Share
 
Comments
مرکزی سرکار ہندوستان میں ایز آف ڈوئنگ بزنس میں بہتری پیدا کرنے پر توجہ مرکوز کر رہی ہے:وزیر اعظم مودی
ہندوستان آج تیزی سے ترقی کرتی بڑی معیشت ہے: وزیر اعظم مودی
وزیر اعظم کا کہنا ہے کہ ہندوستان کی تیز رفتار معیشت، تیزی سے نمو کرتی درمیانہ درجے کی آبادی اور بڑی تعداد میں نوجوانوں کی آبادی جاپانی سرمایہ کاروں کو نئے مواقع فراہم کرا سکتی ہے۔

نئی دہلی،29؍اکتوبر،جاپان اور بھارت کے بڑی تعداد میں موجود تجارتی لیڈر ، سی ای اوز ، کے ڈائنڈرن ، جیٹرو ، نِکی ، سی آئی آئی  اور  نیسکوم کے سینئر عہدیدار۔

جاپان آکر یہاں کی تجارتی برادری سے بات کرنا مجھے ہمیشہ ہی بہت خوشی دیتا ہے۔ مجھے آج بھی یاد ہے کہ قریب 10 سال سے میری یہاں کے صنعت کاروں سے تفصیلی بات چیت ہوتی رہی ہے۔ میں نے آپ کے ویژن کو سمجھا تھا اور بہت سی نئی نئی باتیں آپ سے سیکھی تھیں۔ پچھلی دہائی میں بھارت کے تئیں آپ کی  قربت وقت کے ساتھ ساتھ مسلسل بڑھتی رہی ہے۔

حکومت ہند کی ہر سطح پر یہ کوشش ہے کہ ملک میں کاروباری ماحول کو اس طرح بدلا جائے کہ وہاں پر آپ کو کاروبار کرنے میں آسانی اور رہنے میں آسانی کااحساس ہر قدم پر ہوسکے۔

ساتھیو!

 کچھ سال پہلے میں نے بھارت میں منی جاپان بنانے کی بات کی تھی۔ میرے لئے بہت خوشی کی بات ہے کہ آج آپ اس سے بھی بڑے پیمانے پر بھارت میں کام کررہے ہیں۔

کئی  دہائیوں سے جہاں قریب 1150 کمپنیاں بھارت میں تھیں،وہیں سال 2014 سے لے کر 2017 کے بعد جاپان کی 200 سے زیادہ نئی کمپنیوں نے بھارت میں کام کرنا شروع کیا۔ یہ تعداد  روز بروز بڑھتی جارہی ہے۔ اس کے لئے آپ  مبارک باد کے مستحق ہیں۔

آج جاپان کی کمپنیاں کار بنانے سے لے کر مواصلات ، بنیادی ڈھانچے سے لے کر  سروسز  تک میں ساتھ مل کر  کام کررہی ہیں۔ بھارت اور جاپان کے درمیان یہ  خوش کن سفر اور بھی  بہتر اور  مفید ثابت ہو اس کے لئے میری طرف سے آپ سبھی کو  نیک خواہشات پیش ہیں۔

ساتھیو!

 بھارت اور جاپان کے بقائے باہم کا احساس اور ہماری مشترکہ وراثت پر مبنی ہے۔ ہماری قربت پر مبنی ہے۔ دونوں ملکوں کے درمیان  قریبی تعلقات کی بنیاد میں یہی احساس اور روایات پنہاں ہیں۔یہی وجہ ہے سال 2014 میں وزیراعظم کے طور پر ہوئے میرے پہلے دورے کے دوران ہی ہم  دونوں ملکوں نے طے کیا تھا کہ اپنے رشتوں کو ایک نئی اونچائی پر لے جائیں گے۔ اسے اپ گریڈ کرکے اسپیشل اسٹریٹجک اور گلوبل پارٹنر شپ کی سطح پر لے جائیں گے۔ اس کے بعد سے جاپان کے وزیراعظم آبے اور میرا مسلسل آپس میں ملنا جلنا ہوتا رہا ہے۔ وزیراعظم جناب آبے اور ہم نے مل کر دونوں ملکوں کے درمیان تجارتی عمل میں آنے والی بہت سے رکاوٹوں کو دور کیا ہے۔

ساتھیو!

 جاپان سرکار نے پچھلے کچھ برسوں میں ہمارے بہت سے اہم بنیادی ڈھانچے کے پروجیکٹوں میں مدد دی ہے۔ ہماری مخصوص مغربی خصوصی نقل وحمل کی راہداری اب پوری ہونے والی ہے ۔ یہ ایک سال بعد پوری طرح چالو ہونے کی حالت میں پہنچ جائے گا۔ اس کے ساتھ ہی جڑا ہوا ہمارا دہلی- ممبئی صنعتی راہ داری کا جو پروجیکٹ ہے ، وہ بھی جاپان حکومت اور جاپان کی کمپنیوں کے اشتراک سے بخوبی آگے بڑھ رہا ہے۔

محترم آبے جی کے پچھلے بھارت دورے کے دوران ہم نے  آئی اسپیڈ ریل پروجیکٹ پر ساتھ کام کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ بھارت کا پہلا پروجیکٹ ممبئی- احمد آباد کے درمیان شروع ہوا ہے، اس پر بھی تیز رفتاری سے کام چل رہا ہے۔

ساتھیو!

بھارت میں میری حکومت کو تقریبا  ساڑھے چا ر سال ہوچکے ہیں، اس دوران کاروبار سے جڑے جس کام کو میں نے اپنی ترجیحی فہرست میں سب سے اوپر رکھا ہے ، وہ ہے کاروبار کرنے میں آسانی۔ اس کا نتیجہ اب دنیا کے سامنے ہے۔ سال 2014 میں جب میں نے حکومت کی باگ ڈور سنبھالی تھی اس وقت  عالمی بینک کی ’’کاروبار کرنے میں آسانی‘‘ کی درجہ بندی میں بھارت کا  142 واں مقام تھا۔ اب ہم 100ویں رینک پر ہیں اور اب بھی رینکنگ میں سدھار کے لئے  کئی سطحوں پر کام کررہے ہیں۔ وفاقی حکومت کی سطح پر  ، ریاستی حکومت کی سطح پر ، مقامی حکومت کی سطح پر  ہم ایک کے بدلے ایک قدم اٹھارہے ہیں۔ آنے والے برسوں میں ہمیں اس کے اور بھی اچھے نتائج حاصل ہوں گے۔

اتنا بڑا سدھار، تیز اور فیصلہ کن طریقے سے لئے گئے فیصلوں سے اور بے وجہ کے ضابطوں میں تبدیلی سے ممکن ہوا ہے۔

میں یہاں آپ کو  ایک اور اہم بات بتانا چاہتا ہوں ۔ بھارت سرکار نے  ’’کاروبار کرنے میں آسانی‘‘ کو اور زیادہ فروغ دینے کے لئے اپنی 36 ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کی درجہ بندی  بھی کرنی شروع کردی ہے۔

اس کا ایک بڑا اثر یہ ہوا ہے کہ اب ریاستوں میں بھی سرمایہ کاری کو لے کر صحت مند مسابقت شروع ہوگئی ہے جس کے بہت نتائج نظر آنے لگے ہیں۔

ساتھیو!

سرمایہ کاری ہمارے ملک کی ضرورت ہے، کاروبار کرنے میں آسانے کے شعبے میں ہم اسی لئے  پوری عقیدت کے ساتھ قدم اٹھارہے ہیں۔ سرمایہ کاری ہوگی تبھی بے روزگاروں کے روزگار کے نئے مواقع پیدا ہوں گے۔ ملک کے بنیادی ڈھانچے میں سدھار ہوگا، زراعت ، معدنیات ، سمندری اثاثے اور  دیگر تمام قدرتی وسائل کی قدر میں اضافہ ہوگا۔

اپنے شہریوں کو رہنے میں آسانی دینے کی ہماری کوشش ، کاروبار کرنے میں آسانی  کا ہی ایک حصہ ہے۔ اس لئے ایک ماہ مہم چلاکر ہم لوگوں نے  کاروبار میں آسانی کے شعبے میں کام کئے ہیں ۔ اس عظیم کوشش کی وجہ سے ہمیں کامیابیاں بھی ملی ہیں۔

  • عالمی  دانشورانہ املاک کی تنظیم (ڈبلیو آئی پی او) کی عالمی جدت طرازی انڈیکس کی درجہ بندی میں 21 پائیدان اوپر آگئے ہیں۔
  • عالمی اقتصادی فورم کی عالمی مسابقتی انڈیکس میں ہم دو سال میں 31 پائیدان اوپر چڑھے ہیں۔
  • یواین سی ٹی اے ڈی کے ذریعے لسٹ کئے گئے 10 ایف ڈی آئی  ڈیسٹی نیشن میں مضوطی سے بھارت کا نام ہے۔
  • پچھلے کچھ برسوں میں ایف ڈی آئی کے شعبے میں ہم نے  بہت سی اصلاحات کی ہیں ۔ آج ہم ایف ڈی آئی کی نظر سے سب سے کھلی معیشت بن گئے ہیں۔ 90 فیصد سے زیادہ پرمیشن اب آٹو میٹک روٹ  پر  دی جاتی ہیں۔
  • اس کا نتیجہ یہ ہے کہ ہماری ایف ڈی آئی پچھلے تین سال میں 36 ارب امریکی ڈالر سے بڑھ کر 60 ارب امریکی ڈالر ہوگئی ہے۔
  • آج ہم دنیا میں سب سے تیز شرح سے ترقی حاصل کرنے والی بڑی معیشت ہیں۔
  • اب ہم  2.59 ٹریلین امریکی ڈالر کی معیشت ہونے کے ساتھ چھٹے نمبر کی معیشت ہیں اور جلد ہی پانچویں نمبر کی معیشت بننے کی جانب گامزن ہیں۔

گھریلو سطح پر ہم نے جس عہد بستگی کے ساتھ اصلاحات کی ہیں، ان کی وجہ سے بھارتی معیشت:

  • غیر رسمی سے رسمی معیشت بنن رہی ہے۔
  • لین دین اب صرف کاغذات پر ہی نہیں بلکہ آن لائن ہونے لگے ہیں جس کی وجہ سے  استحکام اور شفافیت میں اضافہ ہوا ہے۔
  • ملک بھر میں جی ایس ٹی  نافذ  ہونے کی وجہ سے ٹرانسپورٹیشن اور بہتر ہوا ہے اور لاجسٹک سیکٹر اور مضبوط ہوا ہے۔
  • وقت کے ساتھ ساتھ ہم کارپوریٹ ٹیکس کو کم کرتے جارہے ہیں۔ اس میں اس بات کا خاص دھیان رکھا جارہا ہے کہ ایم ایس ایم ای یعنی چھوٹی صنعتوں کو بھرپور فائدہ ملے۔

پالیسیوں میں استحکام اور شفافیت کی جو کاروباری شعبے کی مانگ ہوا کرتی تھی اب وہ بھارت سرکار کی پہچان بن چکی ہے۔

ساتھیو!

وزیراعظم کےطور پر اپنے پہلے دورے کے دوران ہی میں نے جاپان پلس نام کا ایک ادارہ بنانے کی بات کی تھی، مجھے یہ کہتے ہوئے بہت خوشی ہورہی ہے کہ جیٹرو نے  اور آپ سب نے اس بندوبست کا فائدہ اٹھایا ہے۔

اس موقع پر میں ایک معلومات دینا چاہتا ہوں۔ جاپان پلس ہماری  انویسٹ انڈیا کے ساتھ مل کر کام کرتی ہے۔ اس انویسٹ انڈیا کو کچھ دن پہلے ہی  اپنی بہترین کارکردگی کے لئے اقوام متحدہ نے  عالمی ایوارڈ سے سرفراز کیا ہے۔

ساتھیو!

بھارت میں تیزی سے بڑھتی ہوئی معیشت  ، تیزی سے بڑھتا ہوا متوسط طبقہ ، تیزی سے بڑھتی ہوئی شہری  آبادی اور ہماری  نوجوان آبادی ، جاپان کی کمپنیوں کے کام کرنے کے لئے بہت بہترین موقع فراہم کرتے ہیں۔

 میں کچھ مثالیں پیش کروں تو،

بھارت میں ہم لوگ پچھلے چار سال سے میک ان انڈیا جیسے خصوصی پروگراموں کے تحت بھارت کو مینوفیکچرنگ اور تحقیق کے شعبے میں عالمی مرکز بنانے کی طرف آگے بڑھے ہیں۔

بھارت میں ، خاص طور پر جاپان کی ایم ایس ایم ای کمپنیوں کے کام کرنے کے بہت زیادہ امکانات ہیں۔ میں یہاں یہ کہنا چاہتاہوں کہ بھارت آنے والی ہر بڑی کمپنی کا تو خیر مقدم ہے لیکن ایم ایس ایم ای کے ذریعے بھی جاپانی بزنس لیڈر اپنے کاروبار کو نئی اونچائیوں تک لے جاسکتے ہیں۔ ایم ایس ایم ای آنے سے کم وقت میں اس کے نتائج دیکھنے کو ملیں گے۔

بھارت میں کاروبار کرنے کا ایک فائدہ ’’کم لاگت پر مینوفیکچرنگ‘‘ بھی ہے۔ اس کے پیچھے بھارت میں مسابقتی مزدوری کی لاگت ایک بہت بڑی طاقت ہے۔

اسی طرح سے ہماری آئی ٹی صنعت ایک بہت بڑی قوت ہے۔ میں نے پہلے ہی یہاں  آکر کہا ہے ، ہمارا سافٹ ویئر اور آپ کا ہارڈ ویئر مل جائے تو میں سمجھتا ہوں کہ ہم دنیا کے اندر میریکل (معجزہ) کرسکتے ہیں۔

اتنا ہی نہیں بھارت ٹیکنالوجی کے شعبے میں ہونے والی نئی دریافتوں، جیسے مصنوعی ذہانت ، اشیاء کا انٹرنیٹ ، تھری ڈی پرنٹنگ ، روبوٹکس ، وغیرہ کے ذریعے صنعت 4.0 کی طرف تیزی سے آگے بڑھ رہی ہے۔

اسی طرح الیکٹرک موبلیٹی ایک ایسا شعبہ ہے جس میں جاپان اور بھارت کے درمیان تعاون دونوں ملکوں کے لئے بے حد مفید ثابت ہونے جارہا ہے۔

ساتھیو!

اس کے علاوہ بھارت میں ہم بنیادی ڈھانچے پر بھی بے مثال کام کررہے ہیں ۔ ہمارا زور جدید طرز کے بنیادی ڈھانے پر ہے۔ ہمارا ارادہ ہے کہ ہم ایک ایسی  مسابقت والی معیشت کی تعمیر کریں، جس کا  آدھار ، اسکل ، اسپیڈ  اور اسکیل ایک ہوں۔ ان خیالات کو پورا  کرنے کے لئے  ہم انویسٹ منٹ کے ماحول کو لگاتار سدھارنے کی کوشش میں ہیں۔

آج اس فورم سے میں آپ سبھی کو  بھارت میں بننے والے وسیع کاروباری مواقع کے لئے مدعو کرتا ہوں۔ اس کامیاب مواقع کی کچھ اور مثالیں دینا چاہتاہوں۔

  • ہمارا ساگر مالا پروگرام جس کے ذریعے ہم سمندری ساحلوں کےد یش کے علاقوں کو جوڑنا چاہتے ہیں، آپ کے لئے بہت اچھا موقع ہے۔
  • اسمارٹ سٹی پروگرام کے چلتے  بہت سے نئے مواقع کی بھی تعمیر ہورہی ہے۔ ہم اپنے 50 شہروں میں میٹرو ریل کی شروعات بھی کرنا چاہتے ہیں۔
  •  اسی طرح ہمارا ریل اور سڑک میں توسیع اور جدید کاری کا پروگرام بھی بہت ہی وسیع ہے۔ ابھی ہمیں کئی ہائی اسپیڈ کوریڈور بنانے ہیں۔
  • موجودہ پورٹ اور ایئرپورٹ کی جدید کاری کے ساتھ نئی بندرگاہیں اور ہائی اڈوں کا قیام بھی ہمارے ایجنڈے میں ہے۔
  • ان لینڈ واٹر ٹرانسپورٹ (اندرون ملک آبی ٹرانسپورٹ)  اور سبز توانائی ہمارے نئے عہد ہیں اور وہ بھی آپ کے لئے بہت بڑا موقع ہیں۔
  • ہماری اسٹیل کی کھپت موجودہ دور میں بہت کم ہے ساتھ ہی  ہماری  لوہے اور  خام لوہے وافر مقدار میں موجود ہیں۔ میں چاہتاہوں کہ اعلیٰ گریڈ کے اسٹیل کی پیداوار بھارت میں ہی ہو۔

ساتھیو!

بھارت اور جاپان دونوں ہی جمہوری اقدار اور آزادی کے زبردست حامی ہیں، ساتھ ہی ترقی کے لئے تعاون کے ہمارے نظریئے اور پالیسیوں میں بہت یکسانیت ہے۔

بنیادی ڈھانچہ اور صلاحیت سازی کے علاوہ صحت اور زراعت جیسے شعبوں میں جاپان اور بھارت کے درمیان تیسرے ملکوں میں تعاون کے لئے مستحکم امکان ہے۔

اس لئے چاہے بھارت –بحر الکاہل ہو یا جنوبی ایشیا ءیا افریقہ ، بھارت اور جاپان ہمارے ساجھیدار ملکوں کی ترجیحات کی بنیاد پر تیسرے ملکوں میں اعتماد کے لئے  اپنی ساجھیداری کو اور مضبوط کریں گے۔

بین الاقوامی شمسی اتحاد میں جاپان کی شرکت سے شمسی توانائی آب وہوا جیسے معاملات پر ہمارے دونوں ملک کے درمیان تیسرے ملکوں کے ساتھ ساجھیداری کے نئے دروازے کھلے ہیں۔

مجھے خوشی ہے کہ آج انڈیا- جاپان بزنس لیڈر فورم کی میٹنگ میں فورم کے  بہت سے ارکان نے  افریقہ میں بھارت اور جاپان کے  کاروباریوں کے بیچ  ان شعبوں میں تعاون بڑھانے کے لئے  کئی اچھے خیالات کا اظہار کیا ہے۔

ساتھیو!

میں ہمیشہ ہی مضبوط بھارت- مضبوط جاپان کی بات کرتا رہا ہوں۔

میں آج اس موقع پر  جاپان کے صنعتی سیکٹر کا بھارت پر خاص اعتماد کرنے کے لئے شکریہ ادا کرتا ہوں۔

میں آپ سبھی  کو بھارت میں سرمایہ کاری کی رفتار بڑھانے کے لئے بھی مدعو کرنا چاہوں گا۔

میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ جاپان اور بھارت کے درمیان کاروباری رشتوں کو اور مضبوط کرنے کے لئے  آپ کی ہر ممکن مدد کی جائے گی۔

ایک بار پھر اس تقریب سے جڑنے کے لئے آپ سبھی کا میں دل سے بہت بہت شکریہ ادا کرتا ہوں۔

20 تصاویر سیوا اور سمرپن کے 20 برسوں کو بیاں کر رہی ہیں۔
Explore More
It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi

Popular Speeches

It is now time to leave the 'Chalta Hai' attitude & think of 'Badal Sakta Hai': PM Modi
How India is becoming self-reliant in health care

Media Coverage

How India is becoming self-reliant in health care
...

Nm on the go

Always be the first to hear from the PM. Get the App Now!
...
سوشل میڈیا کارنر،26 اکتوبر 2021
October 26, 2021
Share
 
Comments

PM launches 64k cr project to boost India's health infrastructure, gets appreciation from citizens.

India is making strides in every sector under the leadership of Modi Govt