انہوں نے پن بجلی پیدا کرنے کے کم سے کم امکانات کا بھی ذکر کیا۔ وزیر اعظم نے جدید ٹیکنالوجی کی حوصلہ افزائی اور شمسی اور ہوا سے توانائی پیدا کرنے ، جو آج گجرات میں پیدا ہونے والی بجلی کی ایک بڑی مقدار ہے، کی طرف لے جانے کا ذکر کرتے ہوئے کہا ، "مودی ہے تو ممکن ہے"۔ انہوں نے ریاست کو بجلی پیدا کرنے کے بحران سے نکالنے کے لیے حکومت کی کوششوں کے بارے میں بصیرت فراہم کی۔

 

بجلی کی جوہری پیداوار کے بارے میں وضاحت کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے کاکراپار اٹامک پاور اسٹیشن (کے اے پی ایس) یونٹ 3 اور یونٹ 4 میں دو نئے دیسی پریشرائزڈ ہیوی واٹر ری ایکٹرز (پی ایچ ڈبلیو آر) کے بارے میں بات کی جو آج قوم کے نام وقف کیے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ ری ایکٹرخود انحصار ہندوستان کی مثال ہیں اور گجرات کی ترقی میں مدد کریں گے۔

وزیر اعظم نے بڑھتے ہوئے جدید انفراسٹرکچر کے ساتھ جنوبی گجرات کی بے مثال ترقی کو اجاگر کیا۔ انہوں نے اجتماع کو پی ایم سوریہ گھر اسکیم کے بارے میں بتایا جو نہ صرف گھرانوں کے توانائی کے بلوں کو کم کرے گا بلکہ آمدنی پیدا کرنے کا ایک ذریعہ بھی بن جائے گا۔ وزیر اعظم نے بتایا کہ ملک کی پہلی بلٹ ٹرین اس خطے سے گزرے گی کیونکہ یہ خطہ ملک کے بڑے صنعتی مراکز ممبئی اور سورت کو جوڑے گا۔

"نوساری کو اب اس کی صنعتی ترقی کے لیے پہچان مل رہی ہے"، وزیر اعظم مودی نے کہا کہ نوساری سمیت پورا مغربی گجرات اپنی زرعی ترقی کے لیے مشہور ہے۔ خطے میں کسانوں کو فائدہ پہنچانے کے لیے حکومت کی کوششوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے، جناب مودی نے پھلوں کی کاشت کے ظہور پر روشنی ڈالی اور نوساری سے آم اور چکو (ساپوڈیلا) کی عالمی مشہور ہپس اور والساری اقسام کا ذکر کیا۔ وزیر اعظم نے بتایا کہ کسانوں کو پی ایم کسان سمان ندھی کے تحت 350 کروڑ روپے سے زیادہ کی مالی امداد ملی ہے۔

وزیراعظم نے نوجوانوں، غریبوں، کسانوں اور خواتین کو بااختیار بنانے کی اپنی  گارنٹی کا اعادہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ گارنٹی صرف اسکیمیں بنانا  نہیں ہیں بلکہ اس کا دائرہ مکمل کوریج کو یقینی بنانے تک ہے۔

 

قبائلی اور ساحلی دیہات کو پہلے نظر انداز کرنے کا ذکر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ موجودہ حکومت نےامرگام سے امباجی تک کے علاقے میں ہر بنیادی سہولت کو یقینی بنایا ہے۔ قومی سطح پر بھی 100 سے زیادہ خواہش مند اضلاع جو ترقی کے معیار میں پیچھے تھے باقی ملک کے ساتھ آگے بڑھ رہے ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ’’مودی کی گارنٹی وہاں سے شروع ہوتی ہے جہاں سے دوسروں کی امیدیں ختم ہو جاتی ہیں‘‘۔ انہوں نے غریبوں کے لیے پکے مکانات، مفت راشن اسکیم، بجلی، نلکے کا پانی اور غریبوں، کسانوں، دکانداروں اور مزدوروں کے لیے انشورنس اسکیموں کے لیے مودی کی گارنٹی کی یقین دہانیوں کا ذکر کیا ۔ جناب مودی نے مزید کہا ’’ آج یہ ایک حقیقت ہے کیونکہ یہ مودی کی گارنٹی ہے‘‘۔

قبائلی علاقوں میں سکیل سیل انیمیا کے اہم مسئلے پر خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم مودی نے اس بیماری کے خاتمے کے لیے قومی سطح پر ٹھوس کوششوں کی ضرورت پر زور دیا۔ وزیر اعلیٰ کے دنوں میں سکیل سیل انیمیا سے نمٹنے کے لیے ریاست کے فعال اقدامات کا ذکر کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے اس بیماری سے مؤثر طریقے سے نمٹنے کے لیے وسیع تر قومی کوششوں کی فہرست بھی دی۔ "ہم نے اب سکیل سیل انیمیا سے آزادی دلانے کے لیے ایک قومی مشن شروع کیا ہے،" وزیر اعظم مودی نے حکومت کے جامع اقدام کا خاکہ پیش کرتے ہوئے کہا ،جس کا مقصد ملک بھر کے قبائلی علاقوں سے اس بیماری کو ختم کرنا ہے۔ وزیر اعظم مودی نے کہا، "اس مشن کے تحت، ملک بھر میں قبائلی علاقوں میں سکیل سیل انیمیا کی اسکریننگ کی جا رہی ہے۔" انہوں نے قبائلی علاقوں میں قائم کیے جانے والے میڈیکل کالجوں کا بھی ذکر کیا۔

وزیر اعظم مودی نے جامع ترقی کے لیے حکومت کے عزم کی تصدیق کرتے ہوئے زور دے کر کہا "خواہ غریب ہو یا متوسط طبقہ، دیہی ہو یا شہری، ہماری حکومت کی کوشش ہے کہ ہر شہری کے معیار زندگی کو بہتر بنایا جائے،" ۔ پہلے زمانے کے معاشی جمود کو یاد کرتے ہوئے اور اس عرصے کے دوران دیہی اور شہری ترقی پر منفی اثرات کی نشاندہی کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ "معاشی جمود کا مطلب یہ تھا کہ ملک کے پاس مالی وسائل محدود تھے۔" انہوں نے کہا کہ چونکہ ہندوستانی معیشت 2014 میں 11ویں نمبر سے 5ویں بڑی معیشت بن گئی ہے، اس کا مطلب یہ ہے کہ آج ہندوستان کے شہریوں کے پاس خرچ کرنے کے لیے زیادہ پیسہ ہے اور اسی لیے ہندوستان اسے خرچ کر رہا ہے۔ اس لیے آج ملک کے چھوٹے شہروں میں بھی بہترین  رابطہ کاری انفراسٹرکچر بنایا جا رہا ہے۔ انہوں نے چھوٹے شہری مراکز اور 4 کروڑ پکے گھروں سے قابل رسائی ہوائی سفر کا ذکر کیا۔

ڈیجیٹل انڈیا پہل کی کامیابی اور دائرہ کار پر روشنی ڈالتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا، "آج دنیا ڈیجیٹل انڈیا کو تسلیم کرتی ہے۔" انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ڈیجیٹل انڈیا نے کھیلوں کے میدان میں نوجوانوں اور نئے اسٹارٹ اپ کے ابھرنے کے ساتھ چھوٹے شہروں کو بدل دیا ہے۔ انہوں نے ایسے چھوٹے شہروں میں ایک نو متوسط طبقے کے ابھرنے پر زور دیا جو ہندوستان کو دنیا کی تیسری سب سے بڑی اقتصادی طاقت بننے کی طرف لے جائے گا۔

 

وزیر اعظم نے ترقی کے ساتھ ساتھ ورثے کو ترجیح دینے پر حکومت کی توجہ پر زور دیا اور کہا کہ یہ خطہ ہندوستان کے عقیدے اور تاریخ کا ایک اہم مرکز رہا ہے، چاہے وہ تحریک آزادی ہو یا قومی تعمیر۔ انہوں نے اقربا پروری، خوشامد اور بدعنوانی کی سیاست کی وجہ سے خطے کی میراث کو نظرانداز کرنے پر بھی افسوس کا اظہار کیا۔ اس کے برعکس، وزیر اعظم نے کہا، ہندوستان کے شاندار ورثے کی بازگشت آج پوری دنیا میں سنائی دے رہی ہے۔ انہوں نے ڈانڈی نمک ستیہ گرہ کے مقام پر ڈانڈی میموریل کی ترقی اور سردار پٹیل کے تعاون کے لیے وقف مجسمہ اتحاد کی تعمیر کا ذکر کیا۔

خطاب کے اختتام پر وزیراعظم نے کہا کہ اگلے 25 سالوں کے لیے ملک کی ترقی کا روڈ میپ پہلے سے موجود ہے۔ "ان 25 سالوں میں، ہم ایک وکست گجرات اور ایک وکست بھارت بنائیں گے" ۔

اس موقع پر گجرات کے وزیر اعلیٰ بھوپیندر پٹیل اوررکن پارلیمنٹ جناب سی آر پاٹل کے ساتھ گجرات حکومت کے کئی  ارکان پارلیمنٹ، ایم ایل اے اور وزراء موجود تھے۔

 

پس منظر

وزیر اعظم نے وڈودرا ممبئی ایکسپریس وے کے متعدد پیکجوں، بھروچ، نوساری، اور ولساڈ میں متعدد سڑک منصوبے؛ تاپی میں دیہی پینے کے پانی کی فراہمی کا منصوبہ؛ دیگر کے علاوہ بھروچ میں زیر زمین نکاسی کا منصوبہ سمیت کئی ترقیاتی پروجیکٹوں کو قوم کے نام وقف کیا ۔ وزیر اعظم نے نوساری میں پی ایم میگا انٹیگریٹڈ ٹیکسٹائل ریجن اور اپیرل (پی ایم مِترا) پارک کی تعمیر کے کام کا آغاز بھی کیا۔

پروگرام کے دوران، وزیر اعظم نے بھروچ-داہیج ایکسیس کنٹرولڈ ایکسپریس وے کی تعمیر؛ وڈودرا کے ایس ایس جی  ہسپتال میں متعدد منصوبے؛ وڈودرا میں علاقائی سائنس مرکز؛ سورت، وڈودرا اور پنچ محل میں ریلوے گیج کی تبدیلی کے منصوبے؛ بھروچ، نوساری اور سورت میں متعدد سڑک کے منصوبے؛ ولساڈ میں پانی کی فراہمی کی کئی اسکیمیں، اسکول اور ہاسٹل کی عمارت اور نرمدا ضلع میں دیگر پروجیکٹوں سمیت دیگراہم منصوبوں کا سنگ بنیاد بھی رکھا ۔

وزیر اعظم نے سورت میونسپل کارپوریشن، سورت اربن ڈیولپمنٹ اتھارٹی، اور ڈریم سٹی کے کئی ترقیاتی منصوبوں کا سنگ بنیاد رکھااور قوم کے نام وقف کیا ۔

وزیر اعظم نے کاکراپار اٹامک پاور اسٹیشن (کے اے پی ایس) یونٹ 3 اور یونٹ 4 میں دو نئے پریشرائزڈ ہیوی واٹر ری ایکٹرز (پی ایچ ڈبلیو آر) کو قوم کے نام وقف کیا۔ نیوکلیئر پاور کارپوریشن آف انڈیا لمیٹڈ (این پی سی آئی ایل) کے ذریعہ 22,500 کروڑ روپے سے زیادہ کی لاگت تعمیر کیا گیا،کے اے پی ایس-3 اور کے اے پی ایس-4 منصوبوں کی مجموعی صلاحیت 1400 (700*2) میگاواٹ ہے اور یہ سب سے بڑے مقامی پی ایچ ڈبلیو آر ہیں۔ یہ اپنی نوعیت کے پہلے ری ایکٹر ہیں اور جدید ترین حفاظتی خصوصیات کے ساتھ دنیا کے بہترین ری ایکٹروں کے ساتھ موازنہ کیا جا سکتا ہے۔ یہ دونوں ری ایکٹر مل کر ہر سال تقریباً 10.4 بلین یونٹ صاف بجلی پیدا کریں گے اور گجرات، مہاراشٹر، مدھیہ پردیش، چھتیس گڑھ، گوا اور دادرا اور نگر حویلی اور دمن اور دیو جیسی متعدد ریاستوں کے صارفین کو فائدہ پہنچائیں گے۔

 

Click here to read full text speech

Explore More
لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن

Popular Speeches

لال قلعہ کی فصیل سے 77ویں یوم آزادی کے موقع پر وزیراعظم جناب نریندر مودی کے خطاب کا متن
How India has achieved success in national programmes

Media Coverage

How India has achieved success in national programmes
NM on the go

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر، 19 اپریل 2024
April 19, 2024

Vikas bhi, Virasat Bhi under the leadership of PM Modi